وجود

... loading ...

وجود
وجود

مہنگائی کے خلاف کامیاب ہڑتال، حکمرانوں کے لیے نوشتہ دیوار

پیر 04 ستمبر 2023 مہنگائی کے خلاف کامیاب ہڑتال، حکمرانوں کے لیے نوشتہ دیوار

مہنگائی اور بجلی کے زائد بلوں کے خلاف گزشتہ روز ملک بھر میں شٹرڈاؤن ہڑتال کی گئی۔ اس موقع پرکراچی، لاہور اور پشاور سمیت ملک کے مختلف چھوٹے بڑے شہروں میں تمام دکانیں اور کاروباری مراکز بند رہے۔ سڑکوں پر ٹرانسپورٹ اور بسیں بھی معمول سے کم دیکھنے میں آئی۔ وکلا نے بھی ہڑتال کی حمایت کا اعلان کیا تھا جس کی وجہ سے وہ عدالتوں میں پیش نہیں ہوئے۔ادھرکراچی تاجر ایکشن کمیٹی نے حکومت کو 72 گھنٹوں کا الٹی میٹم دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر بجلی کے بلوں میں کیے گئے اضافوں کو واپس نہ لیا گیا تو ایک ہفتے سے 10 دن تک کے طویل دورانیے کی شٹر ڈاؤن ہڑتال کریں گے، جس سے ملک کی تمام چھوٹی بڑی معاشی سرگرمیوں کا پہیہ جام ہوجائے گا، یہ الٹی میٹم کراچی تاجر ایکشن کمیٹی کے کنوینر محمد رضوان نے ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے دیا۔سی سی آئی کے صدر محمد طارق یوسف نے کہا کہ ہمیں امید ہے کہ حکومت بحران سے نکلنے کے لیے کوئی مناسب حل تلاش کرلے گی، کچھ روز کے بعد ہم اجلاس منعقد کرکے صورتحال کا جائزہ لیں گے، اور مناسب فیصلے کریں گے۔ایف پی سی سی آئی کے صدر عرفان اقبال شیخ نے بھی کہا ہے کہ حکومت دیوار پر لکھے کو پڑھنے میں ناکام ہورہی ہے حکومت نے، دوبارہ پیٹرول کی قیمتوں میں اضافہ کرکے مہنگائی کی ایک نئی لہر کو جنم دینے کی بنیاد رکھ دی ہے، جس کے نتیجے میں ملک کی برآمدات بری طرح سے متاثر ہوں گی،انھوں نے کہا کہ معاشی بحران سے نکلنے کے لیے آؤٹ آف دا باکس حل ڈھونڈنے ہوں گے۔بجلی کے بلوں میں ہوشربا اضافے کے خلاف عوام کا غم وغصہ بیجا نہیں ہے،کیونکہ حقیقت یہ ہے کہ گزشتہ ڈیڑھ سال کے دوران شہباز حکومت نے ملک میں بجلی کی قیمتوں میں 50 سے80 فیصد تک اضافے نے عوام کی چیخیں نکال دی تھیں،بعد ازاں نگراں حکومت نے اقتدار سنبھالتے ہی شہباز شریف کے ایجنڈے پر عمل کرتے ہوئے ٹیرف میں ایک دفعہ پھر اضافہ کردیا،بجلی کے بلوں کا جائزہ لیا جائے تو یہ واضح ہوتاہے کہ کمرشل بلز پر78فیصد ٹیکسزجبکہ گھریلو صارفین پر ٹیکسز کی شرح 50 فیصد سے زائد ہوچکی ہے۔گزشتہ ڈیڑھ برس میں مختلف سلیبزکا ٹیرف 50 سے80 فیصد تک بڑھ چکا ہے، نان پروٹیکٹڈ گھریلو صارفین کیلئے بجلی کی قیمت80 فیصد تک بڑھی اور ٹیرف 10 روپے 91پیسے اضافے کے ساتھ فی یونٹ13 روپے48 پیسے سے بڑھ کر24 روپے39 پیسے ہوگیا۔200یونٹ تک کے بلز میں 60 فیصد اضافہ ہوا۔جو یونٹ 18روپے95 پیسے کا تھا وہ11 روپے 91 پیسے اضافے کے ساتھ30 روپے 86 پیسے ہو گیا۔ 300 یونٹ والے صارفین کا ٹیرف12 روپے91 پیسے بڑھا،قیمت22 روپے14 پیسے سے بڑھ کر35 روپے 04پیسے یونٹ ہو گئی۔ 400یونٹ والوں کیلئے14 روپے41 پیسے اضافے کے ساتھ فی یونٹ بجلی39 روپے 94 پیسے کی ہو چکی، 500 یونٹ اوراس سے اوپر بجلی استعمال کرنے والوں کیلئے ڈیڑھ سال میں فی یونٹ 15 روپے41 پیسے مہنگا ہوا ہے۔ 700 یونٹ سے اوپر والوں کا کو بجلی 50 روپے 63پیسے یونٹ مل رہی ہے۔ CGs بجلی بلوں میں بڑا اضافہ گزشتہ ڈیڑھ برس میں مختلف سلیبز کا ٹیرف50سے80فیصد تک بڑھ چکا ہے۔ کمرشل بلز پر 78 فیصد ٹیکسز عائد ہیں گھریلو صارفین پر ٹیکسز کی شرح 50 فیصد سے زائد ہوگئی،اس صورت حال میں بے بس عوام کے پاس ہڑتال کرنے کے علاوہ کوئی اور چارہ کار نہیں تھا،لیکن ایک جانب پوری قوم بجلی کے بلوں میں ظالمانہ ٹیکسز کے خلاف احتجاج کر رہی ہے لیکن حکمرانوں کے بیانات اور انداز سے ایسا محسوس ہو رہا ہے بلکہ وہ ایسا محسوس کرا رہے ہیں کہ عوام کی حیثیت ان کے نزدیک کیڑے مکوڑوں کی طرح ہے۔ چنانچہ ایک جانب وزیر اعظم عوام کو دھمکی دے رہے ہیں اور دوسری جانب پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں بھاری اضافہ کر دیا۔گویا ان کی بلا سے ہڑتال کرو یا خود کشی ہمیں کوئی سروکار نہیں۔ ہم آئی ایم ایف کے غلام ہیں کہ ایک طرف قوم چیخ رہی ہے بجلی کے بل جلائے جا رہے ہیں۔ خودکشیاں ہو رہی ہیں اور وزیر اعظم کہہ رہے ہیں کہ جہاں بل جلائے گئے بجلی بھی وہیں چوری ہوتی ہے اور اس کے ساتھ ہی قوم پر پیٹرول کے نرخوں میں تقریباً15روپے اور ڈیزل کے نرخ میں ساڑھے18روپے اضافہ کر دیا گیا۔ اس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ ایسے حکمران ٹولے کا علاج ایک دن کی ہڑتال نہیں ہے۔ انہیں ایوانوں میں ڈرایا بھی گیا ہے کہ انقلاب فرانس سے ڈروایسے مواقع پر جب عوام نکلتے ہیں تو ان کو کوئی کنٹرول نہیں کر سکتا۔ لیکن یہ کچھ سمجھنے کو تیارنہیں ہیں۔ عوام بھی یہ بات اچھی طرح سمجھ گئے ہیں کہ ان کے پاس مقدمات درج کرانے کے سوا اور کیا ہے۔ وہ زیادہ سے زیادہ یہ کریں گے کہ چند ہزار لوگوں کے خلاف دہشت گردی کے مقدمات درج کر لیں گے کچھ گرفتار ہو جائیں گے، کچھ کو سزا بھی ہو جائے گی۔ لیکن اس سے عوام کے غم وغصے میں کمی آنے کے بجائے اس میں اضافہ ہی ہوگا کیونکہ عوام جس عذاب میں گرفتار ہیں وہ خود کسی سزا سے کم نہیں۔ معاملہ صرف یہی نہیں ہوا ہے بلکہ ڈالر323 روپے کا ہو گیا ہے اور بالآخر پاکستانی روپیہ سری لنکا کے روپے سے بھی نیچے آ گیا۔ اس صورتحال کی وجہ سے اسٹاک مارکیٹ میں بھی تباہ کن مندی ہو گئی لیکن آئی ایم ایف کے نوکروں کو اس سے کیا غرض۔ انہیں تو یہ نہیں پتہ کہ ا صل مسائل کیا ہیں۔ جب وزیر اعظم کہہ رہے ہیں کہ مہنگائی اتنا بڑا مسئلہ نہیں ہے کہ پہیہ جام کیا جائے۔ بلوں کا معاملہ بڑھا چڑھا کر پیش کیا جا رہا ہے۔48گھنٹے میں ریلیف کا اعلان کریں گے۔ لیکن جس چیز میں قوم ریلیف مانگ رہی ہے اسے تو انہوں نے ماننے سے ہی انکار کر دیا ہے۔ وزیر اعظم کہتے ہیں کہ مہنگائی اتنا بڑا مسئلہ نہیں کہ پہیہ جام کیا جائے لیکن شاید وہ نہیں جانتے بلکہ یقیناً نہیں جانتے کہ مہنگائی ہوتی کیا ہے۔اس سے تو لوگوں کا چولہا بجھ گیا ہے۔ وزیراعظم انوارالحق کاکڑ کی باتوں سے معلوم ہوتاہے کہ ان کا عوام سے کوئی رابطہ نہیں ہے،اور یہ سوچنے کو بھی تیار نہیں کہ بھوک سے تڑپتے انسان بھوکے شیر سے بھی زیادہ خطرناک ہوتے ہیں۔ ا گر عوام اس بات کا جواب دینے پر تل گئے تو وزیر اعظم صاحب کو90 دن دور کی بات ہے48گھنٹے بھی منصب پر رہنا ممکن نہیں رہے گا اور پھر انھیں بھی شاید اسلام آباد سے گھر کے بجائے نواز شریف کی طرح بیرون ملک پناہ لینا پڑے،وہ جو یہ کہہ رہے ہیں کہ بلوں کا معاملہ بڑھا چڑھا کر پیش کیا جا رہا ہے اس سے تو لگتا ہے کہ شاید وہ کبھی بل ادا ہی نہیں کرتے ہیں۔ اس لیے انہیں یہ معلوم ہی نہیں کہ بجلی گیس پیٹرول اورد یگر اشیاء کو خریدنا کیسا کام ہے۔ انہوں نے سب سے بڑی بات یہ کہی ہے کہ جہاں بل جلائے گئے ہیں بجلی چوری بھی وہیں ہوتی ہے۔ان کی یہ بات اس اعتبار سے بالکل ٹھیک ہے کہ جہاں سے بجلی کے بلوں میں اضافے جیسے فیصلے کئے جاتے ہیں، بجلی کی چوری وہیں سے شروع ہوتی ہے۔مفت بجلی کا فیصلہ وہیں ہوتا ہے بجلی چوری صرف کنڈا مارنے کا نام نہیں۔ بجلی چوری یہ بھی ہے کہ قوم سے ٹیکس وصول کیا جائے اور اشرافیہ کو مفت بجلی، مفت پیٹرول، مفت ٹیلی فون، مفت سفر کی بے حساب سہولتیں فراہم کی جائیں۔ جس ملک کے وزیر کے نوکر وں کے گھر سے کھربوں روپے برآمد ہو رہے ہوں جس ملک کے ایک ایک وی آئی پی کے پاس بیرون ملک کئی کئی گھر ہوں اور جو مفت بجلی، پیٹرول اور سفر کے مزے لے رہے ہوں وہاں بجلی کے بلوں میں اضافے کے خلاف احتجاج کرنے والے غریب عوام کی کیا وقعت ہوسکتی ہے، ہم سمجھتے ہیں کہ نگراں وزیر اعظم کو عوام کے اس بھرپور احتجاج کا سنجیدگی سے نوٹس لینا چاہئے اور اس ہڑتال کو فلم کا ٹریلر تصور کرکے عوام کے اس احتجاج کو پرامن رکھنے اور عوام کے دلوں میں امید کی شمع جلائے رکھنے کیلئے بروقت الیکشن کرانے کا اہتمام کرنا چاہئے تاکہ عوام کو اس ملک کی تباہی کے تمام ذمہ داروں کو مسترد کرکے گھر بھیجنے اور عوام کے حقیقی ہمدردوں کو اقتدار سونپنے کا موقع مل سکے۔ ہمارے خیال میں اب یہ کھیل ختم ہونا چاہیے کہ ہر آنے والا پچھلے پر ساری ذمہ داری عائد کرکے خود کو پاک دامن ثابت کرنے کی کوشش کرکے قومی خزانے کی لوٹ مار میں لگ جائے۔ اب اس باری باری کے کھیل سے کام نہیں چلے گا کیونکہ اب تمام چہرے عوام کے سامنے بے نقاب ہوچکے ہیں۔ پی پی پی، مسلم لیگ پہلے باری باری بے نقاب ہوئے اور اب پی ڈی ایم کی حکومت میں تو سب ہی بے لباس ہوچکے ہیں،اقتدار کی طلب میں مسلم لیگ ن اور پاکستان پیپلز پارٹی چھوڑ کر عمران خاں کے ساتھ آنے والے الیکٹبلز نے 9 مئی کے بعد جس طرح کینچلی بدلی ہے اس سے ثابت ہوگیاکہ وہ مسلم لیگ اور پی پی پی کے نہیں رہے تو پی ٹی آئی کے کیوں کر رہ سکتے
ہیں۔ انھیں تو صرف اقتدار سے پیار ہے۔اقتدار جس طرف نظر آئے گا وہ اس طرف لڑھک جانے میں ہتک محسوس نہیں کریں گے۔ اس لئے اب عوام ایسے الیکٹیبلز کو بھی عام انتخابات میں ان کی اوقات یاد دلائیں گے۔ عوام نے حکمرانوں کے ظالمانہ بلکہ سفاکانہ فیصلوں کے خلاف ہڑتال کرکے اپنے غصے کا اظہار تو کردیا ہے لیکن اب ضرورت اس بات کی ہے کہ وہ عام انتخابات میں ان گدھوں کو یکسر مسترد کرکے انھیں اس طرح رسوا کریں کہ وہ عوام کو منہ دکھانے کے قابل نہ رہیں جب تک عوام تمام سابق حکمرانوں کو مسترد نہیں کردیتے اس وقت تک ان کے مسائل حل نہیں ہوں گے۔عوام کو اب اپنے چھوٹے چھوٹے مفادات،محبتوں برادریوں کو بالائے طاق رکھ کر اپنے مسائل حل کرنے کے لیے مخلص لوگوں کو اس بھاری اکثریت سے منتخب کرنا ہو گا کہ کوئی ان کے فیصلوں کی راہ نہ روک سکے۔


متعلقہ خبریں


نریندر مودی کی نفرت انگیز سوچ وجود - بدھ 01 مئی 2024

بھارت میں عام انتخابات کا دوسرا مرحلہ بھی اختتام کے قریب ہے، لیکن مسلمانوں کے خلاف مودی کی ہرزہ سرائی میں کمی کے بجائے اضافہ ہوتا جارہاہے اورمودی کی جماعت کی مسلمانوں سے نفرت نمایاں ہو کر سامنے آرہی ہے۔ انتخابی جلسوں، ریلیوں اور دیگر اجتماعات میں مسلمانوں کیخلاف وزارت عظمی کے امی...

نریندر مودی کی نفرت انگیز سوچ

رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت وجود - بدھ 13 مارچ 2024

مولانا زبیر احمد صدیقی رمضان المبارک کو سا ل بھر کے مہینوں میں وہی مقام حاصل ہے، جو مادی دنیا میں موسم بہار کو سال بھر کے ایام وشہور پر حاصل ہوتا ہے۔ موسم بہار میں ہلکی سی بارش یا پھو ار مردہ زمین کے احیاء، خشک لکڑیوں کی تازگی او رگرد وغبار اٹھانے والی بے آب وگیاہ سر زمین کو س...

رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت

پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ وجود - منگل 27 فروری 2024

نگران وزیر توانائی محمد علی کی زیر صدارت کابینہ توانائی کمیٹی اجلاس میں ایران سے گیس درآمد کرنے کے لیے گوادر سے ایران کی سرحد تک 80 کلو میٹر پائپ لائن تعمیر کرنے کی منظوری دے دی گئی۔ اعلامیہ کے مطابق کابینہ کمیٹی برائے توانائی نے پاکستان کے اندر گیس پائپ لائن بچھانے کی منظوری دی،...

پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ

ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے! وجود - هفته 24 فروری 2024

سندھ ہائیکورٹ کے حکم پر گزشتہ روز سوشل میڈیا پلیٹ فارم ٹوئٹر جسے اب ا یکس کا نام دیاگیاہے کی سروس بحال ہوگئی ہے جس سے اس پلیٹ فارم کو روٹی کمانے کیلئے استعمال کرنے والے ہزاروں افراد نے سکون کاسانس لیاہے، پاکستان میں ہفتہ، 17 فروری 2024 سے اس سروس کو ملک گیر پابندیوں کا سامنا تھا۔...

ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے!

گرانی پر کنٹرول نومنتخب حکومت کا پہلا ہدف ہونا چاہئے! وجود - جمعه 23 فروری 2024

ادارہ شماریات کی تازہ ترین رپورٹ کے مطابق جنوری میں مہنگائی میں 1.8فی صد اضافہ ہو گیا۔رپورٹ کے مطابق گزشتہ ماہ شہری علاقوں میں مہنگائی 30.2 فی صد دیہی علاقوں میں 25.7 فی صد ریکارڈ ہوئی۔ جولائی تا جنوری مہنگائی کی اوسط شرح 28.73 فی صد رہی۔ابھی مہنگائی میں اضافے کے حوالے سے ادارہ ش...

گرانی پر کنٹرول نومنتخب حکومت کا پہلا ہدف ہونا چاہئے!

پاکستان کی خراب سیاسی و معاشی صورت حال اور آئی ایم ایف وجود - پیر 19 فروری 2024

عالمی جریدے بلوم برگ نے گزشتہ روز ملک کے عام انتخابات کے حوالے سے کہا ہے کہ الیکشن کے نتائج جوبھی ہوں پاکستان کیلئے آئی ایم ایف سے گفتگو اہم ہے۔ بلوم برگ نے پاکستان میں عام انتخابات پر ایشیاء فرنٹیئر کیپیٹل کے فنڈز منیجر روچرڈ یسائی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کے بیرونی قرض...

پاکستان کی خراب سیاسی و معاشی صورت حال اور آئی ایم ایف

تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب وجود - جمعرات 08 فروری 2024

علامہ سید سلیمان ندویؒآں حضرت صلی اللہ علیہ وسلم کی بعثت تعلیم او رتزکیہ کے لیے ہوئی، یعنی لوگوں کو سکھانا اور بتانا اور نہ صرف سکھانا او ربتانا، بلکہ عملاً بھی ان کو اچھی باتوں کا پابند اور بُری باتوں سے روک کے آراستہ وپیراستہ بنانا، اسی لیے آپ کی خصوصیت یہ بتائی گئی کہ (یُعَلِّ...

تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب

بلوچستان: پشین اور قلعہ سیف اللہ میں انتخابی دفاتر کے باہر دھماکے، 26 افراد جاں بحق وجود - بدھ 07 فروری 2024

بلوچستان کے اضلاع پشین اور قلعہ سیف اللہ میں انتخابی امیدواروں کے دفاتر کے باہر دھماکے ہوئے ہیں جن کے سبب 26 افراد جاں بحق اور 45 افراد زخمی ہو گئے۔ تفصیلات کے مطابق بلوچستان اور خیبر پختون خوا دہشت گردوں کے حملوں کی زد میں ہیں، آج بلوچستان کے اضلاع پشین میں آزاد امیدوار ا...

بلوچستان: پشین اور قلعہ سیف اللہ میں انتخابی دفاتر  کے باہر دھماکے، 26 افراد جاں بحق

حقوقِ انسان …… قرآن وحدیث کی روشنی میں وجود - منگل 06 فروری 2024

مولانا محمد نجیب قاسمیشریعت اسلامیہ نے ہر شخص کو مکلف بنایا ہے کہ وہ حقوق اللہ کے ساتھ حقوق العباد یعنی بندوں کے حقوق کی مکمل طور پر ادائیگی کرے۔ دوسروں کے حقوق کی ادائیگی کے لیے قرآن وحدیث میں بہت زیادہ اہمیت، تاکید اور خاص تعلیمات وارد ہوئی ہیں۔ نیز نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم،...

حقوقِ انسان …… قرآن وحدیث کی روشنی میں

گیس کی لوڈ شیڈنگ میں بھاری بلوں کا ستم وجود - جمعرات 11 جنوری 2024

پاکستان میں صارفین کے حقوق کی حفاظت کا کوئی نظام کسی بھی سطح پر کام نہیں کررہا۔ گیس، بجلی، موبائل فون کمپنیاں، انٹرنیٹ کی فراہمی کے ادارے قیمتوں کا تعین کیسے کرتے ہیں اس کے لیے وضع کیے گئے فارمولوں کو پڑتال کرنے والے کیا عوامل پیش نظر رکھتے ہیں اور سرکاری معاملات کا بوجھ صارفین پ...

گیس کی لوڈ شیڈنگ میں بھاری بلوں کا ستم

سپریم کورٹ کے لیے سینیٹ قرارداد اور انتخابات پر اپنا ہی فیصلہ چیلنج بن گیا وجود - جمعرات 11 جنوری 2024

خبر ہے کہ سینیٹ میں عام انتخابات ملتوی کرانے کی قرارداد پر توہین عدالت کی کارروائی کے لیے دائر درخواست پر سماعت رواں ہفتے کیے جانے کا امکان ہے۔ اس درخواست کا مستقبل ابھی سے واضح ہے۔ ممکنہ طور پر درخواست پر اعتراض بھی لگایاجاسکتاہے اور اس کوبینچ میں مقرر کر کے باقاعدہ سماعت کے بعد...

سپریم کورٹ کے لیے سینیٹ قرارداد اور انتخابات پر اپنا ہی فیصلہ چیلنج بن گیا

منشیات فروشوں کے خلاف فوری اور موثر کارروائی کی ضرورت وجود - منگل 26 دسمبر 2023

انسدادِ منشیات کے ادارے اینٹی نارکوٹکس فورس کی جانب سے ملک اور بالخصوص پشاور اور پختونخوا کے دیگر شہروں میں منشیات کے خلاف آپریشن کے دوران 2 درجن سے زیادہ منشیات کے عادی افراد کو منشیات کی لت سے نجات دلاکر انھیں کارآمد شہری بنانے کیلئے قائم کئے بحالی مراکز پر منتقل کئے جانے کی اط...

منشیات فروشوں کے خلاف فوری اور موثر کارروائی کی ضرورت

مضامین
مودی کی 'مسلم مخالف' شبیہ کس نے بنائی؟ وجود منگل 28 مئی 2024
مودی کی 'مسلم مخالف' شبیہ کس نے بنائی؟

یوم ِ تکبیر ،کریڈٹ کی مصنوعی موت وجود منگل 28 مئی 2024
یوم ِ تکبیر ،کریڈٹ کی مصنوعی موت

یوم تکبیر۔پاکستان کے ایٹمی قوت بننے کا تاریخی دن وجود منگل 28 مئی 2024
یوم تکبیر۔پاکستان کے ایٹمی قوت بننے کا تاریخی دن

اغیارکے آلہ کار وجود منگل 28 مئی 2024
اغیارکے آلہ کار

نوجوانوں کی صلاحیتوں کو زنگ لگ جائے گا! وجود منگل 28 مئی 2024
نوجوانوں کی صلاحیتوں کو زنگ لگ جائے گا!

اشتہار

تجزیے
نریندر مودی کی نفرت انگیز سوچ وجود بدھ 01 مئی 2024
نریندر مودی کی نفرت انگیز سوچ

پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ وجود منگل 27 فروری 2024
پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ

ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے! وجود هفته 24 فروری 2024
ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے!

اشتہار

دین و تاریخ
رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت وجود بدھ 13 مارچ 2024
رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت

دین وعلم کا رشتہ وجود اتوار 18 فروری 2024
دین وعلم کا رشتہ

تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب وجود جمعرات 08 فروری 2024
تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب
تہذیبی جنگ
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی وجود اتوار 19 نومبر 2023
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی

مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت

سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے وجود منگل 15 اگست 2023
سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے
بھارت
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا وجود پیر 11 دسمبر 2023
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا

بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی وجود پیر 11 دسمبر 2023
بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی

بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک وجود بدھ 22 نومبر 2023
بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک

راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات
افغانستان
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے وجود بدھ 11 اکتوبر 2023
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے

افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں وجود اتوار 08 اکتوبر 2023
افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں

طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا وجود بدھ 23 اگست 2023
طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا
شخصیات
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے وجود اتوار 04 فروری 2024
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے

عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے
ادبیات
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر وجود پیر 04 دسمبر 2023
سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر

مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر وجود پیر 25 ستمبر 2023
مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر