وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

استقبال کتب

اتوار 18 مارچ 2018 استقبال کتب

نام کتاب:اُردو شاعری کے فروغ میں مظفر گڑھ کے شعراء کا کردار
مصنف:ظریف احسن
ضخامت:112 صفحات
قیمت:400 روپے
ناشر:حرفِ زار انٹر نیشنل، کراچی
مبصر: مجید فکری
ظریف احسن صاحب کا مسکن تو کراچی میں ہے مگر ان کا دل مظفر گڑھ میں دھڑکتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ انہوں نے اب تک جتنی کتابیں تخلیق کی ہیں وہ سب مظفر گڑھ سے متعلق ہیں۔ اس کی ایک وجہ یہ بھی ہے کہ مظفر گڑھ ان کا جنم بھومی ہے۔ ان کے آباء و اجداد نے جب ہندوستان چھوڑا اور پاکستان کے لیے ہجرت کی تو مظفر گڑھ ہی میں پڑائو ڈالا۔ فکرِ معاش اور تلاشِ روزگار میں یہ کراچی چلے آئے اور کراچی میں واقع اکائونٹنٹ جنرل سندھ کے دفتر میں ملازم ہوگئے اور اسی دفتر سے بطور سینئر آڈیٹر (گریڈ 16)میں ریٹائر ہوئے۔ زہے قسمت کہ ریٹائرمنٹ کے وقت دفتر ہٰذا میں عمرہ ادائیگی کے لئے قرعہ اندازی میں ان کا نام نکل آیا اور یہ اپنی بیگم کے ہمراہ اس فرض کی ادائیگی کے خوشگوار مقدس لمحات کی سعادت سے بہرہ مند ہونے کے لئے سعودی عرب روانہ ہوگئے۔ پہلے کعبۃ اللہ او رپھر روضۂ رسولؐ کی زیارت کی اور اس سفر کی تمام روداد ایک کتاب کی شکل میں رقم کردی۔

پیش نظر کتاب ’’اردو شاعری میں مظفر گڑھ کے شعراء کا کردار‘‘ ایک ایسی کتاب ہے جس سے ان کے ذوقِ شاعری کا بخوبی اندازہ بھی ہوتا ہے اور ان کے اپنے جنم بھومی سے محبت کا اظہار بھی! یہ کتاب اس لئے بھی تحسین کی نظر سے دیکھی جائے گی کہ اس میں مظفر گڑھ کی ادبی فضا، وہاں کے ادبی شب و روز اور وہاں سے تعلق رکھنے والے بزرگ اکابرین ادب کی خدمات اور خصوصاً اردو شاعری کے فروغ میں ان حضرات نے کیا کارہائے نمایاں انجام دیے اس سے بھی آگاہی حاصل ہوتی ہے اور یہ فریضہ ظریف احسن صاحب نے بڑے احسن طریقے پر انجام دینے کے لیے مذکورہ بالا کتاب لکھ ڈالی اور یقیناً مظفر گڑھ کے باسیوں کے دل میں اپنا گھر بنالیا ہے اور وہ یقیناً ان کے شکر گزار بھی ہوں گے کہ اس سے نہ صرف ان کی شہرت میں اضافہ ہوگا بلکہ مظفر گڑھ کا نام بھی روشن ہوگا۔

کتابِ ہٰذا کا انتساب بھی شہنشاہِ غزل میر تقی میرؔ کے نام نامی سے معنون کیا گیا ہے ۔ جس سے اس بات کا واضح ثبوت بھی فراہم ہوتا ہے کہ غزل جیسی پیاری اور مقبول صنفِ سخن سے یہ حضرت کتنے مانوس ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ انہوں نے اس ضمن میں چار اور شعراء کا نام بھی میرؔ کے بعد شامل کرلیا ہے اور وہ چار افراد یہ ہیں:
۱۔ میر تقی میرؔ ۲۔ عزیز حامد مدنی ۳۔ مخدوم غفور ستاری ۴۔ حامد فکری اور احسن ظریف
گویا فروغِ غزل کا یہ کارواں اب احسن ظریف اورکزئی (فرزند طریف احسن)تک آپہنچا ہے۔
انتساب کے بعد تین ادبی حضرات اور ایک خاتون دردانہ نوشین کے مضامین بھی پیش نظر کتاب کا حصہ بنے ہیں اور ان چاروں حضرات وخاتون نے صرف اور صرف مظفر گڑھ اور خصوصاً ظریف احسن کی اس شہر سے وابستگی پر سیر حاصل تبصرہ کیا ہے۔ جس سے یہ بھی انکشاف ہوا کہ مصنف کا جنم بھومی تو مظفر گڑھ ہے مگر تین سال بعد ہی یہ اس جنم بھومی کو خیر باد کہہ کر 1957ء میں اپنے خاندان کے ساتھ کراچی میں قیام پذیر ہوگئے اور کوئی پانچ دہائی کے بعد انہو ں نے اپنا پہلا مجموعۂ شعری 2017ء میں ’’موسم موسم ملتے تھے‘‘ لاہور سے شائع کرایا اور اب مسلسل شب و روز ادب کی آبیاری میں مصروف ہیں۔ ان کے شعری مجموعے کے سرائیکی اور پنجابی میں بھی تراجم شائع ہوچکے ہیں۔ اس کے ساتھ ہی موصوف اپنے ساتھ مظفر گڑھ کی تمام ادبی شخصیات کو اپنے ساتھ ساتھ لے کر چل رہے ہیں۔

پیش نظر کتاب میں بھی مظفر گڑھ کے شعراء کی اردو شاعری میں حصہ داری کا ذکر کیا گیا ہے مگر بغیر کسی تعارف کے صرف ہر شاعر کے ایک دو شعروں سے اردو کے فروغِ شاعری میں ان کے کردار کا جائزہ لینے سے آگے بات نہیں بڑھی ۔ کیا ایسے اردو شاعری کے فروغ میں مظفر گڑھ کے شعراء کی جہد کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔ ! عجیب سے بات ہے؟ جبکہ کتابِ ہٰذا کے ٹائٹل پر 20 شعراء بشمول خواتین شعراء کی تصاویر بھی پیش کردی گئی ہیں وہ بیس شعراء کے نام یہ ہیں:

۱۔ کشفی الاسدی ۲۔ مخدوم غفور ستاری ۳۔ رضا ٹوانہ ۴۔ ظریف احسن ۵۔ ڈاکٹر سجاد حیدر ۶۔ رمضان زاہد ۷۔ مظہر قلندرانی ۸۔ سعید احمد سعید ۹۔ اکبر نقاش ۱۰۔ انور سعید انور ۱۱۔ شازیہ خان شازی ۱۲۔ محمود اختر ۱۳۔افضل چوہان ۱۴۔ راشد ترین ۱۵۔ ثروت فاطمہ عنقا ۱۶۔ فیض رسول قیصر ۱۷۔ ارمان یوسف ۱۸۔ شاہد خاکوانی ۱۹۔ زمان کاوش ۲۰۔ فیض امام رضوی

مذکورہ بالا شعراء کے اشعار کے ساتھ ساتھ ان کی شاعری سے مماثلت کا فریضہ انجام دیتے ہوئے ہر شاعر کے شعر کے ساتھ ایک دو شعر ظریف احسن صاحب کے بھی موجود ہیں۔ کتاب 112 صفحات کی ضخامت رکھتی ہے اور ابتدا تا آخر مظفر گڑھ کے لاتعداد شعراء کے اشعار اس کتاب کے حسن و آرائش کا حصہ بنے ہیں۔ان میں کافی اچھے شعر بھی ہیں اور کچھ ایسے بھی کہ جن پر گمان ہوتا ہے کہ یہ مضمون کسی اور شاعر کے ہاں بھی موجود ہے مثلاً اقبال احمد خاں سہیل کا درج ذیل مصرعہ ثانی کچھ سنا سنا سا لگتا ہے۔ مگر یہ بات بھی ہے کہ اگر ایسا ہوتا تو اُسے ضرور (Inverted Comma) میں لکھتے۔ ہو سکتا ہے یہ میرا واہمہ ہو۔ شعر کچھ اس طرح ہے:

وہ روئیں جو منکر ہوں حیاتِ شہداء کے
ہم زندۂ جاوید کا ماتم نہیں کرتے
اس شعر کا پہلا مصرعہ بھی کچھ غور طلب ہے۔ یہاں اچھے اشعار بھی موجود ہیں ان میں کچھ اشعار اقبال سہیل کے بھی شامل ہیں۔
حنیف سیماب کا یہ شعر مجھے پسند آیا:
مصلحت کو اوڑھ کے جب سوگئے تو دیکھنا
مسئلہ در مسئلہ سب مسئلے رہ جائیں گے
خود ظریف احسن کا یہ شعر فکر و آگہی کا منہ بولتا ثبوت ہے:
اپنے حصے کے خواب لکھتا ہوں
آگہی کے عذاب لکھتا ہوں
اہلِ نظر حضرات کی کم نگہی کا شکوہ بڑے اچھے انداز میں لکھا گیا ہے اور اچھے مشورہ سے بھی نوازا ہے حقیقت یہ ہے کہ اہلِ نظر حضرات اب خال خال ہیں
اپنی قامت چھپائو لوگوں سے
لوگ اہلِ نظر نہیں ہوتے
(نذر ساجد)
ہم کو مخدوم کیا سمجھنا تھا
آپ سمجھانے آئے تو سمجھے
(مخدوم غفور ستاری)
جب سے چھوٹی ہے وہ رسمِ محبت کشفیؔ
سخت بے کیف نظر آتے ہیں اشعار مجھے
(کشفی الاسدی)
میں کہاں تک منتخب اشعار لکھوں۔ اس کتاب میں تو بے شمار اشعار موجود ہیں مگر تجزیے کی طوالت کا خوف بھی تو دامن گیر ہے۔
دو خواتین کے شعر بھی ملاحظہ کیجیے:
وہ جو خوشیوں میں رہا مجھ سے گریزاں عنقاؔ
میں اسے درد کے موسم میں بلائوں کیسے
(ثروت فاطمہ عنقاؔ)
محبت یہ بتاتی ہے حیات جاوداں کیا ہے
محبت یہ سکھاتی ہے ازل کا وہ جہاں کیا ہے
(شازیہ خان شازی)
آخر میں ظریف احسن کا یہ شعر
میں اول آخر ہوں تمہارا
میں روشنی تم استعارہ
٭٭٭
نام کتاب:میں مکہ بھی ہوں،
میں مدینہ بھی ہوں ( حمدیہ و نعتیہ کلام)
مصنف:ظریف احسن
موضوع:شاعری اور رودادِ عمرہ (مصنفہ سلمیٰ ظریف)
ضخامت:104 صفحات
قیمت:250 روپے
ناشر:حرفِ زار انٹر نیشنل، کراچی
مبصر: مجید فکری
ایک وہ زمانہ تھا جب نعت کو صنفِ سخن کا درجہ بھی دینے میں اہلِ ادب جھجک سی محسوس کرتے تھے جبکہ نعت ہی ہر محفل میں ابتداً پڑھی جاتی تھی اور پھر نعت کو باقاعدہ ادب کا حصہ قرار دیا جانے لگا۔ اس کی وجہ صرف اور صرف یہی تھی کہ نعت لکھنے والے تو بے شمار تھے لیکن اسے خاص ادب و آداب کے ساتھ نثری ادب میں زیر بحث لانے والے ادیب و شعراء کی تعداد خال خال تھی۔
بعد ازاں برصغیر ہند و پاکستان کی کچھ اہم شخصیات جن میں ادیب و شاعر دونوں شامل تھے نعتیہ ادب پر دیگر اصنافِ سخن کی طرح لکھنے اور شائع کرنے کا بیڑہ اٹھایا گیاا ور اب یہ بڑی خوش آئند بات ہے کہ نعت اپنے عروج پر نظر آتی ہے۔ بے شمار شعراء کرام نعتیں لکھ رہے ہیں اور جہاں وہ نعتیہ ادب میں اپنا مقام بنا رہے ہیں وہیں مدحتِ رسولؐ کے طفیل محبوب خدا، بدرالدجیٰ، شفیع الوریٰ کے عقیدت مندوں میں اپنی حاضری کا حصہ بھی بنتے جارہے ہیں جوان کی آخرت میں بھی بخشش کا سہارا بنے گی وہیں یہ لوگ بہ روزِ حشر حضور اکرم ؐ کے دیدار سے مستفیض ہونے کا شرف بھی حاصل کریں گے۔
پیش نظر کتاب ’’میں مکہ بھی ہوں … میں مدینہ بھی ہوں‘‘ مذکورہ بالا عقیدت مندانہ کوششوں میں سے ایک مستحسن کوشش ہے۔
یہ کتاب جہاں دو افراد ظریف احسن اور سلمیٰ ظریف کی کوششوں کا حصہ ہے وہیں یہ دو حصوں پر مشتمل ہے۔ پہلا حصہ ظریف احسن کے نام سے اور دوسرا حصہ سلمیٰ ظریف کے نام سے مختص ہے۔ اول الذکر میں خداوند تعالیٰ کی حمد اور رسول اکرمؐ کی شان میں نعتوں کا نذرانہ پیش کیا گیا ہے جبکہ دوسرے حصہ میں سلمیٰ ظریف صاحبہ نے رودادِ عمرہ بڑے دلنشیں دلکش انداز میں تحریر کی ہے جو کسی سعادت سے کم نہیں ہے اور یہ عمرہ کرنا بھی عبادت کے زمرے میں شمار کیا جاسکتا ہے۔ یہ سعادت بھی اُسے ہی نصیب ہوتی ہے جس کا بلاوا آتا ہے۔ گویا اس میں مرضیٔ مولا اور حضور کی آشیر باد شامل ہوتی ہے۔
پیش نظر کتاب ’’میں مکہ بھی ہوں … میں مدینہ بھی ہوں‘‘ ظریف احسن کی دس حمدیں اور بیس نعتیں شامل ہیں جبکہ کتاب کے دوسرے حصے میں سفرِ عمرہ سے متعلق 20 صفحات مختص کئے گئے ہیں۔ اس پر تبصرہ کیاکرنا ؟ اللہ تعالیٰ کی حمد و ثنا سے کسے انکار ہوسکتا ہے ، وہی ہمار امعبود اور وہی ہمارا مالک و مختار ہے۔ اس کے اشارہ کے بغیر کوئی پتہ بھی نہیں ہل سکتا۔ کائنات کی ہر شئے اسی کی تابع ہے۔ظریف احسن صاحب نے اللہ پاک کے ذکر کے بعد نعت کے اشعار پیش کیے ہیں انہیں پڑھ کر ہر مسلمان کادل سرشار ہوجاتا ہے اور یہ خوشی کے مواقع ہمیں ظریف احسن صاحب نے بہم پہنچائے ہیں۔خوبی اس حمدیہ کلام کی یہ ہے کہ اسے لکھنے میں انہوں نے نظم نگاری کا ہر انداز اختیار کیا ہے کہیں چار مصرعوں میں شاعری کی ہے تو کہیں دس مصرعوں میں نظمیں لکھی ہیں اور کہیں غزل کے پیرائے میں حمدیہ اشعار موجود ہیں۔پہلی حمد ہی اللہ کی وحدانیت اس کے ابتداتا انتہا رہنے کا یقین پھر ’’شُکر اللہ‘‘ کے عنوان سے کچھ آزاد نظمیں، کعبۃ اللہ کی زیارت کا حال، حجرِ اسود کو بوسہ دینا، مکہ کا طواف کرنا، حطیم میں سربسجود ہونا، پھر مقامِ ابراہیم پر قیام، بعد ازاں اسی نظم میں وہ مدینے روانگی کا آغاز کرتے ہوئے اللہ کا شکر بجا لانے کے ساتھ یہ دعا بھی کہ جب وہ حمد لکھیں تو کعبۃ اللہ کے سامنے موجود ہوں اوراسی طرح نعت لکھتے وقت روضہ رسول سامنے ہوں۔
پھر اس کے بعد وہی اشعار شروع ہوتے ہیں جن میں سے ایک مصرعہ اس کتاب کا عنوان بھی منتخب ہوا ہے۔ سبحان اللہ کیا شائستگی کیا اسلوب بیان ہے دیگر اشعار ِحمد کا! ذکرِ الٰہی سے دل مخمور ہوجاتا ہے اور روح کو تازگی بھی محسوس ہوتی ہے۔
کتاب کا دوسرا حصہ جیسا کہ میں نے پہلے عرض کیا عمرہ کی روداد پر مبنی ہے جسے ان کی بیگم محترمہ سلمیٰ ظریف نے تحریر کیا ہے۔ اس روداد سے بھی اُن کے شکر او رسعادت کے شرف کو حاصل کرنے میں وہ رب تعالیٰ کی بارگاہ میں سجدۂ شکر بجا لاتی ہیں کہ جس نے انہیں یہ سعادت بخشی:
’’یہ اس کی دَین ہے جسے پروردگار دے‘‘
بیگم ظریف احسن بیان کرتی ہیں کہ ان کے شوہر اے۔جی سندھ میں بطور سینئر آڈیٹر تھے جہاں عمرہ کی ادائیگی کے لئے قرعہ اندازی کی گئی اور ظریف احسن کا نام قرعہ اندازی میں نکل آیا اور ا س طرح یہ مکہ، مدینہ جانے کا سبب بن گیا۔
٭٭٭
نام کتاب:مظفرگڑھ ہے شہ پارہ
موضوع:شاعری
مصنف:ظریف احسن
کمپوزنگ:شیرازی شاعر
ناشر:حرفِ زار انٹر نیشنل، کراچی
تقسیم کار:رنگِ ادب پبلی کیشنز، کراچی
مبصر:مجید فکری
پیش نظر کتاب ظریف احسن صاحب کی 2017ء میں لکھی جانے والی کتابوںمیں غالباً تیسری کتاب ہے۔ اس سے پہلے وہ اپنے فریضۂ عمرہ کی روداد کے ساتھ اپنا شعری مجموعۂ حمد و نعت ’’میں مکہ بھی ہوں اور مدینہ بھی ہوں‘‘ تخلیق کرچکے ہیں جبکہ اردو شاعری کے فروغ میں مظفر گڑھ کے شعراء کا کردار کے عنوان سے ایک شعری انتخاب بھی مرتب کرچکے ہیں۔
اور اب اسی سال یہ شعری مجموعہ بھی منظر عام پر آچکا ہے۔ جسے رنگِ ادب پبلی کیشنز، کراچی نے شاعر علی شاعر کی نگرانی میں پایۂ تکمیل تک پہنچایا ہے۔ یہ ظریف احسن کا خالصتاً شعری مجموعہ ہے جس میں مختلف شخصیات جن کا تعلق کسی نہ کسی طور پر مظفر گڑھ سے وابستہ رہا ہے ان کا تعارف، خدمات خواہ وہ سیاسی ہوں، عوامی ہوں یا ادبی خدمات ہوں ان کا تعارف مخصوص شعری انداز میں پیش کیا گیا ہے۔بعض جگہ تو ایسا بھی محسوس ہوتاہے جیسے یہ ان کی سوانح عمری بیان کررہے ہیں۔
پیش نظر کتاب سے متعلق تاثرات بیان کرنے والوںمیں ڈاکٹر مختار ظفر، محمود اختر خاں، پروفیسر ڈاکٹر سجاد حیدر پرویز،پروفیسر قیصر عباس اور محمد عتیق صاحب شامل ہیں۔ جبکہ ان صاحبان کے ایک ایک منتخب شعر کے ساتھ انتساب بھی تحریر کیا گیا ہے۔
انتساب کے بعد ظریف احسن کا یہ شعر ان کے منتخب اشعار کا منتخب شعر کا نمونہ ہوسکتا ہے جبھی تو اس شعر کے لئے ایک پورا صفحہ مختص کیا گیا ۔ مگر نہ جانے کیوں مجھے اس موقع پر ایک بزرگ ممتاز شاعر جناب سہیل غازی پوری کا بھی وہ شعر یاد آگیا جو انہوں نے بھی آئینے کے موضوع پر کہا تھا لیکن اب ایسا محسوس ہورہا ہے کہ جیسے یہ شعر اُنہوں نے ظریف احسن کے شعر کے جواب میںلکھا ہو! اب آپ دونوں شعراء کے شعر ملاحظہ فرمائیے:
میں وہ آئینہ رُوبرو جس کے
یہ جہاں دیر تک سنورتا ہے
(ظریف احسن)
یہ آئینہ ہے کبھی ٹوٹ بھی تو سکتا ہے
بغیر اس کے سنورنے کی عادتیں ڈالو
(سہیل غازی پوری)
بہر حال، پیش نظرکتاب میں حمد بھی شامل ہے، ’’بہار مدینہ‘‘ کے عنوان سے ایک نعتیہ نظم بھی جبکہ دیگر شخصیات پر اُن کے ناموں کے ساتھ بلکہ ان کے کارہائے نمایاں کو پیش کیا گیا ہے۔انہی شخصیات کے تعارف میں شاعری کا ایک عجیب و منفرد انداز اپنایا گیا ہے۔ بہت سی نظموں پر آزاد شاعری کا گمان ہوتا ہے۔ کچھ نظمیں نثری نظموں کے زمرے میں بھی شمار کی جاسکتی ہیں جبکہ کچھ نثری مضامین بھی شامل ہیں جنہیں شخصی خاکوں میں شمار کیا جاسکتا ہے۔

ے بھی موجود ہیں۔ کتاب 112 صفحات کی ضخامت رکھتیʟ鴀ᴹ


متعلقہ خبریں


برہنہ حالت میں ویڈیوبنانے کے الزام میں17 افراد کے خلاف مقدمہ درج وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

سرگودھا روڈ یوسف چوک کے قریب چوری کے الزام میں 2 محنت کش خواتین کومبینہ طورپرتشدد کا نشانہ بنانے برہنہ کرکے بازارمیں گھسیٹنے اوربرہنہ حالت میں ویڈیوبنانے کے الزام میں17افراد کے خلاف مقدمہ درج کرلیا ہے جن میں فیصل'ظہیرانور،عثمان اور فقیرحسین وغیرہ5نامزداور12نامعلوم شامل ہیں۔ سوشل میڈیا پر ویڈیو وائرل ہونے کے بعد سی پی او ڈاکٹرعابد خان اورایس ایس پی انوسٹی گیشن کے موقع پر پہنچنے کے بعد ایس ایچ اوتھانہ ملت ٹائون رضوان شوکت بھٹی نے ملزموں کوگرفتارکیا ۔وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدارن...

برہنہ حالت میں ویڈیوبنانے کے الزام میں17 افراد کے خلاف مقدمہ درج

لاہور کے بلدیاتی انتخابات میں کلین سوئپ کریں گے،آصف علی زرداری وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

پاکستان پیپلزپارٹی پارلیمنٹرینز کے چیئرمین و سابق صدر مملکت آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ پنجاب میں پوری قوت کے ساتھ بلدیاتی انتخابات میں حصہ لیں گے،بلدیاتی الیکشن میں میدان کسی کے لئے خالی نہیں چھوڑیں گے ۔ اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کو لاہور سمیت پورے پنجاب میں مضبوط کریں گے،1979 کی طرح لاہور کے بلدیاتی انتخابات میں کلین سویپ کریں گے۔آصف علی زرداری لاہور میں چند روز قیام کرنے کے بعد واپس کراچی روانہ ہو گئے۔آصف زرداری نے بلاول ہائوس لاہور میں قیام کے دوران حلقہ ا...

لاہور کے بلدیاتی انتخابات میں کلین سوئپ کریں گے،آصف علی زرداری

کسٹم انٹیلی جنس کا جامع کلاتھ مارکیٹ میں چھاپہ، اسمگلنگ شدہ کپڑا ضبط، احتجاج وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

تاجروں کی جانب سے سخت احتجاج بھی کام نہ آیا، کسٹم انٹیلی جنس نے جامع کلاتھ مارکیٹ سے کروڑوں مالیت کے کپڑا ضبط کرلیا۔کراچی کی مشہور جامع کلاتھ مارکیٹ میں کسٹم انٹیلی جنس نے چھاپہ مارا، جس کے دوران انہیں سخت مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا۔ پولیس کا کہنا ہے کہ چھاپہ غیر قانونی اشیا کی موجودگی کی اطلاع پر مارا گیا۔فریسکو چوک پر کسٹم کارروائی کے خلاف تاجر سڑکوں پر نکل آئے۔ مقامی تاجروں کے احتجاج کے باعث فریسکو چوک میدان جنگ بن گیا۔ احتجاج کے دوران فائرنگ اور پتھرا کے نتیجے میں دو افراد ...

کسٹم انٹیلی جنس کا جامع کلاتھ مارکیٹ میں چھاپہ، اسمگلنگ شدہ کپڑا ضبط، احتجاج

اگلی وبا کورونا سے زیادہ مہلک ہوسکتی ہے، موجد آکسفورڈ کورونا ویکسین وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

آکسفورڈ آسٹرا زینیکا ویکسین کی شریک موجد نے کہا ہے کہ آئندہ وبائیں کرونا وائرس سے بھی زیادہ مہلک ہو سکتی ہیں اس لئے کرونا سے سبق حاصل کرنا چاہیے۔میڈیارپورٹس کے مطابق رچرڈ ڈمبلبی لیکچر میں خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر سارہ گلبرٹ کا کہنا تھا کہ یہ کوئی پہلا یا آخری موقع نہیں جس میں کسی وائرس کے سبب ہماری زندگیاں یا معاشی صورتحال متاثر ہوئی ہو۔ سچ تو یہ ہے کہ اگلی وبا سے اس سے بھی بدتر ہو سکتی ہے۔ وہ اس سے بھی زیادہ مہلک یا متعدی ہو سکتی ہے۔سارہ کے مطابق ہم ایسی صورتحال کی اجازت نہیں دے...

اگلی وبا کورونا سے زیادہ مہلک ہوسکتی ہے، موجد آکسفورڈ کورونا ویکسین

خواتین یا بچوں کے مقابلے میں مرد کووڈ کو زیادہ پھیلاتے ہیں، تحقیق وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

امریکا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا ہے کہ خواتین یا بچوں کے مقابلے میں مرد کورونا وائرس سے ہونے والی بیماری کووڈ 19 کو زیادہ پھیلاتے ہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق یہ بات امریکا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی۔کولوراڈو اسٹیٹ یونیورسٹی کی اس تحقیق کا اصل مقصد پرفارمنگ آرٹ کے ذریعے کووڈ 19 کے پھیلائو کو دیکھنا تھا۔مگر محققین نے یہ بھی دریافت کیا کہ خواتین یا بچوں کے مقابلے میں مرد کورونا کے وائرل ذرات کو زیادہ پھیلاتے ہیں۔تحقیق میں 75 سے زیادہ افراد کو شامل کیا...

خواتین یا بچوں کے مقابلے میں مرد کووڈ کو زیادہ پھیلاتے ہیں، تحقیق

اقوام متحدہ میں افغانستان کی نمائندگی کا فیصلہ ملتوی وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے ایک قرارداد منظور کی ہے جس کے تحت افغان طالبان اور میانمار کی فوجی حکومت کے نمائندوں کو تسلیم کرنے کا معاملہ غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کردیا گیا ہے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکا، روس اور چین سمیت 9 ممالک پر مشتمل اقوام متحدہ کی کریڈنشلز کمیٹی کے معاہدے پر مشتمل قرارداد کو اقوام متحدہ کے رکن ممالک کے ووٹنگ کے بغیر اتفاق رائے سے منظور کرلیا۔گزشتہ ہفتے کمیٹی نے جنرل اسمبلی کے موجودہ سیشن کے لیے افغانستان اور میانمار کے نمائندوں کی شمولیت ...

اقوام متحدہ میں افغانستان کی نمائندگی کا فیصلہ ملتوی

پاکستان 41 سال بعد افغانستان پراو آئی سی وزرائے خارجہ اجلاس کی میزبانی کررہا ہے،ترجمان دفتر خارجہ وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

ترجمان دفتر خارجہ نے کہا ہے کہ او آئی سی وزرائے خارجہ کونسل کا اجلاس 19دسمبر کو اسلام آباد میں ہوگا۔ اسلامی ممالک کے وزرائے خارجہ کو شرکت کی دعوت دی گئی ہے۔صحافیوں سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ اجلاس میں سلامتی کونسل کے مستقل ارکان کوشرکت کی  دعوت دی ہے۔ یورپی یونین ، اقوام متحدہ اور اس کی امدادی ایجنسیوں کو مدعو کیا گیا ہے۔ ورلڈ بینک اور عالمی مالیاتی اداروں کے اعلیٰ حکام کو بھی مدعو کیا گیا ہے۔ اجلاس میں جرمنی، جاپان، کینیڈا اورآسٹریلیا کو بھی شرکت کی دعوت دی ج...

پاکستان 41 سال بعد افغانستان پراو آئی سی وزرائے خارجہ اجلاس کی میزبانی کررہا ہے،ترجمان دفتر خارجہ

کراچی پر پھر بجلی گرادی،صارفین کیلئے 3روپے 75پیسے مہنگی وجود - منگل 07 دسمبر 2021

کراچی کے صارفین کیلئے بجلی 3روپے 75مہنگی کر دی گئی اس حوالے سے نیپرا نے نوٹیفکیشن جاری کر دیا ۔ نوٹیفکیشن کے مطابق بجلی ستمبر کی فیول چارجز ایڈجسٹمنٹ مد میں مہنگی کی گئی ،اضافہ دسمبر کے بجلی بلوں میں وصول کیا جائے گا ،نیپرا نے ستمبر کی فیول ایڈجسٹمنٹ کیلئے نومبر میں سماعت کی تھی۔

کراچی پر پھر بجلی گرادی،صارفین کیلئے 3روپے 75پیسے مہنگی

پبلک اکاؤنٹس کمیٹی اجلاس،نیب سے ریکوریز کی تفصیلات طلب وجود - منگل 07 دسمبر 2021

پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نے اگلا ان کیمرہ اجلاس چھ جنوری کو طلب کرتے ہوئے نیب سے ریکوریز کی تفصیلات مانگ لیں جبکہ چیئر مین نیب نے کہا ہے کہ پارلیمنٹ سپریم ترین ادارہ ہے، اس بارے میں کسی کو کوئی ابہام نہیں ہونا چاہیے، نیب کا چار سال کا آڈٹ ہو چکا ہے، ایک دو بار جائز وجوہات کی بنیاد پر پی اے سی میں پیش نہیں ہوسکا، نیب اپنے آپ کو قانون سے بالا تر نہیں سمجھتا، میں چیئرمین نیب ہوں، مغلیہ بادشاہ نہیں ہوں،نیب احتساب کیلئے ہر وقت تیار ہے جس پر چیئر مین پی اے سی رانا تنویر حسین نے کہا ہے کہ...

پبلک اکاؤنٹس کمیٹی اجلاس،نیب سے ریکوریز کی تفصیلات طلب

سپریم کورٹ کا سندھ میں 25 ہزار روپے اجرت کیخلاف حکم امتناع وجود - منگل 07 دسمبر 2021

سپریم کورٹ آف پاکستان نے سندھ میں 25 ہزار روپے اجرت کے خلاف حکم امتناع دیدیا۔ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے دو رکنی بنچ نے سندھ میں کم از کم اجرت 25 ہزار روپے مقرر کرنے کیخلاف درخواستوں پر سماعت کی۔ عدالت عظمیٰ نے حکم امتناع دیتے ہوئے اٹارنی جنرل پاکستان اور ایڈووکیٹ جنرل سندھ کو نوٹسز جاری کردیئے۔سپریم کورٹ نے ریمارکس دیئے کہ اٹارنی جنرل اور ایڈووکیٹ جنرل سندھ کم از کم اجرت کے مقرر طریقہ کار پر معاونت کریں، سندھ کابینہ نے 25 جون کو 25 ہزار روپے کم از کم ا...

سپریم کورٹ کا سندھ میں 25 ہزار روپے اجرت کیخلاف حکم امتناع

رانا شمیم نے پیرتک بیان حلفی جمع نہ کرایا تو فرد جرم عائد کرینگے،اسلام آباد ہائیکورٹ وجود - منگل 07 دسمبر 2021

اسلام آباد ہائی کورٹ نے بیان حلفی کیس میں کہا ہے کہ اگر پیر تک رانا شمیم کا بیان حلفی نہ آیا تو ان پر فرد جرم عائد کریں گے۔منگل کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں سابق چیف جج گلگت بلتستان رانا شمیم کے بیان حلفی کی خبر پر توہین عدالت کیس کی سماعت ہوئی تو رانا شمیم ہائی کورٹ میں پیش ہوئے۔عدالتی معاون فیصل صدیقی نے کہا کہ یہ پرائیویٹ ڈاکومنٹ تھا اس نے پبلش کرنے کے لیے نہیں رکھا تھا ، رانا شمیم نے کہا کہ پبلش ہونے کے بعد اس سے رابطہ کیاگیا ، خبر دینے والے صحافی کا کہنا ہے کہ اس نے خبر ش...

رانا شمیم نے پیرتک بیان حلفی جمع نہ کرایا تو فرد جرم عائد کرینگے،اسلام آباد ہائیکورٹ

بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے وجود - منگل 07 دسمبر 2021

بھارت میں مغل دور میں قائم ہونے والی تاریخی بابری مسجد کو شہید ہوئے 29 برس کا عرصہ گزر گیا، بابری مسجد کو بھارتی انتہاپسند ہندو جماعت وشو اہندو پریشد اور بھارتی جنتا پارٹی کے کارکنوں اور حمایتیوں نے حملہ کر کے مسمار کر دیا تھا۔وشوا ہندو پریشد، راشٹریہ سویم سنگھ اور بی جے پی 1980 سے ایودھیا کی بابری مسجد کی جگہ رام مندر کی تعمیر کی تحریک چلا رہی تھیں۔ 6 دسمبر1992 کو انہی انتہاپسندہندو جماعتوں نے ایودھیا میں ایک ریلی نکالی جس نے پر تشدد صورت اختیار کر لی ، نتیجے میں بابری مسجد ...

بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے

مضامین
غم و شرمندگی وجود بدھ 08 دسمبر 2021
غم و شرمندگی

گامیرے منوا وجود بدھ 08 دسمبر 2021
گامیرے منوا

گوادر دھرنا اورابتر گورننس وجود بدھ 08 دسمبر 2021
گوادر دھرنا اورابتر گورننس

تندور بنتی دنیا وجود بدھ 08 دسمبر 2021
تندور بنتی دنیا

کون نہائے گا وجود منگل 07 دسمبر 2021
کون نہائے گا

دوگززمین وجود پیر 06 دسمبر 2021
دوگززمین

سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی! وجود پیر 06 دسمبر 2021
سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی!

چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے! وجود پیر 06 دسمبر 2021
چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے!

دوگززمین وجود اتوار 05 دسمبر 2021
دوگززمین

یورپ کا مخمصہ وجود هفته 04 دسمبر 2021
یورپ کا مخمصہ

اے چاندیہاں نہ نکلاکر وجود جمعه 03 دسمبر 2021
اے چاندیہاں نہ نکلاکر

تاریخ پررحم کھائیں وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
تاریخ پررحم کھائیں

اشتہار

افغانستان
اقوام متحدہ میں افغانستان کی نمائندگی کا فیصلہ ملتوی وجود بدھ 08 دسمبر 2021
اقوام متحدہ میں افغانستان کی نمائندگی کا فیصلہ ملتوی

طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ وجود اتوار 05 دسمبر 2021
طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ

15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل وجود هفته 04 دسمبر 2021
15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل

طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت وجود جمعه 03 دسمبر 2021
طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت

جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان وجود جمعه 03 دسمبر 2021
جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان

اشتہار

بھارت
بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے وجود منگل 07 دسمبر 2021
بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے

بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا

بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی وجود بدھ 01 دسمبر 2021
بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی

بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین وجود پیر 29 نومبر 2021
بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین

بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی وجود هفته 27 نومبر 2021
بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی
ادبیات
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام وجود منگل 26 اکتوبر 2021
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام

پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام وجود پیر 25 اکتوبر 2021
پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام

اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب
شخصیات
جنید جمشید کی پانچویں برسی آج منائی جائے گی وجود منگل 07 دسمبر 2021
جنید جمشید کی پانچویں برسی آج منائی جائے گی

نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی وجود اتوار 05 دسمبر 2021
نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی

سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے وجود پیر 29 نومبر 2021
سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے

پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل وجود جمعرات 25 نومبر 2021
پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل

سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز وجود جمعه 19 نومبر 2021
سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز