وجود

... loading ...

وجود
وجود

بھارتی معاشرہ تباہی کے دھانے پر

اتوار 28 نومبر 2021 بھارتی معاشرہ تباہی کے دھانے پر

مجتبیٰ منیب

ہمارے نئے بھارت میں فیک نیوز اور افواہوں کے معاملے میں سیدھے 214 فیصد بڑھے ہیں۔ یہ ڈیٹا کسی نجی ایجنسی کا نہیں ہے بلکہ سیدھے سرکاری ایجنسی این سی آر بی کی جانب سے آیا ہے۔ ویسے اگر یہ نیشنل کرائم ریکارڈ بیورو (این سی آربی) کی جانب سے آیا ہے اس کا مطلب actual سے کم ہے اس لیے کہ اس میں وہی ڈیٹا آتا ہے جو رپورٹ کیا جاتا ہے اسی لیے reality میں دیکھا جائے گا تو اور بھی زیادہ نکلے گا۔ لیکن چلیے این سی آر بی کے ڈیٹا کو ہی دیکھ لیتے ہیں۔ این سی آر بی کے حساب سے سال ۰۲۰۲ میں فیک نیوز پھیلانے کے معاملوں میں قریباً تین گناہ کا اضافہ ہوا ہے۔ سال 2020 میں فیک نیوز کے 1527 معاملے رپورٹ کیے گئے ہیں جبکہ 2019میں یہ تعداد 486 کی تھی اور سال 2018میں 280 کیس تھے۔ فیک نیوز کے بارے میں این سی آر بی نے اس طرح کا ڈیٹا پہلی بار2018میں جمع کرنا شروع کیا تھا۔
اگر states کے حساب سے دیکھیں تو انڈین ایکسپریس کی رپورٹ میں اس لسٹ میں پہلے نمبر پر تلنگانہ ہے جہاں پر فیک نیوز کے کل 273 کیس درج ہوئے ہیں۔ دوسرے نمبر پر تمل ناڈو ہے جہاں پر 188کیس درج ہوئے ہیں اور تیسرے نمبر پر اتر پردیش ہے جہاں پر 166 معاملے درج ہوئے ہیں۔ اگر ہم شہروں کو دیکھیں تو پہلے نمبر پر حیدرآباد کا نمبر آیا جہاں 208 معاملے درج ہوئے، اس کے بعد چنئی کا نمبر آیا جہاں پر 42 معاملے درج ہوئے اور پھر دہلی جہاں پر 30 معاملے درج ہوئے ہیں۔ اس میں یہ بات بھی شامل ہے کہ کورونا مہاماری میں اس طرح کے معاملینکافی بڑھ گئے تھے لیکن یہ بات بھی سامنے رہے کہ اس میں ان لوگوں کو بھی شامل کر لیا گیا ہے جو pandemic کے دوران آکسیجن یا بیڈ کی کمی کو لیکر آواز اٹھا رہے تھے۔
اپریل کے مہینے میں اتر پردیش کے مکھیہ منتری یوگی آدتیہ ناتھ نے کہا تھا کہ جو لوگ بھی سوشل میڈیا پر آکسیجن کی کمی کی بات ڈالیں گے انکے خلاف سیدھے نیشنل سیکیوریٹی قانون کے تحت کاروائی کردیں گے۔ اس کا مطلب تو ہم سب سمجھ ہی سکتے ہیں۔ یہ سب کو پتہ ہونا چاہیے کہ آئی پی سی کی دھارہ 505 ( اکسانے کے ارادے) کے تحت فیک نیوز پھیلانے پر کاروائی ہوتی ہے۔ وہی اگر کل سائبر کرائم کے معاملوں کو دیکھیں تو بھارت میں سال 2020 میں اس طرح کے 50,035 معاملے درج ہوئے ہیں جو کہ اس سے پچھلے سال کے مقابلہ میں 11.8 فیصد زیادہ ہے۔
این سی آر بی کے آنکڑوں کے مطابق سائبر کرائم کے معاملے 2019 کے مقابلے میں 2020 میں بڑھے ہیں۔ یعنی ڈیجیٹل ترقی دونوں میں ہورہی ہے، استعمال کرنے میں بھی اور کرائم میں بھی۔ آنکڑوں کو اگر دیکھیں تو 2019 میں سائبر کرائم کے معاملے 44735 تھے جبکہ یہ 2018 میں 27248 کیس درج ہوئے تھے۔ این سی آر بی کے مطابق 2020 میں آن لائن بینکنگ میں دھوکہ کے 4047 معاملے درج ہوئے، OTP دھوکہ دھڑی کے 1093 معاملے، کریڈٹ اور ڈیبٹ کارڈ دھوکہ دہی کے 1194 کیس جبکہ ATM سے جڑے 2160 کیس درج ہوئے ہیں۔
سائبر کرائم کے کیسیس میں سب سے زیادہ جرم سے پاک اتر پردیش میں ہوئے ہیں جو کہ 11097 کیس ہیں، جبکہ کرناٹک میں یہ تعداد 10 741 کو پہنچی ہے، مہاراشٹر میں 5496 ، تلنگانہ میں 5024 اور آسام میں 3530 کیس درج کیے گئے ہیں۔
اگر کرائم ریکارڈ کو دیکھیں تو سب سے پہلا نمبر کرناٹک کا ہے جس کے بعد تلنگانہ، پھر آسام اس کے بعد اتر پردیش اور پھر مہاراشٹر کا نمبر بتایا گیا ہے۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
سعودی عرب میں ہر گھنٹے سات طلاقوں کے کیسز رپورٹ وجود منگل 25 جنوری 2022
سعودی عرب میں ہر گھنٹے سات طلاقوں کے کیسز رپورٹ

حق دو کراچی کو وجود پیر 24 جنوری 2022
حق دو کراچی کو

ہندوستان کی شبیہ کون داغدار کررہاہے؟ وجود پیر 24 جنوری 2022
ہندوستان کی شبیہ کون داغدار کررہاہے؟

خود کو بدلیں وجود پیر 24 جنوری 2022
خود کو بدلیں

تجارتی جنگیں احمقوں کا کھیل وجود هفته 22 جنوری 2022
تجارتی جنگیں احمقوں کا کھیل

دھرنے،احتجاج اور مظاہرے وجود هفته 22 جنوری 2022
دھرنے،احتجاج اور مظاہرے

بھارت میں وزیر تعلیم نے حجاب کو ڈسپلن کی خلاف ورزی قرار دے دیا وجود جمعه 21 جنوری 2022
بھارت میں وزیر تعلیم نے حجاب کو ڈسپلن کی خلاف ورزی قرار دے دیا

تحریک انصاف اور پورس کے ہاتھی وجود جمعه 21 جنوری 2022
تحریک انصاف اور پورس کے ہاتھی

بلوچستان میں نئی سیاسی بساط وجود جمعه 21 جنوری 2022
بلوچستان میں نئی سیاسی بساط

کورونا،بھنگ اور جادو وجود جمعه 21 جنوری 2022
کورونا،بھنگ اور جادو

ترک صدر کا ممکنہ دورہ سعودی عرب اور اس کے مضمرات ؟ وجود جمعرات 20 جنوری 2022
ترک صدر کا ممکنہ دورہ سعودی عرب اور اس کے مضمرات ؟

قومی سلامتی پالیسی اور خطرات وجود بدھ 19 جنوری 2022
قومی سلامتی پالیسی اور خطرات

اشتہار

افغانستان
افغانستان میں امریکی شہری کا قبولِ اسلام، اسلامی نام محمد عیسیٰ رکھا وجود پیر 24 جنوری 2022
افغانستان میں امریکی شہری کا قبولِ اسلام، اسلامی نام محمد عیسیٰ رکھا

افغانستان،ہرات میں دھماکہ، 7 افراد جاں بحق، 9 زخمی وجود اتوار 23 جنوری 2022
افغانستان،ہرات میں دھماکہ، 7 افراد جاں بحق، 9 زخمی

اسلامی ممالک طالبان حکومت کو تسلیم کریں، افغان وزیراعظم کا مطالبہ وجود جمعرات 20 جنوری 2022
اسلامی ممالک طالبان حکومت کو تسلیم کریں، افغان وزیراعظم کا مطالبہ

طالبان کا شمالی مغربی شہر میں بدامنی کے بعد فوجی پریڈ کے ذریعے طاقت کا مظاہرہ وجود منگل 18 جنوری 2022
طالبان کا شمالی مغربی شہر میں بدامنی کے بعد فوجی پریڈ کے ذریعے طاقت کا مظاہرہ

افغان صوبہ بادغیس میں شدید زلزلہ،ہلاکتوں کی تعداد30 سے تجاوز وجود منگل 18 جنوری 2022
افغان صوبہ بادغیس میں شدید زلزلہ،ہلاکتوں کی تعداد30 سے تجاوز

اشتہار

بھارت
بھارت کا چین پر سرحد سے لاپتا نوجوان کو اغوا کرنے کا الزام وجود جمعه 21 جنوری 2022
بھارت کا چین پر سرحد سے لاپتا نوجوان کو اغوا کرنے کا الزام

بھارت میں وزیر تعلیم نے حجاب کو ڈسپلن کی خلاف ورزی قرار دے دیا وجود جمعه 21 جنوری 2022
بھارت میں وزیر تعلیم نے حجاب کو ڈسپلن کی خلاف ورزی قرار دے دیا

بھارتی آرمی چیف اور وزیر داخلہ کی گرفتاری کیلئے برطانیہ میں درخواست دائر وجود جمعرات 20 جنوری 2022
بھارتی آرمی چیف اور وزیر داخلہ کی گرفتاری کیلئے برطانیہ میں درخواست دائر

بھارت،کالج میں حجاب پہننے والی مسلم طالبات کو کلاس سے نکال دیا گیا وجود بدھ 19 جنوری 2022
بھارت،کالج میں حجاب پہننے والی مسلم طالبات کو کلاس سے نکال دیا گیا

سرحدی تنازع،نیپال کی بھارت سے سڑکوں کی یکطرفہ تعمیر روکنے کی اپیل وجود منگل 18 جنوری 2022
سرحدی تنازع،نیپال کی بھارت سے سڑکوں کی یکطرفہ تعمیر روکنے کی اپیل
ادبیات
پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل وجود منگل 04 جنوری 2022
پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل

پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی وجود جمعرات 23 دسمبر 2021
پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی

غلاف کعبہ کی سلائی میں عربی کا ثلث فانٹ استعمال کرنے کی وضاحت جاری وجود جمعرات 23 دسمبر 2021
غلاف کعبہ کی سلائی میں عربی کا ثلث فانٹ استعمال کرنے کی وضاحت جاری

دنیا کی 1500 زبانیں معدوم ہونے کا خطرہ وجود منگل 21 دسمبر 2021
دنیا کی 1500 زبانیں معدوم ہونے کا خطرہ

سقوط ڈھاکہ پر لکھی گئی نظمیں وجود جمعرات 16 دسمبر 2021
سقوط ڈھاکہ پر لکھی گئی نظمیں
شخصیات
دنیا کی کم عمر مائیکرو سافٹ سرٹیفائیڈ کو بچھڑے 10 برس بیت گئے وجود هفته 15 جنوری 2022
دنیا کی کم عمر مائیکرو سافٹ سرٹیفائیڈ کو بچھڑے 10 برس بیت گئے

مولانا طارق جمیل کی اپنے طوطےاور بلی کے ہمراہ دلچسپ ویڈیو وائرل وجود منگل 11 جنوری 2022
مولانا طارق جمیل کی اپنے طوطےاور بلی کے ہمراہ دلچسپ ویڈیو وائرل

ہے رشک ایک خلق کو جوہر کی موت پر ۔ یہ اس کی دین ہے جسے پروردگار دے وجود بدھ 05 جنوری 2022
ہے رشک ایک خلق کو جوہر کی موت پر        ۔ یہ اس کی دین ہے جسے پروردگار دے

سرگودھا کی تاریخ کا سب سے بڑا جنازہ : مولانا اکرم طوفانی سپرد خاک وجود پیر 27 دسمبر 2021
سرگودھا کی تاریخ کا سب سے بڑا جنازہ : مولانا اکرم طوفانی سپرد خاک

قائداعظم کے خطاب کا تحقیقی جائزہ (خواجہ رضی حیدر) وجود هفته 25 دسمبر 2021
قائداعظم کے خطاب کا تحقیقی جائزہ  (خواجہ رضی حیدر)