وجود

... loading ...

وجود
وجود

بیل منڈیرے نہیں چڑھتی

جمعرات 01 اکتوبر 2015 بیل منڈیرے نہیں چڑھتی

urdu-caligraphy

صوبہ خیبرپختونخوا میں بنوں کے قریب ایک شہر ہے ستمبر۔ وہاں کے کالج کے ایک استاد جناب عدنان جانے کیا سمجھ کر ہمیں مشکل میں ڈال دیتے ہیں۔ انہوں نے پوچھا ہے کہ ’’لکھیں اورلکھیے‘‘ میں کیا فرق ہے مثلاً مضمون لکھیں یا مضمون لکھیے۔‘‘ کوئی سچ مچ کا استاد ہی فرق بتا سکتا ہے۔ہم تو اتناجانتے ہیں کہ اگر کسی کو ہدایت دی جائے‘ جسے فعل امر کہتے ہیں‘ اس میں لکھیں اور لکھیے دونوں صحیح ہیں‘ لکھو بھی استعمال کیا جاسکتا ہے اور بے تکلفی ہو تو آپ ’’لکھ‘‘ بھی کہہ سکتے ہیں۔ اس میں دو چشمی ھ ہے تو یہ ہندی ہی کا لفظ ہوگا۔ ’’لکھا‘‘ ہندی‘ اسم مذکر ہے۔ مطلب سب کو معلوم ہے‘ نَوشتہ (بعض لوگ اسے نوش۔ تہ پڑھتے اور بولتے ہیں ) تحریر شدہ‘ رقم زدہ رقوم اس کے علاوہ حکم ازلی‘ قضا‘ سرنوشت‘ بھاگ‘ تقدیر‘ قسمت‘ مقدر وغیرہ۔ جسے کہتے ہیں کہ ’’قسمت کا لکھا پورا ہوا۔‘‘ ایک شعر ہے:

لکھے کی کیا خبر تھی یہ کون جانتا تھا
لیلیٰ کے ساتھ پڑھ کر مجنوں خراب ہوگا

اسی سے لکھنا‘ لکھوانا ہے۔ لکھیں اور لکھیے میں ایک فرق محل استعمال کا ہے۔ غالب کا مصرع دیکھیے:

خط لکھیں گے گرچہ مطلب کچھ نہ ہو ۔ یا ہم ایک مضمون لکھیں گے۔ ہم جو سمجھے وہ یہ ہے کہ ’’لکھیں‘‘ میں اختیار ہے‘ لکھیں نہ لکھیں۔ مثلاً بھئی آپ کہتے تو ہیں مگر ہم نہیں لکھیں گے۔ دوسری طرف حکم ہے کہ ’’لکھو‘‘۔ اس میں درجہ بندی ہے‘ لکھیے میں احترام کا پہلو زیادہ ہے اور شاگردوں یا طالبان (وہ والے نہیں) کا احترام ملحوظ رکھتے ہیں فائدہ ہی ہے کہ وہ آپ کا احترام کریں گے۔ کہتے ہیں ’’یہ صدا گنبد کی ہے‘ جیسا کہو ویسا سنو‘‘ اب تو استاد شاگرد میں احترام کا پہلو ہی نہیں رہا اسی لیے ڈگری تو مل جاتی ہے علم نہیں آتا۔

ہم جمعہ کو ایک ٹی وی چینل پر بڑے معروف وکیل احمد رضا قصوری کو سن رہے تھے جو پرویز مشرف پر چلنے والے غداری کے مقدمہ پر اپنے ان خیالات کا اظہار کررہے تھے جو پہلے دن سے آتے آئے ہیں۔ اپنے تبصرے میں انہوں نے فرمایا ’’یہ بیل منڈیرے نہیں چڑھے گی۔‘‘ منڈیر کی جگہ منڈیرے اہل پنجاب کا تعرف ہے۔ ایک گانے کا بول بھی ہے ’’آج میرے منڈیرے کا گا بولے۔‘‘منڈیر عام لفظ ہے اور ہر گھر میں ہوتی ہے‘ سرِدیوار‘ دیوار کا وہ بالائی حصہ جو ڈھلوان بنا ہوا ہوتا ہے تاکہ پانی اوپر سے دیوار کے اندر سرایت نہ کرے‘ پشتہ‘ کیاری یا کھیت کی اونچی جگہ وغیرہ۔ منڈیر کی تصفیہ منڈیری ہے لیکن جہاں تک محاورے کا تعلق ہے اس میں منڈیر یا منڈیرے نہیں ہے اور اس میں غلطی میں احمد رضا قصوری تنہا نہیں ہیں۔ ان کی زبان کی غلطیوں پر گرفت بھی نہیں کرنی چاہیے‘ گرفت کرنے کے لیے اور بہت سی باتیں ہیں۔ مثلاً وہ وکیل استغاثہ کو ’’موٹے میاں‘‘ کہہ رہے تھے۔ محاورہ ہے ’’یہ بیل منڈھے نہیں چڑھے گی۔‘‘ اب لوگ بھول بھال گئے کہ منڈھا کیا ہوتا ہے۔ باغات‘ خاص طور پر انگور کے باغوں میں لکڑیوں کی مدد سے ایساڈھانچا بنایا جاتا ہے جس پر بیل چڑھائی جاتی ہے۔ اس سے نازک بیلوں کو سہارا بھی ملتا ہے اور انگور وغیرہ زمین پر پھیل کر خراب نہیں ہوتے۔ پان کی بیلوں کو بھی منڈھے چڑھایا جاتا ہے۔ کبھی چمن کی طرف جانا ہو تو وہاں انگور کے باغات اور منڈھے پر چڑھی بیلیں دیکھی جاسکتی ہیں۔ منڈھے کا ایک مطلب اور بھی ہے۔ اس کی نسبت سے شادی بیاہ میں ایک رسم بھی ہوتی ہے جو پہلے صرف ہندوؤں میں ہوتی تھی۔ ایک منڈپ یا شامیانہ سا بنا کر اس کے نیچے پھیرے ہوتے ہیں۔ بعض مسلمان گھرانوں میں بھی منڈھے کی رسم دیکھی جس کو اس طرح مسلمان کرلیا گیا کہ سات سہاگنیں دولہا کے سر پر ڈوپٹہ یا چادر تان کر کھڑی ہوجاتی ہیں اور پھر دیگر رسومات یا خرافات ہوتی ہیں۔ بہرحال یہ طے ہے کہ بیل منڈیرے نہیں چڑھتی اور بیل تو نہ منڈیر پر چڑھتا ہے نہ منڈھے پر۔

ہم سمجھتے ہیں کہ اسکول‘ اسٹیشن وغیرہ الف سے لکھیں یا بغیر الف کے‘ اسکولوں میں تعلیم اور اسٹیشنوں پر انتظام اچھا ہونا چاہیے

اسی سے ہمیں ایک اور محاورہ یاد آگیا۔ ’’داغ بیل ڈالنا۔‘‘ اب یہ بیل نہ تو بیل بوٹوں والی ہے او رنہ ہی گائے‘ بیل والی۔ داغ بیل ڈالنے کا استعمال عام ہے۔ بیلچہ تو آپ نے بھی سنا اور دیکھا ہوگا۔ دراصل یہ والا ’’بیل‘‘ بڑا بیلچہ یا کدالی ہے۔ جب کوئی تعمیر ہونے لگتی ہے تو بیلی‘ پھاوڑے یا کدال سے زمین پر حد بندی کے نشانات لگائے جاتے ہیں یہ ہے داغ بیل یا بیل کے نشانات۔ یہ وہ داغ نہیں جن کے بارے میں کب سے کہا جارہا ہے کہ ’’داغ تو اچھے ہوتے ہیں‘‘ اور اس پروپیگنڈے سے متاثر ہوکر ہمارے حکمران اپنے دامن پر داغ لگائے چلے جارہے ہیں۔ داغ فرقت کا بھی ہوتا ہے‘ داغ ندامت کا بھی اور ایک شاعر حضرت داغ دہلوی بھی تھے۔ ا یک شعر حاضر ہے:

ہر اک داغ فرقت کا دھونا پڑے گا
تمہیں بھی مرے ساتھ رونا پڑے گا

بات پرانے زمانے کی ہے۔ آج کی ہوتی تو جواب ملتا کہ داغ تو اچھے ہوتے ہیں‘ دھونے‘ دھلانے کی کیا ضرورت ہے۔ یہ مصرع شاید فیض احمد فیض کا ہے ’’ہرداغ ہے اس دل میں بجز داغ ندامت۔‘‘

لاہور سے ایک صاحب منور بخاری کا خط آیاہے۔ انہوں نے بھی اردو زبان میں رائج کئی غلطیوں کی نشاندہی کی ہے۔ اسی کے ساتھ انہوں نے بہت پرانی بحث چھیڑ دی ہے کہ انگریزی حرف S سے شروع ہونے والے الفاظ کو جب اردو میں لکھتے یا بولتے ہیں تو ’’س‘‘ سے پہلے الف کیوں لگاتے ہیں جیسے اسپیشل‘ اسکول وغیرہ ایسے اور بھی الفاظ ہیں مثلاً اسٹیشن‘ اسٹول یہ بحث بہت پرانی ہے۔ ہم سمجھتے ہیں کہ اسکول‘ اسٹیشن وغیرہ الف سے لکھیں یا بغیر الف کے‘ اسکولوں میں تعلیم اور اسٹیشنوں پر انتظام اچھا ہونا چاہیے۔ یہ پنجاب اور دیگر صوبوں میں تلفظ کا فرق ہے۔ ہماری ساری تعلیم بہاولپور اور لاہور میں اور پنجابی اساتذہ ہی کے ذریعہ ہوئی ہے۔ وہ اساتذہ بہت واضح طور پر ’’اسکول‘‘ کہتے اور پڑھاتے تھے۔ اس سے کوئی فرق تو نہیں پڑتا لیکن ہمارے خیال میں انگریز‘ جن کی یہ زبان ہے‘ وہ ایسے الفاظ کی ادائیگی اس طرح کرتے ہیں کہ الف کی آواز آتی ہے۔ گو کہ یہ بہت ہلکی سی ہوتی ہے۔ لیکن الف نہ لگانے سے ہمارے پنجابی بھائیوں میں سے بہت سوں نے تلفظ مزید بگاڑ لیا ہے۔ مثلاً ’’سٹے شن یا پے شل‘‘ وغیرہ۔ ہم یقین سے تو نہیں کہہ سکتے لیکن گمان یہ ہے کہ دوسرے صوبوں‘ خاص طور پر خیبرپختونخوا میں بھی اسکول ہی لکھا اور بولا جاتا ہے۔ ایک صاحب عقیل احمد نے اسی مراسلے کے حوالے سے کہا ہے کہ اردو‘ عربی‘ فارسی وغیرہ میں کوئی حرف ’’ساکن الاول‘‘ نہیں ہوتا۔ یعنی اس میں حرکت ہوتی ہے۔ یہ بات بھی صحیح نہیں کہ S سے شروع ہونے والا ہر حرف الف کے ساتھ ہوتا ہے۔ ویسے ہم نے بابائے اردو مولوی عبدالحق کی انگریزی اردو لغت میں اسکول تلاش کیا تو انہوں نے الف کے ساتھ اور بغیر الف دونوں ہی دے دیے کہ اب آپ کی مرضی ہے۔ بہرحال یہ بحث کسی نتیجے پر پہنچنے والی نہیں کیونکہ الف نہ لگانے والوں کے پاس اپنی دلیل ہے۔

ایک لفظ ہے ’’پس منظر۔‘‘ اسے عام طور پر ’’پسے منظر‘‘ بولا جاتا ہے۔ یہ صحیح نہیں ہے۔ پس منظر میں ’’س‘‘ ساکن ہے اور اس کا مطلب ہے پیچھے کا منظر۔ جب کہ ’’پسے منظر‘‘ کا مطلب ہوا منظر کے پیچھے۔ ایک اور لفظ ہے ’’تشیع۔‘‘ اسے بھی عام طور پر ’’تشی ع‘‘ بروزن رفیع‘ شفیع کہا جانے لگا ہے۔

ٹی وی پر آنے والے کئی شیعہ علماء میں سے کم ہی ا س کا صحیح تلفظ ادا کرتے ہیں ۔یہ تلفظ شاید مشکل ہونے کی وجہ سے زبان پر آسان کرلیا گیا ہے۔ اس کا صحیح تلفظ ہے ’’تشی یوع‘‘ بروزن تمشع۔ اب کیا پتا لوگ تمشع کا تلفظ کیا کرتے ہیں۔


متعلقہ خبریں


سقوط ڈھاکہ پر لکھی گئی نظمیں وجود - جمعرات 16 دسمبر 2021

سقوطِ ڈھاکہ پر لکھی گئیں۱۶دسمبر۱۹۷۱ہم کہ ٹھہرے اجنبی اتنی مداراتوں کے بعدپھر بنیں گے آشنا کتنی ملاقاتوں کے بعدکب نظر میں آئے گی بے داغ سبزے کی بہارخون کے دھبے دھلیں گے کتنی برساتوں کے بعدتھے بہت بے درد لمحے ختم درد عشق کےتھیں بہت بے مہر صبحیں مہرباں راتوں کے بعددل تو چاہا پر شکست...

سقوط ڈھاکہ پر لکھی گئی نظمیں

املا مذکر یا مونث؟ اطہر علی ہاشمی - هفته 13 اگست 2016

اسلام آباد میں جا بیٹھنے والے عزیزم عبدالخالق بٹ بھی کچھ کچھ ماہر لسانیات ہوتے جارہے ہیں۔ زبان و بیان سے گہرا شغف ہے۔ ان کا ٹیلی فون آیا کہ آپ نے ’’املا‘‘ کو مذکر لکھا ہے، جبکہ یہ مونث ہے۔ حوالہ فیروزاللغات کا تھا۔ اس میں املا مونث ہی ہے۔ دریں اثنا حضرت مفتی منیب مدظلہ کا فیصلہ ب...

املا مذکر یا مونث؟

تلفظ کا بگاڑ اطہر علی ہاشمی - جمعه 05 اگست 2016

اردو میں املا سے بڑا مسئلہ تلفظ کا ہے۔ متعدد ٹی وی چینل کھُمبیوں کی طرح اگ آنے کے بعد یہ مسئلہ اور سنگین ہوگیا ہے۔ اینکرز اور خبریں پڑھنے والوں کی بات تو رہی ایک طرف، وہ جو ماہرین اور تجزیہ کار آتے ہیں اُن کا تلفظ بھی مغالطے میں ڈالنے والا ہوتا ہے۔ مغالطہ اس لیے کہ جو کچھ ٹی وی س...

تلفظ کا بگاڑ

تلفظ میں زیر و زبر اطہر علی ہاشمی - پیر 01 اگست 2016

ہم یہ بات کئی بار لکھ چکے ہیں کہ اخبارات املا بگاڑ رہے ہیں اور ہمارے تمام ٹی وی چینلز تلفظ بگاڑ رہے ہیں۔ ٹی وی چینلوں کا بگاڑ زیادہ سنگین ہے کیونکہ ان پر جو تلفظ پیش کیا جاتا ہے، نئی نسل اسی کو سند سمجھ لیتی ہے۔ بڑا سقم یہ ہے کہ ٹی وی پر جو دانشور، صحافی اور تجزیہ نگار آتے ہیں وہ...

تلفظ میں زیر و زبر

گیسوئے اردو کی حجامت اطہر علی ہاشمی - هفته 23 جولائی 2016

علامہ اقبالؒ نے داغ دہلوی کے انتقال پر کہا تھا : گیسوئے اردو ابھی منت پذیر شانہ ہے ایم اے اردو کے ایک طالب علم نے اس پر حیرت کا اظہار کیا کہ داغ نے یہ وضاحت نہیں کی کہ کس کے شانے کی بات کی جارہی ہے جب کہ غالب نے صاف کہا تھاکہ: تیری زلفیں جس کے شانوں پر پریشاں ہو گ...

گیسوئے اردو کی حجامت

’’کھُد بُد‘‘ اور ’’گُڈمُڈ‘‘ اطہر علی ہاشمی - پیر 11 جولائی 2016

مجاہد بک اسٹال، کراچی کے راشد رحمانی نے لکھا ہے کہ آپ کو پڑھ کر ہم نے اپنی اردو درست کی ہے لیکن 11 اپریل کے اخبار میں مشتاق احمد خان کے کالم نقارہ کا عنوان ’’لمحہ فکریہ‘‘ ہے۔ ہے نا فکر کی بات! صحیح ’لمحہ فکریہ‘ ہے یا ’لمحہ فکر‘؟ عزیزم راشد رحمانی، جن لوگوں نے سید مودودیؒ کو ن...

’’کھُد بُد‘‘ اور ’’گُڈمُڈ‘‘

’’پیشن گوئی‘‘ اور ’’غتربود‘‘ اطہر علی ہاشمی - هفته 04 جون 2016

پچھلے شمارے میں ہم دوسروں کی غلطی پکڑنے چلے اور یوں ہوا کہ علامہ کے مصرع میں ’’گر حسابم را‘‘ حسابم مرا ہوگیا۔ ہرچند کہ ہم نے تصحیح کردی تھی لیکن کچھ اختیار کمپوزر کا بھی ہے۔ کسی صاحب نے فیصل آباد سے شائع ہونے والا اخبار بھیجا ہے جس کا نام ہے ’’ لوہے قلم‘‘۔ دلچسپ نام ہے۔ کسی کا...

’’پیشن گوئی‘‘ اور ’’غتربود‘‘

اعلیٰ یا اعلا اطہر علی ہاشمی - اتوار 03 اپریل 2016

سب سے پہلے تو جناب رؤف پاریکھ سے معذرت۔ ان کے بارے میں یہ شائع ہوا تھا کہ ’’رشید حسن خان اور پاکستان میں جناب رؤف پاریکھ کا اصرار ہے کہ اردو میں آنے والے عربی الفاظ کا املا بدل دیا جائے۔‘‘ انہوں نے اس کی سختی سے تردید کی ہے اور کہا ہے کہ وہ خود رشید حسن خان سے متفق نہیں ہیں۔ چلی...

اعلیٰ یا اعلا

اتوار بازار اور خوشونت سنگھ محمد اقبال دیوان - جمعرات 31 مارچ 2016

ہم نے سوچا آپ کو شریک مطالعہ کرلیں۔ ڈیفنس کراچی کے فیز آٹھ میں چھ ماہ پہلے تک ایک اتوار بازار لگا کرتا تھا، اب نہیں لگتا۔ بازار کا ٹھیکیدار بے ایمان تھا اور مجاز افسران عالی مقام سخت گیر، نازک مزاج۔ خالصتاً عسکری نقطۂ نگاہ رکھنے والے کہ If you are not with us , you are against...

اتوار بازار اور خوشونت سنگھ

فِحش یا فحش؟ اطہر علی ہاشمی - پیر 22 فروری 2016

لاہور سے ایک بار پھر جناب محمد انور علوی نے عنایت نامہ بھیجا ہے۔ لکھتے ہیں: ’’خط لکھتے وقت کوئی 25 سال پرانا پیڈ ہاتھ لگ گیا۔ خیال تھا کہ بھیجتے وقت ’’اوپر سے‘‘ سرنامہ کاٹ دوں گا مگر ایسا نہ ہوسکا۔ اگر خاکسار کے بس میں ہوتا تو آپ کی تجویز کے مطابق اردو میں نام بدلنے کی کوشش ...

فِحش یا فحش؟

استیصال کا دلیرانہ استعمال اطہر علی ہاشمی - اتوار 07 فروری 2016

’’زبان بگڑی سو بگڑی تھی‘‘…… کے عنوان سے جناب شفق ہاشمی نے اسلام آباد کے اُفق سے عنایت نامہ بھیجا ہے۔ وہ لکھتے ہیں:’’دیرپائیں کے رفیق عزیز کا چار سالہ بچہ اپنے والد سے ملنے دفتر آیا تو لوگوں سے مل کر اسے حیرت ہوئی کہ یہ لوگ آخر بولتے کیوں نہیں ہیں۔ ایک حد تک وہ یقینا درست تھا کہ ی...

استیصال کا دلیرانہ استعمال

’’معاملات ٹھن گئے‘‘ اطہر علی ہاشمی - منگل 08 دسمبر 2015

عدالتِ عظمیٰ کے منصفِ اعظم جناب انور ظہیر جمالی نے گزشتہ منگل کو ایوانِ بالا سے بڑی رواں اور شستہ اردو میں خطاب کرکے نہ صرف عدالتِ عظمیٰ کے فیصلے کی لاج رکھی بلکہ یہ بڑا ’’جمالی‘‘ خطاب تھا اور اُن حکمرانوں کے لیے آئینہ جو انگریزی کے بغیر لقمہ نہیں توڑتے۔ حالانکہ عدالتِ عظمیٰ کے ا...

’’معاملات ٹھن گئے‘‘

مضامین
دوستوں سے ریاکی بات نہ کر وجود اتوار 02 اکتوبر 2022
دوستوں سے ریاکی بات نہ کر

چالیں اور گھاتیں وجود هفته 01 اکتوبر 2022
چالیں اور گھاتیں

ایران میں پرتشدد مظاہروں کے سلگتے ہوئے انگارے وجود جمعرات 29 ستمبر 2022
ایران میں پرتشدد مظاہروں کے سلگتے ہوئے انگارے

وزیرِ اعظم کا گھر غیر محفوظ تو محفوظ ہے کیا ؟ وجود بدھ 28 ستمبر 2022
وزیرِ اعظم کا گھر غیر محفوظ تو محفوظ ہے کیا ؟

بلوچستان ،کابینہ میں ردو بدل کی باتیں وجود بدھ 28 ستمبر 2022
بلوچستان ،کابینہ میں ردو بدل کی باتیں

چند ان کہی کہانیاں وجود منگل 27 ستمبر 2022
چند ان  کہی کہانیاں

اشتہار

تہذیبی جنگ
مودی حکومت کی اقلیتوں کے خلاف کارروائی، مسلم مذہبی گروپ پر 5 سال کی پابندی لگا دی وجود جمعرات 29 ستمبر 2022
مودی حکومت کی اقلیتوں کے خلاف کارروائی، مسلم مذہبی گروپ پر 5 سال کی پابندی لگا دی

پاک بھارت میچ کے باعث ہندو مسلم کشیدگی برمنگھم تک پہنچ گئی وجود بدھ 21 ستمبر 2022
پاک بھارت میچ کے باعث ہندو مسلم کشیدگی برمنگھم تک پہنچ گئی

برلن میں مسلم کمیونٹی کو ناموافق حالات کا سامنا ہے، جرمن حکومت کے پینل کا اعتراف وجود پیر 19 ستمبر 2022
برلن میں مسلم کمیونٹی کو ناموافق حالات کا سامنا ہے، جرمن حکومت کے پینل کا اعتراف

بھارت:مسلمان طلبا سے پڑھائی کا حق چھین لیا گیا، 17 ہزار طالبات اسکول چھوڑنے پر مجبور وجود جمعه 16 ستمبر 2022
بھارت:مسلمان طلبا سے پڑھائی کا حق  چھین لیا گیا، 17 ہزار طالبات اسکول چھوڑنے پر مجبور

بے روزگاری کا خوف، بھارتی مسلمان شناخت تبدیل کرنے لگے وجود اتوار 11 ستمبر 2022
بے روزگاری کا خوف، بھارتی مسلمان شناخت تبدیل کرنے لگے

نائن الیون، ورلڈ ٹریڈ سینٹر پر حملوں کو 21 برس بیت گئے وجود اتوار 11 ستمبر 2022
نائن الیون، ورلڈ ٹریڈ سینٹر پر حملوں کو 21 برس بیت گئے

اشتہار

بھارت
تمام خواتین کو اسقاط حمل کا اختیار ہے، بھارتی سپریم کورٹ کا اپنے ہی فیصلے کے خلاف فیصلہ وجود جمعرات 29 ستمبر 2022
تمام خواتین کو اسقاط حمل کا اختیار ہے، بھارتی سپریم کورٹ کا اپنے ہی فیصلے کے خلاف فیصلہ

مودی حکومت کی اقلیتوں کے خلاف کارروائی، مسلم مذہبی گروپ پر 5 سال کی پابندی لگا دی وجود جمعرات 29 ستمبر 2022
مودی حکومت کی اقلیتوں کے خلاف کارروائی، مسلم مذہبی گروپ پر 5 سال کی پابندی لگا دی

جھوٹے ٹوئٹر اکاؤنٹس:امریکی یونیورسٹی اسٹین فورڈ نے بھارت کو بے نقاب کردیا وجود جمعه 23 ستمبر 2022
جھوٹے ٹوئٹر اکاؤنٹس:امریکی یونیورسٹی اسٹین فورڈ نے بھارت کو بے نقاب کردیا

بھارت، ریپ کے بعد جلائی گئی دلت لڑکی دورانِ علاج دم توڑ گئی وجود بدھ 21 ستمبر 2022
بھارت، ریپ کے بعد جلائی گئی دلت لڑکی دورانِ علاج دم توڑ گئی
افغانستان
افغا ن طالبان حکومت کا پہلا بین الاقوامی تجارتی معاہدہ وجود بدھ 28 ستمبر 2022
افغا ن طالبان حکومت کا پہلا بین الاقوامی تجارتی معاہدہ

قتل کی دھمکی کے ساتھ ملا برادر کو ان کی رہائش گاہ کی تصویر بھیجی تھی، ٹرمپ وجود هفته 24 ستمبر 2022
قتل کی دھمکی کے ساتھ ملا برادر کو ان کی رہائش گاہ کی تصویر بھیجی تھی، ٹرمپ

یو این کی جانب سے لڑکیوں کے اسکول کھولنے پر زور، طالبان نے نیا وزیر تعلیم مقرر کر دیا وجود جمعه 23 ستمبر 2022
یو این کی جانب سے لڑکیوں کے اسکول کھولنے پر زور، طالبان نے نیا وزیر تعلیم مقرر کر دیا

افغانستان کے صوبے لوگر میں سیلاب سے تباہی، 20 افراد جاں بحق وجود پیر 22 اگست 2022
افغانستان کے صوبے لوگر میں سیلاب سے تباہی، 20 افراد جاں بحق
ادبیات
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع کردار پرنئی کتاب شائع وجود هفته 23 اپریل 2022
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع  کردار پرنئی کتاب شائع

مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار وجود بدھ 06 اپریل 2022
مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار

پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل وجود منگل 04 جنوری 2022
پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل

پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی وجود جمعرات 23 دسمبر 2021
پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی
شخصیات
مسلم دنیا کے معروف اسکالر شیخ یوسف القرضاوی انتقال کر گئے وجود پیر 26 ستمبر 2022
مسلم دنیا کے معروف اسکالر شیخ یوسف القرضاوی انتقال کر گئے

سابق صدر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کے پرنسپل سیکریٹری طارق عزیز انتقال کر گئے وجود پیر 19 ستمبر 2022
سابق صدر جنرل ریٹائرڈ پرویز مشرف کے پرنسپل سیکریٹری طارق عزیز انتقال کر گئے

ملکہ الزبتھ دوئم 96 برس کی عمر میں چل بسیں وجود جمعرات 08 ستمبر 2022
ملکہ الزبتھ دوئم 96 برس کی عمر میں چل بسیں

عامر لیاقت کی تدفین کردی گئی، نماز جنازہ بیٹے نے پڑھائی وجود جمعه 10 جون 2022
عامر لیاقت کی تدفین کردی گئی، نماز جنازہ بیٹے نے پڑھائی