وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

پاکستان کے چندقابل دیدمقامات

اتوار 25 فروری 2018 پاکستان کے چندقابل دیدمقامات

پاکستان ایک ایسا خطہ ارضی ہے جو ایک ہی وقت میں گنجان آباد شہروں، قدرتی حسن اور ایک انتہائی دلکش تہذیب کا مجموعہ ہے جو دنیا بھر کے سیاحوں اور کو اپنی طرف متوجہ کرتا ہے اور ہر سال ہزاروں سیاح پاکستان کا رخ کرتے ہیں۔

سیاحت کے شوقین افراد کے مختلف مزاج اور ذوق ہوتے ہیں، کچھ لوگ پرانی تہذیب اور تاریخ کے حامل ایسے بڑے شہروں کی طرف جانا چاہتے ہیں جو سیاحوں کو تمام سہولیات فراہم کرتے ہیں۔ اس نقطہ نظر سے کراچی اور لاہور دو ایسے شہر ہیں جو نہ صرف پاکستانی بلکہ بیرونی سیاحوں کو بھی اپنی طرف متوجہ کرتے ہیں اور سارا سال زائرین کا رش لگا رہتا ہے۔ آثار قدیمہ میں دلچسپی رکھنے والے اپنے شوق کی تسکین کے لیے ٹیکسلا، ہڑپہ اور موئن جو دڑو جیسے شہروں کا رخ کرتے ہیں۔ اور بلند و بالا پہاڑوں سے شغف رکھنے والوں اور اونچی چوٹیاں سر کرنے کا شوق رکھنے والوں کے لیے کے ٹو اور نانگا پربت کی چوٹیاں دلچسپی کا باعث ہوتی ہیں۔ یہ دونوں چوٹیاں 8000 میٹر سے زیادہ اونچائی پر ہیں۔

پاکستانی ساحت کا اگر تجزیہ کریں تو مختصرا یہ کہا جا سکتا ہے کہ پاکستان کے شمالی علاقہ جات ہر سال پاکستان آنے والے بیرونی سیاحوں کی زیادہ توجہ کے مرکز ہوتے ہیں۔ بالفاظ دیگر درحقیقت سیاحوں کی اکثریت کی بنیادی ترجیح ہی شمالی علاقہ جات ہوتے ہیں۔

پاکستان میں پائے جانے والے پہاڑی سلسلوں کے متعلق یہ ایک عمومی غلط فہمی پائی جاتی ہے کہ یہ سلسلے صرف شمال میں ہی ہیں۔ جبکہ حقیقت یہ ہے کہ پاکستان میں ایسے بہت سے سلسلے ہیں جو ملک کے مختلف حصوں میں واقع ہیں۔ شمالی پاکستان سیاحت کے لیے زیادہ زرخیز ہے کیوں کہ وہاں دنیا کی بلند ترین پہاڑی چوٹیاں، کچھ بڑی جھیلیں، بہت بڑے بڑے گلیشئر، اور بڑی دریائی وادیاں ہیں جو محبان فطرت کو اپنی جانب کھینچتی ہیں اور پاکستان کی اقتصادی ترقی میں کردار ادا کرتی ہیں۔

جہاں تک پاکستانی سیاحوں کا تعلق ہے تو ان کی اکثریت اصل شمالی پاکستان کے بجائے ہمالیہ کے زیریں حصوں کی طرف جانے میں زیادہ دلچسپی رکھتے ہیں اس کی کئی وجوہات ہو سکتی ہیں لیکن اہم وجوہات مصروف اوقات کار اور وسائل کی محدودیت ہو سکتے ہیں۔ ان وجوہات کے پیش نظر مندرجہ ذیل علاقیپاکستانی سیاحوں کے توجہ کے معروف سیاحتی مقامات کہے جا سکتے ہیں۔

مری اور گلیات
گلی یا گلیات پاکستان کے مقامی سیاحوں کے لیے سب سے زیادہ معروف سیاحتی علاقے ہیں۔ مقامی زبان میں گلی کا مطلب پہاڑوں کے درمیان سے گزرنے کا راستہ ہے، یہ راستے یا گلیات ایک ایسا راستہ مہیا کرتے ہیں جو بہت زیادہ فطرت کے بہت قریب ہوتا ہے۔ مری اور گلیات ایسی جگہ پر واقع ہیں جہاں تک پہنچنا انتہائی آسان ہے اور گرمیوں میں یہ علاقے بہت سرد ہوتے ہیں یہ دو خصوصیات ان علاقوں کی جانب سیاحوں کی توجہ میں کئی گناہ اضافہ کرتی ہیں۔

پیر پنجال کا پہاڑی سلسلہ جو کہ ان مقامات میں سب سے زیادہ خوبصورت ہے، وہ اتنے فاصلے پر ہے کہ سیاح اس کی برف سے ڈھکی چوٹیوں کا نظارہ کر سکتے ہیں۔‘‘حسن دیکھنے والے کی آنکھ میں ہوتا ہے’’ اس حقیقت کے پیش نظر ہم یہ تو نہیں کہہ سکتے کہ مری اور گلیات سب سے زیادہ خوبصورت مقامات ہیں لیکن ہم یہ ضرور کہہ سکتے ہیں کہ یہ سب سے زیادہ معروف سیاحتی مقامات ہیں۔

مری
یہ اسلام آباد سے بذریعہ سڑک صرف ایک گھنٹے کے فاصلے پر ہے لہذا اس تک پہنچنا انتہائی آسان ہے۔بہت سارے پاکستانی سیاح، بطور خاص وہ جو سندھ اور پنجاب کے میدانی علاقوں سے آتے ہیں وہ مری میں قیام کرنا پسند کرتے ہیں۔مری سطح سمند سے 7250 فٹ اونچا ہے اور پاکستان کا سب سے معروف پہاڑی سیر گاہ ہے۔

گرمیوں میں یہاں بہت زیادہ برف باری دیکھی جاتی ہے اور گرمیاں بہت ٹھنڈی ہوتی ہیں۔مری پانچ کلومیٹر پر مشتمل ایک چھوٹا سا شہر ہے جو کہ پنڈی پوائنٹ اور کشمیر پوائنٹ کے درمیان پھیلا ہوا ہے۔
مری کی سیاحوں میں مقبولیت کی ایک وجہ اس میں موجود خریداری کی سہولت ہے، اس حوالے سے مال روڈ خصوصی توجہ کا مرکز ہے۔مری اور گلیات کے مشہور ترین مقامات ہونے کے ساتھ ساتھ ان میں دلکش مناظر اور تفریح کے علاوہ اور بھی بہت سے مواقع ہیں جو ان مقامات کو اکثریت کے لیے پسندیدہ ترین بناتے ہیں۔مقامی سیاحوں کے لیے گلیات کو مقبولیت دینے والا سب سے اہم سبب اس تک آسان رسائی ہے، کیوں کہ وہ اسلام آباد سے صرف 2 سے 3 گھنٹے کے فاصلے پر ہے۔گلیات میں رہائش کی سہولت ایک ایسی خصوصیت ہے جو لوگوں کو زیادہ تعداد میں یہاں لانے کا ایک اہم سبب ہے۔ مختلف معیار کے ہوٹل، نجی گھر اور مہمان خانے مناسب رہائش کے لیے ہمہ وقت دستیاب ہیں۔خریداری کے بہترین مواقع موجود ہیں

جنگلی حیات کے مشاہدے کا بہترین موقع ہے
تفریح طبع کے لیے بہترین مواقع، مثلا گھڑ سواری، چیئر لفٹ اور واٹر پارک جیسی سرگرمیاں دستیاب ہیں۔اگر آپ اپنے اہل خانہ کے ساتھ الپائن کے جنگلات میں تازہ ہوا سے لطف اندوز ہوتے ہوئے چہل قدمی کرنا چاہتے ہیں تو لالہ زار، پائپ لائن اور مکھ پوری آپ کو بہترین مواقع فراہم کرتے ہیں۔اگر آپ کو نوجوان ہیں اور کوہ پیمائی سے شغف رکھتے ہیں تو آپ دو سے تین دن کا ایک پروگرام بنا کر اپنے ذوق کی تسکین کر سکتے ہیں۔رات کے پہر میں گھومنے پھرنے اور ٹہلنے کے کچھ اچھے مواقع میں درج ذیل اہم ہیں:

میران جانی پہاڑ جو کہ 9970 فٹ بلند ہے اور گلیات کا بلند ترین مقام ہے، اسی طرح ٹھنڈانی جو کہ سطح سمندر سے 8832 فٹ بلند ہے اور گلیات کا تیسرا بلند ترین مقام ہے۔ نتھیا گلی جو کہ 7500 فٹ بلندی پر ہے۔ ایوبیہ اور خانسپور جو کہ اتنے زیادہ بلند تو نہیں لیکن اپنے خوبصورت نظاروں، دلکش مناظر اور بہترین موسم کی وجہ سے بہت سے لوگوں کی توجہ کے مرکز رہتے ہیں۔
وادی کاغان

92 میل طویل وادی کاغان دریا اور پہاڑی چوٹیوں کے قدرتی حسن سے مالا مال ہے۔ انتہائی سبز و شاداب وادی جنت کا سا نظارہ پیش کرتی ہے۔ یہاں کوہ پیمائی کرنے والوں اور پہاڑی راستوں پر پیدل سفر کے شوقین لوگوں کے لیے بھی بہتر مواقع فراہم کرتی ہے۔

اس وادی میں سفر سفاری جیپ پر کیا جاتا ہے کیوں کہ راستے کچھ اس طرح کے ہیں کہ دیگر گاڑیوں کا وہاں تک جانا نہ صرف مشکل بلکہ خطرناک بھی ہو سکتا ہے۔ دوران سفر راستے کے اتار چڑھاؤ کے ساتھ پہاڑوں کے درمیان سے بل کھا کر گزرتے دریائے کنہار کا منظر بھی انتہائی دلکش ہوتا ہے۔ راستے میں شوگران، کاغان اور ناران کے خوبصورت گاؤں بھی سیاحوں کی خصوصی توجہ کے مرکز ہیں۔ 3266 میٹر بلند باسل بھی ایک بہت ہی خوبصورت چوٹی ہے، اور اس کے بالکل پیچھے لولوسر جھیل واقع ہے جو کہ قدرتی حسن کا ایک انمول نمونہ ہے۔ باسل سے ایک سڑک بابوسر ٹاپ کی طرف جاتی ہے جو کہ ایک رابطہ بھی ہے اور وادیء￿ کاغان اور پاکستان کے شمالی علاقہ جات کو تقسیم بھی کرتی ہے۔مقامی سیاحوں کے لیے کاغان پسندیدہ ترین مقامات میں سے ہے جس کی کئی وجوہات ہیں، تاہم اس وادی کا قدرتی اور دلکش نظارہ ایک ہم سبب ہے۔ کچھ دیگر اسباب درج ذیل ہیں:نسبتاً وہاں تک رسائی آسان ہے کیوں کہ یہ وفاقی دار الحکومت اسلام آباد سے 7، یا 8 گھنٹے کی مسافت پر ہے۔
ہر درجے کی رہائش دستیاب ہے۔ آپ اپنی مالی حیثیت کے مطابق اپنے لیے ریسٹ ہاؤس، ہوٹل یا پھر کوئی چھوٹا نجی گھر رہائش کے لے پسند منتخب کر سکتے ہیں۔

کنہار دریا ایک بہت خوبصورت نظارہ پیش کرتا ہے، اس کے ساتھ ساتھ کاغان میں اور بے شمار خوبصورت جھیلیں ہیں۔ نیز یہاں برف پوش چھوٹیاں بھی ہیں جو حسن فطرت کے دلدادہ افراد کے لیے دعوت نظارہ ہیں۔

کاغان کے کچھ خوبصورت ترین مقامات

اگر آپ کو آثار قدیمہ سے کچھ دلچسپی ہے تو آپ گندھارا بدھ تہذہب کا مرکز دیکھ سکتے ہیں جو کہ کئی صدیاں پرانا ہے
بالا کوٹ جو کہ وادیء کاغان کے صدر دروازے کی حیثیت رکھتا ہے۔
جھیل سیف الملوک جو کہ وادیء کاغان کی یقینی طور پر سب سے اہم جگہ ہے۔ یہ جھیل 3200 میٹر کی بلندی پر واقع ہے اور ملکہ پربت جو کہ 5390 میٹر کی بلند سطح پر ہے اس کی چھوٹی کا عکس جھیل سیف الملوک کے شیشے جیسے صاف اور چمکدار پانی میں صاف دکھائی دیتا ہے۔ اس جھیل کا نام سیف الملوک ایک دیومالائی کہانی کے نتیجے میں پڑا جس میں ایک شہزادے کو یہاں نہاتی ایک دوشیزہ سے پیار ہو جاتا ہے۔

لالہ زار چراہ گاہ
لالو سر جھیل
اگر آپ دو تین دن کی سیر پر نکلے ہیں تو دودوپاسٹر جو کہ 3920 میٹر بلند ہے آپ کے لیے ایک مثالی جگہ ہو سکتی ہے۔ بیال سے آغاز کریں۔بابو سر پاس جو کہ 4173 میٹر بلندی پر ہے ۔ کنہار دریا میں سفید پانی کے بھنور

وادی سوات
وادیء سوات پاکستان میں واقع خوبصورت وادیوں میں سے ایک ہے۔ کچھ عرصہ قبل سوات میں ایک ملٹری آپریشن ہوا جس کے باعث سوات کی سیاحت شدید متاثر ہوئی تھی لیکن اب ایک بار پھر امن و امان ہوا ہے اور وہاں کی رونقیں دوبارہ بحال ہو گئی ہیں اور سوات ایک بار پھر جنت ارضی بن گیا ہے جہاں پاکستان کے میدانی علاقوں سے ایک بڑی تعداد ٹھنڈی سردیوں سے لطف اندوز ہونے آتے ہیں۔ سوات گھومنے کے لیے آنے والے سب سے پہلے مینگورہ آتے ہیں جو کہ دریائے سوات کے کنارے پر واقع ہے اور ایک انتہائی لذیذ مچھلی ٹراؤٹ فش کی وجہ سے بہت مشہور ہے۔ اس طرح کے خوبصورت اور دلکش مناظر سوات کو سیاحوں کی توجہ کا مرکز بنا دیتے ہیں۔

مینگورہ اور سیدو شریف سوات کے دو اہم شہر ہیں جو 3250 فٹ کی بلندی پر واقع ہیں۔پاکستان کی وادیء￿ سوات کو پاکستان کا سوٹزر لینڈ بھی کہا جاتا ہے۔سوات ہمالیہ اور ہندو کش کے پہاڑی سلسلوں میں گھرا ہوا ہے جسے میں دل کش نظارے، پھلوں کے باغات اور خوبصورت موسم زائرین کو لطف اندوز کرنے کے لیے منتظر رہتا ہے۔اگر آپ ٹراؤٹ مچھلی کھانے کے ارادے سے نکلے ہیں تو وادیء سوات بہترین وادی ہے اور بحرین جو کہ 4500 فٹ بلندی پر ہے وہ بہترین جگہ ہے۔

کالام
کالام سطح سمندر سے 7250 فٹ کی بلندی پر ہے بحرین سے 30 کلومیٹر کے فاصلے پر ہے۔کالام کے مقام پر وادی بہتر وسیع و عریض ہے اور وہاں چرواہوں کے لیے بہت سی چراہ گاہیں ہیں۔
فلک سیر جو کہ اس علاقے کی سب سے بلند چوتی ہے جس کی بلندی 20،500 فٹ تک ہے، یہاں کی ایک بہت ہی خوبصورت جگہ ہے۔اس کے علاوہ اور بھی کچھ اہم مقامات ہیں جن میں سے چند مندرجہ ذیل ہیں:
مہودند جھیل
مالم جبہ
بدھوں کے کچھ تاریخی مقامات
سوات سے گلگت جانے والا راستہ
پاکستان کے میدان علاقوں سے آتے ہوئے سوات جانے والوں کے لیے پشاور ایک بہت اہم جگہ ہو سکتی ہے جہاں کی سیر سیاحتی مقامات میں ایک اہم اضافہ ہو گا۔

پشاور
پاکستان کے صوبہ خیبر پختونخواہ کے صدر مقام پشاور کو بر صغیر کی تاریخ میں ہمیشہ اہم مقام حاصل رہا ہے اور اس اہمیت کی وجہ درہ خیبر ہے۔وادیء سوات کی سیر کے پروگرام کو ترتیب دیتے ہوئے پشاور کو اپنے پروگرام میں شامل کرنے کی کچھ اہم وجوہات یہ ہیں:
مسجد محبت خان
پشاور عجائب گھر
قصہ خوانی بازار:۔ ایک بہت مشہور بازار جس کی کئی کہانیاں مشہور ہیں
کسیرا بازار جسے سونے کی گلی بھی کہا جاتا ہے
کاروان سرائے
اٹک پل کے پیچھے دریائے سند اور دریائے کابل کا سنگم اور ملاپ
یہ اور اس طرح کی دیگر کئی خوبصورت جگہیں جنہیں اس سفر کے دوران اپنے پروگرام میں شامل کر کے سیاحت کے مزے کو دو بالا کیا جا سکتا ہے۔ نیز پشاور کے مشہور چپل کباب اور چرسی تکے سے بھی لطف اندوز ہوا جا سکتا ہے۔

آزاد جموں و کشمیر
جموں و کشمیر خوبصورت مقامات میں سے ایک ہے جسے دیکھنے والے جنت نظیر کہتے ہیں۔ آزاد جموں و کشمیر میں سیاحوں کے توجہ کے بے شمار مراکز ہیں۔ کشمیر میں سیا? برف سے ڈھکی چوٹیاں، برف پوش پہاڑ، خوبصورت وادیاں جیسا کہ لیپا، نیلم، جہلم، کٹان، اور کران وغیرہ دیکھ سکتے ہیں۔ آزاد کشمیر میں بہت سے خوبصورت دریا، ندیاں ہیں اور یہ خوبصورت علاقے بہترین سستی اور معیاری رہائش کی سہولتوں سے بھی زائرین کے قیام کو آسان اور پر لطف بناتے ہیں، یہی وہ وجوہات ہیں جو مقامی سیاحوں کی وجہ ان علاقوں کی طرف زیادہ توجہ مبذول ہوتی ہے۔

آزاد کشمیر کے ساتھ ایک پابندی ہے وہ اس کی بھارت کے زیر انتظام کشمیر کے ساتھ لگنے والی سرحد ہے۔ آزاد کشمیر کے مشرق میں لائن آف کنٹرول واقع ہے جو کہ ایک انتہائی حساس مقام ہے، اور غیر ملکیوں کو لائن آف کنٹرول کے قرب و جواب کا علاقہ دیکھنے یا وہاں جانے کی اجازت نہیں ہوتی۔ کوئی بھی غیر ملکی جو آزاد کشمیر جانے کا خواہش مند ہو اسے پہلے پاکستان کی وزارت داخلہ کو اطلاع کرنی ہوتی ہے اور اجازت نامہ لینا ہوتا ہے۔ تمام پاکستانی آزاد کشمیر میں آ جا سکتے ہیں لیکن علاقے کی حساسیت کے پیش نظر انہیں مشورہ دیا جاتا ہے کہ اپنی مکمل شناخت ہمیشہ ساتھ رکھیں۔آزاد کشمیر تک رسائی ہر دو طرف سے آسان ہے، اسلام آباد سے بھی اور ایبٹ آباد سے بھی۔

مظفر آباد: وادی نیلم اور جہلم
مظفر آباد آزاد کشمیر کا انتظامی دار الخلافہ ہے جو کہ اس مقام پر واقع ہے جہاں دریائے نیلم اور دریائے جہلم کا ملاپ ہوتا ہے۔ مظفر آباد کسی بھی دوسرے پہاڑی دار الخلافے کی طرح ایک پھیلا ہوا اور منتشر شہر ہے۔ جو چیز اسے دیگر شہروں سے ممتاز کرتی ہے وہ ان پہاڑوں کے خوبصورتی ہے جو اسے چاروں طرف سے گھیرے ہوئے ہیں۔
سیاحوں کی توجہ کے کچھ مراکز
مظفر آباد کا لال قلعہ: اس قلعے کو تین جانب سے دریائے نیلم لگتا ہے، سلطان مظفر خان نے اسے 1646 میں شہر کی حفاظت کے لیے بنایا تھا۔اگر آپ کشمیری شال اور اخروٹ کے دلدادہ ہیں تو مظفر آباد کے بازار سے خریداری ایک بہترین موقع ہے
پیر چناسی جو کہ 2900 میٹر کی بلندی پر واقع ہے۔ بذریعہ سڑک جب آپ شہر کے اوپر کی جانب سفر کریں گے تو پیر چناسی تک پہنچیں گے جہاں سے وادیء￿ جہلم، شمالی پہاڑی سلسلے ااور وادیء￿ نیلم کے پہاڑوں کا نظارہ کر سکتے ہیں۔

چکار جھیل
یہ ایک نئی جگہ ہے جو کہ 2005 کے زلزلے کے بعد وقوع پذیر ہوئی ہے۔سدھن گلی جو کہ 2134 میٹر کی بلندی پر واقع ہے۔ اگر آپ ٹریکنگ کے ارادے سے آئے ہیں تو باغ جائیں، وہاں سے چکار، اور پھر وہاں سے گنگا چوٹی جو کہ یہاں کا سب سے اہم مقام ہے۔

وادیء نیلم
نیلم وادیء کاغان کے ساتھ ساتھ چلتی ہے اور اس کی کل لمبائی 240 کلو میٹر ہے۔ یہ انتہائی سرسبز و شاداب وادی ہے، جو اس میں دلچسپی رکھنے والوں کو خوبصورت مناظر، پانی میں کھیلے جانے والے کھیلوں اور کوہ پیمائی کے بہترین مواقع فراہم کرتی ہے۔ سیاحوں کی اس وادیء￿ کی طرف توجہ مبذول کروانے کے بے شمار اسباب ہیں تاہم مندرجہ ذیل اسباب وادیء نیلم کو سیاحوں کے لیے بے مثال بنا دیتے ہیں۔اگر الپائن کے پر فضا ماحول میں پر مختصر چہل قدمی کو پسند کرتے ہیں تو پتیکا آپ کا بہترین انتخاب ہو گا۔

شاردہ وادی
شاردہ وادی 1981 میٹر کی بلندی پر واقع ہے اور بہترین قدرتی مناظر کی وجہ سے مشہور ہے۔ سرسبز و شاداب پہاڑوں کے ساتھ ساتھ آپ یہاں پرانی بدھ حکومت کے آثار اور باقیات بھی دیکھ سکتے ہیں اور یہاں ایک قدیم قلعہ بھی موجود ہے جو سیاحوں کے لیے توجہ کا مرکز ہے۔وادیء نیلم میں ایک گاؤں ہے جہاں شاردی اور ناردی پہاڑ واقع ہیں، سیاحت کے لیے یہ بھی ایک بہت ہی خوبصورت جگہ ہے۔

کیل
یہ ایک 19 کلو میڑ لمبی وادی ہے جو کہ 2097 میٹر کی بلندی پر واقع ہے۔ اگر آپ ٹریکنگ کے لیے گئے ہیں تو سراول چوٹی کا یہ آخری کیمپ ہے۔ مظفر آباد سے کیل جاتے ہوئے اپ وادیء￿ کیران، وادی کتان، اٹھ مقام اور دیگر بے شمار خوبصورت مقامات دیکھ سکتے ہیں۔سرداری تاؤ بٹ، ہلمت، جناوائی سرحد کے قریب بہت ہی خوبصورت گاؤں ہیں۔وادی لیپا اور وادی نیلم میں لکڑی سے بنے ہوئے بہت سے خوبصورت گھر ہیں جو بنانے والوں کی مہارت کا منہ بولتا ثبوت ہیں۔ میدانی علاقوں سے آنے والوں کے لیے یہ گھر بھی توجہ کا مرکز ہوتے ہیں۔اس کے علاوہ یہاں کوہ پیمائی کے شوقین اور ٹریکنگ کے دلدادہ لوگوں کے لیے بہت سے دلکش راستے ہمیشہ منتظر رہتے ہیں۔

چند اہم مقامات
بنجوسہ ایک مصنوعی جھیل ہے جس کے ارد گرد کا ماحول بہت ہی خوبصورت ہے اور سیاحوں کو اپنی جانب متوجہ کرتا ہے۔گھوڑی مار ایک ایسی جگہ ہے جہاں سے ہم راولا کوٹ اور باغ کی وادیوں کے مناظر سے محظوظ ہو سکتے ہیں۔ یہ راولا کوٹ سے 30 کلو میٹر کے فاصلے پر واقع ہے۔تولی پیر پہاڑی مقام آزاد جموں اور کشمیر کے خوبصورت اور مشہور ترین مقامات میں سے ایک ہے۔ گھوڑی مار سے ایک راستہ تولی پیر کی طرف بھی جاتا ہے۔
ضلع کوٹلی اور ضلع میر پور
میر پور ضلع بہت ہی مشہور جگہ ہے کیوں کہ یہاں منگلا ڈیم واقع ہے جو پاکستان کا بجلی پیدا کرنے والا دوسرا بڑا ڈیم ہے۔ میر پور جو کہ 1010 مربع میل پر مشتمل ہے اور کوٹلی جو کہ 1862 مربع میل پر مشتمل وادی ہے یہ دونوں پانی کے کھیلوں کی وجہ سے مشہور ہیں۔منگلا ڈیم پاکستان بھر کے بالعموم اور پنجاب کے سیاحوں کے لیے بالخصوص ایک اچھا اور معروف سیاحتی مقام ہے جسے دیکھنے کے لیے لاہور، اور راولپنڈی سے لوگ بالخصوص آتے ہیں۔منگلا ڈیم میں کشتی رانی کی سہولت بھی ہے۔ یہاں ایک ایسا مقام بنایا گیا ہے جہاں سے اس جھیل اور ڈیم کا بہت ہی خوبصورت منظر نظر آتا ہے اور سیاحوں کے لیے یہ ایک بہترین جگہ ہے۔
فوج کا پانی کے کھیلوں کا کلب بھی اسی علاقے میں واقع ہے جہاں آنے والوں کو پانی کے کھیلوں میں حصہ لینے کا موقع ملتا ہے۔ کھیل میں دلچسپی رکھنے والوں کے لیے یہ ایک بہت ہی پسندیدہ جگہ ہے۔یہ ان اہم تفریحی و سیاحتی مقامات کا ایک مختصر سا تعارف ہے جہاں ہر سال ہزاروں سیاح اور فطرت کے حسن سے لطف اندوز ہونے والے جاتے ہیں جن میں نہ صرف پاکستانی بلکہ غیر ملکی سیاحوں کی بڑی تعداد شامل ہوتی ہے۔ لیکن یہی سب کچھ نہیں، اس کے علاوہ بھی وطن عزیز پاکستان میں، بلکہ عموما ہر بڑے شہر میں ایسے مقامات ہیں جن میں زائرین کے لیے بہترین تفریح اور معلومات میں اضافے کے مواقع موجود ہیں۔اگر ان مقامات کا انتظام بین الاقوامی معیار کے مطابق ہو اور سیاحوں کو بہترین خدمات، بہترین رہائش اور صحت افزا کھانے کے ساتھ ساتھ اچھی رہنمائی کا انتظام کر لیا جائے تو نہ صرف ان علاقوں کے لیے اقتصادی بہتری کا سبب ہو گا بلکہ پاکستان کی اقتصادی ترقی میں سیاحت کا حصہ کئی گناہ بڑھ جائے گا۔


متعلقہ خبریں


عام انتخابات میں (ن) نے 89678ووٹ ،تحریک انصاف نے77231 ووٹ حاصل کیے تھے وجود - پیر 06 دسمبر 2021

2018ء میں ہونے والے عام انتخابات میں حلقہ این اے 13 3سے مسلم لیگ(ن) کے امیدوار پرویز ملک نے 89678ووٹ حاصل کرکے کامیابی حاصل کی تھی جبکہ تحریک انصاف کے امیدوار اعجاز احمد چوہدری77231 ووٹ لے کر دوسرے نمبر ،تحریک لبیک پاکستان کے امیدوار مطلوب احمد 13235 ووٹ لے کر تیسرے جبکہ پیپلز پارٹی کے امیدوار اسلم گل نے 5554 ووٹ حاصل کیے تھے۔ضمنی انتخاب میں تحریک انصاف کاغذات نامزدگی مسترد ہونے پر انتخابی میدان میںموجود نہیں تھی۔

عام انتخابات میں (ن) نے 89678ووٹ ،تحریک انصاف نے77231 ووٹ حاصل کیے تھے

ضمنی انتخاب ،(ن) کی کامیابی سے زیادہ اسلم گل کی جانب سے غیر متوقع 32313ووٹ حاصل کرناموضوع بحث وجود - پیر 06 دسمبر 2021

حلقہ این اے 133کے ضمنی انتخاب میں مسلم لیگ (ن) کی کامیابی سے زیادہ پیپلز پارٹی کے امیدوار اسلم گل کی جانب سے غیر متوقع طور پر 32313ووٹ حاصل کرناموضوع بحث بنا ہوا ہے ،جبکہ سیاسی حلقوں میں یہ قیاس آرائیاں بھی جاری ہیں کہ مسلم لیگ(ن) کی کامیابی کا مارجن کم کرنے کیلئے تحریک انصاف کی جانب سے مبینہ طور پر پیپلز پارٹی کے امیدوارکو ووٹ ڈلوائے گئے۔ تفصیلات کے مطابق حلقہ این اے133کے ضمنی انتخاب کے نتائج سیاسی حلقوں میں موضوع بحث ہیں اورسیاسی تجزیہ نگار اپنے اپنے زاویے سے اس پر اظہار خی...

ضمنی انتخاب ،(ن) کی کامیابی سے زیادہ اسلم گل کی جانب سے غیر متوقع  32313ووٹ حاصل کرناموضوع بحث

این اے133 ضمنی انتخاب ،مسلم لیگ (ن) نے اپنی نشست دوبارہ جیت لی،پیپلزپارٹی کی غیر معمولی پیشرفت وجود - پیر 06 دسمبر 2021

صوبائی دارالحکومت کے حلقہ این اے 133میں ہونے والے ضمنی انتخاب میں غیر سرکاری اورغیر حتمی نتائج کے مطابق مسلم لیگ (ن) نے میدان مار لیا، مسلم لیگ (ن) کے رکن قومی اسمبلی پرویز ملک کے انتقال سے خالی ہونے والی نشست پر ان کی اہلیہ شائستہ پرویز ملک نے 46811جبکہ ان کے مد مقابل پیپلزپارٹی کے امیدوار اسلم گل نے32313ووٹ حاصل کئے ، کامیابی کی خوشی میں مسلم لیگ (ن) کے حامیوںنے بھرپور جشن منایا اور مٹھائیاں تقسیم کی گئیں، کارکنان ڈھول کی تھاپ پر بھنگڑے ڈالتے رہے اورنوٹ نچھاور کئے گئے جبکہ ...

این اے133 ضمنی انتخاب ،مسلم لیگ (ن) نے اپنی نشست دوبارہ جیت لی،پیپلزپارٹی کی غیر معمولی پیشرفت

تحقیقاتی اداروں نے پریانتھا کے مکان کو سیل کردیا وجود - پیر 06 دسمبر 2021

تحقیقاتی اداروں نے سیالکوٹ میں متشدد ہجوم کے ہاتھوں مارے گئے سری لنکن منیجر پریانتھا کا مکان سیل کردیا۔ میڈیا رپورٹ کے مطابق سری لنکن شہری پاکستان میں 10 سال سے زائد عرصے سے رہائش پزیر تھا، جس فیکٹری میں مارا گیا وہاں پر 8 سال سے کام کر رہا تھا۔اہل محکمہ نے پریانتھا سے متعلق رائے دیتے ہوئے کہا کہ وہ خوش اخلاق شخص تھا، کبھی کسی سے جھگڑا نہیں کیا۔انہوں نے کہا کہ پریانتھا لوگوں سے زیادہ میل جول بھی نہیں رکھتا تھا۔پولیس اور تحقیقاتی اداروں نے پریانتھا کے مکان کو سیل کردیا ہے۔

تحقیقاتی اداروں نے پریانتھا کے مکان کو سیل کردیا

لندن میں گورنر پنجاب چودھری سرور کی گاڑی کو جرمانہ وجود - پیر 06 دسمبر 2021

گورنرپنجاب چودھری سرور کی گاڑی کو ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی پر جرمانہ عائد کردیا گیا ہے۔ لندن میں گورنر پنجاب چودھری محمد سرور کی گاڑی کو ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی پر جرمانے کی ٹکٹ جاری کی گئی،وہ سنٹرل لندن میں اپنے بیٹے کے فاسٹ فوڈ ریسٹورنٹ میں ایک تقریب کیلئے شرکت کیلئے موجود تھے ۔گورنر سرور کی گاڑی ٹریفک قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے ڈبل یلو لائن پر پارک ہوئی ،ٹریفک وارڈن نے قوانین کی خلاف ورزی پر جرمانے کی ٹکٹ جاری کرتے ہوئے اسے گاڑی کی فرنٹ اسکرین پر چسپاں کردیا۔تقریب می...

لندن میں گورنر پنجاب چودھری سرور کی گاڑی کو جرمانہ

بلدیاتی الیکشن ای وی ایم پر نہیں ہوسکتے،شبلی فراز نے ہاتھ اُٹھا لیے وجود - پیر 06 دسمبر 2021

وفاقی وزیر برائے سائنس و ٹیکنالوجی شبلی فراز نے کہا ہے کہ بلدیاتی انتخابات میں مختلف پینلز ہوتے ہیں جس کی وجہ سے بلدیاتی الیکشن ای وی ایم پر نہیں ہوسکتے،الیکٹرانک ووٹنگ مشین میں صرف 200امیدوار آسکتے ہیں ،تحصیل ناظم کے انتخاب کیلئے مشین استعمال کی جاسکتی ہے۔ ایک نجی ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے شبلی فراز نے کہا کہ الیکشن کمیشن کو مشینیں فراہم کی جائیں گی،الیکشن کمیشن نے ہمیں ای وی ایم فراہم کرنے کا کہا ہے،ای وی ایم میں نیشنل اورصوبائی ووٹنگ کیلئے 2ووٹنگ پیڈز ہیں اور ای وی ایم میں ...

بلدیاتی الیکشن ای وی ایم پر نہیں  ہوسکتے،شبلی فراز نے ہاتھ اُٹھا لیے

ویسٹ انڈیز کے اہم کھلاڑی انجری کے باعث دورہ پاکستان سے آؤٹ وجود - پیر 06 دسمبر 2021

ویسٹ انڈیز کے کپتان کیرون پولارڈ انجری کی وجہ سے دورہ پاکستان سے آؤٹ ہوگئے۔ویسٹ انڈیز کرکٹ کے مطابق ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ میں ہمسٹرنگ انجری کا شکار ہونیوالے کپتان کیرون پولارڈ اب تک صحتیاب نہ ہوسکے جس کی وجہ سے وہ دورہ پاکستان سے باہر ہوگئے ہیں۔ رپورٹس کے مطابق پولارڈ کی جگہ نکولز پورن ٹی ٹوئنٹی اور شائی ہوپ ون ڈے سیریز میں ویسٹ انڈیز کی قیادت کریں گے۔ویسٹ انڈیز کرکٹ کے مطابق کیرون پولارڈ کے متبادل کے طور پر رومین پاؤل کو ٹی ٹوئنٹی اور ڈیون تھامس کو ون ڈے اسکواڈ میں شامل کرلیا گی...

ویسٹ انڈیز کے اہم کھلاڑی انجری کے باعث دورہ پاکستان سے آؤٹ

پاکستانی ورکرز کی بھرتی سے متعلق پاکستان اور سعودی عرب میں دو معاہدے وجود - پیر 06 دسمبر 2021

سعودی عرب نے پاکستانی ورکرز کی بھرتی اور ہنر کی تصدیق کے پروگرام سے متعلق حکومت کے ساتھ دو معاہدوں پر دستخط کردیے۔معاہدوں پر دستخط کی تقریب وفاقی وزیر برائے تعلیم، پیشہ ورانہ تربیت اور قومی ورثہ شفقت محمود کے دورہ سعودی عرب کے دوران ہوئی۔ یہ معاہدہ تنازعات کو حل کرنے اور کسی بھی خلاف ورزی پر ریکروٹمنٹ دفاتر، کمپنیوں یا ایجنسیوں کے خلاف قانونی چارہ جوئی کرنے میں بھی مدد دے گا۔ہنر کی تصدیق کے معاہدے سے مملکت کو ہنرمند اور تصدیق شدہ پاکستانی افرادی قوت کی برآمد میں اضافہ ہوگا۔ ی...

پاکستانی ورکرز کی بھرتی سے متعلق پاکستان اور سعودی عرب میں دو معاہدے

ترکی کے مسلح ڈرونز کی فروخت میں غیرمعمولی اضافہ وجود - اتوار 05 دسمبر 2021

ترکی کی دفاعی اور ہوابازی کی صنعتوں کی برآمدات میں نمایاں اضافہ ہو رہا ہے۔ سب سے قابل ذکر ترکی کے بیرقدار ٹی بی 2 ڈرونز ہیں جو یوکرائن، پولینڈ اور ہنگری کو بھی برآمد کیے جا رہے ہیں۔ جرمن ٹی وی پورٹ کے مطابق ترک ایکسپورٹرز ایسوسی ایشن نے ملک کی دفاعی اور ہوابازی کی صنعت کی تیار کردہ مصنوعات کی برآمدات میں اضافے کا اعلان کیا ہے۔ اس فورم کے اعداد و شمار کے مطابق رواں برس کے پہلے گیارہ ماہ میں ان شعبہ جات کی برآمدات میں گزشتہ برس کی نسبت چالیس فیصد اضافہ ہوا ہے۔اس برس کے گیارہ ما...

ترکی کے مسلح ڈرونز کی فروخت میں غیرمعمولی اضافہ

نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی وجود - اتوار 05 دسمبر 2021

پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو کے نامور مزاح نگار، افسانہ نگار، مترجم، شاعر، نقاد، معلم، برطانوی ہندوستان کے ماہر نشریات اور پاکستان کے سفارت کار پطرس بخاری کی63ویں برسی آج ( اتوار)5دسمبر کو منائی جائے گی۔ اس سلسلے میں ادبی حلقوں میں تعزیتی تقریبات منعقد کی جائیں گی جس میں پطرس بخاری کی ادبی خدمات کو خراج عقیدت پیش کیا جائے گا۔پطرس بخاری جن کا اصل نام سید احمد شاہ بخاری تھا لیکن وہ اپنے قلمی نام پطرس بخاری سے مشہور ہوئے۔ ان کی معروف تصنیف میں پطرس کے مضامین بے حد مقبول ہے ،ا...

نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی

حکومتی امیدوار کے بغیر این اے 133کے ضمنی انتخاب کا میدان آج لگے گا وجود - اتوار 05 دسمبر 2021

صوبائی دارالحکومت لاہور کے حلقہ این اے 133کے ضمنی انتخاب کا میدان آج (اتوار) 5دسمبرکو لگے گا،پرویز ملک کے انتقال سے خالی ہونے والی نشست پر ہونے والے ضمنی انتخاب میںحکمران جماعت تحریک انصاف اپنے نامزد امیدوارجمشید اقبال چیمہ کے کاغذات نامزدگی مسترد ہونے پر پہلے ہی مقابلے کی دوڑ سے باہر ہو چکی ہے جس کے بعد اب مسلم لیگ(ن) او رپیپلز پارٹی میں ون ٹو ون مقابلہ ہوگا ۔تفصیلات کے مطابق مسلم لیگ(ن) کے رکن قومی اسمبلی پرویز ملک کے انتقال سے خالی ہونے والی نشست این اے133پر ضمنی انتخاب کی...

حکومتی امیدوار کے بغیر این اے 133کے ضمنی انتخاب کا میدان آج  لگے گا

تحریک انصاف کے کارکنوں،ووٹرز کو 133 کے ضمنی انتخاب سے لا تعلق رہنے کی ہدایت وجود - اتوار 05 دسمبر 2021

پاکستان تحریک انصاف نے این اے 133کے مقابلے میں شامل نہ ہونے پر اپنے کارکنوںاورووٹرز کو این اے133کے ضمنی انتخاب سے لا تعلق رہنے کی ہدایت کر رکھی ہے ۔ تحریک انصاف کی جانب سے کہاگیاہے کہ ہمارے امیدوار کو تکنیکی غلطی کی وجہ سے مقابلے سے باہر رکھاگیا ۔ تحریک انصاف نے کسی دوسری جماعت یا آزادامیدوارکو ووٹ نہ دینے کا فیصلہ کیا ہے اس لئے کارکنان اور ووٹرزاین اے 133کے ضمنی انتخاب سے قطعی لا تعلق رہیں اور ووٹ کا حق استعمال نہ کریں۔

تحریک انصاف کے کارکنوں،ووٹرز کو 133 کے ضمنی انتخاب سے لا تعلق رہنے کی ہدایت

مضامین
دوگززمین وجود پیر 06 دسمبر 2021
دوگززمین

سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی! وجود پیر 06 دسمبر 2021
سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی!

چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے! وجود پیر 06 دسمبر 2021
چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے!

دوگززمین وجود اتوار 05 دسمبر 2021
دوگززمین

یورپ کا مخمصہ وجود هفته 04 دسمبر 2021
یورپ کا مخمصہ

اے چاندیہاں نہ نکلاکر وجود جمعه 03 دسمبر 2021
اے چاندیہاں نہ نکلاکر

تاریخ پررحم کھائیں وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
تاریخ پررحم کھائیں

انوکھی یات۔ٹو وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
انوکھی یات۔ٹو

وفاقی محتسب واقعی کام کرتاہے وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
وفاقی محتسب واقعی کام کرتاہے

ڈی سی کی گرفتاری اور سفارشی کلچر وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
ڈی سی کی گرفتاری اور سفارشی کلچر

ماں جیسی ر یاست اور فہیم۔۔۔ وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
ماں جیسی ر یاست اور فہیم۔۔۔

انسانیت کی معراج وجود اتوار 28 نومبر 2021
انسانیت کی معراج

اشتہار

افغانستان
طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ وجود اتوار 05 دسمبر 2021
طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ

15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل وجود هفته 04 دسمبر 2021
15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل

طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت وجود جمعه 03 دسمبر 2021
طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت

جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان وجود جمعه 03 دسمبر 2021
جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان

افغان طالبان اور ایرانی بارڈر گارڈز کے درمیان شدید جھڑپیں، بھاری اسلحہ کا استعمال وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
افغان طالبان اور ایرانی بارڈر گارڈز کے درمیان شدید جھڑپیں، بھاری اسلحہ کا استعمال

اشتہار

بھارت
بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا

بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی وجود بدھ 01 دسمبر 2021
بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی

بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین وجود پیر 29 نومبر 2021
بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین

بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی وجود هفته 27 نومبر 2021
بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی

چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے بھارتی دعوت نامہ مسترد کر دیا وجود جمعرات 25 نومبر 2021
چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی نے بھارتی دعوت نامہ مسترد کر دیا
ادبیات
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام وجود منگل 26 اکتوبر 2021
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام

پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام وجود پیر 25 اکتوبر 2021
پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام

اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب
شخصیات
نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی وجود اتوار 05 دسمبر 2021
نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی

سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے وجود پیر 29 نومبر 2021
سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے

پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل وجود جمعرات 25 نومبر 2021
پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل

سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز وجود جمعه 19 نومبر 2021
سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز

صحافتی بہادری کا ایوارڈ، چینی اور فلسطینی خواتین صحافیوں کے نام وجود جمعه 19 نومبر 2021
صحافتی بہادری کا ایوارڈ، چینی اور فلسطینی خواتین صحافیوں کے نام