وجود

... loading ...

وجود

خطرے کی گھنٹی

هفته 09 دسمبر 2023 خطرے کی گھنٹی

ایم سرور صدیقی

لگتاہے عمران خان کی مشکلات ابھی ختم نہیں ہوئیں ہر آنے والے دن میں موصوف کے لئے عجیب و غریب اور نت نئی باتوںکا انکشاف ہورہاہے لوگوںکے ذہنوںمیں ایک سوال گردش کررہاہے کہ کہیں ایسا تو نہیں کہ عمران خان کی کردارکشی کرکے ان کی شخصیت کو مسخ کیا جارہا ہو شاید ان کے سیاسی مخالفین ایسا ہی چاہتے ہیں جبکہ تحریک ِ انصاف کے کارکنوںکا الزام ہے کہ عمران خان کا الیکشن میں حصہ لینا سیاست اور جمہوریت پر قابض مافیا کے لیے ڈراؤنا خواب بن چکا ہے وہ ہرقیمت پر عمران خان کو پاکستان کی سیاست سے مائنس کرنا چاہتے ہیں کیونکہ وہ جانتے ہیں کہ بدترین شکست ان کا مقدر ہے! اس لیے ہر قسم کا حربہ آزما کر عمران خان کو الیکشن سے باہر کرنا چاہتے ہیں۔
عمران خان پر اس وقت سینکڑوں مقدمات چل رہے ہیں ایک کیس میں ضمانت ہوتی ہے تو دوسرے کی سماعت شروع ہو جاتی ہے۔ عمران خان کے خلاف تین مقدمات انتہائی خطرناک ہیں۔ ایک سائفر اور دوسرے کا تعلق9مئی سے ہے جس کے نتیجہ میں ایک مقبول ترین پارٹی ٹکے ٹوکری ہوگئی۔ بڑے بڑے رہنمائوں نے عمران خان سے اظہارِ لاتعلقی کرڈالا۔ عملاً پارٹی تبربترہوگئی اور تادم ِ تحریر9مئی کی وضاحتیں اور صفائیاں پیش کی جارہی ہیں ۔تیسرے خطرناک مقدمہ کا تعلق بشریٰ بی بی سے ہے ،جن سے عدت کے دوران نکاح کا شور مچا ہوا ہے۔ بشریٰ بی بی کے سابقہ شوہر خاور مانیکا کے تہلکہ خیز انٹرویو کے بعدعمران خان اور بشریٰ بی بی کی شادی نے ایک نیا موڑ لے لیاہے، اب گھرکے بھیدی نے لنکا ڈھادی ہے ۔خاور مانیکا کے گھریلو ملازم نے نکاح سے پہلے عمران خان اور بشریٰ بی بی کے درمیان ناجائز تعلقات کی گواہی دیدی اور عدالت کو بتا یا کہ عمران، خاور مانیکا کی غیرموجودگی میں بشریٰ بی بی سے ملنے آتے تھے۔سول جج اسلام آباد قدرت اللہ نے بشریٰ بی بی کے سابق شوہر خاور فرید مانیکا کی جانب سے دائر مبینہ غیر شرعی نکاح کیس کی سماعت کی، عدالت نے مقدمے کے قابل سماعت ہونے سے متعلق مزید دلائل طلب کرلئے ہیں۔ اس سے پہلے بشری ٰ بی بی کے سابقہ شوہرخاور مانیکا عدالت کے روبرو پیش ہوئے اور حاضری لگوا کر واپس روانہ ہو گئے۔ دوران سماعت مقدمہ کے چوتھے گواہ خاور مانیکا کے گھریلو ملازم محمد لطیف نے اپنا بیان قلمبند کراتے ہوئے بتایا کہ عمران خان کا بنی گالہ میں خاور مانیکا کے گھر2015 ء میں آنا جانا شروع ہوا ان کا رات کے وقت آنا جانا زیادہ تھا اور وہ ہمیشہ خاور مانیکا کی غیر موجودگی میں آتے اور دونوں ساتھ کمرے میں چلے جاتے ، بشریٰ بی بی کا نمبر بند ملنے پر خاور مانیکا مجھے ان سے بات کرانے کا کہتے تھے ۔ خاور مانیکا کا فون آنے پر جب کمرے میں گیا تو دونوں کو قابل اعتراض حالت میں پایا ، پہلی مرتبہ ان کی یہ حالت میں دیکھ کر میرے زمین پاؤں کے نیچے سے نکل گئی ۔میں نے فوراًخاور مانیکا کو اطلاع دی، اس حالت میں انہیں تین چار بار دیکھا ، بعد میں خاور مانیکا اور بشریٰ بی بی کی لڑائیاں شروع ہو گئیں اور 2017 ء میں خاور مانیکا نے بشریٰ بی بی کو طلاق دیدی۔ گواہ محمد لطیف نے بیان میں کہا کہ عمران خان اور بشریٰ بی بی کو کئی بار ڈرائنگ روم میں بھی نازیبا حرکات کرتے دیکھا ۔ خاور مانیکا کے کہنے پر کئی بار عمران خان کو گھر سے نکالا ، خاور مانیکا کی فون پر بات کرانے بشریٰ بی بی کے پاس اندر جاتا تو مجھے ڈانٹ پڑتی ، خاور مانیکا درمیان میں نہ ہوتے تو بشریٰ بی بی مجھے نوکری سے نکال دیتی۔ عمران خان کے خلاف دوسراا خطرناک مقدمہ سائفر سے متعلق ہے جس کا منطقی انجام عمرقید یا سزائے موت ہو سکتا ہے ۔ ایسا ہواتو یہ ملکی تاریخ پر بڑے گہرے اثرات مرتب کرے گا۔عمران خان کو بھی ذوالفقارعلی بھٹو جیسے حالات کا سامنا کرنا پڑ سکتاہے۔ بھٹو کی پھانسی کی سزا کو تو آج عدالتی قتل قراردیا جارہاہے۔ عمران خان کو سزا ہوگئی تو اس بارے میں کچھ کہنا قبل ازوقت ہوگا۔ بہرحال اس حقیقت سے بھی انکارنہیں کیا جاسکتا کہ پاکستان میں سیاست کے نام پر چلنے والے فیملی لمیٹڈ کاروباروں نے ملک کو بہت نقصان پہنچایا ہے بائیس کروڑ عوام پر حکمرانی کے خواب دیکھنے والوںکے جانشینوں کی ذاتی قابلیت پوچھی جائے تو سب ایک دوسرے کو تکتے رہ جاتے ہیں بیشترکا تعلق پاکستان کے کرپٹ ترین خاندانوں سے ہے جن کے خلاف کئی دہائیوں سے کرپشن، آمدن سے زائد اثاثوں، بے نامی اکائونٹس میں اربوں کھربوں کی ٹرانزیکشن کے مقدمات چل رہے ہیں۔ ملزمان کے پاس کوئی تسلی بخش جواب نہیں ہے۔ اس حمام میں چیئرمین تحریک انصاف عمران خان بھی شامل ہوگئے ہیں جن کے خلاف توشہ خانہ کیس، قادر یونیورسٹی سمیت کئی مقدمات زیر ِ سماعت ہیں لیکن اس سے بھی انکار محال ہے کہ ان الزامات کے باوجود عمران خان پاکستان کے سب سے مقبول و ہردلعزیز سیاستدان ہیں جن کے حامیوں کو یقین ہے کہ ہمارے لیڈر کے خلاف من گھڑت الزامات پرعوام کا شعور اور جذبہ ظلمت کے اندھیروں میں بھی امید کی شمع جلائے ہوئے ہے!!
بدترین فسطائیت کے دور میں بھی پاکستان کے غیور عوام نے جس طرح عمران خان کو پزیرائی دی ہے، وہ قابلِ تحسین ہے! جس ملک میں تھوڑے سے لوگ امیر جبکہ باقی غریبوں کا سمندر ہو، اور وسائل پر قابض طبقہ صرف ذاتی مفادات کو مدنظر رکھ کر پالیسیاں ترتیب دے، وہاں کبھی استحکام نہیں آسکتا جبکہ تحریک ِ انصاف کے مخالفین عمران خان کو پلے بوائے، یہودی ایجنٹ اور اسلامی ٹچ دینے والاڈرامے باز قرار دیتے نہیں تھکتے۔ اب عمران خان نے ایک سابق آرمی چیف کوعدالت میں طلب کرنے کااعلان کیا ہے۔ بہرحال عمران خان کے خلاف
تین خطرناک مقدمات تحریک ِ انصاف کے لئے خطرے کی گھنٹی ہے جس کے نتیجہ میںعمران خان کو تاحیات نااہل کیاجاسکتاہے ،یا پارٹی پر پابندی لگاکر کالعدم قراردیا جاسکتاہے کیونکہ حالات نے عمران خان کے گرد ایسا شکنجہ کس دیا ہے جس سے بظاہر بچ نکلنا محال لگتاہے۔ کوئی معجزہ ہو جائے تو کچھ نہیں کہا جاسکتا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
یہ سب کٹھ پتلیاں رقصاں رہیں گی رات کی رات وجود بدھ 21 فروری 2024
یہ سب کٹھ پتلیاں رقصاں رہیں گی رات کی رات

تشکیل سے پہلے نئی حکومت کا خاتمہ وجود بدھ 21 فروری 2024
تشکیل سے پہلے نئی حکومت کا خاتمہ

سمجھوتہ ایکسپریس : متاثرین 17 سال سے انصاف کے متلاشی وجود بدھ 21 فروری 2024
سمجھوتہ ایکسپریس : متاثرین 17 سال سے انصاف کے متلاشی

یہ کمپنی نہیں چلے گی!! وجود منگل 20 فروری 2024
یہ کمپنی نہیں چلے گی!!

امریکی جنگی مافیااورعالمی امن وجود منگل 20 فروری 2024
امریکی جنگی مافیااورعالمی امن

اشتہار

تجزیے
پاکستان کی خراب سیاسی و معاشی صورت حال اور آئی ایم ایف وجود پیر 19 فروری 2024
پاکستان کی خراب سیاسی و معاشی صورت حال اور آئی ایم ایف

گیس کی لوڈ شیڈنگ میں بھاری بلوں کا ستم وجود جمعرات 11 جنوری 2024
گیس کی لوڈ شیڈنگ میں بھاری بلوں کا ستم

سپریم کورٹ کے لیے سینیٹ قرارداد اور انتخابات پر اپنا ہی فیصلہ چیلنج بن گیا وجود جمعرات 11 جنوری 2024
سپریم کورٹ کے لیے سینیٹ قرارداد اور انتخابات پر اپنا ہی فیصلہ چیلنج بن گیا

اشتہار

دین و تاریخ
دین وعلم کا رشتہ وجود اتوار 18 فروری 2024
دین وعلم کا رشتہ

تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب وجود جمعرات 08 فروری 2024
تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب

حقوقِ انسان …… قرآن وحدیث کی روشنی میں وجود منگل 06 فروری 2024
حقوقِ انسان …… قرآن وحدیث کی روشنی میں
تہذیبی جنگ
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی وجود اتوار 19 نومبر 2023
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی

مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت

سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے وجود منگل 15 اگست 2023
سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے
بھارت
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا وجود پیر 11 دسمبر 2023
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا

بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی وجود پیر 11 دسمبر 2023
بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی

بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک وجود بدھ 22 نومبر 2023
بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک

راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات
افغانستان
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے وجود بدھ 11 اکتوبر 2023
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے

افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں وجود اتوار 08 اکتوبر 2023
افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں

طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا وجود بدھ 23 اگست 2023
طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا
شخصیات
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے وجود اتوار 04 فروری 2024
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے

عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے
ادبیات
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر وجود پیر 04 دسمبر 2023
سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر

مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر وجود پیر 25 ستمبر 2023
مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر