وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

استقبال کتب

اتوار 03 جون 2018 استقبال کتب

لِقا (شعری مجموعہ)
نام کتاب:لِقا(شعری مجموعہ)
نامِ شاعر:حسنین بخاری
موضوع:شاعری
ضخامت:186 صفحات
قیمت: 300 روپے
ناشر:الحمد پبلی کیشنز، لاہور
مبصر: مجید فکری

حسنین بخاری کی شاعری کے باب میں محترم گلزار بخاری نے اپنے تبصرے میں لکھا ہے کہ شاعری شعور کے ساتھ ساتھ لاشعوری جذبات پر مشتمل ہوتی ہے اور کسی معاشرے کی ترجمان بھی، اور اب تک جو شاعری ہوچکی ہے اس میں اتنی گنجائش نہیں ہے کہ مزید کچھ لکھا جائے لیکن امکانات کا شعور کبھی نہیں رکتا۔اسی لئے شاعری کا سفر ہنوز جاری ہے۔ انگریزی ادب کے ساتھ ساتھ اردو ادب نے اپنے پیچھے وہ نام چھوڑے ہیں کہ جن کے بغیر شاعری پر کچھ لکھتے ہوئے ان شعراء کا تذکرہ لازمی ہوجاتا ہے۔
پیش نظر کتاب ’’لِقا‘‘ کے نام سے ہماری نظروں کے سامنے ہے اور ہم اسے پڑھنے اور اس سے محظوظ ہونے کا شرف حاصل کررہے ہیں۔ اس سے قبل حسنین بخاری یہ بھی انکشاف کرتے ہیں کہ ان کے نو شعری مجموعے منظر عام پر آچکے ہیں۔ ظاہر ہے ان مجموعہ ہائے کلام میں انہوں نے اپنی فکر کی جولانیاں بھی دکھائی ہوں گی اور اب اس مجموعہ شعری کا نام ’’لِقا‘‘ رکھ کر بھی ایک عام قاری کو چونکا سادیا ہے۔

’’لِقا‘‘ یہ لفظ قرآن کی سورۃ القدر میں جو شب قدر کو ہزار راتوں سے بہتر اور افضل بتانے کے لئے اللہ نے ’’لیلۃ القدر خیر من الف شھر‘‘ کہا ہے اس لفظ سے یعنی ’’اَلف‘‘ سے اخذ کیا گیا ہے جس کے معنی ہزار کے ہیں اور چونکہ ان کی یہ غزل ہزار اشعار پر مشتمل ہے لہٰذا انہوں نے اس مجموعہ کا نام بھی ’’لِقا‘‘ تجویز کرلیا۔

آپ نے ہزار اشعار کا مجموعہ شعری عشقِ الٰہی میں رقم کیا ہے یہ آپ کی دنیا و آخرت کے لئے ایک تحفۂ خاص اور توشۂ آخرت بھی ہے۔ بقول گلزار بخاری کے وہ اس شعری سفر میں ناصر کاظمی کی پہلی بارش میں بھی بھیگے ہیں اور صابر ظفر کی طویل غزل ’’سرِ بازار می رقصم ‘‘ سے بھی فیضیاب ہوئے ہیں اور خود گلزار بخاری نے ہر ہر قدم پر ان کا ساتھ دیا ہے جبکہ جس خانوادۂ علم و تصوف سے ان کا تعلق ہے وہ بھی ان کی معاون و مددگار رہی ہے دعا ہے کہ ان کا شاہکار نامہ مقبول ہو۔
۰۰۰
ہمارے دُکھ کتنے مشترک ہیں
نام کتاب:ہمارے دکھ کتنے مشترک ہیں
موضوع:شاعری
شاعر:سرورارمان
سرورق:عمران شناور
ضخامت:160 صفحات
قیمت:400 روپے
ناشر:زربفت پبلی کیشنز، لاہور
مبصر: مجید فکری
میں سرور ارمان کو نہیں جانتا مگر شاعری حوالہ بن جاتی ہے کسی بھی شاعر کے تعارف کا …! سو ان کی شاعری کا مجموعہ میری نظروں کے سامنے ہے۔ کسی بھی کتاب کو کھولنے سے پہلے جو چیزنظر نواز ہوتی ہے وہ کتاب کا سرورق ہوتا ہے جسے دیکھ کر لا محالہ اسی محاورہ کے مصداق کہ ’’خط کا مضمون بھانپ جاتے ہیں لفافہ دیکھ کر‘‘ میں نے جو کچھ سمجھا، یہی کچھ میرے پیش نظر بھی ہے اور میں نے بخوبی یہ اندازہ لگالیا ہے کہ سرور امان ایک ترقی پسندانہ ذہن کے مالک ہیں اور وہ مارکس کے نظریے سے بھی متاثر ہیں۔ چونکہ وہ اشتراکی ذہن رکھتے ہیں اس لئے ان کے اشعار میں وہی فکر کارفرماہوگی جو اشتراکیت کے پیروکار حضرات کے پیش نظر ہوتی ہے۔

میں نے سرورق دیکھنے کے بعد کتاب کھولی تو کتاب کے اندرونی دونوں فلیپ پر ان کی ایک ایک غزل نمایاںنظر آئی اور میں لازماً ان کی غزل کے آخری شعر پر رک گیا جو میرے بیان کردہ اوپر والے اظہار کے عین مطابق نکلا۔ وہ شعر یہ تھا:
اس ملک سے غربت کبھی مِٹ ہی نہیں سکتی
اس ملک کا دستور وڈیروں کی طرف ہے

یہ شعر خالصتاً ان کے انقلابی منشور اور موجودہ ظلم و ستم کے خلاف جو تحریک آج سے کئی صدیوں پہلے پَلی بڑھی اور پھر عوام کے ذہن و خیال کا حصہ بن گئی وہ تھی مارکسیت یا مارکس کے نظریات پر مشتمل تحریک ، مارکس نے اپنے گردو پیش جو ظلم و ستم دیکھا، حکمرانوں ، بادشاہوں اور ملوکیت کا جو بازار گرم دیکھا تو اس سے وہ اتنا بدظن اور مخالف ہوگیا کہ وہ اس دور میں ایک معروف نظریاتی مفکر بن کر اُبھر اور اس نے ان حالات کے خلاف بغاوت کردی بالآخر ایک وقت ایسا آیا کہ اس کے بے شمار پیروکار (Followers) پیدا ہوگئے۔ یہی نہیں آج بھی دنیا میں اس کے نظریے کے پرچار کرنے والے موجود ہیں۔
انہوںنے غزل کے پیرائے میں گفتگو ضرور کی ہے اور وہ غزل کے مفہوم و مطلب سے پیچھے بھی نہیں ہٹے چونکہ وہ جانتے ہیں کہ حسن و عشق کے معاملات ہمیشہ سے چلتے چلے آئے ہیں اس لئے اس کے اشارے بھی ان کے کلام میں موجود ہیں کیونکہ یہی تو غزل کا مرکز بنے رہے ہیں یہی حسن ہے جس کا ہر عاشق مزاج شاعر متوالا رہا ہے۔حقیقت بھی یہی ہے کہ غزل میںیہی کچھ دیکھا جاتا رہا ہے مگر قطع نظر اس کے جدید طرز شاعری میں صرف لب و رخسار کی باتیں نہیں ہوتیں بلکہ غزل اپنی اصطلاحی معنوں میں دیکھی جانے لگی ہے۔ قدیم و جدید غزل میں یہی ایک امتیاز تو ہے کہ جو کسی شاعر کو جدید شاعراور قدیم شاعر کے ناموں سے پہچان کراتا ہے وگرنہ غزل کے لغوی معنوں کے بطور ہمیشہ سے اس کا موضوع صرف عورت سے باتیں کرنا رہ گیا ہے۔
آئیے سرورارمان کے کچھ اشعار سے استفادہ کریں مگر اس سے پہلے شاعری سے متعلق خود ان کا اپنا مطمح نظر سن لیں جو انہوں نے اپنے پیش لفظ میں کہا ہے:

’’جہاں تک میری شاعری کا تعلق ہے اس کے حوالے سے خامہ فرسائی کی مجھے قطعی ضرورت نہیں کیونکہ اس کے معیار کی بلندی اور پیمائش کے لئے وقت اور تاریخ سے بڑھ کر کوئی پیمانہ نہیں۔ میرا کام تو اپنے حصے کا چراغ جلانا ے سو میں تادم آخر جلاتا رہوں گا۔‘‘

کتاب کے اندرونی فلیپ پر پیش کردہ اک اور غزل کا آخری شعر جو آج کل ہماری بے بسی کا منہ بولتا ثبوت بھی بن سکتا ہے کہ گرمی کی شدت حبس کا عالم اس پر بجلی کا چلے جانا اک عذاب میں مبتلا کردیتا ہے او رناچار لوگ اپنے گھروں کی چھت پر چلے جاتے ہیں کہ کم سے کم وہاں قدرتی ہوا کا گزر تو ہوسکے گا۔ مگر جس کا پکا گھر ہی نہ ہو یا اسے چھت ہی میسر نہ ہو تو وہ بھلا کہاں بسیرا کرے گا۔ہوسکتا ہے یہ مضمون بھی ان کی شاعری میںکہیں نہ کہیں موجود ہو یا اس مجموعہ ہائے کلام میں نہیں تو دیگر کسی مجموعے میں شامل ہو۔ المختصر وہ شعر کچھ یوں ہے:

کھلی چھتوں پہ رہے لوگ رات بھر بے چین
بلا کا حبس مِرے شہر کی فضا میں رہا
آئیے ان کے کچھ اوراشعار سے بھی استفادہ کرتے ہیں:
تری تلاش میں جب بھی اٹھے قدم میرے
کبھی خرد کبھی دیوانگی نے روک لیا
زندگی بن کے کبھی دل میں اُترتا ہوا شخص
زندگی بھر کے لئے دل سے اُتر جاتا ہے
یہ دوستی بھی عجب ہے کہ ایک بار ملے
پھر اس کے بعد کہیںعمر بھر دکھائی نہ دے

یہ اشعار خالصتاً غزل کے اشعار ہیں اس میں وفا،بے وفائی، قربت او رپھرجدائی کے شکوے نمایاں ہیں مگر یہاں موضوع پھر بھی شاعر کی اس خصوصی شاعری کا ہے جو جا بجا ان کے اشعار میں موجود ہے۔ خاص کر یہ شعر دیکھیں:
مل جائے نجات ان کو کہیں ظلمتِ شب سے
لوگوں کی نظر سُرخ سویروں کی طر ف ہے
کچھ اور انقلابی شعر:
چند اشیائے ضرورت کو ترستے ہیں لوگ
آخری جنگ کا اعلان تو کرسکتے تھے
ہم اہلِ زر کے جشن شب و روز کے لئے
مصروف کارِزارِ مشقت ہیں اور بس
انہیں تو قتل پر بھی شہرتیں انعام ملتی ہیں
مؤثر ضابطے قانون کے کب ہیں وڈیروںپر
ان اشعار کے علاوہ متعدد کلام عنوانات کے تحت پیش کیا گیا ہے مثلاً ’’خواب پہروں ہمیں جگاتے ہیں‘‘، ’’غبارے بیچنے والا‘‘،’’ قید بامشقت‘‘ اور ’’ہم اپنے دُکھ کہاں رکھیں‘‘ وہ پڑھنے والی نظمیں ہیں جن سے لہو گرمایا جاسکتا ہے اور ہم یہ کہنے میں حق بجانب ہیں کہ سرور امان عوام کے دکھ درد ان کے مصائب و آلام ان پر روزوشب بیتنے والے مظالم اور اس سے نبرد آزما عوام ان کے موضوعاتِ شاعری کا حصہ ہیں تو انہوں نے خود کو ’’ہمارے دکھ درد کتنے مشترک ہیں‘‘ کہہ کر یہ دیوان مرتب کیا ہے۔
ڈاکٹر خیال امروہوی
(شخصیت اور شاعر)
نام کتاب:ڈاکٹر خیال امروہوی …شخصیت اور شاعری
موضوع:شخصیت اور شاعری
مصنف:ریاض راہی
ضخامت:168 صفحات
قیمت:500 روپے
ناشر:مثال پبلشرز، فیصل آباد
مبصر: مجید فکری

پیش نظر کتاب ڈاکٹر خیال ؔ امروہوی کی شخصیت اور شاعری پر ایک مکمل اور مستند دستاویز کی صورت میں ہمارے سامنے ہے۔ اتنی گہرائی اور گیرائی کے ساتھ ایسی اعلیٰ کتاب مرتب کرنا یقینا ایک خوش آئند اقدام ہے۔ وگرنہ ڈاکٹر صاحب کی پُر وقار شخصیت کا احاطہ کرنا بڑا امرِ مشکل نظر آتا تھا کیونکہ ڈاکٹر صاحب کی شخصیت کا ہم جیسے رائٹرز پر ایسا رُعب طاری ہے کہ ان کی شخصیت نگاری پر کچھ لکھتے ہوئے بڑی احتیاط لازم ہے۔

ڈاکٹر صاحب کئی دہائیوں سے شعر و ادب پر چھائے رہے اگر انہیں اردو ادب و شاعری کا بابا آدم کہا جائے تو غیر مناسب نہ ہوگا۔آپ کے لاتعدا د شاگرد اب بھی مطلع ٔ ادب پر اپنی جولانیاں دکھاتے نظر آتے ہیں۔

پیش نظر کتاب ایک طرح سے پروفیسر ریاض راہی کے ناقدانہ شعور کی غماز ہے اور انہوں نے بڑی تفصیل اور وضاحت کے ساتھ ڈاکٹر صاحب کی شخصیت، افکار و نظریات اور ان کا اسلوب نگارش بڑی خوبی اور اس کے زمانۂ عصرپر ہونے والے اثرات کا جائزہ لیا ہے۔ چونکہ ڈاکٹر صاحب ایک ترقی پسند مارکسٹ تھے ان کے لہجہ میں گداز کم اور احتجاج و کرختگی زیادہ ہے۔ یہ ضرورہے کہ ان کی تخلیقات پڑھنے والے کو اپنا گرویدہ ضرور بنالیتی ہیں۔اسی لئے ریاض راہی کی کوشش رہی ہے کہ وہ ڈاکٹر صاحب کے بنیادی تصورات اور افکار کو سمجھانے کے لئے مؤثر ذریعۂ نگارش اختیار کریں جو خود ڈاکٹر صاحب کا اپنا طرزِ خاص تھا چونکہ وہ فارسی اور عربی سے بھی واقف کار تھے اس لئے ڈاکٹر صاحب کے الفاظ کبھی مانوس اور کبھی غیر مانوس بھی تھے۔ پروفیسر ریاض نے یہ تمام خصوصیات بیان کرتے ہوئے اپنا اندازِ نگارش بڑا سادہ اور عام فہم رکھا۔ وہ خود فرماتے ہیں کہ ’’ڈاکٹر خیال ایسے انقلابی شاعر، ادیب ، محقق، مترجم، سماجی مصلح اور دانشور تھے جنہوں نے سینکڑوں افراد کی ذہنی اور فکری آبیاری کی۔ انہیں سماجی اور طبقاتی شعور سے آشنا کیا اور فکری محاذ پر سماجی ہی نہیںرجعت پسندانہ قوتوں سے محاذ آرائی کا حوصلہ بھی بخشا۔‘‘
یہ بات میں نے یوں محسوس کی ہے کہ ان کا ذوقِ شاعری غزل اور نظم دونوں میں یکساں تھا۔

اسی لیے ڈاکٹر صاحب نے زندگی کے متنوع پہلو اور عصری آشوب کا برملا اظہار کیا ہے اور طبقاتی معاشرہ اور اس سے جنم لینے والی نفسیاتی الجھنوں کو بھی اپنی نظم کے اندر توجہ طلب مسائل کے طو رپر خوبصورت انداز میں پیش کرتے ہوئے اپنے انقلابی پروگرام کا پرچار بھی کردیا ہے۔چونکہ وہ جوش ؔسے بہت متاثر ہیں اسی لئے ان کا ذہن بھی انقلابی آواز اٹھانے والی شخصیت کے طور پر کیا جاتا ہے۔

گویا ڈاکٹر صاحب کی شاعری اپنے عصری آشوب کی ترجمان ہے اور سماج کے انقلاب و ارتقاء کی نمائندہ بھی…!
یہی نہیں بلکہ وہ حبِ رسولؐ سے بھی سرشار نظر آتے ہیں او ران کی بیشتر نعتیں، منقتب وغیرہ بھی منظر عا م پر آچکی ہیں جس سے یہ اندازہ لگانا بھی آسان ہے کہ ان کے نزدیک جذبہ و وجدان، تفہیمِ رسالت میں کامیابی سے ہمکنار نہیں کرسکتا کیونکہ یہ حضور پاکؐ کی ذاتِ والا صفات ہی ہے جس نے تمام انسانوں کو وہم و گمان کی شبِ یلدا سے نکال کر ایمان و عقل کی اس سرحد ِ ادراک میں شامل کیا جو خدائی جلووں سے متغیر ہے۔
صرف جذبے سے تِرے وصف کا امکان نہیں
محورِ عقل ہے تو مرکزِ وجدان نہیں
ڈاکٹر خیال کی نظم نگاری بھی منفرد اور اچھوتے اندازِ دلکشی کے مناظر پیش کرتی ہے او راپنے پڑھنے والوں کو اپنی طرف کھینچتی بھی ہے وگرنہ پھر ایک مارکسیت پرست شاعر عوام کے دلوں میں کیسے گھر کرسکتا ہے۔
اب ذرا ان کی نظم و غزل میں جو انوکھا اندازِ بیان تھا ا س کا ہلکاسا عکس ان اشعار کے ذریعے ملاحظہ فرمائیے:
غزل کا شعر
بہت ہی خاص ہیں اوقات اس کے ملنے کے
وہ خوش جمال جو اکثر دکھائی دیتا ہے
نظم کے اشعار
گھر میں بہنوں کی وہ غم آلود آنکھیں الاماں
باپ بوڑھا ، چھوٹے بھائی مدرسوں کے درمیاں
سب کی امیدوں کا سورج اک جواں بے روزگار
آہ اے مجبور انساں آہ اے پروردگار


متعلقہ خبریں


ایران کو پوری طاقت سے جواب دیں گے ،امریکی وزیر دفاع وجود - جمعرات 12 دسمبر 2019

امریکی وزیر دفاع مارک ایسپر نے ایوان نمائندگان کی آرمڈ فورس کمیٹی کو بتایا کہ ان کا ملک اپنے دفاع کو مستحکم کرنے اور اپنے اتحادیوں کو ایران کے خطرات کا مقابلہ کرنے کا اہل بنانا چاہتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ اگر ایران ہمارے مفادات یا افواج پر حملہ کرتا ہے تو ہم فیصلہ کن طاقت کے ساتھ جواب دیں گے ۔ادھر امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے گزشتہ روز کہا تھا کہ واشنگٹن ایران پر نئی پابندیوں کا اعلان کرنے کی تیاری کررہا ہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ ایران کے مختلف اداروں، کمپنیوں اور افراد کے خل...

ایران کو پوری طاقت سے جواب دیں گے ،امریکی وزیر دفاع

ٹرمپ کا یہود مخالف بائیکاٹ روکنے کیلئے صدارتی حکم نامہ جاری وجود - جمعرات 12 دسمبر 2019

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے کالج کیمپسز میں یہودیوں کی مخالفت اور اسرائیل کا بائیکاٹ روکنے کے لیے نیا صدارتی حکم نامہ جاری کردیا ہے ۔ٹرمپ کے اس متنازع اقدام کے تحت ایسے تعلیمی اداروں کی حکومتی امداد روکی جاسکے گی جو یہودی اور اسرائیل مخالف واقعات کی روک تھام میں ناکام رہیں گے ۔صدارتی حکم نامے کے تحت محکمہ تعلیم کالج کیمپس میں یہود مخالف عناصر کے خلاف براہ راست کارروائی کر سکے گا۔اس ایگزیکٹو آرڈر کے تحت حکومت کو بحیثیت نسل، قوم یا مذہب یہودیت کی تشریح کی اجازت ہوگی ۔

ٹرمپ کا یہود مخالف بائیکاٹ روکنے کیلئے صدارتی حکم نامہ جاری

امریکا کا افغانستان میں فوج کو محدود کرنے پر غور وجود - جمعرات 12 دسمبر 2019

امریکا افغانستان میں اپنے فوجیوں کی تعداد کو کم کرنے پر غور کررہا ہے ۔ جس کے لئے حکام کئی طریقہ کار کا جائزہ لے رہے ہیں۔چیئرمین جوائنٹ چیفس آف اسٹاف جنرل مارک ملی نے کہا ہے کہ افغانستان میں دہشتگردوں سے لڑنے کے لئے امریکی فوجیوں کی تعداد کم کی جائیگی، تاہم انہوں نے حتمی تعداد نہیں بتائی۔انہوں نے مزید کہا کہ ہمارے پاس اختیارات ہیں۔ اس وقت افغانستان میں امریکی فوجیوں کی تعداد 13ہزار ہے جن میں سے 5 ہزار سیکورٹی سے متعلق آپریشن میں حصہ لے رہے ہیں۔ باقی اہلکار افغان سیکورٹی فورسز ...

امریکا کا افغانستان میں فوج کو محدود کرنے پر غور

ایردوان کے اقدامات ترکی کیلئے تکلیف دہ نتائج کا باعث بن سکتے ہیں، امریکی سینیٹر وجود - جمعرات 12 دسمبر 2019

امریکی سینیٹ کی خارجہ تعلقات کمیٹی نے ترکی پر پابندیاں عائد کرنے کے لییایک بل پر رائے شماری کے بعد ریپبلکن سینیٹر جیمز رچ نے کہا ہے کہ ترک صدر رجب طیب اردوآن نے ترکی کو خراب راستے پرڈال دیا ہے ۔مسٹر رچ نے 'العربیہ' اور 'الحدثہ' چینلز کو ایک بیان دیتے ہوئے کہا کہ صدر ایردوآن کے فیصلے اور اقدامات ترکی کے لیے تکلیف دہ نتائج کا باعث بن سکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ترکی غلط سمت کی طرف جارہا ہے ۔ ان کا کہنا تھا کہ انقرہ کے خلاف پابندیوں کے بل پر رائے شماری کے بعد ترک حکام کو اپنے فیصلو...

ایردوان کے اقدامات ترکی کیلئے تکلیف دہ نتائج کا باعث بن سکتے ہیں، امریکی سینیٹر

اسرائیلی مظالم کے عرب ممالک بھی ذمہ دار ہیں،طیب اردوان وجود - بدھ 11 دسمبر 2019

ترکی کے صدر رجب طیب ا ردوان نے خبردار کیا ہے کہ فلسطین اور مقبوضہ بیت المقدس کی صورت حال تیزی کے ساتھ مسلسل خراب ہوتی جا رہی ہے ، بعض عرب ممالک اور مغرب فلسطینیوں کے خلاف جرائم میں اسرائیل کی حوصلہ افزائی کرتے ہیں۔ اس طرح مغرب اور عرب ممالک بھی فلسطینیوں کے خلاف اسرائیلی ریاست کے جرائم میں قصور وار ہیں۔مرکزاطلاعات فلسطین کے مطابق استنبول میں اسلامی تعاون تنظیم کے سماجی امور سے متعلق وزارتی اجلاس سے خطاب میں انہوں نے کہا کہ ہم مسلمانوں کو یہ بات نہیں بھولنی چاہیے کہ القدس کا د...

اسرائیلی مظالم کے عرب ممالک بھی ذمہ دار ہیں،طیب اردوان

افغانستان، بگرام ایئر بیس پر حملہ، 2کار بم دھماکے ،30افراد زخمی وجود - بدھ 11 دسمبر 2019

افغانستان کے صوبے پروان کے بگرام ایئر بیس پر حملہ کیا گیا ہے جس کے دوران 2 بارود سے بھری گاڑیوں کے دھماکے ہوئے جس کے نتیجے میں 30افراد زخمی ہو گئے ۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق بارودی مواد سے بھری 2 گاڑیوں کے ذریعے غیر ملکی فوجی بیس کو نشانہ بنایا گیا ، جس کے قریب ہی ایک زیرِ تعمیر ہسپتا ل اور اسکول بھی موجود ہے ۔دھماکوں کے بعد فائرنگ شروع ہو گئی، جسے کے نتیجے میں 30 سے زائد شہری زخمی ہوئے ہیں، ہلاکتوں کا خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے البتہ تاحال کسی ہلاکت کی اطلاع نہیں ملی ہے ۔ا...

افغانستان، بگرام ایئر بیس پر حملہ، 2کار بم دھماکے ،30افراد زخمی

بھارتی موسیقار کا لے پالک بیٹی کے ہاتھوں سفاکانہ قتل وجود - بدھ 11 دسمبر 2019

بھارت میں مقامی موسیقار بینٹ رابیلو اپنی لے پالک بیٹی کے ہاتھوں قتل کر دیے گئے ، بیٹی نے باپ کو قتل کرنے کے بعد نعش کے متعدد ٹکڑے کیے جنہیں تین سوٹ کیسوں میں ڈال کر دریا میں بہا دیا۔بھارتی میڈیا کے مطابق گزشتہ روز مٹھی دریا کے قریب سے ایک سوٹ کیس ملا جس میں 59 سالہ بینٹ کے ہاتھ اور دوسرے جسم کے کٹے ہوئے اعضا برآمد کیے گئے ۔ممبئی پولیس کے مطابق یہ دوسرا سوٹ کیس ہے جو مٹھی دریا سے برآمد کیا گیا ہے ، پولیس نے بتایا کہ ممبئی کے علاقے مہاراشٹرا سے ایک سوٹ کیس بر آمد کیا گیا تھا جس...

بھارتی موسیقار کا لے پالک بیٹی کے ہاتھوں سفاکانہ قتل

سعودی عرب میں یتیم خانوں کی بندش کا فیصلہ وجود - بدھ 11 دسمبر 2019

سعودی وزیر محنت و سماجی بہبود احمد الراجحی کے مطابق سعودی عرب میں یتیم خانے بتدریج بند کردیئے جائیں گے ، یتیم بچوں کو کسی نہ کسی فیملی کے حوالے کیا جا ئے گا۔اخبار 24 کے مطابق احمد الراجحی نے بجٹ 2020 فورم سے خطاب کے دوران کہا کہ اب یتیموں کی نگہداشت مخصوص خاندانوں میں ہوگی، انہیں کسی یتیم خانے کے حوالے نہیں کیا جائے گا، یتیم بچوں کو مکمل گھر کا ماحول مہیا کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے ۔وزیر محنت و سماجی بہبود نے مزید کہا کہ وزارت نے سماجی کفالت نظام سے فائدہ اٹھانے والے 70 ہزار اف...

سعودی عرب میں یتیم خانوں کی بندش کا فیصلہ

برطانیا میں قبل از وقت الیکشن ،ووٹنگ آج ہو گی،55 مسلمان امیدوار شامل وجود - بدھ 11 دسمبر 2019

برطانیامیں بریگزٹ کے نام پر قبل از وقت الیکشن میں کنزرویٹو کا لیبر پارٹی سے کانٹے کا مقابلہ ہے ،پولنگ آج (جمعرات کو) ہو گی ، کنزرویٹو نے بیس اور لیبر پارٹی نے انیس پاکستانیوں کو میدان میں اتار دیا۔ غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق پارلیمان کی 650 نشستوں کیلئے 3 ہزار 322 امیدوار میدان میں ہیں، بریگزٹ کے نام پر برطانیا میں قبل از وقت الیکشن کے لیے ووٹنگ (آج) جمعرات کو ہو گی۔ پارلیمان کی چھ سو پچاس نشستوں کے انتخاب کیلئے 55 مسلمان امیدوار بھی شامل ہیں۔ کنزرویٹو نے بیس اور لیبر پار...

برطانیا میں قبل از وقت الیکشن ،ووٹنگ آج ہو گی،55 مسلمان امیدوار شامل

دبئی ایئرپورٹ، پلاسٹک مصنوعات آئندہ سال سے ترک کرنے کا فیصلہ وجود - بدھ 11 دسمبر 2019

دبئی انٹرنیشنل ایئرپورٹ اور دبئی ورلڈ سینٹرال کو یکم جنوری 2020 سے بتدریج ایک مرتبہ استعمال ہونے والی پلاسٹک مصنوعات پاک کردیا جائے گا۔دبئی ایئرپورٹ تجارتی امور کے ڈپٹی ایگزیکٹیو چیئرمین یوجین باری کے مطابق پلاسٹک کپ تیار کھانوں کے ڈبے ، قہوہ خانوں، ریستورانوں اور ہوائی اڈوں کے تجارتی مراکز پر استعمال ہونے والی پولیتھن کا سلسلہ ختم کر رہے ہیں۔آئندہ بارہ ماہ کے دوران یہ کام مکمل کرلیا جائے گا۔ مسافروںکے لیے مخصوص مقامات پر دیگر متبادل مصنوعات پیش کی جائیں گی۔یوجین باری نے کہا ...

دبئی ایئرپورٹ، پلاسٹک مصنوعات آئندہ سال سے ترک کرنے کا فیصلہ

خوب صورت عورتیں۔۔ (علی عمران جونیئر) وجود - بدھ 11 دسمبر 2019

دوستو،شادی کے بعد دنیا کی ساری خواتین ہی اچانک خوب صورت نظر آنے لگتی ہیں۔۔ اگر آپ نے شادی نہیں کی تو ابھی آپ کو اندازہ نہیں ہوگا، لیکن جیسے ہی آپ قبول ہے،قبول ہے،قبول ہے کی تین بار گردان کریں گے اچانک ہی آپ کے دماغ اور دل میں نجانے کون سا ایسا وائرس سرایت کرجائے گا کہ آپ کو نکاح نامے پر دستخط کے بعد شادی ہال میں موجود نہ صرف اپنی بیوی زہر لگنے لگے گی بلکہ تمام لڑکیاں مس یونیورس اور مس ورلڈ لگیں گی۔۔یہ بات ہم پوری ذمہ داری سے کہہ رہے ہیں جس کسی کوبھی شک ہے وہ فوری طور پر...

خوب صورت عورتیں۔۔ (علی عمران جونیئر)

نون لیگی سیاست کا فریب اور صحافت کا بھرم
( ماجرا۔۔محمد طاہر)
وجود - منگل 10 دسمبر 2019

اہلِ صحافت کے آزادیٔ اظہار اور تصورات کا بھرم دراصل سورج مکھی کا وہ پھول ہے جو شریف خاندان کی خواہشات و ضرریات کے سورج کے گرد گھومتا ہے۔ گزشتہ چار دہائیوں سے جاری فریب کا یہ کھیل اب دھیرے دھیرے ختم ہورہا ہے تو اہلِ صحافت اپنے کپڑے ڈھونڈتے پھر رہے ہیں۔ کوئی پوچھ رہا ہے کہ آخر شریف خاندان لندن میں کیوں براجمان ہے؟ نوازشریف نہیں تو شہبازشریف ہی کم ازکم اسلام آباد کو’’رونق‘‘ بخشیں، کوئی’’چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے‘‘کی حسرت آمیز التجائیں کر رہا ہے، کوئی چپ سادھے بیٹھ...

نون لیگی سیاست کا فریب اور صحافت کا بھرم <br>( ماجرا۔۔محمد طاہر)