وجود

... loading ...

وجود

رات کاآخری پہر

هفته 15 جون 2024 رات کاآخری پہر

سمیع اللہ ملک
رات کے آخری پہرگھنٹی کی آوازنے دل کی دھڑکن کوبے ترتیب کردیا۔میں نے ریسیوراٹھایاتوچندلمحے جان ہی نہ پایاکہ میں جاگ رہا ہوں یاخواب کی کوئی کیفیت ہے۔ اس کی آوازمیری اکلوتی پوتی سے بہت ملتی جلتی تھی۔اس کاہرلفظ گہرے کرب میں ڈوباہوا تھاوہ ہچکیوں کے ساتھ رو رہی تھی،مجھے اورکچھ سنائی نہیں دے رہاتھا۔کیا رات کاآخری پہرتھا کہ نیندمیری آنکھوں سے یکایک ایسے روٹھ گئی جیسے اس سے میری کوئی آشنائی نہیں۔میں اٹھ کربیٹھ گیااوروہ جانے مجھے کیا جان کرروتی رہی،اپنی کہانی سناتی رہی اورمیں اسے جھوٹی تسلیاں دیتا رہا۔ میں یہ پوچھنا بھی بھول گیا کہ اس نے میراٹیلیفون کہاں سے حاصل کیاہے؟اس کانام زینب ہے اور مقبوضہ کشمیر۔۔۔سے اس کاتعلق ہے۔کئی ماہ پہلے اس کی شادی ہوئی،کچھ ہی دنوں بعدجلادصفت وردی میں ملبوس کچھ لوگ آئے، تلاشی کے نام پرسارے گھرکو اکھاڑ پچھاڑ دیا۔جاتے ہوئے اس کے خاوندکواپنے ساتھ لے گئے۔ گھر والوں نے جب احتجاج کیاتوگولیوں کی تڑتڑسے اس کا گھرانہ اس طرح کانپ رہاتھاجس طرح خوفِ خداسے کسی گناہ گارکادل تنہائی میں کانپتاہے۔
تین دنوں کے بعدوہ گھرواپس آگیالیکن اسے پہنچاننامشکل ہورہاتھا۔اس سے تفتیش کی جاتی رہی کہ وہ کبھی سرحدپارگیاتھایانہیں؟ مزید چند دنوں بعدآدھی رات کو وہی وردی میں ملبوس افراد نے اچانک چھاپہ مارا،دیوارپھلانگ کراندرآنے والے،زینب کے شوہراور جیٹھ کو، کچھ کمپیوٹراوردوسری اشیا سمیت اٹھا لے گئے۔ دونوں برسوں دہلی میں رہے اوروہاں تعلیمی اداروں میں پڑھاتے رہے۔ان کاقصوریہ تھا کہ وہ کشمیرمیں ہونے والے مظالم کومکمل ثبوتوں کے ساتھ عالمی انسانی حقوق کے اداروں کومہیاکرتے تھے۔ابھی زینب کے ہاتھوں کی مہندی بھی پھیکی نہیں پڑی تھی کہ وہ اس افتادکاشکارہوگئی۔اس نے عالمی انسانی ہمدردی کے تمام اداروں سے رابطہ کرکے اس ناگہانی مصیبت کے بارے میں مطلع کیاتو سب نے اپنی اپنی مجبوریوں کااظہارکرتے ہوئے جان چھڑالی ۔ اس نے عدالت سے رجوع کیا تو حسب ِمعمول بھارت کی تمام ایجنسیوں نے تحریری طورپران دونوں کے بارے میں اپنی لاعلمی کاجھوٹابیان دے دیا۔
22سالہ دلہن اب بستی بستی بھٹک رہی ہے،دکھائی دینے والاہردروازہ کھٹکھٹارہی ہے۔گلیوں گلیوں دہائی دے رہی ہے لیکن ظلم کے لق ودق صحرامیں اس کی آوازچیخ بن کرخوداسی کے کانوں میں پلٹ آتی ہے۔لگ بھگ بھارت کی ایک ارب انسانوں کی بھری پڑی آبادی میں کوئی دروازہ وانہیں ہوتا،کوئی دریچہ اپنی آغوش نہیں کھولتااورکوئی کھڑکی اسے آوازنہیں دیتی۔میں ابھی تک نرم وگداز بسترمیں نیم دراز بیٹھا تھااورلندن کی خنک رات ہولے ہولے سرک رہی تھی اور کشمیرکی ایک عفت مآب بیٹی کی آوازقطرہ قطرہ میرے دل پرٹپک رہی تھی۔ وہ آبدیدہ آوازمیں فریادکناں تھی:
”مجھے بتائیں میں کہاں جاں؟سرینگرسے ٹھوکریں کھاتی کھاتی نئی دہلی اس لئے آگئی ہوں کہ دنیامیں سب سے بڑی جمہوریت کا نعرہ لگانے والے کشمیرمیں کسی انسانی حقوق کے ادارے کوجانے کی اجازت نہیں دیتے،کوئی غیرملکی صحافی یاکیمرہ اس جنت میں داخل نہیں ہوسکتا جس کوان درندوں نے جہنم میں تبدیل کردیاہے۔میراکوئی ٹھکانہ ہے نہ جائے پناہ ، میں کیاکروں؟کدھرجاں؟میں اپنے کھوجانے والے شوہراوراس کے بھائی کی تلاش کروں یااپناآپ بچاؤں؟میں اپنی فریاداخباروں کوسناچکی،مسلمان ہونے کے ناطے مجھے بہت سے اخبارکے مالکان کی کڑوی اورکسیلی باتیں بھی سننے کوملیں،کسی کادل نہیں پسیجا،کسی نے میراحال نہیں پوچھا۔آپ کے ایک واقف کارنے اپنے ٹیلیفون سے نمبرملاکرمیرے ہاتھ میں یہ کہہ کرتھمادیاکہ ان کوبھی تواطلاع ہونی چاہئے جن کوہرکشمیری بہن بیٹی اپنابھائی اورباپ سمجھ کرہرلمحہ ان کی سلامتی اورعافیت کی دعاں میں مگن رہتی ہیں۔اتنی رات گئے آپ سے بات کرنے پربہت شرمندہ ہوں لیکن میں کیاکروں؟میں کدھرجاں؟بہنیں اوربیٹیاں آخراپنے دکھ اورغم اپنوں سے ہی کرسکتی ہیں؟ اب میں کس کو……!
فون بندہوجانے کے بعدبھی میراکمرہ دیرتک سسکیوں سے بھرارہا۔دیرتک میرے کانوں میں صحرائی ریت کے بگولے سائیں سائیں کرتے رہے اوردیر تک میری آنکھیں دہکتے کوئلوں پرکسمساتی راکھ سے بھری رہیں اوردیر تک ایک آوازجومیری پوتی کی آواز سے بہت ملتی جلتی تھی،میری بندکھڑکی کے شیشوں پردستک دیتی رہیں۔زینب اپنے شوہراوراس کے بڑے بھائی کی تلاش میں ہے۔ہزاروں دیگر افراد اپنے پیاروں کے انتظارمیں کسی اچھی خبرکے منتظرہیں۔کئی بوڑھے والدین کی آنکھیں پتھراچکی ہیں کہ ان کے بڑھاپے کے سہارے ان سے چھین لئے گئے ہیں اوراس وقت بے سہارامارے مارے پھر رہے ہیں۔امریکاکی ایک ہندو پروفیسر نے اپنے ساتھی پروفیسر کی مدد سے کشمیر میں اجتماعی قبروں کی نشاندہی میں مدد دی جہاں چار ہزارسے زائد افراد کو گڑھے کھودکر دفن کردیا گیا۔اس جنتِ ارضی میں جنگل کا قانون جاری وساری ہے۔
اس جنت ِ ارضی میں جنگل کاقانون جاری وساری ہے اورہم جوسینہ ٹھونک کران کے وکیل بننے کا دعوی کررہے تھے،ہم سے ہفتہ وارایک گھنٹے کااحتجاج بھی تونہیں ہوسکا۔ضعیف مردِ مجاہدعلی گیلانی اورآسیہ اندرابی کے سچے اورمضبوط عزم کے سامنے ایک مرتبہ پھرہم سب کے سر شرم سے جھک گئے تھے جب اسمبلی سے سینکڑوں پاکستانیوں کے قاتل کلبھوشن کو اپیل کاحق دینے کی قراردادکوتوپاس کروالیاگیاتھالیکن ہم نے ایک لمحہ کیلئے بھی نہ سوچاکہ اس مردمجاہد گیلانی کے دل پرکیاگزری ہوگی جس نے ہندوبنئے فوج کے حصارمیں لاکھوں کشمیری نوجوانوں کے دلوں میں یہ سرفروشانہ نعرہ کندہ کردیاکہ”ہم ہیں پاکستانی ،پاکستان ہمارا ہے”اورآسیہ اندرابی جس کے شوہرڈاکٹرقاسم کوناکردہ جرم میں پچھلی دودہائیوں سے بھی زائدجیل میں بندکررکھا ہے اورآسیہ اندرابی کوتہاڑجیل میں انسانیت سوزمظالم کے حوالے کردیاگیااوراب بھی نجانے کس حال میں ہے،جہاں شبیراحمد شاہ کی چھوٹی بیٹی سحرشبیر شاہ کاکہناہے کہ ”میں روزسپنے میں باباکودیکھتی ہوں، جیسے وہ مجھے بلارہے ہوں اورکہہ رہے ہوں کہ میں جیل سے چھوٹ گیا،پھر ماں جگاتی ہے لیکن مجھے کچھ وقت کے بعدہوش آتا ہے”۔ وہ اپنے والدکی گرفتاری کے باعث افسردہ اورذہنی تناؤکاشکاررہتی ہے۔
فریادکناں زینب کے یہ جملے میرے کانوں میں پگھلے ہوئے سیسے کی مانندکیوں دوڑرہے ہیں کہ”بالآخر بیٹیاں اپنے دکھوں کا تذکرہ اپنے باپ سے نہ کریں تو کہاں جائیں”میں اسے کیسے بتاؤں کہ ابھی تک عصمت صدیقی کی روح ابھی تک اپنی عفت مآب بیٹی عافیہ صدیقی کی تلا ش میں بھٹک رہی ہے،آمنہ مسعود جنجوعہ جوپچھلے کئی برسوں سے حکومتی اداروں کے مردہ ضمیروں کو جگانے کی کوششوں میں آخر کام ناکام اورتھک ہارکربیٹھ گئی،کیونکہ کوئی ان کی انگلی تھامنے والا،کوئی انہیں راستہ سجھانے والانہیں ملا،اس مجبورومقہورنے بھی اپنا مقدمہ اللہ کی عدالت پرچھوڑدیاہے۔ یہ کیساسحرہے کہ انسان بیٹھے بٹھائے تحلیل ہو جاتے ہیں اورکسی کوکچھ پتہ بھی نہیں چلتا۔
کسی پرشک ہوتوقانون موجودہے،اسے حرکت میں لایاجاسکتاہے،اس کے خلاف شواہد جمع کرکے اسے عدالتی عمل سے گزارا جا سکتا ہے، اسے صفائی کاموقع دینے کے بعدجرم ثابت ہونے پرکڑی سزادی جاسکتی ہے لیکن یہ عجیب دستورچل نکلاہے کہ کسی کوغائب کردیاجائے اور پھر مہینوں بلکہ سالوں تک اس کے عزیزوں کوانتظارکی سولی پرلٹکادیاجائے کہ ان کے پیارے عزیز کہاں اورکس حال میں ہیں اوران پر کیا گزررہی ہے؟ایساکرنے سے ایک مہذب ملک کی ساکھ پرانتہائی منفی اثرپڑتاہے جودنیابھرکی سب سے بڑی جمہوریت کاجعلی ڈھنڈورا بھی پیٹ رہاہو۔ کیاوہ نہیں سمجھتے کہ اس طرح ان کی”روشن خیال جمہوریت ”محض ایک سراب دکھائی دینے لگی ہے؟ہم نے تویہ جرم عظیم سب کچھ امریکی کروسیڈسے عہدِوفانبھانے کیلئے کیا لیکن بھارت تو امریکا اور مغرب کی دوستی کادم بھررہاہے۔وہ اپنے انہی دوستوں کے کندھے استعمال کرکے ایک مرتبہ پھراقوام متحدہ کی مستقل نشست(ویٹوپاور)کے خواب دیکھ رہاہے تاکہ اس طاقت کے نشے میں وہ مہابھارت کی تکمیل کرسکے۔پھرکیاوجہ ہے کہ انسانی حقوق کی ایسی پامالی پرایک امریکی ہندوپروفیسرکوبھی اجتماعی قبروں جیسے ہولناک مظالم پر احتجاج کی آوازاٹھاناناگزیرہوگیااورانسانی حقوق کے چیمپئن ممالک کوکشمیرمیں اس ہولناک مظالم سے آگاہ کرناپڑا۔
ہم نصیبوں جلے توایسے ہیں کہ آج تک کشمیرمیں ان اجتماعی قبروں کے انکشاف کے بعدقصرِسفیدکے فرعون سے کوئی اعلامیہ جاری نہ کروا سکے بلکہ مغربی ممالک توبھارت کی بلائیں لے رہے ہیں اورایٹمی توانائی کی مددکیلئے دل وجاں فرشِ راہ کردیئے لیکن ماورائے عدالت ہلاکتوںسے لیکراغوا تشدد،ریاستی جبر اورقانون وعدل کی رسوائی تک ہروہ الزام ہمارے دامن کاداغ بنا دیا گیاجس کا تصور کیا جا سکتا ہے، اس کے باوجودامریکا کی دلداری ہماری سب سے بڑی ترجیح ہے جس کیلئے ہم نے اچھے بھلے ملک کوجنگل بنادیااورڈھٹائی کی حدتو یہ ہے کہ اب بھی اسی عطارکے لونڈے سے امیدیں وابستہ کئے ہوئے ہیں اورسیکورٹی مشیر امریکاسے گلہ کررہے ہیں کہ پاکستان کوکیوں فراموش کر دیا گیا۔
زینب کے شوہرکاجرم صرف یہی ہے کہ وہ دنیاکے انسانی حقوق کے اداروں کوکشمیر میں ہونے والے مظالم کی اصلی تصویرسے آگاہ کرتا تھا۔کشمیرمیں”ماورائے قانون ”کی آڑمیں ہونے والے مظالم کی نشاندہی کرتاتھا۔”غیراعلانیہ کرفیوجیساماورائے قانون”جیسی منحوس اصطلاح کااستعمال سب سے پہلے2008میں امرناتھ اراضی ایجی ٹیشن کے دوران گورنراین این وہرانے شروع کیاتھالیکن اس سے بھی پہلے شیخ محمدعبداللہ نے1975میں پبلک سیفٹی ایکٹ یہ کہہ کرمتعارف کروایاتھاکہ یہ صرف اسمگلروں کے خلاف استعمال کیاجائے گا۔ اس ایکٹ کے تحت بغیرکسی عدالتی کاروائی کے کسی بھی شخص کودوسال کیلئے زنداں کی تاریکی میں پھینکاجاسکتاہے لیکن آج تک اسی غیرانسانی اور ظالمانہ قانون کوبے دریغ بے گناہ کشمیریوں کے خلاف استعمال کیاجارہاہے اور بیشترکشمیری اسی تعذیبی قانون کے تحت چودہ چودہ سال سے بھی زیادہ بھارت کی جیلوں میں گل سڑرہے ہیں۔
اگرآپ کویادہوتو29اور30مئی 2009 کی درمیانی رات کوکشمیر کی دومجبور بیٹیوں نیلوفراورآسیہ کواجتماعی عصمت دری کے بعد قتل کر دیا
گیا تھاجس سے اہل شوپیاں کے علاوہ سارے کشمیریوں کے دل دہل گئے تھے۔پوری وادی میں اس پربھرپوراحتجاج ہوالیکن شوپیاں کے غیور عوام نے47دن کی مسلسل ہڑتال سے اس سانحے کوامرکردیاکہ وہ اپنی ان بیٹیوں کے صدمے کوکبھی نہیں بھول سکتے۔مجھے یادہے کہ تین سالہ سوزین جوایک سال بعداپنی ماں اور پھوپھی کی اجتماعی عصمت دری کے خلاف احتجاج کررہاتھا اس کوغمزدہ لواحقین کے ساتھ انصاف مانگنے کی پاداش میں مجرم ٹھہراکرگرفتارکرلیا گیاتھا۔ کیایہ ممکن تھا کہ تین سالہ بچہ جواپنے پاؤں پراچھی طرح چل بھی نہیں سکتا وہ بھارت کے وزیراعظم کیلئے کوئی خطرہ بن سکتاتھا؟دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت کے محافظ اس بلکتے تڑپتے شیرخوارسوزین جس کے آنسو کئی دلوں کوگھائل کررہے تھے،مردہ خورگدھوں کی طرح ٹوٹ پڑے تھے ۔مجبورومقہورکشمیریوں کے سرقلم کرنے کیلئے”غیراعلانیہ کرفیو”کے دوران”پبلک سیفٹی ایکٹ”کی بے لگام تلوارہی کافی تھی کہ اب کشمیرمیں تعینات 8 لاکھ افواج کو”آرمڈفورسزسپیشل پاور ایکٹ” اور ”ڈسٹرب ایریاایکٹ” جیسے ظالمانہ قوانین کے تحت بے پناہ اختیارات حاصل کرنے کے بعدکسی کوجوابدہ نہیں،جس کی وجہ سے اب یہ قانون عوام کے محافظین کہلانے والوں کیلئے ایک نفع بخش تجارت کی شکل اختیارکرگیاہے جس میں لین دین انسانی سروں اورسستے انسانی خون سے ہوتاہے۔میں توابھی تک زاہد، وامق، عنائت اللہ اورطفیل متو کی ہلاکتوں سے لیکر مژھل فرضی جھڑپوں میں کشمیریوں کے سرِعام قتل کونہیں بھول سکا،اے میری مظلوم ومجبوربیٹی زینب!کیا تجھے معلوم نہیں کہ اسلام کاایک درخشندہ ستارے کانام بھی زینب تھاجن کی کنیت ”ام المصائب ” تھی جن کے خطبات آج بھی مسلم امہ کیلئے مشعلِ راہ ہیں۔
میراوجدان اس بات کی گواہی دیتاہے کہ ظلم وستم کایہ دورایسے عوامی انقلابی ریلے کودعوت دے رہاہے جس کے سامنے توپ وتفنگ ناکارہ اوربے بہرہ ہو جاتی ہیں۔انقلابِ فرانس بھی ایک پتھرمارنے سے شروع ہواتھاپھراس کے بعدبادشاہ کے محافظین اپنے تمام اسلحے کے ساتھ نہ توبادشاہ کی حفاظت کرسکے اور نہ خودکوبچاسکے۔اس طوفانی ریلے کے سامنے تمام ظالمانہ قوتیں اپنے اتحاد کے باوجودتنکوں کی طرح خس وخاشاک کی طرح بہہ گئیں۔جونرم ہاتھ یا سفید کالر والی گردن نظرآئی اس کاشانوں سے تعلق ختم کردیاگیا۔کشمیرکے موجودہ حالات میں امرناتھ جیسی ایجی ٹیشن سے بھی کہیں شدیدمزاحمتی تحریک کیلئے میدان گرم ہے،جہاں سات دہائیوں سے کشمیریوں کابہنے والامقدس خون اب ضروررنگ لائے گااوراب کوئی نیامیرجعفریامیرصادق ظالموں کومیسرنہ آ سکے گاانشا اللہ۔
لیکن ٹھہریئے مجھے کچھ ان افرادکے ضمیر کوبھی جگاناہے جن کی یہ مجبورومقہوربیٹیاں ان کے نام کی دہائی ان شہدا کے قبرستانوں میں دیتی نظر آرہی ہیں جو ہمارے ہاں کے مفادپرستوں کی چیرہ دستوں کاشکارہوگئے جن کوہرقیمت پراپنااقتدارعزیزہے اوراپنے دورِ حکومت میں سفاک مودی سے ملاقات کیلئے بے چین تھے اورسلامتی کونسل میں اپناووٹ دیکراس کو ممبر بنانے میں بھی کوئی شرم محسوس نہیں کی تھی۔اب مودی کی کامیابی پرانہیں مبارکبادکاجوپیغام بھیجا،اس کاتکبرآمیزجواب پڑھ کرہمیں کس سطح پرلاکھڑاکیاہے؟دنیاکی بڑی جمہوریت کادعویٰ کرنے والے کومبارکباددینے کی بجائے اسے اپنے گریبان کی طرف نگاہ دوڑانے کاپیغام دیاجاتااوراس طرف اقوام عالم کی توجہ مبذول کروائی جاتی کہ آخریہ روتی بلکتی مائیں،دربدربھٹکتے بوڑھے باپ ،بال بکھرائے دہائی دیتی بیویاں کہاں جائیں؟کون سی زنجیرعدل ہلائیں،کس دیوارسے سر پھوڑیں؟میں سوچتے سوچتے تھک گیا ہوں لیکن کوئی جواب سجھائی نہیں دیتا۔آج بھی تین سالہ سوزین کے آنسو
اور بائیس سالہ نوبیاہتازینب کی آوازیں مسلسل میرا تعاقب کررہیں ہیں اور میرے لئے کرب کاایک اضافی پہلویہ ہے کہ دل چیر دینے والی آواز میری پوتی کی آوازسے ہوبہوملتی ہے!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
بہار کو آنے سے نہیں روک سکتے! وجود جمعه 19 جولائی 2024
بہار کو آنے سے نہیں روک سکتے!

نیلسن منڈیلا ۔قیدی سے صدر بننے تک کا سفر وجود جمعه 19 جولائی 2024
نیلسن منڈیلا ۔قیدی سے صدر بننے تک کا سفر

سیکرٹ سروس کے منصوبے خاک میں مل گئے ! وجود جمعه 19 جولائی 2024
سیکرٹ سروس کے منصوبے خاک میں مل گئے !

معرکۂ کرب و بلا جاری ہے!!! وجود بدھ 17 جولائی 2024
معرکۂ کرب و بلا جاری ہے!!!

عوام کی طاقت کے سامنے وجود بدھ 17 جولائی 2024
عوام کی طاقت کے سامنے

اشتہار

تجزیے
نریندر مودی کی نفرت انگیز سوچ وجود بدھ 01 مئی 2024
نریندر مودی کی نفرت انگیز سوچ

پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ وجود منگل 27 فروری 2024
پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ

ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے! وجود هفته 24 فروری 2024
ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے!

اشتہار

دین و تاریخ
امیر المومنین، خلیفہ ثانی، پیکر عدل و انصاف، مراد نبی حضرت سیدنا فاروق اعظم رضی اللہ عنہ… شخصیت و کردار کے آئینہ میں وجود پیر 08 جولائی 2024
امیر المومنین، خلیفہ ثانی، پیکر عدل و انصاف، مراد نبی حضرت سیدنا فاروق اعظم رضی اللہ عنہ… شخصیت و کردار کے آئینہ میں

رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت وجود بدھ 13 مارچ 2024
رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت

دین وعلم کا رشتہ وجود اتوار 18 فروری 2024
دین وعلم کا رشتہ
تہذیبی جنگ
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی وجود اتوار 19 نومبر 2023
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی

مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت

سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے وجود منگل 15 اگست 2023
سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے
بھارت
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا وجود پیر 11 دسمبر 2023
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا

بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی وجود پیر 11 دسمبر 2023
بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی

بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک وجود بدھ 22 نومبر 2023
بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک

راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات
افغانستان
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے وجود بدھ 11 اکتوبر 2023
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے

افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں وجود اتوار 08 اکتوبر 2023
افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں

طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا وجود بدھ 23 اگست 2023
طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا
شخصیات
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے وجود اتوار 04 فروری 2024
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے

عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے
ادبیات
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر وجود پیر 04 دسمبر 2023
سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر

مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر وجود پیر 25 ستمبر 2023
مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر