وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

سرگودھا کی کرانہ پہاڑیوں میں قدرتی حسن سے مالامال چشمے اور جھیلیں

اتوار 13 مئی 2018 سرگودھا کی کرانہ پہاڑیوں میں قدرتی حسن سے مالامال چشمے اور جھیلیں

سرگودھا جغرافیائی لحاظ سے خوبصورت پہاڑیوں سے مالا مال ہے۔ کرانہ پہاڑیوں کا یہ سلسلہ سرگودھا کے علاقے شاہین آباد سے لے کر چنیوٹ تک پھیلا ہوا ہے۔ سرگودھا سے فیصل آباد روڈ پر جائیں تو ان پہاڑیوں کی تابناکی کا آنکھوں سے مشاہدہ کیا جا سکتا ہے۔ یہ پہاڑی سلسلے دیو مالائی حسن اور قصے کہانیوں کے وارث ہیں۔ انہی پہاڑیوں کی بدولت سرگودھا کو ایشیا کی سب سے بڑی اسٹون کرشنگ انڈسٹری ہونے کا اعزاز بھی حاصل ہے۔ سرگودھا کی انہی پہاڑیوں میں سے پھوٹنے والے چشمے اور جھیلیں جہاں اپنی خوبصورتی کی وجہ سے عوام کی توجہ کے مرکز ہیں، وہیں عوام ان کے اچانک معرض وجود میں آنے سے حیران ہیں۔ پہاڑیوں کے دامن میں مسکراتی یہ جھیلیں اور چشمے قدرت کی کاریگری کا منہ بولتا ثبوت ہیں۔ کرانہ پہاڑیوں میں جاری اسٹون کرشنگ کی وجہ سے بہت سی جگہوں پر پانی کی سطح بلند ہوگئی اور پہاڑوں کے بیچ سے رسنے والے پانی نے مختلف جگہوں پر چشموں اور جھیلوں کی صورت اختیار کرلی۔ایک ایسا ہی قدرتی چشمہ شاہین آ باد کی پہاڑیوں میں ہے جو ہر دیکھنے والے کو اپنی خوبصورتی کے جال میں جکڑ لیتا ہے، یہ چشمہ تفریح کے لیے مثالی جگہ ہے۔

سرگودھا شہر سے 20 کلو میٹر دور گورنمنٹ گرلز ہائی اسکول چک نمبر 123 جنوبی رْخ کے بالکل سامنے واقع یہ چشمہ اپنے نرالے حسن کی وجہ سے عوام میں بہت مقبول ہے۔ اسے ’’شاہینوں کی جھیل‘‘ بھی پکارا جاتا ہے۔ یہ قدرت کا انمول شاہکار گزشتہ دہائی میں گرد و نواح کی پہاڑیوں میں بے جا بارود کے استعمال اور بلاسٹنگ سے ہونے والی جغرافیائی تبدیلیوں کی وجہ سے وجود میں آیا۔ پہاڑوں کے بیچوں بیچ کھڑے چشمے کے پانی کو دیکھ کر سب حیران رہ جاتے ہیں کہ یہ پانی آیا کہاں سے۔ پانی کی مقدار میں اکثر اضافہ ہو جاتا ہے۔ گہرائی بھی خاصی زیادہ ہے۔ کئی سال گزرنے کے باوجود چشمہ خشک نہیں ہوا۔ یہ چشمہ چاروں طرف سے چٹانی پہاڑیوں میں گھرا ہوا ہے۔ دیکھنے والوں کو لگتا ہے کہ جیسے یہ زمین کا انمول ترین حصہ ہو۔ بڑی بڑی چٹانوں کے بیچ کھڑا چشمے کا سبز پانی قدرت کا طلسماتی کرشمہ محسوس ہوتا ہے اور اسے دیکھ کر ایسا محسوس ہوتا ہے کہ جیسے کوئی افسانوی منظر ہو۔ پہاڑوں کی ساخت ایسی ہے کہ ان پر چڑھنا آسان ہے۔ اونچائی پر جا کر سبز پانی پر نظر ڈالی جائے تو انسان خود کو کسی سمندری جزیرے یا پھر جادوئی وادی میں محسوس کرتا ہے۔

لوگوں کی ایک بڑی تعداد اس وادی نما چشمے کا رخ کرتی ہے۔ خاص طور پر یونیورسٹی کے طلبہ و طالبات بڑی تعداد میں پکنک اور تفریح کے لیے یہاں کا رخ کرتے ہیں۔ ویک اینڈ پر یہاں لوگوں کا ہجوم ہوتا ہے۔ اس چشمے کی خوبصورتی کا اندازہ اس بات سے بھی لگایا جا سکتا ہے کہ مشہور پاکستانی فلم ’’عشقِ خدا‘‘ کے ایک گانے کی شوٹنگ اسی مقام پرکی گئی، جبکہ دیگر بہت سی دستاویزی فلمیں بھی اس چشمے کے بارے میں بنائی گئی ہیں۔ نامی گرامی فوٹو گرافرز یہاں فوٹو گرافی کے لیے آتے رہتے ہیں۔ سیلفی فوبیا میں مبتلا نوجوانوںکے لیے یہ جگہ بہترین ہے، البتہ تفریح کے لیے آنے والے نوجوانوں کو احتیاط کا دامن ہاتھ سے نہیں چھوڑنا چاہیے۔ چند سال قبل کچھ نوجوانوں نے غیر دانش مندی کا ثبوت دیتے ہوئے پہاڑ کے اوپر سے چشمے کے پانی میں چھلانگ لگا دی، بدقسمتی سے نوجوان کسی نوکیلے پتھر پر جا کر گرا اور زندگی سے ہاتھ دھو بیٹھا۔ لہٰذا نوجوان یہاں تفریح کی غرض سے ضرورآئیں، لیکن خود کو کسی ایسے ایڈونچر میں مبتلا نہ کریں جس سے جان جانے کا خدشہ ہو۔

قدرت کی کاری گری سے وجود میں آنے والی ایک اور انتہائی خوبصورت جھیل فیصل آباد روڈ پر پْل 11 کے قریب چک نمبر 107 جنوبی میں ہے جس کو ’’Mysterious murky lake ‘‘ کے نام سے پکارا جاتا ہے۔ یہ وسیع و عریض جھیل اپنے نام کی طرح ہی پر اسرار ہے۔ چک 107 جنوبی کے آس پاس کچھ عرصہ قبل بلند وبالا پہاڑیاں ہوتی تھیں جنہیں کرشنگ کے ذریعے ختم کر دیا گیا۔ کرشنگ کا عمل آخری مراحل میں تھا کہ پہاڑی ٹکڑیوں کے آس پاس پانی قدرتی طور پر ابھرنا شروع ہوگیا۔ بڑھتے بڑھتے اس پانی نے ایک بڑی جھیل کی صورت اختیار کرلی۔ عوام کے لیے جھیل کا وجود میں آنا معجزے سے کم نہ تھا۔ روز بروز بڑھتے پانی کی وجہ سے کرشنگ کا عمل رک گیا اور پہاڑیوں کے کچھ حصے معدوم ہونے سے بچ گئے۔ شاید قدرت ان پہاڑیوں کا نام و نشان مکمل طور پر مٹانا نہیں چاہتی تھی اسی لیے یہاں جھیل بن گئی۔

مقامی لوگ بتاتے ہیں کہ بعض جگہوں پر اس جھیل کی گہرائی 50 فٹ تک بھی ہے۔ شام کے وقت جب پہاڑیوں کے درمیان سے جھانکتے سورج کی کرنیں چشمے کے پانی پر پڑتی ہیں تو ایک الگ ہی منظر دیکھنے کو ملتا ہے۔ پورا چشمہ سنہری کرنوں میں جگمگا رہا ہوتا ہے۔ انسان اس منظر میں کھو کر خود کو کسی دیومالائی داستان کا حصہ سمجھنے لگتا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ سارے جہاں کی خوبصورتی کچھ لمحوں کے لیے اس چشمے کے کنارے منجمد ہو گئی ہو۔ پہاڑیوں کے اوپر سے سورج کی زرد کرنیں جب شفاف پانی پر پڑتی ہیں تو پانی میں مزید کشش سی پیدا ہو جاتی ہے۔ خاص طور پر غروب آفتاب کا منظر مبہوت کر دینے والی خوبصورتی کا حامل ہوتا ہے۔ اور جب ان جھیلوں کا پانی چاندنی راتوں میں چاند کی دودھیا روشنی میں نہاتا ہے تو مزید مسحور کن ہو جاتا ہے، ایسا کہ جو دیکھنے والوں کا دل موہ لے، دھڑکنوں میں مدوجزر پیدا کر دے اورانسان چاہنے کے باوجود کشش سے نہ نکل پائے۔ ایسے درجنوں قابل دید نظارے ہیں کہ انسان گھنٹوں جھیل کنارے کسی چٹان پر بیٹھ کر خاموشی سے قدرتی حسن سے لطف اندوز ہوتا رہے۔قدرت کی صناعی دیکھیے کہ اس جھیل کے اندر بڑی تعداد میں مچھلیاں بھی پائی جاتی ہیں۔ جھیل کا پانی اکٹھا ہوتا گیا اور اس کے ساتھ ہی آبی حیات بھی اس جھیل میں پیدا ہونے لگی۔

مقامی لوگوں کے مطابق یہاں کچھ لوگوں نے مچھلیاں خرید کر چھوڑی تھیں جنہوں نے افزائش نسل کے ذریعے اپنی تعداد میں اضافہ کیا۔ رنگ برنگی مچھلیاں اس جھیل میں کثرت سے پائی جاتی ہیں جو جھیل کے حسن میں اضافے کا باعث تو ہیں ہی، اسی کے ساتھ عوام کے لیے بھی دلچسپی کا سامان کر رہی ہیں۔ تفریح کی غرض سے میں کئی مرتبہ اس مسحور کن جگہ جا چکا ہوں۔یہاں مجھے دو نوجوان رضوان نیازی اور محمد افتخار ملے جنہوں نے مجھے بہت متاثر کیا۔ یہ دونوں نوجوان بنیادی طور پر ڈرائیور ہیں، لیکن اس جھیل میں پائی جانے والی مچھلیوں سے بہت زیادہ محبت کرتے ہیں اور اس امر کو یقینی بناتے ہیں کہ کوئی بھی مچھلی بھوکی نہ مرے اور نہ ہی کوئی ان کا شکار کرے۔ وہ بلاناغہ مچھلیوں کو چارہ ڈالتے ہیں۔ جب میری ان سے ملاقات ہوئی تو وہ جھیل کنارے بیٹھے مچھلیوں کو روٹیوں کے چھوٹے چھوٹے ٹکڑے ڈال رہے تھے اور روٹی کا ٹکڑا کھانے کے لیے مچھلیوں کی دلچسپ اچھل کود جاری تھی۔ یہ بڑا قابل دید منظر تھا۔ کنارے پر مچھلیاں غول کی صورت اکٹھی تھیں۔ نوجوان جدھر کھانا پھینکتے، یہ اْدھر پہنچ جاتیں۔ جب تک مچھلیوں کا پیٹ نہیں بھر گیا، نوجوانوں نے اپنی سرگرمی جاری رکھی۔ میرے پوچھنے پر انہوں نے بتایا: ’’جھیل میں ان ننھی مچھلیوں کی غذائی ضرورت پوری کرنے کا کوئی ذریعہ نہیں، اس لیے ہم روزانہ مچھلیوں کے لیے چارے کا بندوبست کرتے ہیں، اور کوشش کرتے ہیں کہ کسی بھی شخص کو ان کا شکار نہ کرنے دیں۔ کیونکہ یہ بے ضرر اور نازک مخلوق پہلے ہی بقاء کی جنگ لڑ رہی ہے؛ اگر ان کا شکار کیا گیا تو شاید اس جھیل میں یہ آبی مخلوق باقی نہ رہے۔‘

ان دو نیک دل بندوں کی وجہ سے یہ مچھلیاں انسانوں سے اس قدر مانوس ہو چکی ہیں کہ آسانی سے پانی میں ہاتھ ڈال کر ان کو پکڑا جا سکتا ہے؛ یہ دور نہیں بھاگتیں۔ میں نے خود بھی جھیل کے پانی میں ہاتھ ڈال کر اس کا تجربہ کیا، بہت سی ننھی منی مچھلیاں میرے ہاتھوں سے ٹکرائیں تو پورے جسم میں گدگدی کا احساس ہوا۔ ان مچھلیوں کو چھو کر جو مسرت ہوئی وہ میں الفاظ میں بیان نہیں کر پارہا۔ اس جھیل کے پاس بھی دیگر چشموں کی طرح رنگ برنگے اور انتہائی خوبصورت پنچھی اڑانیں بھرتے اور پانی میں سے کیڑے مکوڑوں کا شکار کرتے نظر آتے ہیں۔ ان پنچھیوں کی موجودگی سے اس جھیل کی خوبصورتی کو چار چاند لگ گئے ہیں۔ نایاب نسلوں کے یہ پرندے صرف جھیلوں، چشموں اور دریاؤں کے کنارے ہی دیکھنے کو ملتے ہیں۔ پہاڑیوں کے درمیان پرندوں کی دلفریب چہچہاہٹ من کو خوب بھاتی ہے اور ان کی وجہ سے ماحول کی خوبصورتی میں مزید اضافہ ہو جاتا ہے۔

ایک اور چشمہ پل 111 سے چند کلو میٹر دور واقع علاقہ نشترآباد میں ہے۔ پہاڑیوں میں گھرا یہ علاقہ ایک قدرتی وادی کی طرح ہے، یہاں بھی پہاڑیوں میں جاری اسٹون کرشنگ کے نتیجہ میں چشمہ وجود میں آیا۔ اسی طرح شاہین آباد کے چک نمبر 123 جنوبی کی قریبی پہاڑیوں، پل111 کے چک نمبر 107 جنوبی اور نشتر آباد کے چک نمبر 120 جنوبی تک درجنوں چشمے اور جھیلیں ہیں جو قدرت کی طرف سے انمول تحفہ ہیں۔ خاص طور پر چک نمبر 123 جنوبی میں لاتعداد چشمے ہیں جن کا میں خود جائزہ لے چکا ہوں۔ ان پہاڑیوں میں نجانے اور کتنے چشمے ہوں گے جن تک عام آدمی کی رسائی نہیں۔ ان پہاڑیوں کی جانب عام آدمی خال خال ہی آتے ہیں جن میں اسٹون کرشنگ کا کام جاری ہے، کیونکہ اکثر و بیشتر بلاسٹنگ کی وجہ سے حادثات پیش آتے رہتے ہیں۔ ٹھیکیدار اکثر قانون کی خلاف ورزی کرتے ہوئے متعین وقت کے بعد بھی بلاسٹنگ کا عمل جاری رکھتے ہیں، جس سے انجان لوگ خاص طور پر حادثے کا شکار ہوجاتے ہیں کیونکہ باردو جب پھٹتا ہے تو پتھر بڑی دور تک گرتے ہیں۔گزشتہ ساڑھے چار سال کے دوران میں بارہا ان پہاڑیوں میں وقت گزارنے کے لیے آچکا ہوں، یہاں گزرے سحر انگیز لمحات میں الگ ہی ترنگ ہے۔ نجانے کیوں! شاہین آباد سے لیکر پل 111 و نشتر آباد تک پھیلی پہاڑیاں، چشمے اور جھیلیں بار بار مجھے اپنی طرف بلاتی ہیں۔ ان کی خوبصورتی، افسانوی ماحول مجھے پکارتا ہے کہ آؤ! تم مجھے سراہنے والے ہو، قدر شناس ہو، آؤ اور کیمرے کی آنکھ و ستائشی الفاظ میں مجھے قید کرکے دنیا کو دکھاؤ اور بتاؤ کہ ہم قدرت کا انمول تحفہ ہیں، قدرت کی کاریگری کا منہ بولتا ثبوت ہیں کہ کس طرح پہاڑوں کو چیر کر پانی اپنا راستہ بنا لیتا ہے۔

میں نے سرگودھا کے پہاڑی سلسلوں کا بہت باریکی سے جائزہ لیا ہے، نت نئے اور انمول مناظر دیکھے، نئے چشمے پھوٹتے دیکھے، پہاڑوں سے پانی بہہ کر کیسے ایک چشمے میں بدلتا ہے، جھیل کی صورت اختیار کر لیتا ہے، اس بات کا مشاہدہ کیا ہے۔مجھے ہمیشہ اس بات کا جنون رہا ہے کہ مظاہر قدرت کو قریب سے دیکھوں، سرگودھا آیا تو یہاں کے پہاڑی سلسلوں اور جھیلوں و چشموں کا ایسا سحر طاری ہوا کہ میں بار بار ان پہاڑیوں میں قدرت کی کاریگری کو قریب سے دیکھنے کے لیے آیا۔ مجھ پر یہ جنون سوار رہا کہ میں ان پہاڑیوں میں پھیلے مزید چشموں کی کھوج لگاؤں کہ جن کے بارے میں بہت کم لوگ جانتے ہیں۔ میرا یہ جنون مجھے اکثر طویل اور انجان سفر پر جانے کے لیے اکساتا۔ اسی جنون کے تحت ایک مرتبہ میں شاہین آباد کے چک نمبر 123 جنوبی کے گرد و نواح میں پھیلی پہاڑیوں کا جائزہ لینے نکلا تو حیرت انگیز مناظر میرے منتظر تھے۔لند و بالا پہاڑیوں کے درمیان خاصی گہرائی میں تقریباََ چار سے پانچ ایکڑ پر مشتمل جگہ پر ایک نیا چشمہ وجود میں آ رہا تھا، میں نے پانی کا ماخذ ڈھونڈنے کی کوشش کی تو مختلف پہاڑیوں سے تھوڑا تھوڑا پانی بہہ کر نیچے آتا دکھائی دیا۔ میرے لیے یہ بات حیرانی کا باعث تھی۔ مقامی لوگوں سے پوچھنے پر معلوم ہوا کہ گرد و نواح میں بہت گہرائی تک بلاسٹنگ کرکے پتھر نکالے گئے ہیں۔ حتیٰ کہ چٹانوں کے نیچے کا زیر زمین پانی اپنی سطح سے ابھر رہا ہے اور پہاڑیوں کی درزوں سے ہوتا ہوا اس جگہ اکٹھا ہو رہا ہے۔ اس چشمہ کی وجہ سے کرشنگ کا عمل رکا ہوا تھا اور آہستہ آہستہ پہاڑیوں کی دراڑوں سے آنے والا پانی ایک جگہ اکٹھا ہوتا جا رہا تھا۔ میں نے پانی چکھ کر دیکھا تو وہ بارش کا پانی ہرگز نہیں تھا۔ اس پانی کا ذائقہ کلر کہار کے چشموں جیسا تھا۔ چمکتا ہوا صاف شفاف پانی بلند و بالا پہاڑیوں کے درمیان بہت ہی خوبصورت منظر پیش کررہا تھا۔ اس سے بھی مزے کی بات یہ دیکھی کہ رنگ برنگے پرندوں نے یہاں رونق لگا رکھی تھی، گویا انہیں اندازہ ہو کہ اب اس جگہ بڑا چشمہ وجود میں آنے والا ہے، اور ایسا ہی ہوا۔ چند ماہ بعد دوبارہ اس جگہ آنے کا اتفاق ہوا تو میری حیرت دو چند ہوگئی، کیونکہ نہ صرف اس جگہ اب بہت ہی بڑا چشمہ دیکھا بلکہ آس پاس کی پہاڑیوں میں مزید چشمے وجود میں آچکے تھے۔

اسٹون کرشنگ انڈسٹری سے وابستہ مافیا کے لوگ پہاڑیوں کو تو مٹا ہی رہے ہیں، ساتھ ہی وہ ان جھیلوں اور چشموں کے بھی دشمن بنے ہوئے ہیں۔ ان جھیلوں اور چشموں کو ختم کرنے کے لیے نت نئے طریقے آزمائے جارہے ہیں، بڑے ٹیوب ویل لگا کر چشموں اور جھیلوں کا پانی ختم کرنے کی کوشش کی جارہی ہے، پانی خشک کرنے کے لیے چشموں میں خاکہ (پتھروں سے بجری تیار کرنے کے دوران بننے والا پسا ہواملبہ جو مٹیالے رنگ کا ہوتا ہے اور پانی تیزی سے جذب کرتا ہے) پھینکا جا رہا ہے۔ الغرض ان چشموں کا خاتمہ کرنے کا ہر حربہ آزمایا جا رہا ہے۔ لیکن قدرت کو بھی شاید ان چشموں اور جھیلوں کا مٹنا منظور نہیں، کچھ جگہوں پر ان چشموں کو خشک کرنے کی کوششیں کامیاب بھی ہوجاتی ہیں، تاہم چند ہی دنوں بعد کسی اور جگہ سے نیا چشمہ وجود میں آنے لگتا ہے۔انسانوں کے ہاتھوں شب و روز شکست و ریخت، ٹوٹ پھوٹ کا شکار ہوتی پہاڑیاں نوحہ کناں ہیں۔ کوئی تو سنے کہانی ان پہاڑیوں کی کہ جنہوں نے اپنا وجود کھونے کے باجود سرگودھا کے عوام کو خوش نما چشموں اور جھیلوں کا تحفہ دیا۔ سچ میں یہ پہاڑ اپنے قد سے بڑھ کر قد آور ہیں۔

کہتے ہیں کہ جب پہاڑ غمزدہ ہوتے ہیں تو ان سے چشمے پھوٹتے ہیں۔ جب ضبطِ غم نہیں رہتا تو طیش میں آ کر لاوا اگلتے ہیں اور سب کچھ جلا کر راکھ کر دیتے ہیں۔ یہ ہماری خوش قسمتی ہے کہ بلاسٹنگ اور کرشنگ کی صورت میں جب انہیں ستم کا نشانہ بنایا جاتا ہے تو وہ غضب ناک ہو کر لاوا نہیں اْگلتے، بلکہ ان سے خوشنما چشمے پھوٹتے ہیں؛ اور شاید یہ ان پہاڑیوں کا اظہارِ غم کا نرالا انداز ہے۔سرگودھا کے پہاڑی سلسلوں میں واقع قدرتی چشمے اور جھیلیں کہ جہاں جا کر مجھے ہمیشہ خوشی محسوس ہوئی، ان مناظر میں ایک طلسماتی حسن ہے کہ جیسے کوہ قاف میں واقع کوئی کرشماتی جگہ، جہاں حسین پریاں میٹھے پانی کے بہتے جھرنے جیسی ا?واز میں نغمے گنگاتی ہوں اور ان کی آواز پہاڑیوں سے گھری وادی میں گونجتی ہو، اور فطرت کے دیوانوں کو اپنی جانب کھینچتی ہوں۔ جھیل کے بیچوں بیچ بنی پگڈنڈی پر پیدل چلنے کا الگ ہی مزہ ہے۔ یہ جگہیں میری ہی نہیں بلکہ میرے جیسے ہزاروں لوگوںکے لیے تفریح کا ذریعہ ہیں۔ لوگ ان مقامات پر آتے ہیں اور خوشگوار یادوں کے ساتھ لوٹتے ہیں۔ضلعی انتظامیہ کو چاہیے کہ وہ کرانہ پہاڑیوں میں پائے جانے والے چشموں اور جھیلوں کو سیاحتی مراکز کا درجہ دے۔ ان کا پانی صاف شفاف ہے لیکن ارد گر کی پہاڑیوں پر جو تھوڑی بہت جھاڑیاں ہیں ان کو ختم کیا جا سکتا ہے۔ پہاڑیوں پرچڑھنے کے لیے راستے بنائے جاسکتے ہیں۔ چشموں کے گرد باڑ لگا کر حفاظتی اقدامات کو یقینی بنایا جا سکتا ہے۔ انفارمیشن سینٹر بنا کر سیروتفریح کے لیے آنے والوں کی رہنمائی کی جاسکتی ہے۔ وہاں کھانے پینے کے اسٹال مقامی آبادی خود لگا لے گی۔اگر تھوڑی سی مخلصانہ کوششیں کی جائیں تو سرگودھا کے لوگوں کو معیاری تفریح گاہیں فراہم کرنے کے ساتھ ساتھ قدرت کے ان انمول تحفوں کی حفاظت کا بھی بندوبست ہوجائے گا۔ سرگودھا میں ویسے بھی تفریحی مقامات نہ ہونے کے برابر ہیں۔ حکومتی نمائندگان کو چاہیے کہ وہ ان جھیلوں اور چشموں کی موجودگی سے فائدہ اٹھائیں اور معمولی سی سرمایہ کاری کرکے ان جگہوں کو عوامی تفریحی مرکز بنا دیں۔ اگر حکومتی نمائندگان ایسا کوئی بھی اقدام کرتے ہیں تو ان کو عوامی پذیرائی ملے گی۔


متعلقہ خبریں


پاک بحریہ نے بھارتی آبدوز کو پاکستانی حدود میں داخل ہونے سے روک دیا وجود - بدھ 20 اکتوبر 2021

پاکستان بحریہ نے بھارتی آبدوز کا سراغ لگاتے ہوئے پاکستانی سمندری حدود میں داخل ہونے سے روک دیا۔افواج پاکستان نے بھارت کی ایک اور چال کو ناکام بنا کر اس کا مکروہ چہرہ بے نقاب کر دیا ہے اور اس مرتبہ یہ کارنامہ پاک بحریہ نے انجام دیا ہے جس نے جاسوسی اور جنگی مقاصد سے چوری چھپے پاکستان کی حدود میں گھسنے کی کوشش کرنے والی بھارتی آبدوز کو واپس جانے پر مجبور کر دیا۔ بھارتی آبدوز کی حقیقی تصویر۔۔۔۔۔۔۔۔ 16/ اکتوبر کو بھارتی آبدوز پاکستانی سمندری حدود کے قریب موجود تھی اور پاک...

پاک بحریہ نے بھارتی آبدوز کو پاکستانی حدود میں داخل ہونے سے روک دیا

ریاست مدینہ میں جو جنرل اچھا کام کرتا تھا اوپر جاتا تھا،عمران خان وجود - بدھ 20 اکتوبر 2021

وزیراعظم عمران خان نے اسلام آباد میں قومی رحمت اللعالمین ﷺ کانفرنس کے اختتامی سیشن سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اللہ کا خاص شکر ادا کرتا ہوں کہ ہم آج بھر پور طریقے سے نبی آخر الزمان ﷺ کے یومِ ولادت کا جشن مذہبی عقیدت و احترام کے ساتھ منا رہے ہیں۔اُنہوں نے کہا ہے کہ ریاست مدینہ میں جو جنرل اچھا کام کرتا تھا وہ اوپر آجاتا تھا۔ وہاں میرٹ کی بالادستی تھی، قابلیت پر لوگ اعلیٰ عہدوں پر فائز ہوتے تھے، کیونکہ قانون کی بالادستی اور متفرق قانون کے خاتمے کے ساتھ ہی طرز معاشرت میں فکری انقلا...

ریاست مدینہ میں جو جنرل اچھا کام کرتا تھا اوپر جاتا تھا،عمران خان

پی ڈی ایم ملک گیر احتجاج پر کمربستہ، 20اکتوبر سے مظاہرے وجود - منگل 19 اکتوبر 2021

پاکستان ڈیمو کریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم ) نے ایک بار پھر انتخابی اصلاحات کیلئے مجوزہ ترامیم کو مکمل طور پر مسترد کرتے ہوئے واضح کیا ہے کہ دھاندلی کے ذریعے آنے والی حکومت کو شفاف انتخابات کیلئے فارمولا یا قانون دینے کا کوئی حق نہیں،نیب کا ادارہ ہی آمریت کی باقیات میں سے ہے ،یہ ہمیشہ مخالفین اور حزب اختلاف کے خلاف سیاسی انتقام کے طور پر استعمال ہوا ہے ،اس ادارے سے احتساب کی کوئی توقع نہیں ، ہم نئے الیکشن چاہتے ہیں ، اسمبلی کے اندر تبدیلی کی بات ہوتی تو پیپلز پارٹی کی بات مان لیتے،...

پی ڈی ایم ملک گیر احتجاج پر کمربستہ، 20اکتوبر سے مظاہرے

پاک فوج کے 6 اکتوبر کے فیصلوں پر عمل درآمد شروع، گوجرانوالا کور کی کمان لیفٹیننٹ جنرل محمد عامر کے سپرد وجود - منگل 19 اکتوبر 2021

گوجرانوالا کور کی کمان لیفٹیننٹ جنرل محمد عامر کے سپرد کر دی گئی نجی ٹی وی کے مطابق گوجرانوالا کینٹ میں کمان کی تبدیلی کی تقریب ہوئی۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق لیفٹیننٹ جنرل محمد عامر کور کمانڈر گوجرانوالا تعینات کردیے گئے۔ لیفٹیننٹ جنرل سید عاصم منیر نے تقریب میں گوجرانوالا کور کی کمان لیفٹیننٹ جنرل محمد عامر کے سپرد کی۔ واضح رہے کہ پاک فوج میں 6 اکتوبر کو اہم تقرر وتبادلے کیے گئے تھے۔ لیفٹیننٹ جنرل ندیم احمد انجم کو ڈی جی آئی ایس آئی تعینات کیا ...

پاک فوج کے 6 اکتوبر کے فیصلوں پر عمل درآمد شروع، گوجرانوالا کور کی کمان لیفٹیننٹ جنرل محمد عامر کے سپرد

آرمی چیف کا آئی ایس آئی ہیڈکوارٹرزکا دورہ ، ادارے کی تیاریوں پر اطمیان کا اظہار وجود - منگل 19 اکتوبر 2021

آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے آئی ایس آئی کی تیاریوں پر اطمیان کا اظہار کیا ہے ۔ پیر کو آئی ایس پی آر کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے آئی ایس آئی ہیڈ کوارٹرز کا دورہ کیا، ہیڈ کوارٹرز پہنچنے پر آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا ڈی جی آئی ایس آئی لیفٹیننٹ جنرل فیض حمید نے استقبال کیا، اس موقع پر آرمی چیف کو داخلی سیکیورٹی امور اور افغانستان کی تازہ ترین صورتحال پر بریفنگ دی گئی، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ نے ادارے کی تیاریوں پر مکمل اطمینان کا اظہار کیا۔

آرمی چیف کا آئی ایس آئی ہیڈکوارٹرزکا دورہ ، ادارے کی تیاریوں پر اطمیان کا اظہار

سابق امریکی وزیرخارجہ کولن پاول کورونا کے باعث انتقال کرگئے وجود - منگل 19 اکتوبر 2021

سابق امریکی وزیرخارجہ کولن پاول کورونا وائرس کے باعث انتقال کرگئے۔غیرملکی میڈیا کے مطابق کولن پاول کے اہل خانہ نے بتایا کہ ان کا انتقال کورونا کے باعث پیدا ہونے والی طبی پیچیدگیوں سے ہوا۔خیال رہے کہ کولن پاول سابق امریکی صدر جارج بش جونیئر کے دور میں 2001 سے لیکر 2005 تک امریکا کے سیکرٹری خارجہ رہے۔افغانستان اور عراق پر امریکی حملے کے دوران کولن پاول ہی وزیر خارجہ تھے اور انہیں پہلے افریقی نژاد امریکی وزیرخارجہ ہونیکا اعزاز حاصل ہے۔سیاست میں آنے سے قبل کولن پاول امریکی فوج ک...

سابق امریکی وزیرخارجہ کولن پاول کورونا کے باعث انتقال کرگئے

اشیائے خورونوش کی قیمتوں پر ٹیکس کم کرنے کا فیصلہ وجود - منگل 19 اکتوبر 2021

وفاقی حکومت نے اشیائے خورونوش کی قیمتوں پر ٹیکس کم کرنے کا فیصلہ کرلیا۔ ذرائع کے مطابق وزیراعظم عمران خان کی زیر صدارت مہنگائی اور معاشی صورتحال پر اجلاس ہوا جس میں انہیں ملک میں مہنگائی کی صورتحال پر بریفنگ دی گئی جبکہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کے اثرات پر گفتگو ہوئی۔ ذرائع کے مطابق اجلاس میں اشیائے خور و نوش کی قیمتوں پر ٹیکسز کم کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔ وزیراعظم نے وفاقی وزراء کو پرائس کنٹرول کمیٹیوں پر عمل درآمد کے لیے اقدامات کی ہدایت کرتے ہوئے کہا کہ وزراء اپنے...

اشیائے خورونوش کی قیمتوں پر ٹیکس کم کرنے کا فیصلہ

ڈاکٹر عشرت العباد خان کا ایک بار پھر سیاست میں آنے کا عندیہ وجود - پیر 18 اکتوبر 2021

سابق گورنر سندھ ڈاکٹر عشرت العباد خان نے ایک بار پھر سیاست میں آنے کا عندیہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ مختلف آپشنز پر غور کررہا ہوں، کچھ لوگ چاہتے ہیں میں سیاست اور ملک میں واپس نہ آؤں کیونکہ میرے آنے سے انکی دکانیں بند ہوجائیں گی۔ ایک انٹرویومیں انہوں نے کہا کہ کراچی اور پاکستان میں مختلف اسٹیک ہولڈرز سے رابطے میں ہوں اور مختلف آپشنز پر غور کررہا ہوں۔ ڈاکٹر عشرت العباد خان نے مسائل کے مستقل حل کے لیے اپنے مکمل تعاون کی یقین دہانی کراتے ہوئے کہا کہ چاہتا ہوں کہ سیاسی استحکام ہو، ملک...

ڈاکٹر عشرت العباد خان کا ایک بار پھر سیاست میں آنے کا عندیہ

انٹربینک میں ڈالر مزید مہنگا وجود - پیر 18 اکتوبر 2021

انٹربینک میں ڈالر 173.24 روپے کا ہو گیا۔ ڈالر کی بڑھتی ہوئی ڈیمانڈ، خام تیل کی عالمی قیمت میں اضافے سے درآمدی بل اور مہنگائی میں مزید اضافے جیسے عوامل کے باعث انٹربینک مارکیٹ میں کاروباری ہفتے کے پہلے روز ڈالر کی اونچی اڑان کے نتیجے میں انٹربینک نرخ 173 روپے سے بھی تجاوز کرگئے اور انٹربینک مارکیٹ میں ڈالر کی قدر مزید 2.06 روپے کے اضافے سے ملکی تاریخ میں پہلی بار ڈالر کے قیمت 173.24 روپے کے ساتھ تاریخ کی نئی بلند ترین سطح پر پہنچ گئی۔ماہرین نے کہا کہ بین الاقوامی سطح پر خام تی...

انٹربینک میں ڈالر مزید مہنگا

شوکت ترین وزیراعظم کے مشیر خزانہ و ریونیو مقرر، نوٹیفکیشن جاری وجود - پیر 18 اکتوبر 2021

شوکت ترین کو ایک مرتبہ پھر مشیر خزانہ وریونیو تعینات کردیا گیا۔ شوکت ترین کی تقرری کے حوالے سے باقاعدہ نوٹیفکیشن کابینہ ڈویژن کی جانب سے جاری کردیا گیا ۔صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی نے وزیر اعظم عمران خان کی ایڈوائس پر شوکت ترین کی تقرری کی منظوری دی ہے۔ نوٹیفکیشن کے مطابق شوکت ترین کا عہدہ وفاقی وزیر کے برابر ہو گا۔ شوکت ترین کی بطور وزیر خزانہ تعیناتی کی چھ ماہ کی مدت 16اکتوبر کو ختم ہو گئی تھی۔ آئین کے مطابق کوئی بھی شخص رکن قومی اسمبلی یا رکن سینیٹ بنے بغیر چھ ماہ تک وفاقی و...

شوکت ترین وزیراعظم کے مشیر خزانہ و ریونیو مقرر، نوٹیفکیشن جاری

معروف کالم نگار ڈاکٹر اجمل نیازی انتقال کر گئے وجود - پیر 18 اکتوبر 2021

معروف کالم نگار ڈاکٹر اجمل نیازی انتقال کر گئے۔ تفصیلات کے مطابق ممتاز دانشور ،شاعر اور کالم نگار ڈاکٹر اجمل نیازی 75برس کی عمر میں لاہور میں انتقال کر گئے۔ اجمل نیازی 1947 میں موسیٰ خیل میانوالی میں پیدا ہوئے، گورڈن کالج راولپنڈی، گورنمنٹ کالج میانوالی، گورنمنٹ کالج لاہور اور ایف سی کالج میں لیکچرر رہے۔ڈاکٹر اجمل نیازی ایک قومی اخبار میں بے نیازیاں کے عنوان سے کالم لکھتے رہے ۔ اجمل نیازی نے 45 سال ادب کی خدمت میں گزارے، انہوں نے اردو اور پنجابی زبان میں شاعری کی۔ اجمل نیازی...

معروف کالم نگار ڈاکٹر اجمل نیازی انتقال کر گئے

حکومت کی نئی پریشانی، تیل کے درآمدی بل میں مسلسل اضافے سے تجارتی خسارے کا سامنا وجود - پیر 18 اکتوبر 2021

ملک کے تیل کی درآمد کا بل رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں 97 فیصد سے بڑھ کر 4.59 ارب ڈالر ہو گیا جو گزشتہ سال کے اسی عرصے میں 2.32 ارب ڈالر تھا۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق بین الاقوامی مارکیٹ میں قیمتوں میں اضافے اور روپے کی قدر میں کمی اضافے کی وجہ بنی ہے۔تیل کے درآمدی بل میں مسلسل اضافہ تجارتی خسارے کو فعال کر رہا ہے اور حکومت کے لیے پریشانی کا باعث بن سکتا ہے۔گھریلو صارفین کے لیے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں غیر معمولی اضافہ رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں دیکھا گیا۔پاکستا...

حکومت کی نئی پریشانی، تیل کے درآمدی بل میں مسلسل اضافے سے تجارتی خسارے کا سامنا

مضامین
یہ رات کب لپٹے گی؟ وجود پیر 18 اکتوبر 2021
یہ رات کب لپٹے گی؟

تماشا اور تماشائی وجود پیر 18 اکتوبر 2021
تماشا اور تماشائی

’’مصنوعی ذہانت ‘‘ پر غلبے کی حقیقی جنگ وجود پیر 18 اکتوبر 2021
’’مصنوعی ذہانت ‘‘ پر غلبے کی حقیقی جنگ

محنت رائیگاں نہیں جاتی وجود اتوار 17 اکتوبر 2021
محنت رائیگاں نہیں جاتی

بیس کی چائے وجود اتوار 17 اکتوبر 2021
بیس کی چائے

امریکی تعلیمی ادارے اور جمہوریت وجود اتوار 17 اکتوبر 2021
امریکی تعلیمی ادارے اور جمہوریت

روشن مثالیں وجود هفته 16 اکتوبر 2021
روشن مثالیں

تعیناتی کو طوفان بنانے کی کوشش وجود هفته 16 اکتوبر 2021
تعیناتی کو طوفان بنانے کی کوشش

سنجیدہ لوگ، ماحولیات اور بچے وجود هفته 16 اکتوبر 2021
سنجیدہ لوگ، ماحولیات اور بچے

پنڈورا پیپرز کے انکشافات وجود هفته 16 اکتوبر 2021
پنڈورا پیپرز کے انکشافات

بارودکاڈھیر وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
بارودکاڈھیر

نخریلی بیویاں،خودکش شوہر وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
نخریلی بیویاں،خودکش شوہر

اشتہار

افغانستان
افغانستان کی صورتحال ، امریکی نائب وزیر خارجہ آج اسلام آباد پہنچیں گی وجود جمعرات 07 اکتوبر 2021
افغانستان کی صورتحال ، امریکی نائب وزیر خارجہ آج اسلام آباد پہنچیں گی

طالبان کا داعش کے خلاف کریک ڈاؤن کا حکم وجود جمعرات 30 ستمبر 2021
طالبان کا داعش کے خلاف کریک ڈاؤن کا حکم

طالبان حکومت کے بعد پاکستان کی افغانستان کیلئے برآمدات دگنی ہوگئیں وجود جمعه 17 ستمبر 2021
طالبان حکومت کے بعد پاکستان کی افغانستان کیلئے برآمدات دگنی ہوگئیں

امریکا کا نیا کھیل شروع، القاعدہ آئندہ چند سالوں میں ایک اور حملے کی صلاحیت حاصل کر لے گی،ڈپٹی ڈائریکٹر سی آئی اے وجود بدھ 15 ستمبر 2021
امریکا کا نیا کھیل شروع،  القاعدہ آئندہ چند سالوں میں ایک اور حملے کی صلاحیت حاصل کر لے گی،ڈپٹی ڈائریکٹر سی آئی اے

طالبان دہشت گرد ہیں تو پھر نہرو،گاندھی بھی دہشت گرد تھے، مہتمم دارالعلوم دیوبند کا بھارت میں کلمہ حق وجود بدھ 15 ستمبر 2021
طالبان دہشت گرد ہیں تو پھر نہرو،گاندھی بھی دہشت گرد تھے، مہتمم دارالعلوم دیوبند کا بھارت میں کلمہ حق

اشتہار

بھارت
بھارت،چین کے درمیان 17 ماہ سے جاری سرحدی کشیدگی پر مذاکرات ناکام وجود منگل 12 اکتوبر 2021
بھارت،چین کے درمیان 17 ماہ سے جاری سرحدی کشیدگی پر مذاکرات ناکام

مزاحمتی تحریک سے وابستہ کشمیریوں کے خلاف بھارتی کارروائیوں میں تیزی لانے کا منصوبہ وجود هفته 09 اکتوبر 2021
مزاحمتی تحریک سے وابستہ کشمیریوں کے خلاف بھارتی کارروائیوں میں  تیزی لانے کا منصوبہ

مرکزی بینک آف انڈیاا سٹیٹ بینک آف پاکستان کا 45 کروڑ 60 لاکھ کا مقروض نکلا وجود جمعه 08 اکتوبر 2021
مرکزی بینک آف انڈیاا سٹیٹ بینک آف پاکستان کا 45 کروڑ 60 لاکھ کا مقروض نکلا

بھارت، مسجد میں قرآن پڑھنے والا شہید کردیاگیا وجود جمعه 08 اکتوبر 2021
بھارت، مسجد میں قرآن پڑھنے والا شہید کردیاگیا

شاہ رخ کے بیٹے آریان کو 20 سال تک سزا ہوسکتی ہے وجود جمعرات 07 اکتوبر 2021
شاہ رخ کے بیٹے آریان کو 20 سال تک سزا ہوسکتی ہے
ادبیات
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب

تاجکستان بزنس کنونشن میں عمران خان پر شعری تنقید، اتنے ظالم نہ بنو،کچھ تو مروت سیکھو! وجود جمعه 17 ستمبر 2021
تاجکستان بزنس کنونشن میں عمران خان پر شعری تنقید، اتنے ظالم نہ بنو،کچھ تو مروت سیکھو!

طالبان کا ’بھگوان والمیکی‘ سے موازنے پر منور رانا کے خلاف ایک اور مقدمہ وجود منگل 24 اگست 2021
طالبان کا ’بھگوان والمیکی‘ سے موازنے پر منور رانا کے خلاف ایک اور مقدمہ
شخصیات
سابق امریکی وزیرخارجہ کولن پاول کورونا کے باعث انتقال کرگئے وجود منگل 19 اکتوبر 2021
سابق امریکی وزیرخارجہ کولن پاول کورونا کے باعث انتقال کرگئے

معروف کالم نگار ڈاکٹر اجمل نیازی انتقال کر گئے وجود پیر 18 اکتوبر 2021
معروف کالم نگار ڈاکٹر اجمل نیازی انتقال کر گئے

سابق افغان وزیرِ اعظم احمد شاہ احمد زئی انتقال کر گئے وجود پیر 18 اکتوبر 2021
سابق افغان وزیرِ اعظم احمد شاہ احمد زئی انتقال کر گئے

ڈاکٹرعبدالقدیرخان کے لیے دو قبروں کا انتظام، تدفین ایچ8 میں کی گئی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبدالقدیرخان کے لیے دو قبروں کا انتظام، تدفین ایچ8 میں کی گئی

ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی نمازِجنازہ ادا کردی گئی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی نمازِجنازہ ادا کردی گئی