وجود

... loading ...

وجود
وجود

ہندوؤں کا مقدس شہر بنارس پسماندگی کی تصویر

اتوار 22 اکتوبر 2017 ہندوؤں کا مقدس شہر بنارس پسماندگی کی تصویر

وارانسی، کاشی یا بنارس شہر کا ہندو مذہب میں بڑا مقام ہے جہاں زندگی روزانہ موت سے گلے ملتی نظر آتی ہے۔ہندو مذہب میں بنارس کی خاص اہمیت ہے اور ادب میں صبح بنارس کا ذکر کثرت سے ملتا ہے۔یہ شہر صدیوں سے دریائے گنگا کے کنارے آباد ہے اور یہاں دور دراز سے سیاحوں کی آمد کی سلسلہ صدیوں سے جاری ہے۔ہندو مذہب میں اس شہر اور اس دریا کا اہم مقام ہے۔ کہتے ہیں کہ یہاں غسل کرنے سے پاپ یعنی گناہ دھل جاتے ہیں ۔ اس لیے یہاں ا شنان کرنے والوں کا تانتا لگا رہتا ہے۔یہاں مندروں کی کثرت ہے اور لوگ اپنی عقیدت کے مطابق مختلف مندروں کا درشن کرتے ہیں ۔ یہاں آسماں سے مندروں کے کلس ملتے نظر آتے ہیں ۔ باہر سے آنے والے افراد سیاح بھی ہوتے ہیں اور عقیدت مند بھی۔بنارس میں دریائے گنگا کے گھاٹ پر چتاؤں کی آگ کبھی ٹھنڈی نہیں پڑتی، یہاں ہر روز سینکڑوں لاشوں کو نذر آتش کیا جاتا ہے۔ہندو مانتے ہیں کہ اگر وارانسی یعنی بنارس میں موت ہو تو پھر دوبارہ جنم نہیں لینا پڑتا اسی لیے بہت سے بوڑھے اپنے آخری ایام کاشی میں گزارنے کی تمنا رکھتے ہیں ۔ بنارس کی رنگین صبح کے بعد رات آرتی کے ساتھ ختم ہوتی ہے جہاں لوگ روزانہ بڑی تعداد میں جمع ہوتے ہیں ۔بنارس کا شمار انڈیا کے قدیم ترین شہروں میں کیا جاتا ہے۔بنارس ہندو تہذیب و ثقافت اور مذہب کا اہم مرکز ہے۔ اترپردیش کے مشرقی سرے پر واقع یہ شہر اپنے گھاٹوں اور مندروں کے حوالے سے بھی مشہور ہے۔ یہاں گنگا کے کنارے رہنے والے لوگ گزر بسر کے لیے دریا پر ہی انحصار کرتے ہیں ۔ کوئی کشتی چلاتا ہے، کوئی مچھلی پکڑتا ہے اور کوئی پانی میں سے سیدھا کیش ہی نکالتا ہے ! ہندو دریائے گنگا کو مقدس سمجھتے ہیں اور ٹرینوں میں سوار عقیدت مند دریا میں بطور نذرانہ پیسے پھینکتے ہیں اور بھرت اور پردیپ جیسے نہ جانے کتنے نوجوان اپنی جان خطرے میں ڈال کر یہ سکے گہرے پانی سے باہر نکالنے میں جٹ جاتے ہیں ۔
بنارس میں دریائے گنگا کے پرانے پل سے جب بھی کوئی ٹرین گزرتی ہے تو بھرت اور پردیپ کی آنکھوں میں چمک پیدا ہو جاتی ہے۔ان نوجوانوں کو جانا تو کہیں نہیں ، لیکن پھر بھی پورے دن انھیں ٹرینوں کا انتظار رہتا ہے۔ان سکوں سے ہی ان کے گھروں میں چولھا جلتا ہے۔روزانہ چار سو سے پانچ سو روپے نکال لینا ان نوجوانوں کے لیے کوئی بڑی بات نہیں لیکن یہ جان جوکھوں میں ڈالنے والا کام ہے، خود بھرت کے دادا اور چاچا نے انھی پانیوں میں غوطہ لگاتے ہوئے دم توڑا تھا۔بھرت کہتے ہیں کہ ‘پانی میں سے سکے نکالنا بہت خطرے کا کام ہے، کبھی پتھروں سے چوٹ لگ جاتی ہے، کبھی پانی کے اندر ہی دم ٹوٹ جاتا ہے۔۔۔میرے دادا اور چاچا پانی میں کودے تھے لیکن زندہ واپس نہیں آئے۔۔۔انھوں نے ہی مجھے تیرنا سکھایا تھا۔’
دریائے گنگا کے پرانے پل سے جب بھی کوئی ٹرین گزرتی ہے تو بھرت اور پردیپ کی آنکھوں میں چمک پیدا ہو جاتی ہے۔لیکن عقیدت مند پانی میں صرف سکے ہی نہیں پھینکتے، دریا کی تہہ میں بہت سے راز بھی دفن ہیں ، بھرت اور ان کے بھائی کو پستولیں اور خنجر بھی ملے ہیں ۔پردیپ کہتے ہیں کہ ‘کبھی پستول بھی ملتی ہے اور چاقو بھی، سونا چاندی بھی مل جاتا ہے۔ پھر ہم سنار سے جاکر چیک کراتے ہیں کہ سونے کا پانی تو نہیں چڑھا ہے۔ لیکن ہتھیار ہمیں مقامی تھانے میں جمع کرانے پڑتے ہیں ۔ لوگ کسی کو مار کر شاید ہتھیار یہاں پھینک دیتے ہیں ۔ان دونوں نے اسکول جانا تو بچپن میں ہی چھوڑ دیا تھا لیکن بھرت کو ڈانس کا شوق ہے۔ وقت بدل رہا ہے اور اس کے ساتھ ہی ان نوجوانوں کی دلچسپیاں بھی۔یہ لوگ دریا میں پھینکے جانے والے پیسے چن کر اپنا گزر بسر کرتے ہیں ۔وہ کہتے ہیں کہ ‘ڈانس سے میری زندگی بدل گئی ہے، اب میں گھر میں پیسے دیتا ہوں ۔ اچھے اچھے لوگوں سے ملنے کا موقع ملتا ہے، اسٹیج پر شو کرنے کے لیے میں اپنے سر کے بل جاتا ہوں ، ہر شام پریکٹس کرتا ہوں ۔لیکن کیا کبھی ان کے ذہن میں یہ خیال بھی آتا ہے کہ خطرے کا یہ کام چھوڑ کر ڈانس پر ہی توجہ دیں ؟ ان کا سادہ سا جواب ہے کہ ‘پیسے نہیں ہوں گے تو ڈانس کیسے سیکھیں گے؟’بنارس میں کہتے ہیں کہ گنگا کسی کو مایوس نہیں کرتی، چاہے دین کی تلاش ہو یا دنیا کی۔
بھارت کا مشرقی شہر بنارس جسے ہندو مذہب کی مناسبت سے بڑی اہمیت کا حامل ہے،بنارس شہر کاایک یہ رخ ہے اور بنارس کادوسرا رخ یہ ہے کہ اس شہر کی ساڑیاں پوری دنیا میں مشہور ہیں اور دنیا کاکوئی دوسرا شہر اس کی ہمسری کا آج تک دعویٰ نہیں کرسکاہے ۔بنارسی ساڑیاں پوری دنیا میں مشہور ہیں اور شاید یہی وجہ ہے کہ مہنگی ہونے کے باوجود انہیں پسند کیا جاتا ہے۔لیکن بہت کم لوگ اس حقیقت سے آشنا ہونگے کے بنارسی ساڑیوں کو اتنی خوبیوں سے مزین کرنے والے بنکر یا جولاہے معاشی بد حالی کا شکار ہیں ۔جس طرح بنارس اپنی مذہبی اہمیت کے باوجود پسماندگی کا شکار ہے،اسی طرح اس شہر میں ساڑی کی صنعت بھی زبوں حالی سے دو چار ہے اور حالت یہ ہے کہ اس وقت تاجر، جولاہے اور دھاگہ بنانے والے سبھی مشکل دور سے گزر رہے ہیں ۔
ساڑی کی صنعت کو قریب سے دیکھنے والے شہر کے تجربہ کار صحافی اور تجزیہ کار سلمان راغب کہتے ہیں کہ پروان چڑھ رہی صنعتیں عالمی تجارتی تنظیم کے نظام سے مربوط ہیں ، ’بنارس کی ساڑی مشہور تو ہے لیکن جدید تقاضوں کے مطابق اسے تجارت سے نہیں جوڑا گیا اور اسے بہتر بنانے اور مراعات کے دینے کے صرف اعلانات ہوتے رہے ہیں عمل نہیں ہوا‘۔وہ کہتے ہیں ،’دلی، کولکتہ اور ممبئی جیسے شہروں میں جو بنارسی ساڑی پچیس ہزار روپے میں بکتی ہے اس کا بنانے والا سال بھر میں مشکل سے اتنے پیسے کما پاتا ہے۔ حکومتیں بھی توجہ نہیں دیتیں لیکن جب تک یہ خلیج کم نہیں ہوتی اس وقت تک صنعت اور بنکر طبقے کی بہتری مشکل ہے‘۔
لوگوں کی عام شکایت یہ ہے کہ جب انتخابات آتے ہیں تو سیاسی جماعتیں جولاہوں اور ساڑی کی صنعت کی بہتری کے لیے بڑے بڑے وعدے کرتی ہیں لیکن الیکشن کے بعد کوئی انہیں نہیں پوچھتا۔بنارس کی ساڑی مشہور تو ہے لیکن جدید تقاضوں کے مطابق اسے تجارت سے نہیں جوڑا گیا اور اسے بہتر بنانے اور مراعات کے دینے کے صرف اعلانات ہوتے رہے ہیں عمل نہیں ہوا۔
بنارس میں روزنامہ جاگرن کے مدیر راگھویندر چڈھا مانتے ہیں کہ ساڑی سے جڑا طبقہ معاشی طور پر بہت پریشان ہے۔’وعدے سبھی جماعتوں نے کیے لیکن اس پر عمل نہیں ہوا اور گزشتہ دس برسوں میں جہاں ان کی کی معاشی حالت خراب ہوئی ہے وہیں یہ صنعت بھی زوال پذیر ہے۔ جوتھوڑی بہت مدد حکومت نے دی اسی برادری کے دلال اسے ہڑپ گئے اور غریبوں کو کوئی فائدہ نہیں پہنچا‘۔شہر میں مدن پورہ کا علاقہ ساڑیوں کی تجارت کا مرکز ہے جہاں اس صنعت کے تئیں حکومتی بے توجہی کے متعلق سبھی شاکی ہیں ۔
تاجر ریحان سہیل کا کہنا ہے کہ ’اس سیکٹر کو عشروں سے نظر انداز کیا جاتا رہا ہے اور اس وقت یہ معاشی بحران سے گزر رہی ہے اور اگر حکومت مدد کرے تو اسے بحال کرنے میں مدد ملے گی‘۔لیکن سب سے زیادہ نقصان ان کروڑوں غریب جولاہوں کا ہوا ہے جو یومیہ مزدوری پر ان قیمتی ساڑیوں کا دھاگہ بناتے اور اسے بنتے ہیں ۔ بنارس کے ایک بنکر عبدالمجید کہتے ہیں ،’ہمارا کاروبار برباد ہورہا ہے لوگ عاجز آچکے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ نئی نسل کے لوگ کام کے لیے شہر سے باہر جا رہے ہیں ‘۔ایک نوجوان بنکر شمشاد انصاری کہتے ہیں کہ ایسا لگتا ہے کہ جیسیغریبوں کے لیے نہ تو سیاسی جماعت ہے اور نہ ہی کوئی رہنما۔ ’الیکشن ہے تو آج کل سب ہماری بات کرتے ہیں ، سب فرضی وعدے ہیں کوئی کچھ نہیں کرے گا‘۔ساڑیوں کے تاجر علی حسن کا کہنا ہے کہ ریشم کا دھاگہ روز بروز مہنگا ہوتا جارہا ہے اور ساڑی باہر تو مہنگی بکتی ہے لیکن ’اس کا فائدہ یہاں اس کے کام کرنے والوں کو نہیں پہنچتا‘۔


متعلقہ خبریں


مضامین
وزیراعظم کے دشمن مصنوعی خیالات وجود جمعرات 27 جنوری 2022
وزیراعظم کے دشمن مصنوعی خیالات

لال قلعہ کاقیدی وجود جمعرات 27 جنوری 2022
لال قلعہ کاقیدی

''کسان ،ٹریکٹر ،ٹرالی ریلی ''کی بھی ایک پہیلی ہے وجود جمعرات 27 جنوری 2022
''کسان ،ٹریکٹر ،ٹرالی ریلی ''کی بھی ایک پہیلی ہے

اقتدار سے نکلنے پر خطرناک ہونے کا دعویٰ وجود بدھ 26 جنوری 2022
اقتدار سے نکلنے پر خطرناک ہونے کا دعویٰ

خطر۔ناک۔۔ وجود بدھ 26 جنوری 2022
خطر۔ناک۔۔

برطانیہ میں سب سے زیادہ امتیازی سلوک مسلمانوں کے ساتھ کیے جانے کا انکشاف وجود بدھ 26 جنوری 2022
برطانیہ میں سب سے زیادہ امتیازی سلوک مسلمانوں کے ساتھ کیے جانے کا انکشاف

بھارتی اسکول میں پرنسپل کا بچوں کو نماز کی اجازت دینا جرم بن گیا وجود بدھ 26 جنوری 2022
بھارتی اسکول میں پرنسپل کا بچوں کو نماز کی اجازت دینا جرم بن گیا

کووڈ صورت حال کی پیش گوئی: ’یہ کوئی قطعی سائنس نہیں‘ وجود منگل 25 جنوری 2022
کووڈ صورت حال کی پیش گوئی: ’یہ کوئی قطعی سائنس نہیں‘

حرام سے اجتناب کاانعام وجود منگل 25 جنوری 2022
حرام سے اجتناب کاانعام

سعودی عرب میں ہر گھنٹے سات طلاقوں کے کیسز رپورٹ وجود منگل 25 جنوری 2022
سعودی عرب میں ہر گھنٹے سات طلاقوں کے کیسز رپورٹ

حق دو کراچی کو وجود پیر 24 جنوری 2022
حق دو کراچی کو

ہندوستان کی شبیہ کون داغدار کررہاہے؟ وجود پیر 24 جنوری 2022
ہندوستان کی شبیہ کون داغدار کررہاہے؟

اشتہار

افغانستان
افغانستان میں امریکی شہری کا قبولِ اسلام، اسلامی نام محمد عیسیٰ رکھا وجود پیر 24 جنوری 2022
افغانستان میں امریکی شہری کا قبولِ اسلام، اسلامی نام محمد عیسیٰ رکھا

افغانستان،ہرات میں دھماکہ، 7 افراد جاں بحق، 9 زخمی وجود اتوار 23 جنوری 2022
افغانستان،ہرات میں دھماکہ، 7 افراد جاں بحق، 9 زخمی

اسلامی ممالک طالبان حکومت کو تسلیم کریں، افغان وزیراعظم کا مطالبہ وجود جمعرات 20 جنوری 2022
اسلامی ممالک طالبان حکومت کو تسلیم کریں، افغان وزیراعظم کا مطالبہ

طالبان کا شمالی مغربی شہر میں بدامنی کے بعد فوجی پریڈ کے ذریعے طاقت کا مظاہرہ وجود منگل 18 جنوری 2022
طالبان کا شمالی مغربی شہر میں بدامنی کے بعد فوجی پریڈ کے ذریعے طاقت کا مظاہرہ

افغان صوبہ بادغیس میں شدید زلزلہ،ہلاکتوں کی تعداد30 سے تجاوز وجود منگل 18 جنوری 2022
افغان صوبہ بادغیس میں شدید زلزلہ،ہلاکتوں کی تعداد30 سے تجاوز

اشتہار

بھارت
بھارت میں گوگل کے سی ای او سندر پچائی کیخلاف مقدمہ وجود جمعرات 27 جنوری 2022
بھارت میں گوگل کے سی ای او سندر پچائی کیخلاف مقدمہ

بھارتی اسکول میں پرنسپل کا بچوں کو نماز کی اجازت دینا جرم بن گیا وجود بدھ 26 جنوری 2022
بھارتی اسکول میں پرنسپل کا بچوں کو نماز کی اجازت دینا جرم بن گیا

شلپا شیٹی فحاشی پھیلانے کے مقدمے سے بری وجود منگل 25 جنوری 2022
شلپا شیٹی فحاشی پھیلانے کے مقدمے سے بری

بھارت کا چین پر سرحد سے لاپتا نوجوان کو اغوا کرنے کا الزام وجود جمعه 21 جنوری 2022
بھارت کا چین پر سرحد سے لاپتا نوجوان کو اغوا کرنے کا الزام

بھارت میں وزیر تعلیم نے حجاب کو ڈسپلن کی خلاف ورزی قرار دے دیا وجود جمعه 21 جنوری 2022
بھارت میں وزیر تعلیم نے حجاب کو ڈسپلن کی خلاف ورزی قرار دے دیا
ادبیات
پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل وجود منگل 04 جنوری 2022
پاکستانی اور سعودی علما کی کئی سالہ کاوشوں سے تاریخی لغت کی تالیف مکمل

پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی وجود جمعرات 23 دسمبر 2021
پنجابی بولتا ہوں، پنجابی میوزک سنتاہوں اور پنجابی ہوں، ویرات کوہلی

غلاف کعبہ کی سلائی میں عربی کا ثلث فانٹ استعمال کرنے کی وضاحت جاری وجود جمعرات 23 دسمبر 2021
غلاف کعبہ کی سلائی میں عربی کا ثلث فانٹ استعمال کرنے کی وضاحت جاری

دنیا کی 1500 زبانیں معدوم ہونے کا خطرہ وجود منگل 21 دسمبر 2021
دنیا کی 1500 زبانیں معدوم ہونے کا خطرہ

سقوط ڈھاکہ پر لکھی گئی نظمیں وجود جمعرات 16 دسمبر 2021
سقوط ڈھاکہ پر لکھی گئی نظمیں
شخصیات
دنیا کی کم عمر مائیکرو سافٹ سرٹیفائیڈ کو بچھڑے 10 برس بیت گئے وجود هفته 15 جنوری 2022
دنیا کی کم عمر مائیکرو سافٹ سرٹیفائیڈ کو بچھڑے 10 برس بیت گئے

مولانا طارق جمیل کی اپنے طوطےاور بلی کے ہمراہ دلچسپ ویڈیو وائرل وجود منگل 11 جنوری 2022
مولانا طارق جمیل کی اپنے طوطےاور بلی کے ہمراہ دلچسپ ویڈیو وائرل

ہے رشک ایک خلق کو جوہر کی موت پر ۔ یہ اس کی دین ہے جسے پروردگار دے وجود بدھ 05 جنوری 2022
ہے رشک ایک خلق کو جوہر کی موت پر        ۔ یہ اس کی دین ہے جسے پروردگار دے

سرگودھا کی تاریخ کا سب سے بڑا جنازہ : مولانا اکرم طوفانی سپرد خاک وجود پیر 27 دسمبر 2021
سرگودھا کی تاریخ کا سب سے بڑا جنازہ : مولانا اکرم طوفانی سپرد خاک

قائداعظم کے خطاب کا تحقیقی جائزہ (خواجہ رضی حیدر) وجود هفته 25 دسمبر 2021
قائداعظم کے خطاب کا تحقیقی جائزہ  (خواجہ رضی حیدر)