وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

ترے دماغ میں بُت خانہ ہو تو کیا کہیے

جمعرات 24 جون 2021 ترے دماغ میں بُت خانہ ہو تو کیا کہیے

اللہ اللہ ! طالبان تو ڈر ہی گئے ہوں گے!
پینٹاگون نے دفعتاً جھرجھری لی ہے، امریکی فوجی مرکز کے ترجمان جان کربی نے اچانک کہا ہے کہ طالبان کی کارروائیوں اور انہیں حاصل ہونے والے فوائد کے باعث افغانستان سے امریکی افواج کے انخلاء کا عمل سست کیا جا سکتا ہے ۔ امریکی ترجمان کو افغان سرزمین پر اپنے تکبر کی قبر پر احتراماً کچھ دیر خاموش کھڑے رہنا چاہئے۔ امریکی افواج کے انخلاء کے عمل میں سستی دراصل مردے کو خراب کرنا ہے۔ طالبان کو اس سے کیا فرق پڑے گا؟ البتہ امریکی غلاموں کی بات دوسری ہے۔

اَٹھتّر سالہ امریکا کے چھیالیسویں صدر جوبائیڈن امریکی صدور کی ترتیب میں چوتھے رہنما ہیں جو افغانستان کے مسئلے سے نبرد آزما ہیں۔ امریکی صدور بش جونیئر، اُباما اور ٹرمپ کے بعد جوبائیڈن افغانستان سے نمٹتے ہوئے کیلنڈر پر دودہائیوں کے روز وشب کا لیکھا جوکھا جانچ رہے ہیں۔ اُن کا تعلق ایک ایسی نسل سے ہے جو ویت نام کی جنگ کے ڈراؤنے خوابوں سے آگاہ ہے۔ انسانی نفسیات پر کچھ مخصوص حالات کا ایسا اثر پڑتا ہے کہ اکثر لوگ ایسے خواب دیکھتے ہیں کہ شدید دُھند میں سونے اور جاگنے کی درمیانی حالت میں وہ کسی خطرے سے دوچار ہوتے ہیں۔کسی خوف ناک چیز سے شدید خوف میں بچنے کی کوشش کے دوران میں خواب دیکھنے والا اپنا جسم بالکل مفلوج محسوس کرتا ہے۔ اس کشمکش میں اچانک وہ بیدار ہوتا ہے ، اس کا جسم پسینے سے شرابور ہوتا ہے اوروہ راحت محسوس کرتا ہے۔ یہی خواب کچھ دنوںکے بعد دوبارہ اُسے جکڑ لیتا ہے۔ جوبائیڈن کی نسل نے ایسے خواب 1973 ء میں دیکھنے شروع کیے جب ویتنام میں اُنہیں بھاگتے امریکیوں کی لاشیں اُٹھانا پڑیں۔ یہ آنجہانی سوویٹ یونین کا امریکا کے لیے تحفہ تھا۔ جو کبھی خلافت ِ عثمانیہ کی عظیم اسلامی سلطنت کے خاتمے کے لیے برطانیا کے ساتھ گھناؤنی سازشوں میں شریک رہتا۔ امریکا ویتنام میں غلطی کر بیٹھا۔ جنوب میں واقع ویتنام کا سب سے بڑا شہر ہوچی منہ جسے سیگون بھی کہا جاتا ہے، امریکی فوجیوں کی لاشوں کو اُٹھاتا۔ پھر 1975ء کے وہ مناظر اُبھرے، جس نے جوبائیڈن کی نسل کو ڈراؤنے خواب دکھائے۔سیگون کی سڑکوں پر کمیونسٹ ٹینک پھسلنے لگے، امریکی بھاگتے دکھائی دیے۔ اُن کے ویتنامی اتحادی امریکی سفارت خانے کے دروازوں پر ایک دوسرے کو دھکے دیتے نظر آئے۔ خوف زدہ ویتنامی اتحادیوں کو ناکافی امریکی ہیلی کاپٹرز کی چھتوں پر بیٹھ کر بحری جہازوں میں اُتارا گیا۔ دنیا کی سب سے بڑی طاقت کا زعم ویتنام کی سڑکوں پر امریکیوں کے خون کے ساتھ جذ ب ہو گیا تھا۔

امریکا مگر چالاک ہے۔ اُس نے سوویٹ یونین کو اُس کا” ویتنام” دینے میں دیر نہیں لگائی اور افغانستان کو بطور ویتنام سوویٹ یونین کے حوالے کیا۔ بیسویں صدی کے آخری ربع میں مشرقی یورپ ڈھے پڑا تھا، وسطی ایشیا کو سرخ ریچھ نے اپنے پنجوں میں جکڑ لیا تھا۔ باری دریائے آمو کی تھی اور بیچ میں افغانستان تھا۔ ٹوائن بی نے جسے تاریخ کا چوراہا کہا۔آنکھیں چھوٹی ہو اور خواب بڑے ہو تو چبھتے ہیں۔ سوویٹ یونین کا حجم جتنا بھی رہا ہو، افغانستان کو دیکھنے والے آنکھیں ہمیشہ چھوٹی پڑ جاتی ہیں۔سرخ ریچھ نے 1978ء میں افغانستان میں اپنی پیش قدمی کی۔ امریکی دستاویزات مگر یہ بتاتی ہیں کہ افغان مزاحمت کیسی ہی کیوں نہ ہو، سوویٹ یونین واپس نہیں پلٹے گا، یہاں تک کہ وہ بحیرۂ عرب کے گرم پانیوں میں جا پہنچے گا۔امریکی بہت بعد میں مدد کو آئے تھے جب وہ فرسودہ توڑے دار بندوقوں کے ذریعے دسمبر 1979ء سے اکتوبر 1980 ء تک افغانوں کی ہکا بکا کردینے والی مزاحمت کا مشاہدہ کر چکے۔ افغانوں کی کامیابی کا یقین اُنہیں تب بھی نہیں تھا۔ یہ بات دنیا کبھی نہیں سمجھے گی یہاں تک کہ پاکستان کے مسلمان بھی جو دلوں میں بت کدے رکھتے ہیںکہ افغانستان میں بندوقیں نہیں ایمان لڑتا ہے۔ افغانوں کی مزاحمت کی نصرت انسان نہیں کوئی اور مخلوق کرتی ہے۔ حضرت علامہ اقبال نے نکتہ واضح کردیا تھا:
بیاں میں نکتۂ توحید آ تو سکتا ہے
ترے دماغ میں بُت خانہ ہو تو کیا کہیے
سُرور جو حق و باطل کی کارزار میں ہے
تُو حرب و ضرب سے بیگانہ ہو تو کیا کہیے
جہاں میں بندئہ حُر کے مشاہدات ہیں کیا
تِری نگاہ غلامانہ ہو تو کیا کہیے
پھر یہ افغانستان تھا جہاں سوویت یونین کا ستارۂ مقدر ڈوب گیا۔ دریائے آمو کی لہریں ہموار رہیں۔پینٹاگون کے ترجمان کے علم میں ہونا چاہئے تب صدر گوربا چوف نے کیا کہا تھا: افغانستان ہمارا رِ ستا ہوا ناسور ہے، اس میں پھنس کر ہم نے غلطی کی”۔سرزمین ِ افغانستان سے نکلنے والے آخری روسی کے الفاظ بھی یاد کرلیں۔ وہ افغانستان سے نکلنے کی طے شدہ تاریخ سے بھی ایک روز قبل انتہائی عجلت میںنکلا تھا، اُس نے دریائے آمو کے پُل پر کھڑے ہو کر کہا تھا: میں پیچھے مڑ کر دیکھنا نہیں چاہتا، آئندہ ہم ایسی غلطی کبھی نہیں کریں گے”۔ یہ کوئی عام آدمی نہیں ایک روسی جرنیل تھا۔

امریکا کو چاہئے کہ وہ بھی مزید کوئی غلطی نہ کرے۔ امریکاافغان تاریخ کو یاد رکھے! افغان بھاگتے حملہ آوروں کے لیے زیادہ بے رحم ہو جاتے ہیں۔ امریکا نے سیگون سے بھاگتے ہوئے نہایت مایوس کن مناظر کا سامنا کیا تھا۔کانگریس نے اپریل 1975 ء میں شکست کے بعد مزید پیسہ دینے سے انکار کردیا تھا۔ تب جوبائیڈن پہلی مرتبہ سینیٹر منتخب ہوئے تھے۔ اُنہوں نے اپنے خطاب میں امریکیوں کا ساتھ دینے والے ویتنامیوں کی ذمہ داری اُٹھانے سے انکار کردیا تھا۔ سیگون دنوں میں ڈھے پڑا۔ اور امریکی چوروں کی طرح بھاگتے ہوئے دکھائی دیے۔ جوبائیڈن ان ڈراؤنے خوابوں کو دیکھتے رہے ہیں۔ شاید اسی لیے اُنہوں نے افغانستان سے انخلاء کے لیے پانچ ماہ کا ایک لمبا عرصہ رکھا ۔ تاکہ امریکی راہِ فرار اختیار کرتے ہوئے دکھائی نہ دیں۔مگر عملاً امریکی 11 ستمبر کی طے شدہ تاریخ سے بہت پہلے افغان سرزمین چھوڑنا چاہ رہے ہیں۔ وہ سیگون کے بھیانک مناظر کا افغان تیوروں کے ساتھ اعادہ نہیں چاہتے، جو زیادہ خطرناک ہوسکتے ہیں۔
ایک مہذب وقفہ اور مزید بے عزتی سے بچتے ہوئے سکون سے انخلاء یہ بائیڈن انتظامیہ کی اولین ترجیح ہے۔ تاہم وہ اپنی جسمانی موجودگی کے بغیر افغانستان میں اپنی مداخلت کے بے ہودہ امریکی انداز جاری رکھنا چاہتے ہیں۔ طالبان کا مسئلہ یہ ہے کہ وہ اس کا حد سے زیادہ شعور رکھتے ہیں۔ اُنہیں جدیدیت کامنتر سحر زدہ نہیں کرتا اور اُن کی دہقانی طبیعت پر تہذیب کی پَریاں اور پُڑیاں دونوں ہی اثر نہیں کرتیں۔
طالبان آگے بڑھ رہے ہیں۔ افغانستان کے نصف سے زائد اضلاع اب اُن کی گرفت میں ہیں۔ عبدالرشید دوستم آخری اطلاعات کے مطابق فرار ہو چکے۔ اُن کے صاحبزادے دین کی جانب راغب ہیں۔ طالبان امیرشیخ الحدیث والتّفسیر ہیبت اللہ اخوند کے حکم کے مطابق صوبوں کا مرکزی کنٹرول دانستہ نہیں لیا جارہا ۔ مختلف اضلاع کے ذریعے امریکا کے لے پالکوں کا ایک زمینی گھیراؤ کیا جارہا ہے۔ اس طرح ایک کے بعد ایک ضلع طالبان کے آگے سر تسلیم خم کررہا ہے۔ ابھی لوگ انداز ا نہیں کرسکے کہ طالبان جب پہلی مرتبہ اُٹھے تھے، تب وہ کامیابی کی کوئی داستان بھی نہ رکھتے تھے۔ اُنہیں ابتدا میں جو صوبے میسر آئے تھے وہ پکتیا، پکتیکا ، خوست اور گردیز کے تھے۔ طالبان ریاست کے قیام کے بعد بھی پوری طرح شمالی افغانستان اُن کے کنٹرول میں نہ آسکا تھا۔ مگر حیرت انگیز طور پر طالبان ابھی اپنے پرانے علاقوں کا کنٹرول حاصل بھی نہیں کر پائے کہ شمالی افغانستان کے اکثر اضلاع اُن کی گرفت میں ہیں۔ ان میں سے اکثر وہ علاقے ہیں جو پہلے کبھی ان کے ہاتھ میں نہیں رہے۔ افغان فورسز کے اکثر جنگجو لیڈرز طالبان سے خاموش رابطوں میں آگئے ہیں۔ اشرف غنی کی کمزور اور کٹھ پتلی انتظامیہ کے سربرآوردگان اپنی زندگیوں کی ضمانتیںمانگ رہے ہیں۔ اشرف غنی امریکا میں اپنے مستقبل کے تحفظ کی ضمانت مانگنے تشریف لے گئے ہیں۔ بیچارے عبداللہ عبداللہ کا معاملہ بھی مختلف نہیں۔ ان لے پالکوں کے برعکس افغانوں کا جذبۂ مزاحمت اُن کے ایمان کی طرح تازہ رہتا ہے۔ برطانوی محلات سے اُٹھنے والے آوارگی کے بھبھکوں سے اس کا کیا مقابلہ؟ آنجہانی سوویٹ یونین کی وحشتوں کا اس سے کیا علاقہ؟ امریکی جدیدیت کے منتروں کا یہاں کیا گزارا؟
کیا پینٹاگون کے ترجمان جان کربی واقعی یہ سمجھتے ہیں کہ امریکی افواج کے انخلاء کا عمل سست کرنے کا بیان طالبان پر کوئی اثر کرے گا؟

جب وہ یہ فرما رہے تھے توٹھیک اس وقت طالبان اُن کے بیان سے ”ڈر ” کر افغانستان کی تاجکستان کے ساتھ مرکزی سرحدی گزرگاہ پر قبضہ کررہے تھے۔ قندوز شہر سے 50 کلو میٹر کے فاصلے پر افغانستان کے شمال میں شیر خان بندر کی حفاظت پر مامور کٹھ پتلی انتظامیہ کے فوجی طالبان سے ڈر کر تاجکستان فرار ہوگئے۔ دیکھیں تو طالبان ڈر ڈر کر بھی کیا کارروائیاں کرگزرتے ہیں۔ وقت کا فیصلہ صادر ہوچکا۔ مگر جن کے دماغوں میں بت خانے آباد ہو، اُنہیں کوئی کیونکر اور کیسے سمجھا سکتا ہے؟
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


متعلقہ خبریں


مضامین
روشن مثالیں وجود هفته 16 اکتوبر 2021
روشن مثالیں

تعیناتی کو طوفان بنانے کی کوشش وجود هفته 16 اکتوبر 2021
تعیناتی کو طوفان بنانے کی کوشش

سنجیدہ لوگ، ماحولیات اور بچے وجود هفته 16 اکتوبر 2021
سنجیدہ لوگ، ماحولیات اور بچے

پنڈورا پیپرز کے انکشافات وجود هفته 16 اکتوبر 2021
پنڈورا پیپرز کے انکشافات

بارودکاڈھیر وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
بارودکاڈھیر

نخریلی بیویاں،خودکش شوہر وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
نخریلی بیویاں،خودکش شوہر

آسام میں پولیس کی درندگی وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
آسام میں پولیس کی درندگی

کراچی میں بلدیاتی انتخابات کے امکانات اور مضمرات؟ وجود جمعرات 14 اکتوبر 2021
کراچی میں بلدیاتی انتخابات کے امکانات اور مضمرات؟

میں بھول گیا تھا، وہ چیف آف آرمی اسٹاف ہے!! وجود جمعرات 14 اکتوبر 2021
میں بھول گیا تھا، وہ چیف آف آرمی اسٹاف ہے!!

امریکا کی آخری جنگ کی خواہش وجود منگل 12 اکتوبر 2021
امریکا کی آخری جنگ کی خواہش

مسلم قیادت کا بحران اوراسد الدین اویسی وجود منگل 12 اکتوبر 2021
مسلم قیادت کا بحران اوراسد الدین اویسی

کسانوں کے قتل پر نریندر مودی اور امیت شاہ کی مجرمانہ خاموشی وجود منگل 12 اکتوبر 2021
کسانوں کے قتل پر نریندر مودی اور امیت شاہ کی مجرمانہ خاموشی

اشتہار

افغانستان
افغانستان کی صورتحال ، امریکی نائب وزیر خارجہ آج اسلام آباد پہنچیں گی وجود جمعرات 07 اکتوبر 2021
افغانستان کی صورتحال ، امریکی نائب وزیر خارجہ آج اسلام آباد پہنچیں گی

طالبان کا داعش کے خلاف کریک ڈاؤن کا حکم وجود جمعرات 30 ستمبر 2021
طالبان کا داعش کے خلاف کریک ڈاؤن کا حکم

طالبان حکومت کے بعد پاکستان کی افغانستان کیلئے برآمدات دگنی ہوگئیں وجود جمعه 17 ستمبر 2021
طالبان حکومت کے بعد پاکستان کی افغانستان کیلئے برآمدات دگنی ہوگئیں

امریکا کا نیا کھیل شروع، القاعدہ آئندہ چند سالوں میں ایک اور حملے کی صلاحیت حاصل کر لے گی،ڈپٹی ڈائریکٹر سی آئی اے وجود بدھ 15 ستمبر 2021
امریکا کا نیا کھیل شروع،  القاعدہ آئندہ چند سالوں میں ایک اور حملے کی صلاحیت حاصل کر لے گی،ڈپٹی ڈائریکٹر سی آئی اے

طالبان دہشت گرد ہیں تو پھر نہرو،گاندھی بھی دہشت گرد تھے، مہتمم دارالعلوم دیوبند کا بھارت میں کلمہ حق وجود بدھ 15 ستمبر 2021
طالبان دہشت گرد ہیں تو پھر نہرو،گاندھی بھی دہشت گرد تھے، مہتمم دارالعلوم دیوبند کا بھارت میں کلمہ حق

اشتہار

بھارت
بھارت،چین کے درمیان 17 ماہ سے جاری سرحدی کشیدگی پر مذاکرات ناکام وجود منگل 12 اکتوبر 2021
بھارت،چین کے درمیان 17 ماہ سے جاری سرحدی کشیدگی پر مذاکرات ناکام

مزاحمتی تحریک سے وابستہ کشمیریوں کے خلاف بھارتی کارروائیوں میں تیزی لانے کا منصوبہ وجود هفته 09 اکتوبر 2021
مزاحمتی تحریک سے وابستہ کشمیریوں کے خلاف بھارتی کارروائیوں میں  تیزی لانے کا منصوبہ

مرکزی بینک آف انڈیاا سٹیٹ بینک آف پاکستان کا 45 کروڑ 60 لاکھ کا مقروض نکلا وجود جمعه 08 اکتوبر 2021
مرکزی بینک آف انڈیاا سٹیٹ بینک آف پاکستان کا 45 کروڑ 60 لاکھ کا مقروض نکلا

بھارت، مسجد میں قرآن پڑھنے والا شہید کردیاگیا وجود جمعه 08 اکتوبر 2021
بھارت، مسجد میں قرآن پڑھنے والا شہید کردیاگیا

شاہ رخ کے بیٹے آریان کو 20 سال تک سزا ہوسکتی ہے وجود جمعرات 07 اکتوبر 2021
شاہ رخ کے بیٹے آریان کو 20 سال تک سزا ہوسکتی ہے
ادبیات
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب

تاجکستان بزنس کنونشن میں عمران خان پر شعری تنقید، اتنے ظالم نہ بنو،کچھ تو مروت سیکھو! وجود جمعه 17 ستمبر 2021
تاجکستان بزنس کنونشن میں عمران خان پر شعری تنقید، اتنے ظالم نہ بنو،کچھ تو مروت سیکھو!

طالبان کا ’بھگوان والمیکی‘ سے موازنے پر منور رانا کے خلاف ایک اور مقدمہ وجود منگل 24 اگست 2021
طالبان کا ’بھگوان والمیکی‘ سے موازنے پر منور رانا کے خلاف ایک اور مقدمہ
شخصیات
ڈاکٹرعبدالقدیرخان کے لیے دو قبروں کا انتظام، تدفین ایچ8 میں کی گئی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبدالقدیرخان کے لیے دو قبروں کا انتظام، تدفین ایچ8 میں کی گئی

ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی نمازِجنازہ ادا کردی گئی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی نمازِجنازہ ادا کردی گئی

ڈاکٹرعبدالقدیر خان نے150 سے زائد سائنسی تحقیقاتی مضامین تحریر کیے وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبدالقدیر خان نے150 سے زائد سائنسی تحقیقاتی مضامین تحریر کیے

ڈاکٹرعبد القدیر خان نے8 سال کی قلیل مدت میں ایٹمی پلانٹ نصب کیا،ساری دنیا حیرت زدہ رہی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبد القدیر خان نے8 سال کی قلیل مدت میں ایٹمی پلانٹ نصب کیا،ساری دنیا حیرت زدہ رہی

آزاد کشمیرکے سابق صدر اور وزیراعظم سردار سکندر حیات خان کی کوٹلی میں نماز جنازہ ادا وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
آزاد کشمیرکے سابق صدر اور وزیراعظم سردار سکندر حیات خان کی کوٹلی میں نماز جنازہ ادا