وجود

... loading ...

وجود

salim

جمعه 09 فروری 2024 salim

ڈاکٹر سلیم خان

گیانواپی مسجد پر منعقد ہونے والی مشترکہ پریس کانفرنس میں مولانا محمود مدنی نے فرمایا :‘‘ جس کی لاٹھی ،اس کی بھینس ، جنگل راج کی علامت ہے اور یاد رکھیے کہ لاٹھی اور بھینس کا قانون اگر چلے گا تو لاٹھی ہاتھ بدلتی رہتی ہے ’’۔ اس آفاقی حقیقت کا انکار کرنے والوں کی عقل ٹھکانے لگانے کی خاطر مشیت ان پر لاٹھیاں برساتی ہے ۔ موجودہ صورتحال جنگل راج سے بدتر ہے کیونکہ جنگل میں بھی یہ نہیں ہوتا کہ کچھ جانوروں کو اسلحہ سے لیس کرکے انتظامیہ کی وردی پہنا دی جائے ۔ اقتدار میں آنے یا اسے قائم رکھنے کی خاطر کچھ درندے انتظامیہ کا بیجا استعمال کرنے لگیں اور وہ بے چوں و چرا ان کے آگے دم ہلاتی رہے ۔ایسا کس جنگل میں ہوتا وحشی جانوروں کا کوئی گروہ قلم اور مائک ہاتھ میں لے کر جبرو استبداد کو جائز و مستحب ٹھہرانے میں جٹ جائے اور نام نہاد آزاد عدلیہ قانون اور ضابطے کو طاق پر رکھ کر سرکار کی آلۂ کار بن جائے۔ ایسا تو جمہوری فسطائیت میں ہی ممکن ہے ۔ علامہ اقبال نے مندرجہ ذیل شعر میں جو بات کہی تھی اس کی عملی مثال موجود سرکار پیش کررہی ہے
دیو استبداد جمہوری قبا میں پائے کوب
تو سمجھتا ہے یہ آزادی کی ہے نیلم پری
وطن عزیز میں آزادی کے بعدہی سے سومنات کی آڑ میں ہندو مسلم منافرت کی سیاست کا آغاز ہوگیا ۔ پہلے تو صدر مملکت راجندر پرشاد کے وہاں جانے پر تنازع کھڑا ہوا اور آگے چل کر مستقبل کے بھارت رتن لال کرشن اڈوانی نے وہیں سے رام رتھ یاترا شروع کرکے ملک نفرت کی آگ لگادی۔ بابری مسجد کی شہادت کے بعد اب اس کی تپش کاشی اور متھرا تک پھیل گئی ہے ۔ غزنی سے ویراول آکر سومنات پر حملے کی کہانی سنانے والے بھول جاتے ہیں ان کے آبا و اجداد نے گوتم بدھ کے ماننے والوں کا اپنے ہی ملک میں قتل عام کیا۔ ایودھیا بودھوں کا بہت بڑا مرکز ساکیت تھا ۔ بابری مسجد کے نیچے سے اس بودھ مندر کے آثار نکلے جس کو ہندووں نے تباہ تاراج کیا تھا۔ ان لوگوں نے ساکیت میں بدھ مت کے پیروکاروں کی ایسی نسل کشی کی کہ شہر کی گھاگرا کا ندی کا پانی سرخ ہوگیا اور اسے سریو کے نام سے یاد کیا جانے لگا۔ اس تاریخ کو چھپانے کی خاطر یوگی سرکار نے پوری گھاگرا ندی کا نام بدل کر سریو کرنے کی تجویز پیش کی ہے ۔ ان مظالم کے سبب بدھ مت چین،جاپان ، میانمار اور سری لنکا تک تو پھیلا مگر ہندوستان میں ناپید ہوگیا۔ایسی خونریز تاریخ کے حاملین کو مسلمانوں پر کیچڑ اچھالنے سے قبل اپنے گریبان میں جھانک کر دیکھنا چاہیے ۔
دہلی یونیورسٹی کے سابق پروفیسر شمس الاسلام کے مطابق تاریخ کی مستند کتابوں میں بودھوں اور جینوں کی عبادت گاہوں توڑے جانے کی تصدیق کی گئی ہے ۔ معروف ہندو راہب سوامی وویکانند کی تعریف کرنے سے سنگھ پریوار نہیں تھکتا مگریہ نہیں بتاتا ہے کہ انہوں نے مشہور جگناتھ مندر کو ایک پرانا بودھ مندرلکھا ہے ۔ وہ آگے لکھتے ہیں’’ہم نے (یعنی ہندووں نے ) اسے اور اس جیسے دوسرے مندروں کو واپس ہندو مندر بنا دیا۔ ہمیں ابھی اس طرح کے بہت سے کام کرنے ہوں گے‘‘۔آریہ سماج کے بانی مہارشی دیانند سرسوتی نے شنکر آچاریہ کے گن گاتے ہوئے لکھا ہے کہ دس سال تک انہوں (شنکر آچاریہ) نے پورے ملک کا دورہ کیا، جین مت کی تردید اور ویدک (ہندو) مذہب کی وکالت کی۔ وہ تمام ٹوٹی ہوئی تصویریں جو آج کل زمین کی کھدائی کے دوران مل رہی ہیں انہیں جینوں نے توڑے جانے کے خوف سے دفن کر دیا تھا۔اسی طرح مستند ذرائع اور بدھ مت کی تاریخی کتابیں گواہ ہیں کہ 184 قبل مسیح میں موریہ سلطنت پر قابض ہو کر شنگا سلطنت نامی ہندو حکومت قائم کرنے والے پشیہ مترا شنگا نے بڑی تعداد میں بودھوں کی عبادت گاہیں تڑوائیں اور راہبوں کو قتل کروایا۔
معروف تاریخ داں ڈاکٹر عبدالمجید کے مطابق جنوبی ہندوستان میں بودھوں اور جینوں کی عبادت گاہوں کی بھرمار تھی جنھیں توڑا گیا یا ہندو مندروں میں تبدیل کردیا گیا مگر گوں ناگوں وجوہات کی بناء پرکوئی اس کا ذکر نہیں کرتا۔ اس حقیقت کااعتراف خود ہندو شہنشاہوں کی کتابوں میں بھی ملتاہے مثلاً جنوبی ہندوستان میں ہندو چالوکیہ خاندان کے شہنشاہ سومیشورا سوم نے ‘مناسلاسا’ نامی ایک کتاب لکھی تھی۔ اس میں وہ تلقین کرتاہے کہ کسی علاقے کو فتح کرنے والے بادشاہ کو اس علاقے کے شہنشاہ سے منسلک عمارتوں مثلاً محلوں اور عبادت گاہوں کو جلا دینا چاہیے ۔بودھ مت کو ہندوستان سے نکالنے کے بعد بھی یہ لوگ چین سے نہیں بیٹھے بلکہ معروف تاریخ نگار دھماکتی کے مطابق پانڈیان کے حکمران سریمارا سری ولابھا نے 835 عیسوی کے آس پاس سری لنکا پر حملہ کرکے سنہالا بادشاہ، سینا اول کی فوج کو شکست دی تو وہ پہاڑوں کی طرف بھاگ گیا۔ سریمارا نے شاہی خزانے کو لوٹنے کے بعد دیگر اشیاء کے ساتھ پانڈیا گوتم بدھ کا وہ نقرئی مجسمہ بھی اپنے ساتھ لے آیا، جسے تقریباً 50 سال پہلے موتی محل میں نصب کیا گیا تھا۔معروف مؤرخ پروفیسر ڈیوس کے مطابق پانڈیان کی فوج جب واپس چلی گئی، تو اس کے بعد سینا اول لوٹ کر پھر سے اقتدار پر فائز ہوگیا۔ سینا اول کے بعد اس کابھتیجا سینا دوم جانششین ہوااور851-885 عیسوی کے درمیان حکمرانی کی۔ اس نے ایک دن خالی پیڈسٹل کو دیکھ کر اپنے وزراء سے دریافت کیا کہ یہ ایسا کیوں ہے ؟ وزیر نے کہا کہ :، “کیا بادشاہ نہیں جانتا؟ آپ کے چچا کے زمانے میں پانڈیان نے یہاں آکر جزیرے کو ویران کر دیا تھا اور ہمارا سارا قیمتی سازو سامان مع مجسمہ لے کر چلا گیا تھا’’۔ یہ سن کر سینا دوم بہت شرمندہ ہوا۔ اس نے اپنے وزیر کو فوراً انتقام لینے کی خاطر فوج تیار کرنے کا حکم دیا۔اس وقت تک، پانڈیان کی فوج پالووں کے خلاف تین لڑائیوں کی وجہ سے کمزور ہو چکی تھی۔ اس لیے لنکا کی فوج نے مدورائی کو تباہ و تاراج کرنے کے بعد گوتم بدھ کے سونے کا مجسمہ واپس لے جاکر اسے دوبارہ موتی محل میں نصب کردیا ۔ کیااٹھتے بیٹھتے رام اور راون کی فرضی داستان سنانے والوں کو اس تاریخی حقیقت کا ذکر نہیں کرنا چاہیے ؟ لیکن کیسے کریں شرم آتی ہے ۔
اندرون ملک ہندو راجاوں کے ذریعہ مندروں کی تباہی کا تاریخ مسلمانوں کی آمد سے قدیم ہے ۔ 642 عیسوی کے اوائل میں ، پالوا حکمران نرسمہورمن اول نے چلوکیوں کو فتح کیا، ان کے دارالحکومت واٹاپی کو برخاست کر دیا، نیز گنیش کی مورتی کو تامل ناڈو میں لاکر اپنی بادشاہی میں لگادیا۔ اس مجسمہ نے وتاپی گنپتی کے نام سے شہرت حاصل کی۔اس زمانے میں مورتیوں کو لوٹنے کے بعد اس لیے فخر سے نصب
کیا جاتا تھا کیونکہ ان پر پچھلے مالکان کا نام کھدا ہوتا تھا ۔اس سے وہ اپنے ماضی کی فتوحات کو یاد کرتے تھے ۔ اس طرح کے معاملات صرف جنوبی ہند تک محدود نہیں تھے بلکہ شمالی ہندوستان میں ، 950 عیسوی کے اندر چندیلا کے حکمران یشوورمن نے کھجوراہو میں وشنو ویکنتھ کے لیے سونے کا لکشمن مندر تعمیر کیا۔ اس کے لیے اڑیسہ کا ساہی راجہ کیلاش پربت سے تبت کے بادشاہ کو شکست دے کر مورتی لایا تھا ۔ پرتیہارا حکمران ہیرمباپال نے ساہیوں کو شکست دے کر وہ مورتی اس سے چھین لی۔ اس کے بعد یشوورمن نے ہیرامبا پالا کے بیٹے دیو پال کو مغلوب کر دیا اور اس مجسمہ کو کھجوراہو لے گیا۔ تاریخ کے اوراق میں مورتیوں کی یہ لوٹ مار ہندو بادشاہوں کے نام پر درج ہے لیکن اسے اپنی سہولت کے لیے بھلا دیا گیا ہے ۔
بابر اور اورنگ زیب کی جھوٹی سچی کہانیا ں سننے والے ہندووں کو ان تاریخی حقائق پر یقین نہیں آئے گا مگر وزیر اعظم نریندر مودی کے اپنے حلقہ انتخاب میں کاشی کاریڈور کا مشاہدہ تو سبھی نے اپنی آنکھوں سے دیکھا ہے ۔ اس سیاحتی مندر کی تعمیر کے لیے نہ جانے کتنے قدیم ہندو مندروں کو توڑا گیا۔ اس کے خلاف کچھ ہندو تنظیموں نے صدائے احتجاج بھی بلند کیا مگر گودی میڈیا کے نقار خانے میں طوطی کی آواز کچل دی گئی۔ ایک تحقیق کے مطابق اس کاریڈور کی تعمیر میں جملہ 286 شیولنگ اپنی جگہ سے ہٹا دیے گئے ۔ ان میں 140 کہاں گئے کوئی نہیں جانتا مگر 146 تو وارانسی کے لنکا تھانے میں موجود ہیں ۔ وہاں پر روز ان کی پوجا پاٹھ کی جاتی ہے ۔ گیان واپی محلے میں واقع جامع مسجد کے تہہ خانے پوجا پاٹھ کرنے والوں کو چاہیے کہ وہ بھی پولیس تھانے میں جاکر اتنے سارے مجسموں کے ساتھ جو من میں آئے کریں مگر مسلمانوں کی مسجد میں آکرخرافات نہ کریں۔ عوام اس طرح کی ناٹک بازی سے بیزار ہو چکے ہیں اور اس کے چکر میں پھنس کر بی جے پی کو ووٹ نہیں دیں گے ۔ گیانواپی مسجد کے معاملے میں ضلعی عدالت کے جج کا آخری دن ایک نامعقول فیصلہ اور اس پر تیزی کے ساتھ عمل درآمد انتظامیہ کے ساتھ ملی بھگت کا غماز ہے ۔ اس کے علاوہ سپریم کورٹ کا اسے ہائی کورٹ میں لوٹا دینا اور اگلی تاریخ دینے کے بعد ہائی کورٹ کا پوجا پر روک نہیں لگانا یہ بتاتا ہے کہ ’یہ اندر کی بات ہے عدالت ہمارے ساتھ ہے ‘۔ایسے میں مولانا ارشد مدنی کا یہ سوال درست معلوم ہوتا ہے کہ ’اگر قانون کا کوئی دخل ہی نہیں ہے تو پھر قانون کی کتابوں میں آگ لگا دیں‘۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
یہ سب کٹھ پتلیاں رقصاں رہیں گی رات کی رات وجود بدھ 21 فروری 2024
یہ سب کٹھ پتلیاں رقصاں رہیں گی رات کی رات

تشکیل سے پہلے نئی حکومت کا خاتمہ وجود بدھ 21 فروری 2024
تشکیل سے پہلے نئی حکومت کا خاتمہ

سمجھوتہ ایکسپریس : متاثرین 17 سال سے انصاف کے متلاشی وجود بدھ 21 فروری 2024
سمجھوتہ ایکسپریس : متاثرین 17 سال سے انصاف کے متلاشی

یہ کمپنی نہیں چلے گی!! وجود منگل 20 فروری 2024
یہ کمپنی نہیں چلے گی!!

امریکی جنگی مافیااورعالمی امن وجود منگل 20 فروری 2024
امریکی جنگی مافیااورعالمی امن

اشتہار

تجزیے
پاکستان کی خراب سیاسی و معاشی صورت حال اور آئی ایم ایف وجود پیر 19 فروری 2024
پاکستان کی خراب سیاسی و معاشی صورت حال اور آئی ایم ایف

گیس کی لوڈ شیڈنگ میں بھاری بلوں کا ستم وجود جمعرات 11 جنوری 2024
گیس کی لوڈ شیڈنگ میں بھاری بلوں کا ستم

سپریم کورٹ کے لیے سینیٹ قرارداد اور انتخابات پر اپنا ہی فیصلہ چیلنج بن گیا وجود جمعرات 11 جنوری 2024
سپریم کورٹ کے لیے سینیٹ قرارداد اور انتخابات پر اپنا ہی فیصلہ چیلنج بن گیا

اشتہار

دین و تاریخ
دین وعلم کا رشتہ وجود اتوار 18 فروری 2024
دین وعلم کا رشتہ

تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب وجود جمعرات 08 فروری 2024
تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب

حقوقِ انسان …… قرآن وحدیث کی روشنی میں وجود منگل 06 فروری 2024
حقوقِ انسان …… قرآن وحدیث کی روشنی میں
تہذیبی جنگ
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی وجود اتوار 19 نومبر 2023
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی

مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت

سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے وجود منگل 15 اگست 2023
سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے
بھارت
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا وجود پیر 11 دسمبر 2023
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا

بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی وجود پیر 11 دسمبر 2023
بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی

بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک وجود بدھ 22 نومبر 2023
بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک

راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات
افغانستان
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے وجود بدھ 11 اکتوبر 2023
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے

افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں وجود اتوار 08 اکتوبر 2023
افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں

طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا وجود بدھ 23 اگست 2023
طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا
شخصیات
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے وجود اتوار 04 فروری 2024
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے

عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے
ادبیات
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر وجود پیر 04 دسمبر 2023
سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر

مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر وجود پیر 25 ستمبر 2023
مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر