وجود

... loading ...

وجود

مسلماں نہیں راکھ کا ڈھیر ہے

بدھ 21 جولائی 2021 مسلماں نہیں راکھ کا ڈھیر ہے

آہ یہ دن بھی دیکھنے تھے، حج کے دن گزرے جاتے ہیں۔ مگر دو ارب مسلمانوں کی یہ عبادت سفاکانہ طبّی تصورات کی بھینٹ چڑھا دی گئی ۔ فہم عامہ(کامن سینس) کے معمولی سوالات کے جواب دینے سے قاصر عالمی صحت کے ادارے ایک مخصوص ایجنڈا مسلط کرنے پر تُلے ہیں۔ مسلمانوں کی حقیقی عبادت گاہ بھی نشانے پر ہے۔مگر” جدیدیت” کے بیٹے اور” ترقی” کے دیوانے اللہ سے بے نیاز ہوگئے۔ ان کا نیا خدا عالمی ادارہ صحت کی منحوس عمارت میں رہتا ہے۔خدا پرستی کا سب سے پہلا مرکز اور معبود کو پکارنے کا سب سے قدیم طریقہ اب اللہ کی رضا کا ذریعہ نہیں۔ کورونا وبا کے نام پر طاری مصنوعی ماحول میں ضوابط کی پیروی اب جدیدیت کی نئی ”عبادت ” ہے۔ ہم سب ڈبلیو ایچ کے کعبے کے آگے سجدہ ریز ہیں۔ اس کے مسلط کردہ ضوابط اب دنیا کا نیا عقیدہ ہے۔ جدیدیت پر ایمان کے ان مظاہر میں حقیقی عبادت کا کوئی تصور شیطان کی پیروی جیسا خطرناک کام بنادیا گیا ہے۔ کیا کیفیت رہی ہوگی جب علامہ اقبال نے فرمایا:

عجم کے خیالات میں کھو گیا
یہ سالک مقامات میں کھو گیا
بجھی عشق کی آگ ، اندھیر ہے
مسلماں نہیں ، راکھ کا ڈھیر ہے

جادو کیا ہوتا ہے، وہی جو سرچڑھ کر بولے! جدیدیت کا جادو ایسا ہی ہے، سر چڑھ کر بولتا ہے۔ کورونا وبا پر منطقی، طبی اور حقیقی سوالات اُٹھائے جائیں تو آپ جاہل تصور کیے جاتے ہیں۔ جدیدیت کا جادو یہی ہے۔ مغرب سوال اُٹھانے کو علم کہتا ہے۔ فلسفے کی بنیاد قرار دیتا ہے۔ اللہ پر ایمان کو بھی عقل کی حاکمیت میں دینے والا جدید فلسفہ مذہب پر سوال اُٹھانے کو عین علم قرار دیتا ہے۔ مگر اپنی دنیا پر سوال اُٹھانے نہیں دیتا۔ اُسے وہ جہالت کے ہم معنی بنادیتا ہے۔ جادو یہی ہے کہ اسلامی تحریکوں کے کارکن بھی اس پر ایمان رکھتے ہیں۔ سوال اُٹھانے نہیں دیتے۔ اعداد وشمار کو ان دیکھا کرتے ہیں۔ عام اموات کو کورونا کی تعبیر دیتے ہیں۔ عبادتوں پر الحاد کے پیروکاروں کے ضوابط تسلیم کیے جاتے ہیں۔ آہ کن لوگوں سے ہمارا واسطہ پڑگیا؟ اسلامی تحریکوں کے سربراہ اب سرجیکل لباس پہن کر تصویریں کھنچواتے ہیںکہ جدیدیت کے خدا جان لیں ، ہم اُن کے پیروکار ہیں۔ اللہ کے نہیں۔ یہ دنیا دو اسکیموں پر ہے۔ ایک انسان کو خدا مان کر مغرب کی بنائی ہوئی اسکیم سے چلنے والی دنیا۔ دوسری انسان کو اللہ کا بندہ قرار دینے والے معبود کی بنائی دنیا۔ دونوں دنیاؤں کے چلنے چلانے کے ضوابط الگ الگ ہیں۔ ایک دنیا کا اعلان ہے، بل گیٹس کے ضوابط پر تمہارے شب وروز طے ہوں گے۔ دوسری دنیا کا اعلان ہے کہ اللہ کی ذات سے سب کچھ ہونے پر ایمان اور مخلوق سے اللہ کے حکم کے بغیر کچھ نہ ہونے کا یقین دراصل زندگی کو حقیقی معنی دیتا ہے۔ مسلمان فیصلہ کرلیں، وہ آج کل کس دنیا میں رہتے ہیں۔

حج دراصل مغرب کی بنائی ہوئی اسکیم سے چلنے والی دنیا کی ناکامی کا بلیغ اعلان کرتا ہے۔ یہ مغرب کے عقیدۂ ترقی کی حقیقی تذلیل کرتا ہے۔ مغرب اپنی ترقی کے اوج پر جن دعووں کے ساتھ بسیرا کرتا ہے، وہ حج کے روحانی اور معنوی ثمرات کے آگے پھیکے، ہلکے، جھوٹے، چھوٹے اور کھوکھلے پڑ جاتے ہیں۔ مغرب کے عقیدۂ ترقی سے جنمتا ہر دعویٰ دراصل بنی نوع انساں کے لیے ایک مسئلہ بھی ثابت ہوتا ہے۔ علوم میں ارتفاع، ٹیکنالوجی میںارفع ہونے کے مغربی اعلان سے جس دعوے نے جنم لیا تھا، وہ فاصلوں کے سمٹنے اور دنیا کو ایک عالمی گاؤں بنادینے سے عبارت تھا۔ جہاں بحروبر کا امتیاز ختم اورقوموں ،ملکوں کا فرق معدوم ہو جاتا ہے۔ دنیا کی تمام آبادی ایک دوسرے کے ساتھ منسلک اور مربوط ہوجاتی ہے۔ مگر اس مغربی دعوے کے ساتھ ایک مسئلہ بھی اُبھر آیاکہ دل اور دماغ میں فاصلہ نہ ختم ہونے والا پیدا ہو گیا۔ مختلف قوموں کے درمیان برگشتگی کے سرد نہ ہونے والے جذبات جنم لینے لگے۔ دنیا یکسانیت کے زعم میں اٹھی تھی ، مگر اس نے امن کے بجائے جنگیں برپا کرنا شروع کردیں۔ چنانچہ دنیاجتنی تیزی سے ترقی کرتی جارہی ہے، اُتنی تیزیں سے جنگوں کی لپیٹ میں بھی جارہی ہیں۔

جس نے سورج کی شعاعوں کو گرفتار کیا
زندگی کی شبِ تاریک سحر کر نہ سکا

درحقیقت اس مسئلے نے یہ سمجھایا کہ قومیں اور نسلیں ترقی سے ہم آہنگ نہیں ہوتیں۔ بلکہ یہ ایک روحانی تقاضا ہے۔ انسانوں کے گروہوں، نسلوں ، قوموں ، زبانوں اور جغرافیائی خلیجوں کو ایک زبردست اجتماعی یگانگت کے تصور سے دور کیا جاسکتا ہے۔ ایک ایسا ولولہ انگیز تصور جسے ملکی سرحدیں اور جغرافیائی حدیں تحلیل کرنے پر قادر نہ ہو۔ ظاہر ہے تب انسان کے اعضاء نہیں ، بلکہ اُن کی روحوں کو مخاطب کرنا ضروری ہو جاتا ہے۔ چنانچہ قادرِمطلق کی جانب سے یہ عمل حجاز کے چٹیل اور وادی غیر ذی زرع میں شروع کیا گیا۔ جہاں رخ کرنے والے مختلف ملکوں ، نسلوں اور قوموں سے ہونے کے باوجود ایک تصور میں بندھ جاتے ہیں۔ ترقی کی گمراہیوں سے دامن بچاتے ہوئے اپنی روحوں کو ہم آہنگ کرتے ہیں۔ ایک خالق کے آگے اپنی دنیوی پہچانوں سے پاک اور اپنی حقیقی پہچان یعنی عبدیت کے رنگ سے رنگ جاتے ہیں۔پھر زبانوں کا فرق باقی نہیں رہتا، نسلوں کا امتیاز جاتا رہتا ہے، قوموں کا جنون کافور ہونے لگتا ہے ۔ اللہ اللہ اب یہ وقت، رازونیازِ عبد ومعبود کا ہے۔

راز ونیازِ عبدومعبود میںکہیںکوئی تار یا بے تار جیبی فون کی ضرورت نہیں، یہاں زبان کی کوئی قید نہیں۔رابطے کے لیے کسی درمیان دار کی حاجت نہیں۔ یہ صرف دل کے عقیدے اور روح کے جذبے سے پکارنے اور سننے کا عمل ہے۔ یہ ملاقات ہے۔ دنیا و آخرت کی سب سے افضل ملاقات ۔ عبدومعبود کے درمیان ، خالق ومخلوق کے مابین۔ نہ وائر نہ وائر لیس، نہ فون نہ موبائل۔ بس ایمان کا ذریعہ ہی سب سے موثر ہے۔ اس عمل میں ملک اکٹھے ہیں۔قومیں مربوط ۔نسلیں اور زبانیںاپنے فرق سے بے نیاز ۔گورے کی کالے پر کوئی برتری نہیں، بادشاہ کا لباس ، فقیر کے لباس سے مختلف نہیں۔ محمود کو ایاز پر کوئی سبقت نہیں۔ انسانی اخوت اور نسلی مساوات اپنی اصلی صورت میں موجزن ہے ۔ یہ اسلام کی برکت ہے، یہ فریضۂ حج کی ادائیگی ہے۔ لبّیک، اللّٰھم لبّیک،لبّیک لاشریک لک لبّیک!!

اللہ کی عبادت کے لیے بنایا جانے والا یہ پہلا گھر اپنے عابدوں سے دور کیوں ہوگیا؟ عشق کی آنکھوں سے بہتے آنسو ، خشک کیوں ہوگئے؟محبت کے شعلوں سے اُٹھتی آہیں سرد کیوں پڑ گئیں؟دل سے نکلتی صدائیں سکوت کے ویرانوں میں مدہم کیوںپڑرہی ہیں؟کیا مقدس ندائیں گلوں میں پھنسی رہیں گی؟ کیا حج کا ترانہ زبانوں پر بے اظہار مچلتا رہے گا؟ہزاروں سال سے جاری راز و نیاز ِعبدو معبود کا الٰہی مقام اب بل گیٹس کی مرضی سے کھلے گا۔ اب مسلمانوں کی عبادتوں پر مغرب کے بدمعاشوں کے ضوابط کی پہرے داری ہوگی۔ مغربی آقا فرمان جاری کرتے ہیں کہ کورونا وبا ہے، چنانچہ آبِ زم زم اب انسان نہیں روبوٹ بانٹیں گے۔ تب جدیدیت کے تقاضے فتووں میں ڈھلنے لگتے ہیں۔ خطبوں میں گونجتے ہیں۔ اماموں کی منطق میں گویائی پاتے ہیں۔ یہاں فرقے فرق پیدا نہیں کرتے۔ بے دماغی طعنہ نہیں بنتی۔ شاہ دولہ کے چوہوں کی کوئی پھبتی سنائی نہیں دیتی۔ ایک وائرس کا راستا کسی سپر پاؤر کا ایٹمی بھی پروگرام روک نہیں پاتا۔چند لوگ رات کی تاریکیوں میں چمگاڈروں کے جاگنے کے وقت نئی دنیا کے نظام الاوقات طے کرتے ہیں، معبود کو پکارنے کی اجازت دینے نہ دینے کا فیصلہ کرتے ہیں۔ مگر مسلم ملکوں کے حکمران کسی تحقیق کا روگ نہیں پالتے۔ اپنا کوئی ورلڈ ویو نہیں بناتے۔ نئی دنیا میں اپنے مقام کا تعین کرنے کے لیے اپنی کوئی دنیا نہیں بناتے۔ اپنی زندگی کا کوئی ثبوت نہیں دیتے۔ ان کی دولت اچھے محلوں ، بڑی گاڑیوں اور اللوں تللوں کے لیے ہیں۔ کسی تحقیق کے لیے نہیں۔ اپنے ارادے کو آزاد بنانے کے لیے نہیں۔ اپنی دنیا آپ پیدا کرنے کے لیے نہیں۔ عیاشیوں کے لیے اپنی زندگی سے دستبردار ہونے والے مسلم حکمرانوں کایہ جتھہ کردار میں کسی بیمار کے منہ سے نکلنے والی قے سے بدتر ہوچکا۔ ان کامتعفن وجود مسلمانوں کے لیے خطرہ بن گیا۔ آج کا خطبۂ حج ان سے نجات کا اعلان ہونا چاہئے اور کچھ نہیں!!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
چائلڈپورنوگرافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
چائلڈپورنوگرافی

بول کہ سچ زندہ ہے اب تک وجود پیر 05 دسمبر 2022
بول کہ سچ زندہ ہے اب تک

عوامی مقبولیت بھی پَل بھر کا تماشہ ہے وجود پیر 05 دسمبر 2022
عوامی مقبولیت بھی پَل بھر کا تماشہ ہے

عمرکومعاف کردیں وجود اتوار 04 دسمبر 2022
عمرکومعاف کردیں

ٹرمپ اور مفتے۔۔ وجود اتوار 04 دسمبر 2022
ٹرمپ اور مفتے۔۔

اب ایک اور عمران آرہا ہے وجود هفته 03 دسمبر 2022
اب ایک اور عمران آرہا ہے

اشتہار

تہذیبی جنگ
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار وجود منگل 06 دسمبر 2022
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار

1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی

امریکا نے القاعدہ ، کالعدم ٹی ٹی پی کے 4رہنماؤں کوعالمی دہشت گرد قرار دے دیا وجود جمعه 02 دسمبر 2022
امریکا نے القاعدہ ، کالعدم ٹی ٹی پی کے 4رہنماؤں کوعالمی دہشت گرد قرار دے دیا

برطانیا میں سب سے تیز پھیلنے والا مذہب اسلام بن گیا وجود بدھ 30 نومبر 2022
برطانیا میں سب سے تیز  پھیلنے والا مذہب اسلام بن گیا

اسرائیلی فوج نے 1967 کے بعد 50 ہزار فلسطینی بچوں کو گرفتار کیا وجود پیر 21 نومبر 2022
اسرائیلی فوج نے 1967 کے بعد 50 ہزار فلسطینی بچوں کو گرفتار کیا

استنبول: خود ساختہ مذہبی اسکالر کو 8 ہزار 658 سال قید کی سزا وجود جمعه 18 نومبر 2022
استنبول: خود ساختہ مذہبی اسکالر کو 8 ہزار 658 سال قید کی سزا

اشتہار

شخصیات
موت کیا ایک لفظِ بے معنی جس کو مارا حیات نے مارا وجود هفته 03 دسمبر 2022
موت کیا ایک لفظِ بے معنی               جس کو مارا حیات نے مارا

ملک کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کے بیٹے اکبر لیاقت انتقال کر گئے وجود بدھ 30 نومبر 2022
ملک کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کے بیٹے اکبر لیاقت انتقال کر گئے

معروف صنعت کار ایس ایم منیر انتقال کر گئے وجود پیر 28 نومبر 2022
معروف صنعت کار ایس ایم منیر انتقال کر گئے
بھارت
بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا، جی ڈی پی میں کمی کا امکان وجود منگل 06 دسمبر 2022
بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا، جی ڈی پی میں کمی کا امکان

بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار وجود منگل 06 دسمبر 2022
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار

1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی

بھارت،پہلی سے آٹھویں جماعت کے اقلیتی طلباء کو اب اسکالر شپ نہیں ملے گی، بھارتی حکومت وجود پیر 05 دسمبر 2022
بھارت،پہلی سے آٹھویں جماعت کے اقلیتی طلباء کو اب اسکالر شپ نہیں ملے گی، بھارتی حکومت
افغانستان
کابل، پاکستانی سفارتی حکام پر فائرنگ، ناظم الامور محفوظ رہے، گارڈ زخمی وجود جمعه 02 دسمبر 2022
کابل، پاکستانی سفارتی حکام پر فائرنگ، ناظم الامور محفوظ رہے، گارڈ زخمی

افغان مدرسے میں زوردار دھماکے میں 30 افراد جاں بحق اور 24 زخمی وجود بدھ 30 نومبر 2022
افغان مدرسے میں زوردار دھماکے میں 30 افراد جاں بحق اور 24 زخمی

حنا ربانی کھر کی قیادت میں پاکستان کا اعلیٰ سطح کا وفد دورہ افغانستان کے لیے روانہ وجود منگل 29 نومبر 2022
حنا ربانی کھر کی قیادت میں پاکستان کا اعلیٰ سطح کا وفد دورہ افغانستان کے لیے روانہ
ادبیات
کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد وجود هفته 26 نومبر 2022
کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد

مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع کردار پرنئی کتاب شائع وجود هفته 23 اپریل 2022
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع  کردار پرنئی کتاب شائع

مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار وجود بدھ 06 اپریل 2022
مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار