وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

یوکرین کی پارلیمان میدان جنگ بن گئی

اتوار 13 دسمبر 2015 یوکرین کی پارلیمان میدان جنگ بن گئی

یوکرین کی پارلیمان کا ایوان بالا میدان جنگ بن گیا جب ایک رکن اسمبلی نے وزیر اعظم ارسینی یاسینوک کو تقریر کے آغاز سے قبل ہی چبوترے سے اتارنے کی کوشش کی جس پر زبردست ہنگامہ آرائی ہوئی۔

وزیر اعظم یاسینوک حکومت کے کارگزاری کی سالانہ رپورٹ پیش کرنے والے تھے کہ صدر پیترو پوروشنکو کے سیاسی اتحاد کی نمائندگی کرنے والے رادا پارٹی کے اولیگ برنا ایک خوبصورت گلدستے کے ساتھ ان کی جانب بڑھے۔ انہوں نے پہلے تو وزیراعظم کو گلدستہ پیش کیا اور پھر ان کو پیچھے سے جاکر پکڑ لیا اور زبردستی نیچے اتار دیا۔ ان کی یہ حرکت دیکھ کر دیگر اراکین پارلیمان میدان میں اتر گئے اور گتھم گتھا ہوگئے۔

جس وقت اراکین پارلیمان میں مارا ماری جاری تھی، عین اسی وقت عمارت کے باہر ہزاروں مظاہرین حکومت اور وزیراعظم کے استعفے کا مطالبہ لیے موجود تھے۔ لیکن وزیر اعظم کا کہنا ہے کہ وہ اسی صورت میں مستعفی ہوں گے جب قانون ساز اسمبلی ان کے خلاف ووٹ دے گی۔

اب آپ اراکین پارلیمان کی یہ لڑائی دیکھیں اور ہمارے پاکستان کے سیاست دانوں کو سلام پیش کریں، جنہوں نے ہمیں آج تک قومی اسمبلی میں ایسی لڑائی دیکھنے کا موقع نہیں دیا۔


متعلقہ خبریں


پولیو یورپ بھی پہنچ گیا وجود - بدھ 02 ستمبر 2015

مغربی یوکرین میں پولیو کے دو مریضوں کی تصدیق ہوئی ہے، جو 2010ء کے بعد یورپ میں اس مرض کے اولین شکار ہیں۔ عالمی ادارۂ صحت (ڈبلیو ایچ او) کا کہنا ہے کہ یوکرین کے شمال مغربی علاقے میں ایک 10 ماہ اور ایک چار سال کے بچے میں پولیو وائرس کی تصدیق ہوئی ہے۔ ڈبلیو ایچ او ترجمان اولیور روسن بایر کا کہنا ہے کہ یہ 1996ء کے بعد یوکرین میں پولیو کے انکشاف کا پہلا واقعہ ہے۔ پولیو کے خاتمے کی عالمی مہم کے مطابق یوکرین میں ویکسین کے ناکافی استعمال کی وجہ سے پولیو وائرس کا خطرہ بڑھ گیا ...

پولیو یورپ بھی پہنچ گیا