وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

کراچی کی ادبی ڈائری

اتوار 15 اپریل 2018 کراچی کی ادبی ڈائری

ایس ایم معین قریشی کی 25ویں کتاب کی تقریب رونمائی
معروف ادیب، کالم نویس اور مزاح نگار ایس ایم معین قریشی کی 25ویں کتاب ’’کتنے آدمی تھے؟‘‘ کی تقریب پذیرائی گزشتہ دنوں آرٹس کونسل آف پاکستان کراچی میں منعقد ہوئی جس کی مجلس صدارت میں لیفٹیننٹ جنرل معین الدین حیدر، سردار یاسین ملک،عبدالحسیب خان اور میاں زاہد حسین شامل تھے۔ مہمان خصوصی محترمہ مہتاب اکبر راشدی تھیں اور معروف افسانہ نگار و کالم نویس محترمہ نسیم انجم اور معروف مزاح نگار محمد اسلام نے اظہارِ خیال کیا۔

نظامت کے فرائض معروف شاعرہ محترمہ نزہت عباسی نے انجام دیے۔
اس تقریب پروقار کا آغاز تلاوتِ کلام پاک سے ڈاکٹر ایس ایم معین قریشی کے نواسے نے کیا۔ بعد از تلاوتِ کلام قرآن مجید، نعت رسول مقبول مس سارہ قریشی نے پیش کی جو صبیح الدین صبیح رحمانی کی لکھی ہوئی تھی۔ معروف شاعرہ پروفیسر رضیہ سبحان قریشی اور طنز و مزاح کی شاعرہ محترمہ روبینہ تحسین بینا نے صاحب کتاب ڈاکٹر ایس ایم معین قریشی کو گل دستے پیش کیے۔

’’کتنے آدمی تھے؟‘‘ ڈاکٹر ایس ایم معین قریشی کی 25ویں مزاحیہ مضامین کی کتاب ہے اس سے قبل ان کی 13 طنز و مزاحیہ کتابیں انگریزی زبان میں شایع ہو چکی ہیں اور اُردو زبان میں 11 کتابیں زیورِ طباعت سے آراستہ ہو کر نہ صرف منصہ شہود پر جلوہ گر ہو چکی ہیں بلکہ قارئین شعر و سخن، ناقدینِ فن و ہنر اور مشاہیران اُردو ادب سے داد و تحسین بھی وصول کر چکی ہیں۔

یہی وجہ ہے کہ آج ناقدینِ فن وہنرنے ان کا مقام متعین کر لیا ہے۔ مشتاق احمد یوسفی کے بعد ڈاکٹر ایس ایم معین قریشی کا نام کراچی میں سب سے بڑا ہے جو انتہائی سنجیدگی سے عمدہ طنز و مزاحیہ تحریر میں لکھ رہے ہیں۔ حمایت علی شاعر نے کہا تھا کہ مشفق خواجہ اور مشتاق احمد یوسفی کے بعد ڈاکٹر ایس ایم معین قریشی مزاحیہ ادب کا سب سے اہم نام ہے۔ اگر ہم زندہ مزاح نگاروں کی بات کریں تو ڈاکٹر ایس ایم معین قریشی دوسرا بڑا اور اہم نام قرار پاتا ہے۔ڈاکٹر ایس ایم معین قریشی کو’’ کوہسار نمک‘‘ کے خطاب سے بھی نوازا جا چکا ہے۔

’’کتنے آدمی تھے؟‘‘ میں 59 مزاحیہ مضامین شامل اشاعت کیے گئے ہیں۔ جن میں ایک مضمون جس گدھے میں جان ہوگی وہ گدھا رہ جائے گا۔ معین قریشی لکھتے ہیں کہ انسان کو گدھا کہنے سے انسان پر بھی کوئی فرق نہیں پڑتا البتہ گدھے کا استحقاق بری طرح مجروح ہوتا ہے۔ ڈاکٹر ایس ایم معین قریشی نے اپنا منتخب مضمون پڑھا تو شرکائے محفل کا ہنس ہنس کر برا حال ہو گیا ان کے ہر جملے پر قہقہے بلند ہو رہے تھے اور تالیوں کی گونج سنائی دے رہی تھی۔

اور مجھے خوش گوار حیرت ہوئی کہ جس معاشرے میں کتاب مفت لینے کا رواج ہو اور اعزازی کاپی نہ دینے پر قد آور ادبی شخصیات ناراض ہو جاتی ہوں وہاں ڈاکٹر ایس ایم معین قریشی کی کتاب کتنے آدمی تھے؟ Hot-Cake کی طرح فروخت ہو رہی تھی یہاں تک کہ معین قریشی صاحب نے اپنے اہلِ خانہ کو بھی کہا کہ یہاںسے رعایتی قیمت پر کتاب خریدی لو ورنہ گھر پر میں پوری قیمت پر کتاب دوں گا۔ تقریباً 100 سے زیادہ کتابیں آدھے پروگرام میں میرے سامنے فروخت ہو چکی تھیں۔

1۔ کراچی پریس کلب کی تنقیدی نشست کا انعقاد۔
2۔ سخاوت علی نادر کی غزل اور نغمانہ شیخ کا افسانہ ضرورت تنقید کے لیے پیش کیے گئے۔
3۔ زیب اذکار ادبی کمیٹی کے لیے فعال کردار ادا کررہے ہیں۔ احمد سعید فیض آبادی
4۔ نغمانہ شیخ کا افسانہ معاشرہ کی ترجمانی کرتا ہے۔ صبا اکرام
5۔ سخاوت علی نادر کی غزل مرصع اور مکمل غزل ہے جس میں رنگ تغزل نمایاں ہے۔ رونق حیات
گزشتہ ہفتے کراچی پریس کلب کی ادبی کمیٹی کے زیر اہتمام ایک تنقیدی نشست کا انعقاد کیا گیا جس کی صدارت معروف شاعر جناب رونق حیات صاحب نے کی جبکہ مہمان خصوصی نامور نقاد صبا اکرام تھے۔ نشست میں معروف شاعر سخاوت علی نادر کی غزل اور محترمہ نغمانہ شیخ صاحبہ کا افسانہ ’’ ضرورت‘‘ تنقید کے لیے رکھا گیا تھا۔ نغمانہ شیخ صاحبہ نے اپنا افسانہ پڑھ کر سنایا جس کے مختلف پہلوئوں پر ناقدین نے تنقید کی اور اپنی رائے دی۔ بحیثیت مجموعی افسانے کو بہترین افسانہ قرار دیا گیا جبکہ رحمان نشاط صاحب نے افسانے کے منفی پہلوئوں کو اجاگر کیا۔ بعدازاں سخاوت علی نادر نے اپنی غزل منفرد لب لہجہ میں تنقید کے لیے پیش کی نادر کی غزل کو خاطر خواہ پذیرائی ملی۔ ادبی کمیٹی کے روح رواں جناب زیب اذکار نے کہا کہ سخاوت علی نادر کی غزل تنقیدی بصیرت کے تعلق سے ایک اہم غزل ہے۔ انہوں نے کہا کہ سخاوت علی نادر صاحب اسلوب شاعر ہیں ان کی غزل میں وہ تمام تقاضے موجود ہیں جو ایک اچھی غزل میں ہونا چاہیے۔ مجید رحمانی نے کہا کہ سخاوت علی نادر کو انہوں نے کئی مشاعروں میں سنا ہے وہ بہت تیزی سے ادب میں اپنا مقام بنارہے ہیںان کی غزل ایک مرصع اور کامیاب غزل ہے اور اس میں تنقید کی کوئی گنجائش موجود نہیں۔ حامد علی سید نے سخاوت علی نادر کی غزل کو شاندار قرار دیا۔ احمد سعید فیض آباد نے کہا کہ نادر کی غزل ایک مکمل اور مرصع غزل ہے۔ انہوں نے مطلع اور مقطع کی تعریف کی۔
تقریب میں جن مقررین اور ناقدین نے اظہار خیال کیا اس میں حامد علی سید، مجید رحمانی، الطاف احمد ، زیب اذکار، شکیل احمد ستی، طاہر سلیم سوز، موسیٰ کلیم، نغمانہ شیخ کے صاحب زادے صمد اور بہو مہوش ، رحمان نشاط، احمد سعید فیض آبادی، ظفر عادل، اے خیام، خورشید عالم، سعد الدین سعد، عتیق احمد ، نبیل نجمی اور وقار زیدی شامل تھے۔
تقریب کے اختتام پر پھولوں کا تبادلہ کیا گیا سخاوت علی نادر نے افسانہ نگار نغمانہ شیخ، الطاف احمد نے ادبی کمیٹی کے روح رواں زیب اذکار کو مجید رحمانی نے مہمان خصوصی صبا اکرام کو نغمانہ شیخ نے سخاوت علی نادر کو پھولوں کے گلدستے پیش کیے۔
پروگرام کی نظامت موسیٰ کلیم نے اپنے دلچسپ لب و لہجے میں انجام دی۔ پروگرام کے اختتام پر مہمانوں کی توضع پر تکلف ناشتے سے کی گئی۔

اکادمی ادبیات پاکستان کراچی کے زیراہتمام ڈاکٹر اسلم فرخی کی یاد میں سیمینار اور مشاعرہ منعقد کیا گیا جس کی صدارت اُردو زبان کے نامور شاعر ڈاکٹر جاوید منظر اور مہمان خاص حیات رضوی امروہوی،نصیر سومرو اور کشور عدیل جعفری تھے اس موقع پر ڈاکٹر جاوید منظرنے اپنے صدارتی خطاب کہا کہ اُردوکے نثری ادب میں خاکہ نگاری کی روایت خاصی قدیم ہے اور اس کے ابتدائی نقوش قدیم تذکروں میںدیکھے جاسکتے ہیں۔ اُردو ادب میں خاکہ نگاری میں جو کام ہواہے اور ہورہاہے وہ بہت متنوع اور وقیع ہے ۔ خاکہ نہ تو وقیع ہوتا اور نہ سیرت خاکہ سرگزشت بھی نہیں ہوتا خاکہ ہے کیا ۔یہ ایک ایسے انسان کی جھلک ہوتی ہے۔جسے خاکہ نگار ہمارے سامنے ایک مخصوص فضا اور آہنگ میں پیش کرنا چاہتے ہیں وہ ہمیں انسان کی جھلک اس طرح دکھاتا ہے کہ ہم اس سے ذہنی اور روحانی قربت محسوس کرتے ہیں خاکہ نگاری انسان شناسی اور تخلیقی صلاحیت کے خوبصورت امتزاج سے وجود میں آتی ہے۔ حیات رضوی امروہوی نے کہاکہ ڈاکٹر اسلم فرخی ۲۳؍ اکتومبر۱۹۲۳ء کو لکھنؤمیں پیدا ہوئے ان کا سابق وطن فتح گڑھ ضلع فرخ آباد تھا ڈاکٹر صاحب نے ایسے گھرانے میں آنکھ کھولی جو صدیوں سے علم و ادب کا گہوارا تھا ان کے خاندان کے ہر شخص کو شعرو سخن سے لگاؤرہا ہے ڈاکٹر اسلم فرخی کا شمار ملک کے ممتاز دانشوروں میں ہوتا ہے۔ انہوںنے ادبی زندگی کا آغازشاعری کے ساتھ کیا وہ غزلیں بھی لکھتے ہے اور نظمیں بھی لیکن پھر بھی اپنے آپ کوشاعر نہیںکہتے تھے وہ فرماتے تھے نہ شاعری میری شناخت بنی اور نہ تحقیق میری پہچان خاکہ نگاری کے علاوہ وہ کام ہے جو میںنے حضرت سلطان المثائخ کے حوالے سے کیا ہے۔اکادمی ادبیات پاکستان کے ریزیڈنٹ ڈائریکٹر قادربخش سومرونے کہا کہ اسلم فرخی کا شمار ملک کے ممتاز دانشوروں میں ہوتا ہے۔ اسلم فرخی کا اصل حوالہ حضرت نظام الدین اولیاء محبوب الٰہی ہیں جن کے بارے میں وہ ۶ کتابیں لکھ چکے ہیں ۔ فرخی صاحب اولیاء اللہ سے غیر معمولی عقیدت بھی رکھتے ہیں اسی وجہ سے ہی ڈاکٹر صاحب نے کئی چھوٹی چھوٹی کتابیں بھی لکھیں ہیں آپ نے ۱۶ ؍سے زائد کتابیں بھی لکھی ہیں۔ آج ملکی ایک بہت بڑی شخصیت جو ہمارے درمیاں موجود نہیں ہے لیکن روحانی طور پر ہمارے ساتھ ہیں ان کی یاد میں مشاعرہ کا آغاز کیا جاتاہے۔ جن شعرائے اکرام نے اپنا کلام پیش کیا ان میں ڈاکٹرجاوید منظر، حیات رضوی امروہوی، نصیر سومرو، کشور عدیل جعفری، سید منیف اشعر ، شگفتہ شفیق، فہمیدہ مقبول، اظہر بانبھن، فرح دیبا، سیدہ ماہین زاہد، تنویر حسن سخنور، ڈاکٹر لبنیٰ عکس ، عشرت حبیب، عرفان علی عابدی، دلشاد احمد دہلوی، سید اوسط علی جعفری، ذوالفقار حیدر پرواز، محمد رفیق مغل، نشاط غوری، ڈاکٹر شابانہ زیدی، رخسانہ زیدی، صدیقی راز ایڈووکیٹ،ناظم سلطانہ، محمد یونس، اقبال افسر غوری، سید زاہدحسن، ذوالفقار حسیانی، تاج علی رعنا، زارا صنم، سیف الرحمٰن سیفی، سید اوج ترمذی، شامل تھے آخر میں قادربخش سومرو نے آئے مہمانوں کا شکریہ ادا کیا۔


متعلقہ خبریں


بچوں سے بد فعلی‘ 38 ممالک سے 337 افراد گرفتار وجود - جمعه 18 اکتوبر 2019

برطانیا اور امریکا کے تفتیش کاروں نے ڈارک ویب پر موجود بچوں سے بد فعلی پر مبنی ویڈیوز کی ویب سائٹ پر تحقیق کر کے مختلف ممالک سے 337 افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔برطانیا کی سرکاری ایجنسی این سی اے نے بتایا کہ ویب سائٹ پر 2 لاکھ 50 ہزار ویڈیو موجود تھیں جن کو پوری دنیا سے مختلف افراد نے10 لاکھ بار ڈاون لوڈ کیا تھا۔ویب سائٹ پر ویڈیوز اپ لوڈ کرنے والوں کو ڈیجیٹل کرنسی میں ادائیگی کی جاتی تھی۔ تفتیش کاروں نے 38 ممالک سے 337 افراد کو گرفتار کیا ہے جن میں برطانیا، آئرلینڈ، امریکا،جنوب...

بچوں سے بد فعلی‘ 38 ممالک سے 337 افراد گرفتار

امریکا سے مذاکرات ‘ترکی نے کردوں کیخلاف آپریشن روک دیا وجود - جمعه 18 اکتوبر 2019

ترکی اور امریکا کے درمیان شام میں کردوں کے خلاف جنگ بندی پر اتفاق ہوگیا جس کے بعد ترکی نے شام میں عارضی طور پر سیز فائر کا اعلان کرتے ہوئے کردوں کو نکلنے کے لیے پانچ دن کی مہلت دے دی۔جنگ بندی کے حوالے سے امریکا کے نائب صدر مائیک پینس ترک صدر رجب طیب اردوان سے ملاقات کرنے انقرہ پہنچے اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا پیغام پہنچایا، ان کے ساتھ وزیر خارجہ مائیک پومپیو بھی موجود تھے۔ملاقات کے بعد دونوں رہنماؤں نے پریس کانفرنس کی جس میں مائیک پینس نے بتایا کہ امریکا اور ترکی کے درمیان...

امریکا سے مذاکرات ‘ترکی نے کردوں کیخلاف آپریشن روک دیا

برطانیا نے یورپی یونین سے بریگزٹ معاہدہ کرلیا وجود - جمعه 18 اکتوبر 2019

یورپی کمیشن کے صدر جین کلاڈ جنکر نے برسلز میں بلاک کے رہنماؤں کے سمٹ سے قبل بتایا کہ برطانیا نے یورپی یونین سے سخت کوشش کے بعد بریگزٹ معاہدہ حاصل کر لیا ہے۔دوسری جانب برطانوی وزیر اعظم بورس جونسن کا کہنا تھا کہ ہم نے زبردست بریگزٹ معاہدہ حاصل کیا ہے۔جین کلاڈ جنکر نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ جہاں چاہت ہو وہاں معاہدہ ہوتا ہے، یہ یورپی یونین اور برطانیہ کے لیے منصفانہ اور متوازن معاہدہ ہے اور ہمارے حل تلاش کرنے کا عہد نامہ ہے۔انہوں نے آئندہ ہ...

برطانیا نے یورپی یونین سے بریگزٹ معاہدہ کرلیا

کانگرس میں ایردوآن اور خاندان کے اثاثوں کی رپورٹ طلب وجود - جمعه 18 اکتوبر 2019

شام میں ترکی کی فوجی کارروائی کے بعد امریکا نے ترک حکومت اور صدر طیب ایردوآن کے خلاف مزید اقدامات پرعمل درآمد شروع کیا ہے۔ ری پبلیکن رکن کانگرس سینیٹر لنڈسی گراہم اور متعدد امریکی سینیٹرز نے کانگرس میں ایک نیا بل پیش کیا ہے جس میں ترک عہدیداروں اور اداروں پر عائد کی جانے والی پابندیوں کی تفصیلات کے ساتھ ساتھ حکومت سے کہا گیا ہے کہ وہ ترک صدر طیب ایردوآن اور ان کے خاندان کے اثاثوں کے بارے میں تفصیلی رپورٹ فراہم کرے۔ اس بل میں روس ، ایران اور ترکی کے لیے شام میں تیل پیدا کرن...

کانگرس میں ایردوآن اور خاندان کے اثاثوں کی رپورٹ طلب

امریکی پابندیوں کے باوجود ہواوے کی آمدن میں اضافہ وجود - جمعه 18 اکتوبر 2019

امریکا اور چین کے درمیان تجارتی جنگ اور مختلف پابندیوں کا سامنا کرنے والی چینی کمپنی ہواوے کے منافع میں کوئی کمی نہیں آ سکی۔ فرانسیسی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ امریکا کی طرف سے چینی کمپنی کو عالمی سطح پر تنہا کرنے کی تمام کوششیں رائیگاں گئیں، تمام تر کوششوں کے باوجود رواں سال کے پہلے نو ماہ میں کمپنی کی آمدن میں 24.4 فیصد اضافہ ہوا ہے۔کمپنی کے مطابق ہواوے کو 86.2 ارب ڈالرز کا منافع ہوا ہے اور اسکے منافع کی شرح میں 8.7 فیصد تک اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔یاد رہے کہ امریکی صد...

امریکی پابندیوں کے باوجود ہواوے کی آمدن میں اضافہ

قبل از وقت سفید بال خطرناک بیماری کی علامت ہے، ماہرین وجود - جمعرات 17 اکتوبر 2019

رواں دور میں سفید بال ہونا عمومی بات ہے اور مرد و خواتین دونوں ہی اس بات سے پریشان نظر آتے ہیں،کیونکہ سفید بال بڑھاپے کی نشانی سمجھے جاتے ہیں۔ماہرین صحت قبل از وقت سفید بال امراض قلب کا عندیہ دیتے ہیں۔یونیورسٹی آف قاہرہ کے ماہرین کی جانب سے کی گئی تحقیق میں 545 مردوں میں سفید بالوں اور دل کی بیماری کے خطرے کے درمیان تعلق کا مطالعہ کیا گیا۔نتائج سے معلوم ہوا کہ بالوں کی جتنی سفید رنگت زیادہ تھی اتنا ہی دل کی بیماری کا خطرہ زیادہ دیکھا گیا۔ماہرین نے مردوں کو وارننگ جاری کر تے...

قبل از وقت سفید بال خطرناک بیماری کی علامت ہے، ماہرین

مصنوعی ذہانت والے روبوٹس سے ملازمین کی کارکردگی میں اضافہ ہوا ، اوریکل رپورٹ وجود - جمعرات 17 اکتوبر 2019

اوریکل کی ملازمین کے حوالے سے ایک حالیہ رپورٹ کے مطابق مصنوعی ذہانت، آرٹی فیشل انٹیلی جنس (اے آئی) نے ملازمین کی سوچ کو بدل رکھ دیا ہے اور ملازمین عام منیجروں کے مقابلے میں آرٹی فیشل انٹیلی جنس والے روبوٹس ساتھی ملازمین کے ساتھ کام کرنے میں زیادہ خوش ہیں، ایچ آر ٹیم کا کردار ملازمین کی بھرتی، ان کی تربیت اور ملازمین کو ادارے سے منسلک رکھنے کے لیے بھی تبدیل ہوا ہے۔ یہ سروے رپورٹ اوریکل اور فیوچر ورک پلیس نے کی جو کاروباری قائدین کی تیاری، ان کی ملازمتوں اور ملازمین کے دیگر...

مصنوعی ذہانت والے روبوٹس سے ملازمین کی کارکردگی میں اضافہ ہوا ، اوریکل رپورٹ

امریکا میں نظربند فلسطینی سائنسدان کی اسرائیل حوالگی کا خدشہ بڑھ گیا وجود - جمعرات 17 اکتوبر 2019

امریکا میں گھر پرنظربند فلسطینی سائنسدان عبدالحلیم الاشقر کو اسرائیل کے حوالے کیے جانے کا خدشہ بڑھ گیا ع،بدالحلیم الاشقر کی اہلیہ اسما ء مھنا نے مرکزاطلاعات فلسطین سے بات کرتے ہوئے کہا کہ ان کے شوہر کو امریکا میں گھر پرنظربند کیا گیا ہے ۔ ان کے حوالے سے امریکی حکومت کے ساتھ کوئی معاہدہ طے نہیں پا سکا ۔ خدشہ ہے کہ کسی بھی وقت امریکا پروفیسر ڈاکٹر الاشقر کو امریکا کے حوالے کردے گا۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ ان کے شوہر کے حوالے سے جاری تنازع کے حل میں کوئی پیش رفت نہیں...

امریکا میں نظربند فلسطینی سائنسدان کی اسرائیل حوالگی کا خدشہ بڑھ گیا

شام پر حملہ ،امریکا کی ترکی پر پابندیاں وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

شام پر ترک حملے کے بعد امریکا نے ایکشن لیتے ہوئے ترکی پر پابندیاں عائد کردیں جب کہ صدر ٹرمپ نے دھمکی دی ہے کہ وہ ترکی کی معیشت کو برباد کرنے کیلئے مکمل تیار ہیں۔ غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق امریکا کی جانب سے ترکی کی وزارت دفاع اور توانائی پر پابندیاں عائد کی گئی ہیں جب کہ ترکی کے دو وزرا اور تین سینئر عہدیداروں پر بھی پابندی لگادی گئی ۔میڈیا نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے امریکی وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ ترکی پر عائد کی گئی پابندیاں بہت سخت ہیں جو اس کی معیشت پر بہت زیادہ اثر...

شام پر حملہ ،امریکا کی ترکی پر پابندیاں

برطانوی ملکہ نے بریگزٹ امیگریشن بل متعارف کروا دیا وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

برطانوی ملکہ الزبتھ نے بریگزٹ امیگریشن بل متعارف کروا دیا، جنوری 2021 سے یورپی شہریوں کو برطانیہ کا ویزہ درکار ہو گا۔برطانوی ملکہ الزبتھ نے برطانوی پارلیمان سے خطاب کے دوران وزیراعظم بورس جانسن کی طرف سے تیار کیے گئے امیگریشن کے اس قانونی مسودے کو متعارف کرایا ہے جو یورپین یونین سے برطانیہ کی حتمی علیحدگی کے بعد نافذ ہو گا۔اس بل کے تحت یورپی ممالک کے شہریوں کیلئے آزادانہ طور پر برطانیہ آنے جانے کی سہولت جنوری 2021 سے ختم کر دی جائے گی اور ان پر برطانیہ آنے کیلئے ویزے اور دیگر...

برطانوی ملکہ نے بریگزٹ امیگریشن بل متعارف کروا دیا

امریکا ، سفید فام پولیس اہلکار نے سیاہ فام خاتون کو گولی مار کر ہلاک کر دیا وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

امریکی ریاست ٹیکساس کے شہر فورٹ وورتھ میں میں سفید فام پولیس اہلکار نے ایک سیاہ فام خاتون کو گولی مار کر ہلاک کر دیا ۔ فورٹ وورتھ پولیس ڈیپارٹمنٹ کے مطابق گذشتہ روز پولیس آفیسر ایرن ڈین نے علاقہ میں معمول کے گشت کے دوران 28سالہ خاتون کو مشکوک سمجھتے ہوئے اس وقت کھڑکی کے باہر سے فائر کرکے ہلاک کر دیا جب وہ اپنے بھتیجے کے ہمراہ ویڈیو گیم کھیل رہی تھی ، مقا می پولیس نے گھر کے باہر نصب سی سی ٹی وی کیمرہ کی ویڈیو جاری کرتے ہوئے دو پولیس افسروںکی جانب سے سرچ لائٹ کے ساتھ گھر کی کھڑ...

امریکا ، سفید فام پولیس اہلکار نے سیاہ فام خاتون کو گولی مار کر ہلاک کر دیا

کرددوں کا ترکی سے نمٹنے کیلئے شامی فوج سے معاہدہ وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

شام میں کردوں کا کہنا ہے کہ شامی حکومت نے ترکی کی جانب سے ان کے خلاف جاری کارروائی کو روکنے کے لیے اپنی فوج کو شمالی سرحد پر بھیجنے پر اتفاق کیا ہے۔یہ فیصلہ امریکہ کی جانب سے شام کی غیر مستحکم صورتحال اور وہاں سے اپنی باقی تمام فوج کو نکالنے کے بعد سامنے آیا ہے۔اس سے قبل شام کے سرکاری میڈیا نے بتایا تھا کہ فوج کو شمال میں تعینات کر دیا گیا ہے۔ترکی کی جانب سے کردوں کے خلاف کی جانے والی اس کارروائی کا مقصد کرد افواج کو اس سرحدی علاقے سے نکالنا ہے۔ برطانیہ میں قائم سیرین آبزرو...

کرددوں کا ترکی سے نمٹنے کیلئے شامی فوج سے معاہدہ

مضامین
جامہ عریانی کا قامت پہ مری آیا ہے راست
(ماجرا۔۔محمد طاہر)
وجود بدھ 16 اکتوبر 2019
جامہ عریانی کا قامت پہ مری آیا ہے راست <br>(ماجرا۔۔محمد طاہر)

کامی یاب مرد۔۔
(علی عمران جونیئر)
وجود بدھ 16 اکتوبر 2019
کامی یاب مرد۔۔<br> (علی عمران جونیئر)

تری نگاہِ کرم کوبھی
منہ دکھانا تھا !
(ماجرا۔۔محمد طاہر)
وجود منگل 15 اکتوبر 2019
تری نگاہِ کرم کوبھی <br>منہ دکھانا تھا ! <br>(ماجرا۔۔محمد طاہر)

معاہدے سے پہلے جنگ بندی سے انکار
(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)
وجود منگل 15 اکتوبر 2019
معاہدے سے پہلے جنگ بندی سے انکار <br>(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)

ہاتھ جب اس سے ملانا تو دبا بھی دینا
(ماجرا۔۔۔محمدطاہر)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
ہاتھ جب اس سے ملانا تو دبا بھی دینا<br> (ماجرا۔۔۔محمدطاہر)

وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری کے امکانات ختم ہوگئے۔۔۔؟
(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری کے امکانات ختم ہوگئے۔۔۔؟<br>(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)

پانچ کیریکٹر،ایک کیپٹل۔۔
(عمران یات..علی عمران جونیئر)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
پانچ کیریکٹر،ایک کیپٹل۔۔ <br>(عمران یات..علی عمران جونیئر)

طالبان تحریک اور حکومت.(جلال نُورزئی) قسط نمبر:3 وجود بدھ 09 اکتوبر 2019
طالبان تحریک اور حکومت.(جلال نُورزئی)  قسط نمبر:3

دودھ کا دھلا۔۔ (علی عمران جونیئر) وجود بدھ 09 اکتوبر 2019
دودھ کا دھلا۔۔ (علی عمران جونیئر)

سُکھی چین کے 70 سال سیاسی
(زائچہ...راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 07 اکتوبر 2019
سُکھی چین کے 70 سال  سیاسی <Br>(زائچہ...راؤ محمد شاہد اقبال)

دنیا کے سامنے اتمام حجت کردی گئی!
(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)
وجود پیر 07 اکتوبر 2019
دنیا کے سامنے اتمام حجت کردی گئی! <br>(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)

حدِ ادب ۔۔۔۔۔۔(انوار حُسین حقی) وجود بدھ 02 اکتوبر 2019
حدِ ادب ۔۔۔۔۔۔(انوار حُسین حقی)

اشتہار