وجود

... loading ...

وجود
وجود
ashaar

بھارتی سفاکیت ،مجاہدین کی شہادت مقبوضہ وادی میں تحریک ِآزادی کی نئی چنگاری سلگ اٹھی

منگل 30 مئی 2017 بھارتی سفاکیت ،مجاہدین کی شہادت مقبوضہ وادی میں تحریک ِآزادی کی نئی چنگاری سلگ اٹھی

کشمیر کے علاقے پلوامہ کے گاؤں ترال میں بھارتی فوج کے ہاتھوں کشمیری نوجوانوں کی ہلاکتوں کے خلاف ایک بار پھر شدید مظاہرے ہوئے ہیں۔مقبوضہ کشمیر میں ماہ رمضان کی شروعات سحر خوانوں کی صدا کے بجائے کرفیو، مواصلاتی پابندیوں اور ایمبولینس گاڑیوں کے سائرن سے ہوئی ہے۔خیال رہے کہ ہفتے کی صبح جنوبی قصبہ ترال میں مسلح تصادم کے دوران حزب المجاہدین کے اعلی کمانڈر سبزار بٹ کی ان کے ساتھی سمیت شہادت کے بعد جگہ جگہ مظاہرے ہوئے تھے۔
اس سے قبل ترال کے ‘سوئی مْو’ گاؤں میں محصور سبزار اور اس کے ساتھیوں کو ‘بچانے’ کے لیے مقامی لوگوں نے مظاہرے کیے تھے۔مظاہرین پر فورسز کی فائرنگ کے نتیجے میں کئی افراد زخمی ہوئے جن میں سے ایک نوجوان کی موت واقع ہو گئی جبکہ تین کی حالات نازک ہے۔پولیس کے انسپکٹر جنرل سیدجاوید مجتبیٰ گیلانی نے شہری کی ہلاکت کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ اْس کی موت فائرنگ کے تبادلے کے دوران ہوئی۔ تاہم بیج بہاڑہ کے آر ونی قصبہ سے عینی شاہدین نے بتایا کہ تصادم کے دوران لوگوں نے مظاہرے کیے اور سرکاری فورسز نے مظاہرین پر فائرنگ کی جس کے نتیجہ میں ایک شہری شہید اور کئی دیگر زخمی ہوگئے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ پولیس کو خفیہ اطلاع ملی تھی کہ آرونی میں لشکر طیبہ کے چیف ابو دْجانہ ساتھیوں سمیت موجود ہیں، جسکے بعد پولیس نے بھارتی فوج اور نیم فوجی اداروں کی مدد سے حسن پورہ بستی کا محاصرہ کیا۔تاہم لوگوں کا کہنا ہے کہ حریت پسند کمانڈرابو دْجانہ محاصرہ توڑ کر فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔ آئی جی پی گیلانی نے ان خبروں کی تصدیق نہیں کی۔سرینگر کی شاہراہوں پر رات بھر ایمبولینس گاڑیوں کے سائرن بجتے رہے جس کی وجہ سے ہر طرف خوف کی فضا طاری ہے۔
ہسپتال ذرائع کے مطابق ہفتے کو ہونے والے مظاہروں کے خلاف فورسز کی کارروائیوں کے دوران 40 سے زیادہ افراد زخمی ہو گئے ہیں جن میں 12 سیکورٹی اہلکار بھی شامل ہیں۔ زخمیوں میں سے آٹھ افراد کو گولیاں لگی ہیں جبکہ سات چھروں سے زخمی ہیں۔برہان وانی کی طرح اپنے شہید سپوت سبزار بٹ کی نماز جنازہ میں بھی ہزاروں کی تعداد میں لوگوں نے شرکت کی جبکہ کئی جگہ شہید مجاہد کی غائبانہ نمازجنازہ بھی ادا کی گئی۔دریں اثنا حکومت نے موبائل فون رابطوں، انٹرنیٹ، عوامی نقل و حرکت اور اجتماعات پر پابندی عائد کر دی ہے۔سرینگر کے بیشتر علاقوں میں سخت کرفیو ہے جبکہ وادی کے تجارتی مرکز لال چوک کو سیل کردیا گیا۔ترال میں اتوار کو پولیس اہلکاروں کی بھاری تعداد میں تعیناتی کے دوران سبزار بٹ کو اپنے گاوں رٹھ سونا میں دفن کیا گیا۔سبزار بٹ گزشتہ برس جولائی میں شہید کیے گئے مقبول نوجوان کشمیری کمانڈر برہان مظفر وانی کے قریبی ساتھیوں میں سے تھے۔برہان وانی کی شہادت کے بعد پورا کشمیر کئی ماہ تک کشیدہ رہا اور مظاہرین کے خلاف سرکاری کارروائیوں میں تقریباً 100 نوجوان شہید کیے گئے تھے جبکہ10 ہزار سے زیادہ گولیوں اور چھروں سے زخمی ہوگئے تھے۔سید علی گیلانی، یٰسین ملک اور میر واعظ عمر فاروق کے متحدہ مزاحمتی فورم نے اس قتل وغارت کے خلاف اتوار اور پیر کو ہڑتال کی اپیل کی ہے جبکہ منگل کو ترال میں تعزیتی اجتماع کا اعلان کیا گیا ہے۔تینوں رہنماوں نے ایک مشترکہ بیان میں کہا کہ تعلیم یافتہ نوجوانوں کو پولیس مختلف بہانوں سے گرفتار کرتی ہے اور جیلوں میں ان پر ٹارچر کیا جاتا ہے جس کے بعد وہ ہتھیار اْٹھانے پر مجبور ہو جاتے ہیں۔پولیس نے مظاہرین کے خلاف آنسو گیس کا استعمال کیا اور وہاں فی الحال کرفیو نافذ ہے۔
پولیس کا کہنا ہے کہ گذشتہ برس برہان کی موت کے بعد درجنوں نوجوانوں نے مسلح گروپوں حزب المجاہدین اور لشکر طیبہ میں شمولیت اختیار کرلی ہے۔برہان وانی کے بعد حزب کی کمان انجینئرنگ گریجویٹ ذاکر موسی کے ہاتھ میں ہے، تاہم سبزار بٹ بھی گروپ کے اہم کمانڈر تھے۔پولیس کا کہنا ہے کہ ان کے ساتھ مارے گئے فیضان کی عمر صرف 17 سال ہے اور انھوں نے گزشتہ مارچ میں ایک نیم فوجی اہلکار سے رائفل چھین لی تھی۔گزشتہ کئی ہفتوں سے سیاسی اور سماجی حلقوں سے یہ اپیلیں کی جا رہی تھیں کہ رمضان کے مہینے کے دوران کشمیر میں امن کو یقینی بنایا جائے تاہم ہفتے کی صبح جب سبزار کی شہادت کا انکشاف ہوا تو کشمیر پھر سے اْبل پڑا۔رمضان کے پہلے روزے کے لیے لوگ کسی سحرخوان کی دستک سے نہیں بلکہ ایمبولینس گاڑیوں کی سائرن سے جاگے کیونکہ رات بھر مضافاتی ہسپتالوں سے زخمیوں کو سرینگر کے ہسپتالوں میں منتقل کیا جا رہا تھا۔حکومت نے اسکولوں، کالجوں اور یونیورسٹیوں میں بدھ تک تعطیل کا اعلان کیا ہے جبکہ امتحانات اور سرکاری اسامیوں کے لیے مجوزہ انٹرویوز بھی ملتوی کردیے گئے ہیں۔ قبل ازیں خبروں کے مطابق مقبوضہ وادی کے جنوبی قصبہ ترال میں طویل محاصرے کے دوران حریت پسندوں اور فورسز کے درمیان تصادم میں حزب المجاہدین کے اعلی کمانڈر سبزار بھٹ شہیدہو گئے ہیں۔پولیس ذرائع نے بتایا کہ کہ ان کے ہمراہ عادل اور فیضان نامی ان کے دو دوست بھی شہید ہو ئے ہیں۔ سبزاربھٹ گزشتہ موسم گرما میں جابربھارتی افواج سے لڑتے ہوئے جام شہادت نوش کرنے والے خوبرو نوجوان برہان وانی کے قریبی ساتھیوں میں سے تھے،8 جولائی 2016 کو برہان وانی کی موت کے بعد کشمیر میں وسیع پیمانے پربھارت مخالف عوامی تحریک شروع ہوئی جسے دبانے کی سرکاری کوششوں میں کم از کم 100 افراد اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرچکے ہیں جبکہ ہزاروں گولیوں اور چھروں سے زخمی ہوگئے ہیںلیکن عوام اس ظلم و استبداد کے باوجود قدم پیچھے ہٹانے پر رضا مند نہیں۔مسلسل کئی ماہ سے کشمیر میں عام زندگی ہڑتالوں، گرفتاریوں اور سرکاری پابندیوں کے باعث معطل ہے۔تازہ تصادم کے بعد حکومت نے پھر ایک بار جنوبی کشمیر مِیں ٹیلیفوں رابطوں اور انٹرنیٹ کی سہولیات کو محدود کردیا ہے۔احتجاجی تحریک کے دوران 18ستمبر کو اْڑی قصبہ میں بھارتی فوج کے کیمپ پر مسلح حملے میں 19فوجیوں کی ہلاکت کے بعد ساری توجہ ایل او سی پر پیدا شدہ کشیدگی اور ہندپاک تعلقات میں تناؤ پر چلی گئی تھی۔
اتنے عرصے سے جاری احتجاج کی لہر، تشدد اور کرفیو کا کشمیریوں پر کیا اثر پڑا ہے؟اس دوران مقبوضہ کشمیرکے عوام ثابت قدمی اور ارادوں کی مضبوطی کے کئی امتحانات سے دوچار ہوئے۔ مقبوضہ کشمیر کے نوجوانوں کاکہناہے کہ ہم تو امتحانوں کے عادی ہو گئے ہیں۔ اس دوران بھارتی فوج نے بھی سفاکیت کے نئے مقام سر کر لیے جس کے شکار 4سالہ بچے سے لے کر 80 سالہ بوڑھے بھی ہو ئے۔ جبکہ مقبوضہ کشمیر کی ریاستی پٹھو حکومت دہلی سے وفاداری میں اندھی ہوچکی ہے جس کی وجہ سے اب مقبوضہ کشمیر میں تعلیم بھی سیاست کی زد پر آگئی ہے۔مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوجیوں کے ظلم وستم اور سفاکیت کی داستانیں سناتے ہوئے مقامی باشندوں نے بتایا کہ بھارتی فوجیوں نے لوہے کی سلاخوں، چاقو اور ڈنڈے لے کر رات کے اندھیرے میں گھروں میں گھس کر بچوں اور بڑوں کی شدید پٹائی کی، عورتوں کی بے عزتی کی اور سامان تہس نہس کیا، وہاںکشمیری رضاکاروں نے زخمیوں اور ان کے تیماداروں کے لیے ہسپتالوں میں مہینوں کھانا نہیں کھایا۔بھارتی فوجیوں نے ایک مہینے کے اندر 13 لاکھ چھرے نہتے لوگوں پر داغے اور سیکڑوں لوگوں کو اندھا بنایا، وہیں ہمارے ڈاکٹروں نے آنسو گیس سے بھرے ہسپتالوں میں دن رات ان چھروں اور گولیوں سے زخمی لوگوں کے علاج کئے۔جہاں ایک طرف سے زخمیوں سے بھری ایمبولینس کے ڈرائیور پر گولی چلائی گئی وہاں اسی ڈرائیور نے اپنے زخموں کا خیال نہ کرتے ہوئے پہلے ایمبولینس میں پڑے زخمیوں کو ہسپتال پہنچایا پھر اپنے زخموں کا علاج کروایا۔جہاں حکومت نے لگاتار کرفیو لگا کر چھوٹے بچوں کو دودھ سے اور بیماروں کو ان کی دوا سے محروم کیا ،وہیں کشمیریوں نے ایکسیڈنٹ میں زخمی ہندوستانی یاتریوں کے زخموں پر مرہم لگائی۔ہماری آزادی کی یہ جنگ جاری ہے۔ جہاں ہم اپنے جائز حق کے لیے جدوجہد کر رہے ہیں وہاں انڈیا کی سرکار کشمیر پر اپنے ناجائز قبضے کو قائم رکھنے کے لیے وحشیانہ طرز عمل کے سبب حدیں پار کر رہی ہے۔کچھ دن پہلے ایک کتاب پڑھنے کے دوران اس میں ایک فقرہ نظر سے گزرا جسے پڑھ کر غصہ بھی آیا اور دکھ بھی ہوا۔ کشمیر کے سابق گورنر جگموہن نے 1990 میں کہا تھا ‘کشمیر کا حل صرف گولی ہے۔’
یہ وہی جگموہن ہیں جن کی بطور گورنر حلف اٹھانے کے ایک دن بعد سرینگر میں ‘گو کدل’ کا قتل عام ہوا جس میں 52 نہتے شہریوں کو بھارتی فوجیوں نے گولیاں برسا کر مار ڈالا۔جگموہن کا دور کشمیر کا ایک سیاہ دور تھا۔ یہی جگموہن جو سابقہ افسر شاہی کا فرد تھا اب بی جے پی کا رکن بن گاہے۔ اسے 2016 کے شروع میں بی جے پی سرکار نے ہندوستان کے دوسرے بڑے اعزاز پدما ویبھوشن سے بھی نوازا۔جس ملک کی سرکار اور اس کے حرکاروں کی ایسی سوچ ہو اس ملک سے جمہوریت یا انسانیت کی آپ کیا امید کر سکتے ہیں؟ جیسا کہ میں نے کہا یہ برابری کی جنگ نہیں ہے۔یہ آزادی کی جنگ ہے جو تب تک جاری رہے گی جب تک کشمیر آزاد نہ ہوجائے ، پیچھے ہٹنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔
سبزار کی شہادت کی خبر عام ہوتے ہی کشمیر کے بیشتر قصبوں میں ہڑتال کر دی گئی اور طلبہ نے تعلیمی اداروں میں مظاہرے کیے۔ ترال میں جھڑپ کی جگہ کے قریب پہلے ہی ہزاروں لوگ مظاہرے کر رہے تھے۔واضح رہے کہ ماہ رمضان کی آمد پر جمعے کی شب سوشل میڈیا پر ایک ماہ سے جاری پابندی کو ہٹایا گیا تھا تاہم بعض سرکاری ذرائع کا کہنا ہے کہ سبزار بٹ کی شہادت کے بعد اگر مظاہروں کا دائرہ وسیع ہوگیا تو انٹرنیٹ اور فون سروسز کو معطل کیا جا سکتا ہے۔
حزب المجاہدین کمانڈرسبزاربھٹ گزشتہ موسم گرما میں جابربھارتی افواج سے لڑتے ہوئے جام شہادت نوش کرنے والے خوبرو نوجوان برہان وانی کے قریبی ساتھیوں میں سے تھے،جن کی شہادت کے بعد کشمیر میں وسیع پیمانے پربھارت مخالف عوامی تحریک شروع ہوئی جسے دبانے کی سرکاری کوششوں میں کم از کم 100 افراد اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرچکے ہیں جبکہ ہزاروں گولیوں اور چھروں سے زخمی ہوگئے ہیںلیکن عوام اس ظلم و استبداد کے باوجود قدم پیچھے ہٹانے پر رضا مند نہیں۔
تہمینہ حیات نقوی


متعلقہ خبریں


برہنہ حالت میں ویڈیوبنانے کے الزام میں17 افراد کے خلاف مقدمہ درج وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

سرگودھا روڈ یوسف چوک کے قریب چوری کے الزام میں 2 محنت کش خواتین کومبینہ طورپرتشدد کا نشانہ بنانے برہنہ کرکے بازارمیں گھسیٹنے اوربرہنہ حالت میں ویڈیوبنانے کے الزام میں17افراد کے خلاف مقدمہ درج کرلیا ہے جن میں فیصل'ظہیرانور،عثمان اور فقیرحسین وغیرہ5نامزداور12نامعلوم شامل ہیں۔ سوشل میڈیا پر ویڈیو وائرل ہونے کے بعد سی پی او ڈاکٹرعابد خان اورایس ایس پی انوسٹی گیشن کے موقع پر پہنچنے کے بعد ایس ایچ اوتھانہ ملت ٹائون رضوان شوکت بھٹی نے ملزموں کوگرفتارکیا ۔وزیراعلیٰ پنجاب عثمان بزدارن...

برہنہ حالت میں ویڈیوبنانے کے الزام میں17 افراد کے خلاف مقدمہ درج

لاہور کے بلدیاتی انتخابات میں کلین سوئپ کریں گے،آصف علی زرداری وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

پاکستان پیپلزپارٹی پارلیمنٹرینز کے چیئرمین و سابق صدر مملکت آصف علی زرداری نے کہا ہے کہ پنجاب میں پوری قوت کے ساتھ بلدیاتی انتخابات میں حصہ لیں گے،بلدیاتی الیکشن میں میدان کسی کے لئے خالی نہیں چھوڑیں گے ۔ اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ پیپلز پارٹی کو لاہور سمیت پورے پنجاب میں مضبوط کریں گے،1979 کی طرح لاہور کے بلدیاتی انتخابات میں کلین سویپ کریں گے۔آصف علی زرداری لاہور میں چند روز قیام کرنے کے بعد واپس کراچی روانہ ہو گئے۔آصف زرداری نے بلاول ہائوس لاہور میں قیام کے دوران حلقہ ا...

لاہور کے بلدیاتی انتخابات میں کلین سوئپ کریں گے،آصف علی زرداری

کسٹم انٹیلی جنس کا جامع کلاتھ مارکیٹ میں چھاپہ، اسمگلنگ شدہ کپڑا ضبط، احتجاج وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

تاجروں کی جانب سے سخت احتجاج بھی کام نہ آیا، کسٹم انٹیلی جنس نے جامع کلاتھ مارکیٹ سے کروڑوں مالیت کے کپڑا ضبط کرلیا۔کراچی کی مشہور جامع کلاتھ مارکیٹ میں کسٹم انٹیلی جنس نے چھاپہ مارا، جس کے دوران انہیں سخت مزاحمت کا سامنا کرنا پڑا۔ پولیس کا کہنا ہے کہ چھاپہ غیر قانونی اشیا کی موجودگی کی اطلاع پر مارا گیا۔فریسکو چوک پر کسٹم کارروائی کے خلاف تاجر سڑکوں پر نکل آئے۔ مقامی تاجروں کے احتجاج کے باعث فریسکو چوک میدان جنگ بن گیا۔ احتجاج کے دوران فائرنگ اور پتھرا کے نتیجے میں دو افراد ...

کسٹم انٹیلی جنس کا جامع کلاتھ مارکیٹ میں چھاپہ، اسمگلنگ شدہ کپڑا ضبط، احتجاج

اگلی وبا کورونا سے زیادہ مہلک ہوسکتی ہے، موجد آکسفورڈ کورونا ویکسین وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

آکسفورڈ آسٹرا زینیکا ویکسین کی شریک موجد نے کہا ہے کہ آئندہ وبائیں کرونا وائرس سے بھی زیادہ مہلک ہو سکتی ہیں اس لئے کرونا سے سبق حاصل کرنا چاہیے۔میڈیارپورٹس کے مطابق رچرڈ ڈمبلبی لیکچر میں خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر سارہ گلبرٹ کا کہنا تھا کہ یہ کوئی پہلا یا آخری موقع نہیں جس میں کسی وائرس کے سبب ہماری زندگیاں یا معاشی صورتحال متاثر ہوئی ہو۔ سچ تو یہ ہے کہ اگلی وبا سے اس سے بھی بدتر ہو سکتی ہے۔ وہ اس سے بھی زیادہ مہلک یا متعدی ہو سکتی ہے۔سارہ کے مطابق ہم ایسی صورتحال کی اجازت نہیں دے...

اگلی وبا کورونا سے زیادہ مہلک ہوسکتی ہے، موجد آکسفورڈ کورونا ویکسین

خواتین یا بچوں کے مقابلے میں مرد کووڈ کو زیادہ پھیلاتے ہیں، تحقیق وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

امریکا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آیا ہے کہ خواتین یا بچوں کے مقابلے میں مرد کورونا وائرس سے ہونے والی بیماری کووڈ 19 کو زیادہ پھیلاتے ہیں۔میڈیارپورٹس کے مطابق یہ بات امریکا میں ہونے والی ایک طبی تحقیق میں سامنے آئی۔کولوراڈو اسٹیٹ یونیورسٹی کی اس تحقیق کا اصل مقصد پرفارمنگ آرٹ کے ذریعے کووڈ 19 کے پھیلائو کو دیکھنا تھا۔مگر محققین نے یہ بھی دریافت کیا کہ خواتین یا بچوں کے مقابلے میں مرد کورونا کے وائرل ذرات کو زیادہ پھیلاتے ہیں۔تحقیق میں 75 سے زیادہ افراد کو شامل کیا...

خواتین یا بچوں کے مقابلے میں مرد کووڈ کو زیادہ پھیلاتے ہیں، تحقیق

اقوام متحدہ میں افغانستان کی نمائندگی کا فیصلہ ملتوی وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے ایک قرارداد منظور کی ہے جس کے تحت افغان طالبان اور میانمار کی فوجی حکومت کے نمائندوں کو تسلیم کرنے کا معاملہ غیر معینہ مدت کے لیے ملتوی کردیا گیا ہے۔غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق امریکا، روس اور چین سمیت 9 ممالک پر مشتمل اقوام متحدہ کی کریڈنشلز کمیٹی کے معاہدے پر مشتمل قرارداد کو اقوام متحدہ کے رکن ممالک کے ووٹنگ کے بغیر اتفاق رائے سے منظور کرلیا۔گزشتہ ہفتے کمیٹی نے جنرل اسمبلی کے موجودہ سیشن کے لیے افغانستان اور میانمار کے نمائندوں کی شمولیت ...

اقوام متحدہ میں افغانستان کی نمائندگی کا فیصلہ ملتوی

پاکستان 41 سال بعد افغانستان پراو آئی سی وزرائے خارجہ اجلاس کی میزبانی کررہا ہے،ترجمان دفتر خارجہ وجود - بدھ 08 دسمبر 2021

ترجمان دفتر خارجہ نے کہا ہے کہ او آئی سی وزرائے خارجہ کونسل کا اجلاس 19دسمبر کو اسلام آباد میں ہوگا۔ اسلامی ممالک کے وزرائے خارجہ کو شرکت کی دعوت دی گئی ہے۔صحافیوں سے غیر رسمی گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہاکہ اجلاس میں سلامتی کونسل کے مستقل ارکان کوشرکت کی  دعوت دی ہے۔ یورپی یونین ، اقوام متحدہ اور اس کی امدادی ایجنسیوں کو مدعو کیا گیا ہے۔ ورلڈ بینک اور عالمی مالیاتی اداروں کے اعلیٰ حکام کو بھی مدعو کیا گیا ہے۔ اجلاس میں جرمنی، جاپان، کینیڈا اورآسٹریلیا کو بھی شرکت کی دعوت دی ج...

پاکستان 41 سال بعد افغانستان پراو آئی سی وزرائے خارجہ اجلاس کی میزبانی کررہا ہے،ترجمان دفتر خارجہ

کراچی پر پھر بجلی گرادی،صارفین کیلئے 3روپے 75پیسے مہنگی وجود - منگل 07 دسمبر 2021

کراچی کے صارفین کیلئے بجلی 3روپے 75مہنگی کر دی گئی اس حوالے سے نیپرا نے نوٹیفکیشن جاری کر دیا ۔ نوٹیفکیشن کے مطابق بجلی ستمبر کی فیول چارجز ایڈجسٹمنٹ مد میں مہنگی کی گئی ،اضافہ دسمبر کے بجلی بلوں میں وصول کیا جائے گا ،نیپرا نے ستمبر کی فیول ایڈجسٹمنٹ کیلئے نومبر میں سماعت کی تھی۔

کراچی پر پھر بجلی گرادی،صارفین کیلئے 3روپے 75پیسے مہنگی

پبلک اکاؤنٹس کمیٹی اجلاس،نیب سے ریکوریز کی تفصیلات طلب وجود - منگل 07 دسمبر 2021

پبلک اکاؤنٹس کمیٹی نے اگلا ان کیمرہ اجلاس چھ جنوری کو طلب کرتے ہوئے نیب سے ریکوریز کی تفصیلات مانگ لیں جبکہ چیئر مین نیب نے کہا ہے کہ پارلیمنٹ سپریم ترین ادارہ ہے، اس بارے میں کسی کو کوئی ابہام نہیں ہونا چاہیے، نیب کا چار سال کا آڈٹ ہو چکا ہے، ایک دو بار جائز وجوہات کی بنیاد پر پی اے سی میں پیش نہیں ہوسکا، نیب اپنے آپ کو قانون سے بالا تر نہیں سمجھتا، میں چیئرمین نیب ہوں، مغلیہ بادشاہ نہیں ہوں،نیب احتساب کیلئے ہر وقت تیار ہے جس پر چیئر مین پی اے سی رانا تنویر حسین نے کہا ہے کہ...

پبلک اکاؤنٹس کمیٹی اجلاس،نیب سے ریکوریز کی تفصیلات طلب

سپریم کورٹ کا سندھ میں 25 ہزار روپے اجرت کیخلاف حکم امتناع وجود - منگل 07 دسمبر 2021

سپریم کورٹ آف پاکستان نے سندھ میں 25 ہزار روپے اجرت کے خلاف حکم امتناع دیدیا۔ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے دو رکنی بنچ نے سندھ میں کم از کم اجرت 25 ہزار روپے مقرر کرنے کیخلاف درخواستوں پر سماعت کی۔ عدالت عظمیٰ نے حکم امتناع دیتے ہوئے اٹارنی جنرل پاکستان اور ایڈووکیٹ جنرل سندھ کو نوٹسز جاری کردیئے۔سپریم کورٹ نے ریمارکس دیئے کہ اٹارنی جنرل اور ایڈووکیٹ جنرل سندھ کم از کم اجرت کے مقرر طریقہ کار پر معاونت کریں، سندھ کابینہ نے 25 جون کو 25 ہزار روپے کم از کم ا...

سپریم کورٹ کا سندھ میں 25 ہزار روپے اجرت کیخلاف حکم امتناع

رانا شمیم نے پیرتک بیان حلفی جمع نہ کرایا تو فرد جرم عائد کرینگے،اسلام آباد ہائیکورٹ وجود - منگل 07 دسمبر 2021

اسلام آباد ہائی کورٹ نے بیان حلفی کیس میں کہا ہے کہ اگر پیر تک رانا شمیم کا بیان حلفی نہ آیا تو ان پر فرد جرم عائد کریں گے۔منگل کو اسلام آباد ہائی کورٹ میں سابق چیف جج گلگت بلتستان رانا شمیم کے بیان حلفی کی خبر پر توہین عدالت کیس کی سماعت ہوئی تو رانا شمیم ہائی کورٹ میں پیش ہوئے۔عدالتی معاون فیصل صدیقی نے کہا کہ یہ پرائیویٹ ڈاکومنٹ تھا اس نے پبلش کرنے کے لیے نہیں رکھا تھا ، رانا شمیم نے کہا کہ پبلش ہونے کے بعد اس سے رابطہ کیاگیا ، خبر دینے والے صحافی کا کہنا ہے کہ اس نے خبر ش...

رانا شمیم نے پیرتک بیان حلفی جمع نہ کرایا تو فرد جرم عائد کرینگے،اسلام آباد ہائیکورٹ

بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے وجود - منگل 07 دسمبر 2021

بھارت میں مغل دور میں قائم ہونے والی تاریخی بابری مسجد کو شہید ہوئے 29 برس کا عرصہ گزر گیا، بابری مسجد کو بھارتی انتہاپسند ہندو جماعت وشو اہندو پریشد اور بھارتی جنتا پارٹی کے کارکنوں اور حمایتیوں نے حملہ کر کے مسمار کر دیا تھا۔وشوا ہندو پریشد، راشٹریہ سویم سنگھ اور بی جے پی 1980 سے ایودھیا کی بابری مسجد کی جگہ رام مندر کی تعمیر کی تحریک چلا رہی تھیں۔ 6 دسمبر1992 کو انہی انتہاپسندہندو جماعتوں نے ایودھیا میں ایک ریلی نکالی جس نے پر تشدد صورت اختیار کر لی ، نتیجے میں بابری مسجد ...

بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے

مضامین
کون نہائے گا وجود منگل 07 دسمبر 2021
کون نہائے گا

دوگززمین وجود پیر 06 دسمبر 2021
دوگززمین

سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی! وجود پیر 06 دسمبر 2021
سجدوں میں پڑے رہناعبادت نہیں ہوتی!

چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے! وجود پیر 06 دسمبر 2021
چین کی عسکری صلاحیت’’عالمی رونمائی‘‘ کی منتظر ہے!

دوگززمین وجود اتوار 05 دسمبر 2021
دوگززمین

یورپ کا مخمصہ وجود هفته 04 دسمبر 2021
یورپ کا مخمصہ

اے چاندیہاں نہ نکلاکر وجود جمعه 03 دسمبر 2021
اے چاندیہاں نہ نکلاکر

تاریخ پررحم کھائیں وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
تاریخ پررحم کھائیں

انوکھی یات۔ٹو وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
انوکھی یات۔ٹو

وفاقی محتسب واقعی کام کرتاہے وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
وفاقی محتسب واقعی کام کرتاہے

ڈی سی کی گرفتاری اور سفارشی کلچر وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
ڈی سی کی گرفتاری اور سفارشی کلچر

ماں جیسی ر یاست اور فہیم۔۔۔ وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
ماں جیسی ر یاست اور فہیم۔۔۔

اشتہار

افغانستان
اقوام متحدہ میں افغانستان کی نمائندگی کا فیصلہ ملتوی وجود بدھ 08 دسمبر 2021
اقوام متحدہ میں افغانستان کی نمائندگی کا فیصلہ ملتوی

طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ وجود اتوار 05 دسمبر 2021
طالبان کے خواتین سے متعلق حکم نامے کا خیرمقدم کرتے ہیں، تھامس ویسٹ

15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل وجود هفته 04 دسمبر 2021
15 سالہ افغان لڑکی برطانوی اخبار کی 2021 کی 25 با اثر خواتین کی فہرست میں شامل

طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت وجود جمعه 03 دسمبر 2021
طالبان کی خواتین کو جائیداد میں حصہ دینے،شادی مرضی سے کرانے کی ہدایت

جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان وجود جمعه 03 دسمبر 2021
جھڑپ میں ایران کے 9سرحدی گارڈز ہلاک ہوئے،طالبان

اشتہار

بھارت
بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے وجود منگل 07 دسمبر 2021
بابری مسجد شہادت کے 29 برس بیت گئے

بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا وجود جمعرات 02 دسمبر 2021
بھارت ، ٹیکس میں کمی، پیٹرول 8روپے فی لیٹرسستا ہوگیا

بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی وجود بدھ 01 دسمبر 2021
بھارت میں مشتعل ہجوم کی چرچ میں تھوڑ پھوڑ ،عمارت کو نقصان،ایک شخص زخمی

بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین وجود پیر 29 نومبر 2021
بھارت میں نفرت جیت گئی، فنکار ہار گیا،مسلم کامیڈین

بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی وجود هفته 27 نومبر 2021
بھارت میں ہندوانتہا پسندوں کی نماز جمعہ کے دوران ہلڑ بازی
ادبیات
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام وجود منگل 26 اکتوبر 2021
جرمن امن انعام زمبابوے کی مصنفہ کے نام

پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام وجود پیر 25 اکتوبر 2021
پکاسو کے فن پارے 17 ارب روپے میں نیلام

اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا وجود بدھ 13 اکتوبر 2021
اسرائیل کا ثقافتی بائیکاٹ، آئرش مصنف نے اپنی کتاب کا عبرانی ترجمہ روک دیا

بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف وجود جمعه 01 اکتوبر 2021
بھارت میں ہندوتوا کے خلاف رائے کو غداری سے جوڑا جاتا ہے، فرانسیسی مصنف کا انکشاف

اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب وجود پیر 20 ستمبر 2021
اردو کو سرکاری زبان نہ بنانے پر وفاقی حکومت سے جواب طلب
شخصیات
جنید جمشید کی پانچویں برسی آج منائی جائے گی وجود منگل 07 دسمبر 2021
جنید جمشید کی پانچویں برسی آج منائی جائے گی

نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی وجود اتوار 05 دسمبر 2021
نامور شاعر ، مزاح نگار پطرس بخاری کی 63 ویں برسی آج منائی جائیگی

سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے وجود پیر 29 نومبر 2021
سینئر صحافی ضیاءالدین ا نتقال کر گئے

پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل وجود جمعرات 25 نومبر 2021
پاکستانی سائنسدان مبشررحمانی مسلسل دوسری بار دنیا کے بااثرمحققین میں شامل

سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز وجود جمعه 19 نومبر 2021
سکھ مذہب کے بانی و روحانی پیشواباباگورونانک کے552ویں جنم دن کی تین روزہ تقریبات کا آغاز