وجود

... loading ...

وجود

کووڈ صورت حال کی پیش گوئی: ’یہ کوئی قطعی سائنس نہیں‘

منگل 25 جنوری 2022 کووڈ صورت حال کی پیش گوئی: ’یہ کوئی قطعی سائنس نہیں‘

(مہمان کالم)

سیموئل لوویٹ

وسیع تر فضائی پیٹرنز، تاریخی رجحانات اور سیٹلائٹس ڈیٹا کی بنیاد پر پیشگوئیاں کی جا سکتی ہیں لیکن ٹھوس اعدادوشمار کی عدم موجودگی میں امکانات اور غیر یقینی کا دائرہ اتنا وسیع ہو گا کہ اس سے کوئی مدد نہیں ملے گی۔لیکن جوں جوں زیر بحث وقت قریب آتا ہے اس کے ساتھ ساتھ واضح اور زیادہ قابل اعتماد معلومات حاصل ہوتی ہیں اور دائرہ سکڑتا ہے جس کے نتیجے میں ماہرین زیادہ اعتماد کے ساتھ کہہ سکتے ہیں کہ آیا آنے والے دنوں میں بارش اور برفباری ہو گی یا دھوپ نکلے گی۔
برطانوی حکومت کے بہت سے سائنسی مشیروں میں ایک پروفیسر مائیک ٹلڈسلی کووڈ 19 کے ماڈل تیار کرنے سے متعلق پیچیدگیوں کو بیان کرنے کے لیے اسی مثال کا استعمال کرتے ہیں۔ ’ا?پ ایک ماڈل تیار کر سکتے ہیں کہ 10 دن کے عرصے میں اس بات کا 10 فیصد امکان ہے کہ بارش ہو گی یا دھوپ نکلے گی اور صرف ایک فیصد امکان ہے کہ برفباری ہو گی۔ لیکن بلاشبہ جب ا?پ عملی طور پر اس دن تک پہنچتے ہیں تو ان میں سے صرف ایک ہی ہوتا ہے۔جب بات اومیکرون کی ہو تو لہر کے آغاز میں دستیاب محدود ڈیٹا کے پیش نظر کرسمس کے دوران کیا ہو سکتا ہے اس حوالے سے ماہرین بہت سے حالات کی پیشگوئی کی تھی۔ تاہم حالات جب آئے تو پیمانے اور حقیقت میں کئی گئی پیش گوئیوں سے مختلف تھے۔ لیکن پھر بھی اپنی نوعیت کے لحاظ سے حتمی اور پیشگوئی کرنے والے نہیں تھے۔پروفیسر ٹلڈسلی کے بقول: ’بہت سے لوگ یہ خیال کرتے دکھائی دیتے ہیں کہ ہم یقینی باتیں کرنی چاہییں لیکن ایسا ممکن نہیں ہے۔تو پھر یہ ممکنہ حالات کیا خاکہ پیش کر رہے تھے؟ سرکاری سطح پر کووڈ ماڈلنگ کرنے والے پروفیسر جان ایڈمنڈز کے بقول، انتہائی بدترین حالات، وہ جن پر ’اخبارات زیادہ زور دیتے ہیں،‘ ان میں پیش گوئی کی گئی کہ اگر پابندیاں نہ لگائی گئیں تو اومیکرون کے پھیلاؤ کے عروج پر ایک دن میں چھ ہزار ہلاکتیں اور لاکھوں ہسپتال داخل ہو سکتے ہیں۔ سب سے بہتر حالات میں یومیہ چار سو اموات ہوتیں اور تین ہزار سے کم لوگ ہسپتال داخل ہوتے۔
جب ہم ایک کے بعد اگلے ویک اینڈ کے لیے منصوبہ بندی کرنے کی کوشش کرتے ہیں تو موسم کی ایسی ہی غیر یقینی صورت حال کو قبول کر لیتے ہیں، اس طرح حکومت نے بھی ان امکانات کو سامنے رکھ کر وائرس کی موسم سرما میں آنے والی لہر کا مقابلہ کرنے کی تیاری کی اور فیصلہ کیا کہ آیا اسے کسی چھوٹی چھتری کی ضرورت ہے یا نئے برساتی لباس کی۔اس موقعے پر حکومت نے ہلکی حکمت عملی اختیار کی۔ شکر ہے کہ اس حکمت عملی کا فائدہ ہوا۔ اس دوران بدترین حالات، جن کا خاکہ ماہرین نے تیار کیا تھا، وہ نہیں پیش آئے۔‘ پروفیسر ٹلڈسلی کہتے ہیں ’ان کے عملی شکل اختیار کرنے کا امکان ایک فیصد تھا۔اس کے باوجود سائنٹفک پنڈیمک انفلوئنزا گروپ آن ماڈلنگ (ایس پی آئی۔ایم) کے ارکان سمیت پروفیسر ایڈمنڈز اور ٹلڈسلی کو دسمبر کے ا?غاز میں وزرا کے لیے یہ ماڈل تیار کرنے میں معاونت پر سخت تنقید کا نشانہ بنایا گیا۔ یہ وقت تھا جب امیکرون کے معاملے میں خوف بڑھ رہا تھا۔
حکومت اور عوام جاننا چاہتے تھے کہ کتنے لوگ مریں گے، کتنے متاثر ہوں گے، روزانہ ہسپتالوں میں داخلوں کی تعداد کتنی بڑھے گی، کون سی پابندیاں لگانے کی ضرورت ہے۔ یہ معاملہ موسم کی پیشگوئی سے بہت زیادہ مختلف تھا۔ جو مشکل درپیش تھی وہ اس وجہ سے بڑھ گئی کہ اومیکرون کی شدت اور اس کی مدافعتی نظام سے بچ نکلنے کی صلاحیت کے بارے میں ڈیٹا کی کمی تھی۔ ان تفصیلات کے بغیر حالات کے جو ماڈل تیار کیے گئے حقیقت کے زیادہ قریب نہیں رہے۔پروفیسر ایڈمنڈز کے مطابق: ’کرسمس سے عین پہلے ہمیں اعدادوشمار مل گئے کہ حقیقت میں اومیکرون کی شدت کم ہے۔لیکن اس وقت تک اخباروں کی سرخیاں طے ہو چکی تھیں جب کہ ناقدین بظاہر اس جانب اشارہ کر رہے تھے کہ دراصل یومیہ چھ ہزار لوگ اومیکرون کی وجہ سے ہلاک نہیں ہو رہے تھے۔
ایک اور بڑی غلط فہمی یہ ہے کہ جو ماڈل تیار کیے گئے وہ پیشگوئیاں تھیں جن کے بارے میں ایس پی آئی۔ایم کے سربراہ پروفیسر گریم میڈلی کا کہنا ہے کہ یقیناً ایسا نہیں ہے۔ وہ کہتے ہیں: ’ہم حکومت کے لیے امکانات کے ماڈل تیار کر رہے تھے۔ یہ ماڈل وہ منظرنامے ہیں جن کا مقصد فیصلہ سازوں کی مدد کرنا تھا تاکہ وہ مختلف پالیسیاں اختیار کرتے وقت ان کے مضمرات کو سمجھ سکیں۔‘انہوں نے یہ نکتہ بھی اٹھایا ہے کہ ایس پی آئی۔ایم کے ماڈل عام کیے جانے سے پہلے ہی پرانے ہو چکے ہوتے۔ ’اس صورت میں ہم ایسی بات کی وضاحت کرنے کی کوشش کے لیے رہ جاتے کہ خبر اس لحاظ سے واقعی پرانی ہے کہ حکومت پہلے ہی اس جائزہ کا لے چکی اور پالیسی بنا چکی تھی۔‘
اگرچہ ماہرین تسلیم کریں گے کہ ان کی مہارت خامیوں سے پاک نہیں ہے۔ اس کے بالکل برعکس ایس پی آئی۔ایم کے جن ارکان نے کے ساتھ اس حوالے سے بات کی انہوں نے تسلیم کیا کہ ماڈلز کی تیاری میں انسانی رویہ تکنیکی طور پر سب سے مشکل حصہ ہے۔ جب وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد اور نئی پابندیوں کے نفاذ کا امکان بڑھتا ہے، جیسا کہ ہم نے دسمبر میں اومیکرون کے معاملے میں دیکھا، تو لوگوں کے ردعمل ظاہر کرنے کے طریقوں میں انتہائی نوعیت کی تبدیلیاں آئیں۔یہاں تک کہ حکومت کی طرف سے ایسا کرنے کے اعلان سے بھی پہلے بہت سے لوگوں نے معاشرے سے مکمل طور پر کٹ جانا تھا۔ دوسرے یہ مانتے ہوئے کہ انہیں ویکیسن کی تمام خوراکیں لگ چکی ہیں معمول کے مطابق اپنا کام جاری رکھتے۔ بعض لوگ ہر قسم کی رہنمائی کو غیرضروری سمجھتے ہوئے اسے نظرانداز کر دیتے۔
پروفیسر ٹلڈسلی کے مطابق: ’یہ جاننا بہت مشکل ہے کہ یہ ردعمل معاشرے کے مختلف حصوں میں کس طرح مختلف ہوتے ہیں۔ ممکن تھا کہ عمر کے اعتبار سے مختلف گروپس کے ساتھ تعلق رکھنے والے لوگ اور برادریاں مختلف انداز میں ردعمل ظاہر کرتے۔ اس لیے اس چیز کو ماڈلز کا حصہ بنانا مشکل کام ہے۔یہی وجہ ہے کہ ایس پی ا?ئی۔ایم کے بہت سے ماڈلز میں انسانی رویے کو شامل نہیں کیا گیا۔ مختلف جامعات مختلف منظرنامے تیار کرتی ہیں جو وزرا کو پیش کیے ڈیٹا میں ملا کر شامل کیا جاتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ وزرا کو گذشتہ دسمبر میں پیش کیے گئے امکانات اتنے وسیع تھے۔ ناقدین کا ماننا ہے کہ ان معلومات کے بغیر منظرنامے ہمیشہ ہدف سے دور رہیں گے۔ اور یقنینی طور دلیل موجود ہے کہ اس کو ماڈل سازی کا حصہ بنایا جائے، خاص طور پر جب عالمی سطح پر کئی مطالعے جاری ہوئے ہیں اور گذشتہ دو سال کا ڈیٹا موجود جو یہ ظاہر کرتا ہو کہ وبا کے تمام عرصے کے دوران انسانی رویے کس طرح تبدیل ہو چکے ہیں۔
برطانیا کے ا سڑرٹیجک ایڈوائزری گروپ ا?ن امیونائشن ’سیج‘ کے حالیہ اجلاس میں تسلیم کیا گیا کہ متاثرین کی ہسپتال میں داخل ہونے کی تعداد میں جس اضافے کی توقع کی جا رہی تھی ’وہ ابھی تک نہیں دیکھا گیا۔‘سائنس دانوں نے مفروضہ پیش کیا ہے کہ ’ہو سکتا ہے کہ ایسا ہسپتال میں داخل ہونے سے بچنے کے لیے بڑی تعداد میں لوگوں کا حفاظتی ویکسین لگانا، ویکیسن کی افادیت زیادہ دیر تک رہنا اور خطرے میں سب سے زیادہ گھرے افراد یا ان کے اردگرد موجود لوگوں کا احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کے رویے کا نتیجہ ہو۔تاہم یہ مخصوص اس بات کی نشاندہی نہیں کرتی ہے کہ ماڈل سازی بیکار اور ناقابل اعتماد ہے۔ اس کی بجائے یہ ایک یاد دہانی ہے کہ ماڈل میں ہر بات شامل نہیں۔ ماہرین خود اتنا ہی کہیں گے۔ پروفیسر ٹلڈسلی کہتے ہیں کہ یہ کوئی قطعی سائنس نہیں ہے۔لیکن معاشرے میں بڑے پیمانے پر تقسیم کے وقت کووڈ ماڈلنگ کی تصور کی جانے والی ناکامیوں کا فائدہ ان لوگوں نے اٹھایا ہے جو وبا کے خلاف برطانیہ کی حکمت عملی میں خامیوں کی تلاش میں ہیں اور ان کا مطالبہ ہے کہ ہم نے جن پابندیوں کا سامنا کیا ان کے بدلے میں معاوضہ دیا جائے۔
ماڈلنگ پر اپنی تنقید میں ایک غیر معروف رکن پارلیمنٹ اس حد تک چلے گئے کہ انہوں نے ونسٹن چرچل کے الفاظ دہرا دیے۔ ان کا کہنا تھا کہ ’اتنے کم، قابل گرفت اور ممکنہ طور پر خامیوں سے بھرے ڈیٹا کی بنیاد پر چند لوگوں نے اتنے زیادہ لوگوں کو جو نقصان پہنچایا اس سے پہلے کبھی نہیں پہنچایا گیا۔ایس پی ا?ئی۔ایم کے ایک رکن جنہوں نے نام ظاہر نہ کرنے کی درخواست کی، نے بات کو اچھے انداز میں مکمل کیا۔’درحقیقت یہ سب سیاسی معاملہ ہے اور سیاسی استدلال میں ان ثبوتوں، جو اس عمل کی حمایت میں دکھائی دیتے ہوں، جو آپ نہیں چاہتے ہو، کو نشانہ بنانا ایک جائز کام ہے۔‘افسوس کی بات یہ ہے کہ یہ واحد کام نہیں کہ جسے کرنے کی کوشش سائنس دانوں نے کبھی نہ کی ہو۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
خون کی بارش وجود جمعه 20 مئی 2022
خون کی بارش

پہلے اور اب وجود جمعه 20 مئی 2022
پہلے اور اب

انتخاب کرلیں وجود بدھ 18 مئی 2022
انتخاب کرلیں

کام کی باتیں۔۔ وجود بدھ 18 مئی 2022
کام کی باتیں۔۔

باغی اوربغاوت وجود منگل 17 مئی 2022
باغی اوربغاوت

وقت کہاں بہتا ہے؟ وجود پیر 16 مئی 2022
وقت کہاں بہتا ہے؟

اشتہار

تہذیبی جنگ
وفاقی شرعی عدالت کا 19سال بعد فیصلہ ، سود کے لیے سہولت کاری کرنے والے تمام قوانین ، شقیں غیرشرعی قرار وجود جمعرات 28 اپریل 2022
وفاقی شرعی عدالت کا 19سال بعد فیصلہ ، سود کے لیے سہولت کاری کرنے والے تمام قوانین ، شقیں غیرشرعی قرار

بھارتی معروف سماجی کارکن سبری مالا نے اسلام قبول کرلیا، نام فاطمہ سبریمالا رکھ لیا وجود منگل 26 اپریل 2022
بھارتی معروف سماجی کارکن سبری مالا نے اسلام قبول کرلیا، نام فاطمہ سبریمالا رکھ لیا

موبائل فون فلسطینیوں کا بندوق سے زیادہ طاقتور ہتھیار بن گیا وجود هفته 23 اپریل 2022
موبائل فون فلسطینیوں کا بندوق سے زیادہ طاقتور ہتھیار بن گیا

سپریم لیڈر لڑکیوں کی تعلیم پر پابندی کے حامی ہیں،سینئر طالبان رکن وجود پیر 18 اپریل 2022
سپریم لیڈر لڑکیوں کی تعلیم پر پابندی کے حامی ہیں،سینئر طالبان رکن

سوئیڈن میں قران پاک کی بے حرمتی کے اعلان پر احتجاج وجود اتوار 17 اپریل 2022
سوئیڈن میں قران پاک کی بے حرمتی کے اعلان پر احتجاج

ایمن الظواہری کی نئی ویڈیو،اللہ اکبرکا نعرہ لگانے والی بھارتی لڑکی کی تعریف وجود بدھ 06 اپریل 2022
ایمن الظواہری کی نئی ویڈیو،اللہ اکبرکا نعرہ لگانے والی بھارتی لڑکی کی تعریف

اشتہار

بھارت
بھارتی عدالت کے ہاتھوں انصاف کا قتل، یاسین ملک بغاوت، وطن دشمنی اور دہشت گردی کے مجرم قرار وجود جمعرات 19 مئی 2022
بھارتی عدالت کے ہاتھوں انصاف کا قتل، یاسین ملک بغاوت، وطن دشمنی اور دہشت گردی کے مجرم قرار

بھارت کی افغانستان میں سفارتخانہ کھولنے کے لیے طالبان سے بات چیت وجود بدھ 18 مئی 2022
بھارت کی افغانستان میں سفارتخانہ کھولنے کے لیے طالبان سے بات چیت

بھارتی ایجنسی کا داؤد ابراہیم کے دو قریبی ساتھیوں کو گرفتار کرنے کا دعویٰ وجود هفته 14 مئی 2022
بھارتی ایجنسی کا داؤد ابراہیم کے دو قریبی ساتھیوں کو گرفتار کرنے کا دعویٰ

بھارتی سپریم کورٹ نے حکومت کو غداری کے قانون کے تحت مقدمات کے انداج سے روک دیا وجود جمعرات 12 مئی 2022
بھارتی سپریم کورٹ نے حکومت کو غداری کے قانون کے تحت مقدمات کے انداج سے روک دیا
افغانستان
بھارت کی افغانستان میں سفارتخانہ کھولنے کے لیے طالبان سے بات چیت وجود بدھ 18 مئی 2022
بھارت کی افغانستان میں سفارتخانہ کھولنے کے لیے طالبان سے بات چیت

طالبان کا پہلا سالانہ بجٹ پیش،50 کروڑ ڈالر خسارے کی پیشن گوئی وجود پیر 16 مئی 2022
طالبان کا پہلا سالانہ بجٹ  پیش،50 کروڑ ڈالر خسارے کی پیشن گوئی

پنج شیر میں امارت اسلامیہ کے مخالفین نے ہتھیار ڈال دیے وجود جمعرات 12 مئی 2022
پنج شیر میں امارت اسلامیہ کے مخالفین نے ہتھیار ڈال دیے

طالبان مخالف فورسز کا وادی پنج شیر کے 3 اضلاع پر قبضے کا دعویٰ وجود اتوار 08 مئی 2022
طالبان مخالف فورسز کا وادی پنج شیر کے 3 اضلاع پر قبضے کا دعویٰ
ادبیات
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع کردار پرنئی کتاب شائع وجود هفته 23 اپریل 2022
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع  کردار پرنئی کتاب شائع

مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار وجود بدھ 06 اپریل 2022
مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار

پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل وجود منگل 04 جنوری 2022
پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل

پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی وجود جمعرات 23 دسمبر 2021
پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی
شخصیات
آسٹریلین کرکٹ لیجنڈ اینڈریو سائمنڈز کار حادثے میں ہلاک وجود اتوار 15 مئی 2022
آسٹریلین کرکٹ لیجنڈ اینڈریو سائمنڈز کار حادثے میں ہلاک

متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زاید النہیان 73 سال کی عمر میں انتقال کرگئے وجود هفته 14 مئی 2022
متحدہ عرب امارات کے صدر شیخ خلیفہ بن زاید النہیان 73 سال کی عمر میں انتقال کرگئے

سیاست سے قطعاً کوئی تعلق نہیں، مولانا طارق جمیل وجود پیر 09 مئی 2022
سیاست سے قطعاً کوئی تعلق نہیں، مولانا طارق جمیل

مزاح کے بے تاج بادشاہ معین اختر کو مداحوں سے بچھڑے 11برس بیت گئے وجود جمعه 22 اپریل 2022
مزاح کے بے تاج بادشاہ معین اختر کو مداحوں سے بچھڑے 11برس بیت گئے