وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

عوام بھارت میں کرنسی بندش جیسی صورتحال سے خوفزدہ

بدھ 28 دسمبر 2016 عوام بھارت میں کرنسی بندش جیسی صورتحال سے خوفزدہ

ملک سے منی لانڈرنگ،کرپشن اور رشوت کی لین دین کی روک تھام کے لیے 19 دسمبر کوسینیٹ میں 5ہزار روپے کے کرنسی نوٹ بند کرنے کے حوالے سے منظور کی جانے والی قرارداد کے بعد پاکستان کے بازاروں میں افراتفری اور غیر یقینی کی کیفیت پیداہوگئی ہے۔اگرچہ حکومت کی جانب سے 5ہزار کے نوٹ بند کیے جانے کی افواہوں کی واضح الفاظ میں تردید کرتے ہوئے یہ یقین دہانی کرائی جارہی ہے کہ یہ افواہیں بے بنیاد ہیں اور5 ہزار کا کرنسی نوٹ بند نہیں کیاجائے گا لیکن مارکیٹ میں موجود بے یقینی کا ماحول ختم ہونے کانام نہیں لے رہا،حکومت اور اسٹیٹ بینک کی جانب سے5ہزار روپے کانوٹ بند نہ کرنے کی یقین دہانی اور اس حوالے سے وضاحتیں ان رپورٹوں کے بعد سامنے آئی ہیں جن میں کہاگیاتھا کہ حکومت کی جانب سے 5 ہزار کانوٹ بند کرنے کے اعلان کے بعد اب لوگ سونے کی خریداری کے لیے دوڑ پڑیں گے اور اس طرح مارکیٹ میں دولت کی گردش میں کمی آنے سے تجارتی سرگرمیاں جو پہلے ہی جمود جیسی صورت حال کا شکار ہیں مزید رک جائیں گی۔
وزارتِ خزانہ نے 5 ہزار روپے کے کرنسی نوٹوں کی بندش کے حوالے سے میڈیا اور کاروباری حلقوں میں گردش کرنے والی خبروں کی تردید کرتے ہوئے واضح کیا ہے کہ ایسا کوئی فیصلہ نہیں ہوا۔وزارت خزانہ کے ترجمان کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا کہ حکومت کی جانب سے نہ ہی ایسا کوئی فیصلہ کیا گیا ہے اور نہ ہی 5 ہزار کا نوٹ بند کرنے کا کوئی جواز موجود ہے۔بیان میں مزید کہا گیا کہ پاکستان میں سب سے زیادہ مالیت کے کرنسی نوٹ یعنی 5 ہزار روپے کے نوٹ کی قدر کئی اہم غیر ملکی کرنسیوں کے سب سے زائد مالیت کے نوٹوں جیسے 100 ڈالر، 200یورو اور 50 پاؤنڈ سے کم ہے۔ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ سال 2015-2016 کے دوران چھپنے والے نوٹوں میں سے 5000 کے نوٹوں کی شرح صرف 17 فیصد تھی۔
ترجمان نے کہا کہ حکومت کا ماننا ہے کہ 5 ہزار کا نوٹ بند ہوجانے سے کاروباری لین دین شدید متاثر ہوگی اور لوگوں کی مشکلات میں اضافہ ہوگا، لہذا لین دین کی آسانی کو متاثر کرنا بعید از قیاس اور واضح طور پر مسترد ہے۔وزارتِ خزانہ کی جانب سے مزید وضاحت کی گئی کہ اسٹیٹ بینک کے تعاون سے قومی مالیاتی حکمت عملی کا آغاز کیا جارہا ہے جس کے تحت ڈیجیٹل لین دین اور آسان بینکنگ کو لوگوں کے دروازوں تک پہنچایا جائے گا اور یوں لوگوں کا نوٹوں پر انحصار واضح حد تک کم ہوسکے گا۔ان کے مطابق موجودہ نوٹوں کو بند کرنے کے بجائے یہ طریقہ ہی معیشت کو آگے بڑھانے میں مددگار ثابت ہوسکتا ہے۔
واضح رہے کہ 19 دسمبر کو سینیٹ میں ناجائز پیسے کے بہائو کو روکنے کے لیے 5 ہزار کے نوٹوں کی بندش سے متعلق قرارداد منظور کی گئی تھی۔پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے سینیٹر عثمان سیف اللہ کی جانب سے پیش کی گئی قرارداد کی سینیٹرز کی اکثریت نے حمایت کی تھی۔قرارداد میں کہا گیا تھا کہ 5000 کے نوٹ واپس لیے جانے سے بینک اکائونٹس استعمال کی حوصلہ افزائی اور غیر تحریری معیشت کے سائز میں کمی واقع ہوگی۔قرارداد میں مزید کہا گیا تھاکہ مارکیٹ سے 5 ہزار کے نوٹوں کی واپسی تین سے پانچ سال میں ہونی چاہیے۔
وزیر قانون زاہد حامد نے قرارداد کی مخالفت کرتے ہوئے کہا تھاکہ نوٹ واپس لینے سے معاشی بحران پیدا ہوگا اور 5 ہزار کے نوٹ کی غیر موجودگی سے لوگ غیر ملکی کرنسی کی طرف مائل ہوں گے۔ ان کا کہنا تھا کہ اس وقت ملک میں 3 اعشاریہ 4 ٹریلین کے نوٹ زیر گردش ہیں، جن میں سے ایک اعشاریہ 02 فیصد نوٹ 5000 کے ہیں۔سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے خزانہ کے رکن سینیٹر عثمان سیف اللہ کا ایوان میں اظہار خیال کرتے ہوئے کہنا تھا کہ بڑے نوٹوں کے منی لانڈرنگ اور کرپشن میں استعمال ہونے کے امکانات زیادہ ہوتے ہیں۔بھارت کی مثال دیتے ہوئے سینیٹر عثمان سیف اللہ نے کہا کہ پوری دنیا میں بڑے کرنسی نوٹوں کی حوصلہ شکنی کی جارہی ہے اور بھارت نے حال ہی میںایک ہزار اور 500 روپے کے کرنسی نوٹوں کو بند کردیا ہے جبکہ یورپ میں 500 یوروز کا نوٹ مارکیٹ میں لے کر جانے پر پوچھ گچھ کی جاتی ہے۔عثمان سیف اللہ کی جانب سے یہ قرارداد ایک ایسے وقت میں پیش کی گئی تھی، جب حال ہی میں بھارتی حکومت نے ملک میں کالے دھن کے خلاف بڑا اقدام کرتے ہوئے 500 اور ایک ہزار کے نوٹوں کا استعمال ختم کرنے کا اعلان کیا اوریہی وجہ ہے کہ حکومت اور اسٹیٹ بینک کی جانب سے مسلسل واضح الفاظمیں 5ہزار کاکرنسی نوٹ بند نہ کرنے کی یقین دہانیوں کے باوجود عام آدمی تو کجا کاروباری حلقے بھی بے یقینی کی کیفیت میں ہیں اور عام خیال یہی ہے کہ حکومت کسی دن اچانک ہی 5ہزار کانوٹ بند کردینے کااعلان کردے گی ۔اس طرح لوگوں کے کروڑوں روپے پھنس کررہ جائیں گے اور اس کوتبدیل کرانے کے لیے لوگوں کو ایف بی آر کے چکر لگانے اور طرح طرح کے گوشوارے اور حلف نامے جمع کرانے پر مجبور ہونا پڑسکتاہے۔
پاکستان کے کرنسی ڈیلرز کا بھی یہی خیال ہے کہ حکومت کو بہرطور سینیٹ میں منظور کردہ قرار داد پر عملدرآمد کرنے پر مجبور ہونا پڑے گا اور کسی بھی دن 5 ہزار روپے کے نوٹ بند کرنے کااعلان کیاجاسکتاہے ۔جہاں تک سینیٹ کاتعلق ہے تو اس میں کوئی شک نہیں کہ یہ ملک کا سب سے بڑا قانون ساز ادارہ ہے اور اس کی جانب سے منظور کی گئی قرارداد کویوں ہی ردی کی ٹوکری کی نظر نہیں کیاجاسکتا اور اگرچہ حکومت فی الوقت اس کی مخالفت کررہی ہے اور اس ضمن میں یہ دلیل دی جارہی ہے کہ 5ہزار کا نوٹ بند کرنے کے حوالے سے سینیٹ کی منظور کردہ قرار داد پر عمل سے پاکستان میں بھی بھارت کی طرح مالیاتی بحران پیداہوجائے گا اور پاکستان کی معیشت اس طرح کے بحران کامقابلہ کرنے اور اس کے نتائج برداشت کرنے کی پوزیشن میں نہیں ہے لیکن اگر ارکان سینیٹ حکومت کے اس استدلال کو تسلیم کرنے سے انکار کرتے ہیں تو حکومت کو یہ معاملہ قومی اسمبلی میں لے جانا پڑے گا اور قومی اسمبلی میں اپنی اکثریت کی بنیاد پر اس کورد کرائے جانے کے باوجود دوبارہ اسے سینیٹ میں لانا ہوگا،اس سے یہ واضح ہے کہ جب تک حکومت سینیٹ کے ارکان کی اکثریت کواس فیصلے کے منفی نتائج کے حوالے سے قائل کرنے میں کامیاب نہیں ہوتی یہ معاملہ ختم نہیں ہوتا اور جب تک یہ پورا عمل مکمل ہوکر اپنے انجام تک نہیں پہنچتا اس بے وقت کی قرارداد کی وجہ سے پیداہونے والا ابہام اور غیر یقینی کا ماحول کسی نہ کسی صورت برقرار رہے گا۔اس کے نتیجے میں ملک میں کاروباری سرگرمیاں ماند پڑیں گی اور سونے کے علاوہ ڈالر کی خریداری کے رجحان میں اضافہ ہوگا جس کے نتیجے میں عالمی مالیاتی مارکیٹ میں پاکستانی روپے کی قدر جو پہلے ہی بہت کمزور ہے مزید کمزور ہوگی اور ڈالر کی قیمت ایک دفعہ پھر آسمان سے باتیں کرنے لگے گی۔
جہاں تک منی لانڈرنگ کے لیے بڑے کرنسی نوٹوں کے استعمال کاتعلق ہے تو اگرچہ ایک حد تک یہ درست ہے کہ کرنسی کے اسمگلر عام طورپر بڑے نوٹ ہی اسمگل کرتے ہیں لیکن اب منی لانڈرنگ کے لیے بڑے کرنسی نوٹ استعمال کرنے کے بجائے ڈالر استعمال کئے جانے لگے ہیں جس کااندازہ این علی سے لے کر اب تک کرنسی اسمگلنگ کے الزام میں گرفتار کئے جانے والے تمام ملزمان کے پاس سے برآمد ہونے والی کرنسی سے لگایاجاسکتاہے۔تاہم یہ بھی ایک حقیقت ہے کہ حال ہی میں بعض ایسے کرنسی اسمگلر بھی پکڑے جاچکے ہیں جن کے پاس بھاری مالیت کی پاکستانی کرنسی برآمد ہوئی جو وہ بیرون ملک ڈالر کی خریداری کے لیے لے جانا چاہتے تھے اور ڈالر خرید کر دوبارہ انھیں پاکستان ہی اسمگل کیاجانا تھا۔اس لئے کرنسی اسمگلنگ یا منی لانڈرنگ کے لیے پاکستانی کرنسی کے استعمال کے امکانات کو قطعی رد نہیں کیاجاسکتا۔جب حکومت نے5ہزار کا نوٹ جاری کرنے کا اعلان کیاتھا مالیاتی ماہرین نے اسی وقت یہ خدشہ ظاہر کردیاتھا کہ اس کے نتیجے میں رشوت کے لین دین اور کرنسی اسمگلنگ میں آسانیا ں پیداہوں گی اور مقامی سطح پر لوگوں کی قوت خریدمیں کمی آئے گی کیونکہ اس سے پاکستانی کرنسی کی قدر میں کمی کے گمان کو تقویت ملے گی، لیکن ارباب حکومت نے ان خدشات کوبے بنیاد قرار دیتے ہوئے 5ہزار کانوٹ جاری کرنے کافیصلہ کیاتھا اور یہ دلیل دی تھی کہ بڑی مالیت کے نوٹوں کے اجرا سے پاکستانی کرنسی پر عالمی سطح پر اعتماد میں اضافہ ہوگا۔
اس حقیقت سے انکار نہیں کیاجاسکتا کہ پاکستان میں بڑے پیمانے پر بلیک منی یعنی کالادھن موجود ہے،جس کااندازہ حال ہی میں بعض سرکاری ملازموں کے گھروں سے برآمد ہونے والے کروڑوں روپے مالیت کے پاکستانی کرنسی نوٹوں اور ڈالر اور سونے کی بھاری مقدار کی برآمدگی کی خبروں اوراس میں ملوث سرکاری افسران کی جانب سے گلو خلاصی کے لیے اربوں روپے واپس سرکاری خزانے میں جمع کرانے کے وعدوں سے لگایاجاسکتاہے۔
اس حقیقت سے بھی انکار نہیں کیاجاسکتا کہ ہماری حکومت کو جو امور مملکت چلانے کے لیے بھاری شرح سود پرجو قرض لینا پڑرہے ہیں اس کی بھی ایک بڑی وجہ یہی ہے کہ ہمارے ملک میں کروڑوں روپے تجوریوں میں چھپاکر رکھنے والے لوگ اپنی آمدنی پر مناسب شرح سے ٹیکس ادا کرنے کوتیار نہیں ہوتے اور20کروڑ سے زیادہ آبادی کے اس ملک میں ٹیکس دہندگان کی تعداد 10لاکھ سے بھی کم ہے اور ان میں سے بھی بیشتر لوگ پوری آمدنی پر ٹیکس ادانہیں کرتے بلکہ صرف اپنا کھاتا صاف رکھنے اور سرکاری ٹھیکے یالائسنسوں کے حصول کی شرط پوری کرنے کے لیے معمولی ساٹیکس ادا کرکے ٹیکس دہندگان کی فہرست میں شامل ہوجاتے ہیں۔ایسی صورت میں بڑی مالیت کے نوٹوں کی بندش ضروری معلوم ہوتی ہے اور اس حوالے سے سینیٹ کی قرارداد کو قطعی غلط قرار نہیں دیاجاسکتا۔اس حوالے سے حکومت کایہ خیال کہ 5ہزار کانوٹ بند کرنے سے ملک میں بھارت کی طرح ہلچل مچ جائے گی درست نہیں ہے کیونکہ اس ضمن میں یہ بات مد نظر رکھی جانی چاہئے کہ بھارت میں 500اور 1000کے نوٹ ایک ساتھ بند کئے گئے جو کہ مارکیٹ میں روزمرہ لین دین میں استعمال ہوتے تھے اس لئے اس کی ضرب براہ راست عام آدمی اور چھوٹے تاجروں اور دکانداروں پر بھی پڑی جبکہ پاکستان میں5000کا نوٹ عام لین دین میں کم ہی استعمال ہوتاہے اس لئے اس سے چھوٹے تاجروں ،دکانداروں اور گاہکوں پر کوئی خاص اثر نہیں پڑے گااور ان کی بندش سے ملک کی مالیاتی مارکیٹ میں کوئی بڑی تبدیلی رونما نہیںہوگی ہاں یہ ضرور ہوگا کہ جیسا کہ کرنسی ڈیلرز نے خیال ظاہر کیاہے کہ 5ہزار کے نوٹوں کی بندش کی صورت میں کالادھن بڑے نوٹوں کی شکل میں گھروںمیں چھپاکر رکھنے والے سماج دشمن عناصر اپنی یہ رقم سونے یاڈالر کی خریداری میں لگانے کو ترجیح دیں گے کیونکہ سونے کی تھوڑی سی مقدار کو نوٹوں کی لاتعداد گڈیوں کے مقابلے میں چھپاکر رکھنا زیادہ آسان ہوتاہے ،اسی طرح ڈالر بھی پاکستانی کرنسی کے مقابلے میں کم تعداد میں ہوں گے اور ان کوکسی وقت بھی تبدیل کرایاجاسکتاہے۔

تہمینہ حیات


متعلقہ خبریں


بھارتی سیاستدانوں نے اپنے آرمی چیف کے دعوے پر سوال اٹھا دیے وجود - پیر 21 اکتوبر 2019

بھارتی سیاستدانوں نے اپنے ہی آرمی چیف کے دعوے پر سوال اٹھا دیے ۔کانگریس لیڈر اکلیش سنگھ نے کہا ہے کہ مودی سرکا ر کے سرجیکل اسٹرائیکس کے دعوے انتخابات میں ہی نظر آتے ہیں،لگتا ہے اب سرجیکل اسٹرائیکس پر ہی راج نیتی چلے گی۔پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس لیڈر اکلیش سنگھ نے کہا کہ سرجیکل اسٹرائیکس ہمیشہ انتخابات سے پہلے ہی کیوں ہوتی ہیں ؟انہوں نے کہا کہ سرجیکل اسٹرائیکس کے دعوئوں کا ایک معمول بن گیا ہے ،لگتا ہے اب سرجیکل ا سٹرائیکس پر ہی راج نیتی چلے گی ۔ انہوں نے کہا کہ ...

بھارتی سیاستدانوں نے اپنے آرمی چیف کے دعوے پر سوال اٹھا دیے

ترکی میں ای سگریٹ کی اجازت نہیں دوں گا،ترک صدر وجود - پیر 21 اکتوبر 2019

ترکی کے صدر رجب طیب اردوان نے کہا ہے کہ میں کبھی بھی الیکٹرانک (ای) سگریٹ کی کمپنی کو اجازت نہیں دوں گا کہ وہ اپنی مصنوعات ترکی میں فروخت کریں۔ استنبول میں تمباکو نوشی کے حوالے سے تقریب میں خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ میں نے وزیر تجارت کو حکم دیا ہے کہ ترکی میں الیکٹرانک سگریٹ کی اجازت نہیں دینی کیوں کہ اس زہر سے تمباکو کی کمپنیاں امیر ہوتی جارہی تھیں۔عالمی ادارہ صحت کے اعداد و شمار کے مطابق 2016 میں ترکی کی آبادی کے 27 فیصد 15 سالہ نوجوان سگریٹ پیتے تھے ، جبکہ 2010 میں 31...

ترکی میں ای سگریٹ کی اجازت نہیں دوں گا،ترک صدر

لبنان،عوامی احتجاج کے بعد وزیراعظم سعدا لحریری معاشی اصلاحات پر رضا مند وجود - پیر 21 اکتوبر 2019

لبنان میں عوامی احتجاج کے بعد وزیراعظم سعدا لحریری معاشی اصلاحات پر راضی ہو گئے ، چند حکومتی وزرا نے استعفے بھی دیئے ۔ ابھی بھی ہزاروں کی تعداد میں مظاہرین سڑکوں پر موجود ہیں۔وزیراعظم سعد الحریری نے حکومتی اتحادیوں کے ساتھ معاشی بحران کو کم کرنے کے لئے اصلاحات کے ایک پیکیج پر اتفاق کیا ہے ، 4 حکومتی اراکین کے استعفیٰ کے باوجود مظاہرے جاری ہیں۔دارالحکومت بیروت میں احتجاج کے دوران مظاہرین نے قومی پرچم اٹھا رکھے تھے ۔ رات بھر ہونے والے احتجاج میں آتش بازی بھی کی گئی، مظاہرین سڑک...

لبنان،عوامی احتجاج کے بعد وزیراعظم سعدا لحریری معاشی اصلاحات پر رضا مند

نینسی پلوسی غیر اعلانیہ دورے پر افغانستان جا پہنچیں وجود - پیر 21 اکتوبر 2019

امریکا کے ایوان نمائندگان کی اسپیکر نینسی پلوسی اور کانگریس کے سینئر ارکان غیر علانیہ دورے پر افغانستان پہنچ چکے ہیں۔ نینسی پلوسی نے کابل افغان صدر اشرف غنی، امریکی وزیر دفاع مارک ایسپر اور امریکی فوج کے کمانڈروں و فوجیوں سے ملاقاتیں کیں۔نینسی پلوسی نے افغانستان کا دورہ ایسے موقع پر کیا ہے کہ جب امریکی وزیر دفاع مارک ایسپر بھی اْسی روز افغانستان پہنچے ہیں۔ہائوس اسپیکر اور وزیر دفاع کے ایک ہی روز دورہ افغانستان کو اتفاق قرار دیا جا رہا ہے۔ جب کہ مارک ایسپر کا کہنا تھا کہ ان کے...

نینسی پلوسی غیر اعلانیہ دورے پر افغانستان جا پہنچیں

تیونس‘ مذہبی سیاسی جماعت النہضہ کا حکومت کی تشکیل پراصرار وجود - پیر 21 اکتوبر 2019

عرب ملک تیونس میں حال ہی میں ہونے والے پارلیمانی انتخابات میں ملک کی مذہبی سیاسی جماعت النہضہ نے ایوان میں سب سے زیادہ نشستیں حاصل کی تھیں۔ انتخابات میں کامیابی کے بعد النہضہ اب حکومت کی تشکیل پربھی مْصر ہے۔عرب ٹی وی کے مطابق النہضہ کی مجلس شوریٰ کے چیئرمین عبدالکریم الھارونی نے ایک بیان میں کہا کہ پارلیمانی انتخابات میں کامیابی کے بعد جماعت حکومت کی تشکیل کے لیے تیار ہے۔ ان کا کہنا تھا کہ آئندہ دنوں میں تیونس میں بننے والی حکومت کی سربراہی تحریک النہضہ ہی کرے گی۔ تاہم ان کا...

تیونس‘ مذہبی سیاسی جماعت النہضہ کا حکومت کی تشکیل پراصرار

بچوں سے بد فعلی‘ 38 ممالک سے 337 افراد گرفتار وجود - جمعه 18 اکتوبر 2019

برطانیا اور امریکا کے تفتیش کاروں نے ڈارک ویب پر موجود بچوں سے بد فعلی پر مبنی ویڈیوز کی ویب سائٹ پر تحقیق کر کے مختلف ممالک سے 337 افراد کو گرفتار کر لیا ہے۔برطانیا کی سرکاری ایجنسی این سی اے نے بتایا کہ ویب سائٹ پر 2 لاکھ 50 ہزار ویڈیو موجود تھیں جن کو پوری دنیا سے مختلف افراد نے10 لاکھ بار ڈاون لوڈ کیا تھا۔ویب سائٹ پر ویڈیوز اپ لوڈ کرنے والوں کو ڈیجیٹل کرنسی میں ادائیگی کی جاتی تھی۔ تفتیش کاروں نے 38 ممالک سے 337 افراد کو گرفتار کیا ہے جن میں برطانیا، آئرلینڈ، امریکا،جنوب...

بچوں سے بد فعلی‘ 38 ممالک سے 337 افراد گرفتار

امریکا سے مذاکرات ‘ترکی نے کردوں کیخلاف آپریشن روک دیا وجود - جمعه 18 اکتوبر 2019

ترکی اور امریکا کے درمیان شام میں کردوں کے خلاف جنگ بندی پر اتفاق ہوگیا جس کے بعد ترکی نے شام میں عارضی طور پر سیز فائر کا اعلان کرتے ہوئے کردوں کو نکلنے کے لیے پانچ دن کی مہلت دے دی۔جنگ بندی کے حوالے سے امریکا کے نائب صدر مائیک پینس ترک صدر رجب طیب اردوان سے ملاقات کرنے انقرہ پہنچے اور امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا پیغام پہنچایا، ان کے ساتھ وزیر خارجہ مائیک پومپیو بھی موجود تھے۔ملاقات کے بعد دونوں رہنماؤں نے پریس کانفرنس کی جس میں مائیک پینس نے بتایا کہ امریکا اور ترکی کے درمیان...

امریکا سے مذاکرات ‘ترکی نے کردوں کیخلاف آپریشن روک دیا

برطانیا نے یورپی یونین سے بریگزٹ معاہدہ کرلیا وجود - جمعه 18 اکتوبر 2019

یورپی کمیشن کے صدر جین کلاڈ جنکر نے برسلز میں بلاک کے رہنماؤں کے سمٹ سے قبل بتایا کہ برطانیا نے یورپی یونین سے سخت کوشش کے بعد بریگزٹ معاہدہ حاصل کر لیا ہے۔دوسری جانب برطانوی وزیر اعظم بورس جونسن کا کہنا تھا کہ ہم نے زبردست بریگزٹ معاہدہ حاصل کیا ہے۔جین کلاڈ جنکر نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر بیان جاری کرتے ہوئے کہا کہ جہاں چاہت ہو وہاں معاہدہ ہوتا ہے، یہ یورپی یونین اور برطانیہ کے لیے منصفانہ اور متوازن معاہدہ ہے اور ہمارے حل تلاش کرنے کا عہد نامہ ہے۔انہوں نے آئندہ ہ...

برطانیا نے یورپی یونین سے بریگزٹ معاہدہ کرلیا

کانگرس میں ایردوآن اور خاندان کے اثاثوں کی رپورٹ طلب وجود - جمعه 18 اکتوبر 2019

شام میں ترکی کی فوجی کارروائی کے بعد امریکا نے ترک حکومت اور صدر طیب ایردوآن کے خلاف مزید اقدامات پرعمل درآمد شروع کیا ہے۔ ری پبلیکن رکن کانگرس سینیٹر لنڈسی گراہم اور متعدد امریکی سینیٹرز نے کانگرس میں ایک نیا بل پیش کیا ہے جس میں ترک عہدیداروں اور اداروں پر عائد کی جانے والی پابندیوں کی تفصیلات کے ساتھ ساتھ حکومت سے کہا گیا ہے کہ وہ ترک صدر طیب ایردوآن اور ان کے خاندان کے اثاثوں کے بارے میں تفصیلی رپورٹ فراہم کرے۔ اس بل میں روس ، ایران اور ترکی کے لیے شام میں تیل پیدا کرن...

کانگرس میں ایردوآن اور خاندان کے اثاثوں کی رپورٹ طلب

امریکی پابندیوں کے باوجود ہواوے کی آمدن میں اضافہ وجود - جمعه 18 اکتوبر 2019

امریکا اور چین کے درمیان تجارتی جنگ اور مختلف پابندیوں کا سامنا کرنے والی چینی کمپنی ہواوے کے منافع میں کوئی کمی نہیں آ سکی۔ فرانسیسی خبر رساں ادارے کا کہنا ہے کہ امریکا کی طرف سے چینی کمپنی کو عالمی سطح پر تنہا کرنے کی تمام کوششیں رائیگاں گئیں، تمام تر کوششوں کے باوجود رواں سال کے پہلے نو ماہ میں کمپنی کی آمدن میں 24.4 فیصد اضافہ ہوا ہے۔کمپنی کے مطابق ہواوے کو 86.2 ارب ڈالرز کا منافع ہوا ہے اور اسکے منافع کی شرح میں 8.7 فیصد تک اضافہ دیکھنے میں آیا ہے۔یاد رہے کہ امریکی صد...

امریکی پابندیوں کے باوجود ہواوے کی آمدن میں اضافہ

قبل از وقت سفید بال خطرناک بیماری کی علامت ہے، ماہرین وجود - جمعرات 17 اکتوبر 2019

رواں دور میں سفید بال ہونا عمومی بات ہے اور مرد و خواتین دونوں ہی اس بات سے پریشان نظر آتے ہیں،کیونکہ سفید بال بڑھاپے کی نشانی سمجھے جاتے ہیں۔ماہرین صحت قبل از وقت سفید بال امراض قلب کا عندیہ دیتے ہیں۔یونیورسٹی آف قاہرہ کے ماہرین کی جانب سے کی گئی تحقیق میں 545 مردوں میں سفید بالوں اور دل کی بیماری کے خطرے کے درمیان تعلق کا مطالعہ کیا گیا۔نتائج سے معلوم ہوا کہ بالوں کی جتنی سفید رنگت زیادہ تھی اتنا ہی دل کی بیماری کا خطرہ زیادہ دیکھا گیا۔ماہرین نے مردوں کو وارننگ جاری کر تے...

قبل از وقت سفید بال خطرناک بیماری کی علامت ہے، ماہرین

مصنوعی ذہانت والے روبوٹس سے ملازمین کی کارکردگی میں اضافہ ہوا ، اوریکل رپورٹ وجود - جمعرات 17 اکتوبر 2019

اوریکل کی ملازمین کے حوالے سے ایک حالیہ رپورٹ کے مطابق مصنوعی ذہانت، آرٹی فیشل انٹیلی جنس (اے آئی) نے ملازمین کی سوچ کو بدل رکھ دیا ہے اور ملازمین عام منیجروں کے مقابلے میں آرٹی فیشل انٹیلی جنس والے روبوٹس ساتھی ملازمین کے ساتھ کام کرنے میں زیادہ خوش ہیں، ایچ آر ٹیم کا کردار ملازمین کی بھرتی، ان کی تربیت اور ملازمین کو ادارے سے منسلک رکھنے کے لیے بھی تبدیل ہوا ہے۔ یہ سروے رپورٹ اوریکل اور فیوچر ورک پلیس نے کی جو کاروباری قائدین کی تیاری، ان کی ملازمتوں اور ملازمین کے دیگر...

مصنوعی ذہانت والے روبوٹس سے ملازمین کی کارکردگی میں اضافہ ہوا ، اوریکل رپورٹ

مضامین
جامہ عریانی کا قامت پہ مری آیا ہے راست
(ماجرا۔۔محمد طاہر)
وجود بدھ 16 اکتوبر 2019
جامہ عریانی کا قامت پہ مری آیا ہے راست <br>(ماجرا۔۔محمد طاہر)

کامی یاب مرد۔۔
(علی عمران جونیئر)
وجود بدھ 16 اکتوبر 2019
کامی یاب مرد۔۔<br> (علی عمران جونیئر)

تری نگاہِ کرم کوبھی
منہ دکھانا تھا !
(ماجرا۔۔محمد طاہر)
وجود منگل 15 اکتوبر 2019
تری نگاہِ کرم کوبھی <br>منہ دکھانا تھا ! <br>(ماجرا۔۔محمد طاہر)

معاہدے سے پہلے جنگ بندی سے انکار
(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)
وجود منگل 15 اکتوبر 2019
معاہدے سے پہلے جنگ بندی سے انکار <br>(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)

ہاتھ جب اس سے ملانا تو دبا بھی دینا
(ماجرا۔۔۔محمدطاہر)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
ہاتھ جب اس سے ملانا تو دبا بھی دینا<br> (ماجرا۔۔۔محمدطاہر)

وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری کے امکانات ختم ہوگئے۔۔۔؟
(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری کے امکانات ختم ہوگئے۔۔۔؟<br>(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)

پانچ کیریکٹر،ایک کیپٹل۔۔
(عمران یات..علی عمران جونیئر)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
پانچ کیریکٹر،ایک کیپٹل۔۔ <br>(عمران یات..علی عمران جونیئر)

طالبان تحریک اور حکومت.(جلال نُورزئی) قسط نمبر:3 وجود بدھ 09 اکتوبر 2019
طالبان تحریک اور حکومت.(جلال نُورزئی)  قسط نمبر:3

دودھ کا دھلا۔۔ (علی عمران جونیئر) وجود بدھ 09 اکتوبر 2019
دودھ کا دھلا۔۔ (علی عمران جونیئر)

سُکھی چین کے 70 سال سیاسی
(زائچہ...راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 07 اکتوبر 2019
سُکھی چین کے 70 سال  سیاسی <Br>(زائچہ...راؤ محمد شاہد اقبال)

دنیا کے سامنے اتمام حجت کردی گئی!
(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)
وجود پیر 07 اکتوبر 2019
دنیا کے سامنے اتمام حجت کردی گئی! <br>(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)

حدِ ادب ۔۔۔۔۔۔(انوار حُسین حقی) وجود بدھ 02 اکتوبر 2019
حدِ ادب ۔۔۔۔۔۔(انوار حُسین حقی)

اشتہار