وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

سوال!

اتوار 19 جون 2016 سوال!

Hamza-Ali-Abbasi

سوال اُٹھانا جرم نہیں مگر یاوہ گوئی!سوال علم کی کلید ہے۔ انسانی علوم کی تمام گرہیں سوال کی انگلیوں سے کُھلتی ہیں۔ مگر سوال اُٹھانے والے کے لیے ایک میرٹ بھی مقرر ہے۔ سوال جاہل کا نہیں عالم کا ہوتا ہے۔ استاد نے فرمایا کہ سوال پہاڑ کی چوٹیوں کی طرح ہوتے ہیں اور جواب پہاڑ کے دامنوں کی طرح۔ اور پہاڑوں میں اختلاف اُس کے دامنوں کا اختلا ف ہے اُس کی چوٹیوں کا نہیں ۔ تمام پہاڑوں کی چوٹیاں یکساں ہوتی ہیں۔ سوال بھی انسانی ذہنوں میں چوٹیوں کی طرح یکساں چلے آتے ہیں۔ مگر اس کے الگ الگ زمانوں کے الگ الگ جوابات نے اُن علوم کے دامن کو وسیع اور مختلف بنائے رکھاجس پر آج کا انسان ناز بھی کرتا ہے اور نخرے بھی دکھاتا ہے۔ مگر جس طرح پچھلوں کے پاس ان ہی سوالوں کے الگ جواب تھے، ٹھیک اسی طرح اگلوں کے پاس بھی ان سوالوں کے جواب ہمارے پاس موجود جوابوں سے مختلف ہوں گے۔ اور وہ ہماری جہالت پر ترس اور اپنے جوابات پر اسی طرح ناز کررہے ہوں گے۔ بیچارے حمزہ علی عباسی کہیں کے!

کیا ریاست قادیانیوں کو کافر قرار دے سکتی ہے؟ جب کوئی یہ سوال اُٹھا تا ہے، تو اس سوال کو اُٹھانے کا بھی ایک تقاضا بنتا ہے۔ اس سوال کا پہلا تقاضا ہے کہ آپ یہ جانتے ہوں کہ ریاست کیا ہوتی ہے؟ دنیا بھر کی ریاستیں کیسے کام کرتی ہیں؟ اور ریاستوں نے اپنے اپنے مذاہب کے لیے کیسے کیسے دروازے اور کون کون سی کھڑکیاں کہاں کہاں کھول رکھی ہیں اور کہاں کہاں بند کررکھی ہیں؟ اس سوال کو اُٹھانے کے دوسرے تقاضے کے طور پر سائل کویہ بھی معلوم ہونا چاہئے کہ دراصل مرزائیت کیاہے؟ اس نفرت انگیز تحریک کا مالہ وماعلیہ کیا ہے؟ مسلمانوں کے اجتماعی شعور کے ساتھ اس کا کیا تعلق ہے؟ اور اس تعلق کی تاریخ کتنی پرانی اور کن نتائج کی حامل ہے؟ اس ایک سوال کو اُٹھانے کا ایک تقاضا یہ بھی ہے کہ سائل کو اچھی طرح معلوم ہو کہ معلوم شدہ ریاست اور معلوم شدہ مرزائیت کو کافر کہنے کا مطلب کیا ہے؟ اُنہیں کافر کیسے قرار دیاگیا تھا؟ اور اُنہیں کافر قرار دیتے وقت تک تاریخ کا سفر کیا رہاتھا؟ظاہر ہے کہ سوال کا حق مانگنے والا حمزہ علی عباسی سوال کے اس فرض کو پورا کرنے میں پوری طرح ناکام ہے۔ کیونکہ وہ اپنے حقِ سوال کے دفاع میں ایک نکتہ بھی ایسا نہیں اُٹھا سکا جو اُس کے بطور سائل کسی بھی تقاضے کو پورا کرنے کا کوئی معمولی اشارہ بھی دیتاہو۔ یہ تو اس سوال کے اُٹھانے سے متعلق ایک پہلو ہے۔ مگر اس کا ایک دوسرا پہلو بھی نہایت دلچسپ ہے۔

درحقیقت اپنی بنیاد و نہاد میں یہ سوال نہیں ایک موقف ہے۔ اور اس کی وضاحت خود مرزا ناصر کی طرف سے قومی اسمبلی کی کارروائی میں موجود ہے۔ اب لوگوں کے ذہنوں سے وہ واقعات محو ہو چکے ہیں جو تب پیش آتے رہے۔ ملک میں مذہب کی بنیاد پر تشدد کا آغاز مرزائیوں کی جانب سے ہواتھا۔ اُن برسوں میں مسلمانوں پر مرزائیوں نے باقاعدہ تشدد شروع کیا تھا۔واقعات کے بہاؤ میں 29 مئی 1974کا واقعہ مسلمانوں کی بیداری کامحرک ثابت ہوا۔ جب نشتر میڈیکل کالج کے تقریباً ایک سو مسلمان طلبا پر ربوہ میں ایک منظم منصوبہ بندی کے ساتھ تشدد کیا گیا۔یہ طلباء چناب ایکسپریس ملتان سے پشاور کے لیے بغرض سیروسیاحت روانہ ہوئے تھے۔اور اُنہیں چناب نگر اسٹیشن (تب ربوہ) میں واپسی پر نشانہ تشدد بنایا گیا تھا۔ جس پر پورام ملک سراپا احتجاج بن گیا۔ قومی اسمبلی میں یہ مسئلہ ایک طویل تاریخی پس منظر کے بعد پہنچا تھا۔قومی اسمبلی میں ایک پرائیوٹ بل مولانا شاہ احمد نورانی کی طرف سے پیش ہوا۔ جس پر 28معزز اراکین کے دستخط تھے۔ اُن دنوں قائد حزب اختلاف مفتی محمود تھے اور قائد ایوان ذوالفقار بھٹو تھے۔ بھٹو نے سانحہ ربوہ پر غور اور مسئلہ قادیانیت پر سفارشات مرتب کرنے کے لیے پوری قومی اسمبلی کو ایک خصوصی کمیٹی کا درجہ دے دیا۔ جس کے بعد وزیر قانون عبدالحفیظ پیرزادہ نے سرکاری طور پر بل پیش کیا تھا۔ اُس وقت قومی اسمبلی کے اسپیکر صاحبزادہ فاروق علی خان تھے ، جن کی زیرصدارت قومی اسمبلی میں قادیانی مسئلے پر بحث کا آغاز ہوا تھا۔ اور اس میں مرزا ناصر کو اپنا موقف پیش کرنے اور سوال وجواب کا پورا پورا موقع دیا گیا تھا۔ 5؍اگست سے 11؍ اگست تک اور20؍ اگست سے 21؍ اگست 1974ء تک یہ بحث جاری رہی۔ پھر 27؍ اگست سے 28؍ اگست تک دو روز لاہوری گروپ کے صدر الدین ، عبدالمنان عمر اورمسعود بیگ سے بحث اور جرح میں صرف ہوئے۔ اس طرح کل گیارہ روز تک سوال وجواب پر محیط یہ کارروائی جاری رہی۔ بعد ازاں اٹارنی جنرل یحییٰ بختیار نے 5؍ ستمبر سے 6؍ ستمبر تک اس پوری بحث کو سمیٹا۔

کیا حمزہ علی عباسی اور جناب جاوید احمد غامدی کا مسئلہ یکساں ہے؟ دونوں میں علم ومقام کے اعتبار سے زمین آسمان کا فرق ہے۔ مگر دونوں کا مشترکہ مسئلہ شاید ریٹنگ ہے۔ مسلمانوں کا سواد اعظم جاوید احمد غامدی کے ’’شکوہ علم‘‘ کے باوجود اُنہیں قبول نہیں کررہا۔ اور حمزہ علی عباسی کے ٹی وی پروگرام کو کوئی پزیرائی نہیں مل رہی۔ مسلمانوں کا اجتماعی شعور سرکار دوعالمﷺ کی دعا کی پہرے داری میں رہتا ہے ۔ کھوٹا موقف کتنے ہی علمی وجاہت میں ملفوف ہو، کتنی ہی چکاچوندی میں پیش کیا جائے، مسلمانوں کا اجتماعی شعور اُسے اُگال دان کے حوالے کردیتا ہے۔ جاوید احمد غامدی جہاد سمیت باقی سارے حقوق ریاست کو دیتے ہیں،چاہے وہ کتنی ہی بدعنوان ہو، چاہے وہ اس قابل ہی کیوں نہ پہنچ گئی ہو کہ اُس کے خلاف خروج فرض ہو گیا ہو،مگر وہ کسی کو غیر مسلم کہنے کا حق ریاست کو دینے کے لیے تیار نہیں۔اس موقف کے پیچھے وہ اُن حقائق اور تاریخی پس منظر کو پس پشت ڈال دیتے ہیں جو مرزائیوں کو غیر مسلم قراردیتے ہوئے قومی اسمبلی میں زیربحث آئے تھے۔ جس میں یہ سوال بھی موجود تھا کہ کیا ریاست کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ کسی کو غیر مسلم قرار دے سکے؟حیرت انگیز طور پر یہ موقف جاوید احمد غامدی اور حمزہ علی عباسی سے پہلے مرزا ناصر نے اختیار کیا تھا۔

مرزا ناصر سے قومی اسمبلی کی کارروائی کے دوران میں اٹارنی جنرل نے ایک سوال پوچھا تھا۔

’’اٹارنی جنرل:اچھا آپ نے 21جون کے خطبہ جمعہ میں کہا کہ ہر شخص اپنے مذہب کی صراحت کرنے میں آزاد ہے۔ کوئی طاقت کوئی حکومت اس حق کے استعمال میں دخل نہیں دے سکتی۔ یہی آئین کی دفعہ بیس کا تقاضا ہے۔ یہ آپ نے کہا ہے؟

مرزا ناصر:جی میری تقریر ہے، مذہبی آزادی ہے۔ دفعہ 20کے تحت کوئی مداخلت نہیں کر سکتا۔

اٹارنی جنرل: اسمبلی یا حکومت بھی؟

مرزا ناصر: کوئی بھی۔

اٹارنی جنرل: ایک آدمی جھوٹ بولتا ہے جان بچانے کے لیے، کیا اسے بھی دفعہ 20اجازت دیتی ہے کہ وہ جھوٹ بولتا رہے، اس
لیے کہ مذہبی آزادی ہے؟

مرزا ناصر: آپ کو کیسے معلوم ہے کہ وہ جھوٹ بولتا ہے؟

اٹارنی جنرل: مثلاً میں کالج کا پرنسپل ہوں۔ اقلیت کے کوٹہ سے سیٹ لینے کے لیے ایک مسلمان خود کو غیر مسلم ظاہر کرتا ہے۔اب آپ کے نزدیک دفعہ 20 کے تحت ہر شخص کو اپنے مذہب کے اظہار کی اجازت ہے لہذا وہ جھوٹ بولے تو میں کوئی کارروائی نہ کروں۔ اچھا آپ سے پوچھتا ہوں کہ آپ نے مذہبی آزادی کے حوالہ سے دستور کے کچھ حصے اپنی تقریر میں پڑھے ہیں۔ میں یہاں مودبانہ طریقہ سے آپ سے پوچھتا ہوں جناب کہ کیا آپ نے پوری دفعہ کو بیان کیا ہے یا اس دفعہ کا کچھ حصہ آپ بھول گیے ہیں؟

مرزا ناصر: میں نے اس کا وہ ابتدائی حصہ چھوڑ دیا ہے جو ہر ذہن میں موجود ہے۔

اٹارنی جنرل: شکریہ، وہ حصہ؟

مرزا ناصر: قانون اور اصول اخلاق کی شرط پر۔

اٹارنی جنرل: جی ہاں، مطلب یہ ہے کہ مذہب کی آزادی مشروط ہے قانون ، اخلاقیات اور امن عامہ پر۔ یہ بات تسلیم ہے ناں؟

مرزا ناصر: ظاہر ہے، یہ ہے۔

اٹارنی جنرل: اب ایک آدمی غلط بیانی سے اپنا مذہب غلط ظاہر کرتا ہے، غلط مقاصد کی برآری کے لیے، تو اب اس پر پابندی لگائی جاسکتی ہے یا نہ؟

مرزاناصر:کسی کو حق نہیں کہ مذہب کی آزادی پر پابندی لگائے۔

چیئرمین: دیکھیں سوال کے مطابق جواب آنا چاہیے۔ چاہے گواہ اس سے متفق ہو یا نہ ہو۔ مگر جواب اور سوال مطابق ہونا چاہیے۔ وکیل صاحب کے سوال کا جواب دیں۔

اٹارنی جنرل: سر متفق نہ ہونے کا سوال نہیں، دنیا میں ہزاروں دھوکے باز پھرتے ہیں۔ اب وہ غلط بیانی کریں مذہب کے بارے میں تو پابندی لگائیں گے یا نہ؟

مرزاناصر: دغاباز کی ملامت کرنی چاہیے۔

چیئر مین: سوال کا جواب آنا چاہیے۔ جواب سوال کے مطابق نہیں۔

اٹارنی جنرل: بات اظہار کی ہے، ایک شخص عمداً جھوٹا بیان دیتا ہے اپنے مادی نفع کے لیے، اب جناب گواہ کی اس بارے میں رائے کیا ہے۔ جناب اگر آپ جواب نہ دینا چاہیں تو آپ کی مرضی۔
مرزا ناصر: میں ایسے آدمی کو پسندیدہ نہیں سمجھتا۔
اٹارنی جنرل: مگر آپ سمجھتے ہیں کہ حکومت پابندی۔۔۔۔۔؟
مرزا ناصر: میں مذمت کرتا ہوں اس نوجوان کی جو دستاویزات میں جعل سازی کرتاہے۔
چیئرمین: چھوڑیے(اصل سوال کا جواب گول کررہے ہیں۔ )
(کارروائی میں پندرہ منٹ کا وقفہ ہوتا ہے۔پھر جب کارروائی شروع ہوتی ہے تو بحث اسی نکتے پر مرکوز ہوتی ہے کہ ایک شخص غلط بیانی کا مرتکب ہو تو کیا اٹھارٹی کو اس میں مداخلت کا حق ہے۔ مثلاایک یہودی خود کو مسلمان قرار دے کر سعودی عرب کے مقدس مقامات میں داخل ہوجائے تو کیا ریاست اُسے پکڑ سکے گی،جبکہ اُس نے غلط ڈیکلریشن جمع کرایا۔ کیا یہ اُس کی مذہبی آزادی کے ذمرے میں لیا جائے گا۔ اٹارنی جنرل نے یہ نکتہ کئی دیگر مثالوں کے ساتھ مزید واضح کیااور ثابت کیا کہ مذہبی آزادی کچھ حدود وقیود کے ساتھ مشروط ہے۔ جیسے آئین میں ہر شخص کو تجارت کا حق حاصل ہے مگر وہ اس حق کو چرس یا اسمگلنگ کے حق کے طور پر استعمال نہیں کر سکتا۔ اس بحث کے نکتہ عروج پر یہ ثابت کیا جاتا ہے کہ تمام بنیادی حقوق دراصل کچھ پابندیوں سے مشروط ہیں اور پابندیوں کو توڑنے والا شخص کسی اٹھارٹی یا عدالت کی مداخلت کا سزاوار ہے۔ مرزا ناصر مذہبی آزادی میں مداخلت یا پھر ریاست کی جانب سے کسی کو غیر مسلم قرار دینے کے جس حق کو دینے کے لیے تیار نہیں تھا۔ وہ ان سوالوں کا کوئی بھی تسلی بخش جواب دینے میں ناکام رہا۔تب مرزا ناصر تو نہ دے سکا ، اب شاید جاوید احمد غامدی یا حمزہ علی عباسی اس کاجواب دے سکیں۔قومی اسمبلی میں اٹارنی جنرل اور مرزا ناصر کے یہ دلچسپ سوال وجواب اس موضوع سے دلچسپی رکھنے والے ہر شخص کوضرور پڑھنے چاہئے۔)
حمزہ علی عباسی اور جاوید احمد غامدی جن نوجوان ذہنوں کو پراگندہ کررہے ہیں ، اُنہیں شاید یہ معلوم نہ ہو کہ قومی اسمبلی کی اس کارروائی میں دراصل مرزائیوں کو غیر مسلم قرار دینے سے پہلے ان مرزائیوں پر یہ ثابت کیا گیا تھا کہ وہ مسلمانوں کو غیر مسلم قرار دیتے ہیں۔ یہی وہ نکتہ تھا جسے سن کر ذوالفقار بھٹو کو اشتعال آیا تھا۔
اٹارنی جنرل نے دلچسپ پیرایئے میں یہ بحث چھیڑی کہ وہ جو مسلمان احمدیوں(مرزائیوں ) کو نہیں مانتے اُنہیں خود کیا سمجھتے ہیں؟ تو مرزا ناصر کا جواب تھا کہ ـ’’کافر‘‘ ۔ گویا ریاست کو کافر قراردینے کا حق نہ دینے والا یہ حق اپنے پاس ضرور رکھنا چاہتا تھا۔اس مکالمے کا ایک دلچسپ حصہ پیش نظر رہنا چاہئے۔
اٹارنی جنرل:شرعی اور غیر شرعی نبی میں کیا فرق ہے؟
مرزا ناصر:شرعی نبی وہ ہے جس پر شریعت نازل ہو، غیر شرعی جو پہلے کی شریعت پر عمل کرائے۔
اٹارنی جنرل: غیر شرعی کا منکر کافر ہوگایا نہیں؟
مرزاناصر:کافر کا معنی انکار کرنے والا،تو وہ ہوگا۔
اٹارنی جنرل: مرزا صاحب غیر شرعی(نبی) تھے تو ان کا منکر کافر ہوگا؟
مرزاناصر: منکر ہوگایعنی کافر، لغوی۔
یہ بحث مزید کچھ سوالوں کے ساتھ بالکل واضح کردی جاتی ہے کہ مرزائی دراصل مرزا غلام احمد قادیانی کو نبی نہ ماننے والوں کو کافر سمجھتے ہیں۔ اس ضمن میں اٹارنی جنرل سانحہ ربوہ پر قادیانیوں کی انگلینڈ میں موجود جماعت کی ایک قرارداد بھی پیش کرتے ہیں۔ جس میں کہا جاتا ہے کہ ’’چونکہ پاکستان کے طول وعرض میں احمدی مسلمانوں پر غیر احمدی پاکستانیوں نے ظلم وتعدی توڑ دی ہے۔‘‘
اس قرارداد کے الفاظ سے اٹارنی جنرل وضاحت چاہتے ہیں کہ آپ دوسرے مسلمانوں کو ’’غیر احمدی پاکستانی‘‘ کہتے ہیں۔ اور خود کو احمدی مسلمان۔یہ خود بحث کا بہت ہی دلچسپ موڑ ہے۔
یہاں صرف ایک نکتہ پیش کرنا مقصود تھا کہ حمزہ علی عباسی جسے سوال کہہ رہے ہیں ، وہ دراصل سوال نہیں مرزا ناصر کا موقف تھا۔ اور وہ جس موقف نما سوال کا جواب چاہتے ہیں، اٹارنی جنرل یحییٰ بختیار نے اُس کا نہایت عمدہ دلائل کے ساتھ قومی اسمبلی کی کمیٹی میں نہ صرف جواب دیا تھا بلکہ مرزا ناصر سے تسلیم کرایا تھا کہ اس میں ریاست کے مداخلت کا حق کیسے اور کیوں بنتا ہے۔اس تاریخی فیصلے تک مرزائیوں کی سرگرمیوں کی ایک مسلسل چلی آتی تاریخ ہے۔ جس کے سامنے مسلم شعور اپنے پورے وفور کے ساتھ کھڑا رہا ۔ یہ نکتہ پھر کبھی!


متعلقہ خبریں


خطابت روح کا آئینہ ہے !
(ماجرا۔۔۔محمد طاہر)
وجود - پیر 30 ستمبر 2019

کپتان حیرتوں کی حیرت ہے!!! وہ ایک بار پھر سرخروہوا۔ پاکستان کی تاریخ کا یہ ایک منفرد تجربہ ہے جب اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب میں کسی بھی سربراہ حکومت نے ایسا جاندار ، شاندار اور شاہکار خطاب کیا ہے۔ قبل ازمسیح کے پوبلیوس سائرس اچانک ذہن کے افق پر اُبھرتے ہیں، ایک آزاد شامی جنہیں غلام بناکر رومن اٹلی میں پہنچا دیا گیا۔ اپنی حس و صلاحیت سے آقانے اُنہیں تعلیم آشنا ہونے دیااور پھر وہ اپنے غیر معمولی ذہن سے لاطینی مصنف بن کر اُبھرا۔خوبصورت فقروں، محاوروں اور ضرب الامثال...

خطابت روح کا آئینہ ہے ! <br>(ماجرا۔۔۔محمد طاہر)

خاتمہ محمد طاہر - جمعرات 29 ستمبر 2016

کیا بھارت سوویت یونین کی طرح بکھر جائے گا؟ خوشونت سنگھ ایسے دانشور بھارت کو زیادہ سمجھتے تھے۔ اُن کا جواب تھا : ہاں، بھارت باقی نہیں رہے گا۔ اُنہوں نے ایک کتاب ’’دی اینڈ آف انڈیا‘‘ تحریر کی، جس کے چمکتے الفاظ دامنِ توجہ کھینچتے ہیں۔ ’’بھارت ٹوٹا تو اس کا قصوروار پاکستان یا کوئی اور بیرونی قوت نہیں، بلکہ خود جنونی ہندو ہوں گے۔ ‘‘ بھارتی آبادی کا اسی فیصد ہندو ہیں جن میں ہر گزرتے دن مذہبی جنون بڑھتا جارہا ہے۔ ڈاکٹر راجندر پرشاد بارہ برس کی سب سے طویل مدت گزارنے والے بھار...

خاتمہ

جوتے کا سائز محمد طاہر - منگل 13 ستمبر 2016

[caption id="attachment_40669" align="aligncenter" width="640"] رابرٹ والپول[/caption] وزیراعظم نوازشریف کی صورت میں پاکستان کو ایک ایسا انمول تحفہ ملا ہے، جس کی مثال ماضی میں تو کیا ملے گی، مستقبل میں بھی ملنا دشوار ہوگی۔ اُنہوں نے اپنے اِرد گِرد ایک ایسی دنیا تخلیق کر لی ہے جس میں آپ اُن کی تعریف کے سوا کچھ اور کر ہی نہیں سکتے!اگر حالات ایسے ہی رہے، اور تارکول کی سڑکوں کے ساتھ اقتصادی راہداری کی معاشی فضیلتوں کا جاپ جاری رہاتو لگتا ہے کہ وہ سررابرٹ والپول کا ریکارڈ ...

جوتے کا سائز

نوگیارہ محمد طاہر - اتوار 11 ستمبر 2016

ہم وہ دن پیچھے چھوڑ آئے،جو دراصل ہمارے ساتھ چمٹ چکا ہے۔ ہماری تاریخ وتہذیب کے لئے سب سے بڑا امتحان بن چکا ہے اور قومی حیات سے لے کر ہمارے شرعی شب وروز پر مکمل حاوی ہو چکا ہے۔یہ مسلم ذہن کے ملی شعور کی سب سے بڑی امتحان گاہ کا خطرناک ترین دن ہے۔ امریکامیں نوگیارہ سے قبل جاپان کی طرف سے7دسمبر1941ء کو پرل ہاربر پر ایک حملہ ہوا تھا۔ تب امریکی صدر فرینکلن روز ویلٹ تھا، مگر تقریباً چھ دہائیوں کے بعد جب امریکی تجارتی سرگرمیوں کے مرکز ورلڈ ٹریڈ ٹاور اور دفاعی مرکز پینٹاگون کو نشانا...

نوگیارہ

دائرے محمد طاہر - جمعه 02 ستمبر 2016

وقت کے سرکش گھوڑے کی لگامیں ٹوٹی جاتی ہیں۔ کوئی دن جائے گا کہ تاریخ اپنا فیصلہ صادر کرے گی۔ اجتماعی حیات کو بدعنوانوں کے اس ٹولے کے حوالے نہیں کیا جاسکتا جو اپنا جواز جمہوریت سے نکالتے ہیں مگر جمہوریت کے کسی آدرش سے تو کیا علاقہ رکھتے ، اس کے اپنے بدعنوان طریقۂ اظہار سے بھی کوئی مناسبت نہیں رکھتے۔ الامان والحفیظ! تاریخ میں حکمرانوں کے ایسے طرز ہائے فکر کم کم ہی نظر آتے ہیں۔ جو اپنی بدعنوانیوں کے جواز میں ریاست تک کو برباد کرنے پر تُل جائیں۔ پاناما لیکس کوئی چھوٹا معاملہ نہیں۔...

دائرے

آزادی سے بیگانگی محمد طاہر - اتوار 14 اگست 2016

تاریخ پر اب تاریخ گزرتی ہے مگر کبھی تاریخ کے اوراق کھنگالے جائیں تو ایک رائے بہادر یار جنگ کی ملتی ہے، جسے اُنہوں نے کسی اورسے نہیں خود قائداعظم محمد علی جناح کے سامنے ظاہر کیا تھا:’’پاکستان کو حاصل کرنا اتنامشکل نہیں جتنا پاکستان کو پاکستان بنانا مشکل ہو گا۔" اب دہائیاں بیت گئیں اور ایک آزاد ملک کا مطلب کیا ہوتا ہے اس کا وفور بھی کہیں غتربود ہو گیا۔ گستاخی معاف کیجئے گا، 14؍ اگست اب کچھ اور نہیں، بس عادتوں کی ایک ورزش ہے۔یومِ آزادی کے ہر شہری پر دو حق ہیں۔ ایک یہ کہ وہ اس...

آزادی سے بیگانگی

دہشت ناک رویے محمد طاہر - بدھ 10 اگست 2016

چرچل نے کہا تھا: رویہ بظاہر ایک معمولی چیز ہے مگر یہ ایک بڑا فرق پیدا کرتا ہے۔ ‘‘دہشت گردی کے متعلق ہمارا رویہ کیاہے؟ اگر اس ایک نکتے پر ہی غور کر لیاجائے تو ہماری قومی نفسیات ، انفرادی عادات اور اجتماعی حرکیات کا پورا ماجرا سامنے آجاتا ہے۔ پاکستان دہشت گردی کا شکار آج سے تو نہیں ہے۔1971 میں سقوط ڈھاکا کے بعد یہ طے ہو گیا تھا کہ اب پاکستان اور بھارت ایک دوسرے سے روایتی جنگوں میں نہیں بلکہ غیر روایتی میدانوں میں مقابل ہوں گے۔ غیر واضح چہروں اور نامعلوم ہاتھوں کی لڑائی کا...

دہشت ناک رویے

جنت سے بچوں کا اغوا محمد طاہر - جمعرات 04 اگست 2016

دستر خوانی قبیلے کی یہ خواہش ہے کہ عام لوگ اس نظام کی حفاظت کے لیے ترک عوام کی طرح قربانی دیں۔ اُس نظام کی حفاظت کے لیے جس کے وہ دراصل فیض یافتہ ہیں مگر عام لوگ اسے جمہوریت کے نام پر بچائیں۔ حریتِ فکر وہ سرشار کرنے والا جذبہ ہے جسے انسان اپنے شرف کے ساتھ منسلک کرکے دیکھتا ہے۔ سرمائے کے منتر پر چلنے والے ذرائع ابلاغ نے جمہوریت کے دھوکے کو اس شرف کا محافظ نظام باور کرادیا ہے۔ دھوکا ہے! دھوکا! صرف دھوکا!!!یہ سرمایہ داروں، دولت مند میڈیا سیٹھوں اور شریفوں کی جمہوریت ہے، اور کسی ک...

جنت سے بچوں کا اغوا

وجود ڈاٹ کام پر کیا بیتی؟ محمد طاہر - منگل 02 اگست 2016

یادش بخیر !میں اُن اوراق کو پلٹ رہا ہوں۔ جو کبھی ایک کتاب کا مسودہ تھے۔ کتاب چھپ نہ سکی، کیونکہ میر خلیل الرحمان بہت طاقتور تھے اور پاکستان کے کسی پبلشنگ ہاؤس میں یہ ہمت نہ تھی کہ وہ اُن کے حکم کی سرتابی کرتے۔ کتاب کا مسودہ دربدر ہوتا رہا۔ یہاں تک کہ وہ حُسن اتفاق سے اس خاکسار کے ہاتھوں میں ایک امانت کے طور پر پہنچایا گیا۔ ابھی اس چشم کشا اور ہوشربا کتاب کے چھپنے کا وقت نہیں آیا۔ جس میں جنگ کے آغاز سے اس ادارے کے جرائم کی پوری کہانی جمع کردی گئی ہے۔ مسودے کا مطالعہ کیا جائے ت...

وجود ڈاٹ کام پر کیا بیتی؟

ناکام بغاوت محمد طاہر - جمعه 29 جولائی 2016

یہ ایک اوسط درجے سے بھی کم ذہانت کا مظاہرہ ہے کہ یہ سوال بھی اُٹھایا جائے کہ بغاوت تو فوج نے کی اور سزا ججوں کو کیوں دی جارہی ہے۔ اول تو کسی بھی بغاوت سے پہلے اُس کے معمار اسی پر غور کرتے ہیں کہ بغاوت کے بعد خود کو قانونی شکنجے سے بچانے اور آئینی خرخرے سے سنبھالنے کا طریقہ کیا ہوگا؟ اور ظاہر ہے کہ یہ طریقہ عدلیہ سے ہی نکالا جاتا ہے۔ مگر ترکی میں بغاوت سے پہلے کے حالات میں اس سے زیادہ ہی کچھ ہوا۔ جب رجب طیب اردوان کو روسی صدر کے خصوصی نمائندے الیگزینڈر ڈیوگِن (Aleksandar D...

ناکام بغاوت

ترکی کی قبل از وقت بغاوت محمد طاہر - پیر 25 جولائی 2016

امریکا کی کامیابی یہ نہیں کہ وہ دنیا کے حالات پر گرفت رکھتا ہے بلکہ اس سے بڑھ کر یہ ہے کہ وہ ان حالات کی جس طرح چاہے تفہیم پیدا کرانے میں کامیاب رہتا ہے۔ ترک بغاوت پر جتنے پراگندہ خیال و حال پاکستان میں پیدا ہوئے، اُتنے خود ترکی میں بھی دکھائی نہیں پڑتے۔ مگر امریکا کے لیے تقدیر نے ترکی میں ایک الگ پیغام محفوظ رکھا تھا۔ مادرچہ خیالیم و فلک درچہ خیال است (ہم کس خیال میں ہیں اور آسمان کیا سوچ رہا ہے) پاکستان میں طرح طرح کے لوگ بھانت بھانت کی بولیاں بولنے میں مصروف ہیں۔ ایک ...

ترکی کی قبل از وقت بغاوت

مسخرے محمد طاہر - بدھ 22 جون 2016

یہ ہونا تھا! پاکستان کو اس کی تاریخ اور تہذیب سے کاٹنے کے ایک طویل اور مسلسل چلے آتے منصوبے میں ذرائع ابلاغ کا کردار کلیدی ہے۔ اس لیے یہ کیسے ہو سکتا تھا کہ پیمرا حمزہ علی عباسی پر پابندی کو مستقل برقرار رکھ پاتا۔ درحقیقت اس نوع کے اقدامات کا زیادہ گہرائی سے جائزہ لینے کی ضرورت ہوتی ہے۔ کیونکہ یہ اقدام عوامی دباؤ کو وقتی طور پر کافور کرنے میں معاون ہوتے ہیں۔ پیمرا کی طرف سے حمزہ علی عباسی پرعائد وقتی پابندی نے اُس دباؤ کو خاصی حد تک کم کر دیا ، جو عوام میں حمزہ علی عباسی کے خ...

مسخرے