وجود

... loading ...

وجود

فیصل واوڈا ہی نہیں، نااہل نظام کو بھی اکھاڑ پھینکیں!

جمعرات 10 فروری 2022 فیصل واوڈا ہی نہیں، نااہل نظام کو بھی اکھاڑ پھینکیں!


الیکشن کمیشن نے تحریک انصاف کے فیصل واوڈا کو دُہری شہریت کیس میں نااہل قرار دے دیا۔ سابق سیکریٹری الیکشن کمیشن کنور دلشاد نے واضح کیا کہ یہ نااہلی، تاحیات نااہلی کے زُمرے میں آتی ہے۔ فیصل واوڈا نے 2018 کے عام انتخابات میں کراچی سے قومی اسمبلی کی نشست پر الیکشن لڑتے ہوئے اپنی دُہری شہریت کو چھپایا تھا۔اب 2022ء میں جاکر کچھوے کی چال چلنے والے اس متعفن اور ناقص نظام نے اُن کے خلاف محفوظ فیصلہ سنایا ہے۔فیصل واوڈا کا مقدمہ پہلے دن سے ہی سورج کی طرح روشن تھا۔ وہ دُہری شہریت چھپانے اور کاغذات نامزدگی جمع کراتے ہوئے جھوٹا حلف نامہ جمع کرانے کے مرتکب ہوئے تھے۔ الیکشن کمیشن کا اس مقدمے پر فیصلہ نوشتہ دیوار تھا۔ چنانچہ فیصل واوڈا قومی اسمبلی کی نشست چھوڑ کر سینیٹ کی نشست کی ہیراپھیری میں ملوث ہوئے تاکہ وہ قومی اسمبلی کی حدتک اپنی نشست کے معاملے میں پیدا ہونے والے سوال سے الیکشن کمیشن میں جان چھڑا سکیں، مگر اُن کا جھوٹا حلف نامہ اُنہیں کسی پوزیشن کے قابل نہیں چھوڑتا، لہٰذا اُنہیں اپنے لمحہ برحق کا سامنا ہے۔ مگر یہ اس معاملے کا اصل پہلو نہیں۔ درحقیقت اس فیصلے سے اصل سوال الیکشن کمیشن کی جانب سے روا تاخیر پر اُٹھتا ہے۔ تاخیری فیصلہ کتنا ہی درست ہو، الیکشن کمیشن کو بری الذمہ نہیں کرتا۔ کیونکہ اس پورے عرصے میں فیصل واوڈا اس نظام کے ساتھ کھلواڑ کرتے رہے۔ ایک امتیازی زندگی کا لطف اُٹھاتے رہے۔ اپنی ناجائز پوزیشن سے ناجائز فوائد سمیٹتے رہے۔ فیصلہ واوڈا نے اس عرصے میں جہاں جہاں، جو جو کچھ کیا، اس کا سبب یہی تاخیری فیصلہ ہے۔اس لیے یہ فیصلہ خوش آئند ہوتے ہوئے بھی بجائے خود الیکشن کمیشن کے خلاف ایک مقدمہ قائم کرنے کا موجب ہے۔ اس معاملے کا دوسرا پہلو بھی نہایت اہم ہے۔ فیصل واوڈا کی دُہری شہریت اور جھوٹا حلف نامہ اول روز سے خود تحریک انصاف کے قائد، وزیراعظم عمران خان کے سامنے واضح تھا۔ مگر اُنہوں نے اس پورے معاملے میں خاموشی اختیار کیے رکھی۔ عمران خان اپنے مخالفین کے بستر کی سلوٹوں کو بھی گننے سے اجتناب نہیں کرتے۔ وہ اس معاملے میں مردو خواتین کا امتیاز بھی فراموش کردیتے ہیں۔ اُنہوں نے اہلیت کے معاملے کو سب سے زیادہ اپنی سیاست کا موضوع بنایا۔ وہ صادق اور امین کے قانونی مباحث کا بھی سب سے سرگرم حصہ رہے اور نوازشریف کو اسی چُھڑی سے ذبح کرنے میں اپنا حصہ ڈالتے رہے۔ کیا عمران خان کو اپنی ناک کے نیچے یہ مسئلہ دکھائی نہ دیا۔ مخالفین کو سب سے زیادہ بدعنوانی اور اخلاقی معاملات میں رگیدنے والے عمران خان نے اپنی منجھی کے نیچے ڈانگ پھیرنا کیوں گوارا نہ کیا؟ آخر کردار میں اتنی واضح دوئی کے باوجود ریاست مدینہ کی تکرار کی جرأت کہاں سے پیدا ہوتی ہے؟ فیصل واوڈا کی نااہلیت جتنی شرم ناک ہے، عمران خان کی اپنے مقربین کے لیے اپنے مخالفین جیسے ہی کردار پر خاموشی بھی اتنی ہی اذیت ناک ہے۔ اس ضمن میں تیسرا سب سے اہم پہلو یہ ہے کہ مہذب دنیا میں جب کوئی اس نوع کی صریح غلط بیانی کا مرتکب قرار پاتا ہے، اور کسی سطح پر اس نوع کی بدچلنی کھرل ہوجاتی ہے تو ملوث کردار عبرت کی ایک مثال بن جاتا ہے۔ ایسے شخص سے خاندان کے لوگ بھی اجتناب کرنے لگتے ہیں۔ اُنہیں ذرائع ابلاغ حرفِ غلط کی طرح اپنے درمیان سے مٹا دیتے ہیں۔ کسی اجتماعی زندگی میں اُنہیں کسی کردار کے قابل نہیں چھوڑا جاتا۔ مگر کچھ عرصہ قبل زبیر عمر کی سامنے آنے والی شرم ناک ویڈیو کا معاملہ ہو یا پھر فیصل واوڈا کی نااہلی کا ماجرا ہو، یہ لوگ نہایت ڈھٹائی سے اپنے لیے گنجائشیں پیدا کرنے میں مصروف ہوجاتے ہیں۔ زبیر عمر آج بھی اسکرینوں پر چمک رہے ہیں اور فیصل واوڈا اور اُن کی جماعت اس فیصلے کے خلاف اپیل کی تیاری کررہی ہے۔ ایسی شرمناک روش مردہ معاشروں کی پہچان ہے۔ (محمد طاہر)


متعلقہ خبریں


موت کیا ایک لفظِ بے معنی جس کو مارا حیات نے مارا وجود - هفته 03 دسمبر 2022

نوے کی دہائی میں فلم کی جگماتی اسکرین پر اپنی پاٹ دار آواز سے گونجنے والے افضال احمد گزشتہ روز انتقال کر گئے۔ اپنے شاندار اظہار اور جاندار کردار کے باعث فلمی دنیا میں ایک نام اور مقام بنانے والے افضال احمد کی موت نے اس رنگین دنیا کے بظاہر پرشور مگر درحقیقت پرسکوت سمندر میں ذرا سی...

موت کیا ایک لفظِ بے معنی               جس کو مارا حیات نے مارا

ایک سورج تھا کہ تاروں کے گھرانے سے اٹھا وجود - اتوار 20 نومبر 2022

18/نومبر کی تاریخ دل میں برچھی بن کر اُتر گئی۔ اس تاریخ نے ماضی میں قدیم وجدید علوم کے شَناور علامہ شبلی نعمانی کو ہم سے جدا کردیا تھا، اب یہی تاریخ جلیل القدر عالم ِ دین صدر دارالعلوم کراچی مفتی رفیع عثمانی صاحب کی زندگی کی برکتوں سے ہمیں محروم کر گئی۔ مفتی رفیع عثمانی نے تحریک ...

ایک سورج تھا کہ تاروں کے گھرانے سے اٹھا

الیکشن کمیشن نے آئندہ عام انتخابات کی تیاریاں تیز کر دیں وجود - اتوار 20 نومبر 2022

الیکشن کمیشن نے آئندہ عام انتخابات کی تیاریاں تیز کردیں ہیں، عام انتخابات کیلئے ریٹرننگ افسران نے انتظامیہ سے کام لینا شروع کر دیا۔ تفصیلات کے مطابق الیکشن کمیشن نے آئندہ عام انتخابات کی تیاریاں تیز کردیں، جس کیلئے الیکشن کمیشن نیصوبائی حکومتوں سے افسران کی فہرستیں طلب کر لیں۔ ال...

الیکشن کمیشن نے آئندہ عام انتخابات کی تیاریاں تیز کر دیں

الیکشن کمیشن کو کراچی، حیدرآباد میں بلدیاتی انتخابات کے شیڈول کا اعلان کرنے کا حکم وجود - جمعه 18 نومبر 2022

سندھ ہائی کورٹ نے کراچی اور حیدر آباد ڈویژن میں بلدیاتی انتخابات کرانے کا حکم دے دیا۔ جمعہ کو عدالتِ عالیہ نے بلدیاتی انتخابات میں تاخیر کے خلاف جماعتِ اسلامی اور پی ٹی آئی کی درخواستیں منظور کرتے ہوئے ان کے حق میں فیصلہ سنایا ہے۔ عدالتِ عالیہ نے الیکشن کمیشن آف پاکستان کو حکم دی...

الیکشن کمیشن کو کراچی، حیدرآباد میں بلدیاتی انتخابات کے شیڈول کا اعلان کرنے کا حکم

صحافت اپنا قبلہ درست کرے، ورنہ آزادی تو دور غلامی بھی ڈھنگ کی نہ ملے گی وجود - اتوار 30 اکتوبر 2022

پاکستان میں آزاد اور ذمہ دارانہ صحافت بہت تیزی سے روبہ زوال ہے۔ نئے نئے ابلاغی اداروں نے اس مقدس پیشے کو تماشا بنا کر رکھ دیا ہے۔ ذرائع ابلاغ کے نمائندے طاقت وروں اور سیاسی جماعتوں کے نوکروں کی طرح کارگزار ہیں۔ اینکرز اور تجزیہ کار واضح تعصبات کے شکار ہیں۔ سیاسی کارکنان کی طرح صح...

صحافت اپنا قبلہ درست کرے، ورنہ آزادی تو دور غلامی بھی ڈھنگ کی نہ ملے گی

اسٹیبلشمنٹ کی ضرورت پہلے تھی نہ اب ہے، عمران خان وجود - اتوار 30 اکتوبر 2022

سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ اسٹیبلشمنٹ کی ضرورت نہ پہلے تھی نہ اب ہے۔ نجی ٹی وی کو انٹرویو میں عمران خان نے کہا کہ میری طرف سے آرمی چیف کو توسیع دینے کی آفر تک وہ یہ فیصلہ کر چکے تھے کہ رجیم چینج کو نہیں روکیں گے، یہ روک سکتے تھے انہوں نے نہیں روکا کیوں کہ پاؤر تو ان کے ...

اسٹیبلشمنٹ کی ضرورت پہلے تھی نہ اب ہے، عمران خان

کراچی بلدیاتی انتخابات، الیکشن کمیشن کا وفاق سے سکیورٹی فراہم کرنے سے متعلق جواب طلب وجود - منگل 18 اکتوبر 2022

الیکشن کمیشن نے کراچی میں بلدیاتی انتخابات کے لیے وفاق سے سکیورٹی اہلکار فراہم کرنے سے متعلق جواب مانگ لیا۔ اسلام آباد میں چیف الیکشن کمشنر کی سربراہی میں الیکشن کمیشن کا اجلاس ہوا جس میں کراچی میں بلدیاتی انتخابات کے انعقاد سے متعلق غور کیا گیا۔ ذرائع کے مطابق حکام الیکشن کمیشن ...

کراچی بلدیاتی انتخابات، الیکشن کمیشن کا وفاق سے سکیورٹی فراہم کرنے سے متعلق جواب طلب

ادارے تشدد کرکے اپنی عزت کروانا چاہتے ہیں تو غلط فہمی میں نہ رہیں، عمران خان وجود - جمعرات 13 اکتوبر 2022

پاکستان تحریک انصاف چیئرمین اور سابق وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ میں تمام اداروں سے کہتا ہوں اگر آپ یہ سمجھتے ہیں کہ تشدد کروا کر اپنی عزت کروائیں گے تو غلط فہمی میں نہ رہیں، عزت دینے والا اللہ ہے اور آج تک دنیا کی تاریخ میں مار کر کسی ظالم کو عزت نہیں ملی، اعظم سواتی کو ننگ...

ادارے تشدد کرکے اپنی عزت کروانا چاہتے ہیں تو غلط فہمی میں نہ رہیں، عمران خان

تحریک انصاف نے حکومت کے خلاف لانگ مارچ کا حتمی فیصلہ کر لیا وجود - اتوار 02 اکتوبر 2022

پاکستان تحریک انصاف نے حکومت کے خلاف فیصلہ کن لانگ مارچ کا فیصلہ کر لیا، پارٹی سربراہ عمران خان نے کہا ہے کہ ظالموں کو مزید مہلت نہیں دیں گے، جلد تاریخی لانگ مارچ کی تاریخ کا باضابطہ اعلان کروں گا۔ پارٹی کے مرکزی قائدین کے اہم ترین مشاورتی اجلاس ہفتہ کو چیئرمین تحریک انصاف عمران ...

تحریک انصاف نے حکومت کے خلاف لانگ مارچ کا حتمی فیصلہ کر لیا

الیکشن کمیشن میں اسحاق ڈار کی سینیٹ نشست خالی قرار دینے سے متعلق کیس کا فیصلہ محفوظ وجود - پیر 26 ستمبر 2022

الیکشن کمیشن نے مسلم لیگ ( ن )کے رہنما اسحاق ڈار کی سینیٹ نشست کو خالی قرار دینے سے متعلق کیس پر فیصلہ محفوظ کر لیا، الیکشن کمیشن نے نے کہا کہ انتخابی ترمیمی ایکٹ سے پہلے اگر اسحاق ڈار نااہل تھے تو اب اہل کیسے ہوگئے؟ قانون کی تشریح نہیں کر سکتے، سوال یہی ہے کہ اسحاق ڈار نااہل ہوچ...

الیکشن کمیشن میں اسحاق ڈار کی سینیٹ نشست خالی قرار دینے سے متعلق کیس کا فیصلہ محفوظ

رانا ثنا اللہ کو اس مرتبہ اسلام آباد میں چھپنے کی جگہ نہیں ملے گی، عمران خان وجود - جمعه 23 ستمبر 2022

پاکستان تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے وفاقی وزیر داخلہ کو براہ راست دھمکی دیتے ہوئے کہا ہے کہ اس مرتبہ رانا ثنا اللہ کو اسلام آباد میں چھپنے کی جگہ نہیں ملے گی۔ پارٹی کنونشن سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ 25 مئی کو ہماری تیاری نہیں تھی لیکن اس مرتبہ بھرپور تیاری کے ساتھ ...

رانا ثنا اللہ کو اس مرتبہ اسلام آباد میں چھپنے کی جگہ نہیں ملے گی، عمران خان

دیکھو مجھے جو دیدہ عبرت نگاہ ہو وجود - پیر 19 ستمبر 2022

یہ تصویر غور سے دیکھیں! یہ عمران فاروق کی بیوہ ہے، جس کا مرحوم شوہر ایک با صلاحیت فرد تھا۔ مگر اُس کی "صالحیت" کے بغیر "صلاحیت" کیا قیامتیں لاتی رہیں، یہ سمجھنا ہو تو اس شخص کی زندگی کا مطالعہ کریں۔ عمران فاروق ایم کیوایم کے بانی ارکان اور رہنماؤں میں سے ایک تھا۔ اُس نے ایم کیوای...

دیکھو مجھے جو دیدہ عبرت نگاہ ہو

مضامین
چائلڈپورنوگرافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
چائلڈپورنوگرافی

بول کہ سچ زندہ ہے اب تک وجود پیر 05 دسمبر 2022
بول کہ سچ زندہ ہے اب تک

عوامی مقبولیت بھی پَل بھر کا تماشہ ہے وجود پیر 05 دسمبر 2022
عوامی مقبولیت بھی پَل بھر کا تماشہ ہے

عمرکومعاف کردیں وجود اتوار 04 دسمبر 2022
عمرکومعاف کردیں

ٹرمپ اور مفتے۔۔ وجود اتوار 04 دسمبر 2022
ٹرمپ اور مفتے۔۔

اب ایک اور عمران آرہا ہے وجود هفته 03 دسمبر 2022
اب ایک اور عمران آرہا ہے

اشتہار

تہذیبی جنگ
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار وجود منگل 06 دسمبر 2022
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار

1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی

امریکا نے القاعدہ ، کالعدم ٹی ٹی پی کے 4رہنماؤں کوعالمی دہشت گرد قرار دے دیا وجود جمعه 02 دسمبر 2022
امریکا نے القاعدہ ، کالعدم ٹی ٹی پی کے 4رہنماؤں کوعالمی دہشت گرد قرار دے دیا

برطانیا میں سب سے تیز پھیلنے والا مذہب اسلام بن گیا وجود بدھ 30 نومبر 2022
برطانیا میں سب سے تیز  پھیلنے والا مذہب اسلام بن گیا

اسرائیلی فوج نے 1967 کے بعد 50 ہزار فلسطینی بچوں کو گرفتار کیا وجود پیر 21 نومبر 2022
اسرائیلی فوج نے 1967 کے بعد 50 ہزار فلسطینی بچوں کو گرفتار کیا

استنبول: خود ساختہ مذہبی اسکالر کو 8 ہزار 658 سال قید کی سزا وجود جمعه 18 نومبر 2022
استنبول: خود ساختہ مذہبی اسکالر کو 8 ہزار 658 سال قید کی سزا

اشتہار

شخصیات
موت کیا ایک لفظِ بے معنی جس کو مارا حیات نے مارا وجود هفته 03 دسمبر 2022
موت کیا ایک لفظِ بے معنی               جس کو مارا حیات نے مارا

ملک کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کے بیٹے اکبر لیاقت انتقال کر گئے وجود بدھ 30 نومبر 2022
ملک کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کے بیٹے اکبر لیاقت انتقال کر گئے

معروف صنعت کار ایس ایم منیر انتقال کر گئے وجود پیر 28 نومبر 2022
معروف صنعت کار ایس ایم منیر انتقال کر گئے
بھارت
بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا، جی ڈی پی میں کمی کا امکان وجود منگل 06 دسمبر 2022
بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا، جی ڈی پی میں کمی کا امکان

بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار وجود منگل 06 دسمبر 2022
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار

1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی

بھارت،پہلی سے آٹھویں جماعت کے اقلیتی طلباء کو اب اسکالر شپ نہیں ملے گی، بھارتی حکومت وجود پیر 05 دسمبر 2022
بھارت،پہلی سے آٹھویں جماعت کے اقلیتی طلباء کو اب اسکالر شپ نہیں ملے گی، بھارتی حکومت
افغانستان
کابل، پاکستانی سفارتی حکام پر فائرنگ، ناظم الامور محفوظ رہے، گارڈ زخمی وجود جمعه 02 دسمبر 2022
کابل، پاکستانی سفارتی حکام پر فائرنگ، ناظم الامور محفوظ رہے، گارڈ زخمی

افغان مدرسے میں زوردار دھماکے میں 30 افراد جاں بحق اور 24 زخمی وجود بدھ 30 نومبر 2022
افغان مدرسے میں زوردار دھماکے میں 30 افراد جاں بحق اور 24 زخمی

حنا ربانی کھر کی قیادت میں پاکستان کا اعلیٰ سطح کا وفد دورہ افغانستان کے لیے روانہ وجود منگل 29 نومبر 2022
حنا ربانی کھر کی قیادت میں پاکستان کا اعلیٰ سطح کا وفد دورہ افغانستان کے لیے روانہ
ادبیات
کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد وجود هفته 26 نومبر 2022
کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد

مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع کردار پرنئی کتاب شائع وجود هفته 23 اپریل 2022
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع  کردار پرنئی کتاب شائع

مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار وجود بدھ 06 اپریل 2022
مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار