وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar
تجربات دا نچوڑ وجود - بدھ 24 نومبر 2021

دوستو،تجربے کا کوئی متبادل نہیں ہوتا، یہی وجہ ہے کہ ہمارے معاشرے میں ’’بابوں ‘‘ کی قدر کی جاتی ہے۔۔ لیکن ایک بات ہمیشہ دھیان میں رکھئے،ہر بابا ’’سیانا‘‘ نہیں ہوتا، ہاں یہ ممکن ہے کہ وہ زندگی سے ہونے والے اپنے تجربات آپ سے شیئر کرے تو آپ اس سے کچھ سیکھ سکیں۔۔ چلیں آج آپ کے سامنے ’’تجربات دا نچوڑ‘‘ پیش کرتے ہیں لیکن دلچسپ بات آپ کے لئے اس میں یہ ہوگی کہ اس پورے کالم میں ہمارے اپنے ،پیارے اور لاڈلے باباجی کا تذکرہ کہیں بھی نہیں ہوگا۔۔ آج کل ڈیجیٹل میڈیا کا دورہے، ہم نے اپ...

تجربات دا نچوڑ

خوشبو کی شاعرہ ، پروین شاکر وجود - بدھ 24 نومبر 2021

شمعو نہ صدف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پروین شاکر ۲۴ نومبر ۱۹۵۲؁ء کو کراچی میں پیدا ہوئیں ، میٹرک تک تعلیم رضویہ سوسائٹی ناظم آباد (رضویہ گرلز ہائی اسکول) سے حاصل کی۔سر سید گرلز ڈگری کالج ناظم آباد سے بی اے کرنے کے بعد کراچی یونیورسٹی سے پہلے انگریزی ادب جب کہ اس کے بعد انگریزی لسانیات میں ایم اے کیا اور پہلے عارضی طور پر سر سید گرلز کالج میں طالبات کو پڑھایا بعد ازاں عبد اللہ گرلز کالج کراچی میں مستقل بنیاد پر آپ کا بحیثیت لیکچرر تقرر...

خوشبو کی شاعرہ ، پروین شاکر

پنجاب میں ڈومیسائل سسٹم کا خاتمہ ، سندھ بھی تقلید کرے وجود - بدھ 24 نومبر 2021

پروفیسر زاہد احمد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پاکستان کے سب سے بڑے اور تقریباً نصف آبادی والے صوبے پنجاب میں ، گزشتہ روز ، تقریباً ستّر سال سے رائج و نافذ ’’ڈومیسائل سسٹم‘‘ کے خاتمے کا اعلان کردیا گیا۔ اب صوبۂ پنجاب میں کسی بھی شہری کے 'کمپیوٹرائزڈ قومی شناختی کارڈ' پر ، مستقل رہائش کے کالم میں درج پتے کاضلع ہی شہری کے ڈومیسائل کا ضلع متصوّر ہوگا۔ حکومت ِ پنجاب نے 'ڈومیسائل سسٹم' کے خاتمے کی وجہ ، شہریوں کو ڈومیسائل کے اجرا ء کے عوض رشوت ستانی کی بڑھتی ہوئی شکایات اور بدعنوا...

پنجاب میں ڈومیسائل سسٹم کا خاتمہ ، سندھ بھی تقلید کرے

کرگس کا جہاں اور ہے شاہیں کا جہاں اور وجود - پیر 22 نومبر 2021

حنظلہ عابد ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ایک بجھکڑ (بے وقوف شخص )کا قصہ مشہور ہے جو اپنے آپ کو کافی عقلمند کہلواتا تھا ، بڑے جوش و خروش سے لوگوں کو اپنی فرضی دانائی کی کہانیاں سناتا تھا ۔ ایک بار قریب کے کسی گاؤں کا ایک شخص درخت پر چڑھ کر پھنس گیا اور پھر اترنا مشکل ہو گیا ۔ گاؤں کے لوگ جمع ہوئے مگر کوئی راہ نہ نکال سکے آخر لال بجھکڑ کو بلایا گیا ۔ لال بجھکڑ نے آتے ہی مسئلہ کا حل ڈھونڈ نکالا اور ایک لمبا رسا منگوا کر اس کا ایک سرا درخت پر پھنسے شخص کی طرف پھینکا اور ...

کرگس کا جہاں اور ہے شاہیں کا جہاں اور

زرعی قوانین کی واپسی کاسبق وجود - پیر 22 نومبر 2021

  آخرکار حکومت کو کسانوں کے آگے جھکنا ہی پڑا۔ ایک سال پہلے پارلیمنٹ سے زورزبردستی پاس کرائے گئے متنازع زرعی قوانین کوواپس لینے کا اعلان خود وزیراعظم نریندرمودی نے کیا۔ انھوں نے جمعہ کی صبح قوم کے نام خصوصی خطاب میں کہا کہ’’آج میں آپ کو، پورے دیش کو یہ بتانے آیا ہوں کہ ہم نے تینوں زرعی قوانین کو واپس لینے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس مہینے کے آخر میں شروع ہورہے پارلیمنٹ کے اجلاس میں ہم ان تینوں قوانین کو واپس لینے کا دستوری عمل پورا کردیں گے۔‘‘ اس طرح وزیراعظم نے ازخود ا...

زرعی قوانین کی واپسی کاسبق

ابنِ عربیؒ کے نظریات وجود - پیر 22 نومبر 2021

  اندلس کے نامورمسلم اسکالر ، صوفی ، شاعر اور فلسفی ، انتہائی بااثر اسلامی فکر کے حامل شیخ اکبر محی الدین محمد ابن العربی الحاتمی الطائی الاندلسی (1240ء —1165ء ایسی نابغہ روزگار شخصیت ہیں کہ جن پر تصوف نازکرتی ہے۔ آپ دنیائے اسلام کے ممتاز صوفی، عارف، محقق، قدوہ علماء ، اور علوم ا لبحر ہیں۔ اسلامی تصوف میں آپ کو شیخ اکبر کے نام سے یادکیا جاتا ہے یہ لقب اور اعزاز پوری اسلامی تاریخ میں کسی اور شخصیت کے لیے مخصوص نہیں کیا گیا اور تمام مشائخ آپ ؒکے اس مقام کے قائل ہیں۔ ...

ابنِ عربیؒ کے نظریات

اسلامو فوبیا میں مبتلا بھارتی اینکر کو دبئی بلانے پر اماراتی شہزادی برہم وجود - پیر 22 نومبر 2021

اسلامو فوبیا میں مبتلا ہندو انتہا پسند صحافی سدھیر چوہدری کو دبئی میں ایک پروگرام میں مدعو کرنے پر متحدہ عرب امارات کی شہزادی انتظامیہ پر برس پڑیں۔ شارجہ سے تعلق رکھنے والی شہزادی ہند بنت فیصل القاسمی نے دبئی میں ہونے والے ایک بین الاقوامی فنکشن میں ہندو انتہا پسند نظریات رکھنے والے بھارتی صحافی کو مدعو کرنے پر شدید ناگواری کا اظہار کیا۔شہزادی ہند نے اپنی ٹوئٹ میں لکھا کہ گوبر کھانے والے آدمی کو جو اسلام اور مسلمانوں کے خلاف بکواس کرتا ہے اس امن پسند روادار ملک میں کیوں بلایا...

اسلامو فوبیا میں مبتلا بھارتی اینکر کو دبئی بلانے پر اماراتی شہزادی برہم

برطانیہ میں پارٹی گرل کا قبولِ اسلام وجود - پیر 22 نومبر 2021

بار میں ڈانس کرنے والی خاتون نے اپنی سابق زندگی کو ترک کرکے اسلام قبول کرلیا۔برطانوی نشریاتی ادارے سے بات کرتے ہوئے پرسیفون نے اپنی گناہوں سے بھری زندگی سے مشرف بہ اسلام ہونے کی کہانی سناتے ہوئے کہا کہ اگر میں مسلمان نہیں ہوتی تو کب کا اپنی زندگی کا خاتمہ خود کرچکی ہوتی۔ نائٹ کلبوں میں رقص کرنے کے دوران ہونے والے لوگوں کے برے رویوں اور اذیتوں کا زکر کرتے ہوئے کہا کہ مجھے زلت اور تشدد کا سامنا تھا،رات بھر شراب نوشی میں رقص و سرور کی محفلوں میں گزرتی تھی۔پرسیفون نے بتایا کہ اس ...

برطانیہ میں پارٹی گرل کا قبولِ اسلام

مو۔لانا۔۔ وجود - اتوار 21 نومبر 2021

دوستو،ایک بار ایساہوا کہ ایک دفعہ مولانا ظفر علی خان کے نام مہاشہ کرشنؔ، ایڈیٹر ’’پرتاب‘‘ کا ایک دعوت نامہ آیا جس میں لکھا تھاکہ۔۔(فلاں) دن پروشنا (فلاں) سمت بکرمی میرے سُپّتر ویرندر کا مُونڈن سنسکار ہوگا۔ شریمان سے نویدن ہے کہ پدھار کر مجھے اور میرے پریوار پر کرپا کریں‘‘۔ (شُبھ چنتک کرشن)(فلاں دن میرے بیٹے ویرندر کی سرمنڈائی ہے۔ آپ سے درخواست ہے کہ تشریف لاکر مجھ پر اور میرے خاندان پر مہربانی کریں)۔۔مولانا نے آواز دی۔۔سالک صاحب! ذرا آیئے گا۔ فرمایا کہ مہربانی کرکے اس دعو...

مو۔لانا۔۔

امریکی و چینی ہم منصب کی ورچوئل ملاقات ،کس نے کھویا ،کس نے پایا؟ وجود - اتوار 21 نومبر 2021

  ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چین ایک بڑی عالمی معاشی طاقت تو تھا ہی لیکن اَب بڑی تیزی کے ساتھ چین عالمی سیاسی طاقت بھی بنتا جارہا ہے ،جس کا اندازہ گزشتہ دنوں امریکی صدر جوبائیڈن اور ان کے چینی ہم منصب شی جن پنگ مابین ہونے والے ورچوئل ملاقات میں چینی صدر کے اختیارکردہ جارحانہ لب و لہجہ سے بخوبی ہوتا ہے۔ دونوں عالمی رہنماؤں کے درمیان یہ ورچوئل ملاقات 3 گھنٹے تک جاری رہی لیکن اِس ساری نشست میں چین صدر شی جن پنگ نے سخت لب و لہجہ اختیار کیے رکھا جبکہ اُن کے ہم منصب امریکی صدر جوبائی...

امریکی و چینی ہم منصب کی ورچوئل ملاقات ،کس نے کھویا ،کس نے پایا؟

فیض احمد فیض،ایک عظیم شاعر وجود - اتوار 21 نومبر 2021

شمعونہ صدف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اردو شاعری کے فیض کا اصل نام فیض احمد خان تھا۔ ادبی نام فیض احمد فیض اسی نام سے انہوں نے شہرت دوام پائی۔فیض احمد فیض 13 فروری 1911 ء کو پاکستان کے ایک مردم خیز شہر سیالکو ٹ میںپیدا ہوئے۔ اس شہر کو یہ سعادت حاصل ہے کہ اس شہر نے اردو شاعری اور اردو کے وطن پاکستان کو دو عظیم سپوت دیئے جنہوں نے اردو اور پاکستان دونوں کو اقوام عالم اور عالمی ادب میں سر بلند کیا۔ فیض کے علاوہ پہلی بڑی شخصیت مفکر پاکستان علا مہ محمد اقبالؒ ہیں۔فیض احمد فیض کے والد گ...

فیض احمد فیض،ایک عظیم شاعر

حکومتی برتری اورآئینی ترامیم وجود - هفته 20 نومبر 2021

پارلیمنٹ کے مشترکہ اجلاس سے اپوزیشن کے 203 کے مقابلے میں221 ووٹوں حکمران اتحادکو 33بل پاس کر انے میں کامیابی ہوئی ہے ۔پاس ہونے والے بلوں میں ای وی ایم کے استعمال، سمندر پار پاکستانیوں کوووٹ اور گرفتار بھارتی جاسوس نیوی کمانڈر کلبھوش کو اپیل کا حق ینے کے بل شامل ہیں، پارلیمنٹ سے بل پا س کرانا غیر آئینی یا غیر قانونی عمل نہیں البتہ اختیار کیے گئے۔ حکومتی طریقہ کارکی تحسین نہیں کی جا سکتی۔ چاہیے تو یہ تھا کہ ترامیم کی تفصیلات پہلے کمیٹیوں کو بھیجی جاتیں جہاںاراکین کھل کر بحث وم...

حکومتی برتری اورآئینی ترامیم

تبدیلی کا بورڈ۔۔ وجود - جمعه 19 نومبر 2021

دوستو،ایک شخص نے مچھلی فروشی شروع کی تو سوچا، دکان پر ایک خوبصورت بورڈ لگا دیا جائے جس پر لکھا ہو۔۔یہاں میٹھے پانی کی تازہ مچھلی فروخت ہوتی ہے۔۔۔بورڈ بن کر آگیا تو کچھ دوستوں کو مدد کے لیے بلوایا کہ ساتھ مل کر بھاری بھر کم بورڈ لگوایا جاسکے۔۔ایک دوست نے بورڈ پڑھا تو پوچھا ۔۔تمہارے کاروبار کی کوئی اور شاخ بھی ہے؟؟ مچھلی فروش نے کہا ، جی نہیں۔۔ دوست نے مشورہ دیا۔۔ تو پھر’’یہاں‘‘ کا لفظ اضافی ہے۔۔اب بورڈ اس طرح ہوگیا۔۔۔میٹھے پانی کی تازہ مچھلی فروخت ہوتی ہے۔۔دوسرے دوست نے پوچھا...

تبدیلی کا بورڈ۔۔

سندھ میں بلدیاتی انتخابات کس اُصول کے تحت ہوں گے؟ وجود - جمعرات 18 نومبر 2021

جمہوریت کے ثمرات اُس وقت تک عام عوام تک پہنچ ہی نہیں سکتے ،جب تک کہ کسی ملک میں مستحکم بلدیاتی نظام حقیقی معنوں میں قائم نہیںکردیا جاتا ہے۔سادہ الفاظ میں یوں سمجھ لیجیے کہ جمہوریت کی بنیادی اساس ہی بلدیاتی نظام پر استوار ہوتی ہے ۔لیکن کتنی عجیب بات ہے کہ ہمارے ہاں! ہر جمہوریت پسند سیاسی جماعت اور جمہوریت کی راہ میں جان و مال کی قربانی دینے کے بلند و بانگ دعوے کرنے والے تمام سیاسی رہنما ہمہ وقت ’’جمہوریت ‘‘ کا راگ تو ضرور الاپتے ہیں، لیکن جب کبھی اِن کے سامنے غیر جانب دارانہ ا...

سندھ میں بلدیاتی انتخابات کس اُصول کے تحت ہوں گے؟

بلوچستان، ہنوز سیاسی اضطراب وجود - جمعرات 18 نومبر 2021

  لگتا ایسا ہے کہ جیسے ملک کے اندر حکومت و سیاست کی بساط کی ترتیب نو کی جارہی ہے، گہرے آثار نمودار ہونا شروع ہوگئے ہیں، ممکن ہے چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی پہلا شکار بنیں اور بے منصب کردیئے جائیں۔ بلوچستان کے اندر اوائل ستمبر اور اکتوبر تک کی ہلچل اس نتیجے پر منتج ہوئی کہ عبدالقدوس بزنجو وزیراعلیٰ بن گئے۔ سابق وزیراعلیٰ جام کمال خان عالیانی مستعفی ہونے کے بعد کراچی اور آبائی علاقے گئے۔ جام کمال موجودہ منظر نامے کو کھلی آنکھوں سے دیکھ و گہرائی سے مشاہدہ کررہے ہیں، اخ...

بلوچستان، ہنوز سیاسی اضطراب

تلور کی آڑ میں انسانیت کا شکار؟ وجود - جمعرات 18 نومبر 2021

منظر ۔۔۔۔۔ ذکی ابڑو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سندھ میں پولیس کی خراب کارکردگی پر عدالتوں ہی سے آوازیں نہیں آ تیں بلکہ سول سوسائٹی اور متاثرہ شہری بھی اس پر اپنی آواز بلند کرتے نظر آتے ہیں،مقتول صحافی عزیز میمن ہو؟یا ناظم جوکھیو کا قتل؟ یاپھر دادو میں تہرے قتل کے الزام میں دو اراکینِ اسمبلی کے نامزد ہونے کا معاملہ؟پولیس پر سیاسی دباؤ اور ملزمان کو بچانے کی شکایات زد عام ہیں،دادو واقعے کی مدعی اور مقتول کی بیٹی اْم رباب نے سرداری اور جاگیردارانہ نظام کو اپنے ...

تلور کی آڑ میں انسانیت کا شکار؟

یہی مکافات ِ عمل ہے وجود - بدھ 17 نومبر 2021

یہ شعرتو آپ میں سے اکثروبیشترنے پڑھایاسناہوگا ہم نہ ہوں گے تو کوئی ہم سا ہوگا دائم آباد رہے گی دنیا یہ شعردنیا کی سب سے بڑی سچائی ہے لیکن ہمیں غورکرنا محال ہے ۔ہم دنیا کی چکاچوند رنگ رنگینیوں میں کھوئے ہوئے ہیںیا پھر اپنی خواہشوںکی بھول بھلیوں میں گم ہیں ۔ ایسا کریںآپ چار دن منظر سے غائب ہو کر دیکھیں لوگ آپ کا نام تک بھول جائیں گے!! پھرکس بات پر انسان اتنا اتراتاہے۔غرور کیسا؟ یہ ساری زندگی میں میں کیونکر؟ حالانکہ آگا ہ اپنی موت سے کوئی بشرنہیں سامان سو برس کا پل کی ...

یہی مکافات ِ عمل ہے

سیکورٹی کانفرنس اور ٹرائیکا اجلاس کا اعلامیہ وجود - بدھ 17 نومبر 2021

موجودہ دور میں کوئی ملک عالمگیر نظم سے کٹ کر آگے نہیں بڑھ سکتا۔معاشی بقا کے لیے اِس نظم سے ریاستوں کی وابستگی لازم ہے ۔معاشی بقا کے ساتھ آزادی و خودمختاری کا تحفظ بھی عالمی برادری کا حصہ بنے بغیر ممکن نہیں ۔دوستانہ تعلقات کے لیے نہ چاہتے ہوئے بھی کئی معاملات پر عالمی برادری کے ساتھ چلنا پڑتا ہے۔ ایسی صورتحال ہی آج کل افغانستان کو درپیش ہے کیونکہ طالبان قیادت منتخب نہیں بلکہ بزوربازو حکمران بنی ہے۔ اسی لیے دنیا کو تشویش ہے کہ اگر طالبان اقتداربرقرار رکھنے اور سیاسی و اقتصاد...

سیکورٹی کانفرنس اور ٹرائیکا اجلاس کا اعلامیہ

حیات اوررازحیات وجود - منگل 16 نومبر 2021

نامورمغل بادشاہ ظہیرالدین بابر نے کہا تھا بابر بعیش کرد کہ عالم دوبارہ نیست ان کا کہنا دنیا کی سب سے بڑی سچائی ہے کہ انسان کو زندگی ایک بار ہی ملتی ہے اور ہر انسان کی خواہش ہوتی ہے کہ اسے کامیاب بنایا جائے اور وہ اتنی ترقی کرے کہ لوگ اس کی مثالیں دیتے پھریں۔ یہ اور بات ہے کہ کامیابی کا معیار ہر ایک کے نزدیک الگ الگ ہے فرض کرلیں کامیابی کے معیار کی 3بڑی اقسام ہیں، اول یہ کہ لوگ اس فانی دنیا میں عیش و عشرت، دولت اور آسائشوںکی زندگی ہی کو کامیابی کا معیار بنالیتے ہیں دوئم کچھ...

حیات اوررازحیات

اژدھے کو مشتعل نہ کیا جائے وجود - منگل 16 نومبر 2021

ایرک ایس مارگولس کبھی ہانگ کانگ کا سفر بہت ہیجان انگیز بلکہ خوف طاری کرنے والا تھا۔ اس کا پرانا ایئرپورٹ کائی ٹاک بلند و بالا عمارتوں کے درمیان واقع تھا۔ بڑا جمبوجیٹ طیارہ ایک چٹانی کھاڑی سے جس وقت ایئر پورٹ پر لینڈ کرنے کے لیے اترتا، اس وقت عموماً گہری دھند چھائی ہوتی تھی۔ خوفزدہ مسافروں کو بادلوں کے علاوہ کچھ دکھائی نہیں دیتا تھا، پھر اچانک طیارہ گہرے بادلوں سے نکلتا جو کہ ایئرپورٹ پر چھائے ہوتے تھے، دائیں اور بائیں طرف اپارٹمنٹس جن کی بلندی طیارے کی برابر لگتی تھی، ان ...

اژدھے کو مشتعل نہ کیا جائے

لو جہاد: گمراہ کن نعرہ سے خطرناک ہتھیار میں تبدیل وجود - منگل 16 نومبر 2021

(مہمان کالم) رام پنیانی ملک ابھی بھی اترپریشن کے فرقہ وارانہ فسادات اور ما بعد پیش آئے واقعات کے جھنکوں کے زد سے باہر نہیں آپایا ہے۔ یہ تشدد مغربی اتر پردیش کے ان علاقوں میں پیش آئے، جہاں جانوں اورمسلمانوں کے درمیان مضبوط ہم آہنگی اور سماجی تعلقات رہے ہیں۔ حالانکہ انکی اقتصادی حالت کافی مختلف رہی ہے۔ماضی میں بھی اس ریاست میں اور ملک کیدیگر حصوں میں بھی فرقہ وارانہ تشدد گو ہتیا، بابری مسجد کے انہدام ، ہماری برادری کی خواتین، پر جنسی تشدد جیسی ایشوز کو ہوا دے کر کرائے...

لو جہاد: گمراہ کن نعرہ سے خطرناک ہتھیار میں تبدیل

طالبان حکومت کو عالمی حمایت کب حاصل ہوگی؟ وجود - پیر 15 نومبر 2021

افغانستان میں امریکی افواج کے انخلاء اور طالبان کے زمامِ اقتدار سنبھالنے کے بعد اَمن و اَمان کی صورت حال میں خاطر خواہ بہتری آئی ہے ۔گو کہ ابھی بھی داعش کی جانب سے امارات ِ اسلامی افغانستان یعنی طالبان کی حکومت کے خلاف خودکش حملوں اور بم دھماکوں کے واقعات وقفے وقفے سے ہوتے رہتے ہیں لیکن اچھی بات یہ ہے کہ اِن پرتشدد،واقعات کی تعداد ماضی کے مقابلے میں خاصی کم ہوچکی ہے۔جبکہ طالبان نے ملک بھر میں حکومتی نظم و نسق بھی اشرف غنی کی حکومت کے مقابلے میں کافی بہتر انداز میں قائم کرنے ...

طالبان حکومت کو عالمی حمایت کب حاصل ہوگی؟

ہندتو اکا موازنہ ’ بوکوحرام ‘ سے کیوں؟ وجود - پیر 15 نومبر 2021

کانگریسی لیڈر سلمان خورشیدآج کل ہندتوا بریگیڈکے نشانے پرہیں۔قصور یہ ہے کہ انھوں نے ایودھیا تنازعہ پر اپنی تازہ ترین کتاب میں جارحانہ ہندتوا کا موازنہ ’ بوکوحرام‘ اور ’ داعش‘ جیسی دہشت گرد تنظیموں سے کیا ہے۔ان کی انگریزی تصنیفSunrise over Ayodhya(ایودھیا میں طلوع آفتاب)کا اجراء حال ہی میں سابق وزیرداخلہ پی چدمبرم کے ہاتھوں نئی دہلی میںعمل میں آیا ہے۔ کتاب ابھی پوری طرح بازار میں بھی نہیں آئی تھی کہ اس پر ہنگامہ شروع ہوگیا۔ عام طور پر سیاست داں جو کتابیں لکھتے ہیں، ان پر ای...

ہندتو اکا موازنہ ’ بوکوحرام ‘ سے کیوں؟

اپنی جاں نذر کروں،اپنی وفا پیش کروں وجود - اتوار 14 نومبر 2021

آج TVآن کیاتو مہدی حسن اپنی سریلی آواز میں لہوگرما دینے والا ولولہ انگیزجنگی نغمہ گارہے تھے اپنی جاں نذر کروں،اپنی وفا پیش کروں قوم کے مرد ِ مجاہد تجھے کیا پیش کروں سن کر کئی سنی،پڑھی،کہی اوران کہی باتیں یاد آگئیں واقعات کا تسلسل ،اپنے قومی ہیروزکے بہادری کے قصے،جواں مردی کی داستانیں اور اپنی مادر ِ وطن کیلئے جانیں قربان کرنے والوںکی کہانیاں دل میں عجب جوش پیدا کردیتی ہیں تو بے اختیار ان جوانوںکو سیلوٹ کرنے کو دل کرتاہے جنہوںنے ہمارے ’’کل ‘‘کے لیے اپنا آج’’ قربان‘‘ کر...

اپنی جاں نذر کروں،اپنی وفا پیش کروں

مضامین
غم و شرمندگی وجود بدھ 08 دسمبر 2021
غم و شرمندگی

گامیرے منوا وجود بدھ 08 دسمبر 2021
گامیرے منوا

گوادر دھرنا اورابتر گورننس وجود بدھ 08 دسمبر 2021
گوادر دھرنا اورابتر گورننس

تندور بنتی دنیا وجود بدھ 08 دسمبر 2021
تندور بنتی دنیا

کون نہائے گا وجود منگل 07 دسمبر 2021
کون نہائے گا

دوگززمین وجود پیر 06 دسمبر 2021
دوگززمین

سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی! وجود پیر 06 دسمبر 2021
سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی!

چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے! وجود پیر 06 دسمبر 2021
چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے!

دوگززمین وجود اتوار 05 دسمبر 2021
دوگززمین

یورپ کا مخمصہ وجود هفته 04 دسمبر 2021
یورپ کا مخمصہ

اے چاندیہاں نہ نکلاکر وجود جمعه 03 دسمبر 2021
اے چاندیہاں نہ نکلاکر

تاریخ پررحم کھائیں وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
تاریخ پررحم کھائیں

اشتہار

افغانستان
اقوام متحدہ میں افغانستان کی نمائندگی کا فیصلہ ملتوی وجود بدھ 08 دسمبر 2021
اقوام متحدہ میں افغانستان کی نمائندگی کا فیصلہ ملتوی

طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ وجود اتوار 05 دسمبر 2021
طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ

15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل وجود هفته 04 دسمبر 2021
15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل

طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت وجود جمعه 03 دسمبر 2021
طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت

جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان وجود جمعه 03 دسمبر 2021
جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان

اشتہار

بھارت
بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے وجود منگل 07 دسمبر 2021
بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے

بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا

بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی وجود بدھ 01 دسمبر 2021
بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی

بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین وجود پیر 29 نومبر 2021
بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین

بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی وجود هفته 27 نومبر 2021
بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی
ادبیات
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام وجود منگل 26 اکتوبر 2021
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام

پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام وجود پیر 25 اکتوبر 2021
پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام

اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب
شخصیات
جنید جمشید کی پانچویں برسی آج منائی جائے گی وجود منگل 07 دسمبر 2021
جنید جمشید کی پانچویں برسی آج منائی جائے گی

نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی وجود اتوار 05 دسمبر 2021
نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی

سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے وجود پیر 29 نومبر 2021
سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے

پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل وجود جمعرات 25 نومبر 2021
پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل

سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز وجود جمعه 19 نومبر 2021
سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز