وجود

... loading ...

وجود

نِک نے دنیا کے سامنے ملک کی ناک کاٹ دی!

منگل 05 دسمبر 2023 نِک نے دنیا کے سامنے ملک کی ناک کاٹ دی!

ڈاکٹر سلیم خان

52 سالہ نکھل گپتا عرف’ نِک ‘ منشیات و غیر قانونی اسلحہ کا اسمگلرہے ۔ مبینہ طور پر سرکار نے اس سے ٹارگٹ کلنگ کا کام لینے کی کوشش کی ۔ وہ اپنے ہدف کو تو ٹھکانہ نہیں لگا سکا مگر ملک کی ساکھ کو ملیا میٹ کردیا۔ نکھل اپنے مذکورہ بالا جرائم کے سبب گجرات پولیس کو مطلوب تھا مگر اس کو اپنے کام کے لیے سرکار کی واشنگ مشین میں پوتر کردیا گیا ۔موصوف فی الحال جمہوریہ چیک کے اندر زیر حراست ہے اور بہت جلد امریکہ اسے تحویل میں لے کر اس پر کرائے کا قتل، سازش اور دھوکہ دہی کے الزامات کا مقدمہ چلائے گا۔امریکی اٹارنی ڈیمیئن ولیم نے ایک بیان میں کہا، “ملزم نے ہندوستان سے یہاں نیویارک شہر میں، ایک ایسے ہندوستانی نژاد امریکی شہری کو قتل کرنے کی سازش کی، جس نے کھلے عام سکھوں کے لیے ایک خودمختار ریاست کے قیام کی وکالت کی ہے ۔انہوں نے مزید کہا کہ “ہم امریکی سرزمین پر امریکی شہریوں کو قتل کرنے کی کوششوں کو برداشت نہیں کریں گے ۔ہندوستان کے لیے خالصتان کا مطالبہ بغاوت کے مترادف ہے لیکن امریکہ کا قانون ایسا نہیں سمجھتا۔ حکومت ہند کو یہ بات یاد رکھنی چاہیے تھی کہ گرپتونت سنگھ پنو ایک زمانے میں ہندوستانی تھا مگر اب نہیں ہے اور اس امریکی شہری پر ہندوستان کے قوانین کا اطلاق نہیں ہوسکتا ۔
ماورائے قانون قتل نہ صرف امریکہ بلکہ ہندوستان کے اندر بھی غیر قانونی حرکت ہے گوکہ اس پر کھلے عام سرکارکے ایماء پرعمل ہوتا ہے ۔ عتیق احمد اور وکاس دوبے کا انکاونٹر کرکے اس کا سیاسی فائدہ بھی اٹھایا جاتا ہے ۔ نکھل گپتا نے گرپتونت کے قتل کی سازش میں جس لاپروائی کا مظاہرہ کیا وہ اپنی مثال آپ ہے ۔ یہ ساری دنیا میں مودی سرکار کا نام روشن کرنے کے لیے کافی ہے ۔ ملزم گپتا نے اس مہم کو انجام دینے کے اپنے منشیات کی دنیا میں سے جس فرد کو جرائم پیشہ سمجھ کر ‘ہٹ مین’کی تلاش کے لیے منتخب کیا وہ دراصل امریکہ کی ڈرگ انفورسمنٹ ایجنسی(DEA) کا ایک خفیہ ایجنٹ تھا۔ اس ایجنٹ نے امریکی قانون نافذ کرنے والے انڈر کور افسر کا گپتا سے ایک ہٹ مین کے طور پرتعارف کروایا ۔ اس کے بعد اپنے آقا سمیت نکھل گپتا بڑے آرام سے ان کے جال میں پھنستا چلا گیا ۔اب یہ حال ہے کہ ڈرگ انفورسمنٹ ایجنسی کی ایڈمنسٹریٹر این ملگرام سینہ ٹھونک کرکہتے ہیں “جب ایک غیر ملکی سرکاری ملازم نے مبینہ طور پر امریکی سرزمین پر ایک امریکی شہری کو قتل کرنے کے لیے منشیات اوراسلحہ کے بین الاقوامی اسمگلر کو بھرتی کرنے کا ڈھٹائی سے ارتکاب کیا، تو ڈرگ انفورسمنٹ ایجنسی اس سازش کو روکنے کے لیے موجود تھی۔
ہندوستانی فلموں میں جاسوسی کی جو بڑی بڑی حماقتیں دکھائی جاتی ہیں ان کو پڑھ کر ہنسی آتی ہے لیکن اس تفصیل کے سامنے تو وہ سب پانی بھرتے ہیں۔ آر ایس ایس تقریباً سو سال پرانی تنظیم ہے ۔ اس کے ہزاروں کا رکن امریکہ میں ‘ہندو سیوک سنگھ’ کے نام سے کرتے ہیں ۔ ان کا دعویٰ ہے کہ ملک کو ہندو راشٹر بنانے کے لیے وہ اپنی جان قربان کرنے کے لیے تیار ہیں۔ سوال یہ ہے اس سازش پر عملدر آمد کرنے کے لیے ان میں سے کسی کی خدمات کیوں نہیں لی گئیں؟ اس سوال کے دو جوابات ہوسکتے ہیں اول تو یہ وہ نااہل ہیں یا بزدل ہیں ۔ ان کے اندر ایسے کام کو کرنے کی نہ صلاحیت ہے اور نہ جرأت ہے ۔ سوشل میڈیا پر گالی گلوچ کرنے کے سوا وہ کوئی اور کام نہیں کرسکتے نیز اس طرح کے پر خطر کاموں میں ان پر اعتبار نہیں کیا جاسکتا ۔ خفیہ ایجنسی کو اگر سنگھ پریوار پر اعتبار نہ ہو تو کسی باہر کے صاف ستھرے آدمی کی خدمات حاصل کرتی مگر اس کے لیے ایک منشیات اور اسلحہ کا تاجر ہی ملا۔
ایک سوال یہ بھی ہے کہ نکھل گپتا آخر کس کوغیر قانونی اسلحہ فروخت کرتا تھا کیونکہ ہندوستانی فوج کو ہتھیار کی فراہمی کے لیے وزارت دفاع موجود ہے ۔ اس سے بھی اہم سوال یہ ہے کہ اس نے یہ کاروبار کرنے کے لیے گجرات کو اپنا مرکز کیوں بنایا ؟ وہ اگر ایسا نہ کرتا تو گجرات پولیس کو مطلوب نہ ہوتا ۔ اس سے قبل اڈانی کے زیر اہتمام بندر گاہ پر ہزاروں کروڈ کی ہیروئن پکڑی گئی اور اب گجرات کے اندر منشیات کا ایک مطلوب شخص جاسوسی کے الزام میں امریکہ کے ہتھے چڑھ گیا ۔ دنیا بھر سے دہشت گردی کا خاتمہ کرنے والے وزیر اعظم نریندر مودی اور گجرات ہی کے رہنے والے وزیر داخلہ کے گھر میں آخریہ کیا چل رہا ہے ؟ اتنی نازک مہم پر کام کرنے والا نکھل گپتا اس قدر کند ذہن ہے کہ وہ پہلے تو نیویارک کے علاوہ سان رانسسکو میں بھی اپنے ہدف کے بارے میں معلومات دیتا ہے اور پھر کہتا ہے کہ اسے کینیڈا میں بھی کئی لوگوں کا صفایہ کرنا ہے ۔
اس احمق کو یہ احساس بھی نہیں ہوتا کہ فون کی ساری گفتگو نکال کر شواہد کے طور پر استعمال کی جاسکتی ہے ۔ وہ اپنے فون پر ہردیپ سنگھ نجر کے قتل کا بھی اعتراف کرلیتا ہے اس طرح کینیڈا کے وزیر اعظم کو ٹروڈو کے لیے بھی آسانی فراہم کردیتا ہے ۔امریکی عدالت میں جمع کردہ فردِ جرم کے ساتھ ہندوستانی ایجنٹ سے موصول شدہ پیغامات کے اسکرین شاٹس بھی ہیں ۔ ان میں سے ایک میں اسے سارے الزامات سے بری کرنے کا ذکر ہے حالانکہ اس معلومات کا امریکی ایجنٹ سے کوئی تعلق نہیں ہے ۔ ان پیغامات میں رقومات کے لین دین کی بات اور اس تصدیق بھی موجود ہے ۔ نام نہاد ہٹ مین کو پیشگی رقم ایک ایسی گاڑی میں دی گئی جس میں چہار جانب کیمرے لگے ہوئے تھے اور اس ساری کارروائی کی فلمبندی کی جاچکی ہے ۔ ایک ایسی ویڈیو کال بھی عدالت میں پیش کی گئی ہے جس میں نکھل گپتا اپنے ساتھ بیٹھے چار لوگوں کو دکھا کر کہتا ہے کہ ہم سب اس کارروائی کا انجام دیکھنے کا شدت انتظار کررہے ہیں ۔ ایک پیغام میں وہ کہتا ہے کہ گر پتونت نجر کی موت کے بعد محتاط ہوگیا ہوگا اس لیے اگر کوئی اس کے ساتھ ہو تو اسے بھی مار دیا جائے ۔
سرکار کو اس مہم سے دستبردادر ہونے سے روکنے کے لیے وہ پہلے تو وزیر اعظم کے دورے سے قبل ہی کام کو انجام دینے پراصرار کرتا ہے مگر اس میں تاخیر بعد کہتا ہے دورے کے دوران یہ نہیں کیا جائے ۔ اس کے باوجود اگر وزارت خارجہ کا ترجمان کہے کہ اس میں سرکار ملوث نہیں ہے تو اس پر کون یقین کرے گا ؟ اس کے ساتھ یہ سوال بھی پیدا ہوجائے گا کہ اگر حکومت نے نہیں تو کس کی ایماء پر اس سازش کو رچا گیا اور سرکار ان کو کیا سزا دے گی یا نہیں ؟ اس معاملے کو اگر کوئی سنگھ پریوار کی جانب موڑنے کی کوشش کرے تو اس میں کوئی مشکل نہیں ہے ۔ نکھل گپتا کا امریکی افسران کو یہ ساری معلومات فراہم کرکے آسانی پکڑا جانا اس کے ڈبل ایجنٹ ہونے کا شک بھی پیدا کرتا ہے ۔ معروف صحافی شیکھر گپتا اس معاملے کو اتنے دن صیغۂ راز میں رکھنے پر شک ظاہر کرتے ہیں لیکن شواہد جمع کرنے کے لیے یہ ضروری تھا ۔ اس کے علاوہ اخبارواشنگٹن پوسٹ نے یہ بھی لکھا ہے کہ بائیڈن انتظامیہ کو اس مبینہ سازش کے بارے میں جب اگلے ماہ یعنی جولائی علم ہوگیا اور اس نے اسے ہندوستانی حکومت کے اعلیٰ حکام کے ساتھ اٹھایا۔
اخباری رپورٹ کے مطابق اگست کے شروع میں قومی سلامتی کے مشیر جیک سلیوان نے خطے کے ایک اور ملک میں اپنے ہم منصب اجیت ڈوول سے ملاقات کے دوران ذاتی طور پر اپنے خدشات پیش کیے ۔ آگے چل کر اسی پیغام کو سنٹرل انٹیلی جنس ایجنسی کے ڈائریکٹر ولیم برنز نے ہندوستان کی خارجہ خفیہ ایجنسی کے ریسرچ اینڈ اینیلسز ونگ کے سربراہ روی سنہا سے ملنے کے لیے نئی دہلی کا دورہ کیا ۔ صدر بائیڈن نے بھی اس معاملے کو ستمبر میں نئی دہلی کے اندر گروپ۔ 20 سربراہی اجلاس میں نریندرمودی سے ملاقات کے دوران اٹھایا۔ یہ سب ہونے کے باوجود جب پچھلے ہفتہ اس سازش کے بارے میں پہلی بار فنانشل ٹائمز کی رپورٹ شائع کی تو ہندوستانی عہدے داروں نے حیرت اور تشویش کا اظہار کیا ۔امریکی اہلکار ایڈرین واٹسن کے مطابق،ان ہندوستانی ہم منصب نے کہا کہ اس نوعیت کی سرگرمی ان کی پالیسی نہیں ہے ۔
حکومت ِ ہندنے اس میں ملوث ہونے کے الزامات کی چھان بین کے لیے ایک اعلیٰ سطحی انکوائری قائم کردی ہے مگر ‘اب پچھتاوے کا ہوت جب چڑیا چگ گئی کھیت’۔ نکھل کے ذریعہ جو نقصان ہونا تھا سو ہوچکا۔ یہ تو اتفاق ہے کہ جنوب ایشیا میں چین کے بڑھتے ہوئے رسوخ کوکم کرنے کے لیے امریکہ کو ہندوستان کی ضرورت ہے ورنہ کب کا ہنگامہ ہوگیا ہوتا لیکن اس کے ذریعہ چین ہندوستان پر دباو ڈال کر بلیک میل کرے گا اور حکومت ہند کے لیے اس کے احکامات کی بجا آوری کے سوا کوئی چارۂ کار نہیں ہوگا۔ نکھل گپتا عرف نِک کی یہ رسوائی ایک فرد کی ناکامی نہیں ہے بلکہ اس کی ذمہ داری اس کے آقاؤں پر ہے جنھوں نے ایک غلط کام کے لیے غلط فرد کا انتخاب کرکے عظیم سفارتی غلطی کا ارتکاب کیا۔ ملک کے عوام کو چاہیے کہ وقت آنے پر اس کا ارتکاب کرنے والوں کوقرار واقعی سزا دے ۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
یہ سب کٹھ پتلیاں رقصاں رہیں گی رات کی رات وجود بدھ 21 فروری 2024
یہ سب کٹھ پتلیاں رقصاں رہیں گی رات کی رات

تشکیل سے پہلے نئی حکومت کا خاتمہ وجود بدھ 21 فروری 2024
تشکیل سے پہلے نئی حکومت کا خاتمہ

سمجھوتہ ایکسپریس : متاثرین 17 سال سے انصاف کے متلاشی وجود بدھ 21 فروری 2024
سمجھوتہ ایکسپریس : متاثرین 17 سال سے انصاف کے متلاشی

یہ کمپنی نہیں چلے گی!! وجود منگل 20 فروری 2024
یہ کمپنی نہیں چلے گی!!

امریکی جنگی مافیااورعالمی امن وجود منگل 20 فروری 2024
امریکی جنگی مافیااورعالمی امن

اشتہار

تجزیے
پاکستان کی خراب سیاسی و معاشی صورت حال اور آئی ایم ایف وجود پیر 19 فروری 2024
پاکستان کی خراب سیاسی و معاشی صورت حال اور آئی ایم ایف

گیس کی لوڈ شیڈنگ میں بھاری بلوں کا ستم وجود جمعرات 11 جنوری 2024
گیس کی لوڈ شیڈنگ میں بھاری بلوں کا ستم

سپریم کورٹ کے لیے سینیٹ قرارداد اور انتخابات پر اپنا ہی فیصلہ چیلنج بن گیا وجود جمعرات 11 جنوری 2024
سپریم کورٹ کے لیے سینیٹ قرارداد اور انتخابات پر اپنا ہی فیصلہ چیلنج بن گیا

اشتہار

دین و تاریخ
دین وعلم کا رشتہ وجود اتوار 18 فروری 2024
دین وعلم کا رشتہ

تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب وجود جمعرات 08 فروری 2024
تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب

حقوقِ انسان …… قرآن وحدیث کی روشنی میں وجود منگل 06 فروری 2024
حقوقِ انسان …… قرآن وحدیث کی روشنی میں
تہذیبی جنگ
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی وجود اتوار 19 نومبر 2023
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی

مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت

سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے وجود منگل 15 اگست 2023
سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے
بھارت
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا وجود پیر 11 دسمبر 2023
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا

بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی وجود پیر 11 دسمبر 2023
بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی

بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک وجود بدھ 22 نومبر 2023
بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک

راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات
افغانستان
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے وجود بدھ 11 اکتوبر 2023
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے

افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں وجود اتوار 08 اکتوبر 2023
افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں

طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا وجود بدھ 23 اگست 2023
طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا
شخصیات
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے وجود اتوار 04 فروری 2024
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے

عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے
ادبیات
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر وجود پیر 04 دسمبر 2023
سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر

مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر وجود پیر 25 ستمبر 2023
مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر