وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar
کورونا وائرس پھیپھڑوں کی بجائے براہ راست دماغ پر حملہ کرسکتا ہے ، تحقیق وجود - جمعرات 21 جنوری 2021

نئے کورونا وائرس سے ہونے والی بیماری کووڈ نتھنوں سے جسم میں داخل ہونے پر پھیپھڑوں کی بجائے براہ راست دماغ پر برق رفتار حملہ کرتی ہے ، جس کے نتیجے میں شدت سنگین ہوتی ہے ، چاہے پھیپھڑوں سے وائرس کلیئر ہی کیوں نہ ہوجائے ۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق یہ بات امریکا میں چوہوں پر ہونے والی ایک طبی تحقیق میں دریافت کی گئی۔جارجیا اسٹیٹ یونیورسٹی کے محققین کا کہنا تھا کہ نتائج کا اطلاق انسانوں میں سامنے آنے والی علامات اور بیماری کی شدت کو سمجھنے کے لیے بھی ہوسکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ...

کورونا وائرس پھیپھڑوں کی بجائے براہ راست دماغ پر حملہ کرسکتا ہے ، تحقیق

نومنتخب امریکی صدر جوبائیڈن نے کورونا ویکسین کی دوسری خوراک بھی لے لی وجود - منگل 12 جنوری 2021

نو منتخب امریکی صدر جو بائیڈن نے کورونا ویکسین کی دوسری خوراک بھی لے لی ۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق اس دوران میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے امریکہ کے نومنتخب صدر جو بائیڈن نے 20 جنوری کو ممکنہ ہنگامہ آرائی کے سوال پر کہا کہ انہیں کھلے مقام پر حلف اٹھانے میں کوئی خوف نہیں۔واضح رہے کہ نو منتخب امریکی صدر جو بائیڈن نے گزشتہ سال دسمبر میں کورونا ویکسین کی پہلی خوراک لی تھی۔

نومنتخب امریکی صدر جوبائیڈن نے کورونا ویکسین کی دوسری خوراک بھی لے لی

بھارت میں لوگوں کو اندھیرے میں رکھ کر ویکسین کا تجربہ،ایک شخص ہلاک وجود - منگل 12 جنوری 2021

بھارت میں کووڈ انیس کے لیے ملک میں تیار کی جانے والے کوویکسین نامی ٹیکے کے بھوپال شہر میں لوگوں پر کیے جانے والے تجربے کے دوران ایک شخص کی موت ہوگئی ہے جس کے بعد متعدد سماجی تنظیموں نے وزیر اعظم نریندر مودی کو خط لکھ کر تجربات کو فورا بند کرانے اور ذمہ دار افراد کو سزا دلانے کا مطالبہ کیا ہے ۔بھارتی ٹی وی کے مطابق بھوپال شہر میں کووویکسین کے تجربات بیشتر ان لوگوں پر کیے جارہے ہیں جو 1984 میں بھوپال گیس سانحہ سے متاثر ہوئے تھے ۔ان متاثرین کی بہبود کے لیے سرگرم چار تنظیموں نے و...

بھارت میں لوگوں کو اندھیرے میں رکھ کر ویکسین کا تجربہ،ایک شخص ہلاک

کووڈ 19کے سنگین مریضوں کو بچانے والی مزید دو ادویات دریافت وجود - جمعه 08 جنوری 2021

جوڑوں کے امراض کے لیے استعمال کی جانے والی 2 ادویات سے کووڈ 19 کے نتیجے میں سنگین حد تک بیمار ہر 12 میں سے ایک مریض کی زندگی بچائی جاسکتی ہیں۔مییارپورٹس کے مطابق یہ بات برطانیہ میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی۔تحقیق کے نتائج کے بعد برطانیہ میںٹوینامی دوا کو 8 جنوری سے آئی سی یو میں زیرعلاج کووڈ کے مریضوں کے علاج کے لیے استعمال کرانے کا فیصلہ کیا گیا ۔حکام کا کہناتھا کہ ہزاروں مریضوں پر آزمائش میں اس دوا کے فوائد کی تصدیق ہوئی اور یہ موت کا خطرہ ممکنہ طور پر 24 فیصد ت...

کووڈ 19کے سنگین مریضوں کو بچانے والی مزید دو ادویات دریافت

بغیر علامات والے مریض کووڈ کے 60فیصد کیسز کا باعث، تحقیق وجود - جمعه 08 جنوری 2021

کورونا وائرس کے لگ بھگ 60 فیصد کیسز ایسے افراد کے نتیجے میں پھیلتے ہیں جن میں اس کی علامات ظاہر نہیں ہوتیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق یہ بات امریکا کے سینٹرز فار ڈیزیز کنٹرول اینڈ پریونٹیشن (سی ڈی سی)کے تیار کردہ ایک ماڈل میں سامنے آئی۔اس ماڈل کے مطابق 59 فیصد کیسز کی وجہ کورونا سے متاثر بغیر علامات والے افراد ہوتے ہیں۔ان میں 35 فیصد نئے کیسز کی وجہ ایسے افراد ہوتے ہیں جو اس وائرس کو علامات ظاہر ہونے سے قبل دیگر تک منتقل کردیتے ہیں جبکہ 24 فیصد ایسے افراد کی وجہ سے ہوتے ہیں جن میں ...

بغیر علامات والے مریض کووڈ کے 60فیصد کیسز کا باعث، تحقیق

اسرائیل دنیا میں کووِڈ19کی ویکسین لگانے میں سب سے آگے وجود - منگل 05 جنوری 2021

اسرائیل میں لوگوں کو کرونا وائرس کی ویکسین لگانے کی مہم زورشور سے جاری ہے اور اس پراس کی خوب مدح سرائی بھی کی جارہی ہے لیکن اس نے ویکسی نیشن کی اس مہم میں اپنے زیر قبضہ غربِ اردن اور غزہ کی پٹی میں آباد فلسطینیوں کو شامل نہیں کیا ہے ۔برطانوی اخبار کی رپورٹ کے مطابق اسرائیل نے امریکا کی دواساز فرم فائزر اور جرمن کمپنی بائیو این ٹیک کی تیار کردہ ویکسین درآمد کی ہے اور اس کو ملک کے کونے کونے تک پہنچا دیا گیا ہے ۔اب تک آٹھ لاکھ اسرائیلیوں (یا کل آبادی میں سے 10 فی صد )کو ویکسین ل...

اسرائیل دنیا میں کووِڈ19کی ویکسین لگانے میں سب سے آگے

امریکا میں ویکسین لگوانے کے ایک ہفتے بعد نرس کورونا کا شکار وجود - جمعرات 31 دسمبر 2020

امریکا میں عالمگیر وبا کورونا وائرس کی ویکسین کی پہلی ڈوز لینے کے ایک ہفتے بعد نرس کورونا وائرس کا شکار ہوگیا۔غیر ملکی میڈیا رپورٹ کے مطابق کورونا کی فائزر ویکسین کی خوراک لینے والے 45 سالہ نرس میتھیو کا ایک ہفتے بعد کورونا ٹیسٹ مثبت آگیا ہے ۔میتھیو کے مطابق ویکسین کی خوراک لینے کے بعد ایک دن تک ان کے بازو میں سوجن رہی تھی اوراس کے علاوہ انہیں مزید کسی قسم کی کوئی تکلیف نہیں ہوئی تھی لیکن ایک ہفتے بعد انہیں سردی لگی، کپکپی کا احساس ہوا اور پھر تھکاوٹ سمیت بازوں و ٹانگوں میں ت...

امریکا میں ویکسین لگوانے کے ایک ہفتے بعد نرس کورونا کا شکار

کوروناکی نئی قسم دیگر ممالک میں کئی ہفتوں پہلے ہی پہنچ چکی ہوگی،محققین وجود - منگل 29 دسمبر 2020

نئے کورونا وائرس کی زیادہ تیزی سے پھیلنے والی نئی قسم سب سے پہلے برطانیہ میں دریافت ہوئی تھی اور اب تک متعدد ممالک میں پہنچ گئی ہے ۔یہ نئی قسم یورپ، مشرق وسطی، ایشیا، افریقہ، آسٹریلیا اور کینیڈا کے مختلف حصوں میں پہنچ چکی ہے ۔اس نئی قسم کے زیادہ تر کیسز برطانیہ کا سفر کرکے مختلف ممالک آنے والے افراد میں سامنے آئے ہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق برطانیہ میں نئی قسم کی دریافت کے بعد سے متعدد ممالک نے برطانیہ کے حوالے سے سفری پابندیوں کا اطلاق کیا تھا، تاہم محققین کا خیال ہے کہ یہ نئی ...

کوروناکی نئی قسم دیگر ممالک میں کئی ہفتوں پہلے ہی پہنچ چکی ہوگی،محققین

نیا کورونا وائرس دماغ میں داخل ہوسکتا ہے ، تحقیق وجود - اتوار 20 دسمبر 2020

ایسے شواہد مسلسل سامنے آرہے ہیں جن سے عندیہ ملتا ہے کہ کووڈ 19 کے مریضوں کو ذہنی مسائل جیسے دماغی دھند اور تھکاوٹ کا سامنا ہوتا ہے ۔اور اب محققین نے اس کی وجہ دریافت کی ہے جو کوئی اچھی خبر نہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق طبی جریدے نیچر نیوروسائنسز میں شائع تحقیق میں چوہوں پر تجربات کے دوران دریافت کیا گیا کہ اسپائیک پروٹین، خون اور دماغ کے درمیان رکاوٹ کو عبور کرسکتا ہے ۔اس سے اندازہ ہوتا ہے کہ کورونا وائرس بھی دماغ میں داخل ہوسکتا ہے جو اپنے اسپائیک پروٹین جن کو ایس 1 پروٹین بھی ک...

نیا کورونا وائرس دماغ میں داخل ہوسکتا ہے ، تحقیق

دس میں سے ایک کورونا متاثر فرد کو طویل المیعاد علامات کے سامنے کا انکشاف وجود - اتوار 20 دسمبر 2020

کووڈ 19 سے شکار ہر 10 میں سے ایک فرد کو اس بیماری کی علامات کا سامنا 12 ہفتے یا اس سے بھی زائد عرصے تک ہوتا ہے ۔میڈیارپورٹس کے مطابق یہ بات برطانیہ کے محکمہ شماریات(او این ایس)کی جانب سے جاری ابتدائی رپورٹ میں سامنے آئی، جس میں لانگ کووڈ کی موجودگی کا جائزہ لیا گیا تھا۔لانگ کووڈ کی اصطلاح ایسے مریضوں کے لیے استعمال کی جاتی ہے جو ابتدا میں تو بیماری کو شکست دے دیتے ہیں، مگر ان کی علامات کئی ہفتوں یا مہینوں بعد بھی برقرار رہتی ہیں۔اس حوالے سے حالیہ مہینوں میں کئی تحقیقی رپورٹس ...

دس میں سے ایک کورونا متاثر فرد کو طویل المیعاد علامات کے سامنے کا انکشاف

کینیڈا نے بھی فائزر کی کورونا ویکسین کی منظوری دے دی وجود - جمعرات 10 دسمبر 2020

برطانیہ کے بعد کینیڈا نے بھی فائزر کی کورونا ویکسین کی منظوری دے دی جبکہ اسرائیل نے بھی 27 دسمبر سے فائزر ویکسین شروع کرنے کا اعلان کردیا۔میڈیارپورٹس کے مطابق فائزر کی دو خوراکوں کی قیمت تقریبا 6 ہزار پاکستانی روپے بنتی ہے ۔ فائزر ویکسین کو منفی 70 ڈگری سینٹی گریڈ پر رکھنا پڑتا ہے ۔

کینیڈا نے بھی فائزر کی کورونا ویکسین کی منظوری دے دی

صحت مند رہنے کیلیے صرف 12 منٹ کی سخت جسمانی مشقت بھی کافی ہے ، تحقیق وجود - جمعه 27 نومبر 2020

جسمانی مشقت بشمول ورزش کے نت نئے فائدے سامنے آتے جارہے ہیں؛ اور اب امریکی سائنسدانوں نے دریافت کیا ہے کہ اگر روزانہ صرف 12 منٹ کی سخت جسمانی مشقت یا ورزش کی جاتی رہے تو بیک وقت کئی بیماریوں سے محفوظ رہتے ہوئے صحت مند رہا جاسکتا ہے ۔ریسرچ جرنل سرکولیشن کے ایک حالیہ شمارے میں آن لائن شائع ہونے والی میں 411 ادھیڑ عمر رضاکار شامل کیے گئے تھے جن میں سے ہر ایک سے 12 منٹ تک تیزی سے سائیکل چلوائی گئی اور اس کے فورا بعد ان کے جسموں میں میٹابولائٹس کہلانے والے مادوں کی 588 اقسام کا جائ...

صحت مند رہنے کیلیے صرف 12 منٹ کی سخت جسمانی مشقت بھی کافی ہے ، تحقیق

کرونا واِئرس پر شکوک و شہبات سے سائنس دان پرپشان وجود - جمعرات 19 نومبر 2020

کووڈ نائنٹین نے سائنس دانوں کو دوہرے چیلنج سے نبرد آزما کر دیا ہے ۔ ایک طرف تو وہ انتھک کوششوں میں مصروف ہیں کہ کیسے اس موزی مرض پر قابو پایا جائے تو دوسری طرف انہیں سائنس اور سائنس دانوں کے کام کرنے کے محرکات کے متعلق لوگوں میں پائے جانے والے شکوک و شبہات کا سامناہے ۔اس صورت حال میں سائنس دانوں کی سوچ اور کرونا وائرس کے خلاف جنگ میں سائنس کی اہمیت کو سمجھنے کے لیے وائس آف امریکہ نے سائنس دانوں سے خیالات معلوم کیے ۔میڈیارپورٹس کے مطابق ڈاکٹر بارون ماتھیا نیویارک کی کولمبیا یو...

کرونا واِئرس پر شکوک و شہبات سے سائنس دان پرپشان

کورونا وائرس ویکسین تیار کرنے والے ترک نژاد جوڑے کے چرچے وجود - بدھ 11 نومبر 2020

عالمی وبا کورونا وائرس سے بچا ئوکی ویکسین کے حوالے سے امریکی دوا ساز کمپنی فائزر اور اس کی شراکت دار جرمن کمپنی بائیون ٹیک عالمی ذرائع ابلاغ میں نمایاں رہے ہیں لیکن بہت کم لوگوں کے علم میں ہے کہ جو ویکسین تیار کی گئی ہے اس کی پشت پر ایک ترک نژاد ڈاکٹر اور ان کی اہلیہ کی کاوش کا سب سے زیادہ عمل دخل ہے ۔میڈیارپورٹس کے مطابق 55 سالہ ترک نژاد پروفیسر ڈاکٹر اوگر ساہن شام کے شہر اسکنررونہ میں پیدا ہوئے تھے ۔اسکندرونہ کو ترکی نے 1939 میں اپنی حدود میں شامل کرلیا تھا اوراس کا نام تبد...

کورونا وائرس ویکسین تیار کرنے والے ترک نژاد جوڑے کے چرچے

برطانیا میں کورونا متاثرین 11لاکھ سے زیادہ،دوسرا لاک ڈائون نفاذ وجود - جمعه 06 نومبر 2020

برطانیا میں کورونا متاثرین کی تعداد 11 لاکھ ہو گئی جبکہ ملک میں دوسرے لاک ڈاون کا نفاذ کردیا گیا، جس کے مطابق لوگوں کو گھروں میں رہنا ہوگا، ریسٹورنٹس، کیفے اور غیرضروری اشیا کی دکانیں بند رہیں گی۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق ڈنمارک میں نیولوں کے فارم میں کورونا کیسز سامنے آنے پر ایک کروڑ ستر لاکھ نیولے مارنے کا فیصلہ کرلیا گیا۔ادھر یونان میں 3 ہفتے کے لیے لاک ڈاون کا فیصلہ کیا گیا ہے جس کا اطلاق ہفتے سے ہوگا۔ناروے میں بھی پابندیاں سخت کردی گئی ہیں اور لوگوں کو غیر ضروری طور...

برطانیا میں کورونا متاثرین 11لاکھ سے زیادہ،دوسرا لاک ڈائون نفاذ

بیمار ہونے پر چمگادڑیں بھی آئسولیٹ ہوجاتی ہیں، تحقیق وجود - جمعرات 29 اکتوبر 2020

امریکا میں کی گئی ایک نئی تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ چمگادڑیں جب بیمار ہوتی ہیں تو وہ سماجی دوری اختیارکرلیتی ہیں۔کورونا وائرس کی وبا کے آغاز میں جب ماہرین نے متاثرہ افرادکو سماجی دوری اور قرنطینہ کا مشورہ دیا تو بعض افراد نے اس طریقہ کار پر انگلیاں بھی اٹھائیں اور اسے غیرفطری قرار دیا کہ کسی کو بیمار ہونے پر تنہاکردیا جائے تاہم اب امریکا میں ہونے والی ایک تحقیق میں یہ انکشاف ہوا کہ جھنڈ میں رہنے والی چمگادڑیں بھی بیماری کی صورت میں سماجی دوری اختیار کرتی ہیں۔امریکی اور...

بیمار ہونے پر چمگادڑیں بھی آئسولیٹ ہوجاتی ہیں، تحقیق

کورونا وبا،سائن ورلڈ کا امریکا اور برطانیا میں تمام سنیما بند کرنے کا فیصلہ وجود - پیر 05 اکتوبر 2020

برطانیا میں سب سے بڑی جبکہ امریکا میں دوسری بڑی سنیما کمپنی سائن ورلڈ نے گلے ہفتے سے امریکا، برطانیہ اور آئرلینڈ میں اپنے تمام سنیما عارضی طور پر بند کرنے کا فیصلہ کیا ہے ۔میڈیا رپورٹ کے مطابق یہ کمپنی امریکا میں اپنے تمام 543 سنیما گھر بند کررہی ہے جن میں 7 ہزار سے زائد اسکرینیں ہیں۔ رپورٹ میں بتایا گیا کہ کمپنی کی جانب سے برطانیہ اور آئرلینڈ میں تمام 128 سنیما گھروں کو بھی بند کیا جارہا ہے ۔

کورونا وبا،سائن ورلڈ کا امریکا اور برطانیا میں تمام سنیما بند کرنے کا فیصلہ

نصف امریکی کورونا وائرس کی ویکسین لینے کے حق میں نہیں ہیں،سروے وجود - پیر 21 ستمبر 2020

ایک حالیہ سروے سے ظاہر ہوا ہے کہ تقریبا نصف امریکی ویکسین استعمال کرنے کے حق میں نہیں ہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق امریکہ میں پیو ریسرچ سینٹرکے رواں ماہ کیے گئے جائزے کے نتائج سے معلوم ہوا کہ کرونا وائرس کی ویکسین دستیاب ہونے کی صورت میں 49 فی صد امریکی ویکسین لینے کے لیے تیار نہیں ہوں گے ۔ جب کہ 51 فی صد کا کہنا ہے کہ وہ ویکسین ضرور لیں گے ۔ویکسین لگوانے سے انکار کرنے والے امریکیوں کا کہنا تھا کہ انہیں ویکسین کے منفی اثرات سے متعلق خدشات ہیں۔ویکسین سے متعلق تحفظات کی وجہ یہ ہے ک...

نصف امریکی کورونا وائرس کی ویکسین لینے کے حق میں نہیں ہیں،سروے

کورونا ویکسین کی دوڑ میں چین سب سے آگے وجود - منگل 15 ستمبر 2020

دنیا کے بڑے اورترقی یافتہ ممالک میں اس وقت کورونا وائرس کی ویکسین کے حوالے سے ایک دوڑ لگی ہوئی ہے۔ یہ دوڑ علامتی طور پر ایک نئے طاقت کے اُبھار اور عالمی سطح پر نئے رجحانات کی تشکیل کا سبب بھی یقینی طور بنے گی۔ اس ضمن میں عالمی ذرائع ابلاغ پر روزانہ کی بنیاد پر اندازے ظاہر کیے جاتے ہیںاور اس دوڑ میں شامل ملکوں میں جاری تحقیقات کو جگہ دی جاتی ہے۔ اس حوالے سے اب یہ بات زیادہ زور دے کر دہرائی جارہی ہے کہ چین دنیا میں کورونا ویکسین متعارف کرانے والا پہلا ملک بن سکتا ہے ۔ برطانوی ...

کورونا ویکسین کی دوڑ میں چین سب سے آگے

80 فی صد لوگ کرونا خطرے سے دوچار نہیں ہوں گے ،برطانوی سائنس دان وجود - پیر 08 جون 2020

معروف برطانوی نیورو سائنس دان پروفیسر کارل فریسٹن نے دعویٰ کیا ہے کہ 80 فی صد لوگ کرونا وائرس کا شکار نہیں ہوسکتے ۔میڈیارپورٹس کے مطابق انھوں نے ایک انٹرویو میں کرونا وائرس کی وبا پر قابو پانے کے لیے موجودہ اختیار کردہ پالیسی کے بارے میں اپنے شکوک کا اظہار کیا ۔حال ہی میں سائنس دانوں نے اس مفروضے کا اظہار کیا تھا کہ آبادی کی اکثریت کووِڈ19 کا شکار ہوسکتی ہے لیکن اس کی عملی طور پر تصدیق نہیں ہوئی تھی کیونکہ کرونا وائرس کے بیشتر کیسوں میں تو تمام علامات ظاہر نہیں ہوتی ہیں۔اس لی...

80 فی صد لوگ کرونا خطرے سے دوچار نہیں ہوں گے ،برطانوی سائنس دان

چین نے سب سے پہلے کورونا ویکسین متعارف کرانے کا منصوبہ بنالیا وجود - پیر 08 جون 2020

چین ممکنہ طور پر دنیا کا پہلا ملک بن سکتا ہے جو ستمبر میں ہی کورونا وائرس کی روک تھام کے لیے ویکسینز کو خطرے سے دوچار افراد کے لیے متعارف کراسکتا ہے چاہے اس دوران کلینیکل ٹرائل پر کام ہی کیوں نہ جاری ہو۔میڈیارپورٹس کے مطابق امریکا کے مقابلے میں کورونا وائرس کے علاج کو متعارف کرانے کے لیے چین کے طبی حکام نے ویکسینز کے حوالے سے گائیڈلائنز کا مسودہ تیار کرلیا ۔کسی بھی ملک کے مقابلے میں چین میں سب سے زیادہ 5 ویکسینز انسانی آزمائش کے دوسرے مرحلے میں داخل ہوچکی ہیں۔ویکسین کی تیاری ...

چین نے سب سے پہلے کورونا ویکسین متعارف کرانے کا منصوبہ بنالیا

گنجے مردوں میں کورونا سے متاثر ہونے کے خطرات زیادہ ہوتے ہیں، تحقیق وجود - پیر 08 جون 2020

ایک تازہ تحقیق میں انکشاف کیا گیا ہے کہ گنجے مردوں میں کورونا سے متاثر ہونے کے خطرات زیادہ ہوتے ہیں۔محققین نے مشورہ دیا ہے کہ گنج پن کو ہائی رسک عنصر سمجھا جانا چاہیے ، میڈیارپورٹس کے مطابق انہوں نے یہ بات امریکا میں کورونا سے مرنے والے پہلے امریکی ڈاکٹر فرینک گیبرن کا کیس سامنے آنے کے بعد کہی اوراسے گیبرن سائن کا نام دیا۔ڈاکٹر فرینک گیبرن بھی گنج پن کا شکار تھے ۔ چین میں کورونا کے بعد جنوری سے اب تک کے اعداد وشمار سے ظاہر ہوتا ہے کہ خواتین کے مقابلے میں مردوں میں اموات کے ام...

گنجے مردوں میں کورونا سے متاثر ہونے کے خطرات زیادہ ہوتے ہیں، تحقیق

کورونا وائرس اب پہلے جیسا جان لیوا نہیں رہا، اطالوی ڈاکٹروں کا دعویٰ وجود - منگل 02 جون 2020

اٹلی سے تعلق رکھنے والے ڈاکٹروں نے دعویٰ کیا ہے کہ نئے کورونا وائرس اب اتنا جان لیوا نہیں رہا جتنا عالمی وبا کے آغاز پر تھا۔مییا رپورٹ کے مطابق میلان کے سان ریفایلی ہاسپٹل کے سربراہ ڈاکٹر البرٹو زینگریلو نے ٹی وی انٹرویو کے دوران کہا کہ حقیقت تو یہ ہے کہ طبی لحاظ سے یہ وائرس اب اٹلی میں موجود نہیں۔انہوںنے کہاکہ گزشتہ 10 دن کے دوران سواب ٹیسٹوں میں جو وائرل لوڈ دیکھا گیا وہ ایک یا 2 ماہ قبل کے مقابلے میں نہ ہونے کے برابر ہے ۔انہوں نے اطالوی حکومت پر لاک ڈاؤن کی پابندیاں اٹھانے...

کورونا وائرس اب پہلے جیسا جان لیوا نہیں رہا، اطالوی ڈاکٹروں کا دعویٰ

کورونا وائرس، ذیابیطس کے مریضوں کے لیے خطرے کی گھنٹی وجود - هفته 30 مئی 2020

ذیابیطس کا ہر دس میں سے ایک مریض کورونا وائرس میں مبتلا ہونے کی صورت میں ہسپتال جانے کے سات دن بعد ہی اپنی زندگی کی بازی ہار سکتا ہے ۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق یہ انکشاف ایک تازہ سائنسی مطالعے کے نتائج میں کیا گیا ہے ، جو جمعے کے روز ایک جریدے میں شائع ہوئے ۔ اس مطالعے کے دوران ذیابیطس کے تیرہ سو مریضوں کا جائزہ لیا گیا۔ پچھتر برس سے زائد عمر کے مریضوں میں پچپن برس سے کم عمر کے مریضوں کے مقابلے میں شرح اموات چودہ فیصد زیادہ رہی۔ دل، بلڈ پریشر اور پھیپھڑوں کے امراض میں مب...

کورونا وائرس، ذیابیطس کے مریضوں کے لیے خطرے کی گھنٹی