بائیو آملہ شیمپو کے مالکان سے ڈسٹری بیوٹرز کی خریدو فروخت کے لیے ٹریڈ مارک سرٹیفکیٹ ، سیلز ٹیکس انوائسزطلب

بائیو آملہ شیمپو بنانے والی کمپنی فارول کاسمیٹکس (تحلیل شدہ)کے مالکان سے ملک بھر کے بائیو آملہ شیمپو کے ڈسٹری بیوٹرز نے ’’ شیمپو‘‘ کی خریدو فروخت کے لیے بائیو آملہ شیمپو کا ٹریڈ مارک وکاپی رائٹ سرٹیفیکٹس اور سیلز ٹیکس انوائسزطلب کرلی ،کمپنی مالکان کی ڈسٹری بیوٹرز کو زبانی یقین دہانی کی کوشش ناکام، آپس کے جھگڑوں میں اُلجھے ہوئے کمپنی مالکان ذکاء الدین شیخ اور کاشف ضیاء کا متعلقہ ادارے سے بائیو آملہ شیمپو کے ٹریڈ مارک سرٹیفیکٹ کے حصول کے لیے’’ ایجنٹوں ‘‘سے مشترکہ رابطہ ،ڈسٹری بیوٹرز کے سروں پر متعلقہ اداروں کے ممکنہ چھاپوں کا خوف منڈلانے لگ گیا ۔ڈسٹری بیوٹرز کا کمپنی مالکان سے جعلی بائیو آملہ شیمپو بنانے والے مینو فیکچرز اور ڈسٹری بیوٹرز کے خلاف قانونی کاروائی کرنے کا مطالبہ بھی زور پکڑ گیا ۔فارول کاسمیٹکس کمپنی (تحلیل شدہ) کے اندرونی ذرائع کے مطابق جرأت میں بائیو آملہ شیمپو کے ٹریڈ مارک کی حقیقت اور ٹیکس چوری کے حوالے سے شائع ہوئی خبروں کے بعد ملک بھر میں بائیو آملہ شیمپو کی خرید و فروخت کرنے والے ڈسٹری بیوٹرز کے سروں پر متعلقہ اداروں کے ممکنہ چھاپوں کا خوف منڈلانے لگ گیا ہے اور اس خوف سے نجات حاصل کرنے کے لیے ڈسٹری بیوٹرز کی جانب سے تحلیل شدہ کمپنی کے مالکان کاشف ضیاء اور محمد اویس صلاح الدین سے بائیو آملہ شیمپو کا ٹریڈ مارک و کاپی رائٹ سرٹیفیکٹس کے ساتھ ساتھ سیلز ٹیکس انوائسز بھی طلب کی جانے لگی ہے جس پر کمپنی مالکان ڈسٹری بیوٹرز کو زبانی طور پر یقین دلارہے ہیں کہ ان کے پاس ٹریڈ مارک سرٹیفکیٹ ہے، تاہم یہ زبانی کوشش ناکام ہوگئی ہے۔

ذرائع کے مطابق ٹریڈ مارک سرٹیفیکٹ کے بغیر بائیو آملہ شیمپو بنانے والی کمپنی فارول کاسمیٹکس کے مالکان نے بائیو آملہ شیمپو کے کاپی رائٹ رکھنے والے اپنے چچا ذکاء الدین شیخ سے اپنی دیرینہ کارباری دشمنی کو بالائے طاق رکھتے ہوئے ٹریڈ مارک سرٹیفیکٹ کے حصول کے لیے مشترکہ کوششیں شروع کردی ہیں۔ اس ضمن میں ذرائع کا دعویٰ ہے کہ کمپنی مالکان نے ٹریڈ مارک سرٹیفکیٹ کے حصول کے لیے مخصوص ایجنٹوں سے رابطہ بھی کیا ہے ۔ذرائع کے مطابق بائیو آملہ شیمپو کے ڈسٹری بیوٹرز کی جانب سے کمپنی مالکان سے جعلی بائیو آملہ بنانے والے مینو فیکچرنگ اور ڈسٹری بیوٹرز کے خلاف قانونی کارروائی کرنے کا مطالبہ بھی زور پکڑتا جارہا ہے کہ جب تک جعلی بائیو آملہ کی ترسیل کو مارکیٹ میں نہیں روکا جائے گا اس وقت تک بائیو آملہ شیمپو کی ملکیت سمیت دیگر متنازع معاملات حل نہیں ہونگے ۔واضح رہے کہ جعلی بائیو آملہ بنانے والے مینو فیکچرز اور ڈسٹری بیوٹرز کو تحلیل شدہ کمپنی میں موجود کالی بھیڑوں کی مدد حاصل ہے، جبکہ بعض جعلی مینو فیکچرز اور ڈسٹری بیوٹرز ایسے ہیں جو ماضی میں فارول کاسمیٹکس کمپنی (تحلیل شدہ) کے ملازم رہ چکے ہیں ۔

Electrolux