وجود

... loading ...

وجود

حکومت کا پارلیمنٹ میں بحث کے بعد عمران خان کے خلاف آرٹیکل 6 کا ریفرنس دائر کرنے کا فیصلہ

هفته 01 اکتوبر 2022 حکومت کا پارلیمنٹ میں بحث کے بعد عمران خان کے خلاف آرٹیکل 6 کا ریفرنس دائر کرنے کا فیصلہ

سائفر کا معاملہ پارلیمنٹ میں جائے گا اور اس پر بحث کے بعد پارلیمنٹ عمران خان کے خلاف آڑٹیکل 6کا ریفرنس دائر کرنے کافیصلہ کرے گی اور یہ اپنے انجام کو پہنچے گا، سائفر آڈیو لیکس سے اسٹیبلش ہو گیا کہ سازش اپوزیشن نے نہیں کی تھی، سازش انہوں نے کی تھی، اس کی معافی نہیں ہوسکتی، اور اگر ہم اس کو منطقی انجام تک نہیں لے کر گئے تو اپنے آئین سے غداری کریں گے،ثبوت ہمارے سامنے ہے، کیا ہم سیاسی مصلحت کے تحت اس کو ہاتھ نہ لگائیں، یہ نہیں ہو سکتا، ہم اپنے حلف نامے، اپنی قومی اور آئینی ذمہ داری میں ناکام ہوں گے اگر ہم مناسب کارروائی نہیں کرتے،جس طرح خفیہ دستاویزات کی تلاش کے لئے ڈونلڈ ٹرمپ کی رہائشگاہ پر چھاپہ مارا گیا اسی طرح سائفر کی تلاش کےلئے عمران خان کی رہائشگاہ بنی گالہ پر چھاپہ مارا جائے ،آج کوئی ملک پاکستان کو خط لکھنے پر تیار نہیں،سفیر بات کرنے کے لئے تیار نہیں ،کسی کا پاکستان پر اعتبار نہیں کہ کہیں ان کی خط و کتابت اور باتوں کو تبدیل کرکے سازش نہ بنا دیا جائے ،افسوس ہے کہ ملک کے خلاف اتنے بڑے اقدامات اٹھانے کے بعد بھی عمران خان آزدا پھر رہا ہے ، حکومت سے شکوہ ہے جو قانون کے ہاتھ غدار کے گریبان تک پہنچنے چاہئیںوہ نہیں پہنچے ، اس نے حکومت پاکستان اور وزیر اعظم کا دفتر پاکستان کے خلاف سازش کرنے کے لئے استعمال کیا ہے،وہ ہو گا کسی کا لاڈلہ لیکن ہمارا لاڈلہ نہیں ہے ۔ وزیر خزانہ اسحاق ڈار اور مسلم لیگ (ن) کی مرکزی نائب صد رمریم نواز نے وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ خان، وزیر منصوبہ بندی و ترقی احسن اقبال، وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب ،وزیر قانون اعظم نذیر تارڑ کے ہمراہ پارٹی کے مرکزی سیکرٹریٹ میں پریس کانفرنس کی ۔وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا کہ پاکستان میں ایک سیریس سکیورٹی بریچ ہوئی ہے ، ایک شخص کہہ رہا ہے کہ اسے سازش کر کے نکالا گیا ہے حالانکہ تحریک عدم اعتماد ایک آئینی طریقہ ہے جس کے تحت اسے نکالا گیا۔ غیر ملکی سازش کی بے بنیاد مہم چلائی گئی اور اس کے لئے سائفر کا سہارا لیا گیا ،سائفر کی دستاویز بہت خفیہ ہوتی ہے اس کو شیئر اور لیک نہیں کر سکتے ، انہوںنے اس کی اپنی کہانی بنائی لیکن اب تک جو لیکس ہوئی ہیں اس سے بھی ان کا پول کھل گیا کہ انہوںنے ایک منصوبہ بنایا ۔یہ کہا گیا کہ ہم ایک میٹنگ کریں گے ،پرنسپل سیکرٹری کہہ رہے ہیں منٹس لے لیں گے اور میں نے ہی منٹس بنانے ہیں،یہ ملک کے ساتھ کھیلنے کے مترادف ہے، اس کے نتیجے میں پاکستان کی بدنامی ہوئی ہے ۔ انہوںنے کہا کہ جو اقدام کیا گیا وہ آفیشل سیکرٹریٹ ایکٹ کی خلاف ورزی ہے ،اس کے ذریعے آئین و قانون کی خلاف ورزی کی گئی ہے اوراس کا ذمہ دار عمران خان ہے ۔اس کی سوچ یہ ہے کہ اگر ہم نہیں تو پاکستان پر ایٹم بم گرا دیں ، یہ اس کی سوچ ہے ،کوئی نارمل انسان ایسا نہیں سوچ سکتا ۔اس کا ایجنڈا یہی ہے کہ پاکستان کو ختم کرنا ہے ، اس نے معاشی طو رپر پاکستان کو تباہ کر دیا ہے ، ہمارے دو رمیں دو فیصد فوڈ انفلیشن تھی چار فیصد مجموعی مہنگائی تھی ،6.3فیصد گروتھ تھی زر مبادلہ کے ذخائر مستحکم تھے ، کرنسی بھی مستحکم تھی ، یہ پاکستان کو اس جگہ پر لے آیا ہے جہاں آپ کے میکرواکنامک اشاریے انتہائی خرا ب ہو چکے ہیں، ملک کو ڈیفالٹ کے نہج پر لا کھڑا کیا گیا ۔ہم نیوکلیئر طاقت ہیں ، ہم دنیا معیشت بننے جارہے تھے،بتایا جائے چار سال معاشی تباہی کا کون ذمہ دار ہے، اس ملک میں قوانین ہوں، انہیں بنانا چاہیے ، کس ملک میںنیشنل سکیورٹی بریچ کی اجازت نہیں ہے ، معیشت کو جان بوجھ کر تباہ کرنے کی اجازت نہیں ہے ،یہ نہ ہو کہ جو کہیں گے وہ مانا جائے گا۔ عمران خان کا وطیر ہ ہے کہ سو دفعہ جھوٹ بولیں تو لوگ سمجھنا شروع کر دیں یہ سچ ہے ۔ انہوں نے کہا کہ یہ انتہائی سنجیدہ ہے کابینہ کا فرض ہے ذمہ دری ہے ،انہوں نے مکمل تفصیلات ہر چیز کا جائزہ لیا ہے ۔ ایک تو سب سے پہلے سائفر غائب ہے، سائفر وزیراعظم ہاﺅس کی پراپرٹی ہے ، سابق پرنسپل سیکرٹری کہہ رہے ہیں میں نے عمران خان کو دیدیاتھا،ان کی لیکس کو سنا تو انہوںنے جو منصوبہ بنایا اس کا ثبوت یہ ہے کہ منٹس موجود ہیں جو بنائے گئے وہ موجود ہیں سائفر موجود نہیں ہے ۔ ا ب ہم نے دونوں کا جائزہ لینا ہے کہ ان میں کوئی تضاد ہے ۔ انہوںنے کہا کہ سازش اپوزیشن نے نہیں کی تھی انہوں ے کی تھی ، اللہ نے اے ٹو زیڈ ان کے تانے بانے کھول کر رکھ دئیے ہیں۔انہوںنے کہا کہ سیاسی مصلحت میں ہاتھ نہ لگائیں ،یہ نہیں ہو سکتا ، ہم قومی ذمہ دار ی نبھا رہے ہیں او رآئین اور ہم قانون کے مطابق ایکشن نہیں لیتے تو یہ ملک کے ساتھ ٹھیک نہیں ہے ۔انہوں نے کہاکہ نیشنل سکیورٹی کونسل کی میٹنگ ہو چکی ہے کابینہ کی میٹنگ ہو چکی ہے اس حوالے سے ہم سب کا فرض ہے ہم نے نہیں دیکھنا کہ کون سی سیاسی جماعت تھی ،اس کی معافی نہیں ہے ،اگر ہم اس کو قانون کے مطابق نہیں لے کر چلیں گے تو آئین سے غداری کریں گے ،ہماری اوپر آئین و قانون کے مطابق ذمہ دری ہے جو حلف میں ہے اس کی روشنی میں آگے لے جایا جائے گا ، میں اپنے کابینہ کے دوستوں سے بھی اس کے لئے درخواست کروں گا۔انہوںنے کہا کہ چار سال کا گند تھا جو تباہی ہے وہ چار پانچ مہینے میں صاف نہیں ہو سکتی ۔شہباز شریف کوشش کی ہے ان کی ٹیم نے د ن رات ایک کیا ہے ،مجھے بھی اس خدمت کی لئے دعوت دی گئی ہے ۔ ہماری پوری کوشش ہو گی کہ جو سلائیڈنگ ہو رہی تھی اس کو روکیں اس کو روکنے کی کوشش کر رہے ہیں اور کافی حد تک کامیابی کی امید ہے اس کے بعد اس کو ریورس کریں گے۔ قلیل عرصے میں چیلنجز سے نمٹا ہے ،جو ملک ڈیفالٹ کے قریب تھا اللہ کی مہربانی سے شہباز شریف اور کابینہ نے اس اس سے روکا،کرنسی بہتر ہونا شروع ہو گئی ہے ، یہاںہر دن مزید تباہی ہوتی تھی لیکن اب مثبت رجحان ہے ،اب ایک دن میں منفی رجحان نہیں آیا اور بہتری آئی ہے ،تیرہ سے چودہ سو ارب روپے کا قرضہ کم ہو گیا ہے ۔ پوری کوشش کی ہے کہ عوام کے لئے جو کچھ کر سکتے ہیں وہ ہم کریں گے ،ہم نے پیٹرولیم کی قیمتوں میں ریلیف پاس کیا ہے ، ہمارا فرض ہے کہ جن کے ہم نمائندے ہیں ریلیف مہیا کر سکیں ۔ مجھے امید ہے کہ آنے والے ہفتوں میں آپ کو مزید بہتری نظر آئی گی ۔ ہمیںکچھ چیزیں ورثے میں ملی ہیں، اگلے آنے والے دنوں میں ہر شعبے میں پرفارم کریں گے اور بہتری لائیں گے۔انہوںنے کہا کہ عمران خان کے دور میں بھی نیشنل سکیورٹی کمیٹی اور کابینہ میں سائفر زیر بحث آیا اور یہ کہا گیا کہ اس میں کوئی سازش نہیں ہے ، لیکس آئی ہیں اس نے ہمیں مجبور کیا اس کا جائزہ لیں ۔ انہوںنے کہا کہ ملک جب بھی ٹیک آف کر رہا ہوتا ہے خفیہ ہاتھ باہر نکلتے ہیں اور ٹانگوں کو کھینچتے ہیں اور ہم دھڑام سے گر جاتے ہیں ۔انہوںنے کہا کہ ہمارے دور میں آئی ایم ایف کا پروگرام مکمل ہوا اور ہم نے اسے خدا حافظ کہہ دیا تھا، اگر پانامہ جیسے ایڈونچر نہ ہوتے تو ہمیںآئی ایم ایف کے پاس جانے کی ضرورت ہی نہ پڑتی ۔انہوںنے کہا کہ اب ٹرینڈ بدل چکا ہے پانچ روز میں روپے کی قدرمیںکمی نہیں آئی بلکہ اضافہ ہو رہا ہے ۔ ڈالر کی قدر میں اضافہ تمام برائیوں کی ماں ہے ، اسی وجہ سے مہنگائی ہوئی ہے ۔ میں ذمہ داری سے کہہ سکتا ہوں کہ روپے کی بے قدری آرٹیفشل ہے ۔ سب کو پتہ ہے ہم کیسے ایکشن لیتے ہیں، لوگ اپنے چند کروڑوں کے لئے ملک کواربوں روپے میں ڈبو دیتے ہیں ، اب لوگوں نے رضاکارانہ کام شروع کر دیا ہے ، میں ابھی صرف دیکھ رہا ہوں ،یہ روپے کی اصل ویلیو یہ نہیں ہے روپیہ ابھی انڈر ویلیو ہے ،اس کے ساتھ زیادتی کی گئی ہے ،جو ملک کے ساتھ کھیل کھیلا گیا ہم اس کو نہیں چھوڑیں گے۔اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے مریم نواز نے کہا کہ بڑی خوشی ہے کہ بڑی دیر بعد عوام کو ریلیف ملا ہے اس پر اللہ کا شکر اد اکرتی ہوں ،عوام نے بڑ ے سخت دن دیکھیں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کی آڈیو لیکس کو جتنی بار بھی سنیں گے اتنی بار حقیقت سامنے آتی جائے گی کہ اس ملک کے ساتھ جتنا بڑا کھیل کھیلا گیا ہے ۔لیکس میںجو چپ کی بات کی گئی ہے اس میں بہت سی چیزیں چھپی ہوئی ہیں۔ اس فار ن فنڈڈ فتنہ جس کا نام عمران خان ہے میں ایک بار پھر کہنا چاہتا ہوں میںاس شخص کا نام لینا بھی پسند نہیں کرتی ، یہ وہ شخص ہے جسے میں گھر کے باہر والے دروازے سے اندر نہ آنے دوں ،میری بد قسمتی ہے کہ اس کا سچ عوام کے سامنے لانا ہے اس کا چہرہ عوام کو دکھانا پڑتا ہے ۔ اگر میں جھوٹ اور کرتوت گنوانے لگوں تو صبح ہو جائے گی وہ اتنی طویل فہرست ہے کہ ختم نہیں ہو گی ۔ انہوںنے کہا کہ میری آڈیوز بھی لیک ہوئی ہیں وہ تمام آڈیو ایک طرف ہیں ، دعوے سے کہہ سکتی ہوں عاجزی سے کہہ سکتی ہوں کتنی بھی آڈیو سامنے آ جائیں ، آپس کی پرائیویٹ یا آفیشل باتیں سامنے آ جائیں، گھر میںہوں یاوزیر اعظم کے آفس میں ہوں ملک کے خلاف کوئی چیز سننے کو نہیں ملے ، ایسا نہ کبھی پہلے ہوا ہے اور نہ ہو گی ۔ مسلم لیگ (ن) اپنے سیاسی مفاد کے لئے پاکستان کے مفاد اور سلامتی پر کبھی سمجھوتہ نہیں کرے گی ۔ انہوںنے کہا کہ عمران خان کوپتہ تھا کہ اس کی حکومت جانے والی ہے ، عدم اعتماد تحریک کامیاب ہونے والی ہے ، سا نے سازش سازش کا جو واویلا شروع کیا وہ سن سن کر کان پک گئے ، مجھے پہلے دن سے پتہ تھا یہ شخص جھوٹ بول رہا ہے ۔ کوئی شخص اس طرح جھوٹ بولے جو وزرت عظمیٰ کی کرسی پر چار سال گزار کر آیا ہو سیاسی جلسوں میں کاغذ لہرائے یہ سائفر ہے خط ہے تو لوگ سوچنے پر مجبور ہو جاتا ہے ۔ اس صدی کا سب سے بڑا جھوٹ یہ ہے کہ عمران خان کبھی سچ بول سکتا ہے ۔ سازش تو ہوئی لیکن یہ کسی سیاسی جماعت ،اسٹیبلشمنٹ ،کسی اور ملک نے یا غیر ملکی سفیر نے نہیں کی بلکہ اس کا ماسٹر مائنڈ فارن فنڈڈ فتنہ عمران خان خود ہے ۔ اس کے سہولت کار پرنسپل سیکرٹری ہیں اس وقت کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی تھے اس کی جماعت کے سیکرٹری اسد عمر اس میں شامل ہیں اور گینگ کا سربراہ عمران خان خود ہے ۔ افسوس کی بات ہے کہ وہ وزیر اعظم ہاﺅس جس کے اندر بیٹھ کر عوام کی بہتری کے منصوبے بنتے ہیں،دوسرے ممالک سے تعلقات کیسے بہتر کرنے ہیں ،ریلیف کیسے دینا ہے مجھے نہیں پتہ نہیں تھاکہ ایک شخص ایسا ہے جو بھلے جعلی وزیر اعظم ہے وہ ملک کے خلاف سازش کے تانے بانے بنے گا ۔تحریک عدم اعتماد کامیاب ہو جانے پر سائفر میں ٹمپرنگ ہوئی ہے ۔یہ کہا گیا کہ چپکے سے عوام کو کیا پتہ ، ٹرانسپکرٹ کا لوگوں کو کیا پتہ ہے سازش بناﺅ ۔ آپ نے پاکستان کے اتنے حساس دستاویز ات کے ساتھ ٹمپرنگ کی جعلسازی کی ،سائفر اس کی اصل کاپی وزارت خارجہ میں پڑ ی لیکن وزیر اعظم سے کاپی غائب ہے ۔یہ کہا کہ عمران خان صرف وزیر اعظم سے جاتے ہوئے اپنی ایک ڈائری لے کر گئے ہیں حالانکہ یہ نہیں پتہ وہاں سے منرل واٹر کی دو ہزار بوتلیں بھی ساتھ لے گئے ،وہ کاپی بھی لے گئے ۔ آپ نے اس کو تبدیل کیا تھا جعلسازی کی تھی ،کجیا عوام تو بےوقوف ہیں ، آپنے قوم کی اجتماعی دانش کی تذلیل کی ہے ، آپ کو اس پر معافی مانگنی چاہیے ، سب سے زیادہ اپنی جماعت سے مانگنی چاہیے جن کے سامنے کھڑے ہو کر جھوٹا خط لہرایا ۔ آپ نے اپنی حکومت جانے کے لئے بہانہ بنایا ۔ آپ نے پاکستان کی سالمیت کے خلاف ، نیشنل سکیورٹی کے خلاف ، پاکستان کے جمہوری نظام ، پاکستان کی فارن پالیسی ، سفارتی تعلقات کے خلاف سازش کی ۔انہوںنے کہا کہ آج مجھے وزیر اعظم شہباز شریف نے بتایا کہ کوئی ملک آپ کو خط لکھنے پر تیار نہیں،سفیر بات کرنے کے لئے تیار نہیں ،کسی کا پاکستان پر اعتبار نہیں کہ کہیں اسے تبدیل کرکے سازش نہ بنا دیا جائے ۔ مریم نواز نے کہا کہ آج کوئی ملک پاکستان سے بات کرنے کے لئے تیار نہیں آپ نے دنیا کے سامنے ملک کا کیا امیج بلڈ کیا ہے ۔ وہ سازش جو کبھی تھی ہی نہیں ،جھوٹی سازش اورڈرامے کی آڑ میں سفارتی تعلقات کاکھیل تماشہ بنا دیا ، آپ نے لوگوں کو یہ بتایا کہ پاکستان ایک غلام ملک ہے ،کمزور ملک ہے ۔ آپ کو یہ بات کرتے ہوئے شرم آنی چاہیے تھی ،پھر آپ نے کہا کھیلنا ہے ، انسان کا دماغ چکرا جائے جو شخص اتنا غیر ذمہ دار اتنا نا اہل او رنا لائق ہو ،آپ چار سال وزارت عظمیٰ کی کرسی پر بیٹھ کر آئے ہو ۔ جو معاملہ قومی سلامتی کا حامل ہے اس پر صرف کھیلنا ہے ۔ اس کی پچیس سال کی جدوجہد ان کی پچیس سال کی سیاست ایک جملے میں چھپی ہوئی ہے ۔یہ کبھی جنرل پاشا کے ساتھ ، کبھی ظہیر الاسلام کے ساتھ کبھی عوام کے ساتھ مینڈیٹ کے ساتھ کھیلنا ہے ، آرٹی ایس بٹھا کر وزیر اعظم بنا، سا نے معیشت کے ساتھ کھیلنا ہے ، ظاہر ہے کہ مائنڈ سیٹ ہے ، یہ پاکستان کے بائیس کروڑ جیتے جاگتے عوام کا ملک ہے جسے یہ اوول اسٹیڈیم سمجھتا ہے ۔سازش نہیں ہے یہ ایک پورا مائنڈ سیٹ ہے ،پوری ڈو سئیر ہے پوری فرد جرم ہے ۔ فارن فنڈنگ کے کیس سے شروع ہوجائیں جو پاکستان کو عدم استحکام سے دوچار کرنے کے لئے فتنہ اور انتشا رپیدا کرنے کے لئے باہر سے ڈالر لیتا ہو او راس کے بارے میںجھوٹ بولتا ہو ۔اس نے جاتے جاتے پاکستان کے آئین سے کھلواڑ کیا ، پانچ ججوں کا جو فیصلہ آیا کہ عمران خان نے آئین توڑا ۔اس کا صرف یہ ماننا ہے کہ میں مقدم ہوں ، میں ہوں ،پاکستان کے آئین کی فارن پالیسی اس کے استحکام کی کوئی حیثیت نہیں ،مجھے قتدار نہیں ملتا تو پوری دنیا میں آگ لگا کر رکھ دو، شیطانی ذہن کے ہاتھوں پاکستانی قوم یر غمال بنی ہوئی ہے ، یہ شیطانی ذہن چار سال پاکستان کا حکمران رہا ،پاکستان کے سیاہ او رسفید کا مالک رہا ۔ معیشت کو جس جگہ پہنچا گیاہے اس کو استحکام دینے کی پوزیشن میں نہیں آئے ۔ انہوںنے کہا کہ سب سے بڑی عدالت سے آپ کے خلاف فیصلہ آیا کہ آپ نے آئین شکنی کی ہے پھر بھی بچ کر نکل گیا ۔ انہوںنے کہا کہ ہم نے پلے بھی ملک کو بچایا ہے ہم اس کو منجدھار سے نکال لیں گے۔ انہوں نے کہاکہ اسس شخص کیکرتو ت دیکھیں اس نے ملک کے ساتھ کیا ہے ،حوصلہ دیکھیں آنے والی نسلوں سے خطاب کرتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ قوم کو درس دے رہا ہے کہ غلامی سے آزادی حاصل کرنی ہے لیکن اندر کہتاہے کہ امریکہ کا نام نہ لو ۔ جب اپنی منہ سے غلطی سے نام نکل گیا تو کہتا ہے یہ وہ ملک نہیں کوئی اور ملک ہے ۔ پچیس ہزار ڈالر پر ایک لابنگ فرم ہائر کر لی جو امریکی فرم ہے کہ امریکہ سے عمران خان سے تعلقات بہتر کرا دیں ، یہ کہیں کہ غلطی سے بچے کے منہ سے نام نکل گیا ، سیاست میں کرنا پڑتا ہے ہے ویسے تو آپ کا تابعدار فرمانبردار ہے ،کوئی ملک سازش کر ے ، آپ اس سے معافیاں بھی مانگین ،سفیروں کوبلا کر ملیں بھی ، پوری پاکستانی قوم کو کہتے ہیں امریکہ کے خلاف نعرے لگاﺅ ، اندر بیٹھ کر کہتاہے امریکہ کا نام نہ لینا ، آپ نے پاکستانی قوم کو بیوقوف سمجھ رکھا ہے ۔ آپ کی جماعت کے لوگوں کے بارے میں کیا کہا جائے جن کی عقل پر بھی پردہ پڑا ہوا ہے ۔ مریم نواز نے مزید کہا کہ انہوںنے کہا کہ یہاں کتنے وزرائے اعظم آئے، ڈکٹیٹر آئے ،آج تک کسی کے ماتھے پر غداری کا داغ نہیں لگا جو عمران خان کے ماتھے پر لگا۔انہوں نے کہا کہ جو تین تین بار وزیر اعظم بنے ہین ان کے سینے میں راز نہیں ہوں گے ان کو سائفر نہیں آتے ہوں گے۔ اب پی ٹی آئی کے لوگوں کو عمران خان سے پوچھنا چاہیے کہ انہوںنے اپنی گاڑیوں پر ایبلسوٹی ناٹ کے جو سٹیکرز لگائے ان کا کیا کریں امریکہ کا نام لینا ہے یا نہیں لینا ۔ مریم نواز نے کہا کہ سائفر وزیر اعظم ہاﺅس سے غائب ہو گیا ہے ، میری تجویز ہے کہ جس طرح ڈونلڈ ٹرم کے گھر پر چھاپہ ما ر کر اس کے گھر سے خفیہ دستاویزات برآمد کی گئی ہیں اسی طرح بنی گالہ جس کا اصل نامہ منی گالہ ہے راناصاحب وہاں پر بھی چھاپہ ماریں،سائفرکی کاپی کہاں گئی ،اصل منٹس اور خط جسے ٹمپرڈ کر کے کچھ اور بنا دیا گیا و ہ برآمد کریں ۔ انہوں نے کہا کہ عمران خان کے پاس جلسوں میں لہرانے کے لئے وہ خط ہے لیکن عوام کو دکھانے کے لئے وہ خط نہیں ہے ، تم کھیل کھیل میںاس ملک سے کھیل گئے ہو۔ اس سائفر کی آڑ میںملک کے خلاف گھناﺅنی کی سازش کی ، یہ ملک قذافی یا اوول اسٹیڈیم نہیں ہے ، تم نے سفارتی تعلقات خربا کر دئیے ، بیرونی تعلقات کو آگ میں جھونک دیا ، معیشت خراب کر دی ، اس سازش کی بنیاد پر پاکستان کے اداروں کو تنقید کا نشانہ بنایا انہیں تنازعات میں جھونکا ، افواج پاکستان کے اوپر تنقید کی ،ان کو متنازعہ بنایا ، لوگوں کو میر صادق ،میر جعفر اور جانور کے لقب دئیے اور اب لوگوں کو پتہ چلا کہ میر صادق میر جعفر اور جانور کون ہے ، جس کو یہ پتہ نہیں کہ سیاست کی خاطر ملک کی سلامتی کو داﺅ پر لگا رہا ہوں ، سازس کی آڑ میں شہداءکو تذلیل کا نشانہ بنایا آپ کو شرم آنی چاہیے ۔ ہیلی کاپٹر کریش ہوا اس میںسینئر آفیسر اور جونئر آفیسرز موجو د تھے آپ نے شرمناک مہم چلائی ۔ لاکھ سیاسی اختلاف ہو سکتے ہیں لیکن یہ نہیں ہو سکتا کہ شہادتوں کو جھوٹی سازش کی بھینٹ چڑھا دیں ، ایکس وائے زیڈ سب کچھ تم ہو ،میر صادق ،میر جعفراور جانور بھی تم ہو ، جانور بھی ملک سے وفا کرتا ہے تم نے اپنی گھٹیا سیاست کی خاطر ملک سے وفا نہیں کی ،مک کو اپنے مفادات کی بھینٹ چڑھانے کی کوشش کی ۔مریم نوز نے کہا کہ افسوس ہے کہ یہ سب کرنے کے بعد تم آزدا پھر رہے ہو ، نئی نسل سے خطاب کر رہے ہو ، مجھے اپنی حکومت سے شکوہ ہے جو قانون کے ہاتھ غدار کے گریبان تک پہنچنے چاہئیںوہ نہیں پہنچے ، وہ آئین توڑتا ، فارن فنڈڈ کے ذریعے انتشار پھیلاتاہے ،توشہ خانہ کی گھڑیاں چوری کر تا ہے بیچ دیتاہے لیکن وہ آزاد پھرتا ہے ،تم جس ملک کے سربراہ مملک کی گڑیا بیچ کر کھا گئے اس کو کس منہ سے مبارکباد دے رہے ہو ، وہ شخص کیو ں کھلا پھر رہاہے قانون کے ہاتھ اس کے گریبان تک کیوں نہیں پہنچتے ، میں یہ نہیں کہتی اس پر ایفی ڈرین چرس یا افیون ناروال کمپلیکس کا مقدمہ بنا دو ، اس نے آئین توڑا ہے اس نے بیت المال کا مال بیچ کر کھایا ہے ، فارن فنڈ نگ لی ہے ، اس نے حکومت پاکستان اور وزیر اعظم کا دفتر پاکستان کے خلاف سازش کرنے کے لئے استعمال کیا ہے،وہ ہو گا کسی کا لاڈلہ لیکن ہمارا لاڈلہ نہیں ہے ۔ اس کا کردار دیکھیں بھیانک چہرہ دیکھیں کیا کرتا ہے ۔ پہلے بھی ڈی جی ایس آئی کی تقرری جھاڑ پھونک کی نظر ہو گئی ، اس کو تقرریوں کی صورت میںاپنی آنکھیں کان او رناک چاہیے تھے ، اس نے فوج میں دڑاڑ پیدا کرنے کی کوشش کی ،اس کا چیف آف سٹاف لائیو پڑھ رہا تھا افواج پاکستان کے آفیسرز اپنی ہائی کمان کا حکم نہ مانیں ۔ ہمت دیکھیں کیا کیا چیزیں سامنے آئی ہیں ، یہ چیف آف آرمی سٹاف کی تقرر ی کی بات کرتاہے ، جس کے گلے میں غدری کا طوق ہوجسے سلاخوں کے پیچھے ہونا چاہیے وہ اس تقرری کوبھی تنازعہ پر جھونکنا چاہتاہے ،میں اپنے ملک کے سسٹم پر بھی حیران ہوں ، کوئی بعید نہیں ہے آئندہ آنے والے دنوں میں آڈیو آجائے ،آرمی چیف کی تقرری سے بھی کھیلنا ہے ، تم ہوتے کون ہو جس سے مشورہ کیا جائے ، تمہارے خلاف تو پاکستان کے خلاف اقدامات پر فردجرم ہے۔ انہوں نے کہا کہ آج پاکستان اور حکومت کی اجتماعی دانش کو جھنجھوڑنے کا وقت ہے کہ خدارا اس سے پہلے پاکستان کو ناقابل تلافی نقصان پہنچے خدا را ہوش کے ناخن لیں اس کا اصل چہرہ عوام کو دکھائیں ۔انہوں نے کہا کہ سائفر کے معاملے پر تحقیقات کے لئے کمیٹی بنی ہے ، جو شخص اپنے منہ سے اعتراف کر رہا ہے ہاں میں نے نے گناہ کیا ہے تقدیر سے کھیلا ہو اور کیا ثبوت چاہیے ، رسمی کارروائی ہوتی ہے اس کی بات بھی سنیں ، دوسرے لوگوں کی بات کو بھی سنا جائے لیکن جرم ثابت کرنے کی ضرورت نہیں کیونکہ وہ اپنی زبان سے اعتراف کر رہے ہیں ہم سے یہ گنا ہوا ہے ۔ میرا اپنی حکومت سے گلہ جائز ہے ، جنوبی پنجاب کی کسی جگہ کا لاڈلا ہوگا ہمارا لاڈلہ نہیں ہے یہ بھی بتا دوں یہ ان کا بھی لاڈلاہ نہیں ہے ، سب اپنا اپنا کھیل کھیلا رہے ہیںجس طرح عمران خان نے استعمال کیا ہے ۔انہوںنے کہا کہ بیشک اتحادیوں کی حکومت ہے ، مجھے یہ بتائیں یہ مسلم لیگ (ن)کا مسئلہ ہے نہ پیپلز پارٹی کا نہ کسی اور اتحادی کا مسئلہ ہے یہ پاکستان کی بات ہے ، جتنی بھی جماعتیں بیٹھی ہیں ان کے سامنے اس کی باتیں آئی ہیں، بائیس کروڑ میںایک بھی نہیں ہوگا جو کہے اس کے خلاف ایکشن نہ لیا جائے۔انہوںنے کہا کہ جو آڈیو لیکس ہوئی ہے شک نہیںہے کہ یہ عمران اور اس کے کوچ کی کارستانی ہے ،کوئی ہیکرز نہیں ہے کوئی ہیکنگ نہیں ہوئی ، ڈارک ویب پر کچھ نہیں ہے سب فراڈ ہے یہ انہی کی کارستانی ہے ۔انہوںنے کہا کہ میرے داماد کی جومشینری آئی تھی وہ عمران خان کے دور میں آئی تھی ، عمران خان کہتے ہیں مریم نواز کو شرم آنی چاہیے شرم تو عمران خان کو آنی چاہیے تھی ،تب امپورٹ کھلی ہوئی تھی ، وزیر اعظم شہباز شریف خود کہہ چکے ہیں کہ قانون بدل گیا ہے جس پر درخواست واپس لے لی گئی ، یہ میرا ملک ہے اس کے قانون کا احترام میرے اور پر واجب ہے ۔مریم نواز نے کہا کہ میں جو پبلک میں بیان دیتی ہوں وہی اندر کمرے میں بھی ہوتا ہے ۔میں پیٹرولیم کی قیمتوں میں اضافے کے مخالف تھی اور بیان پر لوگ ناراض ہوئے ۔ہماری حکومت کا ایک ہی مقصد ہے کہ اگر ہم حکومت میں ہیں عوام کو ریلیف دیں اور خدمت کریں، میرا کوئی دہرا معیار نہیں ہے ، گھر میں اس سے زیادہ بات کرتی ہوں، کچھ سیاسی مجبوریاں ہوتی ہیں لیکن عوام کے لئے ریلیف کے لئے سخت باتیں کرتی ہوں۔ انہوںنے کہا کہ جب آرمی چیف کے حوالے سے خود ڈی جی آئی ایس پی آر کا بیان آ گیا ہے تو اس پر کیوں قیاس آرائی کروں ۔انہوںنے کہا کہ صحت کارڈ کے لئے میں نے کام کیا تھا ، نواز شریف نے بنایا تھا ، وہ ہر جگہ مجھے ساتھ لے کر جاتے تھے، میں اسے بند کرنے کا کہہ کر گناہ نہیں کر سکتی، میں عمران خان نہیں ہوں جو دو سو یونٹس بجلی غریب استعمال کرتے ہیں عدالت میں جا کر اسے بند کر ادے ۔میں نے کہا کہ ہیلتھ پروگرام کو آن کریں،وزیراعظم سے یہ گفتگو تین بار ہوئی ہے ، جو سقم ہیں اس کو ری ڈیزائن کریں تاکہ عوام کو ان کا حق ملے ، میںقیمتیں بڑھانے کے خلاف اپنے لوگوں کے خلاف کھڑی ہو سکتی ہوں بھلے اس کا کتنا ہی سیاسی نقصان کیوں نہ۔ مریم نواز نے کہا کہ نواز شریف آئیں گے ملک اور پارٹی کو سنبھالیں گے۔اس موقع پر وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ خان نے کہا کہ مریم نواز نے جو گلہ کیا ہے جو اعتراض اٹھایا ہے وہ بالکل جائز ہے درست ہے ، لیکن یہ بات ملحوظ خاط ررکھی جائے کہ ملک میں صرف مسلم لیگ (ن)کی حکومت نہیں ہے بلکہ اتحاد کی حکومت ہے سب کو آن بورڈ لے کر چلنا پڑتا ہے ۔ انہوںنے کہا کہ پچیس مئی کے واقعات کے بعد بڑا تجزیہ تھا اور میری کابینہ سے گزارش تھی کہ عمران خان پر حکومت ،پاکستان کے کیپٹل پر مسلح جتھے سے حملہ اور ہونے کا مقدمہ درج اور اسے گرفتار کیا جائے ، یہ اتنا بزدل ہے کہ اسی دن پشاور بھاگ گیا اورجب تک عبوری ضمانت نہیں لی واپس نہیں آیا۔ کابینہ نے فیصلہ کرنے کی بجائے سب کمیٹی بنا دی اور جب معاملات سب کمیٹی کے سپرد ہوتاہے تو بات لمبی ہو جاتی ہے ۔ اب کابینہ نے مضبوط فیصلہ کیا ہے اس معاملے کو پارلیمنٹ میں بھی اٹھایا جائے گا اورامید ہے کہ بحث کے بعد پارلیمنٹ اس کے خلاف آڑٹیکل 6کا ریفرنس دائر کرنے کافیصلہ کرے گی اور اس کے بعد یہ اپنے انجام کو پہنچے گا۔پریس کانفرنس میں عمران خان کی دو مبینہ آڈیو لیکس بھی چلائی گئیں۔


متعلقہ خبریں


بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا، جی ڈی پی میں کمی کا امکان وجود - منگل 06 دسمبر 2022

عالمی بنک نے بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا لگنے کی پیش گوئی کرتے ہوئے مالی سال 2022-23میں بھارتی معیشت کی شرح نمو گھٹا کر 6.9فیصد رہنے کا امکان ظاہر کیا ہے۔ عالمی بینک نے اپنی انڈیا ڈیولپمنٹ اپ ڈیٹ میں مانیٹری پالیسی میں سختی اور اجناس کی قیمتوں میں اضافے کو ملک کی ترقی کو متاثر...

بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا، جی ڈی پی میں کمی کا امکان

بلائنڈ ٹی 20 ورلڈ کپ: بھارت کا سیاسی بنیاد پر پاکستانی ٹیم کو ویزا دینے سے انکار وجود - منگل 06 دسمبر 2022

بھارت نے بلائنڈ ٹی 20 ورلڈ کپ کے لیے ٹورنامنٹ کی فیورٹ پاکستانی ٹیم کو سیاسی بنیاد پر ویزا دینے سے انکار کر دیا۔ پاکستان بلائنڈ کرکٹ کونسل (پی بی سی سی) نے ایک بیان میں کہا کہ بھارت نے ٹورنامنٹ کے لیے ٹیم کو ویزا دینے سے انکار کیا ہے جو 5 سے 17 دسمبر تک کھیلا جارہا ہے۔ بیان میں ک...

بلائنڈ ٹی 20 ورلڈ کپ: بھارت کا سیاسی بنیاد پر پاکستانی ٹیم کو ویزا دینے سے انکار

ارشد شریف قتل : میڈیکل رپورٹ غیر تسلی بخش قرار، مقدمہ درج کرنے کا حکم وجود - منگل 06 دسمبر 2022

سپریم کورٹ آف پاکستان نے از خود نوٹس لیتے ہوئے مقتول سینئر صحافی ارشد شریف کی میڈیکل رپورٹ غیر تسلی بخش قرار د ے کر قتل کا مقدمہ درج کرنے کا حکم دے دیا۔ چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس عمرعطا بندیال کی سربراہی میں 5 رکنی لارجر بینچ نے ارشد شریف قتل کیس کے ازخود نوٹس پر سماعت کی، جسٹس اع...

ارشد شریف قتل : میڈیکل رپورٹ غیر تسلی بخش قرار، مقدمہ درج کرنے کا حکم

بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار وجود - منگل 06 دسمبر 2022

بابری مسجد کی شہادت کو30 برس مکمل ہو گئے ہیں جسے 1992 ء میں آج کے دن ہندو توا تنظیموں بھارتیہ جنتا پارٹی اور راشٹریہ سوائم سیوک سنگھ کی قیادت میں ہندو بلوائیوں نے اس وقت کی کانگریس حکومت کی خاموش منظوری کے ساتھ شہید کیا تھا اور اس طرح بھارت کا انتہا پسند چہرہ دنیا بھر کے سامنے بے...

بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار

برطانیہ میں قورمے کی توہین، پاکستان اور بھارت ایک ساتھ ٹوٹ پڑے وجود - منگل 06 دسمبر 2022

برطانیہ میں قورمے کی توہین پر پاکستان اور بھارت ایک پیج پر آ گئے، تین دسمبر کو برطانوی فوڈ نیٹ ورک ٹیسٹی یو کے نے قورمہ بنانے کی ویڈیو جاری کی جس کے بعد پورا برِصغیر ٹوئٹر پر آ ٹوٹا۔ قورمے کی متنازع ریسیپی میں چاول ڈال دیے گئے، حد تب ہوئی جب اس میں بے دھڑک پالک شامل کر دی گئی۔ قو...

برطانیہ میں قورمے کی توہین، پاکستان اور بھارت ایک ساتھ ٹوٹ پڑے

پاکستان کو ترسیلات میں 7.3 فیصد تک کمی ہوسکتی ہے، ورلڈ بینک وجود - منگل 06 دسمبر 2022

ورلڈ بینک نے کہا ہے کہ پاکستان کو ترسیلات میں 7.3 فیصد تک کمی ہوسکتی ہے۔ ورلڈ بینک نے اپنی رپورٹ میں کہا کہ پاکستان کو گزشتہ سال کے 31 ارب ڈالر کے مقابلے 2022 میں 29 ارب ڈالر کی ترسیلات ہوں گی۔ رپورٹس کے مطابق بنگلادیش اور سری لنکا کو بھی ترسیلات کی مد میں کمی متوقع ہے، رواں برس ...

پاکستان کو ترسیلات میں 7.3 فیصد تک کمی ہوسکتی ہے، ورلڈ بینک

تحریک انصاف کا الیکشن کراؤ ملک بچاؤ مہم شروع کرنے کا فیصلہ وجود - منگل 06 دسمبر 2022

پاکستان تحریک انصاف نے الیکشن کراؤ ملک بچاؤ مہم شروع کرنے کا فیصلہ کر لیا۔ پی ٹی آئی چیئرمین عمران خان کی زیر صدارت لاہور کے ارکان پنجاب اسمبلی، ارکان قومی اسمبلی اور پارٹی رہنماؤں کا مشاورتی اجلاس ہوا، اجلاس میں شفقت محمود، حماد اظہر، میاں اسلم اقبال، فواد چودھری، ڈاکٹر یاسمین ر...

تحریک انصاف کا الیکشن کراؤ ملک بچاؤ مہم شروع کرنے کا فیصلہ

ڈاکٹر اسد مجید خان نے سیکریٹری خارجہ کی حیثیت سے اپنی ذمہ داریاں سنبھال لیں وجود - پیر 05 دسمبر 2022

ڈاکٹر اسد مجید خان نے پاکستان کے31 ویں سیکریٹری خارجہ کی حیثیت سے اپنی ذمہ داریاں سنبھال لیں۔ دفتر خارجہ کی ترجمان ممتاز زہرا بلوچ کی جانب سے ٹوئٹر پر جاری بیان کے مطابق ڈاکٹر اسد مجید خان نے پاکستان کے 31 ویں وزیر خارجہ کی حیثیت سے اپنی ذمہ داریاں سنبھال لی ہیں۔ واضح رہے کہ دو ...

ڈاکٹر اسد مجید خان نے سیکریٹری خارجہ کی حیثیت سے اپنی ذمہ داریاں سنبھال لیں

حکومت کے صدر مملکت ڈاکٹرعارف علوی کے ذریعے ہونے والے مذاکرات تعطل کا شکار وجود - پیر 05 دسمبر 2022

حکومت کے صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کے ذریعے ہونے والے مذاکرات تعطل کا شکار ہو گئے ہیں۔ نجی ٹی وی کے مطابق حکومت کی جانب سے وزیر خزانہ اسحاق ڈار جبکہ پاکستان تحریک انصاف کی طرف سے صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کے ذریعے موجودہ سیاسی صورتحال پر بات جاری تھی۔ ذرائع کے مطابق مذاکرات کا سل...

حکومت کے صدر مملکت ڈاکٹرعارف علوی کے ذریعے ہونے والے مذاکرات تعطل کا شکار

ایران نے ہندوستان سے چائے، باسمتی چاول کی درآمد بند کردی وجود - پیر 05 دسمبر 2022

ایران نے گزشتہ ہفتے سے ہندوستان سے چائے اور باسمتی چاول کی درآمد کیلئے نئے معاہدوں پر دستخط کرنا بند کردیے ہیں۔ غیر ملکی میڈیا رپورٹ کے مطابق ایران نے گزشتہ ہفتے سے بھارت سے چائے اور باسمتی چاول کی درآمد کے لیے نئے معاہدوں پر دستخط کرنا بند کردیے ہیں۔ برآمدات کا سلسلہ یوں اچانک ...

ایران نے ہندوستان سے چائے، باسمتی چاول کی درآمد بند کردی

فلسطینیوں کی 1948ء میں بے دخلی پر مبنی فلم فرحہ کی ریلیز پر اسرائیل میں ہنگامہ وجود - پیر 05 دسمبر 2022

امریکی اسٹریمنگ سروس نیٹ فلکس نے سال 1948 میں لاکھوں فلسطینیوں کی بے دخلی پر مبنی اردنی فلم فرحہ ریلیز کردی، فلم ریلیز ہونے کے بعد اسرائیل کی جانب سے اس پر سخت تنقید کی گئی۔ یکم دسمبر کو نیٹ فلکس پر جاری ہونے والی اردنی فلم فرحہ، ایک 14 سالہ فلسطینی لڑکی کی کہانی ہے جس کا گاؤں اس...

فلسطینیوں کی 1948ء میں بے دخلی پر مبنی فلم فرحہ کی ریلیز پر اسرائیل میں ہنگامہ

لاہور دنیا کے آلودہ ترین شہروں میں سرفہرست، بیماریاں پھیلنے لگیں وجود - پیر 05 دسمبر 2022

دنیا کے آلودہ ترین شہروں میں لاہور پہلے نمبر پر رہا۔ صوبائی دارالحکومت لاہور کا ائیر کوالٹی انڈیکس 364 ریکارڈ کیا گیا جبکہ شہر میں اسموگ کے باعث بچوں اور بڑوں میں نزلے، زکام، چیسٹ انفیکشن، بخار اور سانس کی بیماریاں تیزی سے پھیلنے لگی ہیں۔ لاہور کے ہسپتالوں میں مریضوں کا رش لگ گیا...

لاہور دنیا کے آلودہ ترین شہروں میں سرفہرست، بیماریاں پھیلنے لگیں

مضامین
چائلڈپورنوگرافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
چائلڈپورنوگرافی

بول کہ سچ زندہ ہے اب تک وجود پیر 05 دسمبر 2022
بول کہ سچ زندہ ہے اب تک

عوامی مقبولیت بھی پَل بھر کا تماشہ ہے وجود پیر 05 دسمبر 2022
عوامی مقبولیت بھی پَل بھر کا تماشہ ہے

عمرکومعاف کردیں وجود اتوار 04 دسمبر 2022
عمرکومعاف کردیں

ٹرمپ اور مفتے۔۔ وجود اتوار 04 دسمبر 2022
ٹرمپ اور مفتے۔۔

اب ایک اور عمران آرہا ہے وجود هفته 03 دسمبر 2022
اب ایک اور عمران آرہا ہے

اشتہار

تہذیبی جنگ
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار وجود منگل 06 دسمبر 2022
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار

1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی

امریکا نے القاعدہ ، کالعدم ٹی ٹی پی کے 4رہنماؤں کوعالمی دہشت گرد قرار دے دیا وجود جمعه 02 دسمبر 2022
امریکا نے القاعدہ ، کالعدم ٹی ٹی پی کے 4رہنماؤں کوعالمی دہشت گرد قرار دے دیا

برطانیا میں سب سے تیز پھیلنے والا مذہب اسلام بن گیا وجود بدھ 30 نومبر 2022
برطانیا میں سب سے تیز  پھیلنے والا مذہب اسلام بن گیا

اسرائیلی فوج نے 1967 کے بعد 50 ہزار فلسطینی بچوں کو گرفتار کیا وجود پیر 21 نومبر 2022
اسرائیلی فوج نے 1967 کے بعد 50 ہزار فلسطینی بچوں کو گرفتار کیا

استنبول: خود ساختہ مذہبی اسکالر کو 8 ہزار 658 سال قید کی سزا وجود جمعه 18 نومبر 2022
استنبول: خود ساختہ مذہبی اسکالر کو 8 ہزار 658 سال قید کی سزا

اشتہار

شخصیات
موت کیا ایک لفظِ بے معنی جس کو مارا حیات نے مارا وجود هفته 03 دسمبر 2022
موت کیا ایک لفظِ بے معنی               جس کو مارا حیات نے مارا

ملک کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کے بیٹے اکبر لیاقت انتقال کر گئے وجود بدھ 30 نومبر 2022
ملک کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کے بیٹے اکبر لیاقت انتقال کر گئے

معروف صنعت کار ایس ایم منیر انتقال کر گئے وجود پیر 28 نومبر 2022
معروف صنعت کار ایس ایم منیر انتقال کر گئے
بھارت
بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا، جی ڈی پی میں کمی کا امکان وجود منگل 06 دسمبر 2022
بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا، جی ڈی پی میں کمی کا امکان

بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار وجود منگل 06 دسمبر 2022
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار

1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی

بھارت،پہلی سے آٹھویں جماعت کے اقلیتی طلباء کو اب اسکالر شپ نہیں ملے گی، بھارتی حکومت وجود پیر 05 دسمبر 2022
بھارت،پہلی سے آٹھویں جماعت کے اقلیتی طلباء کو اب اسکالر شپ نہیں ملے گی، بھارتی حکومت
افغانستان
کابل، پاکستانی سفارتی حکام پر فائرنگ، ناظم الامور محفوظ رہے، گارڈ زخمی وجود جمعه 02 دسمبر 2022
کابل، پاکستانی سفارتی حکام پر فائرنگ، ناظم الامور محفوظ رہے، گارڈ زخمی

افغان مدرسے میں زوردار دھماکے میں 30 افراد جاں بحق اور 24 زخمی وجود بدھ 30 نومبر 2022
افغان مدرسے میں زوردار دھماکے میں 30 افراد جاں بحق اور 24 زخمی

حنا ربانی کھر کی قیادت میں پاکستان کا اعلیٰ سطح کا وفد دورہ افغانستان کے لیے روانہ وجود منگل 29 نومبر 2022
حنا ربانی کھر کی قیادت میں پاکستان کا اعلیٰ سطح کا وفد دورہ افغانستان کے لیے روانہ
ادبیات
کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد وجود هفته 26 نومبر 2022
کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد

مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع کردار پرنئی کتاب شائع وجود هفته 23 اپریل 2022
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع  کردار پرنئی کتاب شائع

مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار وجود بدھ 06 اپریل 2022
مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار