وجود

... loading ...

وجود
وجود

غازی علم الدین شہید ۔ شہیدِ پاک طینت

هفته 31 اکتوبر 2015 غازی علم الدین شہید ۔ شہیدِ پاک طینت

anwar haqi

جیل یا عقوبت خانے کا تصور یا تاثر کبھی خوشگوار نہیں ہوتا۔۔۔ پھانسی گھاٹ تو ہوتا ہی خوف اور دہشت کی علامت ہے۔انسان کو اپنا سکون اور جان بہت عزیز ہوتی ہے۔ اس لئے جیل جانا کسی کو بھی پسندیا قبول نہیں ہوتا۔۔ 31 ؍ اکتوبر غازی علم دین شہید کی برسی کے موقع پر سینٹرل جیل میانوالی کے دورے کی خواہش تھی ۔ خوش قسمتی سے ایک روز پہلے مجھے یہ دعوت موصول ہوئی کہ کل سینٹرل جیل میں غازی علم دین شہیدؒ کے لئے قرآن خوانی کا اہتمام ہے۔ دعوت کو سعادت سمجھتے ہوئے خوشی خوشی جیل پہنچ گئے۔پنجاب کی اس معروف جیل کا ماحول بدلا بدلا اور ہر قسم کے خوف سے آزاد محسوس ہو رہا تھا۔ جیل کے احاطے میں مختلف قسم کی مشقتوں میں مصروف قیدی تھے یا ڈیوٹی پر مامور جیل کا عملہ ۔۔۔ ہر کوئی صاف سُتھرا اور دُھلا دُھلا سا لگ رہا تھا۔۔۔۔۔ جو بھی ملتا یہی سوال کرتا کہ آپ غازی علم دین شہید کے لئے ہونے والی قرآن خوانی میں شرکت کے لئے آئے ہیں۔ ہمارا جواب اثبات میں پا کر سوال کرنے والا عجیب سی خوشی محسوس کرتا اور ایسا محسوس ہوتا تھاکہ شاید ہماری جیل آمد کو وہ اپنی کسی خوشی میں شرکت سمجھ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ شاید صورتحال بھی ایسی ہی تھی۔۔۔۔

یہ سب کچھ سرشاری کے احساس کو استقرار عطا کر رہا تھا۔ایسے میں یہ سوچ مسلسل میرے دماغ میں رہی کہ غازی علم دین شہید ؒ کا عرس تو لاہور کے میانی صاحب قبرستان میں منایا جا رہا ہے۔ رحمتوں کا نزول مرقدِ پاک طینت سے سینکڑوں میل دور بھی کس قدر تابانیاں بکھیر رہا ہے۔ جیل کے قیدیوں اور عملے نے بتایا کہ صبح سویرے انہوں نے پھانسی گھاٹ (جو 86 سال قبل غازی علم دین کی شہادت گاہ بنا تھا )پر شہید کے لئے فاتحہ خوانی اور بلندی درجات کی دُعا بھی کی ہے۔ دن بھر قیدی اُس ’’کوٹھری ‘‘(Death Cell ) میں تلاوتِ کلام پاک میں مصروف رہے، جہاں شہادت سے قبل غازی علم دین شہید نے اپنی زندگی کے آخری ایام گذارے تھے۔ وہ پھانسی کی اس کوٹھری میں سترہ دن (14 اکتوبر1929 ء سے 31 اکتوبر1929 ء) قید رہے۔۔۔جیل حکام نے کئی سال پہلے اس ڈیتھ سیل کو محفوظ قرار دیا تھا۔ لیکن موجودہ سپریٹنڈنٹ مرزا ساجد بیگ نے اس کوٹھڑی میں قرآن مجید اور جائے نماز رکھوا دیا ہے۔ جیل ذرائع کے مطابق قیدیوں اور حوالاتیوں کی خواہش ہوتی ہے کہ وہ یہاں بیٹھ کر تلاوت کریں اور نوافل ادا کریں۔ اور اکثر قیدی یہاں آکر آقائے نامدار تاجدار انبیاء رحمت العالمین ﷺ پر درود و سلام پڑھتے ہیں۔۔۔۔۔۔ یوں تقریباً ہر روز ہی سینٹرل جیل میانوالی کے اس گوشے میں درودو سلام کی بہار رہتی ہے۔

تاریخِ انسانی میں شہیدانِ ناموسِ رسالت ﷺ کے روشن ، درخشاں، اُجلے اور سنہری دبستان کا مطالعہ کریں تو شاتمانِ رسول کے ان جگر دار دشمنوں ۔۔۔۔۔۔ استقامت کے تراشے ہوئے پیکروں۔۔۔ ایمان کی تجسیم کے معطر و برگزیدہ ناموں کی فہرست میں غازی علم دین شہید کا نام ضو فشانیاں بکھیرتا نظر آتا ہے۔۔غازی علم دین شہید نے ایمان کی پختگی اور جذبے کی ثقاہت کو دار کی کسوٹی پر کس کے دیکھا۔ملعون راجپال کی بہیمانہ حرکت کی خبر سن کر غازی علم دین شہید کا رُواں رُواں سر کشیدہ نظر آتا تھا۔۔۔انہوں نے جس انداز میں جنابِ رسالت مآب ﷺ سے اپنی محبت اور والہانہ عقیدت کا ثبوت دیا اس سے شماتت کی ہر جسارت سر نگوں ہو ئی اور حفاظتِ حرمت کی کوشش سر بلند ٹہری ۔۔۔۔ آج غازی علم دین شہیدؒ کی حیثیت اور مقام کے سامنے دنیا کی عظمتیں سر نگوں بیٹھی ہیں اور عقبیٰ کی نعمتیں خیر مقدم کے لئے سروقد کھڑی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مرحبا ۔۔۔ اے شہیدِ پاک طینت را ۔۔۔۔۔۔۔۔ مرحبا ۔۔

سینٹرل جیل میانوالی میں غازی علم دین شہید ؒ کے یوم ِ شہادت کے موقع پر جو معطر ماحول پیدا ہوا ۔ اس کی مہک دور تک محسوس کی جائے گی۔جو ایک طرف اسلام اور پیغمبر اسلامﷺ سے دلبستگی رکھنے والوں کو مسحور کرے گی تو دوسری طرف’’ سفید مغرب ‘‘ اور ’’ سُرخ مشرق‘‘کو تشویش میں مبتلا کر دے گی۔ایسا کیوں ہوگا ۔۔۔؟ میرے نزدیک یہ سوال بھی پُرانا اور اس کا جواب بھی پُرانا۔۔۔۔کیونکہ ہمارے ہاں ایسے دانشوروں کی کمی نہیں ہے جو تناقضِ فکر میں مبتلا ہیں۔ دوسال پہلے کی بات ہے کہ عین اُس وقت جب لاہور کے قبرستان میانی صاحب سمیت ملک کے طول و عرض میں مسلمان غازی علم الدین شہید ؒکا یومِ شہادت منانے میں مصروف تھے۔ تو پاکستان کے بنیاد پرست حکمران جنرل ضیاء الحق مرحوم کی نمازِ جنازہ کی کوریج کرتے ہوئے غمناک انداز اختیارکرنے والے حسین حقانی کا ایک انٹرویو بین الاقوامی خبر رساں ایجنسی ’’رائٹر ‘‘ نے جاری کیا تھا جس میں امریکامیں پاکستان کے اس سابق سفیر کا کہنا تھا۔’’ جہادی سوچ ختم کئے بغیر پاکستان اور خطے میں امن قائم نہیں ہو سکتا۔پاکستان اسی کی دہائی میں جہاد کے لئے تربیت اور اسلحہ کا گڑھ رہا ہے۔ اس کے بعد پاکستان نے اس کا رُخ بھارت باالخصوص کشمیر کی طرف موڑ دیا۔پاکستان میں کسی بھی حکومت کے لئے جہادیوں کا بوریا بستر لپیٹنا مشکل کام ہے۔‘‘

حسین حقانی جنرل ضیاء الحق مرحوم کے اُسی دور میں سرکاری ذریعہ ابلاغ ’’ پی ٹی وی ‘‘ کے دسترخوان سے نعمتیں سمیٹتے رہے ہیں جس دور کو وہ پاکستان میں جہادی تربیت اور اسلحہ کا گڑھ قرار دینے کا دور قرار دے رہے ہیں۔ حسین حقانی گزشتہ دورِ حکومت میں امریکا میں پاکستان کے سفیرتھے تو ان کی حرکات و سکنات ایسا ظاہر کرتی تھیں کہ پاکستان کے خرچے پر وہ امریکا میں امریکا کے ہی سفیر ہیں۔وہ اپنی نئی کتاب میں بھی پاکستانی حکومت پر عسکری تنظیموں کی براہ راست امداد کا الزام بھی عائد کر چکے ہیں۔۔ ’’بوسٹن یونیورسٹی ‘‘ میں بین الاقوامی تعلقات کے پروفیسر کی حیثیت سے بھی وہ اسی قسم کے خیالات کا اظہار کرتے رہے۔انہوں نے اپنے آقاؤں کو مسلمانوں سے ’’ روحِ محمد ﷺ‘‘ نکال دینے کی پرانی استعماری تجویز کا بار باراعادہ کیا ہے۔۔۔ امریکی حکومت سے ڈالروں کے عوض اپنی غیرت او ر حمیت کا سودا کرنے والے حسین حقانی کو پتہ ہی نہیں کہ حقیقی مسلمان حق کے لئے اپنا سب کچھ لُٹا دیتا ہے۔مال و دولت ، رشتے ناطے،دنیاوی وقاراور اپنی زندگی سے وابستگی سب کچھ عشقِ خدا میں نثار کر دیتا ہے ۔ قرآن ِ کریم میں ارشاد ہے کہ ’’ یقینا اﷲ نے مسلمانوں کے جان ومال جنت کے عوض خرید لئے ‘‘اب کوئی چیز مسلمانوں کی اپنی نہیں رہی۔وہ سب کچھ بیچ چُکے ہیں ۔اور ان کے بدلے میں خُدا نے انہیں جنت عطا کی ہے۔اور اپنی رضامندی سے انہیں نواز دیا اور یہی ایک مسلمان کی زندگی کا مقصدِ حقیقی بھی ہے۔

دن بھر قیدی اُس ’’کوٹھری ‘‘(Death Cell ) میں تلاوتِ کلام پاک میں مصروف رہے، جہاں شہادت سے قبل غازی علم دین شہید نے اپنی زندگی کے آخری ایام گذارے تھے۔

اسلام برداشت ، امن و آشتی کا دین ہے۔ مسلمانوں کی جانب سے کبھی بھی قدامت پسندی کا مظاہرہ نہیں کیا گیا۔ جبکہ انتہاپسندی کی تمام شکلیں بشمول مذہبی انتہا پسندی امریکاکی جانب سے اختیار کی گئی ہیں۔ نہ جانے مذہبی انتہا پسندی کو مسلمانوں کے ساتھ منسوب و محدود کرنے والوں کوامریکا کی مذہبی انتہا پسندی کیوں نظر نہیں آتی۔یہ لوگ اس حقیقت سے آشناکیوں نہیں ہوتے کہ امریکا میں’’رینڈ کارپوریشن ‘‘کے نام سے جو تھنک ٹینک ہے وہ نہ صرف اسلام دشمن ہے بلکہ اس کے تمام کے تمام ارکان جن کی تعدا د9 ہے قدامت پسند ہیں ۔ یا یہ لوگ سولہ اکتوبر 2005 ء کواے ایف پی کی جاری کردہ اس خبر کو کیوں بھول جاتے ہیں۔جس میں اُس وقت کے امریکی صدر بش نے کہا تھا کہ ’’ افغانستان اور عراق پر حملے کا حکم مجھ (بُش ) کو خدا نے دیا تھا۔‘‘اے ایف پی کے مطابق جارج ڈبلیو بُش نے جون2003 ء میں فلسطین کے رہنما محمود عباس نبیل سے ایک ملاقات کے دوران انہیں بتایا تھا کہ ’’ میں ( بُش )خدا کی طرف سے تفویض کردہ مشن کی تکمیل کر رہا ہوں۔خُدا نے مجھ سے یہ کہا ہے کہ جارج جاؤ اور افغانستان میں دہشت گردوں کا تعاقب کرو۔میں نے ایسا ہی کیا۔ پھر مجھے خُدا نے کہاکہ جارج جاؤ اور عراق میں مطلق ا لعنانیت ختم کردو، میں نے ایسا ہی کیا اور اب مجھے خدا نے فلسطینی ریاست کے قیام کا حکم دیا ہے ‘‘

اب کوئی حسین حقانی اور ان جیسے دوسرے روشن خیالوں اور اعتدال پسندوں سے پوچھے کہ سابق امریکی صدر کے اس مذہبی رُجحان کے بارے میں اُن کی کیا رائے ہے۔کیا امریکی معاشرے میں مذہبی انتہا پسندی اپنی آخری حدو ں کو چھوتی ہوئی نظر نہیں آتی۔کیا تھوڑی سی روشن خیالی اور اعتدال پسندی پاکستان سے امریکابرآمد کرنے کی ضرورت نہیں۔اگر ہمارے یہ دانشور مغربی تاریخ کا گہری نظر سے جائزہ لیں تو انہیں کروڑوں انسانوں کے قتل کی حیرت انگیز داستانیں اور مذہبی انتہا پسندی کی بے شمار مثالیں ملیں گی۔۔۔۔۔۔۔ کیا یہی وہ وقت نہیں جہاں ہمیں اپنے رویوں پر نظرِ ثانی کر نی چاہئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟


متعلقہ خبریں


بدلنے والا شیخ انوار حسین حقی - پیر 03 اکتوبر 2016

راولپنڈی کی لال حویلی کے مکین شیخ رشید احمد نے جب سے’’ اپنی ‘‘ سیاست شروع کی ہے۔ اُس وقت سے لے کر اب تک انہوں نے خود کو سیاست میں ’’ اِن ‘‘ رکھا ہوا ہے۔ اُن کی سیاسی کہانی مدو جذر اور پلٹنے جھپٹنے سے عبارت ہے۔ یہی وجہ ہے کہ وہ اپنی سیاسی جماعت کے سربراہ ہونے کے باوجود راولپنڈی کے دو انتخابی حلقوں سے باہر نہیں نکل سکے۔ وہ پاکستانی سیاست کے اُس قبیلے سے تعلق رکھتے ہیں جو 1985 ء کی غیر جماعتی پارلیمان کی پیداوار ہونے کے حوالے سے جنرل ضیاء الحق مرحوم کی باقیات کا حصہ کہلاتا ہے۔ ...

بدلنے والا شیخ

شیر کا شکاری اور رائے ونڈمارچ انوار حسین حقی - جمعه 30 ستمبر 2016

میں جب بھی یہ نعرہ سنتا ہوں ’’ دیکھو دیکھو کون آیا ۔ شیر کا شکاری آیا ‘‘ تو مجھے قیامِ پاکستان سے پہلے ’’کپتان ‘‘ کے خاندان سے تعلق رکھنے والے ایک بزرگ کی ایک خونخوار شیر سے ’’ ہاتھا پائی ‘‘ کا واقعہ یاد آ جاتا ہے ۔ تاریخی حوالوں کے مطابق پاکستان بننے سے پہلے ضلع میانوالی اور خوشاب کے سنگم پر واقع سالٹ رینج کے بلند ترین پہاڑ کے دامن میں ایک خونخوار شیر کی وجہ سے دہشت پھیلی ہوئی تھی ۔ آئے روز شیر کی وجہ سے علاقہ مکینوں کو جانی و مالی نقصان سے دوچار ہونا پڑ رہا تھا ۔ آدم...

شیر کا شکاری اور رائے ونڈمارچ

اندھے سفر کا حاصل ۔۔؟ انوار حسین حقی - پیر 05 ستمبر 2016

کراچی کے نو منتخب میئر وسیم اختر نے اپنی حلف برداری کی تقریب میں ـ’’ جئے بھٹو ‘‘ اور ’’ جئے عمران خان ‘‘ کے نعرے لگائے تو ماضی کے دھندلکوں سے 12 ستمبر2007 ء کا منظر میری آنکھوں کے سامنے آگیا۔ مری یادوں کے خزانے چٹیل ویرانوں اور کچلے ہوئے خوابوں کے ریزوں جیسے ہیں۔ تپاں جذبوں سے قرطاس و قلم کی مشقت کے کالے لفظوں میں گونجتی، پھنکارتی، ذہنی تھکن اور چٹخے ہوئے اعصاب کی چیخوں کے تسلسل میں مجھے اُس وقت کی سندھ حکومت کے مشیر داخلہ وسیم اختر پاکستان تحریک انصاف کے سربراہ عمران خان ک...

اندھے سفر کا حاصل ۔۔؟

عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی اور سیاست کی بھیرویں انوار حسین حقی - پیر 29 اگست 2016

پروفیسر منور علی ملک میرے انگزیری کے اُستاد اور عطاء اللہ خان عیسیٰ خیلوی کے دوست ہیں ۔ اپنی کتاب ’’ درد کا سفیر ‘‘ میں لکھتے ہیں ’’ اُونچے سُروں کی شاخوں میں اُلجھ کر جب یہ آواز کسی زخمی پرندے کی طرح پھڑپھٹراتی ہے تو روح کا شجر جڑوں تک لرز اُٹھتا ہے ۔ اور پھر جب اس بلندی سے کسی زخمی پرندے ہی کی طرح یہ آواز ایک ہچکی کے ساتھ نیچے کو آتی ہے تو ہارمونیم پر عطاء کی انگلیوں کی لرزش رقصِ بسمل کا منظر بن جاتی ہے ‘‘۔۔۔ پروفیسر صاحب اسی پر اکتفا نہیں کرتے وہ مزید لکھتے ہیں کہ ’’ یہ آو...

عطاء اللہ عیسیٰ خیلوی اور سیاست کی بھیرویں

محمد منصور آفاق انوار حسین حقی - جمعه 30 اکتوبر 2015

محمد منصور آفاق شاعر ، ادیب، ڈراما نگار اور کالم نگار کی حیثیت سے ہمہ جہت شخصیت کا مالک ہے ۔ وہ اپنی ہر غزل، نظم ،شعر ، مصرعے، ڈرامے اور کالم سے پہچانا جاتا ہے ۔ میں محمد منصور آفاق کو اُس وقت سے جانتا ہوں جب وہ تخلیقی عمل میں پوری طرح گرفتار ہونے کے لئے ’’قلبی وارداتیں ‘‘ کرنے کی بجائے ادبی معرکہ آرائیوں کی سالاری میں مگن پایا جاتا تھا۔میری اُس سے شناسائی دوچار برس کی بات نہیں بلکہ تین دہائیوں کی کہانی ہے اُس کی شخصیت کے کچھ ایسے پہلوؤں کی یادوں کی ہوائیں اکثر یادداشت کے شہر...

محمد منصور آفاق

کپتان کا خاندانی پس منظر انوار حسین حقی - هفته 10 اکتوبر 2015

نیازی قبائل کی برصغیر میں آمد کا سلسلہ ہندستان پر سلطان محمود غزنوی کی ’’ دستک ‘‘ سے شروع ہوتا ہے۔لیکن ان قبائل کی باقاعدہ منظم شکل میں اس علاقے میں آمد بہت بعد کی بات ہے۔تاریخ بتاتی ہے کہ نیازیوں کی اکثریت اوائل میں غزنی کے جنوبی علاقے میں آباد تھی ۔ اس علاقے پر انڈروں اور خلجیوں کے آئے دن کے حملوں سے تنگ آکر یہ لوگ ترک سکونت پر مجبور ہوئے اور صوبہ خیبر پختونخواہ کے علاقہ ٹانک سے ہوتے ہوئے میانوالی کے علاقہ میں آئے۔ میانوالی میں پٹھانوں کے نیازی قبائل میں بلو خیل قبیلہ کو مم...

کپتان کا خاندانی پس منظر

کپتان کی گھریلو زندگی اور پاکستانی ذرایع ابلاغ انوار حسین حقی - هفته 26 ستمبر 2015

پاکستان کے انحطاط پزیر معاشرے کی صحافت کے رنگ نرالے ہی نہیں مایوس کُن بھی ہیں۔ ہمارے الیکٹرانک میڈیا کے غیر تربیت یافتہ اینکرز کی صحافت ایک ایسی موج کی طرح رقص کناں ہے جسے ہر دم یہ گماں رہتا ہے کہ اُس کا عین اگلا اُچھال اُسے ساحلِ مراد سے ہمکنار کر دے گا۔ لیکن حقائق کی منہ زور ہواؤں کا محض ایک تھپیڑااُسے سمندر کی اتھاہ گہرائیوں میں دھکیل کر بے شباہت کر دیتا ہے۔ ان اینکرزکی ذاتی زندگیاں، صحافتی اداروں خصوصاً چینلز کی اندرونی کہانیاں ہوش رُبا اور عبرتناک ہیں لیکن یہ سب کچھ ’’ا...

کپتان کی گھریلو زندگی اور پاکستانی ذرایع ابلاغ

شیر کا شکاری اور نمل شہرِ علم انوار حسین حقی - جمعه 18 ستمبر 2015

کچھ دن پہلے کی بات ہے کہ عمران خان اپنی اہلیہ ریحام خان کے ہمراہ’’نمل شہر علم ‘‘ میں موجود تھے۔ عمران خان نے شوکت خانم جیسا سماجی خدمت کا ادارہ قائم کیا ۔ کراچی اور پشاور کے شوکت خانم ہسپتال بھی تکمیل کے مراحل کے قریب ہیں ۔میں نے ان عظیم الشان اداروں کے حوالے سے عمران خان کو کبھی اتنا جذباتی اور پُرجوش نہیں پایا جتنا وہ میانوالی کی نمل یونیورسٹی کے حوالے سے ہیں ۔ وہ ’’ نمل شہر ِ علم ‘‘ کی تعمیر کو اپنا جنون قرار دیتے ہیں۔ وہ ریحام خان کے ہمراہ دردِ دل رکھنے والے ڈونرز کو سالٹ...

شیر کا شکاری اور نمل شہرِ علم

اکیسویں صدی کا پاکستان اورغیر انسانی وسیلہ روزگار انوار حسین حقی - بدھ 16 ستمبر 2015

دریائے سندھ کے شمالی کنارے اور سلاگر پہاڑ کی ڈھلوان پر آباد سینکڑوں سال پرانے شہر کالاباغ کامحنت کش اکیسویں صدی کے اس ترقی یافتہ دور میں بھی اپنے اور اپنے اہلِ خانہ کا پیٹ بھرنے کے لئے ’’ سائیکل رکشہ‘‘ کے ذریعے جانوروں کی طرح انسان کا بوجھ کھینچنے پر مجبور ہے۔عظیم مسلمان فاتح سلطان محمود غزنوی کے دور میں آباد ہونے والے اور سابق گورنر مغربی پاکستان ’’ نواب امیرمحمد خان آف کالاباغ کی وجہ سے ملک گیر شہرت حاصل کرنے والے اس شہر میں سائیکل رکشہ کی مزدوری کم و بیش ڈیڑھ صدی سے رائج ہ...

اکیسویں صدی کا پاکستان اورغیر انسانی وسیلہ روزگار

اُردومتمدن ہے گلبانگِ ثقافت ہے انوار حسین حقی - جمعرات 10 ستمبر 2015

سپریم کورٹ آف پاکستان کے چیف جسٹس جناب جسٹس جوادایس خواجہ بطور چیف جسٹس اپنی بائیس روزہ تعیناتی مکمل کرکے ریٹائر ہو گئے ہیں ۔ 18 ؍ اگست 2015 ء کو اپنا منصب سنبھالتے ہوئے اُنہوں نے قوم کے ماضی کے حسین البم سے نغمہ عشق و محبت کی کہانی کے طور پر اردو زبان کو نطق و تکلم کے جواں عالم کے طور پر پیش کرتے ہوئے قومی زبان اردو میں حلف اُٹھا یا ۔ اس تقریب کا اپنا ہی سرور تھا ۔ صدر ممنون حسین کی شیروانی کی روایتی سلوٹیں ان کے اردو لہجے میں دبی ہوئی تھیں جب ہی تو پرنٹ ، الیکٹرونک اور سوشل...

اُردومتمدن ہے گلبانگِ ثقافت ہے

’’راہ وچ قبر ہووے ڈھولا لنگھے دعا کرکے‘‘ انوار حسین حقی - اتوار 06 ستمبر 2015

قدرت نے ’’ کپتان‘‘ کی زندگی کو نعمتوں کا موسمِ بہار بنایا ہوا ہے ۔ یونیورسٹی آف بریڈ فورڈ برطانیہ کے وائس چانسلر ’’ مارک کلیری‘‘ کا کہنا ہے کہ عمران خان نے انسانیت کی خدمت کی بدولت دنیا بھر میں اپنے لئے احترام حاصل کیا ہے۔ بڑے اور لیجنڈ عمران خان کو اپنا قائد تسلیم کرتے ہیں۔ کچھ دوستوں کے ساتھ رمضان المبارک کے آخری نمازِ جمعہ کی ادائیگی کے لئے ’’درگارہ بھور شریف ‘‘ کی جامع مسجد کی جانب رواں دواں تھے کہ عطاء اﷲ خان عیسیٰ خیلوی سے فون پر رابطہ ہوا ۔ انہوں نے اپنے ہاں آنے کی دعو...

’’راہ وچ قبر ہووے ڈھولا لنگھے دعا کرکے‘‘

مضامین
سعودی عرب میں ہر گھنٹے سات طلاقوں کے کیسز رپورٹ وجود منگل 25 جنوری 2022
سعودی عرب میں ہر گھنٹے سات طلاقوں کے کیسز رپورٹ

حق دو کراچی کو وجود پیر 24 جنوری 2022
حق دو کراچی کو

ہندوستان کی شبیہ کون داغدار کررہاہے؟ وجود پیر 24 جنوری 2022
ہندوستان کی شبیہ کون داغدار کررہاہے؟

خود کو بدلیں وجود پیر 24 جنوری 2022
خود کو بدلیں

تجارتی جنگیں احمقوں کا کھیل وجود هفته 22 جنوری 2022
تجارتی جنگیں احمقوں کا کھیل

دھرنے،احتجاج اور مظاہرے وجود هفته 22 جنوری 2022
دھرنے،احتجاج اور مظاہرے

بھارت میں وزیر تعلیم نے حجاب کو ڈسپلن کی خلاف ورزی قرار دے دیا وجود جمعه 21 جنوری 2022
بھارت میں وزیر تعلیم نے حجاب کو ڈسپلن کی خلاف ورزی قرار دے دیا

تحریک انصاف اور پورس کے ہاتھی وجود جمعه 21 جنوری 2022
تحریک انصاف اور پورس کے ہاتھی

بلوچستان میں نئی سیاسی بساط وجود جمعه 21 جنوری 2022
بلوچستان میں نئی سیاسی بساط

کورونا،بھنگ اور جادو وجود جمعه 21 جنوری 2022
کورونا،بھنگ اور جادو

ترک صدر کا ممکنہ دورہ سعودی عرب اور اس کے مضمرات ؟ وجود جمعرات 20 جنوری 2022
ترک صدر کا ممکنہ دورہ سعودی عرب اور اس کے مضمرات ؟

قومی سلامتی پالیسی اور خطرات وجود بدھ 19 جنوری 2022
قومی سلامتی پالیسی اور خطرات

اشتہار

افغانستان
افغانستان میں امریکی شہری کا قبولِ اسلام، اسلامی نام محمد عیسیٰ رکھا وجود پیر 24 جنوری 2022
افغانستان میں امریکی شہری کا قبولِ اسلام، اسلامی نام محمد عیسیٰ رکھا

افغانستان،ہرات میں دھماکہ، 7 افراد جاں بحق، 9 زخمی وجود اتوار 23 جنوری 2022
افغانستان،ہرات میں دھماکہ، 7 افراد جاں بحق، 9 زخمی

اسلامی ممالک طالبان حکومت کو تسلیم کریں، افغان وزیراعظم کا مطالبہ وجود جمعرات 20 جنوری 2022
اسلامی ممالک طالبان حکومت کو تسلیم کریں، افغان وزیراعظم کا مطالبہ

طالبان کا شمالی مغربی شہر میں بدامنی کے بعد فوجی پریڈ کے ذریعے طاقت کا مظاہرہ وجود منگل 18 جنوری 2022
طالبان کا شمالی مغربی شہر میں بدامنی کے بعد فوجی پریڈ کے ذریعے طاقت کا مظاہرہ

افغان صوبہ بادغیس میں شدید زلزلہ،ہلاکتوں کی تعداد30 سے تجاوز وجود منگل 18 جنوری 2022
افغان صوبہ بادغیس میں شدید زلزلہ،ہلاکتوں کی تعداد30 سے تجاوز

اشتہار

بھارت
بھارت کا چین پر سرحد سے لاپتا نوجوان کو اغوا کرنے کا الزام وجود جمعه 21 جنوری 2022
بھارت کا چین پر سرحد سے لاپتا نوجوان کو اغوا کرنے کا الزام

بھارت میں وزیر تعلیم نے حجاب کو ڈسپلن کی خلاف ورزی قرار دے دیا وجود جمعه 21 جنوری 2022
بھارت میں وزیر تعلیم نے حجاب کو ڈسپلن کی خلاف ورزی قرار دے دیا

بھارتی آرمی چیف اور وزیر داخلہ کی گرفتاری کیلئے برطانیہ میں درخواست دائر وجود جمعرات 20 جنوری 2022
بھارتی آرمی چیف اور وزیر داخلہ کی گرفتاری کیلئے برطانیہ میں درخواست دائر

بھارت،کالج میں حجاب پہننے والی مسلم طالبات کو کلاس سے نکال دیا گیا وجود بدھ 19 جنوری 2022
بھارت،کالج میں حجاب پہننے والی مسلم طالبات کو کلاس سے نکال دیا گیا

سرحدی تنازع،نیپال کی بھارت سے سڑکوں کی یکطرفہ تعمیر روکنے کی اپیل وجود منگل 18 جنوری 2022
سرحدی تنازع،نیپال کی بھارت سے سڑکوں کی یکطرفہ تعمیر روکنے کی اپیل
ادبیات
پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل وجود منگل 04 جنوری 2022
پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل

پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی وجود جمعرات 23 دسمبر 2021
پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی

غلاف کعبہ کی سلائی میں عربی کا ثلث فانٹ استعمال کرنے کی وضاحت جاری وجود جمعرات 23 دسمبر 2021
غلاف کعبہ کی سلائی میں عربی کا ثلث فانٹ استعمال کرنے کی وضاحت جاری

دنیا کی 1500 زبانیں معدوم ہونے کا خطرہ وجود منگل 21 دسمبر 2021
دنیا کی 1500 زبانیں معدوم ہونے کا خطرہ

سقوط ڈھاکہ پر لکھی گئی نظمیں وجود جمعرات 16 دسمبر 2021
سقوط ڈھاکہ پر لکھی گئی نظمیں
شخصیات
دنیا کی کم عمر مائیکرو سافٹ سرٹیفائیڈ کو بچھڑے 10 برس بیت گئے وجود هفته 15 جنوری 2022
دنیا کی کم عمر مائیکرو سافٹ سرٹیفائیڈ کو بچھڑے 10 برس بیت گئے

مولانا طارق جمیل کی اپنے طوطےاور بلی کے ہمراہ دلچسپ ویڈیو وائرل وجود منگل 11 جنوری 2022
مولانا طارق جمیل کی اپنے طوطےاور بلی کے ہمراہ دلچسپ ویڈیو وائرل

ہے رشک ایک خلق کو جوہر کی موت پر ۔ یہ اس کی دین ہے جسے پروردگار دے وجود بدھ 05 جنوری 2022
ہے رشک ایک خلق کو جوہر کی موت پر        ۔ یہ اس کی دین ہے جسے پروردگار دے

سرگودھا کی تاریخ کا سب سے بڑا جنازہ : مولانا اکرم طوفانی سپرد خاک وجود پیر 27 دسمبر 2021
سرگودھا کی تاریخ کا سب سے بڑا جنازہ : مولانا اکرم طوفانی سپرد خاک

قائداعظم کے خطاب کا تحقیقی جائزہ (خواجہ رضی حیدر) وجود هفته 25 دسمبر 2021
قائداعظم کے خطاب کا تحقیقی جائزہ  (خواجہ رضی حیدر)