وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

بیت المقدس کی اہمیت اور یہود

پیر 10 مئی 2021 بیت المقدس کی اہمیت اور یہود

الشیخ محمد صالح المنجد
۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
فلسطین کے دارالخلافہ، بیت المقدس کے فضائل بہت زیادہ ہیں ۔ان کے بارے میں آیات و احادیث موجود ہیں۔اللہ سبحانہ وتعالی نے قرآن مجید میں اسے مبارک قرار دیا ہے ۔ فرمان باری تعالی ہے :’’ پاک ہے وہ ذات جو اپنے بندے کورات ہی رات میں مسجد حرام سے مسجد اقصی تک لے گیا جس کے آس پاس ہم نے برکت دے رکھی ، اس لیے کہ ہم اسے اپنی قدرت کے بعض نمونے دکھائیں‘‘۔ (الاسراء ۔1 )
مسجد کے اردگرد کا علاقہ اور شہر بھی اس کی وجہ سے بابرکت ہوگیا۔اسی علاقے کواللہ تعالی نے موسی علیہ السلام کی زبان سے مقدس کا وصف دیا۔ فرمان باری تعالی ہے :اے میری قوم اس مقدس سرزمین میں داخل ہوجاؤ جو اللہ تعالی نے تمہارے نام لکھ دی ہے‘‘ ۔ (المائدہ۔21 )
یہ ایسی پاکیزہ سرزمین ہے جہاں پرکانا دجال بھی داخل نہیں ہوسکتا۔ حدیث میں فرمان نبوی صلی اللہ علیہ وسلم ہے : وہ دجال حرم اوربیت المقدس کے علاوہ باقی ساری زمین میں گھومے گا ‘‘۔( مسنداحمد، حدیث نمبر 19665 ) ۔حضرت عیسیٰ علیہ السلام دجال کواسی علاقے کے قریب قتل کریں گے جیسا کہ حدیث نبوی میں فرمان نبویﷺ ہے ،حضرت نواس بن سمعان رضی اللہ تعالی عنہ بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : عیسیٰ بن مریم علیہ السلام دجال کو باب لد میں قتل کریں گے ‘‘۔( صحیح مسلم، حدیث نمبر 2937 )۔لد بیت المقدس کے قریب ایک جگہ کا نام ہے ۔
القدس شریف ہی مسلمانوں کا قبلہ اول ہے جیسا کہ حدیث میں ہے ،حضرت براء رضی اللہ تعالی عنہ بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ نے سولہ یا سترہ مہینے بیت المقدس کی طرف نمازپڑھی۔( صحیح بخاری حدیث نمبر 41 )۔( صحیح مسلم، حدیث نمبر 525 )۔ مکہ مکرمہ میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم خانہ کعبہ کی طرف منہ کرکے نماز پڑھتے تھے ۔ البتہ اس بات کا اہتمام ضرور کرتے کہ آپﷺ اس رخ پر کھڑے ہوں جس پر خانہ کعبہ اور بیت المقدس،دو نوں ہی قبلے سامنے آ جائیں۔ وجہ یہ تھی کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم اسی وقت اہل کتاب سے مختلف کوئی طریقہ اختیار فرماتے جب اللہ تعالیٰ کی طرف سے آپﷺ کو اس کا حکم یا اجازت مل جاتی تھی۔
جب آپ ﷺ مدینہ منورہ تشریف لائے تو وہاں دونوں قبلوں کو بیک وقت سامنے رکھنا ممکن نہ تھا۔ لہٰذا آپﷺ نے اپنے اصول کے مطابق بیت المقدس کی طرف منہ کر کے نماز پڑھنا شروع کر دی۔ لیکن آپﷺ کا جی چاہتا تھا کہ خانہ کعبہ کی طرف منہ کرکے نماز پڑھیں۔ کچھ عرصہ بعد اللہ تعالیٰ نے سورہ البقرہ میں آیات نازل فرما کر یہ اجازت دے دی کہ آپﷺ کعبہ ہی کواپنا قبلہ بنا لیں۔گویا مدینہ منورہ میں مسلمانوں نے پہلے بیت المقدس کو اپنا قبلہ بنایا تھا۔
بیت المقدس مہبط وحی اورانبیائے کرام کا وطن ہے ۔مسجداقصیٰ ان مساجدمیں سے ہے جن کی طرف سفرکرنا جائزہے ۔حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالی عنہ بیان کرتے ہیں کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : تین مساجدکے علاوہ کسی اورکی طرف سفرنہیں کیا جاسکتا ، مسجد حرام ، مسجد نبوی صلی اللہ علیہ وسلم اورمسجداقصیٰ‘‘۔(صحیح بخاری ،حدیث نمبر 1132 )
ایک طویل حدیث میں آیا ہے ،جسے حضرت ابوہریرہ رضی اللہ تعالی عنہ نے روایت کیا کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اسی مسجد میں سب انبیائے علیہم السلام کی ایک نمازمیں امامت کرائی۔ حدیث کے الفاظ کچھ اس طرح ہیں :نمازکا وقت آیا تومیں نے ان کی امامت کرائی‘‘۔ (صحیح مسلم ،حدیث نمبر 172 )۔
مورخین اسلام نے لکھا ہے کہ مسجد اقصیٰ کی تعمیر میں حضرت یعقوب علیہ السلام نے بھی حصہ لیا تھا۔مگر اس سے یہ ثابت نہیں ہوتا کہ اب یہودی مسلمانوں سے مسجداقصیٰ کے زیادہ حق دار ہیں ۔ یعقوب علیہ السلام موحد اورتوحید پرست تھے اوریہودی توریت میں تحریف کرنے کی وجہ سے مشرک ہو چکے ۔لہٰذا یہ کیسے ہوسکتا ہے کہ یہودی مشرک اس میں کچھ بھی حق رکھیں۔ویسے بھی انبیا ء کی دعوت نسلی نہیں بلکہ تقویٰ پرمشتمل ہوتی ہے ۔
القدس شریف میں اب یہودیوں کا کچھ حصہ نہیں ہے اس لیے کہ یہ علاقہ دووجوہ کی بنا پر مسلمانوں کی ملکیت بن چکا، اگرچہ پہلے وہاں یہودی رہتے رہے ہیں :
1۔اس لیے کہ یہودیوں نے کفرکا ارتکاب کیا۔ بنی اسرائیل کے مومنوں کے دین پہ جنہوں نے موسی علیہ السلام کی پیروی واتباع کیا اوران پرایمان لائے اوران کی مدد کی ۔ یہود ان کے دین پرواپس نہیں آئے اوران کی شریعت پرعمل نہیں کیا۔
2 ۔ مسلمان دور جدید کے یہود سے اس جگہ کا زیادہ حق رکھتے ہیں ۔ اس لیے کہ زمین پہلے رہائش اختیارکرنے سے حاصل نہیں ہوتی بلکہ زمین کا مالک تووہی بنتا ہے جواس میں حدوداللہ کا نفاذ کرے اوراس میں اللہ تعالی کے حکم کوچلائے ۔ وہ اس لیے کہ زمین اللہ تعالی نے پیدا فرمائی اورانسانوں کو اس لیے پیدا فرمایا کہ وہ اس زمین پررہتے ہوئے اللہ تعالی کی عبادت کریں اوراس میں اللہ تعالی کا دین اورشریعت و حکم نافذ اورقائم کریں۔اللہ سبحانہ وتعالی کا فرمان ہے :یقیناً زمین اللہ تعالی کی ہی ہے ۔ وہ جسے چاہے اپنے بندوں میں سے اس کا وارث بنا دے اورآخر کامیابی انہیں کوہوتی ہے جومتقی ہیں‘‘۔ ( الاعراف ۔ 128 )۔
اسی لیے اگرکوئی عرب قوم بھی وہاں ایسی آجائے جو کہ دین اسلام پرنہ ہوں اوروہاں کفرکا نفاذ کرنے لگے تواس سے بھی جہاد کیا جائے گا حتی کہ وہاں اسلام کا حکم نافذ ہو جائے ۔غرض یہ معاملہ نسلی اورمعاشرتی نہیں بلکہ توحید و اسلام کا معاملہ ہے ۔اس ضمن میں ہم ایک فاضل مقالہ نگار کی تحریر پیش کرتے ہیں:تاریخ اس بات کی شاہدہے کہ فلسطین میں سب سے پہلے بودوباش اورسکونت اختیارکرنے والے کنعانی تھے ، جنہوںنے چھ ہزارسال قبل میلاد وہاں رہائش اختیار کی۔یہ ایک عرب قبیلہ تھا اورجزیرہ عربیہ سے فلسطین میں آیا ۔کنعانیوں کے آنے کے بعد ان کے نام سے اسے فلسطین کا نام دیا گیا‘‘۔ (دیکھیں کتاب : الصیھونیتہ نشاّتھا تنظیماتھا ، انشتطھا۔ تالیف : احمد العوضی ص 7 )۔
’’اوریہودی تویہاں پر حضرت ابراہیم علیہ السلام کے آنے کے تقریبا چھ سو سال بعد آئے ہیں۔ یعنی اس کے معنی یہ ہوئے کہ یہودی فلسطین میں پہلی مرتبہ چودہ سوسال قبل میلاد میں آئے ۔اس طرح کنعانی یہودیوں سے چار ہزار پانچ سوسال پہلے فلسطین میں داخل ہوئے اوراسے اپنا وطن بنایا‘‘۔ (دیکھیں درج بالا کتاب صفحہ نمبر 8 )۔
اس طرح یہ تایخی طورپربھی یہ ثابت ہے کہ فلسطین میں یہودیوں کا نہ تو اب کوئی حق ہے اورنہ ہی ان پہلے کو حق حاصل تھا۔ ، اورنہ کوئی شرعی اوردینی حق ہے اور نہ ہی قدیم رہائشی اورمالک ہونے کے اعتبارسے ہی حق ہے ۔بلکہ یہ لوگ غاصب اورظالم ہیں۔ہم اللہ تعالی سے دعاگو ہیں کہ وہ ان یہود سے جلداز جلد بیت المقدس کوپاک کرے اورانہیں وہاں سے نکالے اوراس میں دیرنہ کرے ۔بلاشبہ اللہ تبارک وتعالیٰ اس پرقادرہے اور دعاکوقبول کرنے والا ہے ۔
٭٭٭٭٭٭


متعلقہ خبریں