وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

مشرقِ وسطیٰ کا بدلتا منظرنامہ

هفته 12 جون 2021 مشرقِ وسطیٰ کا بدلتا منظرنامہ

اسرائیل کے معرضِ وجود میں آتے ہی مشرقِ وسطیٰ کا امن و سکون غارت ہو گیا تھا اب بھی یہ خطہ مسلسل جنگوں کا مرکز ہونے کی بناپر عدمِ استحکام کا شکارہے لیکن کچھ عرصہ سے غیر متوقع واقعات کی بنا پر منظر نمامے ایسی تبدیلی آئی ہے جس کے بارے چند برس قبل سوچا بھی نہیں جا سکتا تھااب بھی بہت سے لوگ انہونیوں سے ورطہء حیرت میں ہیں مثلاََ وہی عرب ممالک جو کبھی اسرائیل کے بدترین مخالف تھے اب اُن کی مخالفانہ جذبات کی برف پگھل رہی ہے متحدہ عرب امارات نے تو صیہونی ریاست سے بغیر ویزہ آمدو رفت کا معاہدہ کر لیا ہے مراکش نے بھی متنازع علاقے پر امریکا کی طرف سے مراکشی حاکمیت تسلیم کرنے کے عوض تل ابیب سے سفارتی تعلقات قائم کر لیے ہیں موجودہ سعودی قیادت کی سوچ اِس حدتک تبدیل ہوچکی ہے کہ وہ اسرائیل کو ثانوی اور ایران کو اولیں خطرہ سمجھتی ہے بدلتے منظر نامے کی وجہ عرب ممالک کا زاتی مفادات ،معاشی فوائد اور خوف کے زیرِ اثر اسرائیل سے سفارتی مراسم اُستوار کرناہے لیکن جہاں ایک طرف یہ انہونی ہورہی ہے وہیں کویت اور تیونس جیسے ممالک اسرائیل کو تسلیم کرنا تو درکنا کاروبار کرنے کو بھی جُرم قرار دینے کی قانون سازی کی طرف آنے لگے ہیں یہ تبدیلی کافی حیران کُن ہے اور غیر متوقع بھی ،مگر اِس تبدیلی نے واضح کر دیا ہے کہ عربوں میں یہ سوچ تقویت پکڑ رہی ہے کہ وہ اسرائیل کا مقابلہ کرنے کی سکت نہیں رکھتے اسی لیے مقابلے کی بجائے تعاون کی طرف آئے ہیں مگر سوچ کی تبدیلی کے باوجود امن کے حوالے سے خطہ مشکلا ت سے دوچارہے۔
صدر ٹرمپ کے داماد جیراڈکشنر نے عربوں کی سوچ بدلنے کے لیے کافی محنت کی مگر ٹرمپ کے پہلے بیرونی دورے کا سعودی عرب سے آغاز کا بھی بڑاعمل دخل ہے اسی دورے سے ماہرین نے یہ نتیجہ اخذکر لیا کہ امریکا عربوں کو اسرائیل کا مطیح و فرمانبردار بنا کر خطے سے جنگوں کے امکانات کم کرنا چاہتا ہے مگر امریکی تمنااِس حد تک ہی پوری ہوئی ہے کہ اسرائیل کو لاحق خطرات میں کمی واقع ہوئی ہے مگر جنگوں کے امکانات بددستور موجود ہیں گزشتہ ماہ 21 مئی سے غزہ پر گیارہ روز جاری رہنے والی بمباری امکانات کی تصدیق کرتی ہے جس کے دوان سینکڑوں اموات وہزاروں زخمیوں کے ساتھ 75 ہزار سے زائد فلسطینی بے گھر ہوئے اِن حالات میں مشرقِ وسطیٰ کے منظر نامے میں جتنی بھی تبدیلی آئے بدامنی کے چھائے بادل کم نہیں ہو سکتے کیونکہ ناانصافی سے بے سکونی اور بد اعتمادی جنم لیتی ہے اسی بداعتمادی کی بنا پر سعودی عرب کو اسرائیلی مسافر طیاروں کو فضائی حدود استعمال کرنے کی رعایت واپس لینا پڑی یہ سخت فیصلہ چاہے عوامی دبائو کی مرہونِ منت سہی،لیکن اِس سے واضح ہو تا ہے کہ مختلف اختلافات کے باوجود عرب اضطراب کا شکارہیں نیز اسرائیل کے متعلق پائی جانے والی بداعتمادی کا خاتمہ بھی نہیں ہو سکا ۔
عربوں کی سوچ بدلنے کے لیے امریکی کاوشیں جزوی طور پر کامیاب ضرور ہوئی ہیں لیکن عرب و اسرائیل بھائی چارے کی فضا ہنوز مفقود ہے ظاہر ہے جب تک اسرائیل جارحانہ پالیسیاں ترک نہیں کرتا عرب کے خدشات کمی نہیں ہو سکتے بے گھر وزخمی فلسطینیوں تک امداد پہنچانے میں رکاوٹیں ڈالنے ،ہمسایہ ملک شام پر وقفے وقفے سے فضائی بمبار ی اور اب چند دنوں کے مہمان بینجمن نیتن یاہو کا لبنان میں حزب اللہ کے خلاف ذیادہ طاقت استعمال کرنے کا عندیہ دینا ظاہر کرتا ہے کہ صیہونی ریاست کو عربوں کوچرکے لگانے میں مزہ آتا ہے اوروہ کمزورعربوں کومکمل مطیع و فرمانبردار بنانا چاہتاہے غزہ پر بمباری اور اموات کے باجود تل ابیب میں سفارتخانہ کھولنے اور پر چم لہرانے کے فیصلے سے عرب امارات کی دیگر عرب ممالک سے دوری محسوس ہوتی ہے لیکن اِ س فیصلے سے مشرقِ وسطیٰ کا منظر نامہ مکمل طور پر اسرائیل کے حق میں ہوتا دکھائی نہیں دیتاٹرمپ کے بعد جو بائیڈن کے صد ر بننے سے انسانی حقوق کے حوالے سے امریکی رویہ تبدیل ضرور ہوا ہے لیکن رویے سے اسرائیل کچھ خاص متاثر نہیں ہوگابلکہ مہربانیاں جاری رہیں گی تما م تر سفاکی و سنگدلی کے باوجود امریکا سے ہر سال اسرائیل سب سے ذیادہ امداد لینے والا ملک ہے یہ صورتحال اسرائیل کے لیے نہایت حوصلہ افزا ہے اور اسرائیلی حملوں کو دفاعی حق قرار دینا واضح کرتا ہے کہ جب اسرائیل کی بات ہو تو جو بائیڈن کو بھی انسانی حقوق کی باتیں بھول جاتی ہیں اور غیر مشروط حمایت کرنے کے ساتھ صیہونی ریاست کی فضائی دفاعی شیلڈ آئزن ڈوم کو اپَ گریڈ کرنا ہی یاد رہتا ہے ۔
کیا عربوں نے پالیسی بنانے کا فریضہ امریکا کوسونپ کراسرائیلی بالادستی قبول کر چکے ہیں بظاہر کچھ حوالوں سے ایسا ہی نظرآتا ہے لیکن یہ کلی طور پر درست نہیں بلکہ متبادل کی تلاش پر بھی کام جاری ہے اور مفادات کے تناظر میں کچھ حوصلہ افزا اقدامات بھی اُٹھائے جارہے ہیں ایک طرف سعودیہ و ایران میں دوریاں کم ہونے کا تاثر ملتا ہے جس کے لیے دونوں ملکوں کی اعلٰی قیادت اختلافات کی خلیج کم کر نے پر اتفاق کر چکی ہے سعودی قیادت قطر کا بائیکاٹ یکطرفہ طور پر ختم کرنے کے بعد اب شام سے سفارتی تعلقات معمول پر لانے کے لیے بھی کوشاں ہے بلکہ باوثوق ذرائع اِس کے لیے بیک ڈور مزاکرات کی کامیابی کی جلد نوید سُننے کا امکان ظاہر کرتے ہیں اِس سے ایک بات تو عیاں ہوتی ہے کہ سعودی عرب کا مزاج تبدیل ہوا ہے اور اب وہ مفاہمانہ روش پر چلنے لگا ہے اِس میں شامی صدر بشار الا اسد کی حال ہی میں بھاری اکثریت سے صدارتی کامیابی کا عمل دخل ہے یا دیگر عوال ہیں مشرقِ وسطیٰ کے منظر نامے میں بڑی تبدیلی ہے ۔
امریکا نے اپنا جھکائو سعودی عرب کے حق میں رکھنے کے باوجودمحتاط روی اختیار کی اور ایران سے بگاڑ کو دوبدو لڑائی کی طرف نہ آنے دیا جنرل قاسم سلیمانی کی ہلاکت کے بدلے میںعراق میں امریکی دفاعی تنصیبات پر ایرانی حملوں کے جواب میں صبرو تحمل محتاط روی ہی ہے لیکن اب امریکا نے اپنی پالیسی مزید تبدیل کر لی ہے وہ ایران اور سعودیہ سے بیک وقت تعلقات بہتر بنا کررکھنا چاہتا ہے اور محاز آرائی بڑھانے کی بجائے 2015میں طے شدہ جوہری سمجھوتے کے تقاضوں کو پورا کرنے کے لیے بات چیت کا سہارہ لے رہا ہے لیکن اِ ن اقدامات سے مشرقِ وسطیٰ میں استحکام آئے گا اور بدامنی کا خاتمہ ہو جائے گا وثوق سے ہاں میں جواب دینا قدرے مشکل ہے لیکن تبدیل ہوتے منظر نامے کی نشاندہی ضرورہوتی ہے ۔
عربوں کی مشکلات دفاع تک ہی محدود نہیں رہیں بلکہ جوں جوں دنیا کا تیل پر انحصار کم ہو رہا ہے عرب ممالک کی معاشی مشکلات میں بھی اضافہ ہونے لگا کئی دہائیوں سے تیل کی آمدن پر انحصار کرنے والے عرب ممالک گرتی قیمتوں سے معاشی دبائو کا شکار ہیں اور متبادل زرائع کی تلاش میں ہیں کویت کا بجٹ خسارہ کل معیشت کاچالیس فیصد ہونے والا ہے تیل کی آمدن کم ہونے کے بعد عراق ،عمان اور سعودی عرب شہری سہولتوں کو کم کرنے اور ٹیکسوں میں اضافہ کرنے پر مجبور ہیں یا پھر محفوظ ذخائر میں سے کچھ استعمال میں لانے لگے ہیں کچھ ممالک نے قرض کا آپشن اپنا لیا ہے آیا خراب معاشی حالت نے عربوں کی سخت مخالفانہ سوچ کو نرم کیا ہے اور وہ خطے میں موجود تنائو کم کر نے پر مجبور ہوئے ہیں اِس سوال کو مکمل طور پر جھٹلانا ممکن نہیںشاید اسی لیے اسرائیل سے تعلقات نارمل بنا کر دفاعی اخراجات میں کمی کرنا چاہتے ہیں لیکن عرب فیصلہ سازی میں تذبذب کا شکار دکھائی دیتے ہیں اسی لیے مشرقِ وسطیٰ کا بدلتا منظر نامہ عرب مفاد کے لیے بظاہرسازگاردکھائی نہیں دیتا ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
عمرؓکومعاف کردیں وجود جمعرات 29 جولائی 2021
عمرؓکومعاف کردیں

افغانستان میں امن اور کابل حکومت کی پروپیگنڈہ مہم وجود جمعرات 29 جولائی 2021
افغانستان میں امن اور کابل حکومت کی پروپیگنڈہ مہم

حیسکو قاتل بھی مقتول بھی وجود جمعرات 29 جولائی 2021
حیسکو قاتل بھی مقتول بھی

اگر اب بھی نہ جاگے۔پیگاسس جاسوسی اسکینڈل وجود جمعرات 29 جولائی 2021
اگر اب بھی نہ جاگے۔پیگاسس جاسوسی اسکینڈل

قوت گویائی کی بحالی میں کامیابی وجود منگل 27 جولائی 2021
قوت گویائی کی بحالی میں کامیابی

کون کہتاہے وجود اتوار 25 جولائی 2021
کون کہتاہے

اپنا دھیان رکھنا وجود اتوار 25 جولائی 2021
اپنا دھیان رکھنا

محکمہ بہبودی آبادی کے گریڈ چودہ کے ملازم کے اختیارات و مراعات!! وجود هفته 24 جولائی 2021
محکمہ بہبودی آبادی کے گریڈ چودہ کے ملازم کے اختیارات و مراعات!!

اپنوں کی حوصلہ شکنی حب الوطنی نہیں وجود هفته 24 جولائی 2021
اپنوں کی حوصلہ شکنی حب الوطنی نہیں

مسلماں نہیں راکھ کا ڈھیر ہے وجود بدھ 21 جولائی 2021
مسلماں نہیں راکھ کا ڈھیر ہے

مساوات، قربانی اور انعام وجود بدھ 21 جولائی 2021
مساوات، قربانی اور انعام

’’ایف آئی آر‘‘ کے خلاف سندھ حکومت کی قانونی کارروائی وجود بدھ 21 جولائی 2021
’’ایف آئی آر‘‘ کے خلاف سندھ حکومت کی قانونی کارروائی

اشتہار

افغانستان
امریکی جنگی طیاروں کے طالبان کے ٹھکانوں پر فضائی حملے وجود هفته 24 جولائی 2021
امریکی جنگی طیاروں کے طالبان کے ٹھکانوں پر فضائی حملے

افغان صدارتی محل میں نماز عید کے دوران راکٹ حملے کی ویڈیو وائرل وجود بدھ 21 جولائی 2021
افغان صدارتی محل میں نماز عید کے دوران راکٹ حملے کی ویڈیو وائرل

وزیر اعظم عمران خان نے افغان صدر اشرف غنی کو آئینہ دکھا دیا وجود هفته 17 جولائی 2021
وزیر اعظم عمران خان نے افغان صدر اشرف غنی کو آئینہ دکھا دیا

پاکستان سے 10ہزار جنگجو افغانستان میں داخل ہوئے ، اشرف غنی کا الزام وجود هفته 17 جولائی 2021
پاکستان سے 10ہزار جنگجو افغانستان میں داخل ہوئے ، اشرف غنی کا الزام

طالبان نے افغانستان کے شمالی علاقوں پر قبضہ کرلیا، امریکی میڈیا وجود پیر 12 جولائی 2021
طالبان نے افغانستان کے شمالی علاقوں پر قبضہ کرلیا، امریکی میڈیا

اشتہار

بھارت
بابری مسجد کی شہادت کے بعد مسلمان ہونے والے محمد عامر کی پر اسرار موت وجود اتوار 25 جولائی 2021
بابری مسجد کی شہادت کے بعد مسلمان ہونے والے محمد عامر کی پر اسرار موت

پیگاسس کے ذریعے جاسوسی،نریندر مودی نے غداری کا ارتکاب کیا، راہول گاندھی وجود هفته 24 جولائی 2021
پیگاسس کے ذریعے جاسوسی،نریندر مودی نے غداری کا ارتکاب کیا، راہول گاندھی

بھارت میں کورونا اموات سرکاری اعداد وشمار سے 10 گنا زیادہ ہوسکتی ہیں وجود بدھ 21 جولائی 2021
بھارت میں کورونا اموات سرکاری اعداد وشمار سے 10 گنا زیادہ ہوسکتی ہیں

افغانستان سے بھارتی سفارتکاروں کا انخلائ، سوشل میڈیا پہ مذاق اڑنے لگا وجود پیر 12 جولائی 2021
افغانستان سے بھارتی سفارتکاروں کا انخلائ، سوشل میڈیا پہ مذاق اڑنے لگا

نریندر مودی کی کابینہ میں شامل 42فیصدوزراء کے خلاف فوجداری مقدمات قائم ہیں'رپورٹ وجود پیر 12 جولائی 2021
نریندر مودی کی کابینہ میں شامل 42فیصدوزراء کے خلاف فوجداری مقدمات قائم ہیں'رپورٹ
ادبیات
عظیم ثنا ء خواں،شاعر اورنغمہ نگار مظفر وارثی کی دسویں برسی منائی گئی وجود جمعرات 28 جنوری 2021
عظیم ثنا ء خواں،شاعر اورنغمہ نگار مظفر وارثی کی دسویں برسی منائی گئی

لارنس آف عربیا، بچپن کیسے گزرا؟ وجود منگل 20 اکتوبر 2020
لارنس آف عربیا، بچپن کیسے گزرا؟

بیروت سے شائع کتاب میں اسرائیل نواز بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کا چہرہ بے نقاب وجود جمعرات 17 جنوری 2019
بیروت سے شائع کتاب میں اسرائیل نواز بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کا چہرہ بے نقاب

14واں بین الاقوامی کتب میلہ کراچی ایکسپوسینٹر میں ہوگا وجود پیر 10 دسمبر 2018
14واں بین الاقوامی کتب میلہ کراچی ایکسپوسینٹر میں ہوگا

شاعر جون ایلیا کو مداحوں سے بچھڑے 16 برس بیت گئے وجود جمعرات 08 نومبر 2018
شاعر جون ایلیا کو مداحوں سے بچھڑے 16 برس بیت گئے
شخصیات
188ارب ڈالر کے مالک ایلون مسک دنیا کے مالدار ترین آدمی بن گئے وجود جمعه 08 جنوری 2021
188ارب ڈالر کے مالک ایلون مسک دنیا کے مالدار ترین آدمی بن گئے

ہالی وڈ اداکار ادریس البا کی اہلیہ بھی کورونا سے متاثر وجود پیر 23 مارچ 2020
ہالی وڈ اداکار ادریس البا کی اہلیہ بھی کورونا سے متاثر

امریکی میگزین فوربز میں سب سے زیادہ کمانے والی شخصیات کی فہرست جاری وجود منگل 01 جنوری 2019
امریکی میگزین فوربز میں سب سے زیادہ کمانے والی شخصیات کی فہرست جاری

سال 2018، مختلف شعبہ ہائے حیات کی بہت سی عالمی شخصیات دنیا چھوڑ گئیں وجود بدھ 26 دسمبر 2018
سال 2018، مختلف شعبہ ہائے حیات کی بہت سی عالمی شخصیات دنیا چھوڑ گئیں

ماضی کی رہنما خواتین وجود پیر 14 مئی 2018
ماضی کی رہنما خواتین