وجود

... loading ...

وجود

علامہ اقبالؒ کے یوم وفات پر اُن کے پیغام آزادی اور استعمار سے نجات کا سبق یاد کیجیے!

جمعرات 21 اپریل 2022 علامہ اقبالؒ کے یوم وفات پر اُن کے پیغام آزادی اور استعمار سے نجات کا سبق یاد کیجیے!

حضرت علامہ اقبالؒ کا آج یوم وفات (21 اپریل) ہے۔حضرت علامہ کی فکر مسلمانوں کو ہر قسم کی غلامی سے دائمی نجات دلانے کی تحریک رکھتی ہے۔ وہ مسلم تہذیب کی حفاظت کے تمام امکانات کو اپنی فکر سے بروئے کار لائے اور برصغیر کی سیاست میں انگریزوں کے سامراجی مقاصد اورہندوو¿ں کے بدترین سیاسی و مذہبی اہداف کا مقابلہ کرنے کے لیے اسلامی فکر کے حرکی تصور کو بیدار کرتے رہے۔ اقبالؒ کی فکر مایوسی میں امید، سکوت میں ہنگامہ ، جمود میں حرکت اور غلامی میں آزادی کے جذبات پیدا کردیتی ہے۔ علامہ اقبال نے گزشتہ تین چار صدیوں میں مسلمانوں کی مسلسل زبوں حالی اور زوال کے اسباب کو دور کرنے کے لیے اُن میں جس ”ورلڈ ویو“ کو پیدا کرنے کی کوشش کی ، اُس کی ضرورت آج پاکستان کو سب سے زیادہ ہے، جو کہنے کو تو 14 اگست 1947ءکو آزاد ہوگیا، مگر اسے ایک محدود اشرافیہ اور طاقت پر قابض مٹھی بھر لوگوں نے عملاً امریکا کی تحویل میں دے دیا ہے۔ پاکستان کے بدترین اقتصادی حالات کو جس طرح استعماری عزائم کا چارہ بنانے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے، اُس کے نتائج غلامی سے بھی بدتر ہیں۔ پاکستان میں حکومتوں کی اُتھل پتھل سے لے کر مخصوص حکومتوں کے قیام تک جس قسم کی سازشیں اور مداخلتیں کی جاتی ہیں،اس کا پوری طرح ادراک بھی ممکن نہیں ہوپاتا۔ پاکستان کو مستقل طور پر امریکا کاچارہ بنائے رکھنے کے لیے یہاں ایک مستقل نوع کا اقتصادی کنٹرول امریکا کو حاصل ہو گیا ہے۔ عالمی اقتصادی اداروں کے پاس ہماری معیشت گروی نہیں، بلکہ اس قوم کا مستقبل رہن رکھا ہوا ہے جس کا خواب اقبال ایسے عظیم مفکر نے دیکھا اور جن کی زندگی مسلمانوں میں ایک ملی شعور بیدا کرنے اور اُنہیں حقیقی آزادی سے ہمکنار کرنے کا شعور دینے میں صرف ہوئی۔ علامہ اقبالؒ نے مسلمانوں کی اقتصادی زبوں حالی کے ممکنہ خطرناک نتائج کا ادراک کرلیا تھا، اس لیے اُنہیں خودی، خودداری ، خود انحصاری اور خودکفالتی کے ایک حرکی تصور سے آشنا کیا۔ یہی تصور پاکستان کے امریکا سے مستقل نجات کا ذریعہ بن سکتا ہے، جس نے ہمارے قومی، ملی ، دفاعی، علاقائی اور تہذیبی مقاصد کو یرغمال بنالیا ہے۔ پاکستان میں لیاقت علی خان کے زمانے سے جاری امریکا کی سازشیں اور مداخلتیں اور ایوب خان کے عہد سے جاری اشرافیہ کو قابو کرنے کی روش نے آزادی کا کوئی مطلب اس ملک کے لیے باقی نہیں رہنے دیا۔ استعمار ی ممالک کیسے حکومتیں بدلتے ہیں، اور کس طرح ایک سے دوسرے کو قابو کراتے ہیں، اس کی ایک جھلک بانگ درا کی فہرست ظریفانہ کے چند مصرعوں میں دکھائی دیتی ہے جس میں علامہ نے بتایا ہے کہ کس طرح مسلم علاقوں کی بندربانٹ کرتے ہوئے تب کا برطانوی وزیرخارجہ لارڈ کرزن مداوا کرنے کی خاطر ہندوستان سے وفد طلب کررہا ہے، وہ سوال اُٹھاتے ہیں:
وفد ہندُستاں سے کرتے ہیں سر آغا خاں طلب
کیا یہ چورن ہے پے ہضمِ فلسطین و عراق
پاکستان میں ان دنوں امریکا کی مداخلت اور سازش کے خلاف عوامی جذبا ت بیدار ہیں، مگر ان جذبات کو درست سمت میں ایک علمی و تہذیبی بنیاد دینے کی ضرورت ہے۔ اور مسلمانوں میں ایک تہذیبی شعور کے ساتھ ”ورلڈ ویو “ پیدا کرنے کی ضرورت ہے۔ یہ مقصد علامہ کی فکر سے پوری طرح حاصل کیا جاسکتا ہے۔ حضرت علامہ اقبالؒ کے یوم وفات پر اُن کے پیغام کو زندہ کرکے استعمار سے نجات کا سبق یاد کیا جاسکتا ہے۔ علامہ کے اپنے ہی الفاظ میں لوگوں کو جھنجھوڑنے کی ضرورت ہے کہ
ہر زائرِ چمن سے یہ کہتی ہے خاکِ پاک
غافل نہ رہ جہان میں گردوں کی چال سے


متعلقہ خبریں


علامہ اقبال کا یو م وفات آج منایا جائے گا وجود - جمعرات 21 اپریل 2022

شاعر مشرق مفکر پاکستان ڈاکٹر علامہ محمد اقبال کا 83 واں یوم وفات آج 21 اپریل بروز جمعرات کو عقیدت و احترام کے ساتھ منایا جائیگا اس سلسلہ میں ملک کے مختلف علاقوں میں علامہ اقبال کے حوالے سے مختلف تقریبات کا اہتمام کیا گیا جبکہ آزاد کشمیر سمیت ملک بھر میں سرکاری و غیر سرکاری سطح پر...

علامہ اقبال کا یو م وفات آج منایا جائے گا

رمضان المبارک جسم کے ساتھ ذہن کو بھی خالص کرنے کا موقع ہے! وجود - اتوار 03 اپریل 2022

رمضان المبارک کا آغاز ہوگیا۔ مسلمانوں کے لیے یہ مبارک مہینہ جسمانی، ذہنی اور روحانی تربیت کے طور پر انتہائی اہم ہے۔ یہ اہتمام خود خالق نے اپنی مخلوق کے لیے کیا ہے۔ چنانچہ مسلمانوں کے لیے جہاں انفرادی طور پر یہ مبارک مہینہ معنی خیز ہے، وہیں یہ اجتماعی طور پر بھی مسلمانوں کی سمت کا...

رمضان المبارک جسم کے ساتھ ذہن کو بھی خالص کرنے کا موقع ہے!

قومی افق پر چھائے چھچھوروں سے نجات کیسے پائیں؟ وجود - جمعه 11 فروری 2022

پاکستان کا سیاسی منظرنامہ ہی تتر بتر نہیں، سماجی دامن بھی تار تار ہے۔یہاں زندگی کو ٹی وی کی آنکھ سے دیکھا جانے لگا ہے۔ جسے مغرب میں "idiot box"کہا جاتا ہے۔ سیاسی و سماجی زندگی کی اجتماعی حرکیات میں چھائے مادی تناظر نے اقدار، غیرت، حیا، وفا، ایثار، بھرم اور قربانی کی تمام روایتوں ...

قومی افق پر چھائے چھچھوروں سے نجات کیسے پائیں؟

فیصل واوڈا ہی نہیں، نااہل نظام کو بھی اکھاڑ پھینکیں! وجود - جمعرات 10 فروری 2022

الیکشن کمیشن نے تحریک انصاف کے فیصل واوڈا کو دُہری شہریت کیس میں نااہل قرار دے دیا۔ سابق سیکریٹری الیکشن کمیشن کنور دلشاد نے واضح کیا کہ یہ نااہلی، تاحیات نااہلی کے زُمرے میں آتی ہے۔ فیصل واوڈا نے 2018 کے عام انتخابات میں کراچی سے قومی اسمبلی کی نشست پر الیکشن لڑتے ہوئے اپنی دُہر...

فیصل واوڈا ہی نہیں، نااہل نظام کو بھی اکھاڑ پھینکیں!

ہے رشک ایک خلق کو جوہر کی موت پر ۔ یہ اس کی دین ہے جسے پروردگار دے وجود - بدھ 05 جنوری 2022

مولانا محمد علی جوہر تاریخ کا ایک لہکتا استعارہ ہے۔اُن کے بغیر برصغیر کی آزادی کی تاریخ مکمل نہیں ہوتی۔اُنہوں نے مسلمانانِ ہند کے اندر جوش، خروش، ہوش، حرکت ، حرارت، زندگی و تابندگی بھردی تھی۔ مولانا محمد علی جوہر نے استعمار کے خلاف عوام میں حقیقی شعور پیدا کیا۔ اُنہوں نے ہی نوآبا...

ہے رشک ایک خلق کو جوہر کی موت پر        ۔ یہ اس کی دین ہے جسے پروردگار دے

متروکہ وقف املاک بورڈ کی جائیدادوں کاکرایہ نہ دینے والوں کے خلاف کارروائی وجود - منگل 28 دسمبر 2021

ڈائریکٹر ایف آئی اے ڈاکٹر رضوان نے کہا ہے کہ متروکہ وقف املاک بورڈ کی جائیدادوں کے استعمال کا کرایہ نہ دینے والوں کے خلاف کارروائی کی گئی ،فرانزک آڈٹ کروایا گیا اورلاہور سمیت دیگر شہروں میں پراپرٹی پر ناجائز قابضین سے اب تک 15ارب کی پراپرٹی کو واگزار کروالیا گیا ہے ۔ پریس کانفرنس...

متروکہ وقف املاک بورڈ کی جائیدادوں کاکرایہ نہ دینے والوں کے خلاف کارروائی

مضامین
خون کی بارش وجود جمعه 20 مئی 2022
خون کی بارش

پہلے اور اب وجود جمعه 20 مئی 2022
پہلے اور اب

انتخاب کرلیں وجود بدھ 18 مئی 2022
انتخاب کرلیں

کام کی باتیں۔۔ وجود بدھ 18 مئی 2022
کام کی باتیں۔۔

باغی اوربغاوت وجود منگل 17 مئی 2022
باغی اوربغاوت

وقت کہاں بہتا ہے؟ وجود پیر 16 مئی 2022
وقت کہاں بہتا ہے؟

اشتہار

تہذیبی جنگ
وفاقی شرعی عدالت کا 19سال بعد فیصلہ ، سود کے لیے سہولت کاری کرنے والے تمام قوانین ، شقیں غیرشرعی قرار وجود جمعرات 28 اپریل 2022
وفاقی شرعی عدالت کا 19سال بعد فیصلہ ، سود کے لیے سہولت کاری کرنے والے تمام قوانین ، شقیں غیرشرعی قرار

بھارتی معروف سماجی کارکن سبری مالا نے اسلام قبول کرلیا، نام فاطمہ سبریمالا رکھ لیا وجود منگل 26 اپریل 2022
بھارتی معروف سماجی کارکن سبری مالا نے اسلام قبول کرلیا، نام فاطمہ سبریمالا رکھ لیا

موبائل فون فلسطینیوں کا بندوق سے زیادہ طاقتور ہتھیار بن گیا وجود هفته 23 اپریل 2022
موبائل فون فلسطینیوں کا بندوق سے زیادہ طاقتور ہتھیار بن گیا

سپریم لیڈر لڑکیوں کی تعلیم پر پابندی کے حامی ہیں،سینئر طالبان رکن وجود پیر 18 اپریل 2022
سپریم لیڈر لڑکیوں کی تعلیم پر پابندی کے حامی ہیں،سینئر طالبان رکن

سوئیڈن میں قران پاک کی بے حرمتی کے اعلان پر احتجاج وجود اتوار 17 اپریل 2022
سوئیڈن میں قران پاک کی بے حرمتی کے اعلان پر احتجاج

ایمن الظواہری کی نئی ویڈیو،اللہ اکبرکا نعرہ لگانے والی بھارتی لڑکی کی تعریف وجود بدھ 06 اپریل 2022
ایمن الظواہری کی نئی ویڈیو،اللہ اکبرکا نعرہ لگانے والی بھارتی لڑکی کی تعریف

اشتہار

بھارت
بھارتی عدالت کے ہاتھوں انصاف کا قتل، یاسین ملک بغاوت، وطن دشمنی اور دہشت گردی کے مجرم قرار وجود جمعرات 19 مئی 2022
بھارتی عدالت کے ہاتھوں انصاف کا قتل، یاسین ملک بغاوت، وطن دشمنی اور دہشت گردی کے مجرم قرار

بھارت کی افغانستان میں سفارتخانہ کھولنے کے لیے طالبان سے بات چیت وجود بدھ 18 مئی 2022
بھارت کی افغانستان میں سفارتخانہ کھولنے کے لیے طالبان سے بات چیت

بھارتی ایجنسی کا داؤد ابراہیم کے دو قریبی ساتھیوں کو گرفتار کرنے کا دعویٰ وجود هفته 14 مئی 2022
بھارتی ایجنسی کا داؤد ابراہیم کے دو قریبی ساتھیوں کو گرفتار کرنے کا دعویٰ

بھارتی سپریم کورٹ نے حکومت کو غداری کے قانون کے تحت مقدمات کے انداج سے روک دیا وجود جمعرات 12 مئی 2022
بھارتی سپریم کورٹ نے حکومت کو غداری کے قانون کے تحت مقدمات کے انداج سے روک دیا
افغانستان
بھارت کی افغانستان میں سفارتخانہ کھولنے کے لیے طالبان سے بات چیت وجود بدھ 18 مئی 2022
بھارت کی افغانستان میں سفارتخانہ کھولنے کے لیے طالبان سے بات چیت

طالبان کا پہلا سالانہ بجٹ پیش،50 کروڑ ڈالر خسارے کی پیشن گوئی وجود پیر 16 مئی 2022
طالبان کا پہلا سالانہ بجٹ  پیش،50 کروڑ ڈالر خسارے کی پیشن گوئی

پنج شیر میں امارت اسلامیہ کے مخالفین نے ہتھیار ڈال دیے وجود جمعرات 12 مئی 2022
پنج شیر میں امارت اسلامیہ کے مخالفین نے ہتھیار ڈال دیے

طالبان مخالف فورسز کا وادی پنج شیر کے 3 اضلاع پر قبضے کا دعویٰ وجود اتوار 08 مئی 2022
طالبان مخالف فورسز کا وادی پنج شیر کے 3 اضلاع پر قبضے کا دعویٰ
ادبیات
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع کردار پرنئی کتاب شائع وجود هفته 23 اپریل 2022
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع  کردار پرنئی کتاب شائع

مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار وجود بدھ 06 اپریل 2022
مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار

پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل وجود منگل 04 جنوری 2022
پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل

پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی وجود جمعرات 23 دسمبر 2021
پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی
شخصیات
آسٹریلین کرکٹ لیجنڈ اینڈریو سائمنڈز کار حادثے میں ہلاک وجود اتوار 15 مئی 2022
آسٹریلین کرکٹ لیجنڈ اینڈریو سائمنڈز کار حادثے میں ہلاک

متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زاید النہیان 73 سال کی عمر میں انتقال کرگئے وجود هفته 14 مئی 2022
متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زاید النہیان 73 سال کی عمر میں انتقال کرگئے

سیاست سے قطعاً کوئی تعلق نہیں، مولانا طارق جمیل وجود پیر 09 مئی 2022
سیاست سے قطعاً کوئی تعلق نہیں، مولانا طارق جمیل

مزاح کے بے تاج بادشاہ معین اختر کو مداحوں سے بچھڑے 11برس بیت گئے وجود جمعه 22 اپریل 2022
مزاح کے بے تاج بادشاہ معین اختر کو مداحوں سے بچھڑے 11برس بیت گئے