وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

لیاقت علی عاصم ایک تازہ کار شاعر

اتوار 04 مارچ 2018 لیاقت علی عاصم ایک تازہ کار شاعر

لیاقت علی عاصمؔ کے اَب تک سات شعری مجموعے شائع ہوچکے ہیں۔ وہ ۱۹۸۰ ء کی دہائی میں اُبھرنے والے نوجوان شعراء کی صف سے تعلق رکھتے ہیں۔ انھوں نے سنجیدگی اور تسلسل کے ساتھ لکھا ہے اور تخلیق کا یہ عمل اب بھی جاری ہے۔ میں اُنھیں اس وقت سے جانتا ہوں جب وہ جامعہ کراچی میں ایم اے(اُردو) کے طالب علم تھے۔ ان کی شاعری کا پورا منظر نامہ میری نگاہ کے سامنے ہے۔

عاصمؔ نے جس زمانے میں غزل اور محض غزل کو تخلیق کا ذریعہ بنایا اُس وقت کراچی اور بعض دیگر شہروں میں بھی شاعری کے ذیل میں نئے نئے تجربات یا تو ہوچکے تھے یا ہورہے تھے۔مثلاً اینٹی غزل، رومانی غزل، غیر رومانی غزل(جسے بعض شعراء نے عوامی غزل کا بھی نام دیا) لسانی تشکیلات اور نظم کی دنیا میں نثری نظم اور ہائیکو وغیرہ کا چرچا زیادہ تھا۔ لیاقت علی عاصمؔ ان تمام رجحانات و میلانات سے آگاہ رہے۔ لیکن اُن کے اظہار کا وسیلہ غزل ہی رہی۔

غزل چاہے میں خود لکھوں یا دوسرے شعراء کی غزلوں کا مطالعہ کروں۔ بہرصورت یہی اندازہ ہوتا ہے کہ غزل بہت آسان صنفِ سخن بھی ہے اور بہت مشکل بھی۔ آسان تو یوں ہے کہ بنے بنائے مضامین کو قافیے ردیف کی پابندی سے کہتے چلے جائیے۔ آپ پر اس کی کوئی ذمے داری نہیں کہ قاری یا سامع اس سے متاثر ہوتا ہے یا نہیں۔بلکہ زیادہ تر تو اس شعر کے مصداق ساری شاعرانہ کاوش آئینہ ہوجاتی ہے:

سارا دیوانِ زندگی دیکھا
ایک مصرع نہ انتخاب ہُوا

غزل کا دوسرا رُخ یہ ہے کہ جو اُس عمومی اور خصوصی جینئس(GENIUS)سے تخلیقی طورپرقریب ہیں جو ہماری غزل کی روایت میں صرف ہوئی ہے۔ ان کے یہاں انہی کلاسیکی استعاروں،تشبیہوں اورعلامتوں میں تازہ کاری کی مثالیں مل جاتی ہیں۔

میں غزل کو ایک منظر بیں یا (Keiladoscope)سمجھتاہوں جس میں چند رنگین شیشوں کے ٹکڑے بند ہوتے ہیں۔ انھیں ہلاتے اور دیکھتے جائیے۔ انھیں چند ٹکڑوں سے نت نئے مرقع اور ڈیزائن سامنے آتے چلے جائیں گے۔ ایک اچھے غزل گو کی پہچان یہی ہوتی ہے کہ وہ غزل کی نزاکتوں کو کتنا جانتا اور انھیں کس طرح برتتا ہے۔ شاعری میں تجربے یقیناً بہت اہمیت رکھتے ہیں لیکن بسا اوقات دیکھا گیا ہے کہ جدّت طرازی یا دوسروں سے مختلف نظر آنے کے شوق میں شاعری کے نام پر ایسے تجربات بھی کیے جاتے ہیں جن کے نتیجے میں تجربات تورہ جاتے ہیں،شاعری غائب ہوجاتی ہے۔ شاعری میں اگر شاعری یا شعریت ہی نہیں ہے توپھر اس پر توجہ دینے کی ضرورت ہی کیا ہے۔

لیاقت علی عاصمؔ نے غزل کی تخلیق میں اس امر کو اہمیت دی ہے کہ تازہ کاری کے ساتھ ساتھ شعریت اور تخلیقی جمالیات کے عناصر بھی موجود رہیں۔ عاصمؔ کے چندشعردیکھیے:

میرے چہرے میں کسی اور کا چہرہ تو نہیں
جانے وہ کس کی رعایت سے مجھے دیکھتا ہے

لغت اور زبان کے رموز سے آگاہی رکھنے والے ہی اس شعر میں لفظ ’’رعایت‘‘ کی معنویت کو محسوس کرسکتے ہیں۔پھر بعض اوقات مسلّمات کو توڑ کر ایک نیا زاویہ یوں پیدا کیا ہے:

ورنہ سقراط مرگیا ہوتا
اُس پیالے میں زہر تھا ہی نہیں

فن کسی نوعیت کابھی ہواس میں کشش اور تازہ کاری فن کا ر ہی پیدا کرتا ہے صرف موضوع کوئی معنی نہیں رکھتا۔ میرے اس خیال کی تائید بعض برگزیدہ شعراء کے ان اظہارات سے بھی ہوسکتی ہے:

مصرع کبھوکبھو کوئی موزوں کروں ہوں میں
کس خوش سلیقگی سے جگر خوں کروں ہوں میں
(میرتقی میرؔ)
قطرۂ خونِ جگر سِل کو بناتا ہے دل
(اقبالؔ)
تمہی بتاؤ زیادہ اہم ہے کون ان میں
شکنتلا کی جوانی کہ کالیداس کا فن
(فراقؔ گورکھپوری)

اور حقیقت بھی یہی ہے کہ ہیلن،قلوپطرااور شکنتلا سے بھی زیادہ حسین عورتیں دنیا میں پیدا ہوئی ہوں گی لیکن انھیں دوام بخشا ہے بڑے فنکاروں نے۔ بقول مجروحؔ سلطانپوری:

دہر میں مجروحؔ کوئی جاوداں مضموں کہاں
میں جسے چھوتا گیا وہ جاوداں بنتا گیا

لیاقت علی عاصمؔ کراچی کے باشندے ہیں۔ کراچی بحیرۂ عرب کے ساحل پر واقع ہے۔ اس لیے اس شہر کے لوگ سمندر سے بھی اپنا ایک جذباتی اور ذہنی رشتہ رکھتے ہیں۔ اور لیاقت علی عاصمؔ تو اس لحاظ سے منفرد ہیں کہ وہ اس ساحلی شہر سے ملحق ایک جزیرے ’’منوڑا‘‘ میں پیدا ہوئے۔ گویا اُن کا تعلق سمندر سے اکتسابی نہیں ہے بلکہ وہ سمندر سے قربت کے نت نئے تجربوں سے گزرتے رہے جبھی تو انھوں نے اپنے ایک شعری مجموعے کو’’آنگن میں سمندر‘‘ سے موسوم کیا۔ سمندر عاصمؔ کے لیے ایک بنیادی علامت (ARCHETYPE) بن گیا ہے۔ تاہم یہی ان کی شاعری کا مرکزومحور نہیں ہے جیسے انگریزی زبان کے بعض شاعر’’سمندری شاعر‘‘(SEA POETS) کہلاتے ہیں۔ عاصمؔ نے زندگی کے ہر رنگ اورہرروپ کو کھلی آنکھوں سے دیکھا ہے اور وہ اسے شعرکے جمالیاتی پیکر میں ڈھالنے کا سلیقہ رکھتے ہیں۔

میں ۲۰۱۵ء میں امریکا کے نواورکینیڈا کے دوشہروں میں علی گڑھ یونیورسٹی المنائی فیڈریشن کی دعوت پر اپنے جشن،مشاعروں اور مذاکروں کے سلسلے میں گیا ہوا تھا۔ ہندوستان سے سنیل کمار تنگ(بہار)طاہر فراز (رام پور) اور راجیش ریڈی (بمبئی) بھی سارا وقت ہمارے ساتھ تھے۔ وہ اکثر باتوں باتوں میں پاکستان کے قابلِ ذکر شعراء کی بابت گفتگو چھیڑ دیتے تھے۔ میں نے چند دیگر شعراء کے علاوہ ہرجگہ لیاقت علی عاصمؔ کا تذکرہ کیا کہ وہ شاعری کے بارے میں بہت سنجیدہ ہیں۔ تسلسل سے لکھ رہے ہیں۔ ان کے اب تک سات شعری مجموعے منظر عام پر آچکے ہیں۔ ان میں کئی جگہ ندرت اور تازہ کاری دامنِ توجہ کو کھینچ لیتی ہے۔ عاصمؔ کے کئی شعر جو مجھے یاد تھے،میں نے اُنھیں سنائے بھی۔ پھر میں نے یہ کہا کہ غزل کی بات تو درمیان میں آتی ہی ہے لیکن عاصمؔ کی تازہ کاری کی مثال ایک ہائیکو سے بھی دی جاسکتی ہے:

تتلی کی ہے بھول
شیشہ توڑ کے چومے گی
پیپر ویٹ کا پھول
اس پر سب نے بے اختیار داد دی۔
اصل میں ہر شاعر کا ایک مزاج اور پسندیدہ اُسلوب ہوتا ہے۔لیاقت علی عاصمؔ کا یہ کہنا کچھ معنی رکھتا ہے :
عجیب شخص ہے غالبؔ کہ یوں ملا عاصمؔ
کہ معاملہ نہ رہا میرؔ و مصحفیؔ سے مجھے

یہ شعر عاصمؔ کے مجموعے’’آنگن میں سمندر‘‘سے لیا گیا ہے جو نومبر۱۹۸۸ء میں شائع ہُوا تھا۔ عاصم ؔ۱۴؍ اگست ۱۹۵۱ء کو پیدا ہوئے۔ ۱۹۶۵ء سے شعرکہہ رہے ہیں۔ ۱۹۷۰ء میں ان کا پہلا شعری انتخاب ’’سبدُِگل‘‘ کے نام سے شائع ہُوا۔گویا ابتدائی برسوں ہی میں طے ہوگیا کہ انھیں طرزِ غالبؔ سے مناسبتِ طبع حاصل ہے۔ لیکن یہاں بھی انھوں نے غالبؔ سے مضامین اور پروازِ تخیل کا اثر قبول نہیں کیا بلکہ اپنے فکروتجربہ کے جمالیاتی نظام میں رہتے ہوئے فطری اور وجدانی اظہارپر توجہ مرکوز رکھی۔

اردو شاعری،خصوصاً غزل پر ہراعتبار سے فارسی کے اثرات ہیں۔ اب بھی اس کے بیش تر لوازم فارسی ہی سے ہم رشتہ نظر آتے ہیں۔ خصوصاً محبوب کے لیے تذکیر کا صیغہ۔ حالانکہ ابتدائی دور میں ہندی شاعری کے زیر اثر امیرخسروؔ کے یہاں اور آگے چل کر ولیؔدکنی کی غزل میں ثانیت کا صیغہ استعمال ہوا ہے:

مت عشق کے شعلے سُوں جلتی کو جلاتی جا
ٹک مہرکے پانی سُوں یہ آگ بجھاتی جا
تجھ مکھ کی پرستش میں گئی عمر مری ساری
اے ُبت کی پُجن ہاری اس مکھ کو پجاتی جا

حالیؔ نے پُرزور الفاظ میں اس کمزوری کی جانب اپنے مقدے میں تنقید کی ہے کہ اس طرح کے اظہارات’’نیچرل شاعری‘‘ اور’’نیچرل تجربات‘‘ کے منافی ہیں۔ شاید اسی لیے بھی اردو کی مثنویات کا ازسرنومطالعہ کیا گیا اور پھر:

یہی وادی ہے اے ہمدم جہاں ریحانہ رہتی تھی
ترا جسم اک ہجومِ ریشم و کمخواب ہے سلمیٰ
(اخترشیرانی)
اے مری ہم رقص مجھ کو تھام لے
زندگی سے بھاگ کر آیا ہوں میں
ڪ(ن۔م۔راشد)
صندلی ہات پہ دھندلی سے حنا کی تحریر
ہائے اس جسم کے کم بخت دلآویز خطوط
(فیض احمدفیضؔ)
بندکمرے میں مرے خط جو جلائے ہوں گے
ایک اک نقش محبت ابھر آیا ہوگا
سر نہ کاندھے سے سہیلی کے نہ اٹھایا ہوگا
(کیفی اعظمی)

جیسے بے شمار اشعار نظم گوئی کی بدولت،جذبات و تجربات کے صحیح رُخ کی طرف متوجہ ہوئے۔ لیاقت علی عاصمؔ کی پوری غزل اس رجحانات کی آئینہ دار ہے:

اکثر اپنے قدوقامت سے بڑی لگتی ہوتم
دھوپ بھی لگتی ہوتم دیوار بھی لگتی ہوتم
کتنی سادہ، کتنی گم سم اپنے ہر انداز میں
شہر کی ہوتے ہوئے بھی گاؤں کی لگتی ہو تم

اس کے بعد براہِ راست ایسا اظہار تو عاصمؔ کی غزلوں میں نہیں ملا لیکن تلازمات اور استعارے ایک نسائی پیکر ہی کی گواہی دیتے ہیں۔ حسرتؔ موہانی نے بھی غزل کے محبوب کو بزم سے اٹھاکر گھر کی چھت تک بلا لیا تھا:

دوپہر کی دھوپ میں میرے بلانے کے لیے
وہ ترا کوٹھے پہ ننگے پاؤں آنا یاد ہے

حالیؔ نے ملٹنؔ کے قول سے استفادہ کرتے ہوئےSENSOUSکا ترجمہ جوش کیا تھا جو شایدان کے معاشرتی،افادی اور اصلاحی جذبے کی نمائندگی کرتا ہو۔ لیکن یہ ّحسیاتی یا احساسی کیفیات کے اظہار کا نام ہے۔ اس میں موضوع سے زیادہ تخلیق کار کے ہنر اور اس کی صداقتِ اظہار اہمیت رکھتی ہے۔ تو شاعر اپنے اظہار کے سلیقے اور جمالیاتی رکھ رکھاؤ سے پہچان جاتااور اس کے موضوع کو اہمیت بھی اس کی نادرہ کاری اور تخلیقی ہنرمندی سے حاصل ہوتی ہے۔

لیاقت علی عاصمؔ کے عام موضوعات پر زیادہ لکھا گیا ہے لیکن ان کی غزل میں جسمانی جمالیات اور احساسی تجربات کے بارے میں شاید کم لکھا گیا ہے۔ حالانکہ ان کے ساتوں شعری مجموعوں میں تنوع کے ساتھ اس انداز کے اشعار کی تعداد اچھی خاصی ہے۔ خاص طور سے ان کی کتاب’’رقصِ وصال‘‘ سے ان رجحانات کا سلسلہ آگے بڑھاہے:

کوئی آس پاس نہیں رہا تو خیال تیری طرف گیا
مجھے اپنا ہاتھ بھی چھوگیا تو خیال تیری طرف گیا
٭٭٭
مے کو مے خوار سمجھتا ہے، سبو کیا جانے
تجھ میں جو نشّہ ہے اُس نشّے کو تُو کیا جانے
٭٭٭
میں طلسمِ حسن میں کھوچکا مرا کیا نشاں مرا کیا پتا
ترا خواب دے مجھے راستہ تو میں آؤں اپنے خیال میں

لیاقت علی عاصمؔ کے کلا م کے یہ پہلو میں نے خاص طورپر اُجاگر کیے ہیں۔ ان کے یہاں وہ تمام موضوعات بھی اشعار میں بڑی خوبی سے ڈھلے ہیں جن سے ہمارے عہد اور ہمارے عوام کو شب وروز گزرنا اور سہنا ہوتا ہے۔ چونکہ ساتوں شعری مجموعوں کا یہ’’کلیات‘‘ شائع ہورہا ہے اس لیے مثالوں سے گریز کر رہا ہوں۔ تازہ کاری اور نئے اُسلوب کی جستجو کرنیوالے اذہان یقیناً لیاقت علی عاصمؔ کے کلّیات کا خیر مقدم کریں گے۔ میں کلّیاتِ عاصمؔ کی اشاعت پر لیاقت علی عاصمؔ کو دلی مبارکباد پیش کرتا ہوں۔


متعلقہ خبریں


عمران خان کو نشانا بنانے کے لیے مجھے آلے کے طور پر استعمال کیا جاتا تھا، جمائما وجود - هفته 16 اکتوبر 2021

وزیراعظم عمران خان کی سابق اور پہلی اہلیہ جمائما گولڈ اسمتھ نے انکشاف کیا ہے کہ انہیں ان کے سابق شوہر کو سیاسی طور پر نشانا بنانے کے لیے 'آلے' کے طور پر استعمال کیا جاتا تھا۔ برطانوی اخبار 'ایوننگ اسٹینڈر' کو دیے گئے خصوصی انٹرویو میں 47 سالہ برطانوی نژاد جمائما گولڈ اسمتھ نے کہا کہ خود سے دگنی عمر کے شخص سے شادی کرنے کا فیصلہ آسان نہ تھا اور جن سے انہوں نے شادی کی وہ کوئی عام شخص نہیں تھے۔ جمائما گولڈ اسمتھ کے مطابق انہوں نے 21 سال کی عمر میں خود سے دُگنی عمر کے ایسے شخص سے ...

عمران خان کو نشانا بنانے کے لیے مجھے آلے کے طور پر استعمال کیا جاتا تھا، جمائما

برطانوی رکن پارلیمنٹ ڈیوڈ امیس چاقو کے حملے میں ہلاک وجود - هفته 16 اکتوبر 2021

وزیراعظم بورس جانسن کی کنزرویٹو پارٹی سے تعلق رکھنے والے برطانوی رکن پارلیمنٹ ڈیوڈ امیس چرچ میں چاقو سے کیے گئے قاتلانہ حملے میں ہلاک ہو گئے ہیں۔برطانوی خبر رساں ایجنسی کے مطابق ایسکس پولیس نے بتایا کہ اپنے انتخابی حلقے میں ووٹرز سے ملاقات کرنے والے برطانوی 69سالہ رکن پارلیمنٹ کو ایک شخص نے چاقو کے وار کر کے ہلاک کر دیا۔ان پر ایکسکس کے مغربی علاقے میں واقع بیلفیئرز میتھوڈسٹ چرچ میں حملہ کیا گیا اور وہ زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسے۔پولیس نے فوری طور پر چرچ میں آ کر ایک شخص ...

برطانوی رکن پارلیمنٹ ڈیوڈ امیس چاقو کے حملے میں ہلاک

افغانستان، مسجد میں بم دھماکا، 37فراد جاں بحق، 70سے زائد زخمی وجود - هفته 16 اکتوبر 2021

افغانستان کے جنوبی شہر قندھار میں جمعے کے روز ایک شیعہ مسجد میں ہوئے بم دھماکے میں ہلاکتوں کی تعداد 37 ہو گئی ہے جبکہ ستر سے زائد زخمی ہوئے ہیں۔ یہ بم دھماکا ٹھیک اس وقت ہوا جب مسجد میں نماز جمعہ ادا کی جا رہی تھی۔ میڈیارپورٹس کے مطابق اس بم دھماکے کا ہدف صوبے کی سب سے بڑی شیعہ مسجد بنی۔ طبی ذرائع کے مطابق اس دھماکے کے نتیجے میں 70 سے زائد افراد زخمی بھی ہوئے ہیں۔ اقوام متحدہ کے معاون مشن برائے افغانستان UNAMA نے امام باڑہ فاطمیہ مسجد پر ہوئے اس بم حملے کی مذمت کرتے ہوئے کہا ...

افغانستان، مسجد میں بم دھماکا،  37فراد جاں بحق، 70سے زائد زخمی

بعض باتوں کا جواب عمران خان ہی دے سکتے ہیں ، وزیر داخلہ وجود - هفته 16 اکتوبر 2021

وزیر داخلہ شیخ رشید نے کہا ہے کہ اگلے جمعہ تک سب ٹھیک ہوجائے گا، معاملات طے ہوچکے ہیں، طریقہ کار کا اعلان 7 دن میں ہوجائے گا۔ایک نجی ٹی وی سے گفتگو کے دوران شیخ رشید نے حکومت اور فوج میں کسی بھی نوعیت کے اختلاف کی تردید کی۔شیخ رشید احمد نے کہا کہ مجھے اندازہ ہے، لیکن اس کے باوجود بعض باتوں کا جواب وزیراعظم عمران خان ہی دے سکتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ لوگ بہت جلدی گھبرا جاتے ہیں، اس معاملے پر عمران خان نے پارلیمانی پارٹی کو اعتماد میں لے لیا ہے۔وفاقی وزیر نے مزید کہا کہ میرے پاس ج...

بعض باتوں کا جواب عمران خان ہی دے سکتے ہیں ، وزیر داخلہ

پاکستان تحریک انصاف کی حکومت میں بجلی کی اوسط قیمت میں 52 فیصد اضافہ ہوا ، نیپرا ذرائع وجود - هفته 16 اکتوبر 2021

نیشنل الیکٹرک پاؤر ریگولیٹری اتھارٹی(نیپرا)ذرائع کے مطابق پاکستان تحریک انصاف کی حکومت میں بجلی کی اوسط قیمت میں 52 فیصد اضافہ ہوا ہے۔ذرائع نیپرا کے مطابق پی ٹی آئی حکومت آنے سے پہلے بجلی کی اوسط قیمت11 روپے 72 پیسے فی یونٹ تھی، پی ٹی آئی حکومت کے دوران فی یونٹ بجلی کی قیمت میں اوسطا 6 روپے11 پیسے اضافہ ہوا۔ نجی ٹی وی کے مطابق ذرائع نیپرا کا کہنا ہے کہ حالیہ 1روپیہ 39 پیسے اضافے سے فی یونٹ اوسط قیمت 17 روپے 83 پیسے ہو جائے گی، اوسط قیمت فی یونٹ میں بنیادی ٹیرف اور سہ ماہی ٹیر...

پاکستان تحریک انصاف کی حکومت میں بجلی کی اوسط قیمت میں 52 فیصد اضافہ ہوا ، نیپرا ذرائع

ملک میں مہنگائی کی شرح 12.66 فیصد تک پہنچ گئی وجود - هفته 16 اکتوبر 2021

ملک میں مہنگائی کی شرح میں اضافہ بدستور جاری ہے، مہنگائی کی مجموعی شرح 12.66 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔وفاقی ادارہ شماریات کی جانب سے جاری کردہ ہفتہ وار مہنگائی کے اعداد و شمار میں بتایا گیا ہے کہ ایک ہفتے میں مہنگائی میں 0.20 فیصد کا اضافہ ہوگیا اور مہنگائی کی مجموعی شرح 12.66 فیصد تک پہنچ گئی۔ادارہ شماریات کے مطابق کم آمدنی والوں کے لیے مہنگائی کی شرح 14.12 فیصد تک پہنچ گئی جبکہ ایک ہفتے میں 22 اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں اضافہ ریکارڈ کیا گیا، ٹماٹر کی فی کلو قیمت میں 11 روپے تک ...

ملک میں مہنگائی کی شرح 12.66 فیصد تک پہنچ گئی

برطانیہ بینک فراڈ کی دنیا کا دارالحکومت بن گیا وجود - هفته 16 اکتوبر 2021

برطانیہ بینک فراڈ کا گڑھ بن گیا۔ غیر ملکی خبر رساں ادارے نے برطانیہ کو بینک فراڈ کی دنیا کا دارالحکومت قرار دے دیا۔ میڈیارپورٹس کے مطابق رواں سال کے پہلے چھ ماہ میں لوگوں کے ایک ارب ڈالر اڑا لیے گئے۔ بیرون ملک سے دھوکے بازی میں بھارت اور مغربی افریقہ کے شہری ملوث نکلے۔خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ برطانوی ریکارڈ کے مطابق رواں سال کے ابتدائی چھ ماہ میں 754 ملین پونڈز چرائے گئے جو کہ گزشتہ سال کے مقابلے میں 30 فیصد زیادہ ہیں۔

برطانیہ بینک فراڈ کی دنیا کا دارالحکومت بن گیا

کورونا سے صحت مند زندگی گزارنے کے مواقع کم ہوگئے ہیں، ڈبلیو ایچ او وجود - هفته 16 اکتوبر 2021

عالمی ادارہ صحت (ڈبلیو ایچ او)نے کہاہے کہ عالمی وبا کورونا وائرس کے باعث فعال اور صحت مند زندگی گزارنے کے مواقع کم ہوگئے ہیں۔ میڈیارپورٹس کے مطابق اپنے ایک بیان میں ڈبلیو ایچ او نے صحت، کھیل، تعلیم اور ٹرانسپورٹ کے شعبوں کے فیصلہ سازوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ ہنگامی بنیادوں پر جامع پروگرام اور خدمات کے لیے اقدامات اٹھائیں اور محفوظ ماحول پیدا کریں جس سے تمام برادریوں میں جسمانی سرگرمیوں کو فروغ ملے۔ ڈبلیو ایچ او کی ڈپٹی ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر سوزانہ جیکب کا اپنے بیان میں کہنا تھا...

کورونا سے صحت مند زندگی گزارنے کے مواقع کم ہوگئے ہیں، ڈبلیو ایچ او

حیدرآباد، مختار کار کے گھر لاش ملنے پر ہنگامہ آرائی وجود - جمعه 15 اکتوبر 2021

سندھ کے دوسرے بڑے شہر حیدر آباد کے علاقے قاسم آباد میں حالات انتہائی کشیدہ ہوگئے ہیں۔ اطلاعات کے مطابق مختارِ کار ماجد خاصخیلی کے گھر سے ایک لاش ملنے کے بعد ہنگامہ آرائی کی نوبت آگئی ہے۔ ڈی آئی جی شرجیل کھرل کے مطابق مشتعل افراد نے مختارِ کار ماجد خاصخیلی کے گھر کا گھیراؤ کر لیا تھا۔ اطلاعات کے مطابق اسی دوران فائرنگ بھی کی گئی ۔فائرنگ کے نتیجے میں مختارِ کار ماجد خاصخیلی اور ان کے 2 بھائی زخمی ہو گئے۔کمشنرعباس بلوچ کے مطابق مختارِ کار ماجد خاصخیلی کی حالت تشویش ناک ہے۔ ...

حیدرآباد، مختار کار کے گھر لاش ملنے پر ہنگامہ آرائی

گھی اور آئل سمیت مختلف اشیاء کی قیمتوں میں ہوش ربا اضافہ وجود - جمعه 15 اکتوبر 2021

یوٹیلیٹی اسٹورز نے گھی اور آئل سمیت مختلف اشیاء کی قیمتوں میں اضافے کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا۔ نوٹیفکیشن کے مطابق مختلف برانڈز کے گھی کی قیمتوں میں 40 سے 1090 روپے تک کا اضافہ کیا گیا، یوٹیلیٹی اسٹورز پر ڈالڈ گھی کی فی کلو قیمت میں 109 روپے تک اضافہ کر دیا گیا ،قیمتوں میں اضافے کا نوٹیفکیشن جاری کر دیا گیا اطلاق فوری ہوگا۔ نوٹیفکیشن کے مطابق یوٹیلیٹی اسٹورز پر ڈالڈا گھی کا 10 لٹر کین 1090 روپے مہنگا ہوگیا ،10 لٹر ڈالڈا گھی کا کین 2500 روپے بڑھ کر 3590 روپے کا ہوگیا۔ نوٹیفکیشن ...

گھی اور آئل سمیت مختلف اشیاء کی قیمتوں میں ہوش ربا اضافہ

بجلی کی قیمت میں 1.68 پیسے فی یونٹ اضافہ کی منظوری وجود - جمعه 15 اکتوبر 2021

حکومت نے بجلی کی قیمت میں مزید 1 روپے 68 پیسے فی یونٹ منظوری دیدی۔ تفصیلات کے مطابق حکومت نے عوام پر ایک بار پھر بجلی بم گرا دیا، اور بجلی کی قیمتوں میں 1 روپے 68 پیسے فی یونٹ مہنگی کر دی گئی ۔ وفاقی کابینہ نے بجلی مہنگی کرنے کی منظوری دے دی ۔ بجلی کی قیمتوں میں اضافے کی سمری وزارت توانائی کی جانب سے بھجوائی گئی تھی۔بجلی کی قیمت میں اضافہ سہہ ماہی ٹیرف ایڈجسٹمنٹ کی مد میں کیا گیا، کابینہ نے سرکولیشن سمری کے ذریعے بجلی مہنگی کرنے کی منظوری دی ، نیپرا نے سہ ماہی ٹیرف ایڈجسٹمنٹ ...

بجلی کی قیمت میں  1.68 پیسے فی یونٹ اضافہ کی منظوری

نسلہ ٹاور خالی کروانے کا اشتہار شائع وجود - جمعه 15 اکتوبر 2021

کراچی میں نسلہ ٹاور کے رہائشیوں سے عمارت خالی کروانے کے اشتہار اخبارات میں شائع کردیے گئے ہیں۔کراچی میں اسسٹنٹ کمشنر فیروزآباد نے نسلہ ٹاور کے رہائشیوں کو عمارت 15 دن میں خالی کرنے کے اشتہار اخبارات میں شائع کرادئیے ہیں۔ نوٹس میں بتایا گیا ہے کہ اگر نسلہ ٹاور خالی نہ کیا گیا تو رہائشیوں کے خلاف قانونی کارروائی ہوگی۔ اشتہار میں سپریم کورٹ کے 16 جون اور 22 ستمبر والے فیصلے کا حوالہ بھی دیا گیا ہے۔یہ بھی بتایا گیا ہے کہ عمارت خالی نہ کرنے کی صورت میں فیروزآباد پولیس کی مدد لی جا...

نسلہ ٹاور خالی کروانے کا اشتہار شائع

مضامین
روشن مثالیں وجود هفته 16 اکتوبر 2021
روشن مثالیں

تعیناتی کو طوفان بنانے کی کوشش وجود هفته 16 اکتوبر 2021
تعیناتی کو طوفان بنانے کی کوشش

سنجیدہ لوگ، ماحولیات اور بچے وجود هفته 16 اکتوبر 2021
سنجیدہ لوگ، ماحولیات اور بچے

پنڈورا پیپرز کے انکشافات وجود هفته 16 اکتوبر 2021
پنڈورا پیپرز کے انکشافات

بارودکاڈھیر وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
بارودکاڈھیر

نخریلی بیویاں،خودکش شوہر وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
نخریلی بیویاں،خودکش شوہر

آسام میں پولیس کی درندگی وجود جمعه 15 اکتوبر 2021
آسام میں پولیس کی درندگی

کراچی میں بلدیاتی انتخابات کے امکانات اور مضمرات؟ وجود جمعرات 14 اکتوبر 2021
کراچی میں بلدیاتی انتخابات کے امکانات اور مضمرات؟

میں بھول گیا تھا، وہ چیف آف آرمی اسٹاف ہے!! وجود جمعرات 14 اکتوبر 2021
میں بھول گیا تھا، وہ چیف آف آرمی اسٹاف ہے!!

امریکا کی آخری جنگ کی خواہش وجود منگل 12 اکتوبر 2021
امریکا کی آخری جنگ کی خواہش

مسلم قیادت کا بحران اوراسد الدین اویسی وجود منگل 12 اکتوبر 2021
مسلم قیادت کا بحران اوراسد الدین اویسی

کسانوں کے قتل پر نریندر مودی اور امیت شاہ کی مجرمانہ خاموشی وجود منگل 12 اکتوبر 2021
کسانوں کے قتل پر نریندر مودی اور امیت شاہ کی مجرمانہ خاموشی

اشتہار

افغانستان
افغانستان کی صورتحال ، امریکی نائب وزیر خارجہ آج اسلام آباد پہنچیں گی وجود جمعرات 07 اکتوبر 2021
افغانستان کی صورتحال ، امریکی نائب وزیر خارجہ آج اسلام آباد پہنچیں گی

طالبان کا داعش کے خلاف کریک ڈاؤن کا حکم وجود جمعرات 30 ستمبر 2021
طالبان کا داعش کے خلاف کریک ڈاؤن کا حکم

طالبان حکومت کے بعد پاکستان کی افغانستان کیلئے برآمدات دگنی ہوگئیں وجود جمعه 17 ستمبر 2021
طالبان حکومت کے بعد پاکستان کی افغانستان کیلئے برآمدات دگنی ہوگئیں

امریکا کا نیا کھیل شروع، القاعدہ آئندہ چند سالوں میں ایک اور حملے کی صلاحیت حاصل کر لے گی،ڈپٹی ڈائریکٹر سی آئی اے وجود بدھ 15 ستمبر 2021
امریکا کا نیا کھیل شروع،  القاعدہ آئندہ چند سالوں میں ایک اور حملے کی صلاحیت حاصل کر لے گی،ڈپٹی ڈائریکٹر سی آئی اے

طالبان دہشت گرد ہیں تو پھر نہرو،گاندھی بھی دہشت گرد تھے، مہتمم دارالعلوم دیوبند کا بھارت میں کلمہ حق وجود بدھ 15 ستمبر 2021
طالبان دہشت گرد ہیں تو پھر نہرو،گاندھی بھی دہشت گرد تھے، مہتمم دارالعلوم دیوبند کا بھارت میں کلمہ حق

اشتہار

بھارت
بھارت،چین کے درمیان 17 ماہ سے جاری سرحدی کشیدگی پر مذاکرات ناکام وجود منگل 12 اکتوبر 2021
بھارت،چین کے درمیان 17 ماہ سے جاری سرحدی کشیدگی پر مذاکرات ناکام

مزاحمتی تحریک سے وابستہ کشمیریوں کے خلاف بھارتی کارروائیوں میں تیزی لانے کا منصوبہ وجود هفته 09 اکتوبر 2021
مزاحمتی تحریک سے وابستہ کشمیریوں کے خلاف بھارتی کارروائیوں میں  تیزی لانے کا منصوبہ

مرکزی بینک آف انڈیاا سٹیٹ بینک آف پاکستان کا 45 کروڑ 60 لاکھ کا مقروض نکلا وجود جمعه 08 اکتوبر 2021
مرکزی بینک آف انڈیاا سٹیٹ بینک آف پاکستان کا 45 کروڑ 60 لاکھ کا مقروض نکلا

بھارت، مسجد میں قرآن پڑھنے والا شہید کردیاگیا وجود جمعه 08 اکتوبر 2021
بھارت، مسجد میں قرآن پڑھنے والا شہید کردیاگیا

شاہ رخ کے بیٹے آریان کو 20 سال تک سزا ہوسکتی ہے وجود جمعرات 07 اکتوبر 2021
شاہ رخ کے بیٹے آریان کو 20 سال تک سزا ہوسکتی ہے
ادبیات
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب

تاجکستان بزنس کنونشن میں عمران خان پر شعری تنقید، اتنے ظالم نہ بنو،کچھ تو مروت سیکھو! وجود جمعه 17 ستمبر 2021
تاجکستان بزنس کنونشن میں عمران خان پر شعری تنقید، اتنے ظالم نہ بنو،کچھ تو مروت سیکھو!

طالبان کا ’بھگوان والمیکی‘ سے موازنے پر منور رانا کے خلاف ایک اور مقدمہ وجود منگل 24 اگست 2021
طالبان کا ’بھگوان والمیکی‘ سے موازنے پر منور رانا کے خلاف ایک اور مقدمہ
شخصیات
ڈاکٹرعبدالقدیرخان کے لیے دو قبروں کا انتظام، تدفین ایچ8 میں کی گئی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبدالقدیرخان کے لیے دو قبروں کا انتظام، تدفین ایچ8 میں کی گئی

ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی نمازِجنازہ ادا کردی گئی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹر عبدالقدیر خان کی نمازِجنازہ ادا کردی گئی

ڈاکٹرعبدالقدیر خان نے150 سے زائد سائنسی تحقیقاتی مضامین تحریر کیے وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبدالقدیر خان نے150 سے زائد سائنسی تحقیقاتی مضامین تحریر کیے

ڈاکٹرعبد القدیر خان نے8 سال کی قلیل مدت میں ایٹمی پلانٹ نصب کیا،ساری دنیا حیرت زدہ رہی وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
ڈاکٹرعبد القدیر خان نے8 سال کی قلیل مدت میں ایٹمی پلانٹ نصب کیا،ساری دنیا حیرت زدہ رہی

آزاد کشمیرکے سابق صدر اور وزیراعظم سردار سکندر حیات خان کی کوٹلی میں نماز جنازہ ادا وجود اتوار 10 اکتوبر 2021
آزاد کشمیرکے سابق صدر اور وزیراعظم سردار سکندر حیات خان کی کوٹلی میں نماز جنازہ ادا