وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar
لارنس آف عربیا, وہ وقت جب سمندری طوفان نے بحری جہازکوآگھیرا وجود - جمعرات 29 اکتوبر 2020

فوجی وردی میں ملبوس نیلی آنکھوں والایہ نوجوان مسلمانوں کے مقدس ملک جارہاتھا،اس کے سفرکی غایت عرب سلطنت کاقیام تھا عربوں کے پاس چند ہی بندوقیں تھیں اور وہ بھی اتنی پرانی تھیں کہ پہلی ہی بار کے چھوٹنے میں ان کے پھوٹ جانے کا اندیشہ تھا (قسط نمبر: 9) یہ صورت حال تھی کہ پردہ اٹھا۔ لارنس ڈرامائی طور پر بغاوت عرب میں داخل ہو چکا تھا۔ بعض دلچسپ قصے یوں بھی مشہور ہیں کہ اس نے پندرہ روز کی رخصت چاہی اور چونکہ اس کے ہمیشہ کے ساتھی اس سے اکتا گئے تھے اس لیے رخصت فوراً منظور کر لی گئی...

لارنس آف عربیا, وہ وقت جب سمندری طوفان نے بحری جہازکوآگھیرا

لارنس آف عربیا ,شریف مکہ لارڈکچرکے اُکسانے پرترکوں کیخلاف جنگ پرآمادہ ہوگیا وجود - جمعرات 29 اکتوبر 2020

(قسط نمبر: 8) لارنس سمجھ گیا کہ ظالم ترکوں کے خلاف ان چھوٹے چھوٹے قبیلوں سے ایک بہت بڑی فوج تیار ہو سکتی ہے،ان نے بغاوت کاجذبہ ابھارا اس نے اس خاص معاملہ میں اپنی رپورٹ بھجوائی لیکن نقشوں اور تصویر کشی کے علاوہ بھی اس نے کچھ اور کیا۔ جب وہ کہہ چکا کہ ان کی تمام کارروائی غلط یا کم از کم لاعلاج حد تک بے وقت کی چیز ہے تو اس نے ان عہدیداران کے روبرو ان کے طریق جنگ کے متعلق اپنے نقطۂ نظر کی وضاحت بھی کی۔ مثلاً کشتیوں کو ساحل پر لانے لے جانے کے جو طریقے فوجی عہدہداروں نے اختیا...

لارنس آف عربیا ,شریف مکہ لارڈکچرکے اُکسانے پرترکوں کیخلاف جنگ پرآمادہ ہوگیا

لارنس آف عربیا ,انگریزوں نے ہتھیار ڈالدیئے ،ترک جیت گئے وجود - جمعرات 29 اکتوبر 2020

وہ نو عمر، بے سلیقہ اور انتہائی غیر فوجی قسم کا انسان تھا لیکن اس کا قلب دنیا کے بعض عظیم ترین جرنیلوں سے ٹکر کھاتا تھا (قسط نمبر:7) ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن سیکنڈ لیفٹنٹ ٹامس ایڈورڈ لارنس کا خیال کچھ اور تھا۔ بعض نقشوں کے متعلق وہ جانتا تھا کہ وہ سرتا سر غلط ہیں اس لیے انھیں پرزے پرزے کر دیتا۔ دوسروں میں من مانی تبدیلیاں کرتا۔ نقشہ پر جن چیزوں کو مہمل سمجھتا وہاں حیران کر دینے والی یادداشتیں لکھ دیتا۔ اس سے کہا بھی گیا کہ وہ اس طریقہ عمل کا مجاز نہیں ہے لیکن وہ برابر یہی ک...

لارنس آف عربیا ,انگریزوں نے ہتھیار ڈالدیئے ،ترک جیت گئے

’’لارنس آف عربیا,کرنل بنوکاسب ‘‘ نے ترکوں سے دھوکے سے حاصل کردہ نقشہ مصرکے حوالے کردیا وجود - جمعرات 29 اکتوبر 2020

یہ نوجوان فوجی لباس پہن کربھی فوجی نہ معلوم ہوسکا،اس کاگلاہمیشہ کھلاہی رہتا،افسران ہی کیاعام سپاہی بھی جان چکے تھے کہ یہ فوجی نہیں عام شہری ہے قسط نمبر :6 1913-14ء کے جاڑوں میں حکومت مصر، سینا کا فوجی نقشہ حاصل کرنے کے لیے بے چین تھی۔ کرنل نیو کامب اس کام پر مامور ہوئے۔ حکومت ترکیہ سے درخواست کی گئی کہ ملک کی پیمائش کی اجازت دے لیکن حکومت ترکیہ اپنے انکار پر جمی رہی۔ متعلقہ عہدہ دار سر جوڑ کر بیٹھے۔ انھوں نے ترکوں سے دوبارہ درخواست کی کہ کیا وہ ملک کے آثار قدیمہ کی حد ت...

’’لارنس آف عربیا,کرنل بنوکاسب ‘‘ نے ترکوں سے دھوکے سے حاصل کردہ نقشہ مصرکے حوالے کردیا

لارنس آف عربیا ,ترکوں نے پانچ سوسال تک عربوں پرحکمرانی کی وجود - هفته 24 اکتوبر 2020

(قسط نمبر: 5)   لارنس نے کئی سال غریب عربوں کے درمیان گزارے انکا بھیس بدل کر مقدس شہر مکہ میں بھی جاپہنچا،ان میں آزادی کاجوش جگایا سینکڑوں سال قبل ایک عظیم الشان قوم اس ملک میں آبادرہ چکی ہے۔ اب اس کی یادگار صرف قصے کہانیاں رہ گئی ہیں یا چند چٹانیں۔ وحشیوں نے روم کی تھکی ہوئی حکومت کا صفایا کر دیا تھا اور چند صدیوں تک فرقے اور قبیلے شہر بشہر آوارہ گردی کرتے رہے۔ وہ ان کھنڈروں کی جو روم کی گذشتہ عظمت کی یاد گار تھے، تعمیر کر ہی رہے تھے کہ ان سے طاقتور قبیلوں نے انھ...

لارنس آف عربیا ,ترکوں نے پانچ سوسال تک عربوں پرحکمرانی کی

لارنس آف عربیا ,قصہ جرمنوں کوبے وقوف بنانے کا وجود - جمعه 23 اکتوبر 2020

لوگوں کی نقل اتارنے میں ماہریہ نوجوان ایک زبردست نشانہ باز تھا،مجمع لگاکر ایسی ایسی کہانیاں بھی سنانا کہ لوگ دنگ رہ جاتے قسط نمبر:4 لارنس کا ایک بھائی بھی اس سے ملنے کے لیے آ گیا تھا اور اس صحبت میں شریک تھا۔ گفتگو جرمنوں کے متعلق ہو رہی تھی۔ اس وقت میجر کو لارنس کے ہونٹوں پر ایک مسکراہٹ یا ہنسی کھیلتی نظر آئی۔ میجر نے پوچھا۔ ’’ہنس کیوں رہے ہو؟‘‘۔ صرف اس لیے کہ میں نے کچھ ہی دیر پہلے جرمنوں کو کافی بے وقوف بنایا ہے۔‘‘ ’’بے وقوف بنایا ہے۔‘‘ پوری طرح ہنستے ہوئے لارنس ...

لارنس آف عربیا ,قصہ جرمنوں کوبے وقوف بنانے کا

لارنس آف عربیا, پتھروں کی اسمگلنگ میں گرفتاری و رہائی وجود - جمعرات 22 اکتوبر 2020

قسط نمبر:3 ہنستے ہنستے بڑے سے بڑے کام کرڈالنے والایہ نوجوان نہایت نڈروبے باک تھا،مگرسفاکی اس سے کوسوں دورتھی دن کا کام جب ختم ہو جاتا تو وہ دیہات میں جا پہنچتا۔ دیہاتیوں کی طرح زمین پر آلتی پالتی مار کر بیٹھتا۔ ان سے باتیں کرتا۔ دیہاتی زندگی کی گپ شپ اور ہنسی مذاق میں برابر کا شریک رہتا۔ ان لوگوں نے یہ معلوم کر لیا کہ وہ خوف کھانا جانتا ہی نہیں۔ انھیں حیرت تھی کہ اس کا چھوٹا سا جسم کتنا طاقتور ہے اپنے سادے سیدھے اور بے تکلف انداز میں وہ اس کو چاہنے بھی لگے تھے کیونکہ...

لارنس آف عربیا, پتھروں کی اسمگلنگ میں گرفتاری و رہائی

لارنس آف عربیاکی دوڑ بھاگ وجود - جمعرات 22 اکتوبر 2020

قسط نمبر؛2 علم کی پیاس نوجوان کوعام راستوں سے دوردوربھٹکاتی رہی ، وہ ان کھنڈروں تک بھی جاپہنچاجسے بہت کم لوگ جانتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ علم کی پیاس اسے عام راستوں سے دور دور بھٹکا دیتی تھی۔ اس سال موسم بہار میں چار مہینے تک وہ اسی سر زمین پر گھومتا پھرا۔ وہ فسلطین سے نکل کر قدیم اڈیسہ تک پہنچ گیا جسے کا آج کل عرفہ بھی کہتے ہیں۔ وہ تفصیل سے اس ملک کا معائنہ کر چکا جس کو مسیحی مجاہدوں نے لازوال شہرت بخشی۔ مجاہدوں کی یہ فوج فرماں رواؤں، خانہ بدوشوں سپاہیوں اور دی...

لارنس آف عربیاکی دوڑ بھاگ

سوویت یونین میں کمیونزم امریکی بینکروں نے برپا کروایا وجود - منگل 20 اکتوبر 2020

صحرا بہ صحرا ۔۔۔۔۔۔ محمد انیس الرحمن سوویت یونین میں کمیونزم امریکی بینکروں نے برپا کروایا ٭جیکب شیف نے ہمیشہ اپنی دولت اور اثر رسوخ کو ’’اپنے لوگوں‘‘ کے مفاد کے لیے استعمال کیا۔ اس نے روس کے شاہی خاندان کے دشمنوں کو امریکا کی مالیاتی مارکیٹ میں بیٹھ کر زبردست مالی امداد مہیا کی ٭لاکھوں عیسائیوں میں سے کچھ ایسے عیسائی بھی تھے جو لاعلمی کی وجہ سے کمیونسٹوں کے ہتھے چڑھے جبکہ لاکھوں معصوم عیسائیوں کو کمیونسٹ نظریات کے یہودی پرچارک ’’ٹروسٹکی ‘‘ کے حکم سے تباہ کر دیا گیا ٭رو...

سوویت یونین میں کمیونزم امریکی بینکروں نے برپا کروایا

لارنس آف عربیا، بچپن کیسے گزرا؟ وجود - منگل 20 اکتوبر 2020

پاکستان سمیت عالم اسلام کے اکثر ممالک میں آج کل ایک تاریخی ڈراما ’’ارطغرل‘‘ نہایت مقبول ہے۔ یہ ڈراما مسلمانوں کو اُن کی تاریخ کے کچھ پہلوؤں سے آشنا کرتا ہے، مگر بعد کے مسلم ادوار کی اصل حالت کو سمجھنے کے لیے ایک اور کردار ’’لارنس آف عربیا‘‘ کو سمجھنے کی ضرورت ہے۔ برطانوی فوج کا یہ افسر مختلف بہروپ سے خلافت عثمانیہ کی حدود میں داخل ہوا اور تنہا عربوں میں قوم پرستی کے جذبات پیدا کرکے اُنہیں خلافت عثمانیہ کے خلاف کردیا۔ یہاں تک کہ اسلامی خلافت کا خاتمہ ہوگیا۔ اس ایک شخص نے ت...

لارنس آف عربیا، بچپن کیسے گزرا؟

سعودی عرب کا اپنے شہریوں کو ’’ترک اشیاء ‘‘کا بائیکاٹ کرنے کی ہدایت وجود - پیر 05 اکتوبر 2020

سعودی عرب نے ترک صدر رجب طیب اردگان کے حالیہ متنازع بیان کے بعد اپنے شہریوں کو ترک اشیا کی بائیکاٹ کی ہدایت کردی۔واضح رہے کہ ترک صدر نے کہا تھا کہ کچھ خلیجی ممالک خطے میں عدم استحکام پیدا کرنے والی پالیسیوں پر گامزن ہیں۔غیرملکی میڈیا کے مطابق سعودی عرب کے چیمبر آف کامرس کے سربراہ اذلان العجلان نے ایک ٹوئٹ میں کہا کہ ہماری قیادت، ہمارے ملک اور شہریوں کے خلاف ترک حکومت کی مسلسل دشمنی کے ردعمل میں ہر سعودی تاجر اور صارف ہر چیز کا بائیکاٹ کریں۔انہوں نے کہا کہ شعبہ درآمد، سرمایہ ک...

سعودی عرب کا اپنے شہریوں کو ’’ترک اشیاء ‘‘کا بائیکاٹ کرنے کی ہدایت

دنیاایٹمی تباہی کے دہانے پر ۔۔۔مزاحمت معدوم!! وجود - اتوار 05 مارچ 2017

ایٹمی اسلحہ کے پھیلاؤ اور ماحول کی آلودگی میں اضافے کی وجہ سے انسان کی تباہی دن بدن قریب تر آنے لگی ،ایٹمی سائنسداںبلیٹن کا انکشاف 1980میںعوام جوق درجوق ایٹمی اسلحہ کے خلاف مظاہروں میں شریک ہورہے تھے اور سزا ؤںکے باوجودلوگوں کی تعداد میں کمی نہیں ہورہی تھی اب وہ ماحول باقی نہیں رہا ، ایک چھوٹا سا پر عزم گروپ موجود ہے جو ایٹمی اسلحہ کی تباہ کاریوں کو محسوس بھی کرتاہے، مہم کی حکمت عملی کو تبدیل کرنے کی ضرورت ہے ایلی سن مک گیلیو رے ایک ماہ قبل ڈونلڈ ٹرمپ کے دور اقتدار می...

دنیاایٹمی تباہی کے دہانے پر ۔۔۔مزاحمت معدوم!!

مغربی تہذیب اور قرآن مجید محمد دین جوہر - پیر 15 اگست 2016

ہمارے ایک دوست نے گزشتہ دنوں یہ سوال اٹھایا کہ کیا اہل مغرب نے اپنے علم، معاشرے اور تہذیب کے بنیادی اصول قرآن مجید سے حاصل نہیں کیے؟ ہم اپنے زوال کی وجہ سے جس ذمہ داری کو فراموش کر چکے ہیں، اہل مغرب نے اسے پورا کر دکھایا؟ یہ سوال دراصل جواب ہے۔ ہمارے کلچر، تعلیم، علوم، مذہبی مباحث، فکری انتاجات اور دینی تعبیرات میں یہ بات بہت عام ہے۔ ہمارے ہاں اسے ایک مرکزی سچ کی حیثیت حاصل ہو چکی ہے کہ اہل مغرب نے جو یہ جدید تہذیب کھڑی کی ہے اسے انہوں نے قرآن مجید سے اخذ کیا ہے۔ متجددین ا...

مغربی تہذیب اور قرآن مجید