وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

تیسری عالمگیر جنگ 2034 امریکا میں بیسٹ سیلز ناول

منگل 20 جولائی 2021 تیسری عالمگیر جنگ 2034 امریکا میں بیسٹ سیلز ناول

ان دنوں امریکا میں ایک ناول نے بہت تیزی سے مقبولیت حاصل کی ہے، اور وہ نیویارک ٹائمز میں اس وقت سب سے زیادہ فروخت ہونے والا ناول بتایا جارہا ہے۔ ہر ایک ورلڈ وار 2034 کے بارے میں بات کر رہا ہے۔ یہ تیسری عالمی جنگ کے بارے میں ایک ناول ہے۔ جو اس وقت امریکا میں بیسٹ سیلز ہے، مارچ میں شائع ہونے والے اس ناول کی عالمی سطح پر باز گشت سنائی دیتی ہے۔ یہ معروف مصنف ایلیٹ ایکرمین اور ریٹائرڈ ایڈمرل جیمز اسٹورڈیس کا افسانہ نگاری کا تازہ ترین کام ہے۔ اس ناول نے امریکا اور چین کے مابین ایک فوجی تصادم کا تصور پیش کیا ہے۔ عالمگیر ہنگامے اس وقت حیرت کی بات نہیں ہیں۔ دنیا میں ممالک کے درمیان تنازعات بڑھ رہے ہیں، ایسی صورت میں مختلف علاقائی اور بین الاقوامی تنازعات دنیا کو ایک بڑے تصادم کے دہانے پر لے جاسکتے ہیں جو کنٹرول سے باہر ہوسکتے ہیں عظیم سیاسی فلسفی فرانسس فوکویاما ، جنہوں نے تاریخ کے خاتمے کے نظریہ پر لکھا ہے۔ اس ناول کو بہت اہمیت دے رہے ہیں۔ انھوں نے ایک امریکی میگزین میں اس پر ایک تفصیلی مضمون رقم کیا ہے۔ انہوں نے محسوس کیا کہ ، بہت سے طریقوں سے ، “اگلی جنگ” کا غیر حقیقی منظر نامہ دوسری جنگ عظیم III کے منظرناموں کے بہت سے سیاسی اور اسٹریٹجک مطالعات کے مقابلے میں زیادہ قابل فہم ہے۔
ایلیٹ ایکرمین ، 1980 میں امریکا میں پیدا ہوئے۔ انھوں نے اس سے پہلے بھی چار کامیاب ناول لکھے ہیں۔ گرین اینڈ بلیو ، ڈارک اٹ کراسنگ (2017)، ویٹنگ فار ایڈن (2018)، ریڈ ڈریس ان بلیک اینڈ وائٹ، ورلڈ وار 2034 ان کا پانچواں ناول ہے۔ انھوں نے اپنی یادداشتیں،، پیش اینڈ نیم ،، کے نام سے تحریر کی ہیں۔ ایلیٹ اکرمین انٹرنیشنل افیئرز میں ماسٹرز ڈگری کے حامل ہیں۔ انھوں نے امریکن میرین میں آٹھ برس گزارے ہیں۔ اور انفنٹری اور اسپیشل آپریشن ساوتھ ایشیائ￿ اور مشرقی وسطی میں خدمات انجام دی ہیں۔ وہ افغانستان میں طالبان کے اہم رہنماؤں کی گرفتاری کے لیے سرگرم اسپیشل کمانڈو ٹیم کا حصہ رہے ہیں۔ وہ سنٹرل انٹیلیجنس ایجنسی اسپیشل ایکٹیویٹی ڈویڑن سے بھی منسلک رہے ہیں۔ اور اوباما کے دور میں وائٹ ہاوس فیلو بھی رہے ہیں۔ ان کے ناول میں وہ تجربات، واقعات، اور حقیقی محسوسات بھی نظر آتے ہیں، جو جنگ میں عملی حصہ لینے کے سبب ان کی یاد داشتوں کا حصہ ہیں۔ ایلیٹ
اکرمین نے متعدد ادبی انعامات حاصل کیئے ہیں۔ وہ امریکا کی اس نسل کا مظہر ہیں، جس کی تشکیل افغانستان اور عراق کی جنگوں نے کی ہے۔ مسلح افواج کے ایک رکن کی حیثیت سے ، انہوں نے افغانستان اور عراق دونوں میں خدمات انجام دیں ، جو اس واضح تفصیل کی وضاحت کرنے میں مدد کرتی ہے جس کے ساتھ وہ اپنے افسانوی کاموں میں جنگ اور جنگجوؤں کو پیش کرتا ہے۔ تیسری جنگ ?ظیم 2034 کے ناول میں ان کے شریک مصنف ، ریٹائرڈ ایڈمرل جیمز اسٹاویرڈیس ، بحریہ کے مورخ اور متعدد امریکی اور بین الاقوامی ایوارڈ کے حامل ہیں۔
2034 میں ، چین بحر الکاہل میں امریکی افواج کو مفلوج کرنے والے سائبریٹیکس کے ایک سلسلے سے جنگ کا آغاز کرتا ہے اور اس کے ساتھ ہی ایرانیوں کو ایک امریکی F-35 ، ایک کثیر مقصدی جنگی طیارے کا کنٹرول سنبھالنے میں مدد ملتی ہے جس کے الیکٹرانک نگرانی اور ٹریکنگ سسٹم تکنیکی اثاثوں میں شامل ہیں۔ جو ان کا مالک ہے انھیں حکمت عملی سے ہوا کی برتری عطا کرے۔ ایرانیوں نے طیارے پر لینڈنگ اور پائلٹ کو قبضہ کرنے پر مجبور کرنے کے بعد ، اور چین نے بحیرہ جنوبی چین میں تین امریکی جنگی جہاز ڈوبنے کے بعد ، جسے بیجنگ نے علاقائی پانی سے تعبیر کیا ، امریکی صدر کو انتخاب کرنے پر مجبور کیا گیا۔ یا تو وہ جوابی کارروائی کرسکتا ہے یا وہ سوویت یونین کے ساتھ کیوبا کے میزائل بحران کے دوران صدر جان کینیڈی کی طرح اپنے موقف سے پیچھے ہٹ سکتے ہیں۔ لیکن 2034 میں ، وائٹ ہاؤس 1932 میں کینیڈی سے ہونے والے اس ڈاؤن لوڈ کو ٹالنا نہیں چاہتا کیونکہ اس کا نتیجہ امریکا کے لیے ایک بہت بڑی شکست تھا۔ جنوب مشرقی ایشیاء میں طاقتوں کا توازن بدل جاتا ہے۔ امریکا ، اپنی روایتی قوتوں کا بیشتر حصہ کھو جانے کے بعد ، سامری جوہری ہتھیاروں کا سہارا لینے پر مجبور ہوتا ہے۔
اس ناول کے فوجی منظرنامے میں بہت سے واقعات سے متفق نہیں ہوتے۔ لیکن اس میں جس اگلی جنگ کی پیش گوئی کی ہے۔ اس کے امکانات سے انکار نہیں کیا جاسکتا۔ اگلی عالمی جنگ ایٹمی ہتھیاروں سے ہوگی یا سائبر ٹیکنالوجی سے جسے چین نے ایک ہتھیار کے طور پر متعارف کرایا۔ یہ سوال باقی ہے کہ کیا چین حقیقت پسندی سے عالمی جنگ تک باقی 13 سالوں میں امریکا پر سائبر جنگ کی فوقیت حاصل کرلے گا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
عمرؓکومعاف کردیں وجود جمعرات 29 جولائی 2021
عمرؓکومعاف کردیں

افغانستان میں امن اور کابل حکومت کی پروپیگنڈہ مہم وجود جمعرات 29 جولائی 2021
افغانستان میں امن اور کابل حکومت کی پروپیگنڈہ مہم

حیسکو قاتل بھی مقتول بھی وجود جمعرات 29 جولائی 2021
حیسکو قاتل بھی مقتول بھی

اگر اب بھی نہ جاگے۔پیگاسس جاسوسی اسکینڈل وجود جمعرات 29 جولائی 2021
اگر اب بھی نہ جاگے۔پیگاسس جاسوسی اسکینڈل

قوت گویائی کی بحالی میں کامیابی وجود منگل 27 جولائی 2021
قوت گویائی کی بحالی میں کامیابی

کون کہتاہے وجود اتوار 25 جولائی 2021
کون کہتاہے

اپنا دھیان رکھنا وجود اتوار 25 جولائی 2021
اپنا دھیان رکھنا

محکمہ بہبودی آبادی کے گریڈ چودہ کے ملازم کے اختیارات و مراعات!! وجود هفته 24 جولائی 2021
محکمہ بہبودی آبادی کے گریڈ چودہ کے ملازم کے اختیارات و مراعات!!

اپنوں کی حوصلہ شکنی حب الوطنی نہیں وجود هفته 24 جولائی 2021
اپنوں کی حوصلہ شکنی حب الوطنی نہیں

مسلماں نہیں راکھ کا ڈھیر ہے وجود بدھ 21 جولائی 2021
مسلماں نہیں راکھ کا ڈھیر ہے

مساوات، قربانی اور انعام وجود بدھ 21 جولائی 2021
مساوات، قربانی اور انعام

’’ایف آئی آر‘‘ کے خلاف سندھ حکومت کی قانونی کارروائی وجود بدھ 21 جولائی 2021
’’ایف آئی آر‘‘ کے خلاف سندھ حکومت کی قانونی کارروائی

اشتہار

افغانستان
امریکی جنگی طیاروں کے طالبان کے ٹھکانوں پر فضائی حملے وجود هفته 24 جولائی 2021
امریکی جنگی طیاروں کے طالبان کے ٹھکانوں پر فضائی حملے

افغان صدارتی محل میں نماز عید کے دوران راکٹ حملے کی ویڈیو وائرل وجود بدھ 21 جولائی 2021
افغان صدارتی محل میں نماز عید کے دوران راکٹ حملے کی ویڈیو وائرل

وزیر اعظم عمران خان نے افغان صدر اشرف غنی کو آئینہ دکھا دیا وجود هفته 17 جولائی 2021
وزیر اعظم عمران خان نے افغان صدر اشرف غنی کو آئینہ دکھا دیا

پاکستان سے 10ہزار جنگجو افغانستان میں داخل ہوئے ، اشرف غنی کا الزام وجود هفته 17 جولائی 2021
پاکستان سے 10ہزار جنگجو افغانستان میں داخل ہوئے ، اشرف غنی کا الزام

طالبان نے افغانستان کے شمالی علاقوں پر قبضہ کرلیا، امریکی میڈیا وجود پیر 12 جولائی 2021
طالبان نے افغانستان کے شمالی علاقوں پر قبضہ کرلیا، امریکی میڈیا

اشتہار

بھارت
بابری مسجد کی شہادت کے بعد مسلمان ہونے والے محمد عامر کی پر اسرار موت وجود اتوار 25 جولائی 2021
بابری مسجد کی شہادت کے بعد مسلمان ہونے والے محمد عامر کی پر اسرار موت

پیگاسس کے ذریعے جاسوسی،نریندر مودی نے غداری کا ارتکاب کیا، راہول گاندھی وجود هفته 24 جولائی 2021
پیگاسس کے ذریعے جاسوسی،نریندر مودی نے غداری کا ارتکاب کیا، راہول گاندھی

بھارت میں کورونا اموات سرکاری اعداد وشمار سے 10 گنا زیادہ ہوسکتی ہیں وجود بدھ 21 جولائی 2021
بھارت میں کورونا اموات سرکاری اعداد وشمار سے 10 گنا زیادہ ہوسکتی ہیں

افغانستان سے بھارتی سفارتکاروں کا انخلائ، سوشل میڈیا پہ مذاق اڑنے لگا وجود پیر 12 جولائی 2021
افغانستان سے بھارتی سفارتکاروں کا انخلائ، سوشل میڈیا پہ مذاق اڑنے لگا

نریندر مودی کی کابینہ میں شامل 42فیصدوزراء کے خلاف فوجداری مقدمات قائم ہیں'رپورٹ وجود پیر 12 جولائی 2021
نریندر مودی کی کابینہ میں شامل 42فیصدوزراء کے خلاف فوجداری مقدمات قائم ہیں'رپورٹ
ادبیات
عظیم ثنا ء خواں،شاعر اورنغمہ نگار مظفر وارثی کی دسویں برسی منائی گئی وجود جمعرات 28 جنوری 2021
عظیم ثنا ء خواں،شاعر اورنغمہ نگار مظفر وارثی کی دسویں برسی منائی گئی

لارنس آف عربیا، بچپن کیسے گزرا؟ وجود منگل 20 اکتوبر 2020
لارنس آف عربیا، بچپن کیسے گزرا؟

بیروت سے شائع کتاب میں اسرائیل نواز بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کا چہرہ بے نقاب وجود جمعرات 17 جنوری 2019
بیروت سے شائع کتاب میں اسرائیل نواز بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کا چہرہ بے نقاب

14واں بین الاقوامی کتب میلہ کراچی ایکسپوسینٹر میں ہوگا وجود پیر 10 دسمبر 2018
14واں بین الاقوامی کتب میلہ کراچی ایکسپوسینٹر میں ہوگا

شاعر جون ایلیا کو مداحوں سے بچھڑے 16 برس بیت گئے وجود جمعرات 08 نومبر 2018
شاعر جون ایلیا کو مداحوں سے بچھڑے 16 برس بیت گئے
شخصیات
188ارب ڈالر کے مالک ایلون مسک دنیا کے مالدار ترین آدمی بن گئے وجود جمعه 08 جنوری 2021
188ارب ڈالر کے مالک ایلون مسک دنیا کے مالدار ترین آدمی بن گئے

ہالی وڈ اداکار ادریس البا کی اہلیہ بھی کورونا سے متاثر وجود پیر 23 مارچ 2020
ہالی وڈ اداکار ادریس البا کی اہلیہ بھی کورونا سے متاثر

امریکی میگزین فوربز میں سب سے زیادہ کمانے والی شخصیات کی فہرست جاری وجود منگل 01 جنوری 2019
امریکی میگزین فوربز میں سب سے زیادہ کمانے والی شخصیات کی فہرست جاری

سال 2018، مختلف شعبہ ہائے حیات کی بہت سی عالمی شخصیات دنیا چھوڑ گئیں وجود بدھ 26 دسمبر 2018
سال 2018، مختلف شعبہ ہائے حیات کی بہت سی عالمی شخصیات دنیا چھوڑ گئیں

ماضی کی رہنما خواتین وجود پیر 14 مئی 2018
ماضی کی رہنما خواتین