وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

ڈاکٹر عمران فاروق کی شاعری

بدھ 16 ستمبر 2015 ڈاکٹر عمران فاروق کی شاعری

Dr-Imran-Farooq

ڈاکٹر عمران فاروق کی زندگی میں اکثر اُن کا کلام بھی منظر عام پر آتا رہتا تھا۔ اگرچہ اُن کی شاعری پر نقاد سوال اُٹھاتے تھے۔ اور ایک طبقے میں یہ بات بھی مشہور تھی کہ ایم کیوایم کے مختلف رہنماؤں کے نام سے منظرعام پر آنے والی شاعری کچھ شعرائے کرام کے مرہونِ منت ہے، مگر ان تمام اعتراضات کے باوجود ڈاکٹر عمران فاروق کی شخصیت کا یہ پہلو بھی خاصے لوگوں کو اپنی طرف متوجہ رکھتا تھا۔ ذیل میں اُن کی شاعری کے چند نمونے پیشِ خدمت ہے۔

کچھ نہیں بدلا کسی کے جانے یا آنے کے بعد
ایک چہرہ اور آیا، ایک کے جانے کے بعد
اصل مسئلہ حل نہیں کرتا، نہیں کرتے ہیں وہ
لارہے ہیں ایک نسخہ، ایک پٹ جانے کے بعد
لاکھوں انسانوں کی قسمت کھیل ہے ان کے لئے
اک کھلونا توڑ ڈالا، دل کو بہلانے کے بعد
ان کی عادت ہے پُرانی، کیوں ہے شکوہ آپ کو
’’کیسے نظریں پھیر لیں مطلب نکل جانے کے بعد‘‘

یہ تو ہو نہیں سکتا

تجھ کو بھول جاؤں میں، یہ تو ہو نہیں سکتا
ساتھ چھوڑ جاؤں میں، یہ تو ہو نہیں سکتا
میں تو ایک پتھر تھا، تو نے دلکشی بخشی
ذہن وفکر کو میرے تو نے تازگی بخشی
میرا دل تو مردہ تھا، تونے زندگی بخشی
تیرے گن نہ گاؤں میں، یہ تو ہو نہیں سکتا
دھیان تیرا رہتا ہے دن میں اور راتوں میں
ذکر تیرا رہتا ہے، خامشی میں باتوں میں
میری سب لکیریں ہیں، نقش تیرے ہاتھوں میں
نقش یہ مٹاؤں میں ، یہ تو ہو نہیں سکتا
خوف کا میں پیکر تھا، تو نے حوصلہ بخشا
دل میں گھپ اندھیرا تھا، تو نے اک دیا بخشا
مجھ کو عزم و ہمت کا جذبہ ایک نیا بخشا
بزدلی دکھاؤں میں، یہ تو ہو نہیں سکتا
جانتا ہوں مشکل ہے تیری راہ پر چلنا
چاہتا ہوں پھر بھی میں تیرے رنگ میں ڈھلنا
کام ہے تمنا کا دل کے دیار میں پلنا
آرزو مٹاؤں میں، یہ تو ہو نہیں سکتا


متعلقہ خبریں


عمران فاروق قتل مقدمہ: عمران فاروق کی بیوہ لندن میں مجسٹریٹ کی عدالت میں پہلی بار پیش وجود - بدھ 23 دسمبر 2015

لندن میں ڈاکٹر عمران فاروق قتل میں ایک اور اہم پیش رفت یہ سامنے آئی ہے کہ پانچ سال میں پہلی مرتبہ ڈاکٹر عمران فاروق کی بیوہ شمائلہ عمران نے مجسٹریٹ کی عدالت میں پیش ہو کر اپنا بیان قلمبند کرایا ہے۔ اطلاعات کے مطابق مجسٹریٹ کے سامنے قتل کی واردات کے عینی گواہ ایک بچے کو بھی پیش کیا گیا جس نے محسن سید کو تصویر میں شناخت کر لیا ہے ڈاکٹر عمران فاروق قتل کے حوالے سے لندن میں ہونے والے اب تک کے اقدامات پر گہری نظر رکھنے والے مبصرین کے مطابق یہ ایک اہم پیش رفت ہے۔ کیونکہ...

عمران فاروق قتل مقدمہ: عمران فاروق کی بیوہ لندن میں مجسٹریٹ کی عدالت میں پہلی بار پیش

ڈاکٹر عمران فاروق قتل کے مقدمے پر وزیر داخلہ کی انتہائی غیر منطقی وضاحتیں باسط علی - پیر 07 دسمبر 2015

وفاقی وزیرداخلہ چوہدری نثار نے ۶؍دسمبر (بروز اتوار) کو ایک پریس کانفرنس میں کہا ہے کہ عمران فاروق قتل کیس کا حکومت سے کوئی تعلق نہیں۔ یہ مقدمہ جے آئی ٹی کی روشنی میں درج کیا گیا۔ جس کی منظوری حکومت نے دی۔اُنہوں نے کہا کہ ملزمان کی پاکستان میں گرفتاری کے باعث مقدمے درج کرنے کا فیصلہ یہاں کیا گیا۔ اُنہوں نے یہ حیرت انگیز دعویٰ بھی کیا اس مقدمے کے بارے میں خود وزیراعظم کی معلومات بھی محدود ہے اور خود اُنہوں نے بھی جے آئی ٹی کو نہیں پڑھا کیونکہ یہ عدالت میں پیش ہوگی۔ ڈاکٹر ع...

ڈاکٹر عمران فاروق قتل کے مقدمے پر وزیر داخلہ کی انتہائی غیر منطقی وضاحتیں

عمران فاروق قتل کا مقدمہ ایف آئی اے نے درج کر لیا! مقاصد کیا ہیں؟ باسط علی - هفته 05 دسمبر 2015

عمران فاروق کے قتل کے تقریباً پانچ برس بعد اور کراچی میں بلدیاتی انتخابات سے صرف ایک روز قبل حکومت پاکستان اور وزارت داخلہ نے بآلاخر ایک مقدمے کا اندراج کر لیا ہے۔ اس مقدمے کی مدعی خود حکومت پاکستان بنی ہے، جبکہ مقدمہ اسلام آباد میں ایف آئی اے کے محکمہ انسدادِ دہشت گردی میں درج کیا گیا ہے۔ ایف آئی اے نے تاحال مقدمے کے مندرجات یا نقل جاری نہیں کی ۔ تاہم اس کے متعلق یقینی طور پر سامنے آنے والی معلومات کے مطابق مقدمہ قتل ، دہشت گردی اور اعانتِ جرم کی دفعات کے تحت قائم کیا گیا ہے...

عمران فاروق قتل کا مقدمہ ایف آئی اے نے درج کر لیا! مقاصد کیا ہیں؟

عمران فاروق قتل کے مرکزی ملزمان مزید نوے روز تک رینجرز کے حوالے وجود - جمعرات 24 ستمبر 2015

عمران فاروق قتل کے مقدمے کے مرکزی ملزم معظم علی کے بعد خالد شمیم اور محسن علی کو مزید نوے روز کے ریمانڈ پرپھر رینجرز کے حوالے کر دیا گیاہے۔ وزارت داخلہ نے کسی انتظامی یا حکومتی فیصلے کے ذریعے تینوں ملزمان کی برطانیہ حوالگی کو خارج از امکان قراردیا ہے۔ ذرائع کے مطابق عمران فاروق قتل کیس کے ملزمان خالد شمیم اور محسن علی کے ریمانڈ میں نوے روز کی توسیع کر دی گئی ہے۔ جبکہ تیسرے مرکزی ملزم معظم علی کے ریمانڈ میں بدھ کو ہی نوے روز کی توسیع کر دی گئی تھی۔ وزارت داخلہ نے ملزمان کے ریم...

عمران فاروق قتل کے مرکزی ملزمان مزید نوے روز تک رینجرز کے حوالے

عمران فاروق قتل کو پانچ سال گزر گئے، تحقیقات اب بھی جاری وجود - بدھ 16 ستمبر 2015

متحدہ قومی موومنٹ کے رہنما ڈاکٹر عمران فاروق کے قتل کو آج پانچ سال بیت گئے۔ برطانیہ کی انصاف پسند سرزمین پر قتل جیسا واقعہ ہوگیا، لیکن اتنا عرصہ گزر جانے کے باوجود آج تک ملزمان انصاف کے کٹہرے میں نہیں آسکے۔ لیکن لندن کی میٹروپولیٹن پولیس نے ایک مرتبہ پھر تحقیقات سے اپنی وابستگی کا اعلان کیا ہے اور کہا ہے کہ قتل کے ذمہ داران کی تلاش جاری ہے۔ بدھ کو اپنی ویب سائٹ پر جاری ہونے والے ایک بیان میں اسکاٹ لینڈ یارڈ نے عمران فاروق قتل کیس کی تحقیقات پر ہونے والی پیشرفت سے بھی آگاہ...

عمران فاروق قتل کو پانچ سال گزر گئے، تحقیقات اب بھی جاری

عمران فاروق کے قتل پر شاہد مسعود کا دو برس پہلے انٹرویو وجود - بدھ 16 ستمبر 2015

ڈاکٹر عمران فاروق کے قتل کے حوالے سے ٹی وی میزبان ڈاکٹر شاہد مسعود نے ۸؍ جولائی ۲۰۱۳ء کو آج ٹی وی پر تب کی میزبان اور عمران خان کی اہلیہ ریحام خان کوایک انٹرویو کے دوران میں یہ کہا کہ ’’میری ڈاکٹر عمران فاروق سے قتل سے چند ہفتے پہلے بات ہوئی تھی۔ ایم کیوایم کے لوگ ڈاکٹر عمران فاروق کو پسند نہیں کرتے تھے۔ میری ایم کیوایم کی مرکزی حکومت جو لندن میں ہے، اُن سے بات ہوئی ، یہ ۲۰۰۵ء یا ۲۰۰۷ء کی بات ہے۔ان کی طرف سے یہ آتا تھا کہ ڈاکٹر صاحب آپ عمران فاروق سے بات کرتے ہیں۔ اس و...

عمران فاروق کے قتل پر شاہد مسعود کا دو برس پہلے انٹرویو

عمران فاروق قتل۔۔۔۔۔۔ کب کب ،کیا کیا ہوا؟ وجود - بدھ 16 ستمبر 2015

لندن کے شمالی علاقے میں ۱۶؍ ستمبر ۲۰۱۰ء کو عمران فاروق کو اُن کی رہائش گاہ کے قریب قتل کر دیا گیا۔ عمران فاروق کے قتل کی تحقیقات میں پہلی مرتبہ ۶؍ دسمبر ۲۰۱۲ء کو ایم کیوایم کے لندن سیکریٹریٹ میں چھاپا مارا گیا۔دفتر سے نقد رقم بھی برآمد ہوئی جو بعد میں ایک نئے مقدمے منی لانڈرنگ کی بنیاد بنی۔ شمالی لندن کے دو گھروں میں ۱۸؍جون ۲۰۱۳ء کو چھاپے مارے گئے، جہاں سے ملنے والی بھاری رقم قبضے میں لے لی گئی۔اسکاٹ لینڈ یارڈ نے رقم کی گنتی نہیں بتائی۔ الطاف حسین کے بھتیجے افتخار حسین...

عمران فاروق قتل۔۔۔۔۔۔ کب کب ،کیا کیا ہوا؟

مضامین
یہ رات کب لپٹے گی؟ وجود پیر 18 اکتوبر 2021
یہ رات کب لپٹے گی؟

تماشا اور تماشائی وجود پیر 18 اکتوبر 2021
تماشا اور تماشائی

’’مصنوعی ذہانت ‘‘ پر غلبے کی حقیقی جنگ وجود پیر 18 اکتوبر 2021
’’مصنوعی ذہانت ‘‘ پر غلبے کی حقیقی جنگ

محنت رائیگاں نہیں جاتی وجود اتوار 17 اکتوبر 2021
محنت رائیگاں نہیں جاتی

بیس کی چائے وجود اتوار 17 اکتوبر 2021
بیس کی چائے

امریکی تعلیمی ادارے اور جمہوریت وجود اتوار 17 اکتوبر 2021
امریکی تعلیمی ادارے اور جمہوریت

روشن مثالیں وجود هفته 16 اکتوبر 2021
روشن مثالیں

تعیناتی کو طوفان بنانے کی کوشش وجود هفته 16 اکتوبر 2021
تعیناتی کو طوفان بنانے کی کوشش

سنجیدہ لوگ، ماحولیات اور بچے وجود هفته 16 اکتوبر 2021
سنجیدہ لوگ، ماحولیات اور بچے

پنڈورا پیپرز کے انکشافات وجود هفته 16 اکتوبر 2021
پنڈورا پیپرز کے انکشافات

بارودکاڈھیر وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
بارودکاڈھیر

نخریلی بیویاں،خودکش شوہر وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
نخریلی بیویاں،خودکش شوہر

اشتہار

افغانستان
افغانستان کی صورتحال ، امریکی نائب وزیر خارجہ آج اسلام آباد پہنچیں گی وجود جمعرات 07 اکتوبر 2021
افغانستان کی صورتحال ، امریکی نائب وزیر خارجہ آج اسلام آباد پہنچیں گی

طالبان کا داعش کے خلاف کریک ڈاؤن کا حکم وجود جمعرات 30 ستمبر 2021
طالبان کا داعش کے خلاف کریک ڈاؤن کا حکم

طالبان حکومت کے بعد پاکستان کی افغانستان کیلئے برآمدات دگنی ہوگئیں وجود جمعه 17 ستمبر 2021
طالبان حکومت کے بعد پاکستان کی افغانستان کیلئے برآمدات دگنی ہوگئیں

امریکا کا نیا کھیل شروع، القاعدہ آئندہ چند سالوں میں ایک اور حملے کی صلاحیت حاصل کر لے گی،ڈپٹی ڈائریکٹر سی آئی اے وجود بدھ 15 ستمبر 2021
امریکا کا نیا کھیل شروع،  القاعدہ آئندہ چند سالوں میں ایک اور حملے کی صلاحیت حاصل کر لے گی،ڈپٹی ڈائریکٹر سی آئی اے

طالبان دہشت گرد ہیں تو پھر نہرو،گاندھی بھی دہشت گرد تھے، مہتمم دارالعلوم دیوبند کا بھارت میں کلمہ حق وجود بدھ 15 ستمبر 2021
طالبان دہشت گرد ہیں تو پھر نہرو،گاندھی بھی دہشت گرد تھے، مہتمم دارالعلوم دیوبند کا بھارت میں کلمہ حق

اشتہار

بھارت
بھارت،چین کے درمیان 17 ماہ سے جاری سرحدی کشیدگی پر مذاکرات ناکام وجود منگل 12 اکتوبر 2021
بھارت،چین کے درمیان 17 ماہ سے جاری سرحدی کشیدگی پر مذاکرات ناکام

مزاحمتی تحریک سے وابستہ کشمیریوں کے خلاف بھارتی کارروائیوں میں تیزی لانے کا منصوبہ وجود هفته 09 اکتوبر 2021
مزاحمتی تحریک سے وابستہ کشمیریوں کے خلاف بھارتی کارروائیوں میں  تیزی لانے کا منصوبہ

مرکزی بینک آف انڈیاا سٹیٹ بینک آف پاکستان کا 45 کروڑ 60 لاکھ کا مقروض نکلا وجود جمعه 08 اکتوبر 2021
مرکزی بینک آف انڈیاا سٹیٹ بینک آف پاکستان کا 45 کروڑ 60 لاکھ کا مقروض نکلا

بھارت، مسجد میں قرآن پڑھنے والا شہید کردیاگیا وجود جمعه 08 اکتوبر 2021
بھارت، مسجد میں قرآن پڑھنے والا شہید کردیاگیا

شاہ رخ کے بیٹے آریان کو 20 سال تک سزا ہوسکتی ہے وجود جمعرات 07 اکتوبر 2021
شاہ رخ کے بیٹے آریان کو 20 سال تک سزا ہوسکتی ہے
ادبیات
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب

تاجکستان بزنس کنونشن میں عمران خان پر شعری تنقید، اتنے ظالم نہ بنو،کچھ تو مروت سیکھو! وجود جمعه 17 ستمبر 2021
تاجکستان بزنس کنونشن میں عمران خان پر شعری تنقید، اتنے ظالم نہ بنو،کچھ تو مروت سیکھو!

طالبان کا ’بھگوان والمیکی‘ سے موازنے پر منور رانا کے خلاف ایک اور مقدمہ وجود منگل 24 اگست 2021
طالبان کا ’بھگوان والمیکی‘ سے موازنے پر منور رانا کے خلاف ایک اور مقدمہ
شخصیات
سابق امریکی وزیرخارجہ کولن پاول کورونا کے باعث انتقال کرگئے وجود منگل 19 اکتوبر 2021
سابق امریکی وزیرخارجہ کولن پاول کورونا کے باعث انتقال کرگئے

معروف کالم نگار ڈاکٹر اجمل نیازی انتقال کر گئے وجود پیر 18 اکتوبر 2021
معروف کالم نگار ڈاکٹر اجمل نیازی انتقال کر گئے

سابق افغان وزیرِ اعظم احمد شاہ احمد زئی انتقال کر گئے وجود پیر 18 اکتوبر 2021
سابق افغان وزیرِ اعظم احمد شاہ احمد زئی انتقال کر گئے

ڈاکٹرعبدالقدیرخان کے لیے دو قبروں کا انتظام، تدفین ایچ8 میں کی گئی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبدالقدیرخان کے لیے دو قبروں کا انتظام، تدفین ایچ8 میں کی گئی

ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی نمازِجنازہ ادا کردی گئی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی نمازِجنازہ ادا کردی گئی