وجود

... loading ...

وجود
وجود

پاکستان میں 34 لاکھ سے زائد بچے شدید بھوک کا شکار

هفته 08 اکتوبر 2022 پاکستان میں 34 لاکھ سے زائد بچے شدید بھوک کا شکار

پاکستان میں 34 لاکھ سے زائد بچے شدید بھوک کے شکار ہیں جس میں سیلاب زدہ علاقوں میں 76 ہزار بچے خوراک کی شدید قلت کا سامنا کر رہے ہیں جس کی وجہ سے شدید غذائیت کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے۔ برطانیہ میں قائم ایک فلاحی ادارے ‘سیو دی چلڈرن’ نے اپنے جاری کردہ بیان میں کہا کہ ملک کے بیشتر حصوں میں سیلاب کی تباہ کاریوں کے بعد بھوک کے شکار افراد کی تعداد 45 فیصد تک بڑھ گئی ہے جہاں پہلے 59 لاکھ 60 ہزار لوگ خوراک کی ہنگامی قلت سے دوچار تھے اب ان کی تعداد 86 لاکھ 20 ہزار ہوگئی ہے جن کی اکثریت کا تعلق سیلاب زدہ علاقوں سے ہے۔بیان میں خبردار کیا گیا ہے کہ موسم سرما کی آمد پر بھوک کا سامنا کرنے والے افراد کی تعداد میں اضافہ ہو سکتا ہے اور اگر بر وقت اقدام نہ کیے گئے تو لاکھوں نوجوان کی زندگیوں کو خطرات لاحق ہوں گے۔ بتایا گیا کہ سیلاب کی تباہوں سے فصل اور مویشی تباہ ہوگئے ہیں اور اشیا کی عدم دستیابی کی وجہ سے قیمتوں میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ سیلاب کے بعد بنیادی ضرورت کی اشیا کی قیمتوں میں اضافہ کی وجہ سے یہ اشیا ان خاندانوں کی پہنچ سے دور ہو گئی ہیں جو سیلاب میں اپنا گھر اور سب کچھ کھونے کے بعد بے گھر بنے ہوئے ہیں۔ سیو دی چلڈرن کی نئی تحقیق میں معلوم ہوا ہے کہ سیلاب کے بعد 86 فیصد خاندان اپنا سب کچھ کھو بیٹھے ہیں جس کی وجہ سے انہیں کھانا بھی میسر نہیں ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ متاثرہ خاندان زندہ رہنے کے لیے مایوس کن اقدامات کا سہارا لے رہے ہیں جیسا کہ وہ قرض حاصل کر رہے ہیں یا کھانے کے لیے بچا ہوا سامان بیچ رہے ہیں، خیرات پر انحصار کر رہے ہیں یا اپنے بچوں کو پیسے کمانے کے لیے کام پر بھیج رہے ہیں۔ مایوسی کا شکار والدین نے کہا کہ پیسے کمانے کے لیے وہ اپنے بچوں کو باہر بھیجنے پر مجبور ہیں۔ اس صورتحال میں نوعمر بچوں کی شادیاں بھی کی جا رہی ہیں جیسا کہ 55 متاثرہ والدین نے سیو دی چلڈرن کو بتایا کہ سیلاب کے بعد انہوں نے اپنے بچوں میں سے ایک کی شادی کردی ہے، انہوں نے بتایا کہ ان کے پاس اپنے بچوں کو بھیک مانگنے کے لیے باہر بھیجنے کے علاوہ کوئی راستہ نہیں ہے تاکہ وہ کھانا خرید سکیں۔ پاکستان میں سیو دی چلڈرن کے ڈائریکٹر خرم گوندل نے اپنے بیان میں کہا کہ کھانے کی قلت سے ہونے والی تباہی ہر روز واضح ہوتی جا رہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملک می ہونے والی تباہی سے نمٹنے کے ساتھ ساتھ اب ملک کو بھوک کے شدید بحران کا سامنا ہے، ہم ایسی صورتحال کی آسانی سے اجازت نہیں دے سکتے جہاں بچے بھوک سے مر رہے ہوں کیونکہ ہم نے فوری طور پر اقدامات نہیں کیے۔ دوسری جانب جنوبی کوریا نے پاکستان کو انسانی ہمدردی کی بنیاد پر 20 لاکھ ڈالر امداد دینے کا اعلان کیا ہے۔سیلاب کی تباہی کے بعد متاثرہ علاقوں میں آلودہ پانی موجود ہونے کی وجہ سے اب دوسری تباہی یعنی پانی سے پیدا ہونی والی بیماریاں بھی ابھر رہی ہیں، جنوبی کوریا نے پہلے 3 لاکھ ڈالر کی امداد فراہم کی جبکہ اب اضافی 17 لاکھ ڈالرز دینے کا فیصلہ کیا ہے۔پاکستان میں 1986 سے امدادی کام کرنے والی فلاحی تنظیم مرسی کور نے طویل مدتی صحت اور غذائیت کے اثرات پر اپنی تشویش کا اظہار کیا ہے اور بیماری اور غذائیت کی شرح میں اضافے کی توقع ظاہر کی ہے۔پاکستان میں مرسی کور کی ڈائریکٹر ڈاکٹر فرح نورین نے کہا کہ موسم سرما کے قریب آنے سے قبل متاثرہ خاندانوں کو گرم اور محفوظ رکھنے کے لیے موسم سرما میں استعمال ہونے والے خیموں اور دیگر اشیا کی فوری ضرورت ہے تاکہ ان سے سانس کے انفیکشن جیسی صحت کے مسائل پیدا نہ ہوں۔مرسی کور فلاحی تنظیم مقامی حکومت سمیت دیگر شراکت داروں کے ساتھ مل کر سندھ اور بلوچستان میں کمیونٹی ہیلتھ آؤٹ ریچ کا انعقاد کر رہی ہے تاکہ پانی سے پیدا ہونے والی بیماریوں میں اضافے کے پیش نظر متاثرہ کمیونٹیز کو بنیادی صحت کی سہولیات فراہم کی جائیں۔مرسی کور تپ دق، ملیریا، اور اسہال کے ٹیسٹ اور علاج کر رہی ہے اور دیگر بنیادی صحت کے لیے بھی علاج کی سہولیات فراہم کر رہی ہے نہ صرف یہ بلکہ اس کے ساتھ ہنگامی نقد رقم، پینے کا صاف پانی، خوراک اور حفظان صحت کی اشیا بھی تقسیم کی جا رہی ہیں۔پاکستان تخفیف غربت فنڈ (پی پی اے ایف) نے بیان میں کہا ہے کہ متاثرہ علاقوں میں پیدا ہونے والی ضروریات کا جائزہ لیا جا رہا ہے تاکہ ابتدائی امدادی مرحلے میں 13 اضلاع سے 26 اضلاع تک اپنے اقدامات بڑھائے جائیں۔ تخفیف غربت فنڈ گزر بسر کرنے کے لیے بحالی، تباہ ہونے والے مکانات کی تعمیر، واٹر سپلائی اسکیموں کی بحالی، صحت کی سہولیات اور کمیونٹی انفرا اسٹرکچر جیسے تباہ سڑکوں کے نکاسی آب کے نظام میں متاثرہ کمیونٹیز کی مدد کے لیے اپنی رسائی میں توسیع کرے گی۔ پی پی اے ایف نے 71 اضلاع میں تخفیف، امداد، تعمیر نو اور بحالی کے 23 منصوبے اور پروگرام مکمل کیے ہیں جن سے 14 لاکھ کے قریب متاثرہ خاندان مستفید ہوئے ہیں۔
٭٭٭٭٭


متعلقہ خبریں


آرمی چیف کے اثاثوں سے متعلق اعداد و شمار گمراہ کن اور مفروضوں پر مبنی ہیں، ترجمان پاک فوج وجود - اتوار 27 نومبر 2022

پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) نے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کے خلاف مذموم مہم کی بھرپور مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ سپہ سالار اور ان کی فیملی کے اثاثوں سے متعلق سوشل میڈیا پر گمراہ کن اعداد وشمار شیئر کیے گئے ہیں۔ اتوار کو آئی ایس پی آر نے اپنے جاری ایک بیان میں کہا...

آرمی چیف کے اثاثوں سے متعلق اعداد و شمار گمراہ کن اور مفروضوں پر مبنی ہیں، ترجمان پاک فوج

پیمرا نے اعظم سواتی کی تقریر، پریس کانفرنس یا پروگرام نشر کرنے پر پابندی لگا دی وجود - اتوار 27 نومبر 2022

پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی ((پیمرا) نے سوشل میڈیا پر متنازع بیانات دینے کے الزام میں گرفتار پی ٹی آئی کے سینیٹر اعظم خان سواتی کی تقاریر، پریس کانفرنس یا پروگرام نشر کرنے پر پابندی عائد کر دی۔ پیمرا کی جانب سے جاری اعلامیے میں کہا گیا کہ اعظم سواتی نے 26 نومبر کو ر...

پیمرا نے اعظم سواتی کی تقریر، پریس کانفرنس یا پروگرام نشر کرنے پر پابندی لگا دی

تحریک انصاف کے استعفوں کے بعد 563 نشستوں پر انتخابات ہوں گے، فواد چودھری وجود - اتوار 27 نومبر 2022

پاکستان تحریک انصاف کے رہنما فواد چودھری نے کہا ہے کہ تحریک انصاف کے استعفوں کے بعد 563 نشستوں پر انتخابات ہوں گے، عمران خان عوام کے اعتماد کی وجہ سے الیکشن میں جارہے ہیں۔ فواد چودھری نے رانا ثناء اللہ کے بیان پر ردعمل دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں کل 859 نشستوں پر براہ راست انتخا...

تحریک انصاف کے استعفوں کے بعد 563 نشستوں پر انتخابات ہوں گے، فواد چودھری

متنازع سوشل میڈیا بیانات: اعظم سواتی کے خلاف ایک اور مقدمہ درج وجود - اتوار 27 نومبر 2022

ایف آئی اے نے پاکستان تحریک انصاف کے سینیٹر اعظم سواتی کے متنازع بیان پر ان کے خلاف مقدمہ درج کر لیا۔ سینیٹر اعظم سواتی کے خلاف مقدمہ سائبر کرائم ونگ میں درج کیا گیا، مقدمہ ایف آئی اے کے ٹیکنیکل اسسٹنٹ انیس الرحمان کی مدعیت میں درج کیا گیا۔ اعظم سواتی کے خلاف مقدمہ تضحیک اور پیکا...

متنازع سوشل میڈیا بیانات: اعظم سواتی کے خلاف ایک اور مقدمہ درج

ناانصافی پر اعظم سواتی کا غصہ جائز ہے، ہم تیزی سے فاشسٹ ریاست کی طرف بڑھ رہے ہیں، عمران خان وجود - اتوار 27 نومبر 2022

پاکستان تحریکِ انصاف کے چیئرمین عمران خان نے کہا ہے کہ آزادی مارچ میں پاکستان بھر سے آنے والوں کا شکرگزار ہوں۔ سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پربیان میں عمران خان نے کہا کہ راولپنڈی آزادی مارچ میں پاکستان بھر سے تمام آنے والوں کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔ انہوں نے لکھا ہے کہ ہماری تحریک...

ناانصافی پر اعظم سواتی کا غصہ جائز ہے، ہم تیزی سے فاشسٹ ریاست کی طرف بڑھ رہے ہیں، عمران خان

رکنِ قومی اسمبلی محسن داوڑ کو ایئرپورٹ پر روک دیا گیا وجود - اتوار 27 نومبر 2022

رکنِ قومی اسمبلی محسن داوڑ کو تاجکستان جانے سے روک دیا گیا۔ وفاقی تحقیقاتی ادارے ایف آئی اے کی جانب سے محسن داوڑ کو اسلام آباد ایئر پورٹ پر روکا گیا ہے۔ محسن داوڑ تاجکستان میں ہیرات سکیورٹی ڈائیلاگ میں شرکت کے لیے جا رہے تھے۔ اس موقع پر ایم این اے محسن داوڑ نے میڈیا سے گفتگو میں ...

رکنِ قومی اسمبلی محسن داوڑ کو ایئرپورٹ پر روک دیا گیا

متنازع ٹوئٹس، ایف آئی اے نے سینیٹر اعظم سواتی کو پھر گرفتار کر لیا وجود - اتوار 27 نومبر 2022

ایف آئی اے نے پی ٹی آئی رہنما سینیٹر اعظم سواتی کو گرفتار کر لیا۔ نجی ٹی وی کے مطابق پی ٹی آئی رہنما سینیٹر اعظم خان سواتی کو ایف آئی اے سائبر کرائم ونگ اسلام آباد کی ٹیم نے چک شہزاد میں ان کے فارم ہاؤس پر چھاپہ مار کر گرفتار کر لیا۔ اعظم سواتی کے خلاف متنازع ٹوئٹ پر ایف آئی اے س...

متنازع ٹوئٹس، ایف آئی اے  نے  سینیٹر اعظم سواتی کو پھر گرفتار کر لیا

فیفا ورلڈ کپ میں آج اتوار کو مزید چار میچوں کا فیصلہ ہوگا وجود - اتوار 27 نومبر 2022

فیفا ورلڈ کپ میں ( آج ) بروز اتوار کو مزید چار میچوں کا فیصلہ ہوگا، ارجنٹینا کی ٹیم میکسیکو، جاپان کی ٹیم کوسٹا ریکا، بیلجیئم کی ٹیم مراکش اور کروشیا کی ٹیم کینیڈا سے مدمقابل ہوں گی، فیفا کے زیراہتمام فٹ بال عالمی کپ کے دلچسپ مقابلے قطر میں جاری ہیں، میگا ایونٹ میں اتوار کے روز چ...

فیفا ورلڈ کپ میں آج اتوار کو مزید چار میچوں کا فیصلہ ہوگا

عمران کا اسمبلیوں سے نکلنے کا بیان، باپ بیٹے میں اختلاف وجود - اتوار 27 نومبر 2022

چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کے اسمبلیوں سے نکلنے کے بیان پر وزیراعلیٰ پنجاب چودھری پرویز الہیٰ کا کہنا ہے کہ پنجاب حکومت اپنی مدت پوری کرے گی۔ ایک نجی ٹی وی کے مطابق چودھری پرویز الہٰی نے عمران خان کے فیصلے سے اختلاف کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب میں سیاسی صورتِ حال کنٹرول میں ہے، جب ...

عمران کا اسمبلیوں سے نکلنے کا بیان، باپ بیٹے میں اختلاف

برطانیہ سے فنڈز کی منتقلی: نیب نے ملک ریاض کو طلب کر لیا وجود - هفته 26 نومبر 2022

قومی احتساب بیورو (نیب) نے برطانیہ سے فنڈز خرد برد کیس میں ملک ریاض حسین کو طلب کرلیا۔ سابق مشیر داخلہ و احتساب مرزا شہزاد اکبر و دیگر کے خلاف نیب انکوائری میں نیب راولپنڈی نے ملک ریاض کو یکم دسمبر کو طلب کیا ہے۔ نیب نے نوٹس میں ہدایت کی کہ ملک ریاض حسین یکم دسمبر دن 11 بجے نیب ک...

برطانیہ سے فنڈز کی منتقلی: نیب نے ملک ریاض کو طلب کر لیا

کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد وجود - هفته 26 نومبر 2022

فریئر ہال کراچی میں ''موسمیاتی بحران'' کے عنوان سے 2 روزہ ادبی میلے کا انعقاد کیا گیا۔ ادب فیسٹیول میں 100 مقررین اور فنکاروں نے شرکت کی، ادب فیسٹیول کے پہلے روز 7 کتابوں کی رونمائی سمیت 30 مختلف سیشنز رکھے گئے تھے۔ ادب فیسٹول کے باقاعدہ آغاز میں ہر عمر کے لوگوں کی بڑی تعداد نے ش...

کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد

ورلڈ کپ: سعودی عرب کو دوسرے میچ میں پولینڈ کے ہاتھوں شکست وجود - هفته 26 نومبر 2022

فٹبال ورلڈ کپ میں سعودی عرب اپنے دوسرے میچ میں پولینڈ کے ہاتھوں شکست کھا گیا۔ قطر میں جاری ورلڈ کپ میں پولینڈ نے سعودی عرب کو 0ـ2 سے شکست دی۔ ایجوکیشن سٹی اسٹیڈیم میں کھیلے گئے میگا ایونٹ کے 22 ویں میچ میں پولینڈ نے سعودی عرب کو صفر کے مقابلے میں 2 گول سے شکست دے دی۔ پولینڈ کی ج...

ورلڈ کپ: سعودی عرب کو دوسرے میچ میں پولینڈ کے ہاتھوں شکست

مضامین
فسادی بابا۔۔ وجود اتوار 27 نومبر 2022
فسادی بابا۔۔

اخوت کی بنیاد وجود جمعه 25 نومبر 2022
اخوت کی بنیاد

پراپر۔۔ٹی۔۔ وجود جمعه 25 نومبر 2022
پراپر۔۔ٹی۔۔

کیا کمشنز بلوچستان کے مسائل کا حل ہیں؟ وجود جمعرات 24 نومبر 2022
کیا کمشنز بلوچستان کے مسائل کا حل ہیں؟

ٹوئٹر کی ممکنہ موت،کیا ہماری دنیا بدل سکتی ہے؟ وجود جمعرات 24 نومبر 2022
ٹوئٹر کی ممکنہ موت،کیا ہماری دنیا بدل سکتی ہے؟

موسمیاتی فنڈ کا قیام اچھا فیصلہ مگر..... وجود بدھ 23 نومبر 2022
موسمیاتی فنڈ کا قیام اچھا فیصلہ مگر.....

اشتہار

تہذیبی جنگ
اسرائیلی فوج نے 1967 کے بعد 50 ہزار فلسطینی بچوں کو گرفتار کیا وجود پیر 21 نومبر 2022
اسرائیلی فوج نے 1967 کے بعد 50 ہزار فلسطینی بچوں کو گرفتار کیا

استنبول: خود ساختہ مذہبی اسکالر کو 8 ہزار 658 سال قید کی سزا وجود جمعه 18 نومبر 2022
استنبول: خود ساختہ مذہبی اسکالر کو 8 ہزار 658 سال قید کی سزا

ٹیپو سلطان کا یوم پیدائش: سری رام سینا نے میدان پاک کرنے کے لیے گئو موتر کا چھڑکاؤ کیا وجود اتوار 13 نومبر 2022
ٹیپو سلطان کا یوم پیدائش: سری رام سینا نے میدان پاک کرنے کے لیے گئو موتر کا چھڑکاؤ کیا

فوج کے لیے حفظ قرآن کا عالمی مسابقہ، مکہ مکرمہ میں 27 ممالک کی شرکت وجود منگل 08 نومبر 2022
فوج کے لیے حفظ قرآن کا عالمی مسابقہ، مکہ مکرمہ میں 27 ممالک کی شرکت

سوشل میڈیا کی معاشرتی تباہی سے بچنے کے لیے قانون سازی کی جائے، امام کعبہ وجود جمعه 04 نومبر 2022
سوشل میڈیا کی معاشرتی تباہی سے بچنے کے لیے قانون سازی کی جائے، امام کعبہ

بھارت میں قرآن پاک کی بے حرمتی کے خلاف شدید احتجاج وجود جمعه 04 نومبر 2022
بھارت میں قرآن پاک کی بے حرمتی کے خلاف شدید احتجاج

اشتہار

بھارت
بھارت: مدعی نے جج کو دہشت گرد کہہ دیا، سپریم کورٹ کا اظہار برہمی وجود هفته 26 نومبر 2022
بھارت: مدعی نے جج کو دہشت گرد کہہ دیا، سپریم کورٹ کا اظہار برہمی

پونم پانڈے، راج کندرا اور شرلین چوپڑا نے فحش فلمیں بنائیں، بھارتی پولیس وجود پیر 21 نومبر 2022
پونم پانڈے، راج کندرا اور شرلین چوپڑا نے فحش فلمیں بنائیں، بھارتی پولیس

بھارت میں کالج طلبا کے ایک بار پھر پاکستان زندہ باد کے نعرے وجود اتوار 20 نومبر 2022
بھارت میں کالج طلبا کے ایک بار پھر پاکستان زندہ باد کے نعرے

بھارت، 2 سے زائد بچوں والے اب الیکشن نہیں لڑ سکیں گے وجود هفته 19 نومبر 2022
بھارت، 2 سے زائد بچوں والے اب الیکشن نہیں لڑ سکیں گے
افغانستان
طالبان کے افغانستان میں 19 افراد کو مختلف جرائم پر سرِعام کوڑے وجود منگل 22 نومبر 2022
طالبان کے افغانستان میں 19 افراد کو مختلف جرائم پر سرِعام کوڑے

افغان طالبان اور امریکا کی ایک دوسرے کو یقین دہانیاں وجود منگل 18 اکتوبر 2022
افغان طالبان اور امریکا کی ایک دوسرے کو یقین دہانیاں

امریکا کا افغان طالبان پر مزید پابندیوں کا اعلان وجود بدھ 12 اکتوبر 2022
امریکا کا افغان طالبان پر مزید پابندیوں کا اعلان

کابل میں وزارت داخلہ کی عمارت کے قریب دھماکا،3 افراد جاں بحق،25 سے زائد زخمی وجود جمعرات 06 اکتوبر 2022
کابل میں وزارت داخلہ کی عمارت کے قریب دھماکا،3 افراد جاں بحق،25 سے زائد زخمی
ادبیات
کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد وجود هفته 26 نومبر 2022
کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد

مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع کردار پرنئی کتاب شائع وجود هفته 23 اپریل 2022
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع  کردار پرنئی کتاب شائع

مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار وجود بدھ 06 اپریل 2022
مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار

پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل وجود منگل 04 جنوری 2022
پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل
شخصیات
اسٹیج ، ٹی وی کے مشہور فنکار اسماعیل تارا انتقال کرگئے وجود جمعرات 24 نومبر 2022
اسٹیج ، ٹی وی کے مشہور فنکار اسماعیل تارا انتقال کرگئے

اداکار و میزبان ٹونی نوید جہان فانی سے کوچ کرگئے وجود جمعرات 24 نومبر 2022
اداکار و میزبان ٹونی نوید جہان فانی سے کوچ کرگئے

مفتی رفیع عثمانی کی نمازِ جنازہ ادا، دارالعلوم کورنگی کے احاطے میں سپرد خاک وجود اتوار 20 نومبر 2022
مفتی رفیع عثمانی کی نمازِ جنازہ ادا، دارالعلوم کورنگی کے احاطے میں سپرد خاک

فیض احمد فیض کو مداحوں سے بچھڑے 38 برس گزر گئے وجود اتوار 20 نومبر 2022
فیض احمد فیض کو مداحوں سے بچھڑے 38 برس گزر گئے