وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

سورہ نصر کی گونج

منگل 17 اگست 2021 سورہ نصر کی گونج

تاریخ اُنہیں کیسے یاد رکھے گی؟
افغانستان پر امریکی سرپرستی میں کٹھ پتلی حکومت کا قبضہ دراصل بھگوڑوں کی ایک کہانی کے طور پر سامنے آیا۔ اشرف غنی اب کسی سابقے لاحقے کے بغیر ہے۔ وہ تاجکستان فرار ہوا، ایسے کہ خود تاجکستان تسلیم نہیں کررہا کہ وہ اُن کے ملک میں وارد ہوا۔ تازہ انکشاف اشرف غنی کے کھوکھلاپن کو واضح کرنے کے لیے کافی ہے۔ بھگوڑے اشرف غنی نے جو وقت استعفیٰ لکھنے میں صرف کرنا چاہئے تھا، وہ افغانستان سے بھاگتے ہوئے امریکی ڈالرز کو جمع کرنے میں لگایا۔ وہ بھاگتے ہوئے ڈالرز سے بھری ہوئی چار گاڑیاں ساتھ لے گیا۔ ایک ہیلی کاپٹر بھی ۔ روسی سفات خانے کا انکشاف یہ ہے کہ جہاز میں جگہ نہ ہونے کے باعث اُسے ڈالر کی بڑی مقدار چھوڑنی پڑی۔ اشرف غنی امریکی انتخاب تھا۔ اور اشرف غنی کا کیا انتخاب تھا، یہ واضح ہے۔ اشرف غنی جب افغانستان میں خون بہانے پر اُٹھنے والے خرچے سے خُرد بُرد کیے گئے ڈالرز جمع کررہا تھا تو اُس پرجھوٹا اعتماد رکھنے والے کسی نہ کسی شکل میں طالبان کا راستار وکنے کے بھرم میں ابھی کابل میں موجود تھے۔وہ سب اس غلط فہمی میں مبتلا تھے کہ بھگوڑا اشرف غنی امریکی چھتر سائے میں محفوظ رہے گا۔ اشرف غنی نے خود پر اعتماد کرنے والے اپنے ساتھی خونی درندوں میں سے کسی کو اعتماد میں نہیںلیا۔ غنی انتظامیہ کے قائم مقام وزیر دفاع جنرل بسم اللہ محمدی نے سے رہا نہیں گیا، اُس کا تبصرہ انتہائی غصے کی حالت میں فوری اور بے ساختہ تھا: ” اُس نے ہمارے ہاتھ ہماری پیٹھ کے پیچھے باندھے اور وطن کو بیچ دیا ، غنی اور اس کے گروہ پر لعنت ہو”۔عبداللہ عبداللہ بھی یہ کہے بغیر نہ رہ سکا کہ ”وہ قوم کو چھوڑ کر بھا گے ہیں ، ان کو اللہ پوچھے گا ”۔اشرف غنی تو محض ایک مثال ہے۔

کابل ائیرپورٹ پر ایک افراتفری دکھائی جارہی ہے۔ مگر یہ حقیقی منظر نہیں۔ یہاں سے فرار ہونے والے درحقیقت جنگ کا ”حلوہ” کھانے آئے تھے۔ یہ کون لوگ ہیں؟کابل شہر سے بھاگنے والے ان عناصر میں وہ لوگ شامل ہیں جو طالبان کے خلاف بھیانک جرائم میں ملوث رہے۔ امریکی سائے اور غنی انتظامیہ کی سرپرستی میں یہ ایسے مظالم کے مرتکب تھے، جو انسانیت کے لیے باعثِ عار سمجھے جاتے ہیں۔
ان مناظر میں اتحادی سفارت خانوں کے ”بزدل” اہلکار بھی دیکھے جاسکتے ہیں جو اپنے پیچھے ہتھیاروں کی طاقت سے زبانوں کو حرکت دیتے ہیں۔ اب یہ بھگوڑے کابل میں پائے جانے والی افراتفری کے طور پر دکھائے جارہے ہیں۔انہیںامریکا اور برطانیا کی طرف سے تازہ دم تعینات فوجیوں کی مدد سے یہاں نیانیا بھیجا گیا تھا۔ اشرف غنی نے افغانستان میں ان کی ہی چاکری کی تھی۔ اس کے پاس دو راستے تھے، وہ ان سب کو باہر نکالنے تک ایک جعلی ہمت دکھا سکتا تھا، جیسے اُس نے عید کی نماز پر ایک جعلی حملے کی ویڈیو سے اپنی بہادری دکھانے کی کوشش کی تھی۔ آخر وہ ان سے ڈالر لے رہا تھا۔ مگر اشرف غنی نے جان بچانے کو ترجیح دی۔ اس کے سامنے نجیب اللہ کی کھمبے پر لٹکی لاش کے مناظر رہے ہوں گے۔ اب ذرا ایک ایک کرکے اشرف غنی کے اُن بیانات کو یاد کیجیے جو وہ امریکا کی اشیر باد سے دیا کرتا تھا۔ سفلے اور اوچھے لوگوں کی شیخی بگھارنے کی روش پر اردو مثل یہاں کیا لطف دیتی ہے: تھوتھا چنا باجے گھنا”۔

ابھی چار روز قبل 11 اگست کو اشرف غنی اپنے جامے میں نہیں تھا،وہ کابل سے مزار شریف پہنچا، اُس کے ہمراہ خون کا پیاسا” آدم بو آدم بو ”کی صدا لگانے والا ازبک وحشی درندہ عبدالرشید دوستم تھا۔ جس نے قلعہ جنگی اور دشت لیلیٰ ایسی خونی اور وحشی داستانیں تخلیق کی تھیں۔ تُرک صدر رجب طیب اردوان کے حمایت یافتہ بدنام زمانہ عبدالرشید دوستم کے ساتھ غنی ایک او روحشی جنگجو عطا محمد نور سے ملا۔نسلاً تاجک جنگجو نے طالبان کے خلاف محاذ کو سنبھالنا تھا۔ طالبان کے خلاف امریکا کی فضائی حمایت کے ساتھ ایک مضبوط محاذ کی تشکیل کی یہ کوشش چار روز قبل بھی جاری تھی۔اس کے پیچھے ماضی میں ازبک تاجک اتحاد کے ساتھ طالبان کے خلاف لڑائیوں کے لمبے سلسلے کی مثالوں کو تقویت کے طور پر دُہرایا جارہا تھا۔ عطا محمد نور نے دو ماہ قبل صوبہ بلخ میں طالبان کا راستا روکنے کی ہامی بھری تھی۔وہ بلخ میں پسپائی کو شمال سے پسپائی سمجھتے تھے۔ اور شمال کی پسپائی کا مطلب کامل افغانستان پر طالبان کی ظفریابی تھا۔ نور ماضی میں طالبان سے کچھ معرکوں میں کامیابی کی ایک تاریخ رکھتا تھا مگر وہ دوستم کو 1993 ء میں چھوڑ چکا تھا۔ ظاہر ہے کہ یہ کوشش تمام طالبان مخالف قوتوں کو یکجا کرکے پسپائی کو روکنے کی آخری صورت تھی۔ ان کوششوں میں دورنگ واضح تھے۔ ایک نسلی جو ازبک اور تاجک جنگجو مل کر مختلف نسلی اکائیوں کی صف بندی کے ساتھ دکھا رہے تھے۔ دوسرا رنگ زیادہ خطرناک تھا۔ اس کے ذریعے عام شہریوں کو طالبان کے خلاف مختلف عنوانات سے اُبھارنا تھا۔ یہاں تک کہ سیاست دان بھی شہریوں کو طالبان کے خلاف اُکسا رہے تھے۔ یہ دونوں کوششیں رائیگاں گئیں۔ امریکیوں نے کن پر بھروسا کیا؟

یاد کیجیے ! امریکی صدر جوبائیڈن نے دو روز قبل ہی یہ یقین دہانی کرائی تھی کہ ”ہم امریکی اور دیگر اتحادی اہلکاروں کے علاوہ اپنے معاون افغانیوں کے منظم اور محفوظ انخلاء کو یقینی بنائیں گے”۔کابل ائیرپورٹ کے مناظر امریکی صدر کا مزاق اڑارہے ہیں۔ یہ طالبان کی آمد یا واپسی سے اُبھرنے والے مناظر نہیں، بلکہ امریکیوں اور اُن کے لے پالکوں کی رخصتی مناظر ہیں جو 1975 میں ویت نام سے امریکی انخلا کے ساتھ واضح مماثلت رکھتے ہیں۔ امریکیوں کو بنے بنائے کام بھی بگاڑ کر کرنے کی عادت ہے۔ یقین نہ ہوتو طالبان کے ساتھ افغانستان سے ”باعزت واپسی ”کی ضمانت پانے کے باوجود کابل ائیرپورٹ سے رسواکن رخصتی کے مناظر دیکھ لیں۔ اب ایک اور منظر ہے جو امریکا مخالف ہونے کے باوجود محض اسلام دشمنی میں بعضوں کو ہضم نہیں ہوتا۔ امریکا کو شکست دینے والے یہ لوگ چی گویرا جیسے کیوں نہیں؟ ان کی داڑھی کیوں ہے؟ارے یہ تو سفید اور کالے عمامے باندھتے ہیں۔یہ کون لوگ ہیں جو کابل کے صدارتی محل میں داخل ہورہے ہیں؟ان کے جوتے دیکھیں۔ انہیں عالی شان صدارتی محل میں ائیرکنڈیشنروں کی ذرا بھی پروا نہیں۔ یہ اپنے عماموں کے پروجیہ پیچوں سے لٹکتے کپڑے سے اپنا پسینہ پونچھتے ہیں۔تاریخ ان کے بانکپن کو ہمیشہ محفوظ رکھے گی۔ یہ کس کس کا سامنا کرتے یہاں تک پہنچے ہیں۔ صدارتی محل میں داخل ہونے سے قبل ان کا استقبال بی۔ 52طیاروں نے کیا۔ مہلک ڈرون ان کے تعاقب میں تھے۔ فارس اور وسطی ایشیا کے اڈوں سے اڑنے والے طیارے اُنہیں شکار کرنے کے لیے اڑتے رہے۔ امریکا ، نیٹو سمیت تیس ممالک اور افغانستان کے اندر حریف ملیشیاؤں کی افواج سے بھی یہ بچ گئے۔ اب وہ خود کو ایک ایسے شخص کی امارت میں پاتے ہیں جو کسی نامعلوم مقام پر حدیث اور تفسیر کا مطالعہ کرنے میں مصروف ہیں۔ جنہیں کسی خود نمائی کا شوق نہیں۔ اب آپ امارت اسلامیہ افغانستان میںہیں۔ تاریخ اپنا دائرہ بیس برس میں پورا کرکے واپس وہیں کھڑی ہے۔ مغرب کی جدید ترغیبات ، بھاری جنگی مشینری یہاں پر کہیں دفن ہو چکی ہیں۔ بس ایک صدارتی محل کے اندر میز پڑی ہے ، اور افغان صدر کی کرسی۔ یہاں امیر المومنین ملا ہیبت اللہ اخوند نہیں بیٹھے ہوئے، ابھی ملاعمر کے ہانڈی وال ملا عبدالغنی برادر بھی وہاں نہیں پہنچے۔میز دھری ہے اور کرسی پڑی ۔ جسے قرآن پڑھنے والے ایک مجاہد قاری آبرو دے رہے ہیں۔ اور ایک آواز آرہی ہے۔ ِذَا جَائَ نَصْرُ اللَّہِ وَالْفَتْحُ ۔۔۔۔۔۔
یہ سورہ نصر کی گونج ہے۔ اسے سننے والے وہائٹ ہاؤس کی طرف نہیں آسمان کی طرف دیکھتے ہیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
روشن مثالیں وجود هفته 16 اکتوبر 2021
روشن مثالیں

تعیناتی کو طوفان بنانے کی کوشش وجود هفته 16 اکتوبر 2021
تعیناتی کو طوفان بنانے کی کوشش

سنجیدہ لوگ، ماحولیات اور بچے وجود هفته 16 اکتوبر 2021
سنجیدہ لوگ، ماحولیات اور بچے

پنڈورا پیپرز کے انکشافات وجود هفته 16 اکتوبر 2021
پنڈورا پیپرز کے انکشافات

بارودکاڈھیر وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
بارودکاڈھیر

نخریلی بیویاں،خودکش شوہر وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
نخریلی بیویاں،خودکش شوہر

آسام میں پولیس کی درندگی وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
آسام میں پولیس کی درندگی

کراچی میں بلدیاتی انتخابات کے امکانات اور مضمرات؟ وجود جمعرات 14 اکتوبر 2021
کراچی میں بلدیاتی انتخابات کے امکانات اور مضمرات؟

میں بھول گیا تھا، وہ چیف آف آرمی اسٹاف ہے!! وجود جمعرات 14 اکتوبر 2021
میں بھول گیا تھا، وہ چیف آف آرمی اسٹاف ہے!!

امریکا کی آخری جنگ کی خواہش وجود منگل 12 اکتوبر 2021
امریکا کی آخری جنگ کی خواہش

مسلم قیادت کا بحران اوراسد الدین اویسی وجود منگل 12 اکتوبر 2021
مسلم قیادت کا بحران اوراسد الدین اویسی

کسانوں کے قتل پر نریندر مودی اور امیت شاہ کی مجرمانہ خاموشی وجود منگل 12 اکتوبر 2021
کسانوں کے قتل پر نریندر مودی اور امیت شاہ کی مجرمانہ خاموشی

اشتہار

افغانستان
افغانستان کی صورتحال ، امریکی نائب وزیر خارجہ آج اسلام آباد پہنچیں گی وجود جمعرات 07 اکتوبر 2021
افغانستان کی صورتحال ، امریکی نائب وزیر خارجہ آج اسلام آباد پہنچیں گی

طالبان کا داعش کے خلاف کریک ڈاؤن کا حکم وجود جمعرات 30 ستمبر 2021
طالبان کا داعش کے خلاف کریک ڈاؤن کا حکم

طالبان حکومت کے بعد پاکستان کی افغانستان کیلئے برآمدات دگنی ہوگئیں وجود جمعه 17 ستمبر 2021
طالبان حکومت کے بعد پاکستان کی افغانستان کیلئے برآمدات دگنی ہوگئیں

امریکا کا نیا کھیل شروع، القاعدہ آئندہ چند سالوں میں ایک اور حملے کی صلاحیت حاصل کر لے گی،ڈپٹی ڈائریکٹر سی آئی اے وجود بدھ 15 ستمبر 2021
امریکا کا نیا کھیل شروع،  القاعدہ آئندہ چند سالوں میں ایک اور حملے کی صلاحیت حاصل کر لے گی،ڈپٹی ڈائریکٹر سی آئی اے

طالبان دہشت گرد ہیں تو پھر نہرو،گاندھی بھی دہشت گرد تھے، مہتمم دارالعلوم دیوبند کا بھارت میں کلمہ حق وجود بدھ 15 ستمبر 2021
طالبان دہشت گرد ہیں تو پھر نہرو،گاندھی بھی دہشت گرد تھے، مہتمم دارالعلوم دیوبند کا بھارت میں کلمہ حق

اشتہار

بھارت
بھارت،چین کے درمیان 17 ماہ سے جاری سرحدی کشیدگی پر مذاکرات ناکام وجود منگل 12 اکتوبر 2021
بھارت،چین کے درمیان 17 ماہ سے جاری سرحدی کشیدگی پر مذاکرات ناکام

مزاحمتی تحریک سے وابستہ کشمیریوں کے خلاف بھارتی کارروائیوں میں تیزی لانے کا منصوبہ وجود هفته 09 اکتوبر 2021
مزاحمتی تحریک سے وابستہ کشمیریوں کے خلاف بھارتی کارروائیوں میں  تیزی لانے کا منصوبہ

مرکزی بینک آف انڈیاا سٹیٹ بینک آف پاکستان کا 45 کروڑ 60 لاکھ کا مقروض نکلا وجود جمعه 08 اکتوبر 2021
مرکزی بینک آف انڈیاا سٹیٹ بینک آف پاکستان کا 45 کروڑ 60 لاکھ کا مقروض نکلا

بھارت، مسجد میں قرآن پڑھنے والا شہید کردیاگیا وجود جمعه 08 اکتوبر 2021
بھارت، مسجد میں قرآن پڑھنے والا شہید کردیاگیا

شاہ رخ کے بیٹے آریان کو 20 سال تک سزا ہوسکتی ہے وجود جمعرات 07 اکتوبر 2021
شاہ رخ کے بیٹے آریان کو 20 سال تک سزا ہوسکتی ہے
ادبیات
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب

تاجکستان بزنس کنونشن میں عمران خان پر شعری تنقید، اتنے ظالم نہ بنو،کچھ تو مروت سیکھو! وجود جمعه 17 ستمبر 2021
تاجکستان بزنس کنونشن میں عمران خان پر شعری تنقید، اتنے ظالم نہ بنو،کچھ تو مروت سیکھو!

طالبان کا ’بھگوان والمیکی‘ سے موازنے پر منور رانا کے خلاف ایک اور مقدمہ وجود منگل 24 اگست 2021
طالبان کا ’بھگوان والمیکی‘ سے موازنے پر منور رانا کے خلاف ایک اور مقدمہ
شخصیات
ڈاکٹرعبدالقدیرخان کے لیے دو قبروں کا انتظام، تدفین ایچ8 میں کی گئی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبدالقدیرخان کے لیے دو قبروں کا انتظام، تدفین ایچ8 میں کی گئی

ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی نمازِجنازہ ادا کردی گئی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی نمازِجنازہ ادا کردی گئی

ڈاکٹرعبدالقدیر خان نے150 سے زائد سائنسی تحقیقاتی مضامین تحریر کیے وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبدالقدیر خان نے150 سے زائد سائنسی تحقیقاتی مضامین تحریر کیے

ڈاکٹرعبد القدیر خان نے8 سال کی قلیل مدت میں ایٹمی پلانٹ نصب کیا،ساری دنیا حیرت زدہ رہی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبد القدیر خان نے8 سال کی قلیل مدت میں ایٹمی پلانٹ نصب کیا،ساری دنیا حیرت زدہ رہی

آزاد کشمیرکے سابق صدر اور وزیراعظم سردار سکندر حیات خان کی کوٹلی میں نماز جنازہ ادا وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
آزاد کشمیرکے سابق صدر اور وزیراعظم سردار سکندر حیات خان کی کوٹلی میں نماز جنازہ ادا