وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

اکیسویں صدی میںاردو نعت آخری قسط

اتوار 10 جون 2018 اکیسویں صدی میںاردو نعت آخری قسط

ڈاکٹر ریاض مجید موجودہ دور کے ممتازنعت گو ہیں ،انہوں نے اردو اور پنجابی نعت گوئی کے ساتھ ساتھ’’ اردو میں نعت گوئی کی تاریخ ‘‘کے عنوان سے پی ایچ ڈی سطح کا تحقیقی مقالہ بھی تحریر کیا جو اپنی نوعیت کا ایک اہم کام ہے۔انہوں نے اپنی نعت کی بنیاد تخلیقیت ، تازگی ، روایت سے گریز اور نئے نئے مضامین کی تلاش وجستجوپر رکھی ہے،عقیدت و مودت کے اظہار کے ساتھ ریاض مجید نے حسن ِادا کا خیال بھی رکھا ہے اورحرف و صوت وجذب و کیف کی ہم آہنگی کا اہتمام بھی کیا ہے، وہ چونکہ جدید تر لب ولہجہ کے غزل گو بھی ہیں اس لیے ان کے ہاںلفظیات،تشبہیات، استعارے، تراکیب اور فکر کی تازہ کاری بھی شعر در شعر سفر میں رہتی ہے۔ سیدنا محمدؐ،سیدنا احمدؐ،اللھم ٰصلی علی،اللھم ٰصلی علی محمدؐاور دیگر نعتیہ کتب کے علاوہ ان کی تنقید اور غزلیہ شاعری کی کتابیں بھی شائع ہوچکی ہیں:

صدیاں طلوع ہوتی ہیں اس رخ کو دیکھ کر
کہتے ہیں جس کو وقت ہے صدقہ حضورؐ کا
٭
ساحل آشنا ہوگی کشتیِ ریاض اک دن
انؐ کا نام لکھا ہے بادبان کے اوپر

ماجد خلیل
ماجد خلیل بھی ایک اہم نعت گو شاعر ہیں،فنی مہارت کے ساتھ عقیدت و محبت،سیرت ِرسولؐ کے اہم گوشوں کا تذکرہ،اسوہ ِرسول ؐ سے رہنمائی لینے اور اسے مشعل راہ بنانے کی خواہش کا اظہار بھی ان کی نعت کے اہم موضوعات ہیں، عہد موجود کے مجموعی نعتیہ مزاج سے جڑی ان کی نعت کا سفر قابل رشک بھی ہے اور قابل داد بھی ، وہ ماہانہ نعتیہ مشاعروں کا اہتمام کرکے نعت کی تشہیر اور فروغ کے لیے گراں قدر کا م کر رہے ہیں،روشنی ہی روشنی ،نور ہی نور اور فرحت ِحرف ان کی اہم کتابیں ہیں:
ایک دن وہ تھا کہ ہونا پڑا دہلیز بدر
ایک دن یہ ہے کہ دنیا تریؐ دہلیز پہ ہے
٭
اہلِ ہنرنے نعتِ نبیؐ سے کیا کیا فیض اٹھائے ہیں
کسبِ ہنر سے عرضِ ہنر تک، عرضِ ہنر سے آگے بھی
عاصی کرنالی
عاصی کرنالی جدید طرزِ اظہار کے حامل ایک منفرد شاعر ہیں، ان کی نعت کا نمایاںوصف حضورﷺ کی آمد کے مقاصد کی شرح اور اس کی تبلیغ ہے،انہوں نے فنی نزاکتوں کے احترام کے ساتھ ذوق و شوق ،وارفتگی اور شیفتگی کا اظہار بھی حد درجہ احتیاط کے ساتھ کیا ہے،ڈاکٹر غفور شاہ قاسم لکھتے ہیں’’نعت ان کے نزدیک ایک مقدس عبادت ہے جس کے وسیلے سے وہ زندگی کے اعلی و ارفع مقاصد اور دنیا و عقبیٰ کی سرخ روئی کے طلب گا ر ہیں‘‘۔
(نعت رنگ ،شمارہ 20ص250)
مدحت ،نعتوں کے گلاب اور حرف ِشیریں ان کے نعتیہ مجموعہ ہائے کلام ہیں:
میرے پہلے سانس سے نغمہ سرا ہے سازِ دل
آتی ہے صلِ علی، صلِ علی، آوازِ دل
میں اس کو سرِ نامہِ اعمال سجا لوں
وہ لمحہ جو سرکارؐ کی چوکھٹ پہ بسر ہو
خالد احمد(2013-1943)
خالد احمد اپنے جداگانہ لب ولہجہ کے باعث ہجوم میںدورسے پہچانے جانے والے شاعر تھے،ان کی ہر تخلیق ان کے گہرے مطالعے کی گواہی دیتی ہے،ان کے نعتیہ قصیدے ’’تشبیب‘‘ کو ادبی حلقوں میں بہت پذیرائی ملی،وہ تواتر سے نعت اور غزل کہتے رہے،انہوں نے نوجوان شعراکی حوصلہ افزائی میں بھی کبھی بخل سے کام نہیں لیا،ان کی نعت جدید تر رنگ شعر کے ساتھ مضمون آفرینی، نئی تراکیب،استعارے ، تشبہیات، قلبی واردات،اخلاص، شائستہ لفظی اور درد مندی سے مزین ہے:
ابھی مٹی نہ کھنکی تھی، ابھی پانی نہ برسا تھا
مگر بزمِ عناصر میں ترے ہونے کا چرچا تھا
وہ کیسی خاک تھی، کس نور کا اعجاز تھی آقاؐ!
جسے اک روز تیرا نقشِ پا ہو کر چمکنا تھا
ڈاکٹرخورشیدرضوی
ڈاکٹر خورشید رضوی کا شمار عہد موجود کے اہم غزل اور نعت گو شعرا میں ہوتا ہے،ان کی غزل کے تو کئی مجموعہ ہائے کلام شائع ہو ئے ہیں لیکن تواتر سے نعت کہنے کے باوجود تاحال نعت کا باقاعدہ کوئی مجموعہ سامنے نہیں آیا،ڈاکٹرخورشید رضوی کی نعت اسوہ ِرسولؐ کے ذکرکے ساتھ ساتھ محبت ِسرکارؐکے اظہار میں شائستگی اور شیفتگی کا رنگ لیے ہوئے ہے،ان کی نعت منفردطرزِاظہار اور موثر لب و لہجہ کے باعث الگ شناخت رکھتی ہے:
شان انؐ کی سوچئے اور سوچ میں کھو جایئے
نعت کا دل میں خیال آئے تو چپ ہو جایئے
٭
اے بادِ سازگار مجھے چھوڑ کر نہ جا
میں بھی ہوں مشتِ خاک مدینے کی راہ کی
افتخار عارف
افتخار عارف جدید غزل کا ایسا نمائندہ ہے جس کے جداگانہ لب و لہجہ ،زبان وبیان اور بے ساختہ پن نے انہیں دوسرے شعرا سے ممتازمقام عطا کیا ہے،ان کی غزل کی طرح نعت بھی فکر اور جذبہ کے حوالے سے انفرادیت کی حامل ہے،ان کے اشعار آراستہ اور مرصع ہونے کے ساتھ جذب و کیف اورمحبت ِرسولؐ سے لبریز تاثیر ،روانی اور دل کشی میں بے مثال ہیں :
سبیل ہے اور صراط ہے اور روشنی ہے
اک عبدِ مولیٰ صفات ہے اور روشنی ہے
٭
قیامتیں گذر رہی ہیں کوئی شہ سوار بھیج
وہ شہ سوار جو لہو میں روشنی اتار دے
پیرسید نصیرالدین نصیرؒ ((2009-1949
پیرسید نصیرالدین نصیر حضرت پیر سید مہر علی شاہ ؒگولڑہ شریف کے خانوادہ کے چشم و چراغ تھے ،وہ نامور دانش ور ،بے بدل مقرر،خطیب اور عالم دین ہونے کے ساتھ باکمال شاعر بھی تھے ،شعر گوئی میں انہوں نے داغ کی روایت کو آ گے بڑھایا،ان کے نعتیہ کلام میں روایت ِشعرسے کامل آگاہی،زبان وبیان کی چاشنی، اسوہِ سرکارؐ اور ایک خاص طرح کی جذباتی وابستگی کے ساتھ محبت ِرسولؐ کا والہانہ اظہار پایا جا تا ہے، انہوں نے حمد و نعت اور مناقب پر مشتمل مجموعہ ہائے کلام سمیت درجن بھر کتب یادگار چھوڑی ہیں:
پھر اس نے کوئی اور تصور نہیں باندھا
ہم نے جسے تصویر دکھائی ترے در کی
٭
ہمارا دھیان بھی طیبہ کے قافلے والو!
رواں دواں پسِ گردو غبار ہم بھی ہیں
گستاخ بخاری
گستاخ بخاری کی نعت عقیدت و محبت کے اظہار کے علاوہ حضورؐ کے اوصاف،الطاف و کرم،تعلیمات ِرسولؐ اور اسوۂ رسول ؐ کے ذکر سے لبریز ہے،وہ مدحِ ممدوحِ ؐخدا(نعتیہ دیوان) اور ؐمحمد محورِعالمؐ(نعتیہ مجموعہ) کے علاوہ درجن بھر کتب کے خالق ہیں،ان کو یہ امتیاز بھی حاصل ہے کہ انہوں نے غالباً اردو ادب کی تاریخ میں پہلی مرتبہ صلو علی الحسین ؓ کے نام سے سلام کا دیوان بھی تخلیق کیا ہے،محمد شفیع بلوچ لکھتے ہیں ’’وارفتگی اور عشق نے بخاری صاحب کی شاعری کو فنی اور معنوی محاسن سے آراستہ کیا ہے،ان کی نعتیں عشق و تفکر کا حسین امتزاج ہیں جن میں موضوعات اور اسالیب کی رنگا رنگی پائی جاتی ہے۔‘‘
(پیش لفظ۔محمد محور عالمؐ)
حدِ امکان میں ہے جو بھی صفت
وہ مدینے کے تاجدارؐ میں ہے
٭
روشنی کی خدا نے کی تجسیم
پھر اسے کہہ دیا ’’محمدؐ‘‘ ہیں
صبیح رحمانی
معروف نعت گو اور نعت خواںصبیح رحمانی کی عصر ِ ِموجود میں نعت کے حوالے سے خدمات کسی تعارف کی محتاج نہیں،وہ عہدحاضر کے حمد ونعت کے حوالے سے صف اول کے شاعر ہیں اور معروف رسالے ’’نعت رنگ‘‘کراچی کے مدیربھی، نعت رنگ کے ذریعے وہ نعت کے فروغ اور ترویج کے لیے جس طرح سرگرمی سے کام کررہے ہیں وہ اپنی مثال آپ ہے،نعت رنگ کا آغاز1995میں ہوا اور اب تک تسلسل کے ساتھ شائع ہو رہا ہے،ان کی نعتیہ شاعری کی بھی پانچ کتابیں شائع ہوچکی ہیں جن میں ماہ ِ طیبہ،جادہ ِرحمت، ایوان ِنعت، ہیں مواجہ پہ ہم اور خوابوں میں سنہری جالی ہے شامل ہیں، نعت کے سلسلہ میں خدمات پرانہیں قومی اور عالمی سطح پر ایوارڈ زسے بھی نوازا گیا،ان کی نعت میںعشق ِ رسولؐ کے والہانہ اظہار کے ساتھ ساتھ سیرت رسولؐ کے مختلف پہلووں کو فنی کمال اور جدید اسلوب میںرقم کیاگیا ہے ،ان کی نعت کا نمایاں وصف تازہ کاری اورنئی نئی اور مترنم زمینیں ہیں،وہ تکرار لفظی سے جو فضا بناتے ہیں وہ دل تسخیر کرتی چلی جاتی ہے:
کوئی مثل مصطفٰےؐ کا کبھی تھا نہ ہے نہ ہو گا
کسی اور کا یہ رتبہ کبھی تھا نہ ہے نہ ہوگا
٭
لب پر نعتِ پاک کا نغمہ کل بھی تھا اور آج بھی ہے
میرے نبیؐ سے میرا رشتہ کل بھی تھا اور آج بھی ہے
شاعر علی شاعر
شاعر علی شاعر کی نعت عقیدت و محبت کی آئینہ دار ہونے کے ساتھ سادگی سے سیرت رسولؐ کا پرچار کرتی نظر آتی ہے۔انہوں غزل بھی کہی ہے مگر جس قدرانہوں نے نعت لکھی ہے وہ ان کی پہچان بن چکی ہے ۔ان کے کئی نعتیہ مجموعے منظر عام پر آئے ہیں جن میں ان کا کلیات’’نور سے نور تک اہمیت رکھتا ہے کہ اس میں ان کے نو مجموعہ ہائے کلام شامل ہیں۔دیگر کتب میں صاحب خیر کثیرؐ الہام کی بارش اور ارماغان حمدشامل ہیں:
کوئی رتبہ نیَ فضیلت چاہیے
انؐ کی مدحت کو عقیدت چاہیے
دین و دنیا کی بھلائی کے لیے
پیروی کو انؐ کی سیرت چاہیے
نورین طلعت عروبہ
نورین طلعت عروبہ نئی نسل کی ایسی نمائندہ نعت نگار ہیں جن کا کلام تلاش و اظہارِجمال، محبت ِ رسول ؐ ، وارفتگی ،تازگی اور ندرت کا حامل ہونے کے ساتھ ساتھ تاثیر کی دولت سے بھی مالامال ہے،ان کے دو نعتیہ مجموعے ’’حاضری‘‘ اور ’’زہے مقدر‘‘کے نام سے شائع ہو چکے ہیںجنہیں اہلِ علم وادب میںتحسین کی نگاہ سے دیکھا گیا:
آنکھ کی ساری بصارت جستجوئے مصطفٰےؐ
دل کو رکھتی ہے منور آرزوئے مصطفٰےؐ
دف بجاتی لڑکیوں میں کاش میں ہوتی کہیں
اور بس تکتی چلی جاتی میں روئے مصطفٰےؐ
ریاض ندیم نیازی
ریاض ندیم نیازی بھی عہد موجود کے ایک اہم نعت گو ہیں،ان کی اب تک تین نعتیہ کتب شائع ہو چکی ہیں جن میں’’ خوشبو تری جوئے کرم ‘‘،’’ہوئے جو حاضر در ِ نبی ؐ پر‘‘ اور’’بحرِتجلیات‘‘شامل ہیں ،ان کا غزلیہ مجموعہ بھی منظر عام پر آکر داد و تحسین سمیٹ چکا ہے،ریاض ندیم نیازی عشق ِ مصطفےؐ سے سرشار ہیںاور یہی بات ان کی نعت کا مرکزی نقطہ ہے۔ریاض ندیم نے تعلیماتِ نبوی کے مختلف گوشوں کو بھی اپنے شعرکا حصہ بنایا ہے:
زباں ملی ہے مجھے مدحتِ نبی ؐ کے لیے
ہر ایک لفظ ہے میرا بس آپ ؐ ہی کے لیے
٭
اترتی ہے جو نعت نوکِ قلم پر
اسے پہلے دل میں رقم دیکھتے ہیں
مذکورہ بالا نعت نگاروں کے علاوہ ابوالا امتیاز ع س مسلم، احمد ندیم قاسمی ،ہلال جعفری، ابو الخیر کشفی، قمر رعینی،آفتاب کریمی ، محمد فیروز شاہ ،طاہر سلطانی،اقبال نجمی ، مہر وجدانی، ریاض حسین زیدی ،رفیع الدین ذکی قریشی ،عزیزالدین خاکی ،عزیز احسن ،حکیم سرو سہارنپوری،وقار صدیقی اجمیری،علیم ناصری، گوہر ملیسانی،خالد شفیق، قیصر نجفی ،خالد علیم ،عرش ہاشمی ،شیخ صدیق ظفر،آصف بشیر چشتی،شہزاد مجددی،قمر یزدانی،انور مسعود،توصیف تبسم،رشید امین،حافظ نو ر احمد قادری،طاہر صدیقی،سبطین شاہ جہانی،قمر وارثی ،علی احمد قمر اورنسرین گل سمیت متعدد شعرا نے نعت کے فروغ اور ترویج کے لیے مثالی کام کیا ہے۔ نئی نسل میں سرور حسین نقشبندی ، علی رضا، احمد محمود الزماں،اخترعثمان ، شہاب صفدر، توقیر تقی، سیدضیا ثاقب بخاری،وسیم ممتاز،نعیم انصاری اور ان جیسے دیگر شعراکا جدید تر لب ولہجے ، تخلیقیت و شعریت ،عقیدت و محبت اور عشقِ رسول ؐ سے لبریز کلام اس بات کا ثبوت ہے کہ جدید نعت عصری تقاضوں پر پورا اتر رہی ہے اور تعمیر وترقی کی نئی منزلیں بھی سر کر رہی ہے۔
اکیسویں صدی کے پہلے پندرہ سالوں میں نعتیہ مجموعوں کی بھی ایک بڑی تعداد منظر عام پر آئی ہے جن میں کلیات ِنعت ،کوثریہ ، لبیب ،طاق ِ حرم ( حفیظ تائب )،کشکول ِآرزو،تمنائے حضوری،سلام علیک(ریاض حسین چودھری)، جواہرِ نعت،توشہ (رفیع الدین ذکی قریشی)،نقشِ جمال،مرحبا، ہا لہ ِنور(مسرور کیفی)، اللھم بارک علی محمدؐ(ڈاکٹر ریاض مجید)،آسمان ِ رحمت(اعجاز رحمانی)قوسین(آفتاب کریمی)،دیں ہمہ اوست، (سید نصیرالدین نصیر)،خلد ِ نظر، نجات، زیارت، رسائی، عافیت،ودیعت،آبنائے گداز،انوار خاطر (عابد سعید عابد)،قندیل حرا،زبورِ سخن(تنویر پھول)،ولائے رسول( قمر رعینی)، مثال ( منیر سیفی)،رب آشنا( قیصر نجفی)،حاضری( نورین طلعت عروبہ)،حرا کے مکین ،کوئی سورج ترے جیسا نہیں ہے(انجم نیازی)،با وضو آرزو (محمد فیروز شاہ)،محامدؐ محمد (خالد علیم)،رحمت مآب( ظفراکبر آبادی)،لب پر نعت ِ پاک کا نغمہ(مدثر سرور چاند)، کرم ونجات کا سلسلہ(عزیز احسن)،مہر عالم تاب(محمد اکرم رضا)،جمال ِ سید لولاک(سید ریاض حسین زیدی)، قلزمِ انوار( شاہ محمد سبطین شاہجہانی)،ہے روشنی جہانوں کی( خاور نقوی)، اطاعت(حامد یزدانی)، ہرسانس پکارے صلی علی( طاہر سلطانی)،آقا ؐکملی والے( محمد یعقوب تصور)،محمد ؐ محمد ؐ( زاہد فخری)،ثنا کا موسم ،تحیّت(شہزاد مجددی) نویدِبخشش(افضل خاکسار)،حضوری چاہتی ہوں (پروین جاوید)،مدینہ یاد آتا ہے (رضااللہ حیدر)، ہر لفظ کے لب پر صل علی(شوذب کاظمی)،باب ِ فضیلت(خرم خلیق)،،نورِ مبیں(ریاض تصور)،مہر ِحرا(زہیر کنجاہی)، نچھاور جاں مدینے پر(احمد جلیل)،فانوسِ حرم(حسین سحر)،روشنی کے خدو خال (رفیع الدین راز) روح زائر ہے شہرِ طیبہ کی (احمد شہبازخاور)،،سوئے حرم(ارشد صابری)، جمال مصطفےؐ(حسن عسکری کاظمی)،دل آئینہ ہوا(رفیع الدین راز)،ذکر شہ والاؐ(ریاض حسین زیدی)،روح ایمان(منظر عارفی)،ارمغان شوق (گوہر ملیسانی )،روح الہام (شاعر لکھنوی)متاع نور( نور احمد قادری )باریاب (انور مسعود)،بحر تجلیات،جو آقا کا نقش قدم دیکھتے ہیں (ریاض ندیم نیازی )،نور سے نور تک (شاعر علی شاعر)،توفیق ثناء(محمد اکرم رضا)،امید طیبہ رسی ( عزیز احسن)،مدح ممدوح خدا(گستاخ بخاری)، مرے اندر مدینہ بولتا ہے ( بسمل شمسی )، زیارت ( بشیر رحمانی)،کلیات مظہر( حافظ مظہر الدین۔مرتب ارسلان احمد ارسل))،غزل کاس بکف (ریاض حسین چودھری)،لی مع اللہ( محبوب الہی عطا)،ہالہ ء رحمت( شاہد کوثری)،خلعت توقیر( شاکر کنڈان)،کلیات بیچین( بیچین رجپوریبدایونی)،کلیات اعظم( اعظم چشتی)،کلیات قادری ( مولانا غلام رسول قادری )، کلیات نعت ( اعجاز رحمانی)،کلیات ریاض شہروردی( حضرت ریاض الدین سہروردی )،کلیات بیدم ( بیدن وارثی )،زبور حرم (اقبال عظیم )، کلیات منور( منور بدایونی)،کلیات نیازی ( مولانا عبد الستار نیازی)،نعت نگینے ( نسیم سحر)،نعت دریچہ (ارشاد شاکر اعوان)فروغ نعت ( طارق سلطان پوری )اور دیگرکئی نعتیہ مجموعہ ہائے کلام منظر عام پر آئے ہیں،علاوہ ازیں نعت رنگ کراچی(صبیح رحمانی)، ماہ نامہ نعت لاہور (راجا رشید محمود)،سفیر نعت کراچی(آفتاب کریمی)،عقیدت سرگودھا(شاکر کنڈان)،شہر نعت فیصل آباد (شبیر احمد قادری)،دنیائے نعت کراچی (عزیزالدین خاکی) اوردیگرنعتیہ رسائل سمیت متعدد ادبی جرائد کے ذریعے بھی نعت کے فروغ کاکام ایک تحریک کے طور پر انجام دیا جا رہا ہے۔
اسی طرح تحقیق و تنقید نعت کے حوالے سے بھی کا ہو رہا ہے ۔اس ضمن میں ڈاکٹر عزیز احسن کی خدمات لائق تحسین ہیں۔وہ اب تک پاکستان میں اردو نعت کا ادبی سفر،اردو نعتیہ ادب کے انتقادی سرمائے کا تحقیقی مطالعہ،تعلق بالرسولؐ کے تقاضے اور ہم جیسی اہم کتب تصنیف کر چکے ہیں۔اسی طرح کچھ ادارے بھی نعت کے خصوص میں قائم ہیں اور مختلف سطحوں پر کام کر رہے ہیں۔ان میں نعت ریسرچ سنٹراور دبستان وارثیہ کی خدمات اپنی انفرادیت کے سبب نمایاں ہیں۔نعت ریسرچ سنٹر کے تحت ایک لائبریرٰ بھی قائم ہے ۔اس ادارے کے اب تک نعت نگر کا باسی۔ڈاکٹر ابو لخیر کشفی،اردو نعت میں تجلیات سیرت،(صبیح رحمانی)،وفیات نعت گویان پاکستان(ڈاکٹر منیر سلیچ)،مقالات نعت( اسد ثنائی) اور دیگر کئی کتب شائع ہو چکی ہیں۔دبستان وارثیہ کراچی اپنے قیام کے بعد سے اب تک کئی کتب شائع کر چکا ہے۔اس کا اختصاص یہ ہے کہ ادارہ کے تحت ردیف پر طرحی مشاعرے ماہانہ بنیادوں پر منعقد ہوتے ہیں اور پھر سال بھر میں کہی گئی نعتیں کتاب کی صورت پیش کر دی جاتی ہیں۔اکیسویں صدی کے آغازسے اب تک اس ادارے نے کرم عطا شرف نصیب ، وابستگی، فیض، منزل آگہی،تجلیاں،آپؐ سراپا نور،کیف آفریں تابانیاں،شگفتہ ہی شگفتہ،سرمایہ،روحانیت،مقدس نکہتں،شعور بے کراں،خزینہ الہام،گلشن جود وکرم اور نورانی حقیقت کے نام کتابیں قارئین کی خدمت میں پیش کی ہیں۔اسی طرح مختلف جامعات میں تحقیق کا کام بھی جاری ہے اور تدوین بھی۔کئی ادبی رسائی نے نعت نمبر بھی شائع کیے جن سہ ماہی ’’ادبیات‘‘ اسلام آباد کے نعت نمبر کو خصوصی اہمیت حاصل ہے۔گزشتہ سال شائو ہونے والے اس نعت نمبر کی اشاعت کا سہرا جہاں اس کے مدیر اختر رضا سلیمی اور دیگر معاونین کے سر بندھتا ہے وہیں اس قت کے چیئرمین اکادمی عبدالحمید بھی مبارک باد کے مستحق ہیں کہ انہوں نے اس طرف توجہ کی۔ اس نمبر کی خاص بات علاقائی زبانوں کے نعتیہ ادب کے سفر سے متعلق مضامین اور نعتوںکے تراجم ہیں تاہم اس اہم نمبر میں مظفر وارثی صاحب کا نام شامل نہیں۔(شاید سہواً ایسا ہو گیا ہے)۔
میں اپنی یہ کاوش قارئین کی خدمت اس اعتراف کے ساتھ پیش کر رہا ہوں کہ میں اپنی کم علمی کے باعث موضوع سے انصاف نہیںکرپایا،مجھے یہ اعتراف بھی ہے کہ میں مذکورہ بالا عرصہ میں شائع ہونے والی تمام کتب تک رسائی حاصل کر سکا ہوں نہ ہی اس مدت کے رسائل کا کما حقہ مطالعہ ۔ پھر بھی جس قدر کتب اور رسائل دیکھ سکا ہوں ان میں سے کچھ منتخب اشعار اس مضمون میں شامل کیے ہیں، مجھے اپنی بے بضاعتی کا بھی اعتراف ہے لیکن بقول رحمان حفیظ:
بے بضاعت ہوں مگر نعتِ نبیؐ لکھی ہے
عشق کے زیر ِاثر نعتِ نبیؐ لکھی ہے
کسی بھی حوالے سے پہلا اور نیا کام خام ہوسکتاہے مگر اسے پہلی اینٹ کے مترادف ضرورسمجھا جاتا ہے،میری یہ کوشش اگر اکیسویں صدی کی نعت پر گفتگو کا حرف ِ آغاز بن سکے تو میرے لیے یہی بڑااعزاز ہوگا۔


متعلقہ خبریں


کنزرویٹو پارٹی کی جیت کیخلاف سیکڑوں افراد کا احتجاج، بورس کیخلاف نعرے بازیکنزرویٹو پارٹی کی جیت کیخلاف سیکڑوں افراد کا احتجاج، بورس کیخلاف نعرے بازی وجود - هفته 14 دسمبر 2019

کنزرویٹو پارٹی کی جیت کے خلاف سیکڑوں افراد نے وسطی لندن میں احتجاجی مظاہرہ کیا، انہوں نے وزیراعظم بورس جانسن کے خلاف نعرے بازی کی۔برطانیا میں پارلیمانی انتخابات میں کنزرویٹو پارٹی کی جیت کے خلاف سیکڑوں افراد لندن کی سڑکوں پر نکل آئے ، مظاہرین نے بورس جانسن میرے وزیراعظم نہیں اور بورس آئوٹ کے نعرے لگائے ، بینرز تھامے مظاہرین نے مختلف سڑکوں پر مارچ کرتے ہوئے سڑک بلاک کر دی۔پولیس کی بھاری نفری موقع پر موجود تھی، وزیراعظم بورس جانسن کی پارٹی نے گزشتہ روز ہونے والے انتخابات میں وا...

کنزرویٹو پارٹی کی جیت کیخلاف سیکڑوں افراد کا احتجاج، بورس کیخلاف نعرے بازیکنزرویٹو پارٹی کی جیت کیخلاف سیکڑوں افراد کا احتجاج، بورس کیخلاف نعرے بازی

عراق میں امریکی مفادات کو گزند پہنچانے کی قیمت ایران ادا کرے گا، پومپیو وجود - هفته 14 دسمبر 2019

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے خبردار کیا ہے کہ مشرق وسطی بالخصوص عراق میں واشنگٹن کے مفادات اور تنصیبات کو کسی قسم کا نقصان پہنچا تو اس کی قیمت ایران کو چکانا ہوگی کیونکہ حالیہ دنوں کے دوران عراق میں ہمارے فوجی اڈوں پر میزائل اور راکٹ حملوں کے پیچھے ایرانی وفادار ملیشیائوں کا ہاتھ ہے ۔امریکی وزیر خارجہ نے ایک بیان میں کہا کہ ہم اس موقع کو ایران کویقین دہانی کرکے بہتر موقع سمجھتے ہیں اور اسے یاد دلاتے ہیں کہ ایران یا اس کے کسی وفادار ایجنٹ نے امریکا یا اس کے اتحادیوں میں س...

عراق میں امریکی مفادات کو گزند پہنچانے کی قیمت ایران ادا کرے گا، پومپیو

جرمنی ،راکیلئے کشمیریوں کی جاسوسی کرنیوالے بھارتی جوڑے کو 18سال قید کا حکم وجود - هفته 14 دسمبر 2019

جرمنی میں بھارت کی خفیہ ایجنسی'' را ''کے لیے کشمیریوں اور سکھوں کی جاسوسی کرنے والے جوڑے 50سالہ منموہن سنگھ اور 51سالہ کنول جیت کو بالتریب 18سال قید اور 180دن کی تنخواہ کا جرمانہ عائد کردیا گیا۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق جرمنی میں فرینکفرٹ کی ایک عدالت نے کشمیریوں اور سکھوں کی جاسوسی کرنے پر دو بھارتی شہریوں کو سزائیں سنائی ہیں۔ دونوں شہری میاں بیوی ہیں اور کافی عرصے سے جرمنی میں مقیم تھے ۔ یہ جوڑا جرمنی میں قیام پذیر دیگر کشمیریوں اور سکھوں کی معلومات اور سرگرمیوں ...

جرمنی ،راکیلئے کشمیریوں کی جاسوسی کرنیوالے بھارتی جوڑے کو 18سال قید کا حکم

سعودی عرب'خود کار طریقے سے چلنے والی بسوں کا کا میاب تجربہ وجود - هفته 14 دسمبر 2019

سعودی عرب کی کنگ عبداللہ یونیورسٹی میں خود کار طریقے سے چلنے والی بسوں کا کا میاب تجربہ کیا گیاہے ۔سعودی عرب میں بھی پہلی بار خود کار طریقے سے چلنے والی نئی گاڑیاں متعارف کروائی جا رہی ہیں، سعودی عرب کی کنگ عبداللہ یونیورسٹی برائے سائنس اینڈ ٹیکنالوجی میں دو بسوں سے لوکل موٹرز اور ایزی مائل کمپنیوں کے اشتراک سے اس جدید ٹیکنالوجی سے آراستہ بس سروس کا آغاز کیا گیا ہے ۔کنگ عبداللہ یونیورسٹی برائے سائنس و ٹیکنالوجی(کاوسٹ)کے اس اقدام سے اسمارٹ بسوں کا پروگرام نافذ ہوگیا ہے جو بہت ...

سعودی عرب'خود کار طریقے سے چلنے والی بسوں کا کا میاب تجربہ

امریکی ایئر فورس کا بیلسٹک میزائل کا ایک اور تجربہ وجود - جمعه 13 دسمبر 2019

امریکی ایئر فورس نے بیلسٹک میزائل کا ایک اور تجربہ کیا ہے ، تین ماہ سے بھی کم وقت میں امریکی نیو کلیئر میزائل فورس کا یہ اپنی نوعیت کا دوسرا تجربہ ہے ۔بیلسٹک میزائل کیلی فورنیا میں وینڈن برگ ایئر فورس بیس سے داغا گیا جس نے بحر الکاہل میں ہدف کو نشانہ بنایا۔امریکی حکام نے اس میزائل تجربے کی کوئی وجہ نہیں بتائی ، تاہم اسے امریکی نیوکلیئر میزائل ڈیفنس سسٹم کی آپریشنل صلاحیت کے اظہار کے طور پر دیکھا جارہا ہے ۔واضح رہے کہ 2 اکتوبر کو بھی امریکی ایئر فورس نے بین البراعظمی بیلسٹک می...

امریکی ایئر فورس کا بیلسٹک میزائل کا ایک اور تجربہ

ایران ، حالیہ احتجاج میں 1360 مظاہرین ہلاک، 10 ہزار گرفتار وجود - جمعه 13 دسمبر 2019

یکم نومبر کو ایران میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے خلاف اٹھنے والی احتجاجی تحریک کے دوران پولیس اور پاسداران انقلاب نے طاقت کا وحشیانہ استعمال کیا جس کے نتیجے میں ہزاروں مظاہرین جاں بحق اور زخمی ہوئے ہیں۔ایران میں نومبر کے وسط میں شروع ہونے والے احتجاج کے دوران پہلی ہلاکت سیرجان شہرمیں ہوئی۔ اس کے بعد دیکھتے ہی دیکھتے احتجاج ملک کے طول وعرض میں پھیل گیا۔ حکومت نے احتجاج کا دائرہ پھیلتے دیکھا تو انٹرنیٹ پرپابندی عائد کردی اور طاقت کا استعمال بڑھا دیا۔ ایرانی حکومت ک...

ایران ، حالیہ احتجاج میں 1360 مظاہرین ہلاک، 10 ہزار گرفتار

امریکا کا چین کے ساتھ تجارتی معاہدہ طے، صدر ٹرمپ کی منظوری کا انتظار وجود - جمعه 13 دسمبر 2019

بلومبرگ نے ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ امریکا اور چین تجارتی معاہدے کی طرف بڑھ رہے ہیں۔ امریکی انتظامیہ نے معاہدے کا ابتدائی مسودہ تیار کرلیا ہے اور معاہدے کے اصول بھی وضع کرلیے ہیں تاہم صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے اس کی منظوری باقی ہے ۔امریکی نشریاتی ادارے کی رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ چین کے ساتھ تجارتی تعلقات کی بحالی کا ایک مرحلہ باقی ہے اور وہ صدر ٹرمپ کی طرف سے اس کی منظوری ہے ۔"بلومبرگ" کا کہنا ہے کہ اسے چین اور امریکا کیدرمیان ممکنہ سمجھوتے کے حوالے سے باخبر ذرائع کی طرف سے ا...

امریکا کا چین کے ساتھ تجارتی معاہدہ طے، صدر ٹرمپ کی منظوری کا انتظار

امریکی سینیٹ کی قرارداد نے امریکا ترکی تعلقات خطرے میں ڈال دیے ، انقرہ وجود - جمعه 13 دسمبر 2019

ترکی نے امریکی سینٹ کی طرف سے آرمینی باشندوں کے قتل عام سے متعلق ایک بل کی منظوری پر سخت رد عمل ظاہرکیا ہے جس میں کہا گیا ہے کہ امریکی سینٹ کی قرارداد سے واشنگٹن اور انقرہ کے درمیان تعلقات خطرے سے دوچار ہوسکتے ہیں۔خبر رساں اداروں کے مطابق انقرہ نے متنبہ کیا ہے کہ امریکی سینیٹ نے آرمینی نسل کشی کو تسلیم کرنے کے لیے ایک قرارداد منظور کرکے امریکا اور ترکی کے باہمی تعلقات خطرے میں ڈال دئیے ہیں۔ترکی کے ایوان صدر کے ڈائریکٹراطلاعات فخرالدین الٹن نے ایک بیان میں کہا ہے کہ امریکی کان...

امریکی سینیٹ کی قرارداد نے امریکا ترکی تعلقات خطرے میں ڈال دیے ، انقرہ

اب کسی بھی زبان میں بات کرنا گوگل اسسٹنٹ سے ممکن وجود - جمعه 13 دسمبر 2019

اب کوئی میسجنگ یا چیٹنگ ایپ ہو یا روزمرہ کی زندگی، آپ کو بات چیت کے دوران دوسرے کی زبان نہ بھی آتی ہو تو بھی کوئی مسئلہ نہیں ہوگا، آپ کو بس گوگل کے اس بہترین فیچر کو استعمال کرنا ہوگا۔درحقیقت گوگل کے اس فیچر کی بدولت بیشتر افراد تو کوئی دوسری زبان سیکھنے کی زحمت ہی نہیں کریں گے کیونکہ زندگی کے ہر شعبے میں مدد کے لیے گوگل ہے نا۔گوگل نے اینڈرائیڈ اور آئی او ایس ڈیوائسز کے لیے اپنے ڈیجیٹل اسسٹنٹ میں انٹرپریٹر موڈ کو متعارف کرانے کا اعلان کیا ہے جو آپ کے فون میں رئیل ٹائم می...

اب کسی بھی زبان میں بات کرنا گوگل اسسٹنٹ سے ممکن

ایران کو پوری طاقت سے جواب دیں گے ،امریکی وزیر دفاع وجود - جمعرات 12 دسمبر 2019

امریکی وزیر دفاع مارک ایسپر نے ایوان نمائندگان کی آرمڈ فورس کمیٹی کو بتایا کہ ان کا ملک اپنے دفاع کو مستحکم کرنے اور اپنے اتحادیوں کو ایران کے خطرات کا مقابلہ کرنے کا اہل بنانا چاہتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ اگر ایران ہمارے مفادات یا افواج پر حملہ کرتا ہے تو ہم فیصلہ کن طاقت کے ساتھ جواب دیں گے ۔ادھر امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے گزشتہ روز کہا تھا کہ واشنگٹن ایران پر نئی پابندیوں کا اعلان کرنے کی تیاری کررہا ہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ ایران کے مختلف اداروں، کمپنیوں اور افراد کے خل...

ایران کو پوری طاقت سے جواب دیں گے ،امریکی وزیر دفاع

ٹرمپ کا یہود مخالف بائیکاٹ روکنے کیلئے صدارتی حکم نامہ جاری وجود - جمعرات 12 دسمبر 2019

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کالج کیمپسز میں یہودیوں کی مخالفت اور اسرائیل کا بائیکاٹ روکنے کے لیے نیا صدارتی حکم نامہ جاری کردیا ہے ۔ٹرمپ کے اس متنازع اقدام کے تحت ایسے تعلیمی اداروں کی حکومتی امداد روکی جاسکے گی جو یہودی اور اسرائیل مخالف واقعات کی روک تھام میں ناکام رہیں گے ۔صدارتی حکم نامے کے تحت محکمہ تعلیم کالج کیمپس میں یہود مخالف عناصر کے خلاف براہ راست کارروائی کر سکے گا۔اس ایگزیکٹو آرڈر کے تحت حکومت کو بحیثیت نسل، قوم یا مذہب یہودیت کی تشریح کی اجازت ہوگی ۔

ٹرمپ کا یہود مخالف بائیکاٹ روکنے کیلئے صدارتی حکم نامہ جاری

امریکا کا افغانستان میں فوج کو محدود کرنے پر غور وجود - جمعرات 12 دسمبر 2019

امریکا افغانستان میں اپنے فوجیوں کی تعداد کو کم کرنے پر غور کررہا ہے ۔ جس کے لئے حکام کئی طریقہ کار کا جائزہ لے رہے ہیں۔چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف جنرل مارک ملی نے کہا ہے کہ افغانستان میں دہشتگردوں سے لڑنے کے لئے امریکی فوجیوں کی تعداد کم کی جائیگی، تاہم انہوں نے حتمی تعداد نہیں بتائی۔انہوں نے مزید کہا کہ ہمارے پاس اختیارات ہیں۔ اس وقت افغانستان میں امریکی فوجیوں کی تعداد 13ہزار ہے جن میں سے 5 ہزار سیکورٹی سے متعلق آپریشن میں حصہ لے رہے ہیں۔ باقی اہلکار افغان سیکورٹی فورسز ...

امریکا کا افغانستان میں فوج کو محدود کرنے پر غور