وجود

... loading ...

وجود
وجود

نیشنل ہیرو ز کا شہر اور سلیم الہی

بدھ 15 مارچ 2023 نیشنل ہیرو ز کا شہر اور سلیم الہی

روہیل اکبر
۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ساہیوال بلا شبہ نیشنل ہیروز کا شہر ہے لیکن بدقسمتی یہ ہے کہ جو بھی یہاں سے نکلا پھر نہ پلٹا۔ منٹگمری بسکٹ فیکٹری کے مالک شیخ بشارت نے ساہیوال کے نوجوانوں کے لیے بہت کام کیا۔خاص کر انہیں کھیلوں کی طرف راغب کرنے میں انکا بہت بڑا ہاتھ ہے۔ کرکٹ کی دنیا کے روشن ستارے مشتاق احمدسمیت تین بھائیوں منظور الٰہی، ظہور الٰہی اور سلیم الہی بھی شیخ صاحب کی بدولت اس سطح تک پہنچ پائے۔ لیکن ان کے بعد ساہیوال میں کھیلوں کے میدان برباد ہو گئے۔ منشیات کا استعمال بڑھ گیا اور پھر نیشنل ہیروز کا یہ شہر بانجھ پن کی طرف گامزن ہوگیا۔ لیکن شیخ صاحب کی کرم نوازیوں سے ہماری قومی کرکٹ ٹیم کے سابق ٹیسٹ کرکٹر سلیم الہی نے شہر کی نوجوان نسل کو برائی سے بچانے کے لیے شیخ بشارت صاحب کا مشن دوبارہ شروع کردیا۔ اس وقت ساہیوال میں اگر کوئی کھیل کے میدان آباد کرنے کی کوشش کررہا ہے تو وہ سلیم الہی ہے ۔ جنہوں نے 1995 سے 2004 کے درمیان 13 ٹیسٹ میچ اور 48 ایک روزہ بین الاقوامی میچ کھیلے۔ ستمبر 1995 میں سری لنکا کے خلاف بین الاقوامی کرکٹ میں ڈیبیو کرتے ہوئے انہوں نے 102 ناٹ آؤٹ رنز بنائے۔ اس طرح وہ ون ڈے ڈیبیو پر سنچری بنانے والے پاکستان کے پہلے کھلاڑی بن گئے ۔ ایک محدود اوورز کے ماہر سمجھے جانے والے الٰہی کی اوسط ون ڈے میں 36.17 اور لسٹ اے کرکٹ میں 52.30 ہے اوپنر کے طور پر کھیلے گئے 48 ون ڈے میں سے 28 میں ان کی اوسط 42 رہی جو کہ کسی بھی پاکستانی کھلاڑی کے لیے بہترین ہے ۔ سلیم الہی 1976 میں ساہیوال میں پیدا ہوئے۔ ان کے دو بڑے بھائی منظور الٰہی اور ظہور الٰہی دونوں نے پاکستان کرکٹ ٹیم کی نمائندگی کی ۔ فرسٹ کلاس کرکٹ نہ کھیلنے کے باوجود سلیم الٰہی کو 1995-96میں سری لنکا کے خلاف ہوم سیریز کے لیے منتخب کیا گیا۔ گوجرانوالہ میں کھیلی گئی تین ایک روزہ بین الاقوامی میچوں کی سیریز کے پہلے میچ میں سلیم الہی نے 133 گیندوں پر ناٹ آؤٹ 102 رنز بنائے۔ اس طرح وہ ون ڈے ڈیبیو پر سنچری بنانے والے پاکستان کے پہلے کھلاڑی بھی بن گئے سلیم الہی کی مین آف دی میچ جیتنے والی اننگز نے پاکستان کو نو وکٹوں سے فتح دلانے میں مدد کی تھی جس کے بعد انہوں نے اگلے دو میچوں میں 77 رنز بنائے اس طرح سیریز میں 179 رنز جمع ہو گئے اس کے بعد انہیں اسی سال شارجہ میں سنگر چیمپئنز ٹرافی کھیلنے کے لیے منتخب کیا گیا۔ دونوں ٹورنامنٹوں میں مسلسل کامیابی کے ساتھ الٰہی کو نومبر 1995 میں آسٹریلیا کے خلاف ٹیسٹ سیریز کے لیے منتخب کرلیاگیا ۔ دو ٹیسٹ میں وہ 10.75 کی اوسط سے 43 رنز بنانے میں کامیاب ہوئے۔ اس کے بعد انہیں وقفے وقفے سے منتخب کر نے کے بعد سائیڈ سے ڈراپ کر دیا گیا۔ اپنے ڈیبیو سے 2002 کے درمیان سلیم الٰہی نے پاکستان کے لیے 13 ٹیسٹ کھیلے جس میں 18.95 کی اوسط سے 436 رنز بنائے ۔ ون ڈے میں اپنی کامیابی کے برعکس وہ ٹیسٹ کرکٹ میں صرف ایک نصف سنچری بنانے میں کامیاب رہے۔ 2002 کے آخر میں جب پاکستان نے زمبابوے اور جنوبی افریقہ کا دورہ کیا تو انہوں نے چار میچوں میں تین سنچریاں اسکور کیں ۔ ان میں سے ایک میچ میں جنوبی افریقہ کے خلاف
انہوں نے اپنا سب سے زیادہ ا سکور 135 بنایا۔ اس میچ میں انہوں نے عبدالرزاق کے ساتھ دوسری وکٹ کے لیے 257 رنز کی شراکت داری کرکے پاکستان کو 335 رنز تک پہنچانے میں مدد کی۔ اتنی محنت اور جانفشانی کے بعد آخر کار سلیم الہی 2003 کے ورلڈ کپ کے لیے منتخب ہوئے اور چار میچوں میں انہوں نے 102 رنز بنائے۔ ایک بار نصف سنچری کی سرحد بھی عبور کی، ورلڈ کپ کے بعد انہوں نے دو ٹورنامنٹس میں پاکستان کی نمائندگی کی، جس کے بعد انہیں ٹیسٹ اور ون ڈے دونوں ٹیموں سے ڈراپ کر دیا گیا اور اب ساہیوال کے لوگوں کی خوش قسمتی ہے کہ وہ ساہیوال میں ہی ہیں اور یہاں کے نوجوانوں کو کرکٹ کھیلنا سکھا رہے ہیں۔ پاکستان کی تاریخ گواہ ہے کہ کرکٹ کے ٹاپ اسٹار ز میں ایسے افراد شامل رہے اور اب بھی ہیں جن کا تعلق غریب گھرانوں سے ہے جو ایک بلا خریدنے کی استطاعت بھی نہیں رکھتے تھے لیکن ان کے اندر ٹیلنٹ موجود تھا پھر جیسے ہی کسی عقابی نظر رکھنے والے مخلص پاکستانی کی نظر اس پر پڑی تو پھر وہی غریب خاندان کا بچہ نہ صرف شہرت کی بلندیوں تک پہنچا بلکہ مال و دولت میں بھی کسی سے پیچھے نہیں رہا۔ سلیم الہٰی بھی ایسے ہی بچوں کو تراش خراش کر قومی نیشنل ہیرو بنانا چاہتا ہے۔ اس کام کے لیے انہوں نے گورنمنٹ ہائی اسکول ساہیوال میں اپنی اکیڈمی کے لیے جگہ بھی حاصل کرلی ہے ۔
میں سمجھتا ہوں کہ ہر اچھے کام میں مشکلات زیادہ ہوتی ہیں مخالفت اس سے بڑھ کر ہوتی ہے وسائل محدود اور مسائل زیادہ ہوتے ہیں اکیلا بندہ بھی ایک حد تک کام کرتا ہے جب مشکلات اور مصیبتیں بڑھ جاتی ہیںتو پھر دل ٹوٹ جاتا ہے سلیم الہی بھی مڈل کلاس خاندان سے ہے اپنی جیب سے جو اس نے کردیا وہ بہت زیادہ ہے اب اگر ساہیوال کا ہر شہری صرف ایک سو روپے انہیں اس اکیڈمی کے لیے دیدے تو ساہیوال ایک بار پھر نیشنل ہیروز کا شہر بن سکتا ہے یہ تو سلیم الہی کا ساہیوال پر احسان ہے کہ انہوں نے اس شہر کے قدرومنزلت محسوس کرتے ہوئے اپنی زندگی کے باقی کے سال اس شہر کو دیدیے ورنہ مشتاق احمد،مجید امجد،طارق عزیز،ایچ کے ایل بھگت( بھارت کے پارلیمانی امور کے سابق مرکزی وزیر)،دلدار پرویز بھٹی،،بریگیڈیئر کلدیپ سنگھ چاند پوری،عطاش درانی،منظور الٰہی،ظہور الہی،رانا محمد حنیف خان (پاکستان کے سابق وزیر خزانہ)،نذیر ناجی،ایمانوئل نینو(عیسائی مصنف اور مترجم)،کنور مہندر سنگھ بیدی سحر(اردو کے نامور شاعر) اورسائیں ظہور( صوفی موسیقار) سمیت کئی نامور ہیروز ہیں ،قیامت تک ساہیوال کا نام بلند کرگئے مگر واپس پلٹ کر ساہیوال نہیں آئے۔ اب سلیم الہی نے اپنے شہرکا حق ادا کرنے کا فیصلہ کیا ہے تو شہری انکا بھر پور ساتھ دیں تاکہ یہ تاریخی شہر دوبارہ پھر نیشنل ہیرو پیدا کرسکے ۔
٭٭٭٭


متعلقہ خبریں


مضامین
مسلمان کب بیدارہوں گے ؟ وجود جمعه 19 اپریل 2024
مسلمان کب بیدارہوں گے ؟

عام آدمی پارٹی کا سیاسی بحران وجود جمعه 19 اپریل 2024
عام آدمی پارٹی کا سیاسی بحران

مودی سرکار کے ہاتھوں اقلیتوں کا قتل عام وجود جمعه 19 اپریل 2024
مودی سرکار کے ہاتھوں اقلیتوں کا قتل عام

وائرل زدہ معاشرہ وجود جمعرات 18 اپریل 2024
وائرل زدہ معاشرہ

ملکہ ہانس اور وارث شاہ وجود جمعرات 18 اپریل 2024
ملکہ ہانس اور وارث شاہ

اشتہار

تجزیے
پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ وجود منگل 27 فروری 2024
پاک ایران گیس پائپ لائن منصوبہ

ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے! وجود هفته 24 فروری 2024
ایکس سروس کی بحالی ، حکومت اوچھے حربوں سے بچے!

گرانی پر کنٹرول نومنتخب حکومت کا پہلا ہدف ہونا چاہئے! وجود جمعه 23 فروری 2024
گرانی پر کنٹرول نومنتخب حکومت کا پہلا ہدف ہونا چاہئے!

اشتہار

دین و تاریخ
رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت وجود بدھ 13 مارچ 2024
رمضان المبارک ماہ ِعزم وعزیمت

دین وعلم کا رشتہ وجود اتوار 18 فروری 2024
دین وعلم کا رشتہ

تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب وجود جمعرات 08 فروری 2024
تعلیم اخلاق کے طریقے اور اسلوب
تہذیبی جنگ
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی وجود اتوار 19 نومبر 2023
یہودی مخالف بیان کی حمایت: ایلون مسک کے خلاف یہودی تجارتی لابی کی صف بندی، اشتہارات پر پابندی

مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
مسجد اقصیٰ میں عبادت کے لیے مسلمانوں پر پابندی، یہودیوں کو اجازت

سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے وجود منگل 15 اگست 2023
سوئیڈش شاہی محل کے سامنے قرآن پاک شہید، مسلمان صفحات جمع کرتے رہے
بھارت
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا وجود پیر 11 دسمبر 2023
قابض انتظامیہ نے محبوبہ مفتی اور عمر عبداللہ کو گھر وں میں نظر بند کر دیا

بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی وجود پیر 11 دسمبر 2023
بھارتی سپریم کورٹ نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کی توثیق کردی

بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک وجود بدھ 22 نومبر 2023
بھارتی ریاست منی پور میں باغی گروہ کا بھارتی فوج پر حملہ، فوجی ہلاک

راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات وجود جمعه 27 اکتوبر 2023
راہول گاندھی ، سابق گورنر مقبوضہ کشمیرکی گفتگو منظرعام پر، پلوامہ ڈرامے پر مزید انکشافات
افغانستان
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے وجود بدھ 11 اکتوبر 2023
افغانستان میں پھر شدید زلزلے کے جھٹکے

افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں وجود اتوار 08 اکتوبر 2023
افغانستان میں زلزلے سے تباہی،اموات 2100 ہوگئیں

طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا وجود بدھ 23 اگست 2023
طالبان نے پاسداران انقلاب کی نیوز ایجنسی کا فوٹوگرافر گرفتار کر لیا
شخصیات
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے وجود اتوار 04 فروری 2024
معروف افسانہ نگار بانو قدسیہ کو مداحوں سے بچھڑے 7 سال بیت گئے

عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
معروف شاعرہ پروین شاکر کو دنیا سے رخصت ہوئے 29 برس بیت گئے
ادبیات
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے وجود منگل 26 دسمبر 2023
عہد ساز شاعر منیر نیازی کو دنیا چھوڑے 17 برس ہو گئے

سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر وجود پیر 04 دسمبر 2023
سولہویں عالمی اردو کانفرنس خوشگوار یادوں کے ساتھ اختتام پزیر

مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر وجود پیر 25 ستمبر 2023
مارکیز کی یادگار صحافتی تحریر