وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

دبئی چلو یا نہ چلو....!!

جمعرات 05 مئی 2016 دبئی چلو یا نہ چلو....!!

dubai 2

متحدہ عرب امارات کے اتحاد میں سات ریاستیں شامل ہیں اور اِن میں دبئی کو انتظامی، معاشی اور سماجی ترقی کے تناظر میں ایک مخصوص مقام حاصل ہے… اقوامِ متحدہ کے اعداد و شمار کے مطابق دنیا کے 158 ملکوں میں اچھی اور مناسب زندگی کے حامل شہروں میں دبئی کا مقام بیسواں ہے جبکہ عرب ورلڈ میں یہ پہلی پوزیشن پر ہے…لیکن اب دبئی کے حالات تبدیل ہورہے ہیں۔ پاکستان اور بھارت سمیت کئی ممالک میں کرپشن کے خلاف مہم نے دبئی کو بھی ہلاکر رکھ دیا ہے۔ چونکہ دبئی پاکستان اور بھارت کے ’’منی لانڈرنگ لارڈز‘‘ کی جنت ہے اس لئے جب ہر طرف رکاوٹیں لگنا شروع ہوئیں تو دبئی کی معیشت بھی لرزنے لگی ہے۔ دبئی کی رونقیں پردیسیوں کی آمد سے مشروط ہیں جو آنکھ بند کرکے سرمایہ لٹاتے ہیں اور ماڈل گرلز کی خفیہ جیبوں میں چھپا کر سرمایہ پردیس منگواتے ہیں ۔

سال 2013 سے اب تک جتنی رقم پاکستان نے آئی ایم ایف سے قرض نہیں لی اس سے زائد رقم کی پراپرٹی جس کی مالیت 6 ارب 60 کروڑ ڈالر بنتی ہے، پاکستانیوں نے دبئی کے رئیل اسٹیٹ سیکٹر میں خرچ کر ڈالی

دبئی میں پراپرٹی کی خریداری میں پاکستانیوں کا تیسرا نمبر ہے ۔ 2013 سے اب تک پاکستانیوں نے 6 ارب 60 کروڑ ڈالر دبئی میں جائیداد کی خریداری پر خرچ کر ڈالے ہیں۔ سال 2015 میں پاکستانیوں نے دبئی میں پراپرٹی کی خریداری کے 6106 سودے کیے جو 2014 کے مقابلے میں 20 فیصد زائد ہیں۔ صرف ایک سال میں پاکستانیوں نے دبئی میں 2 ارب 20 کروڑ ڈالر کی زمین ، گھر ، فلیٹ اور دکانیں خریدیں۔

پراپرٹی کی خریداری میں پہلے نمبر پر برطانوی شہری اور دوسرے نمبر پر بھارتی شہری ہیں۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ سال 2013 سے اب تک جتنی رقم پاکستان نے آئی ایم ایف سے قرض نہیں لی اس سے زائد رقم کی پراپرٹی جس کی مالیت 6 ارب 60 کروڑ ڈالر بنتی ہے، پاکستانیوں نے دبئی کے رئیل اسٹیٹ سیکٹر میں خرچ کر ڈالی۔ پاکستانیوں کا یہ پیسہ دبئی کی اکانومی کا پہیہ تیزی سے گھماتا ہے لیکن کرپشن کیخلاف ’’مہم ‘‘نے سب کچھ روک دیا ہے ۔ اب کراچی اور لاہور سے منی لانڈرنگ کے ذریعے دولت کی دبئی ’’روانگی رک‘‘ گئی ہے ۔ حوالے کا کام کرنے والے قدم قدم پر پکڑ کی وجہ سے قومی دولت بیرونِ ملک منتقل کرنے کا رسک نہیں لے سکتے ۔ نئے اور سخت اقدامات کا نتیجہ یہ نکل رہا ہے کہ پاکستان کا سرمایہ پاکستان ہی میں رکا ہوا ہے کہ اب وہ پاکستان میں سرمایہ کار کے کام آئے گا ۔ ڈالر کو فی الحال مستحکم تو نہیں کہہ سکتے لیکن ڈالر کی قیمت اب مزید اونچی نہیں ہورہی اور ڈالر نے اب پہلے والی ’’اچھل کود‘‘بھی بند کردی ہے۔

ایران پر سے ہٹنے والی پابندیوں اور تیل کی پیداوار میں اضافے نے عرب ریاستوں بالخصوص سعودی عرب پر بھی گہرے اثرات چھوڑے ہیں ۔ سعودی عرب اپنے آپ کو معاشی میدان میں ترقی یافتہ ملک کے طور پر پیش کرنے کی کوشش کرتا ہے مگر اپنے اربوں پیٹرو ڈالرز کو لٹانے کی وجہ سے اس کا خزانہ خالی ہوچکا ہے۔ علاقائی رقیبوں کو پچھاڑنے کے لیے سعودی عرب نے تیل کی قیمتوں کو نچلی سطح پر باقی رکھا مگر اس کی وجہ سے اب وہ خود ہی بحرانی حالات سے دوچار ہوگیا ہے ۔ گرتی ہوئی معیشت کو سنبھالنے کے لیے چند دنوں پہلے سعودی وزیر دفاع محمد بن سلمان نے معاشی اصلاحات کا اعلان کیا تھا۔ سعودی عرب کے معاشی بحران کے بعد اب خبر آئی ہے کہ سعودی بن لادن گروپ نے 50 ہزار غیرملکی ملازمین کو فارغ کرنے کا اعلان کیا ہے ۔ سعودی عرب سے شائع ہونے والے روزنامہ الوطن نے اپنے ذرائع سے نقل کیا ہے کہ’’بن لادن گروپ‘‘ نے اپنے 50ہزار ملازمین کے ایگریمنٹس کو منسوخ کردیا ہے اور انہیں ایگزٹ ویزا بھی دے دیا ہے تاکہ وہ ملک چھوڑ دیں … سعودی روزناموں کے مطابق یہ قدم عالمی منڈی میں تیل کی مسلسل گرتی ہوئی قیمت اور سعودی عرب کی مالی مشکلات کی وجہ سے اٹھایا گیا ہے… آخری اطلاعات تک بے روزگار ہونے والے50ہزا رملازمین سڑکوں پر آگئے ہیں اور احتجاجاً کئی بسوں کو آگ لگادی گئی ہے۔

دبئی بیک وقت دو مختلف قسم کے حالات کا مقابلہ کرنے کی تیاری کررہا ہے، اول سیاحوں کی آمد میں کمی اور دوئم سخت گرمی کی آمد… قابل برداشت حد تک گرمی دبئی کی سوغات سمجھی جاتی ہے اور یورپ نے اس کا نام سن سٹی (چمکتے سورج کا شہر) رکھا ہے لیکن اتنی گرمی کوئی بھی برداشت نہیں کرسکتا کہ سن اسٹروک’’ اٹیک‘‘ کردے اور آدمی تفریح کے بجائے ڈاکٹروں کی مسیحائی کے رحم وکرم پر ہو جائے۔ گزشتہ ہفتے میں دبئی میں تھا کہ دبئی کے ٹیکسی والے نے شکوہ کیا کہ اپریل کا مہینہ جارہا ہے لیکن سیاحوں کی تعداد گزشتہ سال کے مقابلے میں50فیصد تک نہیں پہنچی۔ اگلے مہینے گرمی بڑھ جائے گی اور سیاحوں کی تعداد ’’آٹو میٹک‘‘ مزید کم ہو جائے گی۔ وہ اس کو پاکستان اور بھارت کے سیاسی حالات اور کرپشن کیخلاف مہم کا نتیجہ قرار دے رہا تھا۔ اس کا کہنا تھا کہ یہی حالات رہے تو دبئی کی رونق اور خریداری پر برا اثر پڑے گا۔ دبئی لاکھوں دکانوں میں گھر ا ہوا شہر ہے۔ اس کا کہنا تھا کہ دبئی حکومت کو اس سلسلے میں گزشتہ سالوں کی طرح ملتے جلتے اقدامات کرنے چاہئیں جبکہ ایک ٹریول ایجنسی کے افسر نے بتایا کہ ایک’’ائیر عربیہ ‘‘ائیر لائن نے 25ہزار روپے میں کراچی سے دبئی کا ٹکٹ بمعہ ویزا دینا شروع کر دیا ہے۔ دس ہزار روپے کا ویزا نکال دیا جائے تو یہ پندرہ ہزار روپے ٹکٹ بنتا ہے جو کراچی سے لاہور کے ریٹرن ٹکٹ سے بھی زیادہ سستا ہے۔ دبئی میں فروخت ہونے والی اشیا خاص طور پر کاسمیٹکس خواتین کے استعمال کی چیزیں کپڑے اور ادویات کراچی میں سستے داموں دستیاب ہیں ۔ جو پرفیوم دبئی مارکیٹ میں ایک ہزار روپے میں فروخت ہورہا ہے وہ کراچی میں 600روپے میں دستیاب ہے۔ دبئی میں چیزیں مہنگی نہیں ہیں، کبھی تو یہ چیزیں بہت سستی ہوتی تھیں لیکن اب دکان، مکان کا کرایہ، لائسنس فیس اور ویزے کی فیس آہستہ آہستہ اتنی بڑھ گئی ہے کہ دکان دار کو اپنی اشیا مہنگی کرکے فروخت کرنا پڑرہی ہیں اور اس کے اثرات دبئی کی معیشت پر تیزی سے آرہے ہیں۔ دبئی کراچی سے آٹھ سو ہوائی میل کے فاصلے پر ہے اس لئے دبئی کے اثرات کراچی پر اور کراچی کے اثرات دبئی پر پڑتے ہیں۔ صرف ایک ائیر لائن کی کراچی سے دبئی کے لیے روزانہ5پروازیں ہیں جبکہ روزانہ کل پروازیں تیرہ سے چودہ کے قریب ہیں لیکن بڑھتی ہوئی مہنگائی نے دبئی کی رونقوں پر حملہ کردیا ہے۔ اس کا تعلق کراچی سے نہیں ہے لیکن کراچی والے لاہور سے سے بھی کم فاصلے پر موجود ایک انٹرنیشنل شہر (دبئی) سے خود کو دور ہوتا ہوا محسوس کررہے ہیں۔ پہلی بار یہ ہوا ہے کہ دبئی حکومت یہ منصوبہ بندی کر رہی ہے کہ روٹھے ہوئے سیاحوں کوواپس لانے کے لیے کیا اقدامات کیے جائیں۔ ابتدائی طور پر ویزے کی فیس50درہم (تقریباً 1500روپے) کم کرد ی گئی ہے جو یہ پیغام دے رہی ہے کہ دبئی کے حکام اس مسئلے پر سنجیدگی سے غور و خوض کررہے ہیں۔


متعلقہ خبریں


دبئی اسپتال کا بل، ادائیگی کے بغیر برطانوی جوڑے کو شیرخوار واپس کرنے سے انکار وجود - جمعرات 26 ستمبر 2019

دبئی کے ایک اسپتال نے برطانوی جوڑے کو بل کی ادائیگی کیے بغیر شیرخوار بچہ واپس کرنے سے انکار کردیا۔برطانوی جریدے کے مطابق دبئی کے ایک نجی اسپتال میں برطانوی جوڑے کے ہاں بچے کی پیدائش ہوئی جس پر اسپتال نے ایک لاکھ یورو کا بل بنادیا اور والدین کو بل کی ادائیگی کے بغیر شیر خوار بچہ واپس کرنے سے انکار کردیا۔برمنگھم کے رہائشی 26 سالہ اظہر سلیم کی اہلیہ خولہ عدنان نے برطانیہ روانگی سے قبل دبئی کے ایک نجی اسپتال میں وقت سے پہلے 23 ہفتوں کی بچی کو جنم دیا تاہم اسپتال انتظامیہ نے بل کی...

دبئی اسپتال کا بل، ادائیگی کے بغیر برطانوی جوڑے کو شیرخوار واپس کرنے سے انکار

متحدہ عرب امارات کے 10 امیر ترین افراد میں 6 بھارتی تاجر شامل شہلا حیات نقوی - بدھ 28 ستمبر 2016

امریکی جریدے فوربز نے دنیا کے دولت مند ترین ارب پتیوں کی جو فہرست شائع کی ہے اس میں متحدہ عرب امارات کے 10شہری شامل ہیں جن میں 4 امارات کے اور 6 بھارتی تاجر شامل ہیں جنھوں نے امارات کی شہریت حاصل کررکھی ہے، فوربز کی رپورٹ کے مطابق ان کی مجموعی دولت کی مالیت 125 ارب درہم سے زیادہ ہے۔ فوربز کی 2014 کی دولت مند ترین ارب پتی شخصیات میں امارات کے 8 تاجر شامل تھے جن کی دولت کی مجموعی مالیت88 ارب درہم بتائی گئی تھی۔ لیکن ایک سال کے اندر ان کی تعداد میں 2افراد کااضافہ ہوگیا۔ فورب...

متحدہ عرب امارات کے 10 امیر ترین افراد میں 6 بھارتی تاجر شامل

ایم کیو ایم اور مائنس پلس کا کھیل؟؟ الیاس شاکر - جمعه 02 ستمبر 2016

ایم کیو ایم کی حالت اِس وقت ایسی ہے جو سونامی کے بعد کسی تباہ شدہ شہر کی ہوتی ہے... نہ نقصان کا تخمینہ ہے نہ ہی تعمیر نو کی لاگت کا کوئی اندازہ ...چاروں طرف ملبہ اور تصاویر بکھری پڑی ہیں۔ ایم کیو ایم میں ابھی تک قرار نہیں آیا... ہلچل نہیں تھمی... اور وہ ٹوٹ ٹوٹ کر ٹوٹ ہی رہی ہے۔ چند روز قبل ایم کیو ایم کو پاک سرزمین پارٹی کے ’’نقب زنوں‘‘ سے خطرہ تھا لیکن اب اپنے ہی لگائے ہوئے نعرے تکلیف کا باعث بن رہے ہیں اور زندگی بھر ساتھ نبھانے والے ہاتھ چھڑا کر بھاگ رہے ہیں۔ ہر طرف سے ایک...

ایم کیو ایم اور مائنس پلس کا کھیل؟؟

فاروق ستار کی دوستانہ بغاوت۔۔۔؟ الیاس شاکر - جمعه 26 اگست 2016

کراچی میں دو دن میں اتنی بڑی تبدیلیاں آگئیں کہ پوراشہر ہی نہیں بلکہ ملک بھی کنفیوژن کا شکار ہوگیا۔ پاکستان کے خلاف نعرے لگے، میڈیا ہاؤسز پر حملے ہوئے، مار دھاڑ کے مناظر دیکھے گئے، جلاؤ گھیراؤنظر آیا اور بالآخر ایم کیو ایم کے اندر ایک بغاوت شروع ہوگئی۔ فاروق ستار نے بغیر کسی مزاحمت کے اقتدار پر قبضہ کرنے کا اعلان کیا اور پارٹی کی قیادت سنبھال لی۔ فاروق ستار نے اتنا بڑا ایکشن بہت آسانی سے لے لیا جو کچھ لوگوں کو سمجھ نہیں آیا اورکچھ لوگوں نے سمجھا کہ معاملہ بہتر ہوگیا، لیکن پاک ...

فاروق ستار کی دوستانہ بغاوت۔۔۔؟

وزیر اعظم صاحب !!کراچی کا کیا قصورہے؟؟ الیاس شاکر - بدھ 24 اگست 2016

وزیراعظم صاحب نے ایک بار پھر یاد دلادیا کہ کراچی لاوارث یتیم لاچاراوربے بس شہر ہے...کراچی کے مختصر ترین دورے کے دوران نواز شریف صاحب نے نہ ایدھی ہاؤس جانے کی زحمت گوارا کی نہ امجد صابری کے لواحقین کودلاسہ دیا۔ جس لٹل ماسٹر حنیف محمد کو پوری دنیا نے سراہا ،نواز شریف ان کے گھر بھی جانے سے محروم رہے۔کراچی سے تعلق ہونابھی ایسا جرم بن جاتا ہے کہ تعزیت کے دو بول سننے کیلئے بھی انتظار جیسا کٹھن مرحلہ طے کرنا بھی ضروری ہوتا ہے اور بعد میں ایک اطلاع ملتی ہے کہ ’’پی ایم صاحب‘‘ کا شیڈول...

وزیر اعظم صاحب !!کراچی کا کیا قصورہے؟؟

کراچی کی بارش اور سندھ حکومت الیاس شاکر - جمعه 12 اگست 2016

ماضی کا ایک مشہور لطیفہ ہے۔ ایک افغان اور پاکستانی بحث کر رہے تھے۔ پاکستانی نے افغان شہری سے کہا: ’’تم لوگوں ‘‘کے پاس ٹرین نہیں تو ریلوے کی وزارت کیوں رکھی ہوئی ہے؟ افغان نے جواب دیا: ''تم لوگوں کے پاس بھی تو تعلیم نہیں پھر تمہارے ملک میں اس کی وزارت کا کیا کام ہے۔ کراچی اور حیدر آباد میں دو روزہ بارش کے بعد محکمہ بلدیات کی ’’گمشدگی ‘‘پر ایسی ہی صورتحال نظر آئی۔ بارش کا پانی تو ہر جگہ موجود تھا لیکن وزارت بلدیات کہیں نظر نہیں آئی۔ سندھ کے وزیر بلدیات جام خان شورو کا تو ...

کراچی کی بارش اور سندھ حکومت

سندھ تقسیم ہوگیا۔۔۔!! الیاس شاکر - پیر 08 اگست 2016

نئے وزیر اعلیٰ مرادعلی شاہ کے تقرر سے سندھ عملی طور پردو حصوں میں تقسیم ہوگیا ہے۔۔۔۔۔سندھ میں ’’خالص سندھی حکومت‘‘قائم ہوچکی ہے۔۔۔۔۔پیپلز پارٹی کے بانی ذوالفقار علی بھٹو نے 1972ء کے لسانی فسادات کے بعد یہ تسلیم کیا تھا کہ سندھ دو لسانی صوبہ ہے اور سندھ میں آئندہ اقتدار کی تقسیم اسی اصول کے تحت ہوگی ۔۔۔۔۔پیپلز پارٹی نے حالیہ حکومت کی تشکیل میں نہ صرف کراچی کے اردو بولنے والوں کو نظر انداز کیا بلکہ اپنے تین ارکان صوبائی اسمبلی کو بھی ’’لفٹ‘‘ہی نہیں کرائی۔۔۔۔۔قیام ِ پاکستان سے ق...

سندھ تقسیم ہوگیا۔۔۔!!

پاکستانی دبئی میں تیسرے بڑے سرمایہ کار بن گئے وجود - هفته 06 اگست 2016

دنیا بھر کے ارب پتیوں کی فہرست نکالیں، شاید ہی ابتدائی 500 میں کوئی ایک پاکستانی ہو۔ لیکن کیا حقیقت میں ایسا ہی ہے؟ ہرگز نہیں کیونکہ پاکستان میں دولت چھپانے اور اسے محفوظ ٹھکانوں پر رکھنے کا رحجان موجود ہے جس کی وجہ سے کسی کی حقیقی دولت کا اندازہ نہیں لگایا جا سکتا۔ لیکن دبئی میں جس طرح پاکستانیوں نے گزشتہ چند سالوں میں جائیداد و املاک خریدی ہیں، وہ چغلی کھا رہی ہیں۔ رواں سال کی پہلی ششماہی میں پاکستانیوں نے صرف دبئی میں 3 ارب اماراتی درہم یعنی 85 ارب روپے مالیت کی پراپرٹیز خ...

پاکستانی دبئی میں تیسرے بڑے سرمایہ کار بن گئے

میر شکیل الرحمان کے بیٹے کی دبئی میں گرفتاری پر پاکستانی ذرائع ابلاغ پر موت کا سناٹا! وجود - پیر 01 اگست 2016

پاکستان میں سب کی خبریں دینے والے میر شکیل الرحمان گزشتہ رات سے سب سے بڑی خبر بن چکے ہیں ،مگر پاکستانی ذرائع ابلاغ اس کی خبر رکھتے ہوئے بھی بے خبر بنا رہا ہے۔ میر شکیل الرحمان کے اخبارات اور ٹی وی جو عہدفراعنہ سے بھی کمتر اخلاقیات کے حامل ہیں اور ملک بھر میں اپنے دشمنوں کو زمین سےاکھاڑنے ، رزق سے محروم کرنے اور اُن کے بیٹوں اور بیٹیوں تک کو ناجائز اور غلط خبروں کے ذریعے دباؤ میں لانے کی بدترین اور شرمناک تاریخ رکھتے ہیں۔ اب ایک ایسے ہی واقعے میں قدرت کی سخت ترین گرفت اور تنبی...

میر شکیل الرحمان کے بیٹے کی دبئی میں گرفتاری پر پاکستانی ذرائع ابلاغ پر موت کا سناٹا!

نئے وزیراعلیٰ کی ضرورت کیوں؟ الیاس شاکر - پیر 01 اگست 2016

سندھ حکومت کو مشورہ دیا گیا کہ وزیرداخلہ کو فارغ کردو، اس پر فلاں فلاں الزام ہے۔ الزامات کا تذکرہ اخبارات میں بھی ہوا۔ لاڑکانہ میں رینجرز نے وزیر داخلہ کے گھر کے باہر ناکے بھی لگائے، ان کے فرنٹ مین کو قابو بھی کیاگیا، لیکن رینجرزکی کم نفری کا فائدہ اٹھاکر، عوام کی مدد سے، سندھ پولیس کی سربراہی میں اسد کھرل کو رہا کروا لیا گیا۔ اس کے بعد سندھ حکومت کو پیغام بھیجا گیا کہ اپنے وزیرداخلہ کو فوری طور پر تبدیل کردو، لیکن یہ بات ’’وڈیرہ شاہی‘‘ کو اچھی نہ لگی۔ ان کی شان و شوکت نے ...

نئے وزیراعلیٰ کی ضرورت کیوں؟

رینجرز کے اختیارات اور شرائط الیاس شاکر - جمعرات 28 جولائی 2016

پیپلز پارٹی سے تعلق رکھنے والے خورشید شاہ نے ایک عجیب و غریب اور ناقابل یقین بیان دیا کہ سندھ میں امن پولیس نے قائم کیا ہے اور باقی کسی ادارے کا اس میں کوئی کردار نہیں۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ رینجرز کو اختیارات ضرور دیں گے مگر قانون اور قواعد کی پابندی کرتے ہوئے، انہوں نے رینجرز کا نام لیے بغیر کہا کہ کسی کو بھی ریاست کے اندر ریاست بنانے کی اجازت نہیں دی جائے گی، یہ بیان ان کا ایک ایسے وقت آیا جب ملک میں یہ بحث زوروں پر تھی کہ سندھ حکومت رینجرز کو اختیارات دے گی بھی یا نہیں؟ ...

رینجرز کے اختیارات اور شرائط

کراچی آپریشن اوراسلام آباد کی حکمت عملی!! الیاس شاکر - پیر 18 جولائی 2016

عید گزر گئی ۔۔۔۔۔کہا جارہا تھا کہ ’’کراچی آپریشن‘‘کی رفتار ’’بلٹ ٹرین‘‘کی طرح تیز ہوجائے گی ۔۔۔۔۔دہشت گردوں کا گھر تک پیچھا کرکے انہیں نیست و نابود کردیا جائے گا لیکن ایسا ’’گرجدارآپریشن ‘‘فی الحال ہوتا نظر نہیں آرہا۔۔۔۔۔ پھر یہ بھی کہا گیا کہ وفاق میں ’’سیاسی آپریشن‘‘ہوگا۔۔۔۔۔ احتساب کا آتش فشاں پھٹ پڑے گااور بیشتر کرپٹ افرادلاوے میں بہہ جائیں گے ۔۔۔۔۔لیکن تاحال اسلام آباد اور کراچی دونوں جگہ سناٹے ہیں اور شور ہے تو صرف بارش کا۔ کراچی کیلئے کہا گیا تھا کہ عید کے بعد ہونے ...

کراچی آپریشن اوراسلام آباد کی حکمت عملی!!

مضامین
تری نگاہِ کرم کوبھی
منہ دکھانا تھا !
(ماجرا۔۔محمد طاہر)
وجود منگل 15 اکتوبر 2019
تری نگاہِ کرم کوبھی <br>منہ دکھانا تھا ! <br>(ماجرا۔۔محمد طاہر)

معاہدے سے پہلے جنگ بندی سے انکار
(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)
وجود منگل 15 اکتوبر 2019
معاہدے سے پہلے جنگ بندی سے انکار <br>(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)

ہاتھ جب اس سے ملانا تو دبا بھی دینا
(ماجرا۔۔۔محمدطاہر)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
ہاتھ جب اس سے ملانا تو دبا بھی دینا<br> (ماجرا۔۔۔محمدطاہر)

وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری کے امکانات ختم ہوگئے۔۔۔؟
(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
وزیراعلیٰ سندھ کی گرفتاری کے امکانات ختم ہوگئے۔۔۔؟<br>(سیاسی زائچہ..راؤ محمد شاہد اقبال)

پانچ کیریکٹر،ایک کیپٹل۔۔
(عمران یات..علی عمران جونیئر)
وجود پیر 14 اکتوبر 2019
پانچ کیریکٹر،ایک کیپٹل۔۔ <br>(عمران یات..علی عمران جونیئر)

طالبان تحریک اور حکومت.(جلال نُورزئی) قسط نمبر:3 وجود بدھ 09 اکتوبر 2019
طالبان تحریک اور حکومت.(جلال نُورزئی)  قسط نمبر:3

دودھ کا دھلا۔۔ (علی عمران جونیئر) وجود بدھ 09 اکتوبر 2019
دودھ کا دھلا۔۔ (علی عمران جونیئر)

سُکھی چین کے 70 سال سیاسی
(زائچہ...راؤ محمد شاہد اقبال)
وجود پیر 07 اکتوبر 2019
سُکھی چین کے 70 سال  سیاسی <Br>(زائچہ...راؤ محمد شاہد اقبال)

دنیا کے سامنے اتمام حجت کردی گئی!
(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)
وجود پیر 07 اکتوبر 2019
دنیا کے سامنے اتمام حجت کردی گئی! <br>(صحرا بہ صحرا..محمد انیس الرحمن)

حدِ ادب ۔۔۔۔۔۔(انوار حُسین حقی) وجود بدھ 02 اکتوبر 2019
حدِ ادب ۔۔۔۔۔۔(انوار حُسین حقی)

سگریٹ چھوڑ ۔۔فارمولا۔۔
َِ(علی عمران جونیئر)
وجود بدھ 02 اکتوبر 2019
سگریٹ چھوڑ ۔۔فارمولا۔۔<BR> َِ(علی عمران جونیئر)

خطابت روح کا آئینہ ہے !
(ماجرا۔۔۔محمد طاہر)
وجود پیر 30 ستمبر 2019
خطابت روح کا آئینہ ہے ! <br>(ماجرا۔۔۔محمد طاہر)

اشتہار