وجود

... loading ...

وجود
وجود

اللہ کے شیروں کو آتی نہیں روباہی

جمعه 17 مارچ 2023 اللہ کے شیروں کو آتی نہیں روباہی

ڈاکٹر سلیم خان
۔۔۔۔۔۔۔

عصر حاضر کی سیاست میں کام نہیں کیا جاتا بلکہ تاثرسازی کی جاتی ہے ۔ عوام کے طرز فکر کو اپنے قابو میں کرنے کی سعی اس طرح کی جاتی ہے کہ لوگ پکار اٹھیں کچھ بھی ہوجائے ’آئے گا تو مودی ہی‘۔ یہ عوام کو مرعوب کرکے خود کو ناقابلِ تسخیر کی حیثیت سے پیش کرنے کی حکمت عملی ہے ۔ انگریزی زبان میں اس کو ( TINA یعنی THERE IS NO ALTERNATIVE کوئی متبادل ہے ہی نہیں ) کہتے ہیں۔ یہ بہت مشکل کام ہے ۔ اس کے لیے میڈیا کو آلۂ کار بناکر بڑی محنت کرنی پڑتی ہے ۔ یہ کام کیسے کیا جاتا ہے اس کی ایک مثال ابھی حال میں تمل ناڈو کے اندر سامنے آئی ۔ یکم مارچ کوچنئی میں وزیر اعلی ایم کے اسٹالن کی 70ویں سالگرہ کے جشن کا اہتمام کیا گیا تھا ۔ اس تقریب میں بہار کے نائب وزیر اعلیٰ تیجسوی یادو اور اترپردیش سے سابق وزیر اعلیٰ اکھلیش یادو موجود تھے ۔ کانگریس کی نمائندگی ملک ارجن کھڑگے نے کی ۔ یہ تینوں اور خود اسٹالن پسماندہ طبقات کی نمائندگی کرتے ہیں ۔ اس موقع پر اپوزیشن اتحاد کے حوالے سے ایم کے اسٹالن نے ایک ایسا اعلان کردیا جس نے بی جے پی کی نیند اڑادی ۔ انہوں نے کہا کہ تیسرے محاذ کا قیام ایک بے ایمانی ہے یعنی اس سے اپوزیشن اتحاد پارہ پارہ ہوجائے گا۔ غیر بی جے پی ووٹ تقسیم ہوجائیں گے اور کمل کے بلے ّ بلے ہوجائیں گے ۔
کانگریس کے نئے صدر ملکارجن کھرگے نے اس موقع پر 2024کے لوک سبھا انتخابات میں اپوزیشن اتحاد کو لے کر ایک بڑا بیان دے کر بی جے پی کی جان نکال دی ۔ دراصل ان سے ایک ایسا سوال کیا گیا تھا کہ جس کے سبب حزب اختلاف میں پھوٹ پڑ جائے یعنی متحدہ اپوزیشن میں وزیر اعظم کا امیدوار کون ہوگا؟ انہوں نے جواب دیاکہ ہم خیال اپوزیشن جماعتوں کو تقسیم کرنے والی طاقتوں کے خلاف اکٹھا ہونا چاہیے ۔ یہ بات اہم نہیں ہے کہ کون قیادت کرے گا یا وزیر اعظم کا چہرہ کون ہوگا؟ ہم متحد ہو کر لڑنا چاہتے ہیں، یہ ہماری خواہش ہے ۔ کھڑگے کا بیان قومی سطح پر سیاسی اتحاد کی جانب یہ اہم پیش رفت تھی ۔ اپوزیشن کی جانب سے وزیر اعظم کے امیدوار کی بابت فاروق عبداللہ کا بھی کہنا تھا کہ جب ہم سب متحد ہو کر جیت جائیں گے تو پھر اس کے بعد فیصلہ ہو گا کہ اس ملک کی قیادت کرنے والا بہترین شخص کون ہے؟ جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا ایم کے اسٹالن وزیر اعظم کے امیدوار ہو سکتے ہیں؟ اس پر عبداللہ نے کہا وہ وزیراعظم کیوں نہیں بن سکتے؟ اس میں غلط کیا ہے ؟
اس تقریب سے تین دن پہلے بہار کے پسماندہ وزیر اعلیٰ نتیش کمار نے 2024 کے لوک سبھا انتخابات سے قبل اپوزیشن اتحاد کے مطالبے کو دہراتے ہوئے کو کہا تھا کہ اگر کانگریس سمیت تمام اپوزیشن جماعتیں آئندہ لوک سبھا انتخابات ایک ساتھ لڑیں تو پھر بھارتیہ جنتا پارٹی 100 فیصدہار جائے گی۔ پورنیہ میں گرینڈ الائنس کی ریلی سے خطاب کرتے ہوئے کمار نے کہا تھا کہ متحدہ حزب اختلاف کے سامنے بی جے پی 100 سے بھی کم سیٹوں پر سمٹ جائے گی۔ قومی سطح پر غیر معمولی پیش رفت کی خبر سے توجہ ہٹانے کے لیے جو افواہ اڑائی گئی اس میں ایکشن پٹھان فلم سے بھی زیادہ خطرناک تھا ۔ اس ڈامہ کا منظرنامہ ملاحظہ فرمائیں:’’تمل ناڈو میں بہاری مزدوروں کو طالبانی سزا دی جارہی ہے ۔ ان کے لیے ہندی بولنا گناہ ہوگیا ہے ۔مزدوروں کے تنازع پر اب ہندی بولنے والوں کو چن چن کر کاٹا جارہا ہے ۔ ان لوگوں نے 12 مزدوروں کو ایک کمرے میں پھانسی کے پھندے پر لٹکا دیا‘‘۔ اپنی ناقابلِ تسخیر شبیہ کو قائم و دائم رکھنے کے لیے اتنا بھیانک جھوٹ گھڑا گیا۔ پہلے یہ مسلمانوں کو بدنام کرنے کے لیے کیا جاتا تھا اب بہار کی صوبائی سرکار کو نشانہ بنایا گیا۔
کوئمبٹور سے کسی نامعلوم ارمان نے بھاسکر کے نمائندے کو فون پر بتایا کہ ان سے پوچھا جاتا ہے کہ کیا تم ہندی بولنے والے ہو اور ہاں کہنے پر کاٹ دیا جاتا ہے ۔اس خبر میں 15 سے زیادہ مزدوروں کے قتل کا دعویٰ کیا گیا تھا ۔ اس ارمان نے بتایا تھا کہ وہ جہاں پھنسا ہواہے وہاں ایک ہزار مزدور ہیں ۔ایک دن قبل اس کے سامنے ایک دوست کی چار انگلیاں کاٹ دی گئیں ۔ وہ کسی طرح جان بچا کر بھاگا۔ انتظامیہ سے شکایت کی تو اس نے کہا کہ تم بھی انہیں مارو۔ ارمان نے اپنے گاوں جمئی کے انتظامیہ سے رابطہ کیا تو انہوں نے بہار آکر شکایت کرنے کی صلاح دی ۔ مزدوروں کے کئی ایسے ویڈیوز سامنے آئے کہ جن میں انہیں دوڑا دوڑا کر مارا جارہا تھا۔ یہ دعویٰ بھی کیا گیا کہ اسپتال میں علاج تک نہیں مل رہاہے ۔ ان ویڈیوز کو وزیر اعلیٰ اور وزیر اعظم کو بھی بھیجا گیا تاکہ وہ اس تشدد کو روکنے کے لیے کچھ کریں۔یہ معاملہ یہیں ختم نہیں ہوا ۔ اس کے بعد بھاسکر کا نامہ نگار بہار پہنچ گیا اور وہاں سے دکھ بھری داستانیں پیش کرنے لگا۔ نام نہاد بھاگ کر آنے والے اور ان کے اہل خانہ تمل ناڈو سے زیادہ اپنی حکومت سے ناراض تھے ۔ انہیں شکایت تھی کہ تیجسوی یادو نے اسٹالن کی سالگرہ میں شرکت تو کی مگر ان کے تحفظ کی بابت ایک لفظ نہیں کہا۔ ٹوئٹر پر بی جے پی ٹرول آرمی تیجسوی یادو کے پیچھے پڑگئی اور ان کی بے حسی کو کوسنے لگی۔ یہاں تک کہ بی جے پی رکن اسمبلی نے تیجسوی یادو کے استعفیٰ کا مطالبہ کردیا ۔ ایوانِ اسمبلی کے اندر ہنگامہ ہوگیا ۔ یہ سارا ناٹک اپوزیشن اتحاد کی خبر سے توجہ ہٹانے اور اپنے سیای حریف کو بدنام کرنے کے لیے کیا جارہا تھا ۔ تمل ناڈو سے حقیقت کا پتہ لگانے کے بعد مہاگٹھ بندھن میں شامل پارٹیوں نے اس ڈرامہ کو بی جے پی کی سازش قراردے دیا۔ بہار کے نائب وزیراعلیٰ تیجسوی یادو نے تمل ناڈو میں بہار کے مزدوروں پر مبینہ حملے کے معاملے میں مرکزی حکومت کی خاموشی پر سوال اٹھایا ۔ انہوں نے پوچھا کہ مرکزی وزارت داخلہ اس کی فکر کیوں نہیں کر رہی ہے ؟ مودی حکومت اس معاملے پر خاموش کیوں ہے ؟۲؍ ریاستوں میں تنازعہ ہوتومرکز کو اس کا حل نکالنا چاہیے لیکن جو بیماری موجود ہی نہ ہوتواس کا علاج کیسے کیا جائے ؟
تیجسوی یادو نے الزام لگایا کہ اپوزیشن کی کامیاب ریلی سے گھبراکریہ حرکت کی گئی تھی ۔ جے ڈی یوکے پرنسپل جنرل سکریٹری کے سی تیاگی نے بھی کہاکہ جو کچھ بی جے پی دکھانے کی کوشش کررہی ہے ویسے واقعات رونما نہیں ہوئے ۔ وہ بولے تمل ناڈو میں اپوزیشن جماعتوں کی بہت کامیاب ریلی ہوئی ۔اس سے ڈر کر قومی سطح پرایسے کسی بھی بڑے اتحاد کو روکنے کے لیے جس میں نتیش کمار اور ایم کے اسٹالین کا اہم کردار ہو، شمالی ہنداور جنوبی ہند کے درمیان بٹوارہ دکھایا جارہا ہے ۔ اس دوران آرجے ڈی کے قومی ترجمان اور راجیہ سبھا رکن پروفیسرمنوج جھا نے الزام لگا دیا کہ فرضی ویڈیوکی بنیاد پر۲؍خطوں کو لڑانے کے لیے کی جانے والی کوشش کا پردہ فاش ہوگیاہے ۔ انہوں نے
کہا کہ بی جے پی اور اس کی ٹرول آرمی جس کام میں لگی ہوئی تھی لیکن بہت جلد اس کا نقاب اتر گیا۔ منوج جھا نے تصدیق کی کہ فرضی ویڈیو وائرل کرنے اور جھوٹی خبر پھیلانے والے میڈیا اداروں اور صحافیوں پر مقدمہ بھی درج ہوگیاہے ۔
یہ عجیب صورتحال تھی کہ بہار بی جے پی شور مچارہی تھی جبکہ مرکز اور تمل ناڈو میں اس کی شاخ بالکل خاموش تھی۔اس دوران تمل ناڈو میں تارکین وطن مزدوروں پر حملے کے الزامات کو لے کر اسٹالن حکومت حرکت میں آگئی ۔ ریاستی سرکار نے دعویٰ کیا کہ پولیس نے تین لوگوں کے خلاف مقدمہ درج کیا ہے ۔ جس میں ایک بی جے پی رہنما اور دینک بھاسکر کے ایڈیٹر سمیت دو صحافیوں کے خلاف پولیس نے جھوٹی اور بے بنیاد خبریں پھیلانے کا کا الزام لگایا ہے ۔ ملزمین کی فہرست میں بی جے پی کا ترجمان پرشانت امراؤ بھی شامل تھا ۔ اس کے علاوہ دائیں بازو کی ویب سائٹ OpIndia کے سی ای او راہول روشن اور اس کی ایڈیٹر نوپور جے شرما کے خلاف فیک نیوز پھیلانے اور تمل ناڈو میں تارکین وطن مزدوروں میں خوف و ڈرکا احساس پیدا کرنے کی خاطر “جھوٹا پروپیگنڈہ پھیلانے کے الزام میں تعزیرات ہند کی چار دفعہ 153، 153A(1)(a)، 505(1)(b) اور 505(1)(c) کے تحت مختلف گروہوں کے درمیان مذہب، ذات اور زبان کی بنیاد پربدامنی، دشمنی یا نفرت کو فروغ دینے کا مقدمہ درج کیا گیا۔
افواہ پھیلانے کے اس سنگین معاملے میں بہار پولیس نے راکیش رنجن، امن کمار، منیش کشیپ اور یووراج سنگھ کو ایف آئی آر میں نامزد کیا ۔ آگے چل کر پتہ چلا کہ وہ ویڈیو 6 مارچ کو گوپال گنج کے رہنے والے مرکزی ملزم راکیش رنجن نے دو آدمیوں کی مدد سے پٹنہ کی بنگالی کالونی میں شوٹ کی تھی۔ پولیس کے مطابق ملزم نے اعتراف جرم میں تسلیم کیا کہ اس کا مقصد بہار اور تمل ناڈو پولیس کو گمراہ کرنا تھا۔ راکیش کے مالک مکان نے تصدیق کی کہ یہ ویڈیو کواس کے اپنے گھر پر شوٹ کیا گیا تھا۔ پولیس نے راکیش رنجن اور امان کمار کو توگرفتار کرلیا مگر منیش کشیپ اور یووراج سنگھ فرار ہوگئے ۔یہ کارنامہ بھی فیکٹ چیک کرنے والے معروف صحافی محمد زبیر کا ہے جنہوں نے پھر ایک بار فرقہ پرستوں کو بے نقاب کردیا ۔ محمد زبیر کو ڈرانے دھمکانے کے لیے شاہ اور یوگی کی پولیس نے کیا نہیں کیا مگر وہ نہیں ڈرا بلکہ ڈرانے والے خود بھاگے بھاگے پھر رہے ہیں ۔انہوں نے ثابت کردیا کہ سرکس میں رِنگ ماسٹر کے کوڑے پر ناچنے والے نہیں بلکہ مودی کے جنگل راج کو بے نقاب کرنے والا اصلی شیر ہوتاہے ۔ علامہ اقبال کا شعر تو زبیر کے لیے ہے
آئین جواں مرداں حق گوئی و بیباکی
اللہ کے شیروں کو آتی نہیں روباہی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
جمہوریت کی پچ پر کھیلاجانے والا غیر جمہوری کھیل وجود جمعرات 29 فروری 2024
جمہوریت کی پچ پر کھیلاجانے والا غیر جمہوری کھیل

مریم نواز کے وعدے اور دعوے وجود جمعرات 29 فروری 2024
مریم نواز کے وعدے اور دعوے

آپریشن 'سوئفٹ ریٹارٹ' کے پانچ سال مکمل وجود جمعرات 29 فروری 2024
آپریشن 'سوئفٹ ریٹارٹ' کے پانچ سال مکمل

سیاسی کھچ۔ڑی۔۔ وجود بدھ 28 فروری 2024
سیاسی کھچ۔ڑی۔۔

جمہوریت کے خون سے لتھڑا ایوان وجود بدھ 28 فروری 2024
جمہوریت کے خون سے لتھڑا ایوان

اشتہار

تجزیے
پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ وجود منگل 27 فروری 2024
پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ

ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے! وجود هفته 24 فروری 2024
ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے!

گرانی پر کنٹرول نومنتخب حکومت کا پہلا ہدف ہونا چاہئے! وجود جمعه 23 فروری 2024
گرانی پر کنٹرول نومنتخب حکومت کا پہلا ہدف ہونا چاہئے!

اشتہار

دین و تاریخ
دین وعلم کا رشتہ وجود اتوار 18 فروری 2024
دین وعلم کا رشتہ

تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب وجود جمعرات 08 فروری 2024
تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب

حقوقِ انسان …… قرآن وحدیث کی روشنی میں وجود منگل 06 فروری 2024
حقوقِ انسان …… قرآن وحدیث کی روشنی میں
تہذیبی جنگ
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی وجود اتوار 19 نومبر 2023
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی

مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت

سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے وجود منگل 15 اگست 2023
سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے
بھارت
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا وجود پیر 11 دسمبر 2023
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا

بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی وجود پیر 11 دسمبر 2023
بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی

بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک وجود بدھ 22 نومبر 2023
بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک

راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات
افغانستان
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے وجود بدھ 11 اکتوبر 2023
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے

افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں وجود اتوار 08 اکتوبر 2023
افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں

طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا وجود بدھ 23 اگست 2023
طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا
شخصیات
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے وجود اتوار 04 فروری 2024
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے

عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے
ادبیات
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر وجود پیر 04 دسمبر 2023
سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر

مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر وجود پیر 25 ستمبر 2023
مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر