وجود

... loading ...

وجود

تیسری عالمگیر جنگ 2034 امریکا میں بیسٹ سیلز ناول

منگل 20 جولائی 2021 تیسری عالمگیر جنگ 2034 امریکا میں بیسٹ سیلز ناول

ان دنوں امریکا میں ایک ناول نے بہت تیزی سے مقبولیت حاصل کی ہے، اور وہ نیویارک ٹائمز میں اس وقت سب سے زیادہ فروخت ہونے والا ناول بتایا جارہا ہے۔ ہر ایک ورلڈ وار 2034 کے بارے میں بات کر رہا ہے۔ یہ تیسری عالمی جنگ کے بارے میں ایک ناول ہے۔ جو اس وقت امریکا میں بیسٹ سیلز ہے، مارچ میں شائع ہونے والے اس ناول کی عالمی سطح پر باز گشت سنائی دیتی ہے۔ یہ معروف مصنف ایلیٹ ایکرمین اور ریٹائرڈ ایڈمرل جیمز اسٹورڈیس کا افسانہ نگاری کا تازہ ترین کام ہے۔ اس ناول نے امریکا اور چین کے مابین ایک فوجی تصادم کا تصور پیش کیا ہے۔ عالمگیر ہنگامے اس وقت حیرت کی بات نہیں ہیں۔ دنیا میں ممالک کے درمیان تنازعات بڑھ رہے ہیں، ایسی صورت میں مختلف علاقائی اور بین الاقوامی تنازعات دنیا کو ایک بڑے تصادم کے دہانے پر لے جاسکتے ہیں جو کنٹرول سے باہر ہوسکتے ہیں عظیم سیاسی فلسفی فرانسس فوکویاما ، جنہوں نے تاریخ کے خاتمے کے نظریہ پر لکھا ہے۔ اس ناول کو بہت اہمیت دے رہے ہیں۔ انھوں نے ایک امریکی میگزین میں اس پر ایک تفصیلی مضمون رقم کیا ہے۔ انہوں نے محسوس کیا کہ ، بہت سے طریقوں سے ، “اگلی جنگ” کا غیر حقیقی منظر نامہ دوسری جنگ عظیم III کے منظرناموں کے بہت سے سیاسی اور اسٹریٹجک مطالعات کے مقابلے میں زیادہ قابل فہم ہے۔
ایلیٹ ایکرمین ، 1980 میں امریکا میں پیدا ہوئے۔ انھوں نے اس سے پہلے بھی چار کامیاب ناول لکھے ہیں۔ گرین اینڈ بلیو ، ڈارک اٹ کراسنگ (2017)، ویٹنگ فار ایڈن (2018)، ریڈ ڈریس ان بلیک اینڈ وائٹ، ورلڈ وار 2034 ان کا پانچواں ناول ہے۔ انھوں نے اپنی یادداشتیں،، پیش اینڈ نیم ،، کے نام سے تحریر کی ہیں۔ ایلیٹ اکرمین انٹرنیشنل افیئرز میں ماسٹرز ڈگری کے حامل ہیں۔ انھوں نے امریکن میرین میں آٹھ برس گزارے ہیں۔ اور انفنٹری اور اسپیشل آپریشن ساوتھ ایشیائ￿ اور مشرقی وسطی میں خدمات انجام دی ہیں۔ وہ افغانستان میں طالبان کے اہم رہنماؤں کی گرفتاری کے لیے سرگرم اسپیشل کمانڈو ٹیم کا حصہ رہے ہیں۔ وہ سنٹرل انٹیلیجنس ایجنسی اسپیشل ایکٹیویٹی ڈویڑن سے بھی منسلک رہے ہیں۔ اور اوباما کے دور میں وائٹ ہاوس فیلو بھی رہے ہیں۔ ان کے ناول میں وہ تجربات، واقعات، اور حقیقی محسوسات بھی نظر آتے ہیں، جو جنگ میں عملی حصہ لینے کے سبب ان کی یاد داشتوں کا حصہ ہیں۔ ایلیٹ
اکرمین نے متعدد ادبی انعامات حاصل کیئے ہیں۔ وہ امریکا کی اس نسل کا مظہر ہیں، جس کی تشکیل افغانستان اور عراق کی جنگوں نے کی ہے۔ مسلح افواج کے ایک رکن کی حیثیت سے ، انہوں نے افغانستان اور عراق دونوں میں خدمات انجام دیں ، جو اس واضح تفصیل کی وضاحت کرنے میں مدد کرتی ہے جس کے ساتھ وہ اپنے افسانوی کاموں میں جنگ اور جنگجوؤں کو پیش کرتا ہے۔ تیسری جنگ ?ظیم 2034 کے ناول میں ان کے شریک مصنف ، ریٹائرڈ ایڈمرل جیمز اسٹاویرڈیس ، بحریہ کے مورخ اور متعدد امریکی اور بین الاقوامی ایوارڈ کے حامل ہیں۔
2034 میں ، چین بحر الکاہل میں امریکی افواج کو مفلوج کرنے والے سائبریٹیکس کے ایک سلسلے سے جنگ کا آغاز کرتا ہے اور اس کے ساتھ ہی ایرانیوں کو ایک امریکی F-35 ، ایک کثیر مقصدی جنگی طیارے کا کنٹرول سنبھالنے میں مدد ملتی ہے جس کے الیکٹرانک نگرانی اور ٹریکنگ سسٹم تکنیکی اثاثوں میں شامل ہیں۔ جو ان کا مالک ہے انھیں حکمت عملی سے ہوا کی برتری عطا کرے۔ ایرانیوں نے طیارے پر لینڈنگ اور پائلٹ کو قبضہ کرنے پر مجبور کرنے کے بعد ، اور چین نے بحیرہ جنوبی چین میں تین امریکی جنگی جہاز ڈوبنے کے بعد ، جسے بیجنگ نے علاقائی پانی سے تعبیر کیا ، امریکی صدر کو انتخاب کرنے پر مجبور کیا گیا۔ یا تو وہ جوابی کارروائی کرسکتا ہے یا وہ سوویت یونین کے ساتھ کیوبا کے میزائل بحران کے دوران صدر جان کینیڈی کی طرح اپنے موقف سے پیچھے ہٹ سکتے ہیں۔ لیکن 2034 میں ، وائٹ ہاؤس 1932 میں کینیڈی سے ہونے والے اس ڈاؤن لوڈ کو ٹالنا نہیں چاہتا کیونکہ اس کا نتیجہ امریکا کے لیے ایک بہت بڑی شکست تھا۔ جنوب مشرقی ایشیاء میں طاقتوں کا توازن بدل جاتا ہے۔ امریکا ، اپنی روایتی قوتوں کا بیشتر حصہ کھو جانے کے بعد ، سامری جوہری ہتھیاروں کا سہارا لینے پر مجبور ہوتا ہے۔
اس ناول کے فوجی منظرنامے میں بہت سے واقعات سے متفق نہیں ہوتے۔ لیکن اس میں جس اگلی جنگ کی پیش گوئی کی ہے۔ اس کے امکانات سے انکار نہیں کیا جاسکتا۔ اگلی عالمی جنگ ایٹمی ہتھیاروں سے ہوگی یا سائبر ٹیکنالوجی سے جسے چین نے ایک ہتھیار کے طور پر متعارف کرایا۔ یہ سوال باقی ہے کہ کیا چین حقیقت پسندی سے عالمی جنگ تک باقی 13 سالوں میں امریکا پر سائبر جنگ کی فوقیت حاصل کرلے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
چائلڈپورنوگرافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
چائلڈپورنوگرافی

بول کہ سچ زندہ ہے اب تک وجود پیر 05 دسمبر 2022
بول کہ سچ زندہ ہے اب تک

عوامی مقبولیت بھی پَل بھر کا تماشہ ہے وجود پیر 05 دسمبر 2022
عوامی مقبولیت بھی پَل بھر کا تماشہ ہے

عمرکومعاف کردیں وجود اتوار 04 دسمبر 2022
عمرکومعاف کردیں

ٹرمپ اور مفتے۔۔ وجود اتوار 04 دسمبر 2022
ٹرمپ اور مفتے۔۔

اب ایک اور عمران آرہا ہے وجود هفته 03 دسمبر 2022
اب ایک اور عمران آرہا ہے

اشتہار

تہذیبی جنگ
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار وجود منگل 06 دسمبر 2022
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار

1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی

امریکا نے القاعدہ ، کالعدم ٹی ٹی پی کے 4رہنماؤں کوعالمی دہشت گرد قرار دے دیا وجود جمعه 02 دسمبر 2022
امریکا نے القاعدہ ، کالعدم ٹی ٹی پی کے 4رہنماؤں کوعالمی دہشت گرد قرار دے دیا

برطانیا میں سب سے تیز پھیلنے والا مذہب اسلام بن گیا وجود بدھ 30 نومبر 2022
برطانیا میں سب سے تیز  پھیلنے والا مذہب اسلام بن گیا

اسرائیلی فوج نے 1967 کے بعد 50 ہزار فلسطینی بچوں کو گرفتار کیا وجود پیر 21 نومبر 2022
اسرائیلی فوج نے 1967 کے بعد 50 ہزار فلسطینی بچوں کو گرفتار کیا

استنبول: خود ساختہ مذہبی اسکالر کو 8 ہزار 658 سال قید کی سزا وجود جمعه 18 نومبر 2022
استنبول: خود ساختہ مذہبی اسکالر کو 8 ہزار 658 سال قید کی سزا

اشتہار

شخصیات
موت کیا ایک لفظِ بے معنی جس کو مارا حیات نے مارا وجود هفته 03 دسمبر 2022
موت کیا ایک لفظِ بے معنی               جس کو مارا حیات نے مارا

ملک کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کے بیٹے اکبر لیاقت انتقال کر گئے وجود بدھ 30 نومبر 2022
ملک کے پہلے وزیراعظم لیاقت علی خان کے بیٹے اکبر لیاقت انتقال کر گئے

معروف صنعت کار ایس ایم منیر انتقال کر گئے وجود پیر 28 نومبر 2022
معروف صنعت کار ایس ایم منیر انتقال کر گئے
بھارت
بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا، جی ڈی پی میں کمی کا امکان وجود منگل 06 دسمبر 2022
بھارت کو اقتصادی محاذ پر جھٹکا، جی ڈی پی میں کمی کا امکان

بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار وجود منگل 06 دسمبر 2022
بابری مسجد کا 30 واں یوم شہادت ، بھارتی عدلیہ کا گھناؤنا کردار

1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی وجود پیر 05 دسمبر 2022
1993کے ممبئی دھماکوں کی آڑ میں مسلمانوں کو بدنام کرنے کی سازش رچائی گئی، بھارتی صحافی

بھارت،پہلی سے آٹھویں جماعت کے اقلیتی طلباء کو اب اسکالر شپ نہیں ملے گی، بھارتی حکومت وجود پیر 05 دسمبر 2022
بھارت،پہلی سے آٹھویں جماعت کے اقلیتی طلباء کو اب اسکالر شپ نہیں ملے گی، بھارتی حکومت
افغانستان
کابل، پاکستانی سفارتی حکام پر فائرنگ، ناظم الامور محفوظ رہے، گارڈ زخمی وجود جمعه 02 دسمبر 2022
کابل، پاکستانی سفارتی حکام پر فائرنگ، ناظم الامور محفوظ رہے، گارڈ زخمی

افغان مدرسے میں زوردار دھماکے میں 30 افراد جاں بحق اور 24 زخمی وجود بدھ 30 نومبر 2022
افغان مدرسے میں زوردار دھماکے میں 30 افراد جاں بحق اور 24 زخمی

حنا ربانی کھر کی قیادت میں پاکستان کا اعلیٰ سطح کا وفد دورہ افغانستان کے لیے روانہ وجود منگل 29 نومبر 2022
حنا ربانی کھر کی قیادت میں پاکستان کا اعلیٰ سطح کا وفد دورہ افغانستان کے لیے روانہ
ادبیات
کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد وجود هفته 26 نومبر 2022
کراچی میں دو روزہ ادبی میلے کا انعقاد

مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع کردار پرنئی کتاب شائع وجود هفته 23 اپریل 2022
مسجد حرام کی تعمیر میں ترکوں کے متنازع  کردار پرنئی کتاب شائع

مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار وجود بدھ 06 اپریل 2022
مستنصر حسین تارڑ کا ادبی ایوارڈ لینے سے انکار