وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

جرمنی میں سیاسی عدمِ استحکام کااندیشہ

هفته 09 اکتوبر 2021 جرمنی میں سیاسی عدمِ استحکام کااندیشہ

انتخاب سے قبل ہونے والے تیسرے اور حتمی ٹی وی مباحثے کے بعد مبصرین 26ستمبر کوجرمنی میں ہونے والے عام چنائو میں وزیرِ خزانہ اولاف شلزکی سوشل ڈیمو کریٹک پارٹی کی جیت کا امکان ظاہرکرنے لگے تھے اِس ٹی وی مباحثے میں غربت کے مقابلے، ماحولیاتی تحفظ اور داخلی سیکورٹی کے معاملات پر زوردار بحث ہوئی موجودہ حکمران جماعت کرسچن ڈیموکریٹک یونین کے امیدوار آرمین لاشیٹ نے گفتگو میں مزکورہ مسائل کے حوالے سے واضح روڈ میپ دینے کی بجائے دفاعی انداز اپنائے رکھا مگر حریف اولاف شلز نے تابڑ توڑ حملے کیے اور یہ باور کرانے میں کامیاب رہے کہ انجیلا مرکل کااحترام ،سادگی اور خلوص اپنی جگہ ، دنیا میں ہونے والی تبدیلیوں کا مقابلہ کرنے کے لیے جرمن قوم کو موجودہ پالیسیوں پر نظر ثانی کرنے اور جارحانہ انداز اپنانے کی ضرورت ہے جس کے لیے سنجیدہ اور پُرعزم لیڈرشپ ضروری ہے مبصرین کو اسی مباحثے سے اندازہ لگانے میں آسانی ہوئی کہ پارلیمانی انتخابات میں موجودہ جماعت کرسچن ڈیموکریٹک یونین پر سوشل ڈیموکریٹک پارٹی کو برتری ملے گی البتہ جیت اور ہار میں زیادہ فرق نہیں ہوگا نتائج سے مبصرین کے اندازے درست ثابت ہوئے اب انجیلامرکل کی جگہ نئے چانسلرکاانتظارہے جس کے آنے سے موجودہ خاتون چانسلر کے سولہ سالہ اقتدار کا خاتمہ ہو جائے گا۔
چانسلر کے امیدوار اولاف شلزبے داغ شخصیت کے مالک نہیں بلکہ ملک میں اُن کے ناقدین کی کمی نہیں جس کی وجہ مالیاتی کئی الزامات اوراِس حوالے سے تحقیقات ہیں جن کا سلسلہ انتخابی مُہم کے دوران بھی جاری رہا ایک موقع پر تو ایسا دکھائی دینے لگا تھا کہ چانسلر بننے کا خواب شایدہی پورا ہو اور شلز کا سیاسی اختتام بطور وزیرِ خزانہ ہی ہوجائے آغاز میں سوشل ڈیموکریٹک پارٹی اور اُس کے اتحادی بھی ہونے والی تحقیقات سے پریشان نظر آئے لیکن سیاستدان ہر وقت فائدے کی راہیں تلاش کرنے میں سرگرداں رہتے ہیں یہاں بھی ایسا ہی ہوا تحقیقات کے دوران قانون سازوں کی طرف سے آڑے ہاتھوں لینے کے باوجودشلز نے اعصاب مضبوط رکھے اور ناکامی پر منتج ہوتی بازی پلٹ کر سب کو حیران کر دیا انھوں نے جارحانہ انداز اپناتے ہوئے ویڈیو لنک کے ذریعے سوالات کے جوابات دینے کی بجائے غیر متوقع طور پردلائل دینے کے لیے پارلیمنٹ کی فنانس کمیٹی کے سامنے پیش ہونے کا مشکل راستہ اختیار کیا جس سے انھیں یہ فائدہ ہوا کہ وہ تحقیقات کرنے والوں کوبڑی حد تک مطمئن کرنے میں کامیاب رہے حالانکہ اُن سے تابڑتوڑ سوال ہوئے تاکہ پریشان ہو کر کوئی ایسا نکتہ دے سکیں جس سے تحقیقاتی کمیٹی کو الزامات ثابت کرنے میںمدد ملے لیکن جواب دیتے ہوئے شلز بلکل پُرسکون رہے اور کوشش کی کہ تحقیقاتی کمیٹی سے اُلجھانہ جائے مباداکوئی ایسا کام ہو جس سے انتخابی مُہم متاثر ہواِس میں وہ بڑی حد تک کامیاب رہے اور تابڑتوڑ سوال کرنے والے قانون سازوں کو جلد ہی نازک حالات کی بنا پر پسپائی اختیار کرنا پڑی یہ ایسی جیت تھی جو شلز کی گرویدہ حلقے میں قدرومنزلت بڑھانے کا باعث بنی اور ساٹھ ملین سے زائد حقِ رائے دہی رکھنے والے ملک کی عوام کی اکثریت کے دل میں اپنے حق میں ہمدردی کی لہر پیداکرنے میں کامیاب ہونے کے ساتھ میدان میں اُتری کل سینتالیس جماعتوں اورگروپوں کے بھنورسے اپنی جماعت کو پہلی پوزیشن دلانے میں کامیاب ٹھہرے ۔
انجیلا مرکل کی کامیابیوں یا ناکامیوں کا جائزہ لیتے ہوئے یہ بات نہیں بھولنی چاہیے کہ اُن کی سادگی نے جرمنوں میں اُنھیں احترام دلایاہے مگر درپیش چیلنجز کا سامنا کرتے ہوئے انھوں نے ذیادہ تر دنیا کی مان کر ساتھ چلنے کی کوشش کی اور کم ہی مواقع پرالگ راہ اپنائی ہے حالانکہ نیٹو جیسے اتحادکے ممبرہونے کے باوجود ترکی اور فرانس نے جب چاہا الگ موقف اپنایا لیکن جرمنی جیسے بڑے ملک ،جس کی معیشت بھی مضبوط ہے کی انجیلا نے وقت گزار پالیسی پر صاد کیے رکھا یہ انداز بھی مرکل کے احترام میں کمی نہ لا سکالیکن حکمران جماعت کرسچین ڈیموکریٹس سے وابستہ سیاستدانوں پر ماسک ڈیل اسکینڈل میں ملوث ہونے متنازعہ ڈیل میں مالی فوائد کے الزام لگے یہ اسکینڈل رائے عامہ بالخصوص نوجوانوں کے زہن متاثر کرنے کاایک سبب بناپھربھی انجیلا کی واجبی سی کار کردگی کے باوجود اُن کا احترام اُن کی جماعت کرسچن ڈیمو کریٹک یونین کوحالیہ چنائو میں اچھے ووٹ دلانے کا باعث بنا یہ قدامت پسند جرمن معاشرے کا مگراب جرمن احترام کے باوجود ایسی شخصیت کو آگے لانے کے متمنی ہیں جو جرمنوں کو ایک بار پھر عالمی سطح کا اہم کھلاڑی بنائے اور ہر وقت افہام و تفہیم کی بجائے طاقتور ملک کے طاقتور لیڈر کی طرح چلے یہ سوچ جرمنوں کے زہنوں میں نمو پارہی ہے اور افہام وتفہیم اور جارحانہ مزاج رکھنے والوں میں جرمن تقسیم ہورہے ہیں۔
کیا نئے جرمن چانسلر کی آمد کے حوالے سے کوئی صد فی صد درست پیش گوئی کی جا سکتی ہے؟ میرے خیال میں ایسی کوئی بات کرنایا اندازہ لگانا ابھی قبل از وقت ہو گا جوجہ یہ ہے کہ 26ستمبر کے پارلیمانی انتخابات میں کوئی بھی جماعت واضح برتری حاصل نہیں کر سکی حکمران قدامت پسندجماعت کرسچن ڈیمو کریٹک یونین سے سخت مقابلے کے بعدسوشل ڈیموکریٹک پارٹی کومعمولی برتری ہی حاصل ہو ئی ہے ملک میں کُل ڈالے گئے ووٹوں کا سوشل ڈیموکریٹک پارٹی 25.7 اورموجودہ حکمران کرسچن ڈیموکریٹک یونین کو 24.1فی صدووٹ ملے ہیں جبکہ ماحول دوست سیاسی جماعت گرین پہلی بار14.8ووٹ لیکرملک کی تیسری بڑی جماعت کے طور پر سامنے آئی ہے موجودہ حکمران جماعت نے گزشتہ الیکشن سے پچیس فیصد ووٹ کم لیے ہیں اِس حوالے سے وجوہات کا زکر کیا جا چکا پارلیمان میں حکمران جماعت196 نشستوں کے ساتھ دوسرے جبکہ سوشل ڈیموکریٹک 205نشستوں کے ساتھ پہلے نمبر پر آئی ہے اور یہ کوئی ذیادہ نمایاں فرق نہیں کسی بھی مناسب اتحاد کے ساتھ موجودہ حکمران جماعت کم ووٹ لینے کے باوجودسوشل ڈیموکریٹک کی جیت کی کو ختم کر سکتی ہے اِس لیے جیت کے باوجودشلزکے چانسلر بننے کے بارے میں وثوق سے کچھ کہنے کی بجائے یہ کہنا ذیادہ آسان ہے کہ اتحادی حکومت بننے کا امکان ہے اولاف شلز کی طرف سے جیت کے دعوئوں کے باوجود مناسب اتحادی ملنے کی صورت میں آرمین شیٹ چانسلرکے چانسلر بننے کا امکان ہے مگر بننے والا اتحادکتنی مدت یاآیا چار برس تک قائم رہے گا اِس حوالے سے خدشات ہیںجرمنی کے حالیہ انتخابات نے بائیں بازوکے بنیاد پرستوں کو سخت مایوس کیا ہے عین ممکن ہے موجودہ چانسلر انجیلا مرکل اُس وقت تک منصب پر موجود رہیں جب تک نئے اتحاد کی صسورتحال واضح نہیں ہو جاتی ۔
نئے جرمن چانسلر کے لیے اقتدار آسان نہیں ہوگا مرکل کو فوربز کی طرف سے دس برس تک طاقتور ترین خاتون کا اعزاز ملتا رہا وہ خاموش طبع ضرور تھیں لیکن مسائل حل کرنے میں سنجیدہ نظر آتیں اب دیکھنا یہ ہے کہ نیا چانسلر جرمنی کو کیسے آگے لیکر چلے گا ماحولیاتی آلودگی کم کرنے کے لیے کتنا سنجیدہ کر دار ادا کرپائے گا ایک بات طے ہے کہ طاقتور معیشت مگر منقسم رائے کے حامل ملک کی قیادت کرنا بہت مشکل تر ہورہا ہے اہلیت اور صلاحیت کے خوب مظاہرے سے ہی انجیلا مرکل کی کمی پوری ہو سکتی ہے دونوں بڑی جماعتیں کر سمس سے پہلے اتحاد بنانے کے لیے کوشاں ہیں مگر کچھ مبصرین تیسرے اور حتمی مباحثے کے فاتح اولاف شلز کے بارے پُر امید ہیں کہ وہ اتحادی حکومت کا ہدف حاصل کر نے میں کامیاب ہوجائیں گے پھر بھی اِس حوالے سے اگلے دو ماہ اہم ہیں اور جرمنی کے آئندہ چانسلر کا انتخاب مشکل ہو سکتا ہے موجودہ حکمران جماعت کرسچین ڈیموکریٹک یونین اور ماحول دوست جماعت گرین اگر اتحاد بناتی ہیں تو جرمنی میں سیاسی عدمِ استحکام کے اندیشے کے امکانات بڑھ جائیں گے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
کون نہائے گا وجود منگل 07 دسمبر 2021
کون نہائے گا

دوگززمین وجود پیر 06 دسمبر 2021
دوگززمین

سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی! وجود پیر 06 دسمبر 2021
سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی!

چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے! وجود پیر 06 دسمبر 2021
چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے!

دوگززمین وجود اتوار 05 دسمبر 2021
دوگززمین

یورپ کا مخمصہ وجود هفته 04 دسمبر 2021
یورپ کا مخمصہ

اے چاندیہاں نہ نکلاکر وجود جمعه 03 دسمبر 2021
اے چاندیہاں نہ نکلاکر

تاریخ پررحم کھائیں وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
تاریخ پررحم کھائیں

انوکھی یات۔ٹو وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
انوکھی یات۔ٹو

وفاقی محتسب واقعی کام کرتاہے وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
وفاقی محتسب واقعی کام کرتاہے

ڈی سی کی گرفتاری اور سفارشی کلچر وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
ڈی سی کی گرفتاری اور سفارشی کلچر

ماں جیسی ر یاست اور فہیم۔۔۔ وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
ماں جیسی ر یاست اور فہیم۔۔۔

اشتہار

افغانستان
طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ وجود اتوار 05 دسمبر 2021
طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ

15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل وجود هفته 04 دسمبر 2021
15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل

طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت وجود جمعه 03 دسمبر 2021
طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت

جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان وجود جمعه 03 دسمبر 2021
جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان

افغان طالبان اور ایرانی بارڈر گارڈز کے درمیان شدید جھڑپیں، بھاری اسلحہ کا استعمال وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
افغان طالبان اور ایرانی بارڈر گارڈز کے درمیان شدید جھڑپیں، بھاری اسلحہ کا استعمال

اشتہار

بھارت
بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے وجود منگل 07 دسمبر 2021
بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے

بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا

بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی وجود بدھ 01 دسمبر 2021
بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی

بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین وجود پیر 29 نومبر 2021
بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین

بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی وجود هفته 27 نومبر 2021
بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی
ادبیات
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام وجود منگل 26 اکتوبر 2021
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام

پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام وجود پیر 25 اکتوبر 2021
پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام

اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب
شخصیات
جنید جمشید کی پانچویں برسی آج منائی جائے گی وجود منگل 07 دسمبر 2021
جنید جمشید کی پانچویں برسی آج منائی جائے گی

نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی وجود اتوار 05 دسمبر 2021
نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی

سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے وجود پیر 29 نومبر 2021
سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے

پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل وجود جمعرات 25 نومبر 2021
پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل

سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز وجود جمعه 19 نومبر 2021
سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز