وجود

... loading ...

وجود

لوٹ مچ گئی ہے کیا؟

بدھ 27 ستمبر 2023 لوٹ مچ گئی ہے کیا؟

عطا محمد تبسم

آپ نے اس اندھے کا لطیفہ تو سنا ہوگا، جو ایک دعوت میں شریک ہوا۔اس نے اپنے ہمراہی سے یہ کہہ رکھا تھا کہ جب دستر خوان لگ جائے تو مجھے ، ایک کہنی مار کر اشارہ کردینا، جب کھانا شروع ہو تو مجھے ایک اور کہنی کا ٹہوکہ دینا تو میں سمجھ جاؤں اور کھانا شروع کردوں گا۔ اب محفل میں دستر خوان لگ گیا۔ اور اس کے ساتھی نے ، اسے کہنی کا ٹہوکہ دے کر اشارہ بھی دے دیا۔ اس اثنا میں کھانا لگ گیا۔ لیکن ابھی کھانا شروع نہیں ہوا تھا۔ اتفاق سے اندھے کے ساتھی کا ہاتھ اس سے ٹکرایا، اندھے نے کھانا شروع ہونے کا اشارہ سمجھ کر کھانا شروع کر دیا۔ چونکہ کھانا شروع نہیں ہوا تھا۔ اس لیے اندھے کو روکنے کے لیے اس نے دوبارہ کہنی ماری، تو اندھے نے تیزی سے کھانا شروع کر دیا۔ اب اس کے ساتھی نے گھبرا کر اندھے کو روکنے کے لیے دو تین کہنی ماری تاکہ وہ کھانا بند کردے ۔ اندھے نے مزید تیز رفتاری سے کھانے پر ہاتھ چلاتے ہوئے پوچھا کیا لوٹ مچ گئی ہے ؟
پاکستان میں گزشتہ عرصے میں جو لوٹ مار کا بازار گرم ہوا ہے ، اس کی مثال ایسی ہی ہے “جیسے لوٹ مچ گئی ہو”۔لوٹ مار کرنے والے بہت با اختیار ہیں، اس لیے اب نہ تو کوئی ان پر ہاتھ ڈالتا ہے ، اور نہ ہی ان کے بارے میں کوئی تحقیقات اور مقدمات بنتے ہیں۔ اور اگر یہ ہوتا بھی ہے ،”تو لے کے رشوت پھنس گیا ہے ، دے کے رشوت چھوٹ جا”معاملہ ہوتا ہے ۔ تین چار ماہ سے تحقیقاتی ادارے لاہور میں منشیات کے اسمگلنگ کے ایک کیس کی تفتیش کررہے تھے ۔ اب اس سلسلے میں ہولناک انکشافات ہوئے ہیں ، وہ یہ ہیں کہ اس میں انسداد منشیات کے ایک ڈی ایس پی ملوث ہیں۔ جن کو لوگ پیار سے “مظہری “کہتے ہیں۔ چونکہ یہ ہیروئن کی اسمگلنگ ڈرون کے ذریعے ہورہی تھی اور بھارتی پنجاب تک اس کے سرے جاتے تھے ، اس لیے بڑی ہائی لیول کی انویسٹی گیشن ہوئی۔ ورنہ اس کیس کا پتہ بھی نہ چلتا۔ اس کیس میں 35 کلو ہیروین پکڑی گئی لیکن گرفتاری کی ایف آئی آر میں صرف 400 گرام ہیروین دکھائی گئی۔ یہ لمبا ہاتھ تو پولیس والوں نے مارا۔ جو ڈی ایس پی نارکوٹک اس کیس میں ملوث ہیں ، ان کا سابقہ ریکارڈ بھی شاندار ہے ، انھیں 1994 سے لے کر اب تک چھ مرتبہ ملازمت سے برطرف کیا گیا اور غیر قانونی سرگرمیوں میں ملوث ہونے کے الزام میں 45 مرتبہ ملازمت سے معطل کیا گیا، جن میں زیادہ تر منشیات کی اسمگلنگ سے متعلق کیس ہیں۔ ان کی مبینہ غیر قانونی جائیدادوں کی مالیت کا تخمینہ 2 ارب روپے سے زیادہ ہے ، لاہور کے تھانوں میں ان کے خلاف 13مجرمانہ مقدمات درج ہیں۔ ان کے اپنے محکمے اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ (ACE)لاہور نے ان کے خلاف پانچ فوجداری مقدمات درج کرائے ہیں۔ وہ ڈیفنس ہاؤسنگ اتھارٹی لاہور میں 4 کنال کے ولا میں رہائش پزیر اور ڈی ایچ اے میں سات مزید مکانات کا مالک بھی ہے ۔ پولیس سروس کے دوران اس نے 125 مہنگی کاروں بھی خریدی ، لاہور کے ایک سابق سی سی پی او نے مجرمانہ ریکارڈ رکھنے کے باوجود مظہر کو لاہور میں اے این آئی یو کا سربراہ مقرر کیا تھا۔ ٹیپ کا بند یہ ہے کہ ملزم اب مفرور ہے اور انڈر گراونڈ ہے ۔
اسی طرح کچھ عرصے پہلے وزیراعظم ہاؤس میں بلوچستان میں ہونے والی تیل اور پیٹرول کی اسمگلنگ سے متعلق ایک تحقیقاتی رپورٹ جمع کرائی گئی ہے ، جس میں انکشاف کیا گیا ہے انتیس سیاستدان اور نوے کے قریب سرکاری افسران ایران سے پٹرول کی اسمگلنگ میں ملوث ہیں۔ اب اس رپورٹ پر بھی چوہدری شجاعت حسین کے مقولے ” مٹی پاؤ”۔پر عمل کیا جارہا ہے ۔ اس اسمگلنگ میں 50 ہزار سے زائد گاڑیاں رجسٹرڈ ہیں روزانہ 600 گاڑیوں کو اجازت دی جاتی ہے کہ وہ ایران سے تیل لے کر آئیں جس کے لیے باقاعدہ ڈپٹی کمشنر کی طرف سے ان کو ٹوکن جاری کیا جاتا ہے ۔ کہا جارہا ہے کہ 15 لاکھ لوگوں کا اس سے روزگار وابستہ ہے ۔ اب ہم اتنے لوگوں کو بے روز گار تو نہیں کرسکتے ۔
سندھ میں پیپلز پارٹی کی حکومت دو دہائیوں سے قائم ہے ، اس کی کرپشن کے ریکارڈ سب سے زیادہ ہیں۔سندھ کے مالیاتی نظام میں 163 ارب روپے سے زائد کی مالی بے ضابطگیوں کا انکشاف تو آڈیٹر جنرل آف پاکستان نے کیا ہے ۔ اس کی سال برائے 2019 تا 2020 کی رپورٹ دیکھ لیں، جس میں آڈیٹر جنرل آف پاکستان نے سندھ حکومت کی جانب سے من پسند افسران اور ملازمین کو نوازنے کے لیے 3 ارب روپے خلاف ضابطہ تقسیم کرنے ، مختلف محکموں میں خریداری کی مد میں 47 ارب روپے اور بغیر دستاویزی ثبوت کے ریکارڈ 113 ارب خرچ کرنے کے بارے میں تفصیل دی ہے ۔ سندھ حکومت نے ملازمین و افسران کو 2 ارب کے قرضے دیے جو کہ تاحال واپس نہیں لیے گئے ہیں۔ سندھ حکومت نے سرمایہ کاری کی مد میں ملنے والے 9 ارب روپے منافع کا ریکارڈ بھی ظاہر نہیں کیا۔ نسلہ ٹاور کی زمین کی غیر قانونی الاٹمنٹ کرنے والے پیپلز پارٹی کے فرنٹ مین منظور قادر کاکا فی الحال گرفتار ہیں، لیکن ان کی ضمانت کی بھرپور کوشش جاری ہیں۔
منظور قادر کاکا کے خلاف کراچی میں تقریبا 50 ارب روپے کی زمینوں کی الاٹمنٹ اور زمینوں کی حیثیت تبدیل کرنے کی انکوائری اور تحقیقات بھی زیر التوا ہیں ۔ یہ تو کرپشن اور لوٹ مار کے نظام کی چند جھلکیاں ہیں، ورنہ لوٹنے والوں کو بچانے والے ہمیشہ سرگرم رہتے ہیں، عمر عطا بندیال جاتے جاتے جن نیب مقدمات کو بحال کرگئے ہیں، ان کی تعداد 1800 سے زائد ہے ، اور اس میں سارے سیاست دان، بیوروکریٹ، اور اعلیٰ افسران ملوث ہیں، جو ہمیشہ سے مقدس گائے ہیں، اور ان پر کوئی ہاتھ نہیں ڈالتا۔


متعلقہ خبریں


مضامین
بہار کو آنے سے نہیں روک سکتے! وجود جمعه 19 جولائی 2024
بہار کو آنے سے نہیں روک سکتے!

نیلسن منڈیلا ۔قیدی سے صدر بننے تک کا سفر وجود جمعه 19 جولائی 2024
نیلسن منڈیلا ۔قیدی سے صدر بننے تک کا سفر

سیکرٹ سروس کے منصوبے خاک میں مل گئے ! وجود جمعه 19 جولائی 2024
سیکرٹ سروس کے منصوبے خاک میں مل گئے !

معرکۂ کرب و بلا جاری ہے!!! وجود بدھ 17 جولائی 2024
معرکۂ کرب و بلا جاری ہے!!!

عوام کی طاقت کے سامنے وجود بدھ 17 جولائی 2024
عوام کی طاقت کے سامنے

اشتہار

تجزیے
نریندر مودی کی نفرت انگیز سوچ وجود بدھ 01 مئی 2024
نریندر مودی کی نفرت انگیز سوچ

پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ وجود منگل 27 فروری 2024
پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ

ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے! وجود هفته 24 فروری 2024
ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے!

اشتہار

دین و تاریخ
امیر المومنین، خلیفہ ثانی، پیکر عدل و انصاف، مراد نبی حضرت سیدنا فاروق اعظم رضی اللہ عنہ… شخصیت و کردار کے آئینہ میں وجود پیر 08 جولائی 2024
امیر المومنین، خلیفہ ثانی، پیکر عدل و انصاف، مراد نبی حضرت سیدنا فاروق اعظم رضی اللہ عنہ… شخصیت و کردار کے آئینہ میں

رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت وجود بدھ 13 مارچ 2024
رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت

دین وعلم کا رشتہ وجود اتوار 18 فروری 2024
دین وعلم کا رشتہ
تہذیبی جنگ
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی وجود اتوار 19 نومبر 2023
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی

مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت

سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے وجود منگل 15 اگست 2023
سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے
بھارت
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا وجود پیر 11 دسمبر 2023
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا

بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی وجود پیر 11 دسمبر 2023
بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی

بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک وجود بدھ 22 نومبر 2023
بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک

راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات
افغانستان
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے وجود بدھ 11 اکتوبر 2023
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے

افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں وجود اتوار 08 اکتوبر 2023
افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں

طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا وجود بدھ 23 اگست 2023
طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا
شخصیات
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے وجود اتوار 04 فروری 2024
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے

عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے
ادبیات
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر وجود پیر 04 دسمبر 2023
سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر

مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر وجود پیر 25 ستمبر 2023
مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر