وجود

... loading ...

وجود

رنگ بازیاں

پیر 09 جنوری 2023 رنگ بازیاں

   علامہ اقبال نے راز کھولا تھا

تھا جو ، ناخوب، بتدریج وہی خوب ہُوا
کہ غلامی میں بدل جاتا ہے قوموں کا ضمیر

زیادہ وقت نہیں گزرا، آئی ایم ایف سے معاہدے خفیہ رکھے جاتے تھے، عوام کے سامنے پیش کرتے ہوئے یہ ایک سیاسی یا قومی عیب لگتا تھا۔ آئی ایم ایف کی شرائط ملک کی فروخت سے تعبیر کی جاتی تھیں۔ اب دنیا بدل گئی ہے، آئی ایم ایف کی شرطیں کھلے بندوں زیر بحث رہتی ہیں۔ ملکی معیشت قرضوں پر،زندگی کی سانسوں کی طرح انحصار کرنے لگی ہے۔ اگر آئی ایم ایف قرض نہ دے توایسا لگتا ہے کہ ہماری سانسیں اکھڑ جائیں گی، زندگی ہار جائیں گے۔ ناخوب کیسے خوب بن گیا۔ قومی ضمیر اچانک کیسے تبدیل ہو گیا؟
ملک میں مہنگائی کا ایک طوفان برپا ہے۔ روٹی کے بھاؤ بھی تاؤ دلانے لگے ہیں۔ ادویات بیش قیمت ہونے کے بعد بھی دستیاب نہیں۔ صنعتی ادارے بند ہونے لگے ہیں۔ بینک کسی مالیاتی نظم میں نہیں۔ اسٹیٹ بینک کے احکامات ہوا میں اڑ جاتے ہیں۔ ڈالر کے سرکاری نرخ پر بینک بھی عمل پیرا ہو نے کو تیار نہیں۔ ڈالر کی قیمت میں سرکاری اور غیر سرکاری فرق ہوش ربا ہے۔ ڈالر تو کجا حکومت ایک ریڑھی والے کے پاس موجود پھلوں کے سرکاری نرخ پر عمل درآمد کرنے کی قوت سے محروم ہے۔ دودھ سے لے کر گوشت تک اور آٹے سے لے کر چینی تک اشیائے ضروریہ میں ایسی کوئی شے نہیں جس پر حکومت کی گرفت دکھائی دے۔ حکومت یوں تو پاکستانی طالبان اور دہشت گردوں کو دھمکیاں دیتی اینٹھتی رہتی ہے، مگر عملاً ریڑھی اور ڈیری والوں کے آگے بھی ڈھیر ہے۔ پاکستانی معیشت کا یہ حال اُن کلیوں سے ہی ہوا ہے، جس پر اب ہم عمل کرنے جا رہے ہیں۔ عارضی حل ڈھونڈنے اور وقتی دباؤ ٹالنے کی روش ہماری قومی پہچان ہے۔ آئی ایم ایف سے قرضوں کے پروگرام بھی اسی نوع کا معمول بن چکی ہیں۔ تجربات نے متعدد بار ثابت کیا کہ عالمی امدادی ادارے تیسری دنیا اور ترقی پزیر معیشتوں کو خوب صورت مگر برباد کردینے والے جالوں سے جکڑتے اور لوٹتے ہیں۔ مگر کاریگری یہ ہے کہ عالمی طور پر ہر نوعی امداد ان کی ضمانتوں پر انحصار کرتی ہے۔ چنانچہ عالمی امدادی اداروں پر انحصار کرنے والے ترقی پزیر ممالک خود کشی کے راستے پر گامزن رہتے ہیں۔ آئی ایم ایف پر انحصار کرتے کرتے ہچکولے کھاتی، ڈوبتی مرتی، ہلتی ڈولتی ہماری قومی معیشت کا یہ حال ہو چکا ہے کہ اسے زندہ رکھنے کے لیے تجویز کردہ نسخے بھی دراصل موت کے بند دروازے ہی ثابت ہو رہے ہیں۔ پاکستان امداد کے ایک منحوس گرداب میں گھر چکا ہے۔ جہاں مہنگائی پر قابو پانے اور کچھ معاشی سرگرمیوں کے لیے بھی امداد ضروری ہے، مگر امداد اپنی شرائط پوری کرتے ہوئے مزید مہنگائی اور معاشی سرگرمیوں کو مزید مشکل بنا دینے والی ثابت ہوتی ہے۔
آئی ایم ایف نے پاکستان کو اگلی امداد کے لیے جن شرائط کے ساتھ کسا ہے، وہ لاگو ہوئیں تو پہلے ہی مہنگائی سے دوچار عوام کو مزید مہنگائی کا ایک نیا طوفان آ لے گا۔ خطرہ یہ ہے کہ یہ عوام کو کسی بڑے احتجاج اور ردِعمل کے طوفان سے آشنا کر سکتا ہے۔ کمزور اور عوامی سند ِاعتبار سے محروم موجودہ حکومت کے لیے اس میں خطرات ہی خطرات ہیں۔ اس لیے وہ آئی ایم ایف کے پروگرام میں جاتے ہوئی ڈر رہی ہے۔ دوسری طرف اگر اس پروگرام کو گلے کا طوق بنا کر نہ ڈالا گیا تو معاشی سرگرمیاں ماند پڑنے کا اندیشہ ہے۔ گویا آئی ایم ایف کی شرائظ مان لیں تو معیشت کا دھچکا، سیاست میں لگے گا۔ یہ سیاسی حکومت کو گوارا نہیں، جو عمران خان کے چیلنج سے نمٹتے ہوئے پاگلوں کی طرح حرکتیں کرنے لگی ہے۔ اگر آئی ایم ایف کی شرائط نہیں مانی جاتیں تو ملک دیوالیہ ہونے کے حقیقی خطرے کا سامنا کرے گا۔فارسی محاورے کے مطابق جائے ماندن نہ پائے رفتن کی صورتِ حال ہے۔ بقول شاعر

جائے ماندن ہمیں حاصل ہے نہ پائے رفتن
کچھ مصیبت سی مصیبت ہے خدا خیر کرے

پاکستان کے لیے فوری مسئلہ یہ ہے کہ اگر آئی ایم ایف کی شرائط قبول نہیں کرتے تو پاکستان پر واجب ادائیاں کسی صورت ممکن نہیں ہو سکیں گی۔ پاکستان کو فروری اور مارچ میں تقریباً سات ارب ڈالر کی ادائیاں کرنا ہیں، جبکہ ایمرٹس بینک کو 60 کروڑ اور دبئی اسلامک بینک کو 42 کروڑ ڈالر کی ادائیوں کے بعد اب قومی خزانے میں کم و بیش ساڑھے چار ارب ڈالر ہی باقی رہ گئے ہیں۔ چنانچہ آئی ایم ایف کی خطرناک شرطیں قبول کرکے ہی ہم اس قابل ہو سکیں گے کہ قرضے لے کر فروری اور مارچ میں واجب الادا قرضے اتارسکیں۔ ذرا اس امداد کی ہولناکی کا اندازا لگائیں کہ اگر یہ امداد حاصل نہیں کی جاتیں تو پھر پاکستان فروری یا مارچ میں یقینی دیوالیہ ہونے کے خطرے سے دوچار ہو جائے گا۔ اگر آئی ایم ایف کی امداد قبول کی جاتی ہے تو پھر وہ شرائط ماننا پڑیں گی جو اس امداد کے ساتھ لاگو کرنا ہونگیں۔ آئی ایم ایف کی شرائط پوری کرتے ہوئے سب سے پہلا اثر پاکستانی روپے کی گرواٹ کی شکل میں ہوگا۔ پاکستانی روپے کی قدر میں تقریباً دس سے پندرہ فیصد کمی یقینی طور پر واقع ہو گی۔ جس کا لازمی اثر مہنگائی کے نئے طوفان کی شکل میں ظاہر ہوگا۔ عوام ابھی بھی مہنگائی کے لپیٹے میں ہیں، تب کیا ہوگا؟ ادارہ شماریات کے مطابق ابھی مہنگائی کی شرح پچیس سے تیس فیصد ہے، روپے کی قدر میں دس سے پندرہ فیصد کمی کے بعد یہ شرح لازمی طور پر چالیس سے پینتالیس فیصد تک جا پہنچے گی۔ چالیس سے پینتالیس فیصد مہنگائی کے بعد منڈی میں اشیاء کی جو حالت ہو گی، اس کا اندازا لگانا کچھ دشوار نہیں۔ گوشت، آٹا، چینی اور دیگر ضروری اشیائے صرف میں سے ہر چیز اس وقت اتنی مہنگی ہے کہ عوامی سطح پر ردِ عمل کی لہریں پیدا ہو رہی ہیں۔ امداد کے بعد جب یہ مہنگائی مزید بڑھے گی، تب حالات موجودہ کمزور حکومت کے قابو میں نہیں آ سکیں گے۔
پی ڈی ایم کی موجودہ حکومت ان حالات میں بھی بازیگری اور رنگ بازی کے سوا کچھ نہیں کر رہی۔ اس کے پاس کوئی نسخہ کیمیا نہیں۔ اسحاق ڈار کے حوالے سے جعلی بھروسے کی مصنوعی فضاء تحلیل ہو چکی ہے۔ حکومت کی حالت یہ ہے کہ آئی ایم ایف کو شرائط پر یقین دلاتے ہوئے بھی اپنی مکروہ سیاست سے باز نہیں آ رہی۔
وزیراعظم ہاؤس سے جمعہ کے روز ایک سرکاری اعلامیہ جاری ہوا۔ جس میں دعویٰ کیا گیا کہ آئی ایم ایف کی منیجنگ ڈائریکٹر کرسٹالینا جارجیوا نے شہباز شریف کو فون کیا۔ آئی ایم ایف کی مقامی نمائندہ ایستھر پیریز نے فوراً ہی وضاحت کی کہ وزیراعظم شہباز شریف کو فون خود اُن کی ہی درخواست پر کیا گیا۔ یہ ہماری حکومت کا حال ہے۔ معیشت کے نقصان میں بے عزتی کا سود بھی الگ ادا کرنا پڑ رہا ہے۔ بدترین سیاسی حالات میں ہچکیاں لیتی معیشت اور دیوالیہ ہونے کے خطرے میں بھی وزیراعظم ہاؤس سیاسی رنگ بازیوں میں مصروف ہے۔ مصیبت پر مصیبت میں بھی حکومت کی سیاسی بازیگری کا جنون ختم نہیں ہورہا ۔ قرضے ادا کرنے کے لیے قرضے لینے کی خجالت آمیز درخواستوں میں بھی سیاسی حرکتیں کم نہیں ہورہیں۔ مہنگائی کے ستائے عوام کو مزید مہنگائی میں مبتلا کرنے کے باوجود بھی سیاسی اٹھکیلیوں کا شوق ختم نہیں ہو رہا۔ کسی کی سمجھ میں یہ نہیں آرہا کہ پہلے معاشی گرداب سے نکلیں یا پھر سیاسی گھمن گھیریوں اور حکومتی عتاب سے باہر آئیں۔
٭٭٭٭


متعلقہ خبریں


خوشی سے مر نہ جاتے اگر اعتبار ہوتا وجود - جمعرات 03 نومبر 2022

یہ لیجیے! پندرہ برس پہلے کی تاریخ سامنے ہے، آج 3 نومبر ہے۔ کچھ لوگوں کے لیے یہ اب بھی ایک سرشار کردینے والی تقویم کی تاریخ ہے، جو چیف جسٹس کے''حرفِ انکار'' سے پھوٹی۔ مگر دانا اور اہلِ خبر اسے اژدھوں کی طرح نگلتی، حشرات الارض کی طرح رینگتی اور پیاز کی طرح تہ بہ تہ رہتی ہماری سیاسی...

خوشی سے مر نہ جاتے اگر اعتبار ہوتا

لیاقت علی خان اور امریکا وجود - پیر 17 اکتوبر 2022

حقارت میں گندھے امریکی صدر کے بیان کو پرے رکھتے ہیں۔ اب اکہتر (71)برس بیتتے ہیں، لیاقت علی خان 16 اکتوبر کو شہید کیے گئے۔ امریکی صدر جوبائیڈن کے موجودہ رویے کو ٹٹولنا ہو تو تاریخ کے بے شمار واقعات رہنمائی کے لیے موجود ہیں۔ لیاقت علی خان کا قتل بھی جن میں سے ایک ہے۔ یہاں کچھ نہیں ...

لیاقت علی خان اور امریکا

میاں صاحب پھر ووٹ کو ابھی عزت تو نہیں دینی! وجود - جمعرات 13 اکتوبر 2022

سیاست سفاکانہ سچائیوں کے درمیان وقت کی باگ ہاتھ میں رکھنے کا ہنر ہے۔ صرف ریاضت نہیں، اس کے لیے غیر معمولی ذہانت بھی درکار ہوتی ہے۔ رُدالیوں کی طرح رونے دھونے سے کیا ہوتا ہے؟ میاں صاحب اب اچانک رونما ہوئے ہیں۔ مگر ایک سوال ہے۔ کیا وہ سیاست کی باگ اپنے ہاتھ میں رکھتے ہیں؟ کیا وہ اپ...

میاں صاحب پھر ووٹ کو ابھی عزت تو نہیں دینی!

بس کر دیں سر جی!! وجود - منگل 11 اکتوبر 2022

طبیعتیں اُوب گئیں، بس کردیں سر جی!! ایسٹ انڈیا کمپنی کے دماغ سے کراچی چلانا چھوڑیں! آخر ہمار اقصور کیا ہے؟ سرجی! اب یہ گورنر سندھ کامران ٹیسوری!! سر جی! سال 1978ء کو اب چوالیس برس بیتتے ہیں،جب سے اے پی ایم ایس او(11 جون 1978) اور پھر اس کے بطن سے ایم کیوایم (18 مارچ 1984) کا پرا...

بس کر دیں سر جی!!

جبلِ نور کی روشنی وجود - اتوار 09 اکتوبر 2022

دل میں ہوک سے اُٹھتی ہے!!یہ ہم نے اپنے ساتھ کیا کیا؟ جبلِ نور سے غارِ حرا کی طرف بڑھتے قدم دل کی دھڑکنوں کو تیز ہی نہیں کرتے ، ناہموار بھی کردیتے ہیں۔ سیرت النبیۖ کا پہلا پڑاؤ یہی ہے۔ بیت اللہ متن ہے، غارِ حرا حاشیہ ۔ حضرت ابراہیمؑ نے مکہ مکرمہ کو شہرِ امن بنانے کی دعا فرمائی تھ...

جبلِ نور کی روشنی

وقت بہت بے رحم ہے!! وجود - جمعرات 22 ستمبر 2022

پرویز مشرف کا پرنسپل سیکریٹری اب کس کو یاد ہے؟ طارق عزیز!!تین وز قبل دنیائے فانی سے کوچ کیا تو اخبار کی کسی سرخی میں بھی نہ ملا۔ خلافت عثمانیہ کے نوویں سلطان سلیم انتقال کر گئے، نوروز خبر چھپائی گئی، سلطنت کے راز ایسے ہی ہوتے ہیں، قابل اعتماد پیری پاشا نے سلطان کے کمرے سے کاغذ س...

وقت بہت بے رحم ہے!!

مبینہ ملاقات وجود - پیر 19 ستمبر 2022

مقتدر حلقوں میں جاری سیاست دائم ابہام اور افواہوں میں ملفوف رہتی ہے۔ یہ کھیل کی بُنت کا فطری بہاؤ ہے۔ پاکستان میں سیاست کے اندر کوئی مستقل نوعیت کی شے نہیں۔ سیاسی جماعتیں، اقتدار کا بندوبست، ادارہ جاتی نظم، فیصلوں کی نہاد ، مقدمات اور انصاف میں ایسی کوئی شے نہیں، جس کی کوئی مستقل...

مبینہ ملاقات

ملکہ الزبتھ، استعمار کا مکروہ چہرہ وجود - جمعه 16 ستمبر 2022

پاکستانی حکومت نے 12 ستمبر کو قومی پرچم سرنگوں کرلیا۔ یہ ملکہ برطانیا الزبتھ دوم کی موت پر یومِ سوگ منانے کا سرکاری اظہار تھا۔ ہم بھی کیا لوگ ہیں؟ ہمارے لیے یہ یوم سوگ نہیں، بلکہ استعمار کو سمجھنے کا ایک موقع تھا۔ یہ اپنی آزادی کے معنی سے مربوط رہنے کا ایک شاندار وقت تھا۔ یہ ایک ...

ملکہ الزبتھ، استعمار کا مکروہ چہرہ

رفیق اور فریق کون کہاں؟ وجود - منگل 23 اگست 2022

پاکستانی سیاست جس کشمکش سے گزر رہی ہے، وہ فلسفیانہ مطالعے اور مشاہدے کے لیے ایک تسلی بخش مقدمہ(کیس) ہے ۔ اگرچہ اس کے سماجی اثرات نہایت تباہ کن ہیں۔ مگر سماج اپنے ارتقاء کے بعض مراحل میں زندگی و موت کی اسی نوع کی کشمکش سے نبرد آزما ہوتا ہے۔ پاکستانی سیاست جتنی تقسیم آج ہے، پہلے کب...

رفیق اور فریق کون کہاں؟

حوادث جب کسی کو تاک کر چانٹا لگاتے ہیں وجود - پیر 14 فروری 2022

وزیراعظم عمران خان کی جانب سے وزراء کی فہرستِ کارکردگی ابھی ایک طرف رکھیں! تھیٹر کے متعلق کہا جاتا ہے کہ یہ سماجی روز مرہ اور زندگی کی سچائی آشکار کرنے کو سجایا جاتا ہے۔ مگر سیاسی تھیٹر جھوٹ کو سچ کے طور پر پیش کرنے کے لیے رچایا جاتا ہے۔ وزیراعظم عمران خان سوانگ بھرنے کے اب ماہر...

حوادث جب کسی کو تاک کر چانٹا لگاتے ہیں

خطابت روح کا آئینہ ہے !
(ماجرا۔۔۔محمد طاہر)
وجود - پیر 30 ستمبر 2019

کپتان حیرتوں کی حیرت ہے!!! وہ ایک بار پھر سرخروہوا۔ پاکستان کی تاریخ کا یہ ایک منفرد تجربہ ہے جب اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب میں کسی بھی سربراہ حکومت نے ایسا جاندار ، شاندار اور شاہکار خطاب کیا ہے۔ قبل ازمسیح کے پوبلیوس سائرس اچانک ذہن کے افق پر اُبھرتے ہیں، ایک آزاد شا...

خطابت روح کا آئینہ ہے ! <br>(ماجرا۔۔۔محمد طاہر)

خاتمہ وجود - جمعرات 29 ستمبر 2016

کیا بھارت سوویت یونین کی طرح بکھر جائے گا؟ خوشونت سنگھ ایسے دانشور بھارت کو زیادہ سمجھتے تھے۔ اُن کا جواب تھا : ہاں، بھارت باقی نہیں رہے گا۔ اُنہوں نے ایک کتاب ’’دی اینڈ آف انڈیا‘‘ تحریر کی، جس کے چمکتے الفاظ دامنِ توجہ کھینچتے ہیں۔ ’’بھارت ٹوٹا تو اس کا قصوروار پاکستان یا کو...

خاتمہ

مضامین
بہار کو آنے سے نہیں روک سکتے! وجود جمعه 19 جولائی 2024
بہار کو آنے سے نہیں روک سکتے!

نیلسن منڈیلا ۔قیدی سے صدر بننے تک کا سفر وجود جمعه 19 جولائی 2024
نیلسن منڈیلا ۔قیدی سے صدر بننے تک کا سفر

سیکرٹ سروس کے منصوبے خاک میں مل گئے ! وجود جمعه 19 جولائی 2024
سیکرٹ سروس کے منصوبے خاک میں مل گئے !

معرکۂ کرب و بلا جاری ہے!!! وجود بدھ 17 جولائی 2024
معرکۂ کرب و بلا جاری ہے!!!

عوام کی طاقت کے سامنے وجود بدھ 17 جولائی 2024
عوام کی طاقت کے سامنے

اشتہار

تجزیے
نریندر مودی کی نفرت انگیز سوچ وجود بدھ 01 مئی 2024
نریندر مودی کی نفرت انگیز سوچ

پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ وجود منگل 27 فروری 2024
پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ

ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے! وجود هفته 24 فروری 2024
ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے!

اشتہار

دین و تاریخ
امیر المومنین، خلیفہ ثانی، پیکر عدل و انصاف، مراد نبی حضرت سیدنا فاروق اعظم رضی اللہ عنہ… شخصیت و کردار کے آئینہ میں وجود پیر 08 جولائی 2024
امیر المومنین، خلیفہ ثانی، پیکر عدل و انصاف، مراد نبی حضرت سیدنا فاروق اعظم رضی اللہ عنہ… شخصیت و کردار کے آئینہ میں

رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت وجود بدھ 13 مارچ 2024
رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت

دین وعلم کا رشتہ وجود اتوار 18 فروری 2024
دین وعلم کا رشتہ
تہذیبی جنگ
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی وجود اتوار 19 نومبر 2023
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی

مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت

سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے وجود منگل 15 اگست 2023
سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے
بھارت
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا وجود پیر 11 دسمبر 2023
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا

بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی وجود پیر 11 دسمبر 2023
بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی

بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک وجود بدھ 22 نومبر 2023
بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک

راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات
افغانستان
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے وجود بدھ 11 اکتوبر 2023
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے

افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں وجود اتوار 08 اکتوبر 2023
افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں

طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا وجود بدھ 23 اگست 2023
طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا
شخصیات
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے وجود اتوار 04 فروری 2024
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے

عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے
ادبیات
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر وجود پیر 04 دسمبر 2023
سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر

مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر وجود پیر 25 ستمبر 2023
مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر