وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

استقبال کتب

اتوار 18 مارچ 2018 استقبال کتب

نام کتاب:اُردو شاعری کے فروغ میں مظفر گڑھ کے شعراء کا کردار
مصنف:ظریف احسن
ضخامت:112 صفحات
قیمت:400 روپے
ناشر:حرفِ زار انٹر نیشنل، کراچی
مبصر: مجید فکری
ظریف احسن صاحب کا مسکن تو کراچی میں ہے مگر ان کا دل مظفر گڑھ میں دھڑکتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ انہوں نے اب تک جتنی کتابیں تخلیق کی ہیں وہ سب مظفر گڑھ سے متعلق ہیں۔ اس کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ مظفر گڑھ ان کا جنم بھومی ہے۔ ان کے آباء و اجداد نے جب ہندوستان چھوڑا اور پاکستان کے لیے ہجرت کی تو مظفر گڑھ ہی میں پڑائو ڈالا۔ فکرِ معاش اور تلاشِ روزگار میں یہ کراچی چلے آئے اور کراچی میں واقع اکائونٹنٹ جنرل سندھ کے دفتر میں ملازم ہوگئے اور اسی دفتر سے بطور سینئر آڈیٹر (گریڈ 16)میں ریٹائر ہوئے۔ زہے قسمت کہ ریٹائرمنٹ کے وقت دفتر ہٰذا میں عمرہ ادائیگی کے لئے قرعہ اندازی میں ان کا نام نکل آیا اور یہ اپنی بیگم کے ہمراہ اس فرض کی ادائیگی کے خوشگوار مقدس لمحات کی سعادت سے بہرہ مند ہونے کے لئے سعودی عرب روانہ ہوگئے۔ پہلے کعبۃ اللہ او رپھر روضۂ رسولؐ کی زیارت کی اور اس سفر کی تمام روداد ایک کتاب کی شکل میں رقم کردی۔

پیش نظر کتاب ’’اردو شاعری میں مظفر گڑھ کے شعراء کا کردار‘‘ ایک ایسی کتاب ہے جس سے ان کے ذوقِ شاعری کا بخوبی اندازہ بھی ہوتا ہے اور ان کے اپنے جنم بھومی سے محبت کا اظہار بھی! یہ کتاب اس لئے بھی تحسین کی نظر سے دیکھی جائے گی کہ اس میں مظفر گڑھ کی ادبی فضا، وہاں کے ادبی شب و روز اور وہاں سے تعلق رکھنے والے بزرگ اکابرین ادب کی خدمات اور خصوصاً اردو شاعری کے فروغ میں ان حضرات نے کیا کارہائے نمایاں انجام دیے اس سے بھی آگاہی حاصل ہوتی ہے اور یہ فریضہ ظریف احسن صاحب نے بڑے احسن طریقے پر انجام دینے کے لیے مذکورہ بالا کتاب لکھ ڈالی اور یقیناً مظفر گڑھ کے باسیوں کے دل میں اپنا گھر بنالیا ہے اور وہ یقیناً ان کے شکر گزار بھی ہوں گے کہ اس سے نہ صرف ان کی شہرت میں اضافہ ہوگا بلکہ مظفر گڑھ کا نام بھی روشن ہوگا۔

کتابِ ہٰذا کا انتساب بھی شہنشاہِ غزل میر تقی میرؔ کے نام نامی سے معنون کیا گیا ہے ۔ جس سے اس بات کا واضح ثبوت بھی فراہم ہوتا ہے کہ غزل جیسی پیاری اور مقبول صنفِ سخن سے یہ حضرت کتنے مانوس ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ انہوں نے اس ضمن میں چار اور شعراء کا نام بھی میرؔ کے بعد شامل کرلیا ہے اور وہ چار افراد یہ ہیں:
۱۔ میر تقی میرؔ ۲۔ عزیز حامد مدنی ۳۔ مخدوم غفور ستاری ۴۔ حامد فکری اور احسن ظریف
گویا فروغِ غزل کا یہ کارواں اب احسن ظریف اورکزئی (فرزند طریف احسن)تک آپہنچا ہے۔
انتساب کے بعد تین ادبی حضرات اور ایک خاتون دردانہ نوشین کے مضامین بھی پیش نظر کتاب کا حصہ بنے ہیں اور ان چاروں حضرات وخاتون نے صرف اور صرف مظفر گڑھ اور خصوصاً ظریف احسن کی اس شہر سے وابستگی پر سیر حاصل تبصرہ کیا ہے۔ جس سے یہ بھی انکشاف ہوا کہ مصنف کا جنم بھومی تو مظفر گڑھ ہے مگر تین سال بعد ہی یہ اس جنم بھومی کو خیر باد کہہ کر 1957ء میں اپنے خاندان کے ساتھ کراچی میں قیام پذیر ہوگئے اور کوئی پانچ دہائی کے بعد انہو ں نے اپنا پہلا مجموعۂ شعری 2017ء میں ’’موسم موسم ملتے تھے‘‘ لاہور سے شائع کرایا اور اب مسلسل شب و روز ادب کی آبیاری میں مصروف ہیں۔ ان کے شعری مجموعے کے سرائیکی اور پنجابی میں بھی تراجم شائع ہوچکے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی موصوف اپنے ساتھ مظفر گڑھ کی تمام ادبی شخصیات کو اپنے ساتھ ساتھ لے کر چل رہے ہیں۔

پیش نظر کتاب میں بھی مظفر گڑھ کے شعراء کی اردو شاعری میں حصہ داری کا ذکر کیا گیا ہے مگر بغیر کسی تعارف کے صرف ہر شاعر کے ایک دو شعروں سے اردو کے فروغِ شاعری میں ان کے کردار کا جائزہ لینے سے آگے بات نہیں بڑھی ۔ کیا ایسے اردو شاعری کے فروغ میں مظفر گڑھ کے شعراء کی جہد کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔ ! عجیب سے بات ہے؟ جبکہ کتابِ ہٰذا کے ٹائٹل پر 20 شعراء بشمول خواتین شعراء کی تصاویر بھی پیش کردی گئی ہیں وہ بیس شعراء کے نام یہ ہیں:

۱۔ کشفی الاسدی ۲۔ مخدوم غفور ستاری ۳۔ رضا ٹوانہ ۴۔ ظریف احسن ۵۔ ڈاکٹر سجاد حیدر ۶۔ رمضان زاہد ۷۔ مظہر قلندرانی ۸۔ سعید احمد سعید ۹۔ اکبر نقاش ۱۰۔ انور سعید انور ۱۱۔ شازیہ خان شازی ۱۲۔ محمود اختر ۱۳۔افضل چوہان ۱۴۔ راشد ترین ۱۵۔ ثروت فاطمہ عنقا ۱۶۔ فیض رسول قیصر ۱۷۔ ارمان یوسف ۱۸۔ شاہد خاکوانی ۱۹۔ زمان کاوش ۲۰۔ فیض امام رضوی

مذکورہ بالا شعراء کے اشعار کے ساتھ ساتھ ان کی شاعری سے مماثلت کا فریضہ انجام دیتے ہوئے ہر شاعر کے شعر کے ساتھ ایک دو شعر ظریف احسن صاحب کے بھی موجود ہیں۔ کتاب 112 صفحات کی ضخامت رکھتی ہے اور ابتدا تا آخر مظفر گڑھ کے لاتعداد شعراء کے اشعار اس کتاب کے حسن و آرائش کا حصہ بنے ہیں۔ان میں کافی اچھے شعر بھی ہیں اور کچھ ایسے بھی کہ جن پر گمان ہوتا ہے کہ یہ مضمون کسی اور شاعر کے ہاں بھی موجود ہے مثلاً اقبال احمد خاں سہیل کا درج ذیل مصرعہ ثانی کچھ سنا سنا سا لگتا ہے۔ مگر یہ بات بھی ہے کہ اگر ایسا ہوتا تو اُسے ضرور (Inverted Comma) میں لکھتے۔ ہو سکتا ہے یہ میرا واہمہ ہو۔ شعر کچھ اس طرح ہے:

وہ روئیں جو منکر ہوں حیاتِ شہداء کے
ہم زندۂ جاوید کا ماتم نہیں کرتے
اس شعر کا پہلا مصرعہ بھی کچھ غور طلب ہے۔ یہاں اچھے اشعار بھی موجود ہیں ان میں کچھ اشعار اقبال سہیل کے بھی شامل ہیں۔
حنیف سیماب کا یہ شعر مجھے پسند آیا:
مصلحت کو اوڑھ کے جب سوگئے تو دیکھنا
مسئلہ در مسئلہ سب مسئلے رہ جائیں گے
خود ظریف احسن کا یہ شعر فکر و آگہی کا منہ بولتا ثبوت ہے:
اپنے حصے کے خواب لکھتا ہوں
آگہی کے عذاب لکھتا ہوں
اہلِ نظر حضرات کی کم نگہی کا شکوہ بڑے اچھے انداز میں لکھا گیا ہے اور اچھے مشورہ سے بھی نوازا ہے حقیقت یہ ہے کہ اہلِ نظر حضرات اب خال خال ہیں
اپنی قامت چھپائو لوگوں سے
لوگ اہلِ نظر نہیں ہوتے
(نذر ساجد)
ہم کو مخدوم کیا سمجھنا تھا
آپ سمجھانے آئے تو سمجھے
(مخدوم غفور ستاری)
جب سے چھوٹی ہے وہ رسمِ محبت کشفیؔ
سخت بے کیف نظر آتے ہیں اشعار مجھے
(کشفی الاسدی)
میں کہاں تک منتخب اشعار لکھوں۔ اس کتاب میں تو بے شمار اشعار موجود ہیں مگر تجزیے کی طوالت کا خوف بھی تو دامن گیر ہے۔
دو خواتین کے شعر بھی ملاحظہ کیجیے:
وہ جو خوشیوں میں رہا مجھ سے گریزاں عنقاؔ
میں اسے درد کے موسم میں بلائوں کیسے
(ثروت فاطمہ عنقاؔ)
محبت یہ بتاتی ہے حیات جاوداں کیا ہے
محبت یہ سکھاتی ہے ازل کا وہ جہاں کیا ہے
(شازیہ خان شازی)
آخر میں ظریف احسن کا یہ شعر
میں اول آخر ہوں تمہارا
میں روشنی تم استعارہ
٭٭٭
نام کتاب:میں مکہ بھی ہوں،
میں مدینہ بھی ہوں ( حمدیہ و نعتیہ کلام)
مصنف:ظریف احسن
موضوع:شاعری اور رودادِ عمرہ (مصنفہ سلمیٰ ظریف)
ضخامت:104 صفحات
قیمت:250 روپے
ناشر:حرفِ زار انٹر نیشنل، کراچی
مبصر: مجید فکری
ایک وہ زمانہ تھا جب نعت کو صنفِ سخن کا درجہ بھی دینے میں اہلِ ادب جھجک سی محسوس کرتے تھے جبکہ نعت ہی ہر محفل میں ابتداً پڑھی جاتی تھی اور پھر نعت کو باقاعدہ ادب کا حصہ قرار دیا جانے لگا۔ اس کی وجہ صرف اور صرف یہی تھی کہ نعت لکھنے والے تو بے شمار تھے لیکن اسے خاص ادب و آداب کے ساتھ نثری ادب میں زیر بحث لانے والے ادیب و شعراء کی تعداد خال خال تھی۔
بعد ازاں برصغیر ہند و پاکستان کی کچھ اہم شخصیات جن میں ادیب و شاعر دونوں شامل تھے نعتیہ ادب پر دیگر اصنافِ سخن کی طرح لکھنے اور شائع کرنے کا بیڑہ اٹھایا گیاا ور اب یہ بڑی خوش آئند بات ہے کہ نعت اپنے عروج پر نظر آتی ہے۔ بے شمار شعراء کرام نعتیں لکھ رہے ہیں اور جہاں وہ نعتیہ ادب میں اپنا مقام بنا رہے ہیں وہیں مدحتِ رسولؐ کے طفیل محبوب خدا، بدرالدجیٰ، شفیع الوریٰ کے عقیدت مندوں میں اپنی حاضری کا حصہ بھی بنتے جارہے ہیں جوان کی آخرت میں بھی بخشش کا سہارا بنے گی وہیں یہ لوگ بہ روزِ حشر حضور اکرم ؐ کے دیدار سے مستفیض ہونے کا شرف بھی حاصل کریں گے۔
پیش نظر کتاب ’’میں مکہ بھی ہوں … میں مدینہ بھی ہوں‘‘ مذکورہ بالا عقیدت مندانہ کوششوں میں سے ایک مستحسن کوشش ہے۔
یہ کتاب جہاں دو افراد ظریف احسن اور سلمیٰ ظریف کی کوششوں کا حصہ ہے وہیں یہ دو حصوں پر مشتمل ہے۔ پہلا حصہ ظریف احسن کے نام سے اور دوسرا حصہ سلمیٰ ظریف کے نام سے مختص ہے۔ اول الذکر میں خداوند تعالیٰ کی حمد اور رسول اکرمؐ کی شان میں نعتوں کا نذرانہ پیش کیا گیا ہے جبکہ دوسرے حصہ میں سلمیٰ ظریف صاحبہ نے رودادِ عمرہ بڑے دلنشیں دلکش انداز میں تحریر کی ہے جو کسی سعادت سے کم نہیں ہے اور یہ عمرہ کرنا بھی عبادت کے زمرے میں شمار کیا جاسکتا ہے۔ یہ سعادت بھی اُسے ہی نصیب ہوتی ہے جس کا بلاوا آتا ہے۔ گویا اس میں مرضیٔ مولا اور حضور کی آشیر باد شامل ہوتی ہے۔
پیش نظر کتاب ’’میں مکہ بھی ہوں … میں مدینہ بھی ہوں‘‘ ظریف احسن کی دس حمدیں اور بیس نعتیں شامل ہیں جبکہ کتاب کے دوسرے حصے میں سفرِ عمرہ سے متعلق 20 صفحات مختص کئے گئے ہیں۔ اس پر تبصرہ کیاکرنا ؟ اللہ تعالیٰ کی حمد و ثنا سے کسے انکار ہوسکتا ہے ، وہی ہمار امعبود اور وہی ہمارا مالک و مختار ہے۔ اس کے اشارہ کے بغیر کوئی پتہ بھی نہیں ہل سکتا۔ کائنات کی ہر شئے اسی کی تابع ہے۔ظریف احسن صاحب نے اللہ پاک کے ذکر کے بعد نعت کے اشعار پیش کیے ہیں انہیں پڑھ کر ہر مسلمان کادل سرشار ہوجاتا ہے اور یہ خوشی کے مواقع ہمیں ظریف احسن صاحب نے بہم پہنچائے ہیں۔خوبی اس حمدیہ کلام کی یہ ہے کہ اسے لکھنے میں انہوں نے نظم نگاری کا ہر انداز اختیار کیا ہے کہیں چار مصرعوں میں شاعری کی ہے تو کہیں دس مصرعوں میں نظمیں لکھی ہیں اور کہیں غزل کے پیرائے میں حمدیہ اشعار موجود ہیں۔پہلی حمد ہی اللہ کی وحدانیت اس کے ابتداتا انتہا رہنے کا یقین پھر ’’شُکر اللہ‘‘ کے عنوان سے کچھ آزاد نظمیں، کعبۃ اللہ کی زیارت کا حال، حجرِ اسود کو بوسہ دینا، مکہ کا طواف کرنا، حطیم میں سربسجود ہونا، پھر مقامِ ابراہیم پر قیام، بعد ازاں اسی نظم میں وہ مدینے روانگی کا آغاز کرتے ہوئے اللہ کا شکر بجا لانے کے ساتھ یہ دعا بھی کہ جب وہ حمد لکھیں تو کعبۃ اللہ کے سامنے موجود ہوں اوراسی طرح نعت لکھتے وقت روضہ رسول سامنے ہوں۔
پھر اس کے بعد وہی اشعار شروع ہوتے ہیں جن میں سے ایک مصرعہ اس کتاب کا عنوان بھی منتخب ہوا ہے۔ سبحان اللہ کیا شائستگی کیا اسلوب بیان ہے دیگر اشعار ِحمد کا! ذکرِ الٰہی سے دل مخمور ہوجاتا ہے اور روح کو تازگی بھی محسوس ہوتی ہے۔
کتاب کا دوسرا حصہ جیسا کہ میں نے پہلے عرض کیا عمرہ کی روداد پر مبنی ہے جسے ان کی بیگم محترمہ سلمیٰ ظریف نے تحریر کیا ہے۔ اس روداد سے بھی اُن کے شکر او رسعادت کے شرف کو حاصل کرنے میں وہ رب تعالیٰ کی بارگاہ میں سجدۂ شکر بجا لاتی ہیں کہ جس نے انہیں یہ سعادت بخشی:
’’یہ اس کی دَین ہے جسے پروردگار دے‘‘
بیگم ظریف احسن بیان کرتی ہیں کہ ان کے شوہر اے۔جی سندھ میں بطور سینئر آڈیٹر تھے جہاں عمرہ کی ادائیگی کے لئے قرعہ اندازی کی گئی اور ظریف احسن کا نام قرعہ اندازی میں نکل آیا اور ا س طرح یہ مکہ، مدینہ جانے کا سبب بن گیا۔
٭٭٭
نام کتاب:مظفرگڑھ ہے شہ پارہ
موضوع:شاعری
مصنف:ظریف احسن
کمپوزنگ:شیرازی شاعر
ناشر:حرفِ زار انٹر نیشنل، کراچی
تقسیم کار:رنگِ ادب پبلی کیشنز، کراچی
مبصر:مجید فکری
پیش نظر کتاب ظریف احسن صاحب کی 2017ء میں لکھی جانے والی کتابوںمیں غالباً تیسری کتاب ہے۔ اس سے پہلے وہ اپنے فریضۂ عمرہ کی روداد کے ساتھ اپنا شعری مجموعۂ حمد و نعت ’’میں مکہ بھی ہوں اور مدینہ بھی ہوں‘‘ تخلیق کرچکے ہیں جبکہ اردو شاعری کے فروغ میں مظفر گڑھ کے شعراء کا کردار کے عنوان سے ایک شعری انتخاب بھی مرتب کرچکے ہیں۔
اور اب اسی سال یہ شعری مجموعہ بھی منظر عام پر آچکا ہے۔ جسے رنگِ ادب پبلی کیشنز، کراچی نے شاعر علی شاعر کی نگرانی میں پایۂ تکمیل تک پہنچایا ہے۔ یہ ظریف احسن کا خالصتاً شعری مجموعہ ہے جس میں مختلف شخصیات جن کا تعلق کسی نہ کسی طور پر مظفر گڑھ سے وابستہ رہا ہے ان کا تعارف، خدمات خواہ وہ سیاسی ہوں، عوامی ہوں یا ادبی خدمات ہوں ان کا تعارف مخصوص شعری انداز میں پیش کیا گیا ہے۔بعض جگہ تو ایسا بھی محسوس ہوتاہے جیسے یہ ان کی سوانح عمری بیان کررہے ہیں۔
پیش نظر کتاب سے متعلق تاثرات بیان کرنے والوںمیں ڈاکٹر مختار ظفر، محمود اختر خاں، پروفیسر ڈاکٹر سجاد حیدر پرویز،پروفیسر قیصر عباس اور محمد عتیق صاحب شامل ہیں۔ جبکہ ان صاحبان کے ایک ایک منتخب شعر کے ساتھ انتساب بھی تحریر کیا گیا ہے۔
انتساب کے بعد ظریف احسن کا یہ شعر ان کے منتخب اشعار کا منتخب شعر کا نمونہ ہوسکتا ہے جبھی تو اس شعر کے لئے ایک پورا صفحہ مختص کیا گیا ۔ مگر نہ جانے کیوں مجھے اس موقع پر ایک بزرگ ممتاز شاعر جناب سہیل غازی پوری کا بھی وہ شعر یاد آگیا جو انہوں نے بھی آئینے کے موضوع پر کہا تھا لیکن اب ایسا محسوس ہورہا ہے کہ جیسے یہ شعر اُنہوں نے ظریف احسن کے شعر کے جواب میںلکھا ہو! اب آپ دونوں شعراء کے شعر ملاحظہ فرمائیے:
میں وہ آئینہ رُوبرو جس کے
یہ جہاں دیر تک سنورتا ہے
(ظریف احسن)
یہ آئینہ ہے کبھی ٹوٹ بھی تو سکتا ہے
بغیر اس کے سنورنے کی عادتیں ڈالو
(سہیل غازی پوری)
بہر حال، پیش نظرکتاب میں حمد بھی شامل ہے، ’’بہار مدینہ‘‘ کے عنوان سے ایک نعتیہ نظم بھی جبکہ دیگر شخصیات پر اُن کے ناموں کے ساتھ بلکہ ان کے کارہائے نمایاں کو پیش کیا گیا ہے۔انہی شخصیات کے تعارف میں شاعری کا ایک عجیب و منفرد انداز اپنایا گیا ہے۔ بہت سی نظموں پر آزاد شاعری کا گمان ہوتا ہے۔ کچھ نظمیں نثری نظموں کے زمرے میں بھی شمار کی جاسکتی ہیں جبکہ کچھ نثری مضامین بھی شامل ہیں جنہیں شخصی خاکوں میں شمار کیا جاسکتا ہے۔

ے بھی موجود ہیں۔ کتاب 112 صفحات کی ضخامت رکھتیʟ鴀ᴹ


متعلقہ خبریں


شام پر حملہ ،امریکا کی ترکی پر پابندیاں وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

شام پر ترک حملے کے بعد امریکا نے ایکشن لیتے ہوئے ترکی پر پابندیاں عائد کردیں جب کہ صدر ٹرمپ نے دھمکی دی ہے کہ وہ ترکی کی معیشت کو برباد کرنے کیلئے مکمل تیار ہیں۔ غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق امریکا کی جانب سے ترکی کی وزارت دفاع اور توانائی پر پابندیاں عائد کی گئی ہیں جب کہ ترکی کے دو وزرا اور تین سینئر عہدیداروں پر بھی پابندی لگادی گئی ۔میڈیا نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے امریکی وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ ترکی پر عائد کی گئی پابندیاں بہت سخت ہیں جو اس کی معیشت پر بہت زیادہ اثر...

شام پر حملہ ،امریکا کی ترکی پر پابندیاں

برطانوی ملکہ نے بریگزٹ امیگریشن بل متعارف کروا دیا وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

برطانوی ملکہ الزبتھ نے بریگزٹ امیگریشن بل متعارف کروا دیا، جنوری 2021 سے یورپی شہریوں کو برطانیہ کا ویزہ درکار ہو گا۔برطانوی ملکہ الزبتھ نے برطانوی پارلیمان سے خطاب کے دوران وزیراعظم بورس جانسن کی طرف سے تیار کیے گئے امیگریشن کے اس قانونی مسودے کو متعارف کرایا ہے جو یورپین یونین سے برطانیہ کی حتمی علیحدگی کے بعد نافذ ہو گا۔اس بل کے تحت یورپی ممالک کے شہریوں کیلئے آزادانہ طور پر برطانیہ آنے جانے کی سہولت جنوری 2021 سے ختم کر دی جائے گی اور ان پر برطانیہ آنے کیلئے ویزے اور دیگر...

برطانوی ملکہ نے بریگزٹ امیگریشن بل متعارف کروا دیا

امریکا ، سفید فام پولیس اہلکار نے سیاہ فام خاتون کو گولی مار کر ہلاک کر دیا وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

امریکی ریاست ٹیکساس کے شہر فورٹ وورتھ میں میں سفید فام پولیس اہلکار نے ایک سیاہ فام خاتون کو گولی مار کر ہلاک کر دیا ۔ فورٹ وورتھ پولیس ڈیپارٹمنٹ کے مطابق گذشتہ روز پولیس آفیسر ایرن ڈین نے علاقہ میں معمول کے گشت کے دوران 28سالہ خاتون کو مشکوک سمجھتے ہوئے اس وقت کھڑکی کے باہر سے فائر کرکے ہلاک کر دیا جب وہ اپنے بھتیجے کے ہمراہ ویڈیو گیم کھیل رہی تھی ، مقا می پولیس نے گھر کے باہر نصب سی سی ٹی وی کیمرہ کی ویڈیو جاری کرتے ہوئے دو پولیس افسروںکی جانب سے سرچ لائٹ کے ساتھ گھر کی کھڑ...

امریکا ، سفید فام پولیس اہلکار نے سیاہ فام خاتون کو گولی مار کر ہلاک کر دیا

کرددوں کا ترکی سے نمٹنے کیلئے شامی فوج سے معاہدہ وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

شام میں کردوں کا کہنا ہے کہ شامی حکومت نے ترکی کی جانب سے ان کے خلاف جاری کارروائی کو روکنے کے لیے اپنی فوج کو شمالی سرحد پر بھیجنے پر اتفاق کیا ہے۔یہ فیصلہ امریکہ کی جانب سے شام کی غیر مستحکم صورتحال اور وہاں سے اپنی باقی تمام فوج کو نکالنے کے بعد سامنے آیا ہے۔اس سے قبل شام کے سرکاری میڈیا نے بتایا تھا کہ فوج کو شمال میں تعینات کر دیا گیا ہے۔ترکی کی جانب سے کردوں کے خلاف کی جانے والی اس کارروائی کا مقصد کرد افواج کو اس سرحدی علاقے سے نکالنا ہے۔ برطانیہ میں قائم سیرین آبزرو...

کرددوں کا ترکی سے نمٹنے کیلئے شامی فوج سے معاہدہ

تْرکی کا شام میں اہم تزویراتی شاہراہ پر کنٹرول کا دعویٰ وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

شام میں انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے ادارے سیرین آبزر ویٹری فار ہیومن رائٹس کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ شام کے شہر راس العین میں ترکی کے فضائی حملے میں شہریوں اور صحافیوں سمیت نو افراد ہلاک ہو گئے۔آبزرویٹری کے ڈائریکٹر رامی عبد الرحمن نے بتایا کہ یہ حملہ شمالی شام کے علاقے القاشملی سے راس العین میں یکجہتی کے لیے آنے والے ایک گروپ پر کیا گیا۔شام میں کردوں کی نمایندہ سیرین ڈیموکریٹک فورسز'ایس ڈی ایف' کے ایک اہلکار نے بتایا کہ ترکی کے جنگی طیاروں نے "سویلین قافلے" پر حمل...

تْرکی کا شام میں اہم تزویراتی شاہراہ پر کنٹرول کا دعویٰ

اویغور مسلمان‘ چین میں لاپتہ جغرافیہ کے پروفیسر کو زمین نگل گئی یا آسمان کھا گیا وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

2017 تک تاشپولات طیپ ایک جانے پہچانے معلم اور سنکیانگ یونیورسٹی کے سربراہ تھے، ان کے دنیا بھر میں رابطے تھے جبکہ انھوں نے فرانس کی مشہور پیرس یونیورسٹی سے اعزازی ڈگری بھی حاصل کر رکھی تھی۔لیکن اسی برس وہ بغیر کسی پیشگی انتباہ کے لاپتہ ہو گئے اور اس حوالے سے چینی حکام مکمل خاموشی اختیار کیے ہوئے ہیں۔ان کے دوستوں کا خیال ہے کہ پروفیسر طیپ کو علیحدگی کی تحریک چلانے کا ملزم قرار دیا گیا، ان پر خفیہ انداز میں مقدمہ چلا اور بعدازاں اس جرم کی پاداش میں انھیں سزائے موت دے دی گئی۔پروف...

اویغور مسلمان‘ چین میں لاپتہ جغرافیہ کے پروفیسر کو زمین نگل گئی یا آسمان کھا گیا

ریٹائرڈ پروفیسر قیس سعید بھاری ووٹوں سے تیونس کے نئے صدر منتخب وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

تیونس میں منعقدہ صدارتی انتخابات کے دوسرے اور حتمی مرحلے میں قانون کے ریٹائرڈ پروفیسر قیس سعید نے اپنے حریف نبیل القروی کو واضح اکثریت سے شکست دے دی ہے اور وہ ملک کے نئے صدر منتخب ہوگئے ہیں۔قبل ازیں تیونس کے موزیق ایف ریڈیو نے پولنگ کمپنی امرود کے ایگزٹ پول کے حوالے سے یہ اطلاع دی تھی کہ صدارتی امیدوار قیس سعید نے 72.53 فی صد ووٹ حاصل کیے ہیں۔ایک اور فرم سگما کنسلٹنگ کے ایگزٹ پول کے مطابق آزاد امیدوار قیس سعید نے اپنے حریف کے مقابلے میں بھاری ووٹوں سے کامیابی حاصل کی ہے اور ...

ریٹائرڈ پروفیسر قیس سعید بھاری ووٹوں سے تیونس کے نئے صدر منتخب

کیلی فورنیا میں جانوروں کی پوستین سے بنی چیزوں پر پابندی وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

کیلیفورنیا امریکہ کی پہلی ریاست بن گئی ہے جہاں جانوروں کی پوستین یعنی بال والی کھال سے بنی چیزوں پر پابندی عائد کر دی گئی ہے۔اس امریکی ریاست کے شہری اب سنہ 2023 سے کھال سے بنے کپڑے، جوتے اور ہینڈ بیگز کی خرید و فروخت نہیں کر سکیں گے۔جانوروں کے حقوق کی تنظیموں نے اس فیصلے کی حمایت کی ہے۔ وہ گذشتہ کچھ عرصے سے اس پابندی کا مطالبہ کر رہے تھے۔اخبار سان فرانسیسکو کرانیکل کے مطابق یہ قانون چمڑے اور گائے کی کھالوں پر لاگو نہیں ہوگا اور نہ ہی اس سے ہرن، بھیڑ اور بکرے کی کھالوں کی خرید...

کیلی فورنیا میں جانوروں کی پوستین سے بنی چیزوں پر پابندی

پنجاب بھر میں غیرت کے نام پر 8 سال میں 2400 سے زائد افراد قتل ہوئے وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

پنجاب میں غیرت کے نام پر قتل کی وارداتوں کا سلسلہ بدستور جاری ہے، 2011 سے 2018 کے دوران صوبہ بھر میں مجموعی طور پر 2 ہزار 424 افراد غیرت کی بھینٹ چڑھے۔پنجاب پولیس کی جانب سے مرتب شدہ اعداد و شمار کے مطابق فیصل آباد، جھنگ، ٹوبہ ٹیگ سنگھ اور چنیوٹ کے علاقوں پر مشتمل فیصل آباد ریجن غیرت کے نام پر قتل کی وارداتوں میں سر فہرست رہا جہاں گزشتہ آٹھ سال کے دوران 527 افراد کو بے دردی سے قتل کردیا گیا۔ سرگودھا ریجن میں سرگودھا، خوشاب، میانوالی اور بھکر کے علاقے شامل ہیں، 338 مقدمات کے س...

پنجاب بھر میں غیرت کے نام پر 8 سال میں 2400 سے زائد افراد قتل ہوئے

حدیقہ کیانی نے اپنی طلاق کی وجہ بتادی وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

خوش شکل اور خوش لباس حدیقہ کیانی کا شمار پاکستان میں پاپ موسیقی کی گنی چنی کامیاب گلوکارائوں میں ہوتا ہے جنہوں نے اپنے ہم عصر مرد گلوکاروں کو فن کے میدان میں بہت پیچھے چھوڑ دیا۔ حدیقہ کیانی نے ایک انٹرویو میں اپنی نجی زندگی سے متعلق بھی اہم انکشافات کیے۔روایتی آلات موسیقی اور جدید میوزک کے دلآویز امتزاج سے گلوکارہ حدیقہ کیانی 1995ء سے 2017ء تک مسحور کن آواز اور مدھر دھنوں سجے اپنے البمز ’راز، روشنی، رنگ، رف کٹ، آسمان اور وجد‘ سے اپنے مداحوں کے دلوں پر راج کر رہی ہیں۔نفسیا...

حدیقہ کیانی نے اپنی طلاق کی وجہ بتادی

آئین میں گورنر راج کی گنجائش موجود ہے ،خالد مقبول صدیقی وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

وفاقی وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی خالد مقبول صدیقی نے کہاہے آئین میں گورنر راج کی گنجائش موجود ہے،اگر سندھ میں معاملات ٹھیک نہ ہوئے تو یہ آخری آپشن ہے۔تفصیلات کے مطابق لاہور کے نجی ہوٹل میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے وفاقی وزیر انفارمیشن ٹیکنالوجی خالد مقبول صدیقی نے کہا کہ جمہوری اقدار میں ہر ایک کو احتجاج کا حق ہے،اس وقت حکومت دنیا بھر میں کشمیریوں کے حقوق اور آزادی کا مقدمہ لڑ رہی ہے،ان تمام معاملات کو مدنظر رکھتے ہوئے مولانا فضل الرحمان کو دھرنا نہیں دینا چاہیئے،مولاناکواپنے ف...

آئین میں گورنر راج کی گنجائش موجود ہے ،خالد مقبول صدیقی

فیض آباد دھرنا کیس کا فیصلہ ہی جسٹس قاضی فائز کیخلاف ریفرنس کی بنیاد بنا،وکیل وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

سپریم کورٹ کے جج جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کے وکیل منیر اے ملک نے دلائل دیتے ہوئے کہا ہے کہ فیض آباد دھرنا کیس کا فیصلہ ہی جسٹس قاضی فائز کیخلاف ریفرنس کی بنیاد بنا،موکل نے کسی معززجج کیخلاف تعصب یاذاتی عناد کاالزام نہیں لگایا، فل کورٹ اورالگ ہونے والے ججز پرکوئی اعتراض نہیں، اعلی عدلیہ کے ججز پر دبائو ڈالنا اس کیس کی جان ہے، لندن کا پہلا فلیٹ جسٹس قاضی فائز عیسی کی اہلیہ نے 2004 میں لیا، پہلا فلیٹ خریدنے کے پانچ سال بعد جسٹس قاضی فائز عیسی جج بنے، دوسرا اور تیسرا فلیٹ 2013 میں ج...

فیض آباد دھرنا کیس کا فیصلہ ہی جسٹس قاضی فائز کیخلاف ریفرنس کی بنیاد بنا،وکیل

مضامین
تری نگاہِ کرم کوبھی
منہ دکھانا تھا !
(ماجرا۔۔محمد طاہر)
وجود منگل 15 اکتوبر 2019
تری نگاہِ کرم کوبھی <br>منہ دکھانا تھا ! <br>(ماجرا۔۔محمد طاہر)

معاہدے سے پہلے جنگ بندی سے انکار
(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)
وجود منگل 15 اکتوبر 2019
معاہدے سے پہلے جنگ بندی سے انکار <br>(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)

ہاتھ جب اس سے ملانا تو دبا بھی دینا
(ماجرا۔۔۔محمدطاہر)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
ہاتھ جب اس سے ملانا تو دبا بھی دینا<br> (ماجرا۔۔۔محمدطاہر)

وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری کے امکانات ختم ہوگئے۔۔۔؟
(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری کے امکانات ختم ہوگئے۔۔۔؟<br>(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)

پانچ کیریکٹر،ایک کیپٹل۔۔
(عمران یات..علی عمران جونیئر)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
پانچ کیریکٹر،ایک کیپٹل۔۔ <br>(عمران یات..علی عمران جونیئر)

طالبان تحریک اور حکومت.(جلال نُورزئی) قسط نمبر:3 وجود بدھ 09 اکتوبر 2019
طالبان تحریک اور حکومت.(جلال نُورزئی)  قسط نمبر:3

دودھ کا دھلا۔۔ (علی عمران جونیئر) وجود بدھ 09 اکتوبر 2019
دودھ کا دھلا۔۔ (علی عمران جونیئر)

سُکھی چین کے 70 سال سیاسی
(زائچہ...راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 07 اکتوبر 2019
سُکھی چین کے 70 سال  سیاسی <Br>(زائچہ...راؤ محمد شاہد اقبال)

دنیا کے سامنے اتمام حجت کردی گئی!
(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)
وجود پیر 07 اکتوبر 2019
دنیا کے سامنے اتمام حجت کردی گئی! <br>(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)

حدِ ادب ۔۔۔۔۔۔(انوار حُسین حقی) وجود بدھ 02 اکتوبر 2019
حدِ ادب ۔۔۔۔۔۔(انوار حُسین حقی)

سگریٹ چھوڑ ۔۔فارمولا۔۔
َِ(علی عمران جونیئر)
وجود بدھ 02 اکتوبر 2019
سگریٹ چھوڑ ۔۔فارمولا۔۔<BR> َِ(علی عمران جونیئر)

خطابت روح کا آئینہ ہے !
(ماجرا۔۔۔محمد طاہر)
وجود پیر 30 ستمبر 2019
خطابت روح کا آئینہ ہے ! <br>(ماجرا۔۔۔محمد طاہر)

اشتہار