وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

اویغور مسلمان‘ چین میں لاپتہ جغرافیہ کے پروفیسر کو زمین نگل گئی یا آسمان کھا گیا

منگل 15 اکتوبر 2019 اویغور مسلمان‘ چین میں لاپتہ جغرافیہ کے پروفیسر کو زمین نگل گئی یا آسمان کھا گیا

2017 تک تاشپولات طیپ ایک جانے پہچانے معلم اور سنکیانگ یونیورسٹی کے سربراہ تھے، ان کے دنیا بھر میں رابطے تھے جبکہ انھوں نے فرانس کی مشہور پیرس یونیورسٹی سے اعزازی ڈگری بھی حاصل کر رکھی تھی۔لیکن اسی برس وہ بغیر کسی پیشگی انتباہ کے لاپتہ ہو گئے اور اس حوالے سے چینی حکام مکمل خاموشی اختیار کیے ہوئے ہیں۔ان کے دوستوں کا خیال ہے کہ پروفیسر طیپ کو علیحدگی کی تحریک چلانے کا ملزم قرار دیا گیا، ان پر خفیہ انداز میں مقدمہ چلا اور بعدازاں اس جرم کی پاداش میں انھیں سزائے موت دے دی گئی۔پروفیسر طیپ چین کے صوبے سنکیانگ میں بسنے والے ایک اویغور مسلمان ہیں۔ انسانی حقوق سے متعلق سرگرم گروپس کا کہنا ہے کہ انھیں چین میں اویغور ادیبوں کے خلاف جاری کارروائیوں کے پس منظر میں گرفتار کیا گیا۔ چین اویغور مسلمانوں کو علیحدگی پسند اور دہشت گرد قرار دیتا ہے۔محقق اور ’پیپلز ریپبلک آف ڈس اپیئرڈ‘ نامی کتاب کے مصنف مائیکل کاستر نے بی بی سی کو بتایا کہ چین میں سینکڑوں اساتذہ اور پیشہ وارانہ مہارت کے حامل افراد کو بڑے پیمانے پر جاری آپریشن کے دوران حراست میں لیا گیا ہے۔یونیورسٹی میں پروفیسر طیپ کے ساتھیوں کو خدشہ ہے کہ اگر وہ ابھی بھی زندہ ہیں اور زیر حراست ہیں تو انھیں جلد ہی پھانسی کے پھندے پر لٹکا دیا جائے گا۔لاپتہ ہونے تک تاشپولات طیپ چین کی سرکاری سنکیانگ یونیورسٹی میں جغرافیے کے ایک انتہائی قابل احترام پروفیسر کے طور پر جانے جاتے تھے۔مقامی اویغور کمیونٹی کے ممبر ہونے کے ناطے انھوں نے اپنے آبائی صوبے سنکیانگ کی یوینورسٹی میں پڑھانا شروع کر دیا تھا۔ انھوں نے جغرافیہ کی تعلیم چین سے ہی حاصل کی اور کچھ عرصہ جاپان گذارنے کے بعد انھوں نے دوبارہ اپنی یونیورسٹی میں پڑھانا شروع کر دیا۔وہ عالمی سطح پر ادبی حلقوں میں متحرک تھے۔ انھیں فرانس کی ایک یونیورسٹی نے اعزاز سے بھی نوازا۔ وہ جغرافیے کے شعبے سے وابستہ ماہرین کے بین الاقوامی نیٹ ورک سے بھی منسلک تھے۔وہ سنہ 2010 میں چین کی کمیونسٹ پارٹی کے رکن بھی بنے۔ اپنے لاپتہ ہونے تک وہ سنکیانگ یونیورسٹی کے سربراہ کی حیثیت سے کام کر رہے تھے۔پروفیسر طیپ کے خلاف چلنے والے مقدمے کی تفصیلات کو انتہائی مخفی رکھا گیا اور ان پر کیا بیتی اس سے متعلق کوئی سرکاری ریکارڈ موجود نہیں ہے۔پروفیسر طیپ کے دوستوں کا کہنا ہے کہ لاپتہ ہونے سے قبل وہ یورپ میں ایک کانفرنس میں شرکت کرنے جارہے تھے اور اس دورے کے دوران انھوں نے ایک جرمنی کی یونیورسٹی سے تعاون سے متعلق ایک معاہدہ بھی کرنا تھا۔لیکن جب وہ یورپ جانے کے لیے بیجنگ ایئرپورٹ پہنچے تو انھیں روکا گیا اور یہ بتایا گیا کہ وہ سنکیانگ کے دارالحکومت ارومچی پہنچیں۔امریکہ سے ان کے ایک دوست نے بی بی سی کو بتایا کہ ان سے متعلق دستیاب معلومات کا اس سے زیادہ کچھ علم نہیں ہے۔ پروفیسر طیپ کے خلاف چلنے والے مقدمے کی تفصیلات کو انتہائی مخفی رکھا گیا اور ان پر کیا بیتی اس سے متعلق کوئی سرکاری ریکارڈ موجود نہیں ہے۔اس کے بعد پروفیسر طیپ کبھی گھر واپس نہیں آئے۔ اس کے بعد ان کے دوستوں اور رشتہ داروں سے بد عنوانی سے متعلق پوچھ گچھ کی گئی۔ان کی یونیورسٹی کے ایک سابق پروفیسر نے بی بی سی کو بتایا کہ اس کے بعد ان کے خاندان کو یہ اطلاع ملی کہ انھیں علیحدگی کی تحریک چلانے کا مرتکب قرار دے کر سزائے موت دے دی گئی ہے۔تاہم چین نے اس مقدمے سے متعلق کسی قسم کی کبھی کوئی تصدیق نہیں کی ہے۔


متعلقہ خبریں


ایران بتائے،غیراعلانیہ جگہ پر یورینئم کے ذرات کہاں سے آئے؟آئی اے ای اے وجود - جمعه 22 نومبر 2019

اقوام متحدہ کے تحت جوہری توانائی کے عالمی ادارے (آئی اے ای اے)نے ایران سے اس کی ایک غیرعلانیہ جگہ پر پائے جانے والے یورینیم کے ذرات کے بارے میں وضاحت طلب کی ہے اور اس سے کہا ہے کہ وہ اس سے متعلق ایشوز کو حل کرے۔میڈیارپورٹس کے مطابق ایجنسی کے قائم مقام ڈائریکٹر جنرل کورنیل فیروٹا نے ویانا میں بورڈ کے اجلاس میں گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ادارے نے ایران کی غیرعلانیہ جگہ میں قدرتی یورینیم کے ذرات کا پتا چلایا ہے۔ایران نے اس جگہ کے بارے میں پہلے ایجنسی کو مطلع نہیں کیا تھا۔انھوں نے کہ...

ایران بتائے،غیراعلانیہ جگہ پر یورینئم کے ذرات کہاں سے آئے؟آئی اے ای اے

فیس بک اور گوگل انسانی حقوق کے لیے خطرہ ہیں،ایمنسٹی انٹرنیشنل کا انتباہ وجود - جمعه 22 نومبر 2019

انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے ادارے ایمنسٹی انٹرنیشنل نے فیس بک اور گوگل کو انسانی حقوق کے لیے خطرہ قرار دے دیاہے۔ غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق ادارے نے اپنی ایک نئی رپورٹ میں کہا کہ فیس بک اور گوگل انسانی حقوق کے لیے ایسا خطرہ ہے جس کی کوئی نظیر نہیں، جبکہ ایمنسٹی انٹرنیشنل نے ان کمپنیوں کی جانب سے صارفین کی نگرانی پر تشویش ظاہر کی ۔رپورٹ میں اسے ہر وقت ہر جگہ اربوں افراد کی نگرانی قرار دیتے ہوئے ان ٹیکنالوجی کمپنیوں کے بزنس ماڈل میں بنیادی تبدیلی کا مطالبہ کیاگیا۔ایمنس...

فیس بک اور گوگل انسانی حقوق کے لیے خطرہ ہیں،ایمنسٹی انٹرنیشنل کا انتباہ

ترک صدرکا انتقامی فیصلہ،احمد داود اوگلو کی استنبول یونیورسٹی بند کر دی وجود - جمعه 22 نومبر 2019

ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے سابق وزیراعظم احمد دائود اوگلوکی شہیر استنبول یونیورسٹی کو بند کردیا جس کے بعد ہزاروں طلبا کا مستقبل دائو پر لگ گیا ہے ۔میڈیارپورٹس کے مطابق ترک صدر نے احمد دائود اوگلو کوپارٹی چھوڑنے اور ان سے اختلاف کرنے کی وجہ سے یہ سزا دی ہے جبکہ یونیورسٹی کوملنے والی رقم بھی بند کردی اور یونیورسٹی کے اثاثے بھی منجمد کردئیے ہیں۔رپورٹ کے مطابق استنبول کی ایک عدالت نے خلق بنک کو شہیر استنبول یونیورسٹی کوفنڈز کی فراہمی پرپابندی لگا ئی ہے۔ اوگلو نے یہ درس گاہ 2008 م...

ترک صدرکا انتقامی فیصلہ،احمد داود اوگلو کی استنبول یونیورسٹی بند کر دی

جرمنی میں مسلمان ائمہ کی تربیت کا حکومتی پروگرام شروع وجود - جمعه 22 نومبر 2019

جرمن وزارت داخلہ نے اکیس نومبر سے مساجد میں نماز پڑھانے والے آئمہ کی خصوصی تربیت کا پروگرام شروع کر دیا ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق اس کا ایک مقصد غیرملکی آئمہ کو جرمن زبان کی تعلیم دینا بھی ہے۔ اس پروگرام کو ایک مذہبی تعلیم کی تنظیم نے مرتب کیا تھا لیکن اب اسے حکومتی سر پرستی حاصل ہو گئی ہے۔ جرمنی میں بیشتر مسلمان آئمہ کا تعلق ترکی سے ہے۔ جرمنی میں پینتالیس لاکھ مسلمان آباد ہیں اور ان میں تیس لاکھ ترک نژاد ہیں۔

جرمنی میں مسلمان ائمہ کی تربیت کا حکومتی پروگرام شروع

اسرائیل میں ایک سال کے دوران تیسری مرتبہ انتخابات کی راہ ہموار وجود - جمعه 22 نومبر 2019

اسرائیل میں اپوزیشن رہنما ء اور سابق آرمی چیف بینی گینٹس نے کہا ہے کہ ان کی طرف سے حکومت بنانے کی کوششیں کامیاب نہیں ہو سکیں، جس کے بعد اسرائیل میں نئے انتخابات کے امکانات بڑھ گئے ہیں۔ غیرملکی خبررساں ادارے کے م طابق ئاسرائیلی صدر رووین ریولین نے بینجمن نیتن یاہو کی طرف سے حکومت بنانے میں ناکامی کے بعد ان کے سب سے بڑے حریف بینی گینٹس کو حکومت سازی کی دعوت دی تھی۔ اسرائیلی پارلیمان کے پاس اب اکیس دن ہیں، جس میں اسے نئے قائد ایوان کا فیصلہ کرنا ہے، بصورت دیگر ملک میں نئے انتخاب...

اسرائیل میں ایک سال کے دوران تیسری مرتبہ انتخابات کی راہ ہموار

امریکی کانگریس سے ہانگ کانگ کے شہریوں کی حمایت میں بل منظور وجود - جمعه 22 نومبر 2019

امریکی کانگریس کے دونوں ایوانوں نے ہانگ کانگ کے شہریوں کے حقوق کی حمایت میں بل منظور کر لیا جس کے بعد امریکا اور چین کے درمیان جاری تجارتی مذاکرات پر سوالیہ نشان لگ گیا ہے ۔غیر ملکی میڈیاکے مطابق دونوں ایوانوں نے ہانگ کانگ کی سیکیورٹی فورسز کے زیر استعمال آنسو گیس، ربڑ کی گولیاں اور دیگر ساز و سامان کی فروخت پر پابندی کا قانون بھی منظور کیا۔ہانگ کانگ کی سیکیورٹی فورسز چھ ماہ سے جاری مظاہروں کے دوران آنسو گیس اور ربڑ کی گولیوں کا استعمال کر رہی ہے ۔کانگریس سے منظوری کے بعد بل ...

امریکی کانگریس سے ہانگ کانگ کے شہریوں کی حمایت میں بل منظور

بھارت نے ہزاروں کشمیریوں کی گرفتاری کا اعتراف کر لیا وجود - جمعرات 21 نومبر 2019

جنت نظیر وادی کو بھارت نے دنیا کی سب سے بڑی جیل بنا دیا۔ 109روز سے جاری کرفیو اور لاک ڈائون کے دوران بھارتی درندے کشمیری بچوں کو اٹھا کر لے جاتے ہیں۔ ہزاروں افراد کی گرفتاری کا بھارت نے خود اعتراف کر لیا۔ عالمی تنظیموں کی رپورٹس نے بھی مودی سرکار کی فسطائیت کا پردہ چاک کر دیا۔مقبوضہ وادی میں زندگی آج بھی قید ہے ، مسلسل لاک ڈائون کے باعث حالات انتہائی خراب ہیں، 109 روز سے جاری بربریت بھی حوصلے پست نہ کر سکی، مظالم کے باوجود کشمیریوں کا عزم جوان ہے ۔بھارت کے وزیر مملکت برائے دا...

بھارت نے ہزاروں کشمیریوں کی گرفتاری کا اعتراف کر لیا

ناروے میں اسلام مخالف ریلی ، توہین قرآن کی جسارت کرنے والے ملعون پر حملہ وجود - جمعرات 21 نومبر 2019

ناروے میں اسلام مخالف ریلی میں توہین قرآن کی جسارت کرنے والے ملعون شخص پر مسلم نوجوانوں نے حملہ کردیا۔ناروے کے شہر کرسٹین سینڈ میں قرآن کی توہین کا افسوس ناک واقعہ پیش آیا ہے ۔ اسلام مخالف تنظیم (سیان)کے کارکنوں نے ریلی نکالی جس میں قرآن کی شدید بے حرمتی کی گئی۔ لیکن ناروے کی پولیس خاموش تماشائی بنی رہی اور تنظیم کے سربراہ لارس تھورسن کو روکنے کی کوئی کوشش نہ کی۔قرآن کی توہین کو وہاں موجود مسلمان نوجوان برداشت نہ کرسکے اور سبق سکھانے کے لیے اس پر حملہ کردیا۔ پہلے ایک نوجوان ر...

ناروے میں اسلام مخالف ریلی ، توہین قرآن کی جسارت کرنے والے ملعون پر حملہ

ایران کیساتھ جنگ نہیں چاہتے ، دفاع کیلئے ہر پل تیار ہیں،شاہ سلمان وجود - جمعرات 21 نومبر 2019

سعودی عرب کے فرمانروا شاہ سلمان نے کہاہے کہ ریاض تہران کے ساتھ جنگ نہیں چاہتا مگر اپنے دفاع کرنے کے لئے ہر پل تیار ہے ۔شوریٰ کونسل سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ عالمی برداری ایران کے میزائل اور ایٹمی پروگرام کو روکنے میں کردار ادا کرے ، اپنا دفاع کے لئے انتہائی اقدام اٹھانے میں ایک لمحہ کی تاخیر نہیں کی جائے گی۔شاہ سلمان کا کہنا تھا کہ سعودی تیل تنصیبات پر حملے میں ایرانی اسلحہ استعمال ہوا، عالمی برادری ایران کے ایٹمی اور میزائل پروگرام کوروکنے میں کردار ادا کرے ۔سعودی ...

ایران کیساتھ جنگ نہیں چاہتے ، دفاع کیلئے ہر پل تیار ہیں،شاہ سلمان

ملکہ الزبتھ کے چھوٹے بیٹے شہزادہ اینڈریو کا شاہی ذمہ داریوں سے علیحدگی کا اعلان وجود - جمعرات 21 نومبر 2019

ملکہ الزبتھ کے چھوٹے بیٹے شہزادہ اینڈریو نے اپنی شاہی ذمہ داریوں سے علیحدگی کا اعلان کر دیا۔غیرملکی خبررساں ایجنسی کے مطابق برطانوی ملکہ نے ڈیوک آف یارک کو ان کی سرکاری خدمات سے سبکدوش ہونے کی اجازت دے دی، اس بات کی تصدیق شہزادہ اینڈریو کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان میں بھی ہوئی جس میں انہوں نے بچوں سے جنسی جرائم کے مجرم جیفری ایپسٹین سے تعلقات کا معاملہ منظر عام پر آنے سے متعلق بتایا۔شہزادہ اینڈریو برطانوی ملکہ الزبتھ کے دوسرے بیٹے اور برطانیہ کے تخت و تاج کے امیدواروں ...

ملکہ الزبتھ کے چھوٹے بیٹے شہزادہ اینڈریو کا شاہی ذمہ داریوں سے علیحدگی کا اعلان

سب سے زیادہ تارکین وطن بچے امریکا میں قید ہیں، اقوام متحدہ وجود - جمعرات 21 نومبر 2019

اقوام متحدہ کی رپورٹ آزادی سے محروم کر دئیے گئے بچوں سے متعلق اقوام متحدہ کا عالمی جائزہ میں انکشاف کیا گیا ہے کہ دنیا بھر میں سب سے زیادہ تارکین وطن بچے امریکی جیلوں میں قید ہیں۔بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق اقوام متحدہ کی ایک تازہ رپورٹ میں امریکی جیلوں میں ایک لاکھ سے زائد تارکین وطن بچوں کے قید ہونے کا انکشاف کیا گیا ہے جبکہ ان بچوں کے والدین بھی کسی نہ کسی جیل میں قید ہیں اور انہیں ایک دوسرے سے ملنے کی اجازت بھی نہیں دی جاتی ہے ۔انسانی حقوق کیلئے کام کرنے والے عال...

سب سے زیادہ تارکین وطن بچے امریکا میں قید ہیں، اقوام متحدہ

بابری مسجد کیس میں فیصلے کے خلاف اپیل کا اعلان وجود - منگل 19 نومبر 2019

بھارت میں ایک مسلم گروپ نے ایودھیا میں بابری مسجد کی زمین ہندوں کو دیے جانے سے متعلق حالیہ فیصلے کے خلاف ملکی سپریم کورٹ میں اپیل دائر کرنے کا اعلان کیا ہے۔ بھارتی ٹی وی کے مطابق دانشوروں اور مختلف تنظیموں کے گروپ آل انڈیا مسلم پرسنل لاء بورڈ کے ایک رکن سید قاسم الیاس نے ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ عدالت عظمیٰ کے فیصلے میں واضح خامیاں ہیں۔ اس سلسلے میں مرکزی مسلم فریق سنی وقف بورڈ نے عدالت کا فیصلہ تسلیم کرتے ہوئے اسے چیلنج نہ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

بابری مسجد کیس میں فیصلے کے خلاف اپیل کا اعلان