دنیا کا ہر مذہب اچھے ،بُرے کی تمیز احترامِ انسانیت کی بنیاد پر سکھاتا ہے

دنیا کا ہر مذہب اچھے ،بْرے کی تمیز احترامِ انسانیت کی بنیاد پر سکھاتا ہے۔ احترامِ انسانیت یہ ہے کہ انسان جس روپ میں بھی ہواس کی بقا کے لیے معاشرتی اور مذہبی اصولوں کو مدنظر رکھا جاتا ہے۔ مرد عورت کسی بھی معاشرے کو بنانے میں اہم کردار ادا کرتے ہیں۔ مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے افراد سماجی اور معاشرتی نظم و ضبط، سیاست، معاشی استحکام اور دیگر شعبوں میں خواتین کے کردار کی اہمیت پر زور دیتے ہیں کیونکہ روئے زمین پر بنی نوع انسان کی بقا کا سفر تنہا کسی ایک صنف کے دائرہ اختیار سے باہر ہے لہٰذا خواتین کی اہمیت سے انکار کا کوئی جواز نہیں۔ عورت کا اصل وصف حیا اور نسوانیت اس کا حسن ہے۔ پھر یہی خوبیاں نمو پا کر ہمدردی، ایثار ، اور مستقل مزاجی جیسے باوقار جذبوں کی شکل میں عیاں ہوتی ہیں۔ اسلام نے عورت کو ایسا باعزت مقام عطا کیا ہے کہ رہتی دنیا تک وہ مقام بلند رہے گا۔ خود خواتین کا احترام دراصل نوع انسانی کے احترام کے مترادف ہے کیونکہ حضرت آدمؓ اور حضرت بی بی حواؓ کے علاوہ دنیا میں کوئی ایسا نہیں جسے ماں نے جنم نہ دیا ہو۔ اگر ہمارے لئے ماں محترم ہے تو دنیا کی ہر خاتون محترم ہونی چاہیے۔ کچھ تنگ نظر حضرات کا کہنا غلط ہے کہ اسلام عورت کو چار دیواری میں زندگی گزارنے پر مجبور کردیتا ہے۔اللہ تعالیٰ نے جب قرآن پاک اْتارنا شروع کیا تو اولین آیات میں مرد و عورت میں تفریق نہ کی۔ ’’پڑھو اور تمہارا رب بڑا کریم ہے جس نے قلم کے ذریعے علم سکھایا ۔ انسان (مرد اور عورت)کو وہ علم دیا جس سے وہ نہ جانتا تھا۔‘‘یہ آیات آج سے چودہ سو سال پہلے نازل ہوئیںجب علم کی افادیت کچھ خاص نہیں تھی یہاں تک کہ مکہ جیسے شہر میں بھی بہت کم لوگ لکھنا پڑھنا جانتے تھے۔ اسلام نے تب عورت و مرد کو علم کی افادیت سکھائی۔

عورت اگر ان حقوق کو اعداد وشمار میں لانا بھی چاہے تو نہیں لا سکے گی چنانچہ آج جہاں بے شمار احادیث کے ماخذ صحابہ کرامؓ ہیں وہاں صحابیاتؓ بھی پیچھے نہیں ہیں۔ حضرت عائشہ کے بارے میں ان کے ممتاز شاگرد عروہ بن زبیرؓ کا کہنا ہے کہ ’’میں نے تفسیرِ قرآن ،فرائض ،حلال وحرام ،ادب و شعر اور تاریخ عرب کا حضرت عائشہ ؓ سے بڑھ کر کوئی عالم نہیں دیکھا‘‘ ہمارے ہاں عورت کے معاملے میں مردانہ حاکمیت کے سوال کو اٹھایا جاتا ہے۔ کہا جاتا ہے کہ آپ کسی عورت کے ساتھ کتنی بھی عقل ودانش کی بات کریں۔ کیسے بھی دلائل کیوں نہ دیں اگر اس کی مر ضی نہیں ہے تو وہ اس منطق کو کبھی نہیں سمجھے گی اس نے جو فیصلہ کرلیا ہوتا ہے وہی اس کے لیے مسئلے کا واحد حل ہوتا ہے۔ مردانہ حاکمیت کے لیے اسے جواز بنایا جاتا ہے۔ بلا شبہ اس حقیقت سے انکار نہیں کہ معاشرے پر مرد کی حاکمیت کو یک طرفہ طور پر نہیں دیکھا جا سکتا۔ ہر معاملے میں مردوں کا قصور تلاش کرنا دانش مندی نہیں۔ عورت اور مرد دونوں معاشرے کا حصہ ہیں اور غلطیاں دونوں سے ہو سکتی ہیں تاہم عورتوں سے کیے جانے والے امتیازی سلوک سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔ اس حوالے سے عورتوں کے حقوق کے لئے بہت سے تنظیمیں کام کر رہی ہیں، قانون اور قانون نافذ کرنے والے ادارے موجود ہیں مگر پھر بھی ایک اندازے کے مطابق پاکستان میں بڑی تعداد میں عورتوں کو گھریلو تشدد اور عزت کے نام پر قتل کردیا جاتا ہے۔

عورتوں کی ایک بڑی تعداد غیر رسمی شعبے میں میں انتہائی نا مساعد حالات میں معمولی اجرتوں پر کام کررہی ہیں۔ عورتیں مردوں کی نسبت دگنا کام کرتی ہیں۔ بچوں اور خاندان کی دیکھ بھال کے ساتھ ساتھ انہیں کام کرنا پڑتا ہے۔ ان پر دہری ذمہ داری ہوتی ہے مگر انہیں مردوں کے مقابلے میں 20 سے 40 فیصد کم اجرت ملتی ہے۔ کوئی بھی ملک اپنی آدھی آبادی کے ساتھ ترقی نہیں کرسکتا۔ صنفی تفریق ختم کرنا ضروری ہے۔ پاکستان کی خواتین کو مکمل قومی دھارے میں شامل کرنا اس دورمیں قومی ترقی کے لیے ایک حقیقی ضرورت ہے۔ حقوق نسواں کے لیے کام کرنے والی آوازوں کو دبانے کی نہیں، بلکہ اس پکار کو سننے کی ضرورت ہے۔ اسلامی معاشرے کا خوبصورت اور روشن چہرہ دنیا کو دکھانے کے لیے ہمیں ان کرداروں کو بھی سامنے لانا ہوگا جنہوں نے روایات شکن اقدامات کر کے عورت کو ان کے حقوق دلائے۔ عصرِحاضر میں مسلم رول ماڈل خواتین کے حوالے سے آگاہی لازمی ہے، ایسے اداروں کا قیام ضروری ہے جہاں اسلامی معاشرہ قائم کرنے میں اپنا کردار ادا کرنے والی امہات المومنینؓکے طرز زندگی کے عین مطابق تربیت دی جائے۔ ہمیں اس امر کی اہمیت کو سمجھنا ہو گا کہ عورت معاشرے کی بناوٹ، ترقی اور استحکام میں اہم کردار ادا کرتی ہے۔

Electrolux