وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

چوہے مارگولیاں

پیر 12 اپریل 2021 چوہے مارگولیاں

آدھی رات کا وقت تھا لوگ گھروںمیں آرام کررہے تھے ،ماحول پرایک ہو کا عالم طاری تھا، اندھیرااتنا کہ ہاتھ کو ہاتھ سجھائی نہ دے رہاتھا بیشتر گھروں میں تاریکی تھی ،غالباً زیادہ تر لوگ سو گئے تھے، اکا دکا گھروںمیں زردی مائل روشنی بکھری ہوئی تھی ۔اس عالم میں ایک باوقار شخص ،نورانی صورت ،چہرے پر سختی نمایاں، شکل و صورت ایسی کہ انہیں دیکھ کر ایمان تازہ ہو جائے ،وہ مختلف گلیوں اور بازاروںسے ہوتے ہی ایک مکان کے آگے رک گئے۔ روشندان سے باہر جھانکتی روشنی سے محسوس ہورہاتھا کہ دیا ٹمٹما رہاہے ۔ کھڑکی سے باتیں کرنے کی مدہم مدہم آوازیں آرہی تھی ۔نورانی صورت والے نے کان کھڑکی کے ساتھ لگا دیے ۔ کوئی لڑکی اپنی والدہ سے کہہ رہی تھی ’’ہم کب تک فاقے کرتے رہیں خلیفہ کو اپنا حال بتانے میں کیا امر مانع ہے‘‘؟ بوڑھی عورت استقامت سے بولی وہ خلیفہ بنے ہیں تو انہیں ہماری خبرہونے چاہیے ۔ لڑکی اپنی والدہ کو پھر سمجھانے لگ گئی۔ان کی باتیں سن کر کھڑکی سے کان لگائے ۔نورانی صورت والا کانپ کانپ گیا ۔اس نے بے اختیار دروازے پر دستک دیدی ۔۔۔ اس وقت۔ کون ؟ اندر سے ڈری سہمی آواز میں کسی نے پوچھا گبھرائیں مت ۔نورانی صورت والے نے بڑی متانت سے جواب دیا ،میں عمرؓ کی طرف سے آیا ہوں ۔دروازہ کھلاخاتون نے اسے اندر آنے کی اجازت دی۔ اس نے خاتون کی خیریت اور حال احوال دریافت کیا۔لڑکی کے ضبط کا بندھن ٹوٹ گیا اس نے فرفر انہیں اپنے فاقوںکااحوال کہہ ڈالا۔
’’ عمرؓ کی طرف سے میں معذرت چاہتاہوں ۔ نورانی صورت والے نے بڑے رقت آمیز لہجے میں خاتون کو کہا۔۔ لیکن اسلامی سلطنت بڑی ہے وہ کہاں کہاں توجہ دیں ؟ جواب میں خاتون نے وہ بات کہہ ڈالی جس کی توقع نہیں کی جا سکتی تھی ۔’’ عمرؓ اگر توجہ نہیں دے سکتا تو اتنی فتوحات کیوں کئے جارہا ہے؟رب کو کیا جواب دے گا؟
’’ماںجی ! نورانی صورت والا کہنے لگا ’’ عمرؓ کو معاف کردیں
’’کیوںمعاف کردوں ؟خاتون نے جواب دیا وہ کون سامیری خبر گیری کو آیا ہے
’’ماںجی نورانی صورت والے نے مضطرب ہوکر پہلو بدلا۔۔اس کی آنکھوں میں آنسو بھر آئے ،اس نے اٹک اٹک کرکہا میں ہی عمرؓ ہوں۔ وہ شخصیت جس کے نام سے قیصرو کسریٰ جیسی عالمی طاقتیں تھر تھر کاپتی تھیں۔ ایک عام خاتون کے سامنے جوابدہ اندازمیں کھڑے تھے ۔خاتون کے چہرے پر قوس قزح کے کئی رنگ بکھر گئے، بے اختیار اپنی جگہ سے اٹھ کھڑی ہوئی ،بولی اگر تم عمرؓ ہو تو مجھے تم سے کوئی شکوہ نہیں، دیر سے آئے ہو لیکن کوئی بات نہیں۔ مسلمانوںکا خلیفہ ایسا ہی ہونا چاہیے جو راتوں کو جاگ جاگ کر لوگوںکی خبر گیری کرتا رہے۔اسی جلیل القدر کا ایک قول ہے ’’ اگر دجلہ کے کنارے کتا بھی بھوکا مر جائے تو قیامت کے روز خدا کے حضور عمر جوابدہ ہوگا‘‘۔ دنیا آج تک حکمرانی کا ایک دعویٰ ، ایسا منشوراور ایسی مثال پیش کرنے سے قاصرہے۔ دنیا جہاں کی غیر مسلم حکومتیں آج بھی حضرت عمرؓ کے دور ِ حکومت پر ریسرچ کرکے اپنے شہریوںکو ریلیف دے رہی ہیں، اس کے بر عکس ہماری حالت ہے ہم کیا کررہے ہیں ؟ا رباب ِ اختیارکو شایدحالات کی سنگینی کا اندازہ ہو جائے ۔ حکمرانوںکے کتے مربے کھارہے ہیں،اربوںکی سرکاری زمینیں اونے پونے فروخت کی جارہی ہیں ،کروڑوں روپے کے میلے ٹھیلے سجائے جارہے ہیں ،ان حالات میںغریب آدمی کو سستا آٹا نہیں دے سکتے تو چوہے مار گولیاںہی دیدیں ۔عوام اپنے بچوںکو اس طرح مرتا ہوا نہیں دیکھ سکتے۔ یہ صرف پاکستان کے غریبوں کے حالات نہیں ۔جنوبی ایشیاء کے بیشتر ممالک کا نوحہ نہیں بلکہ ہر پسماندہ ملک کے گھرگھرکی کہانی ہے۔ پاکستان کے ایک فاضل جج نے ایک مقدمے کی سماعت کے دوران ایسے ہی ریمارکس دئیے تھے۔ انہوںنے یہ بھی کہاجمہوری حکومت عام آدمی کو سستا آٹا بھی فراہم نہیں کرسکتی تو اس کے اقتدار میں رہنے کا کیا جواز، رہ جاتاہے ،خواتین اپنے بچے فروخت کررہی ہیں ہرپسماندہ ملک کے غریب لوگ خودکشیاں کررہے ہیں جو سیاستدان بھی ان کو سبز باغ دکھاتاہے ۔غریب سمجھنے لگ جاتے ہیں ،یہ ان کے دل کی آوازہے۔ بغور جائزہ لیں تو ایسے حالات میں جمہوری ،سیکولراور اسلامی حکومتوںکیلئے لمحہ ٔ فکریہ بھی۔ اسلامی جمہوریہ پاکستان میں غریبوںکی خبر گیری کا تو سرے سے رواج ہی نہیں۔کوئی حکومت اس طبقہ کیلئے کچھ کرنا بھی چاہتی ہے تو ’’کاریگر‘‘ اسے اپنے ذاتی مفادکیلئے مخصوص کرلیتے ہیں طریقہ ٔ کار اتنا پیچیدہ بنادیا جاتاہے کہ غریبوںکیلئے بنائی گئی ا سکیموںسے غریب فائدہ بھی اٹھانا چاہیں تو نہیں اٹھا سکتے ۔موجودہ حکومت نے بھی عام آدمی کی بھلائی کیلئے اپنی خوشنما ترجیحات کااعلان کررکھاہے لیکن اس سے کوئی تبدیلی آ سکتی ہے نہ آئے گی۔ عمران خان کے جذبات دیکھیں تو محسوس ہوتاہے وہ واقعی ملک وقوم کیلئے کچھ کرنا چاہتے ہیں اگر وہ ’’ دجلہ کے کنارے کتا بھی بھوکا مر جائے تو قیامت کے روز خدا کے حضور عمر جوابدہ ہوگا‘‘کو اپنی حکومت کا ماٹو قراردیکراس کی روشنی میں حکمت ِ عملی تیار کریں تو اس سے بہتوںکا بھلاہوگا ۔ حالانکہ حکومتوںکے پاس درجنوں خفیہ ایجنسیاں ہوتی ہیں جو ہر فیملی بارے حقیقی سروے تیار کرے جو یونین کونسل سطح پر ان کے وسائل ،ضروریات اور دیگر امورکی مکمل چھان بین کرے جوکسی کاروبار،روزگار یا کسی ملازمت کے اہل ہوںان کو بلا امتیازکسی رشوت یا سفارش اورگارنٹی کے بغیر وسائل مہیا کئے جائیں اس سے نہ صرف معاشرہ میں مثبت تبدیلی آئے گی بلکہ روزگارکے مواقع بھی بڑھیں گے ۔ کیونکہ اکثر غریبوں کو قرضے لینے کے لئے کوئی گارنٹر ہی میسر نہیں آتا جس کی وجہ سے وہ کسی بھی حکومتی ا سکیم سے فائدہ نہیں اٹھا سکتے۔ عام آدمی کی حالت ِ زار بہتر بنانے کیلئے یہ پروگرام مرحلہ وار بھی شروع کیا جا سکتاہے جن شہروں میں غربت کی شرح زیادہ ہے وہاں ترجیحی بنیادوںپر ایسی ا سکیمیں جاری کی جا سکتی ہیں۔سب سے اہم بات یہ ہوگی کہ صرف حقداروںکو ان کا حق ملے گا یہ بات بھی ریکارڈپرہے کہ غریبوںکو ملنے والے قرضوںکی واپسی کی شرح قریباً90% تک ہے جبکہ موٹی
رقموںکے بڑے بڑے قرضے یا تو معاف کروا لئے جاتے ہیں یا بیشتر کمپنیاں دیوالیہ ہو جاتی ہیں عام آدمی کو خود روزگار کے قرضے دینے سے حکومت کے وسائل جو اکثر ضائع ہو جاتے ہیں مفید ہاتھوںمیں جانے سے ملک میں حقیقتاً انقلاب بپا ہو سکتاہے یقین جائیے رشوت، شفارش اور کرپشن فری ا سکیمیں ملک کو ایک فلاحی مملکت بنانے میں بے حدممدو معاون ہو سکتی ہیں۔ملک میں خوشحالی آگئی تو کسی کو یہ کہنے کی ضرورت پیش نہیں آئے گی کہ غریب آدمی کو سستا آٹا نہیں دے سکتے تو چوہے مار گولیاںہی دیدیں ۔ان تجاویزسے دنیا کی ہر پسماندہ حکومت عمل کرکے اپنے شہریوںکی حالت بہتربناسکتی ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں