وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

دنیا کا مشہور ترین سیاحتی مقام، استنبول کا مرکزی بازار

پیر 11 جنوری 2016 دنیا کا مشہور ترین سیاحتی مقام، استنبول کا مرکزی بازار

چینی و مٹی کے برتن، قالین، رنگ اور لوگوں کی بڑی تعداد، یہ دنیا کے قدیم ترین بازاروں میں سے ایک ہے، استنبول کا مرکزی بازار جسے مقامی طور پر بیوک چارشی یعنی عظیم بازار کہتے ہیں۔ یہ 1461ء میں اپنے قیام سے آج تک اہم تجارتی مرکز ہے اور آج ہر روز ڈھائی لاکھ سے زیادہ افراد اس بازار کو دیکھتے ہیں۔

خریداری کے جدید ترین مراکز قائم ہونے کے باوجود اس مرکزی بازار کا حسن اور یہاں سے خریداری کی روایت میں کمی نہیں آئی ہے بلکہ 2014ء میں یہ دنیا میں سیاحوں کے سب سے زیادہ مقامات میں سے ایک رہا۔ آئیے، ہم بھی اس بازار کی چند خوبصورت دکانوں اور دکانداروں سے ملتے ہیں۔

یہ حسن ایاز گوک ہیں جو بازار میں روایتی برتن کی دکان رکھتے ہیں، یہ ان کاخاندانی کاروبار ہے

یہ حسن ایاز گوک ہیں جو بازار میں روایتی برتن کی دکان رکھتے ہیں، یہ ان کاخاندانی کاروبار ہے


حسن رامو روایتی مٹھائیوں اور سوغاتوں کی اپنی دکان کے ساتھ

حسن رامو روایتی مٹھائیوں اور سوغاتوں کی اپنی دکان کے ساتھ


تانیر ارغودر صوفی و روایتی فن پاروں کی دکان میں

تانیر ارغودر صوفی و روایتی فن پاروں کی دکان میں


اکرم ترکمن روایتی عثمانی ملبوسات کی دکان کے ساتھ کھڑے ہیں

اکرم ترکمن روایتی عثمانی ملبوسات کی دکان کے ساتھ کھڑے ہیں


طوغان مرد اپنی دکان پر روایتی چراغ اور فانوس فروخت کرتے ہیں

طوغان مرد اپنی دکان پر روایتی چراغ اور فانوس فروخت کرتے ہیں


سرکان الماز ہاتھ سے بنے شطرنج اور دیگر ساز و سامان کی دکان پر گاہکوں کے منتظر دکھائی دیتے ہیں

سرکان الماز ہاتھ سے بنے شطرنج اور دیگر ساز و سامان کی دکان پر گاہکوں کے منتظر دکھائی دیتے ہیں


حسن اردوغان اپنی دکان پر خوبصورت برتنوں کے ساتھ

حسن اردوغان اپنی دکان پر خوبصورت برتنوں کے ساتھ


آدم صادق اور ان کی قالین اور غالیچوں کی دکان

آدم صادق اور ان کی قالین اور غالیچوں کی دکان


اسماعیل روایتی چینی کے برتن اور ہاتھوں سے بنی ٹائلوں کی دکان میں کھڑے ہیں

اسماعیل روایتی چینی کے برتن اور ہاتھوں سے بنی ٹائلوں کی دکان میں کھڑے ہیں


تیمور یلدرم روایتی قدیم اشیا فروخت کرنے کی دکان میں

تیمور یلدرم روایتی قدیم اشیا فروخت کرنے کی دکان میں


کنعان کلماز اپنی کپڑوں کی دکان میں بیٹھے اخبار پڑھ رہے ہیں

کنعان کلماز اپنی کپڑوں کی دکان میں بیٹھے اخبار پڑھ رہے ہیں


احمد تان اس بازار میں روایتی بانسریاں اور موسیقی کے آلات فروخت کرتے ہیں

احمد تان اس بازار میں روایتی بانسریاں اور موسیقی کے آلات فروخت کرتے ہیں


محمد اولنو بازار میں روایتی زیورات کی دکان رکھتے ہیں

محمد اونلو بازار میں روایتی زیورات کی دکان رکھتے ہیں


متعلقہ خبریں


جمہور کی طاقت کا عظیم مظاہرہ، استنبول میں 10 لاکھ افراد کا سمندر وجود - پیر 08 اگست 2016

ترکی میں 15 جولائی کی فوجی بغاوت سے لے کر اب تک ہر رات عوام سڑکوں پر بیٹھ کر جمہوریت کی حفاظت کا فریضہ انجام دیتے رہے اور اب 10 لاکھ سے زیادہ افراد نے طاقت کے ایک عظیم الشان مظاہرے کے ساتھ اپنا فرض مکمل کردیا ہے۔ 15 جولائی کی شب ہونے والی بغاوت کے دوران 270 لوگ مارے گئے تھے لیکن عوام کی بھرپور مداخلت کی وجہ سے حکومت بغاوت کا خاتمہ کرنے میں کامیاب ہوگئی۔ شہدائے جمہوریت کی یاد میں حکومت نے طاقت کا ایک عظیم الشان مظاہرہ کیا۔ بحیرۂ مرمرہ کے کنارے پر ینی قاپی کے علاقے میں دنیا...

جمہور کی طاقت کا عظیم مظاہرہ، استنبول میں 10 لاکھ افراد کا سمندر

ترکی: استنبول کے اتا ترک ہوائی اڈے پر خود کش حملہ ، اٹھائیس سے زائد افراد ہلاک ! وجود - بدھ 29 جون 2016

ترکی کے شہر استنبول کے اتاترک ہوائی اڈے پر ہونے والے خودکش بم دھماکوں اور فائرنگ کے نتیجے میں 28 افراد جاں بحق جبکہ ساٹھ سے زائد زخمی ہوگیے ہیں جن میں متعدد کی حالت نازک ہے۔ زخمیوں کو قریبی ہسپتالوں میں منتقل کر دیا گیا ہے۔ تفصیلات کے مطابق دھماکے بین الاقوامی ٹرمینل کے داخلی دروازے کے سامنے پارکنگ ایریا کی فٹ پاتھ پر ہوئے۔ استنبول کے اتاترک بین الاقوامی ہوائی اڈے پر ایشیا اور یورپ سے آنے والی پروازوں کے باعث ہمیشہ ہجوم رہتا ہے۔یہ یورپ کا تیسرا مصروف ترین ہوائی اڈہ ہے۔ صر...

ترکی: استنبول کے اتا ترک ہوائی اڈے پر خود کش حملہ ، اٹھائیس سے زائد افراد ہلاک !

استنبول میں دھماکا، 9 جرمن سیاحوں سمیت دس افراد ہلاک، پندرہ زخمی وجود - منگل 12 جنوری 2016

ترکی کے شہر استنبول کے مرکزی سیاحتی مقام سلطان احمد اسکوائر پر ایک زبردست دھماکا ہوا ہے۔ جس کے نتیجے میں آخری اطلاعات کے مطابق 9 جرمن سیاحوں سمیت 10 افراد ہلاک اور 15 افراد زخمی ہو گئے ہیں۔ عینی شاہدین کے مطابق یہ دھماکا اس قدر زوردار اور طاقتور تھا کہ اس کی آواز کئی کلومیٹر دور تک سنی گئی اور کئی سیاحوں پر سکتہ طاری ہوگیا۔ دھماکے کے نتیجے میں سڑک پر ایک میٹر گہرا گڑھا پڑ گیا۔ ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے کہا ہے کہ استنبول کے وسط میں واقع تاریخی چوک میں ایک شامی خودکش بمبار ...

استنبول میں دھماکا، 9 جرمن سیاحوں سمیت دس افراد ہلاک، پندرہ زخمی