وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

ریاست جموں کشمیر کی آزادی جہاد فی سبیل اللہ ہی سے ممکن ہے!

پیر 04 جنوری 2016 ریاست جموں کشمیر کی آزادی جہاد فی سبیل اللہ ہی سے ممکن ہے!

saifullah-khalid

سیف اللہ خالد حزب المجاہدین کے نا ئب امیر ہیں۔ اور تحریک آزادیٔ کشمیر کی توانا آوازہیں۔ حلقہ احباب میں فصاحت اور بلاغت میں اپنا ثانی نہیں رکھتے۔ اللہ کے دین اور آزادی کشمیرکی جدوجہد میں مجاہدانہ اور قائدانہ کردار جو سیف اللہ خالد نے پیش کیا ہے اس کی مثال ملنا مشکل ہے۔ لیور پہلگام اسلام آباد کے ایک کھاتے پیتے گھرانے سے تعلق رکھنے والے58 سالہ مجاہد کمانڈر عامر خان المعروف سیف اللہ خالد ربع صدی سے بھارتی استعمار کے ظلم و جبراور آٹھ لاکھ فوج کے خلاف ڈٹے ہوئے ہیں۔ 1995 سے1999تک ایک ایسا دور بھی آیا جب بھارتی ایجنسیوں کی سرپرستی میں، بھارت نواز کشمیری بندوق برداروں کے کئی گروپ وجود میں آئے اور جن کی آڑ لے کر بھارتی فورسز نے مجا ہدین کے ہمدردوں، قریبی رشتہ داروں اور جماعت اسلامی سے وابستہ افراد و قائدین کا چن چن کر قتل و غارت گری کا بازار گرم کیا، تو اس وقت کئی بڑے بڑے نامی گرامی عسکریت کے شہسوار عافیت کوشی کے لیے گمنام گوشوں کی تلاش میں تھے، حزب المجاہدین کی صف اول کی تمام قیادت تقریباً جام شہادت نوش کرچکی تھی۔ انہی حالات میں سیف اللہ خالد کے نحیف کندھوں پرحزب چیف آپریشنل کی ذمہ داری کا بوجھ ڈالا گیا اور سیف اللہ خالد نے اس بھاری ذمہ داری کو اُٹھاکر ہچکولے کھاتے ہوئی اس کشتی کو ساحل تک پہچانے کی ٹھان لی۔ تاریخ گواہ ہے کہ ان کی قیادت میں، مجاہدین کشمیر پھرمنظم ہو گئے اور بھارتی بندوق برداروں کو پھر چھپنے کی جگہ بھی نہیں ملی۔ بحیثیت آ پریشنل کمانڈر، حزب المجاہدین کو جموں و کشمیرکے طول و عرض میں متحرک اور منظم کیا۔ تیر بہدف کارروائیوں سے حزب المجاہدین بھارتی فوجیوں کے لیے دہشت کی علامت بن گئی۔ غداروں کے لیے زمین تنگ کردی، حالات کے دھارے کو تبدیل کرنے کے لیے وقت نے جس قربانی کا تقاضا کیا۔ سیف اللہ خالد نے خندہ پیشانی سے پیش کرکے اپنے آ پ کو قربانی کا پیکر ثابت کیا، ان کے باغات کاٹے گئے، تیار فصلوں کو لوٹا گیا، گھر جلایا گیا، دو بیٹوں اور ایک بھائی کو شہید کیا گیا، لیکن۔ ۔ ۔ ہر آزمائش سے سرخ رو ہوئے۔ آج کل جموں و کشمیرکے اس حصے میں مقیم ہیں۔ اُن سے وجود ڈاٹ کام نے کشمیر کی تحریک پرخصوصی گفتگو کی ہے جو نذر قارئین ہے۔


سوال:- آپ کا تعلق ایک اچھے کھاتے پیتے گھرانے سے رہا ہے۔ پُرخطر راستے کا انتخاب کیسے کیا؟دو بیٹوں اور ایک بھائی کی شہادت کے باوجود آپ، ہمالیائی چٹان کی طرح ڈٹے ہوئے نظر آرہے ہیں؟ یہ صبر و حوصلہ…… کوئی خاص وجہ؟

جواب:-’’یہ اللہ تبارک و تعالیٰ ہی کا فضل ہے، جسے چاہتا ہے عطا کرتا ہے‘‘۔

موقع غنیمت جان کر، میں بھی گھر کی طرف آنکلا۔ بندو ق جیکٹ کے نیچے چھپاکر کے گھر کے صحن میں پہنچا تو ڈی آئی جی، ایس ایس پی اور ایس ایچ او کو سامنے کھڑے پایا۔ وسیع و عریض گھر کا صحن آرمڈ پولیس، پولیس، بی ایس ایف اور سی آر پی ایف سے کھچا کھچ بھر ا تھا

جو لوگ بھی اس تحریک (مسلح جدوجہد) سے وابستہ رہے ہیں، وہ کھاتے پیتے گھرانوں سے ہی تعلق رکھتے ہیں۔ میرا تعلق بھی ایک متمول گھرانے سے تھا۔ بچپن اور جوانی عیش و عشرت میں گزاری، لیکن اس دور میں بھی کسی ظالم کا ظلم کسی مظلوم پر میرے لئے ناقابل برداشت ہوتا تھا تو قوم اور ملت پر ظلم کیسے برداشت کرسکتا تھا۔ میرا تعلق ایسے گھرانے سے ہے جو میری پیدائش کے وقت ہی سے تحریک اسلامی (جماعت اسلامی) سے وابستہ تھا۔ والد صاحب جماعت اسلامی کے رُکن تھے اور گھر میں وسیع اسلامی لٹریچر موجود تھا اور پڑھائی کے ساتھ ساتھ میں اس اسلامی لٹریچر سے استفادہ کرتا رہتا تھا۔ والدین کی تربیت کے ساتھ ساتھ جماعت اسلامی کے عظیم بزرگوں محترم سعد الدین صاحبؒ، مولانا احرار صاحبؒ، مولانا حکیم غلام نبی صاحبؒ، محترم سید علی گیلانی صاحب، محترم سلیمان صاحب زالورہؒ اور محترم شیخ غلام حسن صاحب وغیرہ کی تربیت سے بھی فیض حاصل کرنے کی سعادت نصیب ہوئی، کیونکہ ہمارا گھر تحصیل بجبہاڑہ اور تحصیل پہلگام میں جماعت اسلامی کا مرکز رہا ہے، اس لئے اس پُرخطر راستے میں شعوری طور قدم رکھا اور اچھی طرح جانتا تھا کہ یہ راہِ جہاد بہت ساری قربانیوں کی متقاضی ہے۔ جب بیٹے اور بھائی شہادت کے منصب پر فائز ہوئے، تو سورۃ البقرہ کی یہ آیت نظروں کے سامنے آئی ؛ ’’ترجمہ: ہم تمہیں ضرور خوف، بھوک، مال اورجان کے نقصانات اور آمدنیوں کے گھاٹے میں مبتلا کرکے آزمائش کریں گے۔ ان حالات میں جو لوگ صبر کریں اور جب کوئی مصیبت پڑے تو کہیں کہ ہم اللہ ہی کے ہیں اور اللہ ہی کی طرف پلٹ کر جانا ہے‘‘۔

س:جماعت کے ساتھ بھی وابستہ رہے؟

ج :جی۔ ۔ ہاں میں رُکن جماعت ہونے کے ساتھ ساتھ 6سال تک 11ذیلی حلقوں کا مرکزی امیر رہا ہوں۔

س:-آپ نے ہزاروں مجاہدین کی میدان عمل میں قیادت کی ؟کوئی خاص انہونی واقعہ، جسے آپ بیان کرنا پسند کریں گے؟

ج:- میدان کارزار میں ہزاروں ایسے واقعات رونما ہوئے، جہاں اللہ تعالیٰ کی مدد و نصرت صاف نظر آتی تھی۔ میرے ساتھ بھی درجنوں واقعات ایسے ہوئے جہاں عقل لب بام رہی اور عشق نے چھلانگ لگائی۔ طوالت سے بچتے ہوئے صرف ایک واقعہ مثال کے طور پر عرض کروں گا:

1994ء میں حزب المجا ہدین کا ڈسٹرکٹ کمانڈر تھا اور دشمن کو کافی مطلوب تھا۔ ایک کارروائی میں دشمن کا کافی جانی نقصان ہوا۔ ردعمل میں میرے گھر سے سارا مال و اسباب دشمن نے اپنی گاڑیوں میں بھر کر لوٹ لیا۔ میرے والد بزرگ نے عدالت میں ایک خلاف کیس دائر کیا۔ عدالت نے ڈی آئی جی پولیس کی قیادت میں تحقیقات کے لئے ایک کمیشن تشکیل دیا۔ جس دن یہ کمیشن ہمارے گھر تحقیقات کے لئے آیا، اُس دن میں بھی اپنے ہی گاؤں میں کسی اور جگہ اکیلا بیٹھا ہوا تھا۔ چونکہ مجھے معلوم نہیں تھا کہ ڈی آئی جی کی قیادت میں کمیشن بنایا گیا ہے میں سمجھا کہ تھانے کے کچھ پولیس اہلکار ایس ایچ او کی قیادت میں آئے ہوئے ہیں۔ ایس ایچ او سے متعلق اس سے پہلے بھی کچھ تحریک مخالف شکایات موصول ہوئی تھیں، موقع کو غنیمت جان کر، میں بھی گھر کی طرف آنکلا۔ بندو ق جیکٹ کے نیچے چھپاکر کے گھر کے صحن میں پہنچا تو ڈی آئی جی، ایس ایس پی اور ایس ایچ او کو سامنے کھڑے پایا۔ وسیع و عریض گھر کا صحن آرمڈ پولیس، پولیس، بی ایس ایف اور سی آر پی ایف سے کھچا کھچ بھر ا تھااور میں سامنے بلا مبالغہ اللہ کے فضل سے بغیر کسی خوف اور ڈر کے کھڑا تھا۔ ایس ایس پی، ایس ایچ او اور پولیس اہلکارایک ایک کرکے ڈی آئی جی کی نظروں سے بچتے ہوئے مجھے سیلوٹ دے رہے تھے اور ڈی آئی جی کے چہرے پر ڈر اور خوف کی وجہ سے زردی چھا گئی۔ ہکا بکا کبھی میری طرف اور کبھی میرے لٹے ہوئے مکان کی طرف دیکھ رہا تھا اور بغیر مزید کوئی کارروائی کرکے کر اپنی فوج ظفر موج جن کی تعداد80 سے85 تک تھی کے ساتھ نکل گیا۔ بعد میں ڈی آئی جی کو اسی بنیاد پر معطل کیا گیا کہ آپ نے سیف اللہ خالد کو مارا یا گرفتار کیوں نہیں کیا۔ حالانکہ گرفتار کرنا یا شہید کرنا اُس وقت اُن کے لئے بہت آسان تھا۔ آج بھی یہ واقعہ میرے ذہن میں کبھی گونجتا ہے تو سورہ الانفال کی اس آیت پر نظر پڑتی ہے؛ ’’ترجمہ: ان کافروں (دشمنوں)کے دلوں میں رعب ڈالے دیتا ہوں‘‘۔

س:- آپ کے خاندان پر کیا بیتی اور کیا بیت رہی ہے۔ کچھ فرمانا پسند کریں گے؟

ج:- اہل حق پر جو کچھ بیتی ہے، اس کا عشر عشیر بھی مجھ پر نہیں بیتی ہے۔ بیٹوں اور بھائی کی شہادت آنکھوں کے سامنے، باغات کو کاٹنا، فصل کو لوٹنا، دو مکانات کو بارود سے زمین بوس کرنا، ۳۰ افرادِ خانہ کی جلا وطنی، باپ بھائیوں اور رشتہ داروں کو انسانیت سوز ٹارچر، جائیداد کو ضبط کرنا، یہ سب کچھ دیکھا اور آج بھی میرے گھر والوں کو بہت کچھ سہنا پڑ رہا ہے اور یہ تحریکوں کا خاصہ ہے اور اللہ کے دربار میں قبولیت کی دعا کرتے ہوئے وَاسْتَعِیْنُوْ بِاالصَّبْرِ وَالصَّلوٰۃِ کے مصداق کھڑے ہیں۔

جنرل مشرف صاحب کی معذرت خواہانہ، بزدلانہ اور ناقص پالیسی نے نہ صرف مسئلہ کشمیر کو کافی نقصان پہنچایا بلکہ مملکت ِخداداد پاکستان کو بھی نہ ختم ہونے والی دہشت گردی کے دلدل میں پھنسا دیا اور دشمنوں نے کافی فائدہ
اُٹھایا

س:- کشمیر کے حوالے سے مشرف دور کی کشمیر پالیسی اور آج کی حکومت کی کشمیر پالیسی میں کوئی واضح فرق؟

ج:- جنرل مشرف صاحب کی معذرت خواہانہ، بزدلانہ اور ناقص پالیسی نے نہ صرف مسئلہ کشمیر کو کافی نقصان پہنچایا بلکہ مملکت ِخداداد پاکستان کو بھی نہ ختم ہونے والی دہشت گردی کے دلدل میں پھنسا دیا اور دشمنوں نے کافی فائدہ اُٹھایا۔ پاکستان کی موجودہ عسکری قیادت کی پالیسی فی الحال سابقہ پالیسی سے بہت مختلف اورمثبت نظر آرہی ہے۔ مسئلہ کشمیر ایک بار پھر پاکستان کی خارجہ پالیسی کا مرکزی نکتہ بنتا جا رہا ہے۔ اگر چہ سشما سوراج کے دورہ پاکستان کے بعد کچھ سوالات جنم لے رہے ہیں تاہم گزشتہ کچھ عرصے میں پاکستان نے اس مسئلہ کو بار بار جارحانہ انداز میں بین الاقوامی فورمز پر اُٹھایا ہے۔ حکومت پاکستان کی اس پالیسی کو ہم خاصی اہمیت دیتے ہوئے قابل تحسین سمجھتے ہیں۔ پاکستان کی عسکری قیادت بھی مسئلہ کشمیر کو بھارت اور پاکستان کے مابین تمام تنازعات میں اہم مسئلہ قرار دیتی نظر آرہی ہے اور عسکری قیادت نے بغیر کسی لاگ لپیٹ کے دو ٹوک الفاظ میں مکرر یہ بیانات دیئے ہیں کہ اگر کشمیر کا مسئلہ فوری طور پر جموں و کشمیر کے عوام کی اُمنگوں اور خواہشات کے مطابق حل نہیں کیا گیا تو یہ خرمن امن کو آگ لگانے کا باعث بن سکتا ہے اور مسئلہ کشمیر حل کئے بغیر بھارت کے ساتھ امن قائم نہیں ہوسکتا ہے۔ البتہ یہ کہنا میں ضروری سمجھتا ہوں کہ پاکستان کے اربابِ اقتدار و اختیار پر خواہ سیاسی ہو یا عسکری مجاہدین جموں و کشمیر کے ساتھ ساتھ وہاں کے مظلوم و مقہور عوام کا ہر محاذ خواہ سیاسی ہو، سفارتی ہو، اخلاقی ہو یا عسکری سپورٹ کرنا فرض ہے۔

س:- نریندر مودی نے کشمیر کی تحریک آزادی کے بارے میں جو جارحانہ رویہ اختیار کیا ہے، اس کے بارے میں آپ کیا کہیں گے ؟جموں کشمیر میں بی جے پی اور مفتی سعید نے کی مخلوط حکومت کے بارے میں آپ کی رائے کیا ہے؟

ج:- نریندر مودی ایسے دہشت گرد وزیر اعظم ہیں جس کے ناپاک ہاتھ بے گناہ مسلمانوں کے خون سے رنگے ہوئے ہیں اور واقعی وہ بھارت کو ہندو دیش میں تبدیل کرنا چاہتا ہے۔ بھارت کے جو مسلمان ہندوؤں سے زیادہ ہندوستانی تھے، اُن سے بھی آج کہا جا رہا ہے کہ پاکستان بھاگ جاؤ۔ کشمیر کی تحریک آزادی کے بارے میں سابقہ حکومتوں کا بھی جارحانہ رویہ تھا اور آج ذرا اس رویہ میں تیزی آئی ہوئی لگتی ہے کیونکہ بی جے پی اور شیو سینا کا نعرہ ہی یہ ہے ’ہندوستان میں رہنا ہے، رام رام کہنا ہے، ہندو بن کر رہنا ہے وغیرہ۔ اسی رویہ سے ہماری جدوجہد میں اُبال اور اُبھار آئے گا انشاء اللہ اسی جارحانہ رویہ سے آج جموں و کشمیر کے مرد و زن، بچے بزرگ کھل کر بھارتی غاصبانہ قبضہ سے آزادی چاہتے ہیں۔ بی جے پی اور پی ڈی پی کی مخلوط حکومت ہو یا نیشنل کانفرنس اور کانگریس کی یا اور کسی اتحاد کی، سب ایک ہی تھیلے کے چٹے بٹے ہیں اور بھارت کے ناپاک منصوبوں اور خاکوں میں اپنی لیلیٰ ٔاقتدار کی خاطر رنگ بھر رہے ہیں اور ہر کوئی جموں و کشمیر کے مظلوم عوام کے سینوں پر ظلم، جبر اور قہر کا مونگ دل رہا ہے۔

س:- کا نٹے کو کانٹے سے نکالا جائے گا یہ بیان بھارتی وزیر دفاع منوہر پاری کر کا حال ہی میں آیا ہے۔۔ آپ اس بیان کوکس طرح لے رہے ہیں؟

ج:- یہ کوئی نئی بات نہیں ہے۔ منوہر پاریکر سے پہلے بھی بھارتی نیتا اور عسکری تھنک ٹینکس (Think Tanks) یہ نسخہ جموں و کشمیر میں آزما چکے ہیں کہ ہم دہشت گردی کا مقابلہ دہشت گردی سے کریں گے۔ 1995ء سے لیکر 1997ء تک مسلم مجاہدین اور اخوانیوں کے لباس میں ان زرخرید ایجنٹوں کے ذریعے اسی منصوبے پر عمل پیرا ہوئے تھے۔ اس پر مستزاد اپنے فوجیوں کو بھی سادہ لباس میں اس پلان کی تکمیل کرنا چاہتی تھی لیکن اللہ کی تائید اور مدد سے سربکف مجاہدین نے اپنی تیر بہدف کارروائیوں سے اس منصوبے کو بیخ و بن سے اُکھاڑ کر ان کے منصوبے پر پانی پھیر دیا ہے اور اُن دہشت گردوں اور اُن کے کمانڈروں کو کیفر کردار تک پہنچایا۔ میں بھی یہ عرض کرنا ضروری سمجھتا ہوں کہ بزدل ہمیشہ اوچھے ہتھکنڈوں اور ہتھیاروں سے حملہ کرتا ہے۔ یہ بھارتی فوج اور منوہر پاریکر کی کھلی ناکامی ہے۔ یہ اُس ہیجڑے کی مثال کے مترادف ہے، جب وہ کسی کو گالی دیتا ہے کہتا ہے میرا بھائی آپ کو ویسا اور تیسا کرے۔ خود وہ اس سے قاصر ہوتا ہے۔ ۱۹۶۷ء کے ترجمان القرآن میں مولانا سید ابوالاعلیٰ مودودیؒ فرماتے ہیں کہ ’’جب بھارت میں مکمل رام راج قائم ہوگا، تو اُس وقت پاکستان اسلامی پاکستان بن جائے گا اور بھارت میں مظلوم مسلمان آزاد ہو جائیں گے۔

س:- نائن الیون کے بعد دنیا بدل گئی ہے، بدلے ہوئے حالات کا آپ کس طرح سامنا کررہے ہیں؟

ج:- نائن الیون 9/11 کو امریکا نے ورلڈ ٹریڈ سینٹر پر مجاہدین کے حملے کا ڈرامہ رچاکر عراق اور افغانستان پر حملہ کرنے کی جو راہ ہموار کی تھی اور نیٹو کے26ممالک کو جدید ٹیکنالوجی سے لیس اپنے ساتھ ملایا تھا، دنیا کے سامنے نہ صرف ایکسپوز ہوا بلکہ ہر محاذ پر اس کو ناکامی کا منہ دیکھنا پڑا۔ دفاعی بجٹ میں سو فیصداضافے کی وجہ سے امریکا قرض تلے دب چکا ہے۔ بڑے بڑے بینک اور فیکٹریاں دیوالیہ ہوچکی ہیں۔ بڑے بڑے پلازے خالی ہوگئے ہیں۔ عراق اور افغانستان سے ذلیل و رسوا ہوکر نکل چکا ہے۔ طالبان سے مذاکرات کی بھیک مانگنے پر مجبور ہوا۔ نائن الیون کے بعد دنیا بھر کی جہادی تحریکیں پروان چڑھی ہیں۔ سامراجی اور طاغوتی طاقتیں بظاہر خوبصورت اور حسین نظر آرہی ہیں لیکن ان کے اندر کے زخموں سے تعفن اُٹھ رہا ہے جو پورے ماحول کو گندہ اور پلید کر رہا ہے۔ اللہ کے فضل و کرم سے ہماری مبنی برحق جدوجہد بھی اپنے منطقی منزل کو پہنچ جائے گی۔ ان شاء اللہ

س:- بعض دانشوروں اور اہل عقل کی رائے ہے کہ موجودہ عالمی تناظر میں مقبوضہ کشمیر میں اب عسکریت کی گنجائش نہیں رہی ہے۔ آپ کی کیا رائے ہے؟

ج:- میں بڑے ادب و احترام کے ساتھ ایسے دانشوروں اور اہل عقل کی رائے پر ماتم کرتا ہوں جو کہتے ہیں کہ موجودہ عالمی منظر نامے میں مقبوضہ جموں و کشمیر میں اب عسکریت کی گنجائش نہیں رہی ہے۔ کیا وہ نہیں جانتے ہیں کہ42 سالہ پُرامن جدوجہد کی ناکامی کے بعد ہم نے مسلح جدوجہد شروع کرکے مسئلہ کشمیر جو اقوام متحدہ کے سرد خانے میں پڑا ہوا تھا، عالمی فلیش پوائنٹ بنایا ہے۔ ایسے ہی اہل دانش اور اہل عقل عراق، افغانستان، فلسطین اور جموں و کشمیر میں سامراجی طاقتوں کی سرکاری دہشت گردی کو جواز فراہم کرتے ہیں۔ جس دہشت گردی میں لاکھوں بے گناہ انسانوں کو لقمۂ اجل بنایا گیا اور کھربوں ڈالر کی جائیدادوں کو خاکستر، سینکڑوں بستیوں کو تاخت و تاراج اور چادر اور چار دیواری کو پامال کر دیا گیا۔ دنیا کے دوسرے اقوام کے مسائل کو آنِ واحد میں حل کیا گیا(مشرقی تیمور، جنوبی سوڈان) کیونکہ وہ مسلمانوں کا نہیں عیسائیوں کا مسئلہ تھا۔ Diamond cuts Diamond کے مصداق عسکری غرور کو عسکری جدوجہد ہی سے ختم کیا جا سکتا ہے۔ پاک بھارت کے مابین150مرتبہ مذاکرات ہوئے لیکن نتیجہ ’کھودا پہاڑ نکلا چوہا‘ کے مصداق 2008ء، 2009ء اور2010ء کی فقید المثال پُرامن احتجاجی ریلیاں، جلسے اور جلوس لیکن drop seen انتہائی مایوس کن اور حوصلہ شکن۔ مولانا سید ابو الااعلیٰ مودودیؒ نے ۱۹۶۵ء میں فرمایا ہے کہ مسئلہ کشمیر صرف جہاد سے حل ہوگا اور بھارت کا غرور مسلح جدوجہد ہی سے پیوند خاک ہوگا ان شاء اللہ۔ مسلمانوں کا کوئی بھی جائز مسئلہ مذاکرات یا بات چیت سے حل ہوا ہے نہ ہوگا۔ مسئلہ کا ایک ہی حل․․․ الجہاد۔

س:- کنٹرول لائن پر باڑ ھ لگا دی گئی ہے، مجاہدین کی نقل و حرکت پر قدغن ہے، ان حالات میں جہاد کشمیر کا آپ کیا مستقبل دیکھ رہے ہیں؟

ج:- بھارتی فوج کے افسروں اور اُن کے فوجیوں سے ہم نے ماضی میں بھی بہت سارے ہتھیار اور گولہ بارود خریدا ہے اور خریدتے ہیں اور آج بھی وہ عمل جاری ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ ہمارے سربکف مجاہدین بھارتی بزدل فوجیوں اور ٹاسک فورس کے نا اہل سپاہیوں سے ہتھیار چھینتے ہیں۔ 2013ء سے لیکر آج تک ہمارے مجاہدین نے فوجیوں سے73کلاشنکوف اوردس انساس (Insaas) رائفلیں چھین لی ہیں اور بھی بہت سارے ذرائع سے مجاہدین تک سامان حرب و ضرب پہنچا رہے ہیں۔

س:- دنیا بھر میں آزادی کی تحریکوں نے فدائی حملوں سے قابض افواج کے مورال کو کافی حد تک گرایا ہے، لیکن آپ کی تنظیم فدائی حملوں کو جائز نہیں سمجھتی ہے۔ کیوں؟

ج:- ہماری تنظیم فدائی حملوں کو ناجائز نہیں سمجھتی ہے۔ ہمارے مجاہدین میدان کارزار میں اپنے سروں پر کفن باندھے کیل کانٹے سے لیس ۸ لاکھ بھارتی فوجیوں کا مقابلہ کر رہے ہیں۔ یہ مجاہدین فدائی نہیں تو اور کیا ہیں۔ فدائی اور خودکش میں واضح فرق ہے۔ خودکشی کے ہم مخالف ہیں اس لئے کہ یہ زندگی سے اورمصائب سے تنگ آکر کی جاتی ہے، جبکہ فدائی دشمن کو بہت زیادہ نقصان پہنچا کر بچ نکلنے میں کامیاب بھی ہو جاتا ہے۔ 1999ء میں نتونسہ ہندوارہ میں بریگیڈ کیمپ میں فدائی حملہ کرکے ہمارے مجاہدین نے کیمپ ہی کو تباہ و برباد کر دیا۔ بجبہاڑہ اسلام آباد میں1992ء میں دو بنکروں پر حملہ کرکے دونوں کو تباہ و برباد کرکے ۱۲ فوجیوں کو واصل جہنم کر دیا۔ تُرمکھ لولاب میں1999ء میں ہمارے فدائین نے فوجی کیمپ کو اُڑا دیا۔ ٹنکی پورہ ڈاروسہ فوجی کیمپ پر ہمارے فدائی مجاہدین نے حملہ کرکے پورے فوجی کیمپ کو تباہ کر دیا۔

س:- عام تاثر یہ ہے کہ پاکستان تحریک کشمیر سے مخلص نہیں، باربار کشمیر پالیسی بدل کیوں جاتی ہے؟

ج:- پاکستان مسئلہ کشمیر کا ایک اہم فریق ہے اور پاکستان کی سالمیت اور Integrity کیلئے کشمیر کی آزادی ناگزیر ہے۔ اس مسئلہ کے ساتھ کسی قسم کی سودا بازی یا compromise پاکستان کے لئے انتہائی نقصان دہ ثابت ہوگی۔ سابقہ حکومتوں کے ادوار میں کشمیر پالیسی میں تبدیلیاں لائی گئیں۔ اس کی بنیادی وجہ عالمی دباؤ اور پاکستان کی اندرونی صورت حال رہی ہے۔ عسکری اور سیاسی قیادت دو مختلف ٹریکوں پر چل رہے تھے جس کی وجہ سے مسئلہ کشمیر کو کافی حد تک نقصان پہنچا ہے۔ پاکستان کے 18کروڑ عوام کے مؤقف میں مسئلہ کشمیر کے حوالے سے کبھی تبدیلی آئی ہے نہ آئندہ آسکتی ہے۔

کیا اہلِ دانش نہیں جانتے ہیں کہ42 سالہ پُرامن جدوجہد کی ناکامی کے بعد ہم نے مسلح جدوجہد شروع کرکے مسئلہ کشمیر جو اقوام متحدہ کے سرد خانے میں پڑا ہوا تھا، عالمی فلیش پوائنٹ بنایا ہے

س:- نوے کی دہائی والی حزب المجاہدین اور آج کی حزب المجاہدین۔ ۔ ۔ کوئی فرق محسوس کررہے ہیں؟

ج:- نوے کی دہائی والی حزب المجاہدین اور آج کی حزب المجاہدین میں واضح فرق نظر آتا ہے۔ نوے کی دہائی میں جب مسلح جدوجہد کا آغاز ہوا تو سب سمجھتے تھے کہ آزادی کل یا پرسوں ملے گی۔ بھارت چند دنوں میں کشمیر کو چھوڑ دے گا نہ کوئی ظلم ہوگا نہ مار دھاڑ، گرفتاری ہوگی نہ انٹروگیشن، نہ ٹارچر نہ مخبری، کیونکہ ساراعوام مسلح جوانوں کے پشت پر نظر آرہا تھا۔ مجاہدین قوم کے ہیرو اور مافوق الفطرت سمجھے جاتے تھے۔ مجاہدین کو پھول مالائیں پہنائی جاتی تھیں، وازوان کھلائے جا رہے تھے۔ عسکری لوگوں کے ہاتھوں میں لیل و نہار تھے، عسکریت کا طوطی ہر جگہ بولتا تھا۔ قوم کے نوجوان یہ دیکھ کر بلا سوچے سمجھے شعوری اور غیر شعوری طور اس سیلاب میں بہہ گئے۔ جب بھارت نے ظلم و بربریت کا بازار گرم کر دیا تو وہی جوان مسلح جدوجدہ سے کھسکتے چلے گئے۔ بندوق کو خیر باد کیا، سرندڑ کاگراف بڑھتا چلا گیا، رینی گیڈز وجود میں آگئے۔ اس کے برعکس آج جو مجاہدین ہماری صفوں میں شامل ہیں انہوں نے اسی جدوجہد میں آنکھ کھولی، پروان چڑھے، اتار چڑھاؤ دیکھے، اپنی آنکھوں کے سامنے بھارت کا ظلم دیکھا، معصوم لوگ شہید ہوتے دیکھے، اپنی ماؤں بہنوں اور بیٹیوں کی عصمت کو تار تار ہوتے دیکھیں، بستیوں کی بستیاں خاکستر ہوتے دیکھیں۔ اس سب کچھ کے باوجود انہوں نے یہ پُرخار راستہ سوچ سمجھ کر اختیار کیا۔ اسی لئے آج حزب المجاہدین کی صفوں میں اعلیٰ تعلیم یافتہ، بلند حوصلہ، شہادت کے جذبہ سے سرشار مجاہدین شامل ہیں، جن پر ہمیں فخر اور ناز ہے۔ آج مجاہدین کے اندر سرنڈر کا رجحان ختم ہوچکا ہے، منصوبہ بند کارروائیوں کے ذریعے دشمن کو ناکوں چنے چبوا رہے ہیں۔

س:- مسئلہ کشمیر کے حوالے سے موجودہ حالات میں پاکستان کو کیا کرنا چاہیے، بنیادی پالیسی میں کیا تبدیلی لائی جا سکتی ہے؟

ج:- پاکستان کو سیاسی اور سفارتی محاذ پر اعتماد کے ساتھ جارحانہ انداز میں مسئلہ کشمیر کو عالمی فورموں میں اُٹھانا چاہئے۔ بھارت کشمیریوں پر جو ظلم و ستم ڈھا رہا ہے، اس کو پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا کے ذریعے دنیا کے سامنے اجاگر کرکے بھارت کو ایکسپوز کروانا چاہئے۔ بھارت نے پاکستان کو دو لخت کرنے کیلئے جو کردار1971ء میں مشرقی پاکستان میں ادا کیا، حالانکہ بھارت کیلئے کوئی جواز نہیں بنتا تھا کہ وہ مشرقی پاکستان میں اپنی فوج مکتی باہنی کے لباس میں داخل کرکے بنگلہ دیش معرض وجود میں لاتا۔ پاکستان کو یہی کردار کشمیر میں ادا کرنا چاہئے، کیونکہ پاکستان مسئلہ کشمیر کا اہم اور بنیادی فریق ہے۔ 68 سال گزرنے کے باوجود بھارت اور اقوام متحدہ کشمیریوں سے کیے گئے وعدے کو نبھانے میں ناکام ہوچکے ہیں۔ جہاں سیاسی اور سفارتی محاذ پر پاکستان کو مسئلہ کشمیر کے حوالے سے حمایت کرنی چاہئے، وہاں عسکری محاذ پر بھی مجاہدین کشمیر کا بھرپورساتھ دینے سے جی نہیں چرانا چاہئے۔ معذرت خواہانہ انداز کو چھوڑ کر جارحانہ انداز اختیار کرنا چاہئے، کیونکہ لاتوں کے بھوت باتوں سے نہیں مانتے ہیں۔

س:- ناں ناں کر کے، بھارتی قیادت نے مذاکرات کی ہاں کر دی۔ سشما سوراج بھی آئی اور چلی گئیں۔ ۔ ۔ ان مذاکرات کو آپ کس نظر سے دیکھتے ہیں۔ کیا دو طرفہ مذاکرات سے مسئلہ کشمیر کا حل نکالا جا سکتا ہے؟

ج:-میں پہلے ہی عرض کرچکا ہو ں کہ مذاکرات کی میز آج تک بہت بار سجائی گئی ہے۔ وزرائے اعظم، وزرائے خارجہ اور خارجہ سیکرٹریز کی سطح تک مذاکرات ہوتے ہیں لیکن کوئی خاطر خواہ مثبت نتیجہ نہیں نکلا ہے کیونکہ بھارت سنجیدہ اور مخلص تھا نہ ہے اور نہ ہوگا۔ وہ صرف دنیا کی آنکھوں میں دھول جھونکنے کیلئے کر رہا ہے۔ سشما سوراج آئے یا اور کوئی، توقع رکھنا وقت کا زیاں اور خود فریبی ہے۔ مسئلہ کشمیر سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق یا جموں و کشمیر کے عوام کی خواہشات اور اُمنگوں کے مطابق حل ہونا چاہئے۔ یہ کسی قطعہ زمین کا مسئلہ نہیں ہے بلکہ ڈیڑھ کروڑ انسانوں کی تقدیر کا مسئلہ ہے اور مذاکرات میں جموں و کشمیر کی مسلمہ قیادت بنیادی اور اہم فریق کی حیثیت رکھتی ہے۔

س:- کیا آپ اب بھی یہی سمجھتے ہیں کہ کشمیر جہاد سے آزاد ہو گا یا آپ کو کوئی متبادل صورت بھی نظر آرہی ہے؟

ج: میرا راستہ تو جہاد ہے مجھے آج بھی یقین ہے کہ ریاست جموں کشمیر کی آزادی جہاد فی سبیل اللہ ہی سے ممکن ہے۔ اگرچہ تحریک آزادی میں سیاست اور سفارتی محاذ کا اپنا

کرداراور افادیت ہے لیکن بیرونی فوجی قبضہ سوائے مسلح جدوجہد کے نہ کبھی ختم ہوا ہے ا ور نہ ہی مقبوضہ کشمیر میں ختم ہوتا نظر آتا ہے۔ ہم اس نتیجے پر پہنچے کہ غلام کا کوئی ووٹ نہیں ہوتا، لہٰذا غلامی کے بندھن توڑنے کے لیے قوم کی متحدہ جدوجہد ناگزیر ہے۔ اگر متحدہ قیادت کے زیر سایہ ریاست گیر اورمنظم مسلح جدوجہد ہوگی، توانڈیا کشمیر سے بہت جلد نکل جائے گا۔


متعلقہ خبریں


ایران میں حکومت مخالف مظاہرے جاری ، فائرنگ سے کئی مظاہرین زخمی وجود - منگل 14 جنوری 2020

ایران میں حکومت کی طرف سے یوکرین کا مسافر جہاز مارگرائے جانے کی غلطی تسلیم کرنے بعد ملک میں حکومت کے خلاف مظاہرے جاری ہیں جن میں سیکڑوں افراد نے ایرانی رجیم کے خلاف نعرے بازی کی۔ اس موقع پر پولیس اور سیکیورٹی فورسز کی طرف سے پرتشدد حربے استعمال کیے گئے جس کے نتیجے میں کئی مظاہرین زخمی ہوئے ہیں۔ سماجی کارکنوں کی طرف سے سوشل میڈیا مظاہروں حکومت مخالف ریلیوں کی تصاویر اور ویڈیوز پوسٹ کی گئی ہیں جن میں مظاہرین کو حکومت کے خلاف نعرے لگاتے دیکھا جا سکتا ہے ۔ ویڈیوز میں پولیس اور قا...

ایران میں حکومت مخالف مظاہرے جاری ، فائرنگ سے کئی مظاہرین زخمی

ہیری اورمیگھان کو کینیڈا اوربرطانیہ میں رہنے کی عبوری اجازت مل گئی وجود - منگل 14 جنوری 2020

ملکہ نے کہا ہے کہ شاہی خاندان نے سندرنگھم پر پرنس ہیری اور میگھان مرکل کے مستقبل کے حوالے سے مثبت بحث میں حصہ لیا مگر یہ اعتراف بھی کیا کہ وہ جوڑے کو شاہی خاندان کے کل وقتی رکن کی حیثیت دینے کو ترجیح دیں گی۔ تصاویر میں دکھایا گیا تھا کہ پرنس ہیری، پرنس ولیم اور پرنس چارلس ہرمیجسٹی سے دو گھنٹے جاری رہنے والی بحرانی ملاقا ت کے بعد علیحدہ علیحدہ کاروں میں واپس جا رہے ہیں۔ ڈیوک آف سسیکس نے شاہی خاندان کے فردکی حیثیت ختم کرنے کے بعد ہر میجسٹی، اپنے بھائی اور اپنے والد کا پہلی بار ...

ہیری اورمیگھان کو کینیڈا اوربرطانیہ میں رہنے کی عبوری اجازت مل گئی

امریکی صدر کی ایران میں جاری مظاہروں کی حمایت وجود - پیر 13 جنوری 2020

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے فارسی زبان میں ٹویٹر پر پوسٹ کردہ ایک ٹویٹ میں ایرانی حکومتکو کڑی تنقید کا نشانہ بنانے کے ساتھ ایرانی عوام اور حکومت مخالف مظاہروںکی حمایت کی ہے ۔ ان کا کہنا ہے کہ دنیا کی نظریں اس وقت ایران پرلگی ہوئی ہیں۔ ہم ایران کو مزید قتل عام کی اجازت نہیں دیں گے ۔امریکی صدر کی طرف سے ایرانی عوام کے ساتھ اظہار یکجہتی پرمبنی بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب گزشتہ روز ایرانی شہروں میں اس وقت لوگ سڑکوں پرنکل آگئے جب ایرانی پاسداران انقلاب نے اعتراف کیا کہ 8جنو...

امریکی صدر کی ایران میں جاری مظاہروں کی حمایت

پاسداران انقلاب ایران کے داعشی ہیں ، تہران میں عوام کی نعرے بازی وجود - پیر 13 جنوری 2020

ایران کے دارالحکومت تہران میں اس وقت لوگوں کی بڑی تعداد حکومت کے خلاف سڑکوں پر نکل آئی جب تہران نے سرکاری سطح پر اعتراف کیا کہ حال ہی میں یوکرین کا ایک مسافر جہاز میزائل حملے کے نتیجے میں حادثے کا شکار ہوا تھا۔ مظاہرین سخت مشتعل اورغم وغصے میں تھے ۔ انہوں نے پاسداران انقلاب کے خلاف شدید نعرے بازی کرتے ہوئے ان کے خلاف' اے ڈکٹیٹر ۔۔۔ تم ایران کے داعشی ہو' کے نعرے لگائے ۔ایرانی اپوزیشن کے ترجمان ٹی وی چینل ایران انٹرنیشنل کی طرف سے تہران میں نکالے جانے والے جلوس کی فوٹیج دکھائی ...

پاسداران انقلاب ایران کے داعشی ہیں ، تہران میں عوام کی نعرے بازی

مظاہروں میں شرکت پر ایران میں برطانوی سفیر کی گرفتاری اور رہائی وجود - پیر 13 جنوری 2020

ایرانی پولیس نے حکومت کے خلاف نکالے گئے ایک جلوس میں شرکت کرنے پرتہران میں متعین برطانوی سفیر روب مکائیر کو حراست میں لے لیا، تاہم بعد ازاں انہیں رہا کردیا گیا ۔برطانوی حکومت نے تہران میں اپنے سفیر کی گرفتاری کو بین الاقوامی قوانین اور سفارتی آداب کی سنگین خلاف ورزی قرار یا ہے ،جبکہ امریکا نے بھی تہران میں برطانوی سفیر کی گرفتاری کو سفارتی آداب کی توہین قراردیتے ہوئے تہران پر زور دیا ہے کہ وہ اس اقدام پر برطانیہ سے معافی مانگے ۔ایرانی سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کی مقرب ...

مظاہروں میں شرکت پر ایران میں برطانوی سفیر کی گرفتاری اور رہائی

یوکرین کا طیارہ مار گرانے پرایرانی اپوزیشن کا خامنہ ای سے اقتدار چھوڑنے کا مطالبہ وجود - پیر 13 جنوری 2020

ایران میں پاسداران انقلاب کی طرف سے یوکرین کا مسافر ہوائی جہاز مار گرائے جانے کے بعد نہ صرف پوری دنیا بلکہ ایرانی عوام اور سیاسی حلقوں میں بھی حکومت کے خلاف سخت غم وغصے کی لہر دوڑ گئی ہے ۔ ایران کی اپوزیشن جماعتوں نے موجودہ حکومت کو یوکرین کا طیارہ مار گرانے کا ذمہ دار قرار دیتے ہوئے سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای سے اقتدار چھوڑنے کا مطالبہ کیا ہے ۔العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق ایران کی 'گرین موومنٹ' کے رہنما مہدی کروبی نے ایک بیان میں کہا کہ سپریم لیڈر ملک کی قیادت کے اہل نہیں ...

یوکرین کا طیارہ مار گرانے پرایرانی اپوزیشن کا خامنہ ای سے اقتدار چھوڑنے کا مطالبہ

 امریکاکے دشمنوں کے لیے کوئی نرمی نہیں برتی جائے گی، ڈونلڈ ٹرمپ وجود - جمعه 10 جنوری 2020

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کہا ہے کہ میری انتظامیہ اسلامی بنیاد پرست دہشتگردی کو شکست دینے سے باز نہیں آئے گی ، امریکہ کے دشمنوں کے لیے کوئی نرمی نہیں برتی جائے گی۔ تفصیلات کے مطابق امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا ایک اور مسلم مخالف بیان منظر عام پر آیا ہے ، ٹوئیٹر پیغام میں امریکی صدر ٹرمپ نے دہشتگردی کو مذہب اسلام کے ساتھ جوڑنے کے اپنے ماضی کے بیانات کو دہراتے ہوئے کہا ہے کہ میری انتظامیہ اسلامی بنیاد پرست دہشتگردی کو شکست دینے سے کبھی باز نہیں آئے گی۔ انہوں نے کہا کہ ان کی انتظامیہ...

 امریکاکے دشمنوں کے لیے کوئی نرمی نہیں برتی جائے گی، ڈونلڈ ٹرمپ

اسرائیلیوں کی اکثریت اپنی قیادت کو کرپٹ سمجھتی ہے ، سروے وجود - جمعه 10 جنوری 2020

اسرائیل میں کیے گئے رائے عامہ ایک تازہ جائزے میں بتایا گیا ہے کہ اسرائیلیوں کی اکثریت موجودہ صہیونی ریاست کو کرپٹ سمجھتی ہے ۔ مرکزاطلاعات فلسطین کے مطابق''ڈیموکریٹک اسرائیل''انسٹیٹوٹ کی طرف سے کیے گئے سروے میں بتایا گیا کہ 58 فی صد یہودی آباد کاروں کاخیال ہے کہ ان کی لیڈر شپ بدترین کرپٹ ہے ۔اس سروے میں 24 فی صد اسرائیلیوں کا کہنا ہے کہ وہ اپنی قیادت کوکرپٹ سمجھتے ہیں جب کہ 16 فی صد نے کہا کہ اسرائیلی قیادت کرپٹ نہیں۔رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ 55 فی صد اسرائیلیوں کا کہنا ہے کہ ...

اسرائیلیوں کی اکثریت اپنی قیادت کو کرپٹ سمجھتی ہے ، سروے

امریکی ایوان نمائندگان میں ٹرمپ کے جنگ کے اختیارات محدود کرنے کی قرارداد منظور وجود - جمعه 10 جنوری 2020

امریکی ایوان نمائندگان میں صدر ٹرمپ کے ایران کے خلاف جنگ کرنے کے اختیارات کو محدود کرنے کی قرار داد کو منظور کر لیا گیا۔قرار داد ڈیمو کریٹس کے اکثریتی ایوان میں 194 ووٹوں کے مقابلے میں 224 ووٹوں سے منظور کی گئی۔ قرار داد کا مقصد ایران کے ساتھ کسی بھی تنازع کی صورت میں عسکری کارروائی کے لیے کانگریس کی منظوری کو لازمی قرار دینا ہے ، سوائے اس کے کہ امریکا کو کسی ناگزیر حملے کا سامنا ہو۔ٹرمپ سے جنگ کا اختیار واپس لینے کا ڈیموکریٹس کا بل اگلے ہفتے سینیٹ میں بھیجے جانے کا امکان ہے ...

امریکی ایوان نمائندگان میں ٹرمپ کے جنگ کے اختیارات محدود کرنے کی قرارداد منظور

حرم شریف میں زمزم کے 15 ہزار کولر اور نئی قالینوں کا اضافہ وجود - جمعه 10 جنوری 2020

مسجد الحرام کی انتظامیہ نے حرم شریف کے خارجی صحنوں، دالانوں اور راہداریوں میں آب زمزم کے کولرز کی تعداد میں 15 ہزار کا اضافہ کر دیا ۔ غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق مسجد الحرام انتظامیہ کے ماتحت زمزم سبیل کے ادارے کے ڈائریکٹر مشاری المسعودی نے میڈیا سے گفتگو میں بتایا کہ ہمارے ادارے نے سٹیل اور سنگ مرمر والی آب زمزم کی سبیلیں بھی شروع کردی ہیں جبکہ حرم شریف میں اہم مقامات پر بھی آب زمزم کے کولرز کی تعداد میں 15 ہزار کولرش کا اضافہ کر دیا ہے جبکہ مسجد الحرام شریف کے دالانوں او...

حرم شریف میں زمزم کے 15 ہزار کولر اور نئی قالینوں کا اضافہ

مغربی میڈیا نے ایران میں تباہ یوکرینی طیارے کی فوٹیج جاری کردی وجود - جمعه 10 جنوری 2020

مغربی میڈیا نے ایران میں تباہ یوکرینی طیارے کی فوٹیج جاری کردی ،یوکرین کی ایئرلائن کو تہران ایئرپورٹ کے قریب نشانا بنایا گیا تھا۔ تفصیلات کے مطابق امریکی اخبار نے یوکرینن ایئرلائن کے جہاز کی تباہ ہونے کی فوٹیج حاصل کرلی ،فوٹیج میں یوکرینن ایئر لائنز کو ٹیک آف کے فوری بعد میزائل سے تباہ ہوتے دیکھا جاسکتا ہے ۔فوٹیج میں واضح دیکھا جاسکتا ہے کہ یوکرینن ایئر لائن میزائل لگنے سے تباہ ہوئی، جہاز فنی خرابی کے باعث تباہ نہیں ہوا ہے ۔امریکی صدر نے الزام عائد کیا ہے کہ طیارہ کو نشانہ بن...

مغربی میڈیا نے ایران میں تباہ یوکرینی طیارے کی فوٹیج جاری کردی

عراق ،بغداد میں امریکی سفارتخانے پر راکٹوں سے حملہ وجود - جمعرات 09 جنوری 2020

عراقی دارالحکومت میں امریکی سفارتخانے پر راکٹوں سے حملہ کیا گیا، کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق عراق کے دارالحکومت بغداد میں امریکی سفارتخانے پر راکٹوں سے حملہ کیا گیا، امریکی سفارتخانے کے گرین زون میں 3 راکٹ داغے گئے جبکہ گرین زون میں 2 راکٹ امریکی سفارتخانے کے قریب گرے تاہم امریکی سفارتخانے کو راکٹ حملے سے کوئی نقصان نہیں پہنچا،راکٹ گرنے سے 2 دھماکے ہوئے اور خطرے کے سائرن بجائے گئے ،ایک راکٹ امریکی سفارت خانے سے سو میٹر فاصلے پر گرا۔ وائٹ ہائوس یا...

عراق ،بغداد میں امریکی سفارتخانے پر راکٹوں سے حملہ