وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

خوشبو سی آ رہی ہے ادھر زعفران کی

جمعرات 05 نومبر 2015 خوشبو سی آ رہی ہے ادھر زعفران کی

دنیا میں محض چند مقامات ہی ایسے ہیں جہاں سال میں صرف ایک ہفتے کے لیے یہ خوبصورت اُودے پھول کھلتے ہیں۔ انہیں بہت ہی حفاظت اور نفاست کے ساتھ توڑا جاتا ہے اور پھر ان کے زیرہ دان نکالے جاتے ہیں جو زعفران کے طور پر دنیا بھر میں فروخت ہوتے ہیں۔

فصل کی “کٹائی” کا یہ عمل بڑا اکتا دینے والا ہوتا ہے کیونکہ پھول بہت ہی مخصوص ماحول میں پیدا ہوتے ہیں اور ان کی پیداوار بھی بہت غیر یقینی ہوتی ہے۔ ہر پھول سے صرف تین زیرہ دان ہی نکلتے ہیں، جنہیں بہت احتیاط کے ساتھ ہاتھوں سے نکالا جاتا ہے۔ صرف ایک گرام زعفران کے لیے ایسے 150 پھول درکار ہوتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ایک پونڈ زعفران کی قیمت 20 ہزار سے ایک لاکھ روپے تک ہوتی ہے۔

یہ تصویریں وادی کشمیر اور ایران کے ان مقامات کی ہیں جہاں زعفران کے پھول اُگتے ہیں ۔

دارالحکومت سری لنکا سے 25 کلومیٹر دور پمپور کے علاقے میں زعفران کے پھول جمع کیے جا رہے ہیں۔ اپنے اعلیٰ ترین زعفران کی وجہ   سے پمپور دنیا بھر میں شہرت رکھتا ہے۔

دارالحکومت سری لنکا سے 25 کلومیٹر دور پمپور کے علاقے میں زعفران کے پھول جمع کیے جا رہے۔ اپنے اعلیٰ ترین زعفران کی وجہ سے پمپور دنیا بھر میں شہرت رکھتا ہے

شمال مشرقی ایران میں تربیت حیدریہ کے مقام پر ایک خاتون زعفران کے پھولوں کو صاف کررہی ہے

شمال مشرقی ایران میں تربیت حیدریہ کے مقام پر ایک خاتون زعفران کے پھولوں کو صاف کررہی ہے

زعفران کی وادی کشمیر کا ایک اور خوبصورت منظر

زعفران کی وادی کشمیر کا ایک اور خوبصورت منظر

وادئ کشمیر اور زعفران

وادی کشمیر اور زعفران

دنیا میں سب سے زیادہ زعفران ایران میں پیدا ہوتا ہے۔ یہ ملک دنیا کی 95 فیصد زعفران کی ضروریات پوری کرتا ہے

دنیا میں سب سے زیادہ زعفران ایران میں پیدا ہوتا ہے۔ یہ ملک دنیا کی 95 فیصد زعفران کی ضروریات پوری کرتا ہے

سری نگر کے قریب واقع زعفران کے کھیتوں میں پھولوں کو خشک کیا جا رہا ہے

سری نگر کے قریب واقع زعفران کے کھیتوں میں پھولوں کو خشک کیا جا رہا ہے

وادئ کشمیر کے قلب زعفران کی کاشت

وادی کشمیر کے قلب زعفران کی کاشت


متعلقہ خبریں


مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت جلد بحال ہوجائے گی، کشمیری رہنما کا دعویٰ وجود - منگل 15 اکتوبر 2019

مقبوضہ کشمیر کی کٹھ پتلی اسمبلی کے رکن اور نیشنل کانفرنس کے رہنما جسٹس ریٹائرڈ حسنین مسعودی نے کہا ہے کہ بھارتی سپریم کورٹ جلد مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت بحال کردے گی۔مقامی ویب سائٹ کو دیئے گے انٹرویو میں جسٹس حسنین مسعودی نے کہا کہ مجھے پورا یقین ہے کہ بھارتی سپریم کورٹ کشمیریوں کی آسانی کے لیے کوئی راستہ نکالتے ہوئے آئین کے آرٹیکل 370 کی منسوخی کے صدارتی آرڈیننس کو منسوخ کرنے کا حکم دیگی۔نیشنل کانفرنس کے رہنما نے کہا کہ بھارتی حکومت، پارلیمنٹ، یہاں تک کہ صدر بھی آئین ...

مقبوضہ کشمیر کی خصوصی حیثیت جلد بحال ہوجائے گی، کشمیری رہنما کا دعویٰ

مسئلہ کشمیر پر پاکستان کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں، ترک اسپیکر وجود - جمعرات 03 اکتوبر 2019

ترک پارلیمنٹ کے اسپیکرمصطفی سینٹوپ نے کہا ہے کہ کشمیر کے مسئلے پر پاکستان کا ساتھ دینا ترکی کی ذمہ داری ہے ۔ ترک پارلیمنٹ سے خطاب کرتے ہوئے اسپیکر مصطفی سینٹوپ نے کہا کہ ہم مسئلہ کشمیر پر پاکستان کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں اور ترکی اس مسئلے پر پاکستان کے ساتھ کھڑا ہونا اپنی ذمہ داری سمجھتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ترک قوم جنگ آزادی کے دوران ہندوستانی مسلمانوں کی مدد کو نہیں بھول سکی اور نہ ہم نے اس دوستی کو بھلایا ہے ۔ترک اسپیکر کا کہنا تھا کہ بھارت نے 5 اگست سے مقبوضہ کشمیر میں کرفی...

مسئلہ کشمیر پر پاکستان کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں، ترک اسپیکر

صدر ٹرمپ کا مسئلہ کشمیر پر ثالثی بیان قابل اعتبار نہیں، نیویارک ٹائمز وجود - جمعرات 03 اکتوبر 2019

امریکی اخبار نیویارک ٹائمز کے اداریے میں کہا گیا ہے کہ اقوام متحدہ مسئلہ کشمیر کو مزید نظرانداز نہیں کر سکتا۔ مودی کے اقدامات نے کشمیریوں کی زندگی مزید اجیرن کر دی ہے ۔ اخبار نے پاکستان کی امن پسند کوششوں کو بھی سراہا ہے ۔مقبوضہ کشمیر کی صورت حال پر نیویارک ٹائمز کے ایڈیٹوریل بورڈ کا واضح موقف، اداریے میں لکھا گیا ہے کہ دوجوہری طاقتیں آمنے سامنے کھڑی ہیں۔ اقوام متحدہ مسئلہ کشمیر کو مزید نظرانداز نہیں کرسکتا۔اخبار نے لکھا کہ بھارت نے پاکستان کی جانب سے مذاکرات کی پیش کش کا مثب...

صدر ٹرمپ کا مسئلہ کشمیر پر ثالثی بیان قابل اعتبار نہیں، نیویارک ٹائمز

مقبوضہ کشمیر میں کیمیائی ہتھیاروں کا استعمال:ایمنسٹی انٹرنیشنل کی چشم کشا رپورٹ شہلا حیات نقوی - اتوار 30 جولائی 2017

انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ایمنسٹی انٹرنیشنل نے اقوام متحدہ میں پیش کردہ اپنی رپورٹ میں مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے مظالم کی پوری طرح عکاسی کرتے ہوئے کہا ہے کہ بھارت مقبوضہ کشمیر میں بدترین دشمنی کی مثال قائم کررہا ہے،رپورٹ میں یہ چشم کشا انکشاف بھی کیاگیا ہے کہ بھارتی فوجی اسرائیل کی خفیہ ایجنسی ’’موساد‘‘ کی مدد سے آزادی کے لیے جدوجہد کرنے اور بھارتی فوج کے مظالم کے خلاف احتجاج کرنے والے کشمیری نوجوانوں کے خلاف کیمیائی ہتھیاراستعمال کررہا ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ کشمی...

مقبوضہ کشمیر میں کیمیائی ہتھیاروں کا استعمال:ایمنسٹی انٹرنیشنل کی چشم کشا رپورٹ

وفاقی کابینہ نے یوم الحاق پاکستان کے دن یوم سیاہ منانے کا سیاہ فیصلہ کرلیا! باسط علی - هفته 16 جولائی 2016

وزیراعظم نوازشریف نے لندن سے واپسی کے بعد بھی طبی جواز بناکر خود کو دارالحکومت اسلام آباد سے دور رکھنے اور لاہور میں قیام کا فیصلہ برقرار رکھا ہے اور ناگزیر حالات میں وفاقی کابینہ کا اجلاس گورنر ہاؤس لاہور میں طلب کیا۔ اگرچہ اس اجلاس میں کم وبیش 113 نکاتی ایجنڈا تھا، مگر بنیادی طور پر یہ اجلاس مقبوضہ کشمیر کے موجودہ حالات پر طلب کیا گیا تھا۔مگر وفاقی کابینہ نے کشمیر کے مسئلے پر ایک ایسی غلطی کی ہے جو نادانستہ قرار دیئے جانے کے باوجود ان کی صلاحیت پر سنگین سوال اُٹھاتی ہے۔اطلا...

وفاقی کابینہ نے یوم الحاق پاکستان کے دن یوم سیاہ منانے کا سیاہ فیصلہ کرلیا!

پہلے بندوق اب پتھر سے مقابلہ ہے، پیپلز ڈیمو کریٹک پارٹی کی صدر محبوبہ مفتی وجود - پیر 14 دسمبر 2015

پیپلز ڈیمو کریٹک پارٹی (پی ڈی پی) کی صدر اور مقبوضہ ریاست جموں و کشمیر کے وزیر اعلیٰ مفتی محمد سعید کی بیٹی محبوبہ مفتی نے بھارتی ٹی وی چینل "آج تک"کو ایک انٹرویو دیتے ہوئے انکشاف کیا ہے کہ بی جے پی کے ساتھ مخلوط سرکار کی تشکیل میں ’حریت کا نفرنس‘ کو بھی اعتماد میں لیا گیا تھا۔انہوں نے تسلیم کیا کہ پہلے بندوق سے مقابلہ تھا اوراب پتھروں سے مقابلہ کرنا پڑ رہا ہے۔ پاکستان کے ساتھ مذاکراتی عمل کو خوش آئند قرار دیتے ہوئے محبوبہ مفتی نے کہا کہ مودی جی کو ضرورت ہے یا نہیں مگر ہمیں...

پہلے بندوق اب پتھر سے مقابلہ ہے، پیپلز ڈیمو کریٹک پارٹی کی صدر محبوبہ مفتی

2010 ء کی کشمیر کہانی!!! کشمیری کیا چاہتے ہیں؟ شیخ امین - پیر 14 دسمبر 2015

پاکستان بھارت میں ان دنوں مذاکرات کا غلغلہ بلند ہوا ہے۔ بھارت کے مزاج اور تاریخی رویئے کو صرفِ نظر کرتے ہوئے پاکستان کی حکمران اشرافیہ اور دانشور جنتا میں بھارت سے تعلقات کی ایک عجیب و غریب ہو ک سی اُٹھی ہے۔ مگر بھارت سے کشمیر متعلق کوئی بھی بات کرنے سے قبل یہ ازبس ضروری ہے کہ یہ جان لیا جائے کہ کشمیری کیا سوچتے ہیں۔ اور وہ مختلف ادوار میں اپنی تحریک آزادی کی حفاظت اور فروغ کے لئے کیا کیا قربانیاں دیتے آئے ہیں۔شیخ امین کی یہ تحریر 2010ء کے ایک واقعے کے تناظر میں ہے جس ن...

2010 ء کی کشمیر کہانی!!! کشمیری کیا چاہتے ہیں؟

مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کی مسلسل ناکامی ہے، وزیراعظم کا اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب وجود - بدھ 30 ستمبر 2015

وزیر اعظم میاں نوازشریف نے نیویارک میں اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسئلہ کشمیر کا حل نہ ہونااقوام متحدہ کی مسلسل ناکامی ہے۔ کشمیر کی تین نسلوں کو شکستہ وعدوں اور جابرانہ اقدامات کے سوا کچھ نہیں ملا۔ وزیراعظم نے اپنے تاریخی خطاب میں نہایت پراعتماد لہجے میں کشمیر پر پاکستان کا تاریخی ، روایتی اور ٹھوس مقدمہ پیش کرتے ہوئے پاک بھارت امن کے لیے چار نکاتی ایک خاکہ بھی پیش کیا۔ جس کے تحت اُنہوں نے کہا ہے کہ 1۔لائن آف کنٹرول (ایل اوسی) پر مکمل جنگ بندی ک...

مسئلہ کشمیر اقوام متحدہ کی مسلسل ناکامی ہے، وزیراعظم کا اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی سے خطاب

چمگادڑ راج وجود - جمعرات 24 ستمبر 2015

بھارت میں آج بھی کچھ نہیں بدلا۔ اکیسویں صدی میں اُبھرنے والے متوسط طبقے سے یہ اُمید کی جارہی تھی کہ وہ فرسودہ اور کہنہ روایتوں کو دانشمندانہ طریقے سے موضوعِ بحث بنا کر نئی روشنی سے بغلگیر ہو گا۔ مگر یہ اُمید خاک میں ملتی جارہی ہے۔ بھارت میں بڑے کے گوشت پر پابندی کا مسئلہ بھی ایک ایسا ہی واقعہ بن کر سامنے آیا ہے۔ حالیہ دنوں میں گوشت پر پابندی کا معاملہ بھارتی مسلمان پہلے سے موجود "گئوماتا" کے اس تصور کے ساتھ باندھ کر نہیں دیکھ رہے بلکہ اِسے نریندر مودی کی جانب سے ہندو تعص...

چمگادڑ راج

مضامین
دوگززمین وجود پیر 06 دسمبر 2021
دوگززمین

سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی! وجود پیر 06 دسمبر 2021
سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی!

چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے! وجود پیر 06 دسمبر 2021
چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے!

دوگززمین وجود اتوار 05 دسمبر 2021
دوگززمین

یورپ کا مخمصہ وجود هفته 04 دسمبر 2021
یورپ کا مخمصہ

اے چاندیہاں نہ نکلاکر وجود جمعه 03 دسمبر 2021
اے چاندیہاں نہ نکلاکر

تاریخ پررحم کھائیں وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
تاریخ پررحم کھائیں

انوکھی یات۔ٹو وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
انوکھی یات۔ٹو

وفاقی محتسب واقعی کام کرتاہے وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
وفاقی محتسب واقعی کام کرتاہے

ڈی سی کی گرفتاری اور سفارشی کلچر وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
ڈی سی کی گرفتاری اور سفارشی کلچر

ماں جیسی ر یاست اور فہیم۔۔۔ وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
ماں جیسی ر یاست اور فہیم۔۔۔

انسانیت کی معراج وجود اتوار 28 نومبر 2021
انسانیت کی معراج

اشتہار

افغانستان
طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ وجود اتوار 05 دسمبر 2021
طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ

15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل وجود هفته 04 دسمبر 2021
15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل

طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت وجود جمعه 03 دسمبر 2021
طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت

جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان وجود جمعه 03 دسمبر 2021
جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان

افغان طالبان اور ایرانی بارڈر گارڈز کے درمیان شدید جھڑپیں، بھاری اسلحہ کا استعمال وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
افغان طالبان اور ایرانی بارڈر گارڈز کے درمیان شدید جھڑپیں، بھاری اسلحہ کا استعمال

اشتہار

بھارت
بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا

بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی وجود بدھ 01 دسمبر 2021
بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی

بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین وجود پیر 29 نومبر 2021
بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین

بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی وجود هفته 27 نومبر 2021
بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی

چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے بھارتی دعوت نامہ مسترد کر دیا وجود جمعرات 25 نومبر 2021
چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے بھارتی دعوت نامہ مسترد کر دیا
ادبیات
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام وجود منگل 26 اکتوبر 2021
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام

پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام وجود پیر 25 اکتوبر 2021
پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام

اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب
شخصیات
نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی وجود اتوار 05 دسمبر 2021
نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی

سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے وجود پیر 29 نومبر 2021
سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے

پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل وجود جمعرات 25 نومبر 2021
پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل

سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز وجود جمعه 19 نومبر 2021
سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز

صحافتی بہادری کا ایوارڈ، چینی اور فلسطینی خواتین صحافیوں کے نام وجود جمعه 19 نومبر 2021
صحافتی بہادری کا ایوارڈ، چینی اور فلسطینی خواتین صحافیوں کے نام